Skip to main content

روشنی کے دشمن کو ن ہیں ؟ Date: 2020-05-03 روشنی کے دشمن کو ن ہیں ؟ ہفتہ وار تبصرہ چند روز قبل 26 اپریل کابل شہر کے شمال ضلع میربچہ کوٹ کے مرزاخیل کے علاقوں میں درآمدہ شدہ بجلی کے کھمبوں کو نامعلوم افراد نے بموں سے تباہ کردیا،جس سے کابل شہر سمیت متعدد صوبوں کی بجلی منقطع ہوگئی اور لاکھوں ہموطنوں کے گھروں میں اندھیرا چھا گیا۔باوجود یکہ بجلی کے کھمبوں کو رات میں گرائے تھے اورابتدائی حالت میں کسی کے پاس معلومات نہیں تھیں، کہ اندھیرے میں نقاب پوش تخریب کار کون تھے۔ مگر کابل انتظامیہ کے ترجمانوں نے اطلاع پاتے ہی یک آواز اس واقعہ کی ذمہ داری امارت اسلامیہ کے مجاہدین پر ڈال دی،جس کے ساتھ بےانصاف میڈیا نے بھی اسی خبر کو پروان چڑھایا۔ امارت اسلامیہ کے ترجمان جناب ذبیح اللہ مجاہد نے بجلی کے کھمبوں کی تباہی کی مذمت کی اورکہا کہ یہ عمل امارت اسلامیہ کے مجاہدین کا نہیں ہے۔ چند آزاد تجزیہ نگاروں نے پہلے ہی اندازہ کیا کہ ممکن یہ عمل اس سرکاری مافیا کی جانب سے انجام ہوا ہو، جو شہروں کی مارکیٹوں میں تیل اور گیس کی قیمتوں پر حاکم ہیں۔ اس لیے کہ عوام جنریٹر اور گیس سلنڈر استعمال کرنے پر مجبور ہوجائے، یہی مافیا ہمیشہ بجلی کے کھمبوں کو گراتے ہیں اور ہموطنوں کو بجلی سے محروم کرتے ہیں۔ واقعہ کے چھ روز بعد 2 مئی کو میڈیا نے رپورٹ شائع کی، کہ میربچہ کوٹ میں بجلی کے کھمبے تباہ کرنے والے افراد مقامی لوگوں کی تعاون سے گرفتار ہوچکے ہیں۔ جن افراد کی تصویریں میڈیا میں شائع ہوئیں، چہرے اور تمام کوائف سے معلوم ہورہے ہیں کہ وہ امارت اسلامیہ کے مجاہدین نہیں بلکہ کابل انتظامیہ کے مزدور یا ملیشا فورس ہے۔اس سے اہل وطن کے سامنے وہ راز فاش ہوگیا، جو کئی روز میڈیا کے پروپیگنڈے کے دھول میں چھپا ہواتھا۔ اب ہر شخص سمجھتا ہے کہ بجلی کے کھمبوں کو گرانا اور لاکھوں ہموطنوں کو روشنی سے محروم کرنا کابل بدعنوان انتظامیہ سے منسلک مافیائی حکام کا عمل ہے، جو ہمیشہ اس طرح اعمال سے اپنے سرمایہ کو بڑھانے اور ہموطنوں کو لونٹے کا فعل انجام دے رہا ہے۔ کابل بدعنوان انتظامیہ کے حکام نہ صرف روشنی کے دشمن ہے، بلکہ اپنے ناجائز مفادات کے لیے تعلیم،تعمیر و ترقی سے بھی دشمنی کررہا ہے، اس حال میں امارت اسلامیہ نے رسمی طور پر بابار عام المنعفہ منصوبوں اور تاسیسات کی حفاظت کے مؤقف کو ظاہر کیا ہے اورفی الحال امارت اسلامیہ کے زیر کنٹرول علاقوں میں متعدد ترقیاتی منصوبے جاری ہیں، مگر کابل انتظامیہ کے حکام عملی میدان میں اعتماد سے محروم ہیں اورپروپیگنڈہ کے حصے میں توازن کو برقرار رکھنے کے لیے ہمیشہ تباہ کن حرکتوں کا سہارا لیتے ہیں۔ کبھی اسکول کو تباہ کرتا ہے اور کبھی ہستپال یا پل کے نیچے بم کر جھوٹے میڈیا کے ذریعے اس کی ذمہ داری امارت اسلامیہ پر ڈالتی ہے۔ مگر جب بھی اس طرح واقعات کی تحقیقات ہوجائے،تو میربچہ کوٹ کی مثال کے مانند ہمیشہ اسکا سراغ کابل انتظامیہ کے اینٹلی جنس تک پہنچ جاتا ہے۔ امارت اسلامیہ ایک بار پھر تمام ہموطنوں اور عالمی برادری کے سامنے اعلان کرتی ہے کہ ہم تعمیرنو، تعلیم، صحت، معاشی ترقی، زراعت اور اہل وطن کے آرام و سکون اور قومی ترقی کے کسی منصوبے سے مخالفت نہیں کرتے ہیں، بلکہ پوری قوت سے اس کی حفاظت اور ترقی کی کوشش کرتے ہیں۔ امارت اسلامیہ کے علاقوں میں بجلی کے کھمبے، اسکول، صحت کے مراکز اور تمام عام المنفعہ تنصیبات محفوظ ہیں اور کسی کو اجازت نہیں دی جاتی کہ اپنے ذاتی مفادات کی خاطر قومی انفراسٹرکچر کو نقصان پہنچا دے۔

Item Preview

You must log in to view this content

SIMILAR ITEMS (based on metadata)