Skip to main content

Full text of "خارجہ پالیسی کا معیار اور اسلامی تعلیمات"

See other formats


ضط ا 


ارم وی گا معار 
اعلا لق آفورات 


۸ 
کٹ ا ا 
نم نت ٠‏ 
کق عبزارخر واوں ادن 
و کیا ںی 02 80“ 





دار أمّل إلسنة 


نتحقیف انکتب و الصّباعة و النّشر 





ےم 
ادارہ اھنسنت ۱۲۷۸۲ناڈ5 ٢ ۸1١.‏ ۱۱۱۵۸۸ 


۰۷۱۰۰۱۷۰.۲۹٠٥ام‎ ٥۹٤۴.۱ 1 


وا ۶اا -- 
مار جہ پا یکا معیار اود اسلائی تخلیمات 


لا گ۸ 


وک مضتی م یلم رض نین حسینی 


معاون 
لتق عبدالرشیرمالیں ادن 
و را رق خر ری 


اگ 


کے 
مس 
اناو جر 


٤تت‏ 1ط ۳ة۹1/٘ہہء عەہ ما 5. //۷٣٣‏ :دجئط 7گ 


ادار6ٗائل سّت جمتۃالہارک ۴ا نماری الأُولٰٰ ۳٢٣۱ھ‏ 


6 
کرای - پلتان 


رر یں طال: ے۱/٢۱/۳٢۲۰ء‏ 


خارجپل یکامع راو راسلا بی لق رات 

ا حمد لل رب العا مین والصّلاة والسّلامُ على خاتم الأنبیاءِ 
والمرسّلین: وعلى آلهِ وصحب أجمعین, اتا بعد: فأعوذ باللہ ِن الشيطانِ 
الٌجیم؛ بسم الله الرْحنِ الرٌحیم. 

تضور مرنورہ شرانع وم نشور بڑلااکی بارگاہ یش اوب وا رام ے رود 
وسلا مکانذرانہ نل کے ! اللَّھِمْ صلّ وسلّم وبارِك علی سینا ومولانا 
وحبیبنا محمّدِ وعلى آله وصّحبه أجمعین. 

مارج پل یکی مرف 

برادران اسلاع! ایا ریاس ت گا تفاظ تکرنےء اسے پروی خطرات 
سے بھچائےء اور تفویط سے متفوطا تر بنانے کے سے ‌"ء۳"۳""ھە(ە" اقوام تے 
تعالقات استوا رک ناء روابطا بڑھاناء اور لیے تواعد وضواببطا مرک بک ناء ججن سے ریائقی 
ی۹۷ی9۹۷۹٘"۷٘۷٘۶'ئ"" ۳۱۱۱٣۷۸(‏ 7٣و(٥٢١۴)آبلاه‏ ے۔ 

ارت ای کی انت :ضر رت 

عزنزا ن مز مس بھی مل ککی ترتی اور بتاک ل٠‏ اس مک ککی مضوط اور 

بین خارج پالشھی (01 ا9 ۴۵۲۴(۹۲) رب کی پک کی حشیت رمصتی ہے 


۱ اض رظ رات 


دوطرفہ تار کی و محاشرکی تعلقات بیں کہبتریی لان ء دوسنتو ںکی تعدراد بڑھانے ءوفائی 
۳ھ ٔ' ۰ ٰ۹ ۹ 
یں کے تملوں سے یئ ء تزثیکی راہ پرگامزن ہہونے ء اور اپنے ون بیس اسنےکام 
لانے کے ےہ ار جہ پای ہرک کک فیادیی ضرورت ہے۔ مبترین مار جہ پلیی 
کے ذر ہی بابھی تعلقات میں مضبوی پییرا ہوٹی ےء اور ئل وقت بیس اپتے 
برا ےکافرق واج ہوتاے۔ 
یلپ غارج پاش ی اوراسلا ی مال کا ۱ خصال 
حفرات رای قر اور حاضر میں ورپ اک نے رک مل اود ہب 
کی جفیاد پر ہاایم تعلقات استوا رک ر کے ہیں٠‏ آئیں میس تمارک ورفائی معاہر ےکر 
ر کے ہیں, مضمتکہ فوتی اتا رتحکبیل رے ر کے ہیںء اپنے مماداتکی طاظتء اور 
ےا فصو اسلا گی فائکٹ کو اپنے اشماروں پر میانے کے لیے ء انہوں 
رورپ ین (٥٥1٥لا‏ 30٥م٥0۲ع)‏ اور ورلگر یک (8301 ۷۷۷۱۷۱۱۱) 
یی ا تتصالی ادارے فا مک رر کے ہیں !! 
چہ دوسری طرف جم ملمان ہیںء جن میں ہابھی افتزاق واختتفار بی سے 
فرصت نہیں !ہمیں جا جےکہ ہا بھی تعالقات میس ہت کی لایس ء اسلا ھی مفادا ت کا ححذظ 
کریںء اور شک طور پ ایی اسلائی خار ج ہایس یتیل یں مک سی ور یپ وخ رو لی 
لی کو مسل ای کے خلاف کاردا یکرنےء(نہیں دہشفگ رد شاب تکرنے, مواشی طور 
پہ نہیں ڈییالٹر (80۱۸۵۲؟08) ترار دئےء ان کا نام ری (8600) او رکسرے 


۲ اض رظ رات 


8۲810 ) اسٹ میس شائ لکہنےء ان ید اق پالصیاں لاگوکرنےء اور الع پ رجنگیں 
ملاک ےک رت 2ہو ا۔ 
الا رتا کا ایک بذیادکی کہ 

زان مناہار ےک ےکی مطلب ہرگہں ہےکہ لوپ ملک سے 
سفار تی تعاقات پالئل نہر کے جائیںء ہام رمجبوریی اور مسلرانوں کے منمادا تک ع درک٠‏ 
ان سے بقد رضرورت رواہطا رکھناجا ہے ء یکن الع سے زریادوفوقعات وا تکرناء نہیں اپنا 
اتھادی بناناءاوردوست مان لیناش رادرس ت نیس ء الللد رب العا مان نے ب یت مسلمالن 
یں ان سے دوس یکرنے سے مع فرایا سے اور ساتھ بی ساتجع گی اد شناد رای کہ وہ 
صر آئی بیس ایک دوسرے کے دوست ہیں ار شاو باری تی ے: ط اه لَيْبَْ 


ا وھدے صے> ھ 2 ےوووص 1١۷,‏ کرات 7ھ 
اوْلِیاء- بِعضّھم ! 


امنوال تَْیْدُواالیھود والضری لئ بنيیں ب۱ ''اے ابببان والو! 


پبہودونصاری ا ودوست ٹ ہنا 1 دہ نی ایک دو ےک ےووست ھ2 
اس سے معلوم ہو اک ہکاف کو یبھی ہوء ان میں ہام کے ہی اختتلافات ہوںء 
مسلمانوں کے متا ے بیس دوس ب ایک ہیں اہ ابجیاں مہ بات ہرگز خی ںکبھولنی جا بے ء 


.١٥ الائدة:‎ ٦پ‎ )١( 


۳ نا اف می رظ ات 





کہ رت سینا عرفاروق ڈل نے چودوسو سال حصیے بی مسلمانوں پر یو اکر دیا 
تھا: دالْكندُ ک ِلٌَ 2ة ا 'تھاممکفار ایک قوم وطت ہیں ۷۷ 
جحثرات ذبی و مار !بیپودولصارکی کے سا تق دوس کیادم صرنے والائچھی انیں 
میں سے سے٤‏ او شھاد باریی تھا ی ے: ظا ومن یَەونھم قِنْلی فَالَه وِنهُمْ ا الک 
دی الوم ابی پ١‏ ''تم میس جوکوکی ان (یپودونصارکٰ) سے دوستقی رج ےگا 
وہای یں سے سے قداانند ہے انصافویں اکودا نہیں وتا!''۔ 
صدر الال ملق سٹی نمیم الدمین مرادآبادی اشن ا ںیت مارک کے 
ےڈ سن ام دن ری ےس تر تی کرات ش انح 
کی مددکرناء ان سے عدد چچاہناء ان کے ساتھ محبت کے روابطا رکھنا ممنوح فرمایاگیاء ہہ 
تم عام ہے اکچ ہآ یت مپارک ہکانزول می خائص واقہ ٹل ہواہو- 
(ذرکورہ پالا آیت مبارکہ) رت ستیدناتبادہین صامت َء اور برا 
بن الي بن صلول کے من میں نازل ہہوئی جو منانشی نکاسردارتھاء ححضرت سپ نا بد بین 
صاہت تنک نے فرباباکہ ببودیش بہت ے ہی ے2 2د مت ی۷ جو یڑیی شوگ وقت 


آ|۵۵ه ء,""۵۳2ھ"ھ0۸ لی یوسف؛ فی الفرائض٤‏ ر: ۱ء ص۱ ۱۷.۔ 


(۴) 'لفی رخزائکن الرفان ''پ ۷ء نرہ ء زی رآیت :ا۵ء ,۴۲۳- 
)٣(‏ پ٦‏ المائدة: .۵٥‏ 


۲ ا ا رظ رات 





0 :9 گ  '‏ ۹ 'ٰبپ ہہ ؟ عبت 
کی میرے ول می ںکٹھائ نہیں ءاس پرعبداواند ین األي بن صسلول(منافن پن ےہا کہ میں 
تو یبودکی د دی سے ہبزاری نی ںک۷رسکتاءیھے بین لآنے وانے حواوت (ٹرے اوقات ) 
کا اندییشہ ےء اور جھے ان کے ساتجھ تعلقات رکھنا ضروریی سے!۔ ال پر سیر عالم 
بلک نے اس سے فربایا: دیا جا اباب! مَا تَقَسْتَ بہ مِن وِلَايَة اليْهُودِ 
عَل عبَادة ب بن الصَایتِ فَهُرَ و لَكِ ہُو بدا نے ای ای !)دی ددتیکاام 
بھرناتردی .ےت ےر . 
ا سلائی عمایک ے تعاقا کیک وعیت 

رفیقان یت اسلامیہ! ایک اسلائی ملک کے دومسرے اسسلائی کیک کے 
ات تعنشات اشپائی مشالی ہونے پا ئنیںء اوران کے لیے اپقی مار پالٰٰی مس نر ی 
کا ممظاہرہکرنا چا ہیےہ لبذا جیا چا ہی ےکہ اسلائی ممانک کے ساتھ ردابط بڑھائِں ء 
اہم تعاقا کو مضبوماکریں ,نیم وتمار تکوفروغ دی وہ (88ا۷ )کی شر 
سان بنائیء طلبا کا تباول کیل اننئیں اق لونو ری (9٥1ا[0۱۷۵۲9(ا)‏ اور 
دی ملاس وجامعات ٹن ہہ یں تن ےھ 
مشنکہ دفائی ممعاہر ےکریںء اسسلائی مال کفکو ہی روٹی خطرات سے بھانے کے لیے 


-۲٢۳ر.۵ا:تیآر لی فخزائن الرفان 'پ ااءمائرد ہز‎ '' )١( 


۵ نات ا رظ رات 


رعابقی قمتوں پ رآسلح فروخ تکریںء ان کے معاخٹی اسےکام کے لیے بلا ود طومیل 
می قرنے ریںء اور ہر مک لکھڑی میس ایک دوسرے کا سہارا یں کہ ایک 
مسلران بی دوسرے مسلرا نیا اتی دوست اور مد دگارےء عدیث پاک می فمایا: 
ِا کمن من کَالَْان بش بَعْضۂ بَضض ۷ 'مومن مون کے 
لیے ایک عمار تک ماشنڑے کہا کیک ححضہ دوصر ےکو مہو اک تا ے !''_ 

شی اورہئی دوستی رف ملمان س ےکر ےکا عم دی ہہوئےء رمت 
عامیان نی نے ار شاد فربایا: تسيٹت لا سا91 دوک صرف 
م ومن مسلممان بی سےکپاکرو!''_ 

خمارج پش یکامعیاراوراسلا الات 

کرات رای فور مود ورگ عالھی عالاتہ واقعات اور جخرافالی 
صورتمال میں :جس قدر تی سے تبد یں ڈو نما ہو ردی ہیںءاسے پیٹ نظر رھت 
0 - 99 9 99 ٘ ٭" 
جاۓء اون۲ نکب دوست ہنع جاۓ نی ںکہاحاسکتاء لہا بھی اسلائی مک ککی 


۰۰۰ ۰۰ 


(١)‏ "صحیح البخاري'' کتاب الصلاۃ و ۱)) ص۸۳. 


.۷۷ / ٤ "مسند اَلإممام اُگد'' مسند أبي سعید الخدری؛ ر: ۱۱۳۳۷ء‎ )٢( 


٦‏ اض رظ رات 





(0)غارج پلٰشی میں تعلتقبات درداببط کے انار سے ہبیش اسملا ھی عمایک نت 
د یئ مار ومضرکین پرانکارگم ےک ک ری اعد یں بات غول(عیف)مگڑھ 
بنائیں ءار شاو ری تعالی ے: ول یکل المڈوموں الین اولیاء ین دون امن" 
ون لَفعَل ذليِك فیس ین ادڈہ شی پ۱ 'امسلران مسلمانوں کے سواکافرو ںکواپنا 
دوست ن نلاس اورجوایاک کر ےگااے اولد ےپ ماق (تصلق نہر ا!'۔ 
صدر اافپشل ملق سر جم الرین مرادآبادیی نیت ا سآبیت ا کہ کے 
شت فرماتۓ ہی ںکہ''حضرت دنا غھباددین صامت لا نے جن فآ زاب کے دن 
سی رعالم لاڈ سے عرخ سک کہ میرے ساتھ پا س٭*+ھ یہودی ہیں ء جو میرے 
علیف (اتھادیٰ) یں مب ریا رائۓے ےک یس دنن کے تقائل ان کے رای 
تں ا ےم ال ول در ںوت ا گا ےکی 
0 
(۴)شن مالک سے سفا ری تعلقات قائ کیل ء ان کے ساتے دن امسلام 
کے ہمانمدر ہہ نکر ایس ءاہپنے قول ول سے ایم کوئی ٹنوی :جس سے وین اسلا مکی 
ان دففظمت پر ھرف آے اپنے ساتھ الا مکی جنیادی تحلیدات پر نی لٹریچر 
(10۲8۲8ا) ضرور رتھیل ۱ اور ہا بھی جائس وہاں کے سر برابان عکومت اور وزراء 


(١)پ‏ ٥ء‏ آل عمران: ۲۸. 


)٣(‏ "تق رخ زائن الحرفان "اپ ا ءآل عران ز آہت:۰۹.۳۸ا- 


ے نا رظ رات 





ومائدی یکو گے میں ضرور بی لکریں ک معن جان رحمت با نے جب 
'ریاست رین 'لکی بشیادڈالی .ود ونصاری ے سنار لٰ تعلتا تکابنیادل نم یی تھا 
ہنیس ےکوئ ےکونے یں دیع اسلام کےآفائی یا مکوایاجاے !۔ 

(۳) ما بھی انان کے باعع تکس یکبھی اسلائی ملک کے خلاف ہونے والی 
کاروائی (جنک یا تم )لہ یبد ومصار یک حدد پرگز نکیل نی ایق ر زین 
مسلمانوں کے خلاف استتعال ہونے وی بل ا سکی کب ور الف کیل ء اور ماشہ 
اسلائی ملک ے اتحاد وی کا نمظاہردکریں۔ یاد ررھیے !اکر جم نے الیا ن کیا وجار 
نش لن کے اون س روب تی ےکا رد دنین رف رک 
گاج نمو یکی طر کاٹ چے ایس کے !۔ 

پا بھی اتاد یل بڑی مرکت اود قات ہےء رسول الد جانا نے فرمایا: 
ناراد بحم حَة ا لت فَليلم الیج 2ا۷۷ "جو جقت کے در میان انا 
ٹکانا جا بتاےء أسے چا کہ جراعت (مسلمافوں کے سب سے بڑےگھروہ) کے 
اض خررے !ا 

علادداز یش بڑے اور ار اسسلا ہی مال ککو چا ییے ءکہ خمام اسلائی ماک 
کوابیک پلیٹ فارم پپر جک ریںء اور ان کے پابھی تنازعات اور اختلافات مخ مکرواکر جح 

کروائگی ؛ سیک ہکغار و مش م۲ن جھارکی ناانفائی اور ناحچائی سے ناجاتزفائرہ اٹھاکر میں پابم 


.٦۹۸ص‎ ء۲۱٦٢ "سن الم اپ ما جاء نی لوم ا جماعق ر:‎ )١( 


۸ اض رظ رت 





ظط 7 
وست وگریہاں ندکرا یں ائیزاپنے مسلمان بھائوں یس میک روا نار متا ال یکا سبب 
پس ھوو میے 9ص2 ہےہو ھہ صوے ا 


ےء ‏ ارشار پاری ثعالی ے: ٭ انا الَموْمِنون اخوۃٌ فَاصدٰحوا بین اخو 


ث 


دا ھوا الہ آعلے تن ب۱۱۷١‏ 'امسلران مسلمان بھاٹی ڑیں تو اپننے دو ٣‏ بچھائوں 


میس رک راو اددانر سے روما تپ رز حمت ۶وا"'۔ 

(۴)اسلائی ارح پلٹی کے جذیادگی ڈیات ٹیل سے ایک ا مہ ىہ بھی 
ہے ہک اقوام عا لم سے سیے گے شسھاہدو ںکی پاسداریکی جا ء اور انیس بلاوجہ شرگی 
نوڑاجاۓ کہ ایک مسلران ہونے کے زا جھییں مھ یلم سے ۔ ضرت سینا رو 
بن حُسہ خل نے سے رداایت سے سر3رعا لم خی نے ار شاد فرمایا: (مَن کان ا 
یَتبد لیم ٠‏ عُل 00ل ےس رس مہ 
توڑے نہ نے ج بک ک ںی بر ت تم نہ ہوجائےء 5 ابہیں برا ریی پرھٹردرے 
کا و ۷ ضرورت بی بمنٹ لآ جا کو تملہ سے بہت لہ انہیں 
اطلا ید ےکپ مجبورااس معاہد ےکوتوڑرے میں تم تیار ہو چاو"( 


(١)بپ٢٦۲ء‏ احُجرات: 07 
)٢(‏ "سنن الترمذي' کتاب السیں ر: ۸۰٥۱ء‏ ص٣۳۸.‏ 


(۳) "م7ۃ امنا ئن چہاد امن ما نکابیان ہدوسرکینشصل:۱/۵٢٦_‏ 


۹ نا اض رظ رات 





میر ےجحتزم بعائو اج ب کک دوس اف ری محاہدہن ہتوڑے جیا ںبھی اس 
رت کرک چا یہ البتہاگر ف رای خالی معاہددتوڑرے متوایی صورت میں 
جھم پرجھی اس شعاہر ےکی پاسداریی ازم نہیں مرہقیء ایند رب الھحزت ار شاد فرماتا 
ے؟ فا استقاموا لک فا یما لَهم ٥(8‏ ےر ظہارے سے 
پ فان رہہیں ءت بھی ان کے لیے مقار ہو!"'۔ 

رہ۵( ٦‏ َو واما نکوبرصورت تر ہوٹی جا ہے 
خواہ ت ت یل ۷ 9 سان ے سے سس 


پ ]مھ 


توانہیں شبت جواب دبنا چا یہ زا نکی طرف ےس کی بی لک شک وق لکرنا 
جابیےء ادشاد بارکی تھالی ے: عو اِن جَنَحوا لایر اج لا تع ای“ 
َو الكونیخ ال ١۷‏ 'اکر وہای طر نہیں توق مبھی جچکو(یینی ان ےک 
کرو ءاور اللہ پ رھروسہ رکھوء ِا وی سنتاجانتزاے ''_ 

[۷ ہی کے اصول ضا کے کت بت ایی فان ضس ھا 
جائۓ؛کہ دنو ںکی تحدا کم ےکی جاۓ :اور جوغی رس ماقوام اسلام مخالف سازشول اور 
جنگوں مس مصروف نہ ہوںءان سے تعالقات ام کیے جائیس ؛ مک ہار وسشرکین سے 


)١(‏ پ۱۰ القٰبة: ۷۔ 


.۔٦٦ پ۱۰ الأنفال:‎ )٢( 


ا و اض رظ رت 





جن ککی صصورت میں ودلوک خی رحاشبدار رہیںء ارشاد خداوندییاے: ول یلیہ اد 


پر و نے ےک وو سو ثاة بےھھو رو میقوؤوو 
ي الین ولم یخرجوکم هن ویارلم ان تَبژوھم 


ہو ہے 


ے‫ ےھ وھےم ,ھ2 

دہ لمر الو 

عن الین لم یقَاتِاو 
اوھ و سے مرو و 


و تماما لن اي اص ۷ ' "الد تنا ی یں ان ےگ ع نی ںک راہ 
جو سے بین میں یں ہے تح ففیار ےکروں نے یس گال ادگ ان کےسا تو 
اما نکر ءاورالنع سے انصا ف ابر ا5 وه ِقاانصاف دانے اللدتعال یک وب ٹل ''_ 

پاں الابنتہ مسلمانوں سے لڑےء اور ان 7 مکمرنے والوں کے سا تھ 
تعاتقات استوا رک کی اجازت ہرگزنخہیں !_ 

2ھ )نشین مالک سے بین الانواٹی لعاقات اعتوا رح مفقصور ہو, ا نکی 
عادات واطوارء دفائی قات, نمحاشمی صصور تال اور وم مارک ےعلق اا نکی خارجہ 
‌ئٰ ۶۷۶۰۰۶۶۶" 

(ہ( کب و" پیلد اررویاختیال ہکیاجاے 
بلہ فی وتوٹی مفادات پ ربمون کے پقی اس یل نریی وی ککامظاہر وضو رکریں۔ 

(۹) ایک معیاری خارج ہی مرش بکرنے کے لیے ضروری ہے ہک ین 
ال اہب روادار یکو بھی پیش نظ ر رکا جائۓء اور بوقت ضرورت شرگیء ان کے 
دی عفان ونظریات سے تصرف اظر ہو ئۓء ان ے اشن مجاہزے کے ای 
صرکار دوعام میں ےکی ان ماک باس یپور ولصاری 2 دی عتار 


)١(‏ پ۲۸ الممتحنة۸. 


1 خارج پش یکامعیار اور اسلائی تعلیمات 





ونظریات سے صرف ظرکرے ءا ان ےگذت دشنی کی اوران ے 
۳ 9 ھ009 

(١۱)کوئ‏ یبھی ملک چاسے و وکنا ہی طاتتذر اور ترکی بافتۃ ہوہ ان کے ساتھ 
سفار کی تعاقات ہبیش خوددارکی اور براب کی اد قائ ہو نے چاہیں اود الپنے دی ء 
دی ار ساس کر یں 

() کیٹرین نمارجہ پلشمی یاائھی سفارجکار یکا یہ مطلب ہرگ نہیں سے کہ 
اپنے دفاگی إقدامات میس غفلت برثی جاۓ ءلہزاس بھی متوںع وغی رمتوںع ومن سے 
جنگ کے لے پھیشہ تیار رہاجائے اور ضروری1سلیہ وغیبرہجھی ہکا جائۓء ارشاد 


ر ہے ہج سو 


- نَ ہے ےی 09و سس ہے ے دو 
اری تعال ے: طہ ادا لَهُمْ ما اسْتَطْعْثمَ دن قَوْوِ ومن زبَاطا الْعَبْل 


مو ودے مرو کے ا ہے یھ سو را ے وس 9وہ ںی 39600 ہے عاف2 
ترقہون یہ عںدۂ ال وعلا تم و اخرین وِن دویٹھھ ٦‏ تعلہ و ٹھم * الله 
رو ہو وو 


یعلبهھم + و ما تنفْقوامِن کیو ق سیل او یوک الیکم و انثو لا تظلموں ٥(4‏ 
''ان کے لے تیار رکھوجوقوت تم سے ین پڑے اور ج کھوڑے با ند سک کہ اس 
۵ :ب9 9ؤ 9 ٔ۹ 9 ," " "۶" ئ8" 
اپ آوروں کے ولوں ہیں جن میں تم نہیں جا ۓ ‏ اللہ انیس جانا ےء اور الیڈ گی راہ 
رض کس رر ےگ یم رک نی ک1 


.٠٦ الأنفال:‎ ء۱۰پ)١(‎ 


ا ا ا ۱ رظ رت 





(۳) زان ان میں ضفئ دی ن کافریعضہ انام دیاجاےء اود زیادہ سے زیادہ 
لوگو ںکو اسلاٹی تخلیعدات سے آگاہکیا جاےء ابق فوگی قوت میں اضاف ہکیا جاےء نیز 
سفار گار اور بویا مار جہ لی کے ذر ہیے اسلائی ماک کے پابھی روابطا میس کہ ری 
لائی جاے۔ ماجدار ددعالم جلأٹیٹ نے معابدۃ عدیدی کے بعد ام ہونے وانے اشن 
ان سے فائرہاٹھاکرہ دین اسلام کے پیا مکوعا )کیہ لوگ وق در وق مسلمان ہوئۓء 
جس کے یج میں مسلمانوی ںکی فوٹی طیاقت میں اٹ ی مبترکی کی کہ مسمموئی شزاحمت کے 
رفاک کے تو صل یت ہو گے اور مل جن ی شانا رت ال موئی!۔ 

میرے عزیزدو تو پھائیوادربز روا تا حجدا رم ننذت بے کی حیات طذبہ 
".0" را١‏ ےء یں بین اااقوابی تعلقات کے مال ٤نی‏ باکک 
لاڈ سے بنیادی اصو لکو پش نظ رر کرابتی غخارج پالشی عرت بکرنی جایے :اور 
ای اصول وضوا طدکی بذیاد پرآقوام ع لم سے تعلقات نقائمكمرنے چاہئں !!-۔ 

دیما 

اے الا ہیں اسلائی تعلیما کی روشنی یس اپقی مار جہ پاشی عرب 
کر ےکی وف عطاخرباء لو پیا ممایک سے برابر کی عیاد پپرتعاقات استوا رک ےکی 
بت عطا فریاء ہجار خیرت اور خود یکو ہیدرار خریاء یں اسملائی عمانکک کے ساتھ 
نفاق داتھادکی توفیقی خزحمت فرماء سی کے سا تمیرگیء مواشی اور دفائی مواہرے 
کر ےکی اسلائی سوج عطا فرباء عالیم اسلام کے بابھی اختلافات کا امہ فراء انیں 
افتزاق وانتقارے ہیا!۔ 


۳ اتا رظ رات 


لے ادا ہمارے ظاہر ہاش۲ کو تھا مگندگیوں سے پاک وصاف فرباء اپتنے 
صجیی بکرم اط کے ار شادات پ خ٠‏ لکرتے ہہویے خرن وخحشت کے مطالی اٹ 
زندگی سنوارنےء سرکاردہ عا شا اور سحاب کرام لف کی نی عبت اور اخلاص 
سے بھ ور اطاعح تک ی وش عطاقریا۔ 

اے الا جییں دین الام کا وفادار بناۓ رکوہ ہیں سیا پا ال 
ماش رسول بناء ہماری صفوں بی اشتھادکی فضا ید افرماء ہیں وقتۃباجماعت نمازوں 
کا پابند بناء اس بی سستی وکاہلی سے پیا ہنی ککام میس اخلاء کی ددات عطافربہ تام 
فلس ودا جا کی ادائگی صن وخولی اخیام دی ےکی بھی توف عطا ظا ء بل وجوسی 
ےت فی گیل سے خر تیر کال سد 

یں ملک وقو مکی خدمت اور ا سکی تفاظ تکی سعادت نصیب قرماء یا بھی 
اناد وأفاقی اور محبت والش تکوم زیر مضہوما فرماء نی ںآجام تو و 
کی تونق عطافریا۔ ہمارکی دعایس ایق با رگا بس پناہ ٹس قول فریاء م تچھ سے یىی 
رتو ںکاسوا لکرتے ہیں ءٹچھ سے مخفرت جات ہیں گنا سے سسلامقی و چھنکارا 
جات ہیں :۴م تھ سے تمام بھلائوں کے طلہگار ہیں ء ہمارے مو ںکوڈور فرماءبمارے 
رن ےانتاردےءہمارے بیارو ںکوشغایا بپکردے ء ہھاریی حاجھتیں لپ ری فرا!۔ 

اے رب !ہمارے رزقی علال میں مرکت عطاف ریا پیش محلو کی شناٛے 
محفوظ فرباہ رق عحبت واطاعت کے سا تق گی بندگ یکی توق عطافراء تلق خدا کے لیے 
ہماراسی ہکشمادہ اور ول رم خرباء لی !ہار ےاُغلاقی انگھے اور ہما ےکام عم کر دےء 


۳ اض رظ رات 


ہوارے اعمال صن قبول فراہ ہیں خا مگناہوں سے با ہكقار کے لم وبربریت کے 
شکار ہمارے ا نے کی مسلمان مجن بھاتّوں کو آزادی عطا تماء ہتروستان 
کے مسلمانو ںکی جان دمال اور عمڑت وآبروکی تفاظت فرماء الع کے مسائُ لک ون 
کے من میں خی و رکت کے ساقععل ف ما آین یارب ال امن !۔ 

وصل اللہ تعا لی علىی خبر خلقه ونورِ عرشہہ سیّدنا ونبیّنا 
وحبیبنا وقرٰة أعیّننا حمّدٍِء وعلی آله وصحبہ أجمعین وبارّك 7 


راد شرت ئا 


۵ خارج پش یکامعیار اور اسلائی تعلیمات