Skip to main content

Full text of "مجلہ کلمہءحق,پاکستان,شمارہ16"

See other formats




دا سا:16 





1 2020 تماد الاو 2۱442 ج‫ ہے کت ٢‏ 





اہم مسمائل 





اک کل:001:.ا۵۹926091181٥3۰‏ ٥٥ا18‏ 
: بک جیج: 311٢73603092‏ 


رر مساق اڈ ور ں ےار یس 
۱ بضیضانِ نظر: 
پل خلا سلام وا سلسن تا ا محققین ء امام اب مت مجر ود بن وطلتء 
حضرتعلا موا نا مفتیقاری حافظ امم الشخاءا گررضاغا نتادرلءل ضر 
جل شی تہ اب شقت ہمظہ رای حفرت :امام انار بین فا نرامب بایطلہ 
حخخرت علا میم ولا نا الو حا فظقا ریم تتحستت خان قادربی رضویاکحنوی 
بل وا رےیعلوم لی حضرت نی ری“ تی انلم ہی شاپ مغ راحنظم ہنر 
. مر یقت ء رب رش ربجت ء رجنما توم وملت :ہا ج الش ربج 
ضرت ما موا نا منت یجراخ ر رضاخا ل ادرک رَحمَهُمْ الله تعَالی اَجْمَعیْن 
عتائن اقّل منّت کا محافظط 


- کا 6 َ ۵ ۵ پاکتنان 


رم وت شمارر:16 
درم2020 7۳ جُمَادی الاو لی 1442ھ 
رر :عہدامصضفی قاوری رضوی 


ایکل:ہ".اند٥و ۴۱٥۲٠٥٥۵929‏ 
شس بک ٥۵٥٥۸۵۸۹92:‏ ا 


کرای او لا ہور میں مو چجو دا سنت کےکتب نمافوں سے خحاص لکمرمیں 


منمون ڈگارو ںک یآ راء سے ادار کاممل انا ق ض رو ینیل 





رز لمعو 0و ۲ر چا_ :اس 


اہم ممائل حیوب مت علامہ مولا نا یوب گی خمال تقادری ہکان 
رضو یر وی رَحْمَة الله َعَالی عَلَيه 

مولوی امیا سکحسن پرد ہو بندیی علا اورسابقہاہلیہکی طرف ے لا یگئی 
سا یکودھو نکی نا کا مشش( :ا ٹم عباس تقاری رضوبی 
مولوی اشڑی تمانوی کی طرف سے مولوکی تام نانونی دو بندی 
7 ینم عباس ا دربی رضوبی 
ممولوگی طا ر تل د یو بندئ کی طرف سےحضرت وف لیے 
اللسلام کیگمتائی(ترء) مع اس تا دری رضوی 
عماموں کے دیو بندی ہونے سے ماتوں کے ا ہیارک رر مال 

ٹم اس ای وی 


77 ناعبدائلیعف ری رم اللہ علیہ کےنزدریک وا لی 
”گر خفاعت نے ٹر 08۲ 





جووت رھ موہ "۱ت مال 


ام مسائل 


واقتِ رموز دلو بنا ہعبار مّت موب مت ء ا زکی اہ یقت حظضرت 
علا میم ولا نا حا فظتقا ری مفتی عاا مہاپوالفر شث ال رض تشحو بی خاں 
قادری ہکات وی مردیاحوى رَخْمَة الله تعالی عَلَيْه 
(ت زی وڈٹیکیش !نم عباس ا ری رضوی ) 

کیافماتے ہیں مفتیان دن وش مین ان مسائل می : 

)١(‏ ہمارے علاقہ میس تطرق قوم کے لوک ہیںء مسچرمس و وشریف 
حور پر بآواز لد پڑ ھت تے اورساتھ بی نحعت شریف پڑ ھت ت لوک اعتزاش 
کرت تتھے۔ 

(۴)زیارت روضۃ اف رس پرجگی نکر تے ہیں- 

(٣)اورحیات‏ اخمیاء بھی د ولک ا ٹواکر تے ہیں- 

(۴)اوروولوک بھی کے ہیں :اگمرہع بھی ا نکی ط رح عباد تکر می تب مپھی 
اس ھتہ پان جا میں گے۔ 

(۵) اور پگ کے ہی ںکہٹردہخی کے نام پیش رآئن ش لی فکا نو اب کین 
انی خوالی ککرازاء ان کے یی پحن صیدق دزناء اس سے رد ہکو اھ فائکد ہیں 
(ع بدا شید خر یدارفوریکرن بن 2٣۱۱ء‏ یک تہاد) 


6 
ھ۴ 


الَجوَاب اَللَهُم هِدَایَة الْحَق وَالصوٌّاب: 





رر مفََا او پ0 ےر 0چ رس 
(ا) تضورائ رس صلی الله علیہ وَعھلی الہ وَسل مکی بارگاوانرس مخ 
زودوعلام شی لکرن کبت رین عبادت اورامر ال یک ینیل سے اورجوایک پار بڑ ھےء 
و لکنا ٹذاب پاۓ اورو لکنا محا فکرائے اس سے رو کے والکو کی بڈاکیلی سے 
اکئی بڑ ابر ہب ے اورعحے رل پڑھناذکر ای رقترل ہنا ےک ذکر 
رسولءذکر خداسے حمورہپڑ نال ححضرت قیفر ماتے میں نے 
زگر کُدابھ ان ے خداچامور وا 
الد کر حم خہیں, تی رت 
( دا قنشش رح ال پ نی ۱۷ :مل یسل مکابویء دا ناد پارمارکیٹءلاہور) 
وییزفرماتے مین 
کت نان تع لفن کاجیاں رے 
پھر کے تم روک کہ رں امت ول اللد گیا 
( راک نی پشش ,یہ اول پسف۳٭ارمطو یسل مکتابوئیءدانادر پارمارکیٹءلاہور) 
بل ان تمیراوراہ کم نے اضائة الفان“ اور ساب الووح“ میں ہے 
۳+ 
مَامِنْ مُسلم يُسَلَمْ عَلیٗ اَی صَوْتة اَييَ ابْتَمَامَا ای ”۷ 
عاشی(ا )امام الو پاببیاہن نے تاب ججلا لام“ میں بھی ایل عر یٹ در ل الفاظ 
میں اع کی ے: 
مِنْ عَبْدٍبُصَلَیْ عَلیإِلابَلَِیْ صَوْنَ عَيْثٌ کان 
(ررمے): ند وڈ زدد پڑھتا خواود کول ہیں ہودا ںکیآ داز تال ے“ 
( جحلا الام باب ماجاء فی الصلاة علی رسول اللّٰہ تو ءمطبوعهہ 
دَارالکتبء وکا ن۱۳ ا صدف پلازہ بل جگیء *پاور ایض آءأردو ھجم ینام الصلوة والسًّلام“ َء 
باب ال ۵٢‏ بمطبو اداروضیاءالریث ود روص لیٴْ ۱ آباد لا ہو رتا رب اشاعت:شضسوال 
المکرہ ۱۳۹۲ط/نومر۲ے۱۹ء۔متریم :فاضی مان منصورپوری خیرمقلد) (شنم قادری) 


عو 00ر فی جار _ اس 

(کتاب الروحء المسألة الرابعة:ھل تموت الروح أم لا؟ء “۵۹ء 

مہو دارالائغم بیروتء نان ) 

یی جوسلمرا نبھی جھ سو رود بڑھتناے نذا سک یآ واز ھی سے 

ود یں بھی ہو“ _ 

صا وَالسَلامْ عَلَيِكَيَارَسُولَ الله 
وَعَلٰ الِكَ وَاَصَعَايِك يَاحَبيّبَ الله 

سی 7 7ئ دک ری کر در پا رنب یی اے زظا(یریتے 
یں ہر ہمار یآ وازکون بار ال یکا شرف ای ذر ایی سے مل دہاے۔ پچ رکیوں نہ بڑ حت 
رٹِں_صَلّی الله عَلَيكَيَارَسُولَ الله وَعَلی الِكَيَاعَبيبَ الله 

اور ہوا زیر نے کیا فارہ بڑریگوں کے بے تنا از لو و27 ہی 
رشن :ند سپ این کاو نون گے ران بت رین :یر2 
آرآن۔ 

رَللَتَتَلی رََيرات قفتم شلی الاخلدرعل الا 

واصحابه اجمعین وبارك وسلّم 
الواب(۲٢):‏ 

اب کک وذ اکار دہابیہ دلو بندپء ندویء مودود بے الیاسیہ ا7 اریہ خاکسماریےء 
ریہء و ز ودپڑ نے والو ںکوند اڈ ز ددشرلی فکوروضۃ افنرسل سے ڈور پڑ نے ےت 
تر مے اورروضۃ اٹل کے سامح حاض ہوک رپ ھن ےت دکرتے تھے۔ 
1ئ وہکوئی لے یں با سے تھے ۔ اب نی لپ کے وہای اس سے 
ھی کر نے گے کی بھائی ان دہائیو ںکو کے دمیں اورشود برامرۂ زودشریف بڑ ھت 
راہ 


در نئاو وچ ھرں 8۔ نس 
و پا خی رمقلد بین دوہابی دلو بنديلة رادرس ل جَلّ جَلاله وصَلَی الله 
لہ لی لہ ادن سعدادت ڈشٹی جک 
الصّلاه وَالمَّلامُ عَلَيكَ يَارَسُولَ الله ا؛ریسانبی سلام عليكء 
یسارسول سلام علیکث پٹ نے اوکفروشرک تا میں ۔اور من امراجھدھماباشی جب 
ھرےءن اگ اکم لیوں الا ہیں اورپ اکرش تو 
اے زارۓ لاغ بی جھ پہ صدسلام 
اے عارفٹ رموز علی کے ہہ صدسلام 
ایم :کش رص ۹٣۳۔‏ 
(روزنا مہ الم عنۃ داگی ءن الاسلا مق رف ۳۹ء بات ۲۵ر جب ال جب ےع٣اھ‏ 
۵ اور ۱۹۵۸ء) 
اس یں ندایھی ےاورسلا تھی سے ۔لنان ان لی رکا معاملہ ہے :الا ژست 
0 9 
السلام اے روں عالی السلام 
لشن ارمے ای السلام 
السّلام اۓ 3ں ہے وا لی السلام 
خرغان جال السّلام 
(روزنا مہا جم دی؛چنالاسلا م تہ ص٥ف‏ ۲۷ء بایت ۲۵ر جب الم رجبے ے٣‏ امھ 
۵ اور ۱۹۵۸ء) 
0-7070( 
ےلوسب چا ھڑے۔ 


جلداورای شف رےیس دہ می نے ۔ 


در مائھنعو 0200 ری جاور _ سس 
سلام اے نا ز جمودویقاسمء ا ورواشرف 
سلام ہے7 قالع رٹ روز کی 
سلام ےل زم علم ضس اے سد ال 
(اروز نا مہالجم وید ددی ش اسلا مخ ۴۵ء بابت ۲۵ر جب ال رجب ے ے٣‏ امھ 
۵ اور ۱۹۵۸ء) 
ذرافور سے پڑ ےی تر دوکوندان نہیں ے؟۔ 
اورپ یھی ل۳ میس ے: 
السّلاماے چارہ ساز درو ت_رال اَلسّلام 
الام اےقطپ عا لمء اے اماصوں کے امام 
الام اے آسان عم سے او تام 
ال فف۹راق اےووک ین س کا تر ے اد فلام 
(اروز ناما لم دای تن لاسلا مخ ۹۳ء بات ۲۵ رجب الم رجب ے ے٣‏ امھ 
۵ اور ۱۹۵۸ء) 
کے انداکیں بھی ہیں اودوالی دھم پراودیی ببت سے شرکیات میں 
مرن بین اح دی پارگاہ ہے اسب جائز سے اور بارگاو رسو کیا معاملہ ہو اگ چہ 
خداتعا لی بی ض لوا“ او موا“ ککریگفرماۓ جگرد بای دلو بندی ندوگء 
مودودیی ما نے سے ا ٹا گی ہے یہ ہےدہالی تع وَالْعَاذالله عَالٰی وَالله 
وَرَسُوله اَغُلَم ۔ 
۱ ثواب(۳): 
تضوراکرم صلی ال علیہ ول الہ وَسلمٌادرتخراتانیا ےگرام 
علی نیداوعلیھم الضلاۃ والشلام گی حیات افدس نو ای روط ندے 


مع نمی لو 0ری جار :اس 
خابت ‏ ےکالن کے نیازمندوںحظراتتھداءر ہے الا تعَالٰی عَنهُملحاتء 
ق رآ نیم کےاندردوہ بڑکیشان سے یا نکیکئی نذنییوں ٤‏ رسولو ںکی حیات ںش 
سکویہہ ہوتتاے۔ 

لہ دنکھے حضرتں جن عق موڑا الا ہش عبدان محرت دباوی رَينسی ال 
تَعَالی عَنةُ رسالہپارکٴسلوك اقرب السبل بالتوجه الٰی سیدالرسل“ 
یس مر من ہیں : 

”وبا چندیں‌اختلافات وکثرت مذاھب که درعلمائے امت 

است يك کس رادرییں مسئلے خلاف نیست کەه 

آنحضرت صلی الله ََالٰ عَليه وَسَلَمَ بحقیقت حیات ہے 

شائبه مجازوتوهم تاویل دائم باقی است وبراعمال امت 

حاضر وناظر ومرطالبان حقییقت ومتوجھان آنحضرت 

رابفیض ومربی است 

(”سدوك اقرب السبل بالصوجہ ال سیدالرسل“ سشولٴالمکاتیب 


والرسائل“ برحاشی اخبارالاخیار“ء مطبومیتباگی “فی۵ ۱۵ء طبو امنور بیالرضور 
پیلشن ککپنی ءکپاشیدروڈءہلا ل ءا ہوں) 


تن اعلاۓ امت میس اس قد اشتلاف او رکشرت راہب کے پاوچوداں 
منلہمی۲ سک یکوچھی ختا فی سکرتخو راک مصَلّى الله عَلِيْه وَعَلی الہ 
رت یئ 
مت پرعا ضردناظ ہیں اورفریاد یو کی مد فان وانے ہٴں'َالْحَمَدِلله_ 
بل او تی روح البیان “ش ے: 


ان حیسا۔ةالأنبیساء والأولیساء حیاۃ دائمة فی الحقیقةء 


سئاو 8ر یی محٹ_چ ار سس 
ولایقطعھا الموت الصوری 
(رُوحٌ البیانء الجُزّء الغامنء خ۵٦۲ءسورة‏ اَلْأحَانء زی رآ یت :۳۷۴ ءمطبوںر 
دارالکب العلمیةء بیروت) 
نی یقن جحفرات اخمیا کرام واولیا ۓ عظام علٰی تَا وَعَلَيهھِمْ 
للا کی زن یی ابر یی زندی سے٤‏ لاہ کی موت ال نکی ڑم دک یمتح 
م : : 
7رر نے 
ولوکرہ الوھابیون والدیوبندیون۔ 
بل اب خودوپابیرد یویند یہ ک تیعم الاصت جناب ٹھا نو کی مییه ۔ ہے ال نکی 
تا بش رالطی بب ش۸۳ اییں ےک ہ: 
”رسول اللد صلی الله عَليه وَسَلم نےف رما اکہالل تھالی نے ز من 
را مکردیا ےک دہ اخمیا کے جس دلوکھا کے ہیں خداکےجیجرز دہ ہہوتے 
ہیں اورآ نکورزقی دیاجا تاے۔ ردای تکیا ا ںکواہن ماجہ نے۔دف۔ 
یی ںآ پ کا زندور ہنا ئجگ قش ریف میں خابت ہوا“ 
(نشرالطیب نل ا یتیسومیں ‏ صف ۰۸ء مطبو کنب خانہ اشاوت: العلوم مو مفقی 
سہار نپور۔ ابی ۲۰۸ ءمطہو ککتہلدعیا نو ىی ہجام مسجدفلائ فی رل ا یاء 
نی رآباد ہلا کی ۳ ادکرای ) 
بل اوراہی کے ای صفہ میس خھا کی بھی ن کا ےک : 
حلبٹی وم نے ححخرت الس سے روای تکیا ےک رس ول الش صلی 
اہ علیہ وَسلمم نے فراماکراخیا یمم السلاما نی قروں میں 
زندہ ہو تے ہیں اورنمازپڑ نے ہیں "- 
(نشرلطیب ,لعل اٹ نحیسو میں ص فی ۲۸۰۸ء مطو ےکن نان اشاوۃ العلوم ,مو مفتی 
سہار نپور_ ابی یف ۳۰۸ءمطبو کات ہمد عمیا کیہ جا مسج فلا فیڈرل پل اییاء 


مَائتاعو ےر جار سس 
فی آباد ملا کی ۳ ادکر ای ) 
او رز ”نف رالطلیب ٠“‏ ص۸ امیس ھا نو کی ن ےک اک : 
کرو یوار کے رور بت ارزى نف تل 
کیا ےک جیٹس بے پرسلا کیا ہے اتال بھ پرمیرئی رو ںکووایں 
کرد یتاہےہ بیہاں ک ککہ میس اس کے سلا ما جواب دیتاہول۔وف۔ 
اں ےحجبات میں ہہ نکیا جادے کبولکہ مرادیہ ‏ ےک می ری ژوں 
ہوکلوت وثروت میں تفر شی پش سطر کہ دیاش نول وک کے 
وق تکیفیت ول گوس ے افادہ ہوکرسلام کی طرف متوجہ 
ہوجاتاہولء ال کور ے و یرف رمادیا“۔ 
(نشررلطیب بفعصل اٹ نحیسو میں صلی ۳۸۰۹ء مطبو کنب نان اشار: العلوم ,مو ملق 
سہار پور ابی ٥ف‏ ۳۰۸ ءمطبو کت لدرھیا وی ء جائع مسج د لاح ءفیڈرل پا امریاء 
فی آباد ملا کی ۳ ادکر ابی ) 
تھا وی تی کامیان ے٤َالْحَمْدللہ‏ رب العَالین۔ 
بل سمار ےو ہایوں دلہ بن یو ںکی مج وراعمای کاب ا تا 
کا فی شیع ل٣‏ ایس پا چو میں سوا لکاجواب سے 
عندناوعند مشائخنا یب ٤ت‏ 
حيٌ فی قبرہ الشریفِ وعیرتہ صَلّى الله كَليْه وَمَلم دنیویة 
من غیرتکلیف وھی مختصةبه صلی الله عليه وسلم 
وبجمیع الائبیاِ صَلواث الله علیھم والشھداء لابرزخیة 
کماھهیٗ حاصلة لسائر المؤمنین بّل لجمیع الناس ۔ 
ہکارے نز د یک اودہمارے مارح کے نز دی کحخرت صلی ال عَلَيِْ 
وَمس ےم ان قرمبارک می زندہ ہیں ادرآ پک حیات ون ایی ے 


ہے ہے و“ ''۔ جحت 
با کلف ہوۓ کےےء اور ہہ جیا ت تی ےآ حضرت اورقمام انویاء 
لیم الام اورشہداء کےساتھھ۔ بر زی یں ہے چو عحاصل ےتھام 
ملمانوں بلل رس بآ دیو ں لو“ 
(ا ٢ے‏ ص فیا مطبوط دریطع ت ای ءد بی بند .ایا صف ا۲ مطبوء وا رالا شا عت٠‏ 
ُردو پا زار ہکر اتی ۔ ایض صف ۳۹ء ے۴ مطبوصہ اتمادائل السنت والماعۃء پاکتان ایا 
صف۳۸مطبو ادارہ اسلامیات۱۹۰۔ انارگیء ا ہور۔ ایض ص ف۰۷ ,مطبوم مکتیۃ صن ء 
۳۳ بن سٹریٹء أُردوہاژاں ا ہور_ ایز صلی ۳۳ مطبوہ ملت* (م۱۸۔ أرروپازاں 
اا ہور_ الپ ۰٣۳۰ء‏ مطبوت اسلائ کاب خخانہہ الم مارکیٹءغرڑنی مٹریثٹہ اأردوبازاہ 
لاہور) 
”اْمقَند“ بپپرےدودرشن و لی دلو بندی مولو یں کے دنز ہیں ءلچی افظ 
وہای کے اعدا ٣۳٣‏ کے موافن کون و بای ے جوا ںکوفلط و باشل بتاۓ- 
پا ورای کس ۱۹یس ہے: 


”'فصوصَلّی الله عَليّهوَسلَم عی فِی قبرِہ الشریف بتصرث 
فی الگون بافن الله تعالی كْ شاء۔ 
حرسعمّلّی الله عَلَي وَمَلم ا ناش ریف می زندوہیں بین 
خداوندکیکون (خمام چان )یس جو جات می تصرف فرماتے ہیں“ 
زالْ 3ے ص۹پ مو دض ای ء ور ارآ ٰ۸+اکطوب 
دارالاشماعتء اُردوپاز اکر اتی ۔ اض صفے ۱۸ء ۱۸۸ مطبوص اتماوائل النیۃ 
وائ راع ء پاکتتان _ الب ءصے ۱۳ء ے۲اءمطبوص ادارہ اسلاصیات۱۹۰۰۔ انا رگیء 
ا ہور_ الا ,صلی۱۲۳ء مطبو ملبد ین٣٣۳‏ .می سرء یٹ أُردوپاڑار لا ہور- 
ای]ء صلی ۲۳٢۱ء‏ ۱۲۳۷ء مطو۔ ملت* الم ۱۸۔ اُردو پازارہ لا ہوں ایا, ص٦‏ ۰ء 
ملبوم ا ساٹ یگشب خاتہءالمد مارکیٹ مخ زی مٹریٹ:+اُردوپاڑارءلاہور) 
َالْحَمْلله رَبٍ العَالین۔ 


ہو ہے ۔ دی" جد ےا 
جلذراپرٹشی کے اییٹ امام الو ہبہ ہن دکی معتر تن کاب * تی الا یمان“ 
مہو رتخراطائع بن کو کے ص۵۴ یس ے: 
”نی یی بھی ایک دنت ری میس لیے والا ہوں'“ 
( تقو “ا یمان ,ص“ص۹۷ء مطبوص درأضئ فاروقیء رٹ ٣۱۳۱ی۔‏ ابی]ء سے ۴۹ء 
مطبو کنب ا ا تی دلو بند۔ العتا ص٥۸۹‏ مطوے وارااشاعت, مقائل 
مولوبی ممافرخان کرای (غیرز ف)۔ الا صف ۹۳ء مطبوم المیکتبۃ السلفیدء 
یٹپل روڈہ لا ہور۔ ایا صا ہمطبو ابل سیڈائائل ادا لاجزر) 
معلوم ہواک وپایوںء دیوبتریوںء ترووںء مرودلپلء ازاریوںء 
ناکما بوں تعقو ں کا ا لکعقی ری ے۔اوراو رسپ دگھاوا ے_ 
پل اورائی'' تشویت: الا مان 'بنخراللطائع بج ۸ بیس ےک ہ: 
نپچھرخواہیوں بج کہ مہ بات ا نکواٹی ذات سے ہے خواہ الد کے 
دنن سے نوف ا سںعقیرے سے ہر رب ش رک نا رتا سے" 
( تقو الا یمان ,اہ لو د رشع فاروقی ددگی .۱۳۱۳ی الیل :مور 
کنب اہ راش می ء دلو بن ابی صفی ۱۹ء مطبو دارالا شاعتء منقائل مواوگی 
ممافرخا ن بکرا تی( رز ف )۔ اریضء “۳*۴ مطبوم الک ااسلفی ہتھش گل 
روڈہ لا ہور۔ ا۱ے مطبو اب حد بیث اکا دی ہشیر پازارء لا ہور) 
بل اورپ انی مس ۸۳ می سک اک ہ: 
پنپھرخواہ بوں ےکا نکا مو ںکی طافت ا نکوخودہنودرے خواہ لروں 
ےک اللد نے ا نکواڑی قررت جئ ی سے برطر ترک جات 
بواے نے 
( تق :الا یمان ص ٥۱ء‏ مطبوط وضع فاردقی ء داگی.۔۱۳۱۳ ہی ابی ص۸ مطبو کنب 
خاش راش انی ء دلو بند. الب ]ء“فرےاء مطبوصہ وارالا شا عتء متابل مولوکی مسافرخا 
کرای .( رز ف )۔ اب آبص ٣۳ر‏ مہو المکتتۃ اسلغی: مھ ل نل روڈء لا ہور۔الیتء 


در مَ ناو ےو ےر 0۔ غس 

صے ٣۳۰ب‏ مطبورابلي حد یت اکا دئی ہشیرئی پازاں لا ہور) 

بل اورائسی صن میں کک اک : 

کی کی موا لک ےوک ا سوا رکا از وق دج یہ 

سوالبڈشئمل اورو نشرک ٹیل پرابھ ے“۔ 

زیت ا یمان فی۸ ہمططوی در فارد دا ۳٣۱۳ھ‏ ال ]ص٥ ٦‏ ممطوے 

کنب خانہ راش نی ء دو بن ایز صف ۱۳ مطبوصہ دارالا شاعتء متقائل مولوئی 

ممافرخا ن بکرا تی( رز ف )۔ الین رص ۲۸ء مطبوم لمت الف ہشیش ل گل 

روڈء لا ہور_ابیت ]ف۳۳ مطبوط ابلٍ حد بیث اکا دٹی ہشیر پا ار لا ہور ) 

تو مد“ کاف یی 

نما ذن خداوندی کون (عَالمم )شش جو جات ہیں تصر فٗ/رتے ہیں 

بیکتقیددشرک ہے(۲)۔اوز لس مقسسد“ کے ہندبی مصا شین سارے کے 
یارۓک ورفڈال گسماہرے ت٣ت“‏ مت 
کوززست مانے ود ہکبھی ابیشچیل کے برابریمشٹرک سے۔ یہ سے ” فی الا مان“ 
کا شی اٹم ء جس نے اکا برداصاغر دلو بد بی مکردیا۔ 

”اه گیا عنار اں ءدتقا ر ال د بکھنا ہو لت رسائل میا رک فا حفظ 
الا مان دا من“ او لا جوا ب نشین واقجت ال مه“ اور ال مكن کی ہش 
ںحیتی نے ر 
ےسب ہے ہت سپ ہل ہے س بس سح ضس سے و ہں ہر ئیہو یی سو ہےے-۔ سحعح ت ج0 
حاشی(۴) مولوئی رش دکنودی دلو ہندگی نے ایک سوال سے جواب میں ”تی الا مان کے ھوانے سے 
ن٠‏ لک کیاے: 

”چنا تی الا یمان مم س کھت ہی ںکسخواہ اولیاکی بت یما نکر ےک خ تصرف 

گر نے ڈیںء ابہگان وی مر ےکہ خداتعالی نے انم وصرف داء دووں شرک 


5 
کچ 


وی رشیری نے ۹اءمطبوء شدت یکا ۳ نم ٭اُردوپا زار اق ا ]نم قادری) 


ٴ 


۲) 


در لا یناو 8ے س۲ر 8چ8۔ اس 

بل ہاں صدرجمع وش دیو ند جودعیا ہاش یکافق یکھی شے ۔ بی ہے لیت کا 
نیس ےکر 

”ا انھا, ےففل ق نیل بت منا سب ہے اگرمموت وحیات 

عامراوراخمیاء کے افتزاقی پراستدلال :كت وَاكم مَيموَ میں 

مند کے عطف سے تا مکیاجاےء نذ میرے خیال مل زیادہ قوت 

بیدا ہوجاۓ گی۔ غال ہیں حخرت نانونڈی نے بھی کے 

نیزاحادیٹ حیا تک یفخم بھی مخنقرااگکرہوجاۓ مزا سب ہوگا۔ 

وااستلا م .تن اسلا ف مین اچم 

(روزنا الم دی تن الاسلا م گر صف٢۵ء‏ بات ۲۵ر جب الم رجب ے ے٣‏ امھ 

۵ اور ۱۹۵۸ء) 

خلاصہ بی تضوراک صلی الله عَليه ول الہ وَسلمْکی حاتاتیں 
۱ تا ظاہردباہرے کہ شمنان رسو لبھی اک اٹ اردے رے یںء اک ر چنتہ اذا 
سےککھت ہیں۔وَلَاخوْل وَلَاقوَة الاباللہ_ 

بل او فو رالا بیضا “و ”ھراقی الا “بش ے: 

ََُوَمُقَرَرُعِندَالْمُعَققِیْن اه رصَلَی الله عَليه وَعَلی وَال 

رماع خی برق مُمتع بجمیع الملاذوالعبادات غیرأنه 

شف اضار غاب حر تہت الکامات 

(مراقی الفلاحء کتاب الحجء فصل فی زیارۃ النبی علی سبیل الاختصار 

تبعاً لما قال فی الاختیارء ف۲ وی دارالکتب العلمیةء ببروت) 


کی نم د بین وعلا ۓےمفققن کےنز دی ٹن متلہ یر ےک یتور رق جم 


در مم عو 0و ]۲ر 88۔ اس 
موی تاب کو 
باون جیا و یعلی ال رات ی٢٠‏ ص۲۴٣۳‏ میں ے: 
هُوَ رصَلّى اللّهُعَلي وَعلی وَالہ وَسَلَمٌَ عَيٌ یرزٌقء وبتَعمُ 
بسائِالمَلاذِء وَالعباداتِ وكَذَاسَائرِالنبیاء علیھم الصلاة 
والسّلام 
(حَايِيَةُ الطحطاوی علی مَراقی الفَلاح شرح نورالایضاحء کتاب 
الصلاقء “ف۵۹۱ء“ وی دارالکتب العلمیةء بیبروت) 
ڑآ پ زندہ ہیں اور ہرل یذ یز ےلت باب وت ہیں '- 
َال تَعَالی وَرَمُوْله الم -حَلی الله عَليه وََلی الہ 
وَاَصحابه رت 
اواب ۵: 
فلط و پافل ےنوت تم ہویچگی ء ا بکوگی غبوت کے رہ برغ یی ہیں سا 
اور چوعربہ وت ری ےکا فموگ یکر وہ کا شرےے ان بش سے اور بجی 
یادر ےک ہبوت داضت وعبادت ےن اص کین ہوٹیء دو ازل تھا یکافُل وعط 
ے۔وَالله تَعَالٰی آغلم۔ 
اواب :٦‏ 
تمہ ایصا لٹ اب سے مبیت موضرورفائکدہ تا ہے۔ خدامام ال پاب 
اس جیل اوہ ٭ص | تر ص٣ن‏ میں کک اک : 


اموات را بلاریب ثواب عبادات احیامیرسد 


(صرا یتم فاریء اب وم ء نل اولہ افاد::ہ صفی۵۳ء مطبوم الک 


در مواتاعی پک0 ]رن چا- _:س 


ااسلفیت یش تل روڈہ لا ہور۔ ایضآء أُردوتر جم :یہ ادار ”نشریات اسلامء 
ُردیپاژاں لا ہور۔ الضاء ُردوتر جس ص فی ے*اء مطبوع اسلائی اکا دی ٭٥۔اُروو‏ 


پاڑارء(اہور) 

با وی۳٢‏ می سککھ اک : 

ونه پندارند کە نفع رسانیدن باموات باطعام وفاتحه خوانی 
خوب نیست چه ایں معنی بھتروافضل۔ 

((ت جم اور بیگگ یمان نکر ی ںکفوت خُد ولوگو ںکوطعام ے فا ۷رہ 
پیا نااورا نکی فا تمہ خوالی ٹھی ک نیس ہے۔ اس لے هک ےکا م نذ بہت 
تراوفل ہے )) 

(صرا نمیم ءفاری ء باب ڈوم بصل اول ءافادو:۹ ٥+,‏ ۷۴ء مطبوم المکتیۃ ااسلغی: :کن 
کل روڈہ لا ہور۔ ایا ءاُردوتر جم رف ۸۹ء ادارونشریات اسلامء اُردوپازارء لاہور- 
ا٥ف‏ ے۴ اءمطبوط اسلائی اکادٹی ۰٭٢-أُردوپازارء(ا‏ ہور) 


انیل کے لی رسال 'الاقوال اللامعد“ او اولیا گرا مکی نز رو 
یا او اش عزیزاں“ او نل وطعام نذ رو این “کو کے _ 

وَالله تََالی وَرَسُوْله آغلم . صَلَی الله عَليه وَعلی الہ وَمَلَمَ۔ 
مل :)٢(‏ 

کیافرماتے ہیں علماۓ د بین اس سے میس جوصب ذیل ے۔ 

یس جج اکنندہ لوضف ول ی مرکا کاب رالعہ باٹی بعت شی میاں سےآ رج سے 
تین سا لکل شم یھی میس ہواءاورداعہ پائی دی مصض فی میاں کے بعطن سے دولٹرکیاں 
ہیں رایعہ بائی ڈیٹ سا ل ٹل جھ سے ھک ڑ اکر کے اپنے کے چپ گی ء ۵ اروز کے 
بعد بیس اپٹی ہیوئ یکو ین سس را لگمیاء میس جس وقت سس را لگمیاء نشہ می تھا ءمیری 
بی آ نے کے لیے تیانشی ءنیان ہبری ساس اورصس رکیینے کے لیے زاراس جے۔ 


ما عو 48 رےں ھا اس 
میرے اورصسر کے درمیان پل گن ء میس میں ہو ءال وفت میرک زبان سے ےہ 
الفاظہ مککےء اگ رآ پ ابی لک یکوئی کمتتیں کے میں طلاقی دے دو ں کات ریف مامیں 
لاق ہوٹی اتیں؟ 

اف وی ئرء جا بی عو می٣‏ 

الجواب:اللهَمَ هِدَايَة الحَقٍ وَالصُواب۔ 

برتقزیر صدق سال رکم شر مب رط قکیس ہوئی-وَالله تعَالی اَغُلم۔ 
مل 

کیا فرباتے ہیں علاۓ دبین دمفتیان شر من لہ ذ یل می کرای مشش 
کے رعرر نت وکا ئٹی اف ری زس 
فلطیاں اورپ ولیش ہہوئی ہیں۔ائ کی دک لبھی برد یا ےکہدوانسان تے(معَا ءال 
رص کےثتل قکیاجم ہے؟ (اساق ابر ڈیرکمتری تقادری رضمو “تی را نادا) 

الجواب:اَللَهُمْ هِدَايَة الحَقٍ وَالصٌوّاب: 

ھی ڈذکود چپ ابر فرب دبددین نگ رق رآ نکریم ہے ہنی مسلمانو ںکواس 
سے پچنا زور ہناضروری سے جحسورآق رس تر الم صلی الله عَلَيه وَعَلٰی الہ 
وَمَلَمَ بجی الاخمیاءءرسولوں کے امام مکھبو بن خدا کےسردروسردار رم“ مال لن خی 
نم رب العا ین ہیں صلی الله عَلي وَهَلٰی الله َو 

بل خدانئ کےعلاوہ نی کےتول وڈ لکی پروی مت پبضرودی ‏ ےک یف مایا: 

گرا کر لک اعت 

((ت جم کنڑالایمان :”عم مافو ال کااورعم ماورسو ل؟“'۔-)) 

نأ یکوفلطیو کی پروی بھی ضروری ہوی نوہ ایمان داسلام ہوا اگراہی 


وردرٹی؟۔ 


رر عو و ۲ر جار اس 

بل ارشاوٹ ے: 

وَمَنْ بط الله وَرَسُوْلَهفقَد فَازَكَرْزَا عظیْمَا (0َغرب:ء) 

رھ کت الایمسان :'اورجواشراوراش کےرسو لک فرمائبرداری 

کے ءال نے ہوک یکا میا ی پالی/')) 

رف ٹیم ہے۔اورتضورانورصَلی الله لہ ول اللہ وَسل مکی ہجروی 
میں می ہرایت ے۔ 

اھاتے 

وَاِنْ تطِیْعُوَه تهَدُوْا (اََوْر۵۳)۔ 

زر تو مت اسان او راگ رو لیف رما ار فکروۓےٌ را 

پا “)) 

توراق رس صلی اللہ عَلکيیے وَلی الہ وَسلممکاطاعت مد ای 
اطاعت دے۔ 

ا رت 

َنْبٌُطع الرّسُولَ قَقَد آطا ع الله (لِعء:*۸)۔ 

زرھبر کت اسان نجس نے رو لاحم مازاء بے شک اس نے 

ا ہ۴ا۸م۸:“)) 

او رتضوراکرم صلی الله لہ وَتھلی الہ وَسَلمکی پیرو یک رنے سے بی 
ادتعا کی رضاحاصل ہوٹی ہے۔اوراسی کے کیہ می ںٹحومیت الہ کا تح وخلحت 
عطاہوتاے۔ 

بل ارشادعالی ے: 

إِنْ کنتم تحبْونَ الله فَتِمونیْ يُحِيكُمْ الله (ل عِمُران:۳) 


در عو 0 ٹر جار سس 

((ت جم کن الایہمسان :”ا ےحروب ات فرمادوک لوگوااگرتم اللہ 

کودوست رھت ہہو من می رےفر مال بردارہو ا٤‏ ءال یں دوست رھے 

گ۴" 

اورتضوز يکری صلی الله تل لی الہ وَسَلم کےاقوال وافعال امت 
کے لی ےا سوہ حتہ وشقت نبو بگھہرے۔ 

٭اشادعا :قد کاو لَكُمْ فی رَسُوْلِ الله أسْوَةُ عَسَنَةٌ 

)٢:باَرْخَلا(‎ 

(( جم سن الایسمسان :نے گن ہیں رسولح الدکی پردگ 

پپترۓےٴ))۔ 

7ر غدسالیا تن کور کےقیرے پر بیغابت ہواکررسو لک غلطیوں 
کی پیردکی جس خداکی رضاےء اس میں ہداریت وضحبات وفلا ح ونو زگ ہے اوروہ 
خاطیاں امت کے لے أسو6 نت اورشقت رسول ہیں( سک االلەم ب یکی بعشت نی 
اس لیے ےبد وس بکامطا ہواورسب اس کے مع ومنقادہوں_ 

بلارشادباریے: 

وَمَالَرسَلتَايِن رَسُزْللَليْطا غَ پان اللہ (َےءہ٠)‏ 

(زغس اسان ”اور ہم نےکوئی رسول نکی انگراس نی ےک 

اد کےعھم سےا کی اطاعح تک جاۓ'“'-)) 

اتا اعم ہی ىہ ےکہررسو لکی اطاح تک جاۓ اونٹیں خکور کےنز دک 
رسول اط کا ر ہیں نو الیل تھالی فی ہوگاکمہاس نے نف اکا ر کورسول برنایاء راس 
کی پوری وی پروی اعم ديا فو اللہ نک ۔ رکندہقیدہومودودیو لی نے 
اورتھا نو بی مو بسن دید بندکی و عاشتی ای میرشھی و شھ جالندھری وم رزاجرت وڈ 


ماع ےرس جار :اس 
نمیا و و ہس نے پچھیلا یا کرالن لوگوں نے ق رآن کےت ے می ساد ماراکہ 
ول 27زور( فرر کک زاس وا کات 
مسسمی بنامتاری' دیو بندگی تر جو ںکا آ یرش“ 

وَاللهتََالی وَرَسُرَْه لم . صَلَی الله لی عَليِ وَعَلٰی الہ 

7 

متلہ:کیافرماتے ہیں علاۓ وین ومفتیان شرجم ین متلہ ذیلی می سک 
زی جھاپے آ پکلعم افط اورادیبء ال بنا ےکنا ےک ہکافر ور کفکوہ 
چا دوب کو باسور کو ہو جج ہوںء انی اف رکہنا جا یں ۔ دنل ٹیں بتا تا سے 
کک کیا معلو م مم 003 امیس ء ای طر نت شیا حدکنگوزی ءا شنلی خوادی, 
تام اون ی یل اھراشأشھی یع کویھیکافردمر نے سے اپ ےآ پک 
روکناےہ ا کی دییل ىہ بنا تا ےکس شایدا نکوئمرتے وق تک تعیب ہواہوء اب 
سال می کر امرف ک ےت کشم َتنُوْاِسالکتاب توجروا یوم 
الحساب۔(امحاق ابراجیرکحتیءراناوا) ۱ 

الجواب:َللهْمَ هِدَايَة الْحَقٍ وَالصٌوّاب: 

زیدا تام شرعیہ ے جال اورگراہ وگھرا وگرے۔ اگرواقف سے فوخ تم 
کاو بای دیو بندیی ے کیڑنک نس طرح ملا نکومسلما نبکھنا ضردربی ہے ای رح 
کا رکوکاف ربھناضروری تھے جب ککفریٹش سے کافرے جب وب ۔کرے 
گا مسلما نکہاجا ت گاءز بدگی ول نو خودکڑیں یتم ہوچاٹی ےک و خووکوسلران 
وٹ سے و مر تے ون تکفرکر کے کا ف رر ے۔ وا کا مطلب بے 
ہواکہ یلما نکاسلما نکہوء نک فرکوکافرکہو۔ شا اللہ۔اورظا ہر ےک جویسلدان 
کیسلران ےہ دوبھی اسلام سے نار اور ہکا فرلوکا فرنہ چھے ودبھی اسم سے 


رز مُمَ َو پچ ور ں جٹچ۔ یس 
مارخ۔ اورجورشیراحرگنگوہی واش فی خوانوی وقاسم نا نو ی بل اح ای ابنے 
کرات تقطعیہ معقینی کی وجہ سے جو حفظ الا مان رع ء۸ و ران فاطے“ 
ص۱, وف ٹوا فذا ۓےگنگودی' و تین رالاس“ ص۳ و س7 اویش ۸یس مندرج ہیں 
ا کی ہناپکافروع رج ہیں ۔ ان طواخمیت ار بعہ دہابیہ دلو بن یہ کےکفرات قطعت ہکی 
وشیرت ہکان مرمات سے اذ ہک یکوئی خرفیسء پرکفرس کیکر پچھایھڑاۓے 
گا؟ز بدمرزاخلام احمرقا دا یکوکیاکتا ے؟کیا دوھی مرندنیں؟ اور اگ رم رن رانا سے 
نو وہاں لوب کااغ] لو میس 06 اوراگرھر زا کوگھی مسلمان انتا ےل تودہپایوں 
دیو بنریوںء مووودیوںء اترارلوں کے فنووں سے کافرٹ رّردے۔ ببرعال 
زید مرکوارے و ںوورٹورر ہنا رودکی ہے اککابر دہاببید لو ہنی نے ےو خرن ے 
نام ناوت جھوں می سکفریا تبلرد بے ہیںء خداتھال یک ےلم او کرک نے والء 
نال لے والا؛””دائوں عیلے والا :”فی بکرنے والا ”دوک د ہے والا “یھ 
دیا۔اورحضرت تقوب لہ السلا مک برانا مل کا ر؛ برا ناواھی“اوز نبرا ایی“ 
1 ساد عضو کر واق یس صلی الله عليه وَعالی اللہ وََلم اکا ک 
فو اک ا ےر کر انل ری خقول نان اور 
”نی رذ ب او ”یمان سے ہرز کورا)بھیکعدد یا وَالعبَاذباللٰه تَعَالی۔ 
نے دی ندرک تر جمو کا آرنشی“۔ 
َالّه تَعَالی وَرَسُوْلۂ اَغْلَمْ . صَلّی اللهُعَليه وََلٰی ال 
وَاَصْحَابه وبارك وَسَلم۔ 
(منقول از۔ :ماجنا ٹور یکرن بھ پگ شریف۔ بات ما اک“ برا۱۹۷ء) 
وٹ بمقن میں جوتر ام رائم نے شائل سیے ہیں ا نکوڈ یلو سین(() یش درح 
کیاے اک راصصل سےاتقیازرے۔( جم تقاوری ) 


ز_ عُعََا تو 8 ےرس جھهھو۔ر ِس 
قیا:ا 


مولوئی لیا سکصسن پرد یو ہندیی علااورسابقہاہل یی 
طرف سےاقائ یکئی سیا یکودعون ےکی نا کا یش 






ینم عباس ا کی رضوبی 


قارکی نکرام دید بنری فر 2 کی جانب سےآے روزتضور پچ رنور ایی حضرتء 
ام بل سنت بمچد دائشمء امام ءعلامہمولنامفتی الشاداترضاخالرَیضضیٗ ال 
تع سالےی عےے کا ذات بابرکات کےنلاف دحل وفر یب کا مظا ہر کر کے 
ڑا چھاا جا نا ہے کی وجآ پکی ذات دالاصفات سے بد ہیوں پانفوی 
رق داب کی دوفوں شاخوں ]شی خی رمقلد ین او اہ “کوکیٹنے والی وی ضر ہیں 
ہیں ششن کے اٹ سےال نکی فیک شاف جیں ابیھی بھی دیو بند سے تحیدکک ستاکی د تچ 
ہیں اوررئقی ون اتک مال دی 27 ول وفری بکوجاری رک 
ہو اکذب الکاذبینء مکارزمانہءدگل وف یب میں مضفردہ بوقت مواخذ و اپتی ہی 
لے اوران ال انا وا لے تو 
شرو حکررگ یھ یک۔ا لی حضرت امام اح رضاخان وَضی اللہ عَالٰی عن کےغلاف 
مر یش ماب تیارہودہی ہے۔۔رائم نے متنعددبار جب پباعلان د یھت زرل کے 
طور پر خیا لآیاکہساجدخان دیو بندی کے ٹوا مولوی الا سکسن دی ہند یکیعلی 
حیثیتء مم وصوف کے خلاف دلو بندیی علما کے بیانات اورا نکی سائقہ اہلیہ کے 
کشافانی خط بشقل مواوکوای ک تا بکی صورت میں ترتیب دیاجاۓ تاکہ 


ر ےئاو 0 رسس جاور _ اس 
دو نیو ںکو سنہ وکھاباجا کے یوں راتم نے اپٹی دی ڑھی مصروفیات کے سماتھ 
ات ھکتاب ”مولوگی الا سکحسن دلو بنلدگیء ای ےکردار ک ےآ سی میس گی کام 
رک ںا ان اح یداو اعت کے کے 
پرلس رواشہکردیا۔ جب کاب شائع ہوک رآ کی مولوکی امیا سکحسن دیو ہن دی کے 
عقیرت منددایبندگی کیپ میں آگ ملک أشھی اورافرانفری کی لگئی۔ اعلان 
ہونے گ ھکاس سکاب کا جوا بسکھھاجار پاے او رجلد شال ہو جات گا ۔ تچ رجب اس 
کاجواب مطظرعام پآ ياقذد یھ اک دوست قندھارئی کے بردے میں مھا ان کا 
بدذا تگال باز ملف ساجدغان دا بندی را ک یساب کے متعددمتقاما تکاجواب 
دنن سے عاجنزدہاےء چوک ہمولوکی سرفرا نکی ڑوبی دید بندکی کے اصول سے اس کی 
لس تکی ول ہے ۔کتا بکو دنہ سے ریکھی معلوم ہواکمہ یہ پلیس می اع نیس 
9 مآ ۰ر0 
تا فاے ائے نے یاک ےجہل بر س ئل ےک 
مولوئی الا سکحسن کیٹتحعلق رام ک کاب کے جواب کے لیے دلو :دک لک سے 
کوئی بندوجھی اپنے اصکی نام کے ساتحدسا نے سےآنے کے لیے تار ہوا۔ بیہا تک 
کہ ساجدخان دی بندی (جشس نے ماشی میں مولوی ال یا سں محسن کے دفاع یں 
دی ود ہکا ڈکروائی ۱و ہی ا بک باراپنے حدوح کے دفاغ اوررائم ک یکتناب کے 
جواب کے لے اپنے اص٥کی‏ نام سے ساس آان ےکی جرام تکمرنے کے بجاتئے” دوست 
شقدھاری“ فی نام سے سان آیا ناش افھار باتی رے۔ 
مولوئی ال یا سکس دک بندکی سے ایک مطالہہ: 

مولوی الا سن دیوبندی سے جمارامطالبہ ‏ ےک ہآپ کے دفاغ ٹش 
دوست رقنرھاریی“ کے نام سےتتاب ” ملم اسم حضرت موا ناش رالاس 


رر ممَ او 8ے ٣ر‏ وہر _ اس 
سن پرہلزما کاشققی تنققیدری جائ: “شا ہوئی سے کیا آپ ا سکاب کے 
منررجاتں مل طور مر شف ؤں؟_ 

رائم کےاعتراضات کے جواب می ڈشام باز دلو بندیی ٹو لے جاب ے 
ا ب کک اح ہونے وا یت ربیا تکودیکھاجاۓ فذدہ جوابا تگالی ناس ےکہلا ئے 
جانے کے خی ہیں ا نگالی نا مو ںکو دک ھھکرسوں ہوتا ےکہ دای ان دید بنلد یں 
کی ڈم پہ چا ول درو دیاگیاےء جس کےبردیل بیس با مار تے ہیں ۔ می ںگالیاں 
دےکر ین شخام با ز'اپنےفرقہ کے ید ہھزا نج رکنے دانے دا بند یو ںکویملستن 
تی ںکرستے۔ ا سکاب می ںکالیو ںکی بنات د سیک گنا ےکہ دیو بن دکاکٹرئل 
:نس کےتف نکی بدیدہرطرف کی لکئی ہے۔ یج اس موق پرمولدمی 
شیریعنالی دای بندری کاوہ شحکوہ با دآگیاء ننس میں أُنہوں نے مولوبی بین اھ لی 
دلو بندگی اوران کے پھنو اد لو بنلدی علا کہا تھا : 

ور مدارس کے با آپ کے شاگردآپ کے مر یداورد یی باعل 

بک زدین واخلاق می ت یت پانے والے ہیں ٤ذ‏ را اھ تھی تد بت 

گہاُنہوں ن ےکیا بج کیا ہے۔ دارالعلوم دیو بند کے ران جوگندری 

گالیاں اوشٹ اشتمارات اورکارٹون ہجار ےمتحلقی سیاں بیے ہیں, 

جن میں مکوا ایل مم ککہاگمیااور ہماراجناز ہ ھکال گیا ۔آآپ حضرات 

نے اس کاب یکوئی نار کیا تھا؟/ پکومعلوم ےئن وتے 

واراللوم کے تام رو اگ ررض سے آاقلا ا ورک 

پالواسطہ پاپلا وا۔ لہج ےنسب تاؤز رک تھے وارالعلوم کےطابانے 

ےک ین ے علف ا ٹھاےء اور وہ نی اورگنررے مضائین 

میرے دروازہ ٹیل یچ کہاگ ہار ماں ہو ںکی نظ پٹ جالی فو ہماری 


در مت ؤتاعی 0ے عحرمں چا اس 
میں شم سے ٹجھک جات مکیاآپ میس سےصی نے بھی اس 
برعلا تکاکوگی مل کہا؟ لی سکم سکاہو ںکہ بہت سے لوگ ا نین 
کات بغخیل ہوتے تج مریت اخباردی“ آ ج کل جومیری 
ذاتیات پرتہابیت رکیک مضمای نکر پا ے کیا آپ حقرات یی سے 
تی نے نزادریکااظمارکیا؟اس برس بکی ہیں شرم ےجھکیس ہوئی 
اس کے بپجہ سطربعدمولوی شی نی دب بندی نے مولوکی مین اص یر ی 
دو بندکی اورمولوکی حفظ الرحمائن دیو بندیی اوران کے پھنو او ںکوعخا ط بکھمر کے ال نکی 
ج مان خا موگی ران الف ظط می سشکو ہکیا: 
پ حعفرات نے ھی ال لٹ ھمکی چزوں ے جوہمار تا نک یگئیء 
اکھاربززاریی کی لکیاءنڑسی برعلام تک“ 
( کالرۂ القد ن٣‏ فا۲ا مطبوے دارالاشاعت دب بنرشٌَع سہارور) 
٭ می بات مولوکی شی انی دی بندکی نے اپ ےتوب بنام مول وی 
منطورلعما نی دای نی یں ان الفاط می کی ہے: 
”لن وارالعلوم ((دیبن)) کے طلبہ نے ا تخس ((کینی شیریشنی 
دلوبندی)) کے جن میں دہ ع کات یں إدار ےکا صرراوران کت 
اکا ستادو ںککاپلا واسیلہ یا پالواسطہ ا ستادخھاہشل اورکن در یگامیا ںکک لیے 
کرگیئیںء جو بازاری لوگ بھی استتعا لغ ںکر سیت کارٹون بناکر 
لاےء جنازے کا نےء اس پلک اک ابو تج ل کا جنازہ جار پا سے مکھروں 
کا ذکر یکیا۔ یندرہطلبہ نف کے علف انٹھاے مل ہکی مسجچر کے 
ادردپوار اھ اک اس مس ریش نماز جاننی ںکیوکہ فلاخ اس میں 


ناو ے00 6ر ےر ٣س‏ 
نمازیڑہتاے۔ ہپگی داڑھیوں اور لی ےگر نو کا نراق اُڑایاء ان کات 
کو کہ ((وارالعلوم دلو ین کے )) ہت سےا ستزاداورذ مردارخشش ہوتۓے 
تھےء اورایے :الال مفمدو ںکی پُز ورابیت دہال ((دارالعلوم دیوبند)) 
گیا سب سے کی ذمددارف نے پرملاکی جس کےایک رکن ا بآپ 
بھی یں مک یمان ترفن لاخ تخل :الاک ان کےکنٹزون 
یں جج 
(انوارعثالی صفی۵امطبوے مکتبہ اسلا می مولوکی مسا فرخغماضہ بندردوڈہکرا تی ۔ ھرخب 
مولوکی انوا ران شیرکٹی دی بندی۔ ایا صفے ۱۸ء ۸۸امطبو کہ دارالعلوممکر اہی - 
جد باراشاسع تال ۳۰۱۳ء) 
وا اس 2ے ےکن یکن ند 
اققاسات سے فا ری نکمعلوم ہوگیا کہ 
ا۔- دلو بندی فرقہ کے مرکز یش پڑ جن وانےطلررنے اپن فرقہ کے ٹغ الاسلاع 
وی شی تال ون کان نف لا ان وی ج کی لی یزرد 
رت 
۲- وارالعلوم دبوبنر ص۶۲.). ۰۶و سے مولوبی شی عثالی دای بند یک کر نے 
کےعلف| ٹھائۓ گے ۔ 
۳ وائرامعلوم دیو بن کےطلبہ نے مولوبی شھیر فی دیو ہندی کے خلاف ہر حکی 
,2ت 
۴- وائژامعلوم دلو بن کے ام زم دار اپنے دیو بندئی عطل کی ان ذبیل حرکا تکی 
ُشت پنیا اوران پر نون یکااظمہارکرتے تھے بی وجہ ہےکرانہوں نے اپیے 
لوان بدمیٹربیوں ےکی روکا۔ 


در سئاو لوا ۲رے ھ)۔ یس 
ساجدخان دیو بندٹی گی جائب سے دی جانے وال یگالیوں پرام کے ہی ںکہ 

جب دیو بندی فرقہ کے مرکزی دارالعلوم کے طمبہاوران کے پشت پناہ دیو بندی 

اسا ذو کےشرسے ا نکااپنا مزکومڑ شی الاسلام مولوی شی ای دی بندی' “فو یں 

رو سکا:ق ہکس ط رر ا نکی ز پان کےشرسے ک سکت ہیں ؟۔ 

گیالیاں د ےک راپی راس پکالناء اپنے اکا بر ک ےکر فوں پہ پردہ 


ڈا لن کی نا کا مکوششس ہے :سا جد مان دلو بندی 

پل مولوی ال یا سکسن کے نا کیا ممولیليِ صفائی گال بازساجدرخان دلو بندگی نے 
اٹ ی کاب می ںگالیو ںکی بو پچھاڑکی ہے ء عالائکمہ ہچ یگالی باز اپٹی دوسرییکتاب میں 
- 

”نوہ گالیاں د ےکا پی گکٹراس اورا نے آ با واجداد ک ےکا لےکرنونوں 

پہبردہ ڑا ل ےکی اکا وش ں کر کت میں“ 

(نواب ام درضاان فاضلِ پر یاوی: ۳٣۲‏ مطوء جمیۃفسسل الستتة 

والجماعةہ کرای اڈل:۲۰۳ء) 

پنزاہ مبھی کے ہی ںکہمولوئی الام سکسن کے ولیلِ صفائی دوست حھقنرعاری 
]نی سا جدغان دیو بندی نےگالیاں دےکراپنے مکل کےکا نےکر قول پر پردہ 
ڈا لن ےکی نا کا کوٹ کی ہے۔ 
ساجدنمان دلو بندکیکیطرف ےگا لیاں ٹیا لن کا إقرار: 

ےا مجر مز یہ راکو ٹ ینا مکی ئی ڈ یکین سکبک اٹ بھنوان 
”لاادیررحم ےہ نا 22۷ َ می انی ایسٹ ہپ ١٢۲۹ا‏ 
۰08ای لی لڈکی دا نے اک دلو ہف ری نے سا جدخان دلویخ یکا گگاکی پا آلےکر 


رز متا ای لو ص۲رس) جچار۔ اس 
اک ایک کلپ ہیں کییا|نس میں موصصوف کن ےکا ےکہ: 


جومناظھرے ایا زچٹی ءا سک ماں من یں نے فو نکال برای کک ہے 

وونی نبیٹ پرموجورے“ 

اپ کلپ کے منقولہ بالا جےکاجواب دتنے ہو ساجدخان دلو بندگی نے 
یو ا گال باز ہون کا اق رارکرتے ہو ےکھھاکہ: 

”گی بیگالیاں بس نے فرت عطاءالڈشاہ ار رَخْمَةُ ائڈے 

لکیہ کی وا سےککھی ہیں ءکیونک حضرت شا ہگ یکی نا خلف اولادنے 

حضرت شور تحيری مہ اہ تل کی جوسواخ حضرتشادی 

پ4 بچھا پی ےء اس میں ےک ساجیو لکون کک نے پہ مادرخھاہرماں مجن 

گی لال دیننے۔حالہاس دعدے پر ھیرے مہ کشا ہ گی کےغلاف 

نع زی ری 7ے بین ات یا جاتے۔ ان تن جلادہ 

الوب رصد لی سے بخاریی ٹیل ببالغا ظا میں :امسصص بذراللات ۔ 

”لا تک فرب چویں'۔ بائی کے لے واسلاع“ 

(سماجدنمان دا بندیی کےا سکم فکاسک بین شا فتفوطے ) 

بیہاں ساجدنان دا بندکی ن گا ی با زکاجواب دتے اس۷٣‏ طور پر ے 
ککھا ےک بیگالیال اس نے اپنے اطی رش بجعت مولویی عطاء الیل شاہ بناریی دیو بندی 
0 

اس کے برا گ٣‏ ینف سا جدخاان دی ہندیی نے اپنی مھا گنی گی ( کہ 
ین ا کو نان نے حون ای برای کک ردی ہے )کا جواب دینئے ہے 
مز پا اکہ: 


در مک عو 0 ور 0ار یس 
ضس کی ماں بن ای ککرناوالڈرمی رےعلم می ںی سک گی ہے البنہ 
ا لکوزم کےطور یرتا ہو ںک یڑک یکی عالت ترک یکردینا“۔ ای معتی 
میں نے ا سکواستعا لکیا ے“۔ 
اس اقبا سکوسانے رت ہو ۓے ہیں کی کہ رق 0ي 
ساجدنمانع دیو بندٹ کی جوئرکی عالل تک جاارہی ےہا سےساجد نخان کے الفاظا یں 
یو ںجھ گکہاجا مکنا ےکہ: ”اس جواب یں ساجدغخا نکیا ماں کین ای کک چاردی 


2 


ے۔ 
دا بندگی عالم حافظ عبیدرائشدکی طرف ساجدرخان دلو ند یکی صفات 
رذ یکا میان: 
جلاولوبندری لک ےن رکئے والے حافظ عب راید (ابن الور یجان 
عمبدالخفور الکو ئی )نے سا جدخخان دلو بندکی کےغلاف” مو رگا می بازوبدذہاانءنام 
پادمناظرسا جدخا ننقشبند یک یگتا خیاںہ چانتیں اورضاضت کے نام سے پا 
حوں میں مقا لگ وکر انیٹ پر شا کیاہے۔اس مقالیس پپیے عد یٹ شری فک 
ری می سکب بمانی اودبدزہانی کومنافن کی علامات مس سے تا یاگیاےء 
اوربچلرثای تکیاگیا ےکسا جدخمان دلو بندکی ان صفا تکاحائل ہے۔ ا سکاب 
سے سا جدخان دلو ہندکی کے بارے میں چچنداقتباسات ملا حنلہ یچ : 
(۱)”'شاید ریف ب قیامم تک علامات یل سے ایک علاممت ےک ہآ کل جوسب 
سے ڑاگالی باز ہودنا ہے د ہا ےآ پک مناظرر الام“ ھن شرو حکرد یت ے' 
(کتاب پور خیہ) 
)۲۲ ”بل یعلم پریہ با تگجھ یع ینمی سکاب با لک ببعادت سےکہ جب دہ دلال 


متق یشحو 0 رس در رس 
اب ای تس رت نے فا مت من کرک لج او رکون 
پآجاتے ہیں۔ چنانہ ای اپنے آ پکوڈپ ‏ مکی ج نے والے گالی 
باز نا ظھر کسی اور کے سات میرےصھی اختلاف کے ریل میں بے بھی 
” حخیطا نکاگنرہنطفۂ گا لی دکی۔ حا لاہ تاس بدز پان کے ساتھ ہما ر یکول 
بٹ پل رج یھی اورنہبی یہ جمارامخاطب تھااورتہ ہمارااس کےسا تج وکوئی کالہ 
ہور پا ھا کاب پرکو رن ۵) 

(۳) ”نوہ کے ہیں نا سک تن کے اندرجہوتا سے وئی پچھلککنا ہے ۔(والتذی 
خبث لایخرج الانکدء ان نے سچھاکہ رداق قکوکی ما فوق الطرت 
ےج س کاکوگی منہ ہنی ںکرواسکناءفذ اس نے پل سی ںای دی ء نواس 
برز ہا نکیُٹھوڑ نے کے لیے اوراسے ا لک اودقات بادکردانے کے لیے اب بہ 
ضروریی ق کہ انس کا ملغ عم سانے لاباجاۓ ٤‏ اک ہیں بنرکر کے اسے 
مناظ اسلام “اوت جمان علا ود یوبن یھن دانے سا دولوں لوک خو تین 
رز وک کک تن مت کون نا مان او 
جوا ےآ پکوداراعلو مک را یجی مروف راہ 7 کا اض للکھتاے کیا 
اس ادار ےکی بدناٹ یکا سب یں من ہا ؟ ( تاب ہورم ۵) 

(۳) نی سا چدفھشیندبی“ نا مکش ان لوکوں میں سے ےج نہیں ا ہے عم 7 
زیادہد یھن ہوتا ےہ مل مکا ہی ہکہاجاے و مناسب سے ای لو ک کت 
ہی ںکہ دہ ہن مولی ہیںء وہ ہرم ضوع پران شقن عیرتے نظرآتے ہیں 
اور وش ا پی چہال ت خودڈ نیا ےسا کے ہیں اورصرف میں بللہ 
ا نک کام دوسرے لوگوں یھن نت اورگا یلو ہوتاے اوردوسرو ںکوای 
بات برک تے ہیں جس کے مرگب دوخودہوتے ہیں خودود یکا ممکرتے ہیں 


پر مُمَتَ لمعو 80 و رس وچ سس 

سکا مکی ضبدت دوسرو ںکی طر فک ر کے نہیں سب وت مک نشانہبناتے ہیں“ 
(کتاب کور“ ی×) 

(۵) ”نہ ری مکانے پرلیقین رت ہیں ءآ پکواک رر اشن سے اختلاف ے 
ا کو پک یسیا بات سے اختلاف سے نواس اختلا فکڑھی اختلاف ہی 
رتجنےد بنا جا ےہ اسے ذانی شنیئی بنانا جا ے۔ دا لا جواب داال سے 
دی ء بیو اپنی بے می اور تکااعتزاف 0)0 کی صلی خقیر کے جواب 
می ام مج سیاہی کے ہا بارودجلرکرگالیو ںکیکولیاں برسائی جانھیں۔ جم 
نےکپشش کی ےک پر ”تعلا پاش ےط ریپ لک میں ءلچنی تن بانتوں 
7 ,0 22 
تی بان کا دہ خودم رکب ہوا“( کاب ڈکوربفی۹,ے) 

 )٦(‏ ن٠فوٹ:اس‏ رسا لے میں ہمارا مقصدرصرف اورصر فگا لی بازمناظ رساجرخان 
قشیند یکین ا تکی ر شی یس سا کرام بز رگا کرام ءعلا وک رام ءکی شان 
ہی ںک یگ یگنت خیوںء ا گالی بازکی ارکنی چچہالتوں اورجوالوں می سک یگئی 
شیا تکوآ شکارکرنا ے کیم کے تارنی واقعہ پر بج کنا بای روابیت 
ھکال ہک نا نیل ۔ اریہ بات ذ ۲ن بیس رےء الھی جمارا موضوع گالی باز 
مناظرسا رکقنشقمندی ہے“۔ ( تاب بکورڑے) 

”)٦(‏ ریگالی باز نا نہادمناظراپنے مناظرانہ ہی ھی راوردا لئ ےس یک یھی عبارت 
ینیع وب یکر کے خوددی خر ےکیرے جو رک رن بین مل ہوم ڈیا لکرنتڑے 
پا اکن کا اہرے“۔( تاب ہرکورر سخ ۸) 
وت یں کا کے کی یا یت نک گی کنا تین گے۔ 
ان افقباسمات سے خابت ہو اک مولوکی حا فظ عبیرایثد دلو بندی نے ساچرغان 


رر مُمَ او 8ے ورس جچ'۔ یس 
دلو بندگ یکو 

باذ/)١(‎ 

(۳) ماکان باز بدذہان 

(۳) علم کے بب ضکا شکار 

(۴)اپنے ماد کی بدنائیکاباعث 

(۵) جس کا کا ا راب خودکرتاےء دوسرو کو ایام پرکو نے والا 

)٦(‏ صصحاب کرام ء مز رگا ند بین اورعلمات گرا مکا تا 

(ے) جار نے جائل 

(۸) ای 

(۹) ہی پچھیراو رع بر یکر نے والا 

(+۱) خر ےکیرے ملاکرین پہندمغپوم ڈیا لکرفنڑے باز یکر نے والاٹس 
کا لمیاں اورعلرا ۓ دلو نر : 
مولویی تقوب نا نون کی دلو بنر یک یکگالبوں سے رخبت : 

بل مولوی تقوب نانوی دیو ہندکی کے بارے میں دلو بندیی نرہ بک 
مصتف کاب می سککھا ےکہ: 

”ہش نکاا نکوشوق ٹھاء بیہا لک کک فرماتے ‏ ےک میاں !اگ رگالیو ںکی 

ای وہنا ںکونھی دی ینا جا ہے اور کی سن دو چا رگالیاں ہی 

اد ہو جاتمیںگی“۔ 

(تضص سا کا بر لہ ٦ا‏ بمطبورر المکتبة الاشرفیةء چامع اش رفٍے روز ار 


در مَ ناو وچ ور س وہر _ اس 
روڈہلا ور اکا برعلاج دو ینز وا غء ص۳۴ء مطبوضہ ادارہ پامماامیاٹ۱۹۰۰- 
انارگیء(اہور) 
رے فیس کن یقت کے رر یں نشی یں 
عبدالد یا ن ھی( ورس جا مع اشر فی ناظم وٹ ڑل صیانة المسلمینء لا ہور) 
نےککھا ےک ہ: 
حطرت تھا فی فلس يسک ال بجر کے ین جس سے ایک برک 
جناب شہاب الد می نے نطرت کے مواعظط ومفوطمات میں ے اور بج 
اپنی اد اکار سمل ہکی حابیا تج فرماتیں اوراس جو ےکوحض ٹ کی 
خر اصلائی ےکھ یگزارلیاگیا“ 
(فصتس اکا رٹ ٦اءے‏ :مور المکتبة الاشرفیةء چامع اث فٍہ ٹروز ار 


روڑء(اہور) 
معلوم ات دیو بندیی شگیعم الامت مولوکی اشڑلی تماندی ی 


مولوئی عبی اٹ سن تھی دلو ہندک یکا کا مال د بنا: 
بل ولوب اشن اوکا ڑ وی دیو بن دی کے خطبات می سککھا ےک : 
ایک دفعہ ولا نا عبیدرارڈ سن دی بے ہوۓ تھے دومن عا دیینآےء 
صولانانے ا نکوگالیاں درنیاشرو کرد یں۔ مولاناگالیال رز رے 
ہیں اوروہ آگے سے گی ء گی گھررے ہیں اورز ہاخیں ختل ہوردی 
ہیںہ ذڑہ جھرآدب میں فر کی ںآیاء جس یلا دس رہاتھاء مس نے 
سو چاکہ یہ سے ملا دید بن دکاحال'- 
(خطباتصنزر جلہ “۸۳۰۸۲ ءمطبو کت ارادبہ لٴ +پتتال روڈءلا ہور) 


در تھی کے ]رہ چا- _ :اس 


صولوکی عطاءالٹ شاہ ہفارگی دلو ہندیکی رف سے ماں یو نک یک ایال : 
بد یو بندیوں کے می رش وت شوش کشیب رپی نے مولویی عطاء ایق شاہ بفاری 
دلو ہنلدگی کے پارے می ںککھا ےک : 
شماہ گی (س]ی عطاءاللشاہ بخاری از نائل ) ات غے می ںآ نت ےک 
ادروشواہرکی مفلظا ت کک مناد یی 
(سیرعطاء اڈ شاہ بنا رکء سوا دافکا رص ف۵ ۸ء مطوم مم طبوعات چان ۸۸- 
میگلوڑروڑء ا ہور) 
مولوبی خطرحیات دلو بند یکی جاب مولوبی عبدا مہارف ی دلو بندگی 
کےغلا کا نکی و ٹھاز: 
چا مولوی عھبدا لہا رنی داوبندکی نے واوبندری مناظرمولوی خفرحیات 
دلو بندک یک یکتماب کے بارے می لھا ےکہ: 
”صدافمی ںک جب الفتح المبین“ _یہیں موصول ہوٹی ماس میں 
علم دنین نا ک یکوئی نشی ءالہتت مل فتناب نے ہرہرسنے پگالیوں 
کاالیاذ ترہش کردیا ےکراب بے حیاء عم کت بازاو ام 
کےلوگو ںکواحما یئوس ر ہےگا۔ ہم ا نگالیو کا جواب دیے سے 
بائڑں ۔ 
+ة27+7یی و 
2۰0 
معلوم ہواکہ مولوی الا سکحسن کے وفاع بی شق لکتاب میں ساجدغان 
دیوبندی کی طرف سے ہیی ںگالیاں دےکرعلماۓ دبوبندکی سنت پنل 
کیاگھیاہے۔ 


رز اتی 0چ ]رس 8 چا- _ :اس 


دفاع الا سکس نک اصمل مصنف سا جدنمائن دلو بندگی ے: 
دای لیا گنن کے وفاغ ا طال کر نے وا ےا نین کے ان این پا 

سال ضر ورگر شکرربا کہ مولوی الا سکحسن کے ایام دفاع بش کاب 

پر ملف کا نام ” دوست ممرقیرھاری“ ککھھاےء یکن یہاں خاطب ساجدغان 

دو نر یکوکیا جار پاہے ءال لک یکیادجہ ے؟ 
قڈ ال کاجواب پر ےک دوست ھقنرھاری' سا جدخان دیو دک یکا فنی نام 

ہے :جس پہمارے پا در ذیل داائل وشوا ہرم جود ہیں - 

() سا جدخان دلو ہندٹیکی موجودونی سب کآکی ڈکی سا جچدفشونری سے پیل اس 
کی ایک اورٹیس کی کآئی ڈیی تھی جس میں ا سکانام اش میں“ وازد 
۱۷890080“ ککھاتھا۔ اپنی (سسابپشہ ) ٹس ب کآکی ڈیی سےکمنٹف 
(01111901 )کر تے ہو اس نے کوخاط بکرتے ہو ىہ بات 
کھیتی ( ے مس نے خودورکھ وا اوسر بن شا کی رنایاھا رسکی طارق 
جمودچتقکی کےردبرھیر یقاب طار یگمودچختا یکا خت جوا لالک ال 
کاب رولف کانام ” دوست مرقن ار ی قنشمندی' ککھھا ہے ال سے 
مابت ہونا ےکہ ‏ دوست مقر ھارکی کے نام سےکمابیں ساجدغان 
دیو بندیی بی متا ے_ 

(۴) ساجدغان دیو بندگی کا مکاری دیی کہ ایک ان ےا سیل 
میڈ یا اکا ون ٹف نس جدکقشیندئی سے ایک پیوس فک ء جس میس مولوئی ال اس 
سن دیو بندگی کے دفاع وال یکنا بک ٹانل لاک رسا کات اک 
”نان تما بکامطالع دی ن کیا سے یی سے؟ نج ہنوری ٹا کون سے 
ایک طال پیم لا یا ےءایھی بس کا مو یں مما۔مصنف کے بارے 


در ناو 0ع رہب کر ٣س‏ 
میں پیومعلومات ہو ں تو آ گا کر یں ءج ز اکم الله ۔ پرےلک میں 
ور کر کک کے کر وا 
قا رین اس مکارکی مکارگی ملاظ ہکم می ںکراس پوسٹ بیس اپٹی ال سکاب کے 
نل ےکا بھی نادماء یڑ ر نی ڈاک مگ وائے کے لے فو ن مکی رے دہاء اورلووں 
سے ا سکاب پہتاشرا تھی مانک لے اورازراو دکاریی ساتھ ہ جج یلگیھ دیاکہ: 
”مصنف کے پارے میں بیو معلومات ہہوں و گا کر یں ءجز اکم الله“ ۔ 
عالاکہ پیھوسا نل اس مکارذماتہساجدمان دیو بندگیٰ کےگرو پک جاب 
سے ”نقب رح کے نام سےگاکی نامہ شا کیاممیاء اس گگالی زامہ یں ” روصت 
تحرقنزھار ینقنشنر یک مضمو نی شال ہے مین اس کے باوجودائ کا اپنے فی 
نام دوست شگدقنرھارکی کے بارے میس ہہ ظا ہرکرواناکہ بیرا کیل ا ہنا ء وٹ 
اورمکارک یم لآواورگیااے؟- 
(۳) سا جدخائنع دیو بندگی نے کر دایز کے نام سےای فکتتاب تر جیب دگی ےہ 
ان سکاب ےکیٹ ۹ہ ۳ء ۳۵ط ۳۱۳۹ء ۳۸ء ۳۹ء ۳۰ء ۰۳۲۰۱ ۲۳۳ ٣ء‏ 
۵, ۲۹ء ے٥ء‏ ۲۸ء ۵۰۰۲۹ ۵۱ء ۵۲ء زان لاۓ گے ہیں ء جن 
پرساجدخان دلو بندی کے نام سے نے نی کیک عم کا ای لی سککھاہواے۔ 
اس جا تکوذ من ٹیل رکوک رآ کے بڑ ے_ 
دوست حر قنرھاری کے نام سے شائ ہونے وال یکتاب ‏ طار نود چتتالی 
کان کے خرمی بھی چچجد این لیاتۓ کے ہیں۔ ا سکاب کےصن ۲۴ء 
ا را جع اسگیٹز می بھی ” کردا ریز“ کی طرح ساجدغان 
دو بندی کے نام سے بے فی سب ک تی کا ای لی سککھاہواہے۔ اس ےکبھی 
معلوم ہوتا ےکا سکااصل ملف سا جرخان دنر ے۔ 


در عو ا ھ۲رے 0ار سس 
(۴)انرنیف پرساجد نخان دیو بند یک کال ربکا رڈنک مو ججود ہے یس میس اس نے 
اپنےمخاطب سے شلسسا طلا کان مکھان ےکا مطالیرکیاہے ا پوسعد لتق 
تی ےنت ان وورتے دای ساجدمان دا بندی ہی کتاب''کشف 
الخداع عماظھرفی ردالدفا ع“ میس بھی یی مطال ہک ایا ےکہ: 
”رضاغا یکل ماطلا کان مکھ اکر جواب د ےکا سکاب میں نین یی 
کئی ہے'۔ 
(کشف الخداع عماظھرفی ردالدفاعء جلرا ٦٢‏ ۵۳ط وے و نا غاھل 
السنة والجماعةایڑى) ِ 
جس رج ساجدخان دیو بندی اپنے مخاششن سے شسلسما طلا یکس مکھانے 
کا مطالکرتاےءاسی کے پیش نظ رہ بھی اس سے مطال کر تے ہی ںک بی ملعا طلاقی 
یق مکھاکر ےک ہرمولوی الیا ں تن ے راع شف کیا ےتلم اعلام 
حضرت موا ن ال یا سکحسن پر اما تکاشققی ہتقیری جائز'“ (جس ممولف 
کانام دوس تج قرھاری'ککھاے )اور کشف الخداع عماظھرفی 
ردالدفا ع“ ( جس پرمولفکاناع ا بوستد لئ تی کھھا ہے )اس ن ےی اکھییں _ 
(۵) لم ولا حضرت موا نا مال یا سکصسن پہ تراما تکا انیقی ننقیری ما و 
کے ص ے٣‏ او ٣٣۳ب‏ موا ناشن اللد بن اچیری اورمول نان علی معاسی سے 
وتالہ جات گی سے گے ہیں اوران پر جوتص رہ کیاگیاہے دومن من 
ساجدغان دلوبندکی کی تاب ” قواب اترضاخغان فاضل پر لی“ ے 
ص۴۵۷ اورے ۲۵ سے ل گیا سے بی مواد یگ ذرقی کے ات تاب کے 
صلی ۲۸۳۰۲۸۲۰۷۸۱ بھی موجودے۔ اب اگرساجدخان دلو ند ے بات 
کتا ‏ ےک ادوست رق ھارگی “ا سکافرضی نا مکی ہو برا سے جا ہ ےک 


یناو 0 0رس ور _ سس 

صافافطوں میں بسلی مر لن ےک گال باز” دوست رق حاری؟ہ”صرقہ با ز“ 

ہے۔ با ےون کی بات ول ے؟ 
)٦(‏ مواوی سرفرازمکعڑویی دیو بند یک یناب راو نت“ کے جواب میں مفتی 

فان تنی تے"راوضت نام س ےکنا اح ء اس بت کر 

ہو ۓ مولوئی سر فرا زگرہ وید ہو ہندکی نکیا اکہ: 

رو ازج ضب2“ ار ضف 
اکر مھت اھ یارخاں صاحب کےفرزنر ار جمندمولوی مضقی اققتراراصرخاں صاحب 
کوپتا 7 سے من بیصصر فکاغذی یکا را ےا یلاب ورطیقت خی 
اج یارخاان صاحب ب یکیتالیف ے کیہ 

بھررنگے کە خواھی جامہ مے پوش 
من انداززقدت راہے شناسم 

مفتی صاحب نے شا ید خیا لکیا ہوگاکریلم او رین کے مبیران میس پی بھی 
کی رسواکی ہی ہے انس لیے اب انس بڑھاپے یں وت اورزسوا ی گا ے 
07ں اورکیوں اُٹھاوںء وب پیٹوروار کے نام سے میں دہ ول 
کاأٗبال گحل جاۓ نز مبترے۔ اور جلے لے برخوردارکچھی موکشی نکی ممد میں 
اوران کے رجنٹرمیس در جکرادو کہ ا ننکو لو ںستی شرت حاصسل ہوجا ۓگی 
اور ہدنام اگرہوں کے و کیانام نہ ہوگا ۔گمریفتی صاح بکومعلوم ہوزاجا ہب یےکہ 
ناڑنے وا نے بھی قیام کی ہگاہ رکھنے ہیں اور علم خیب نیس بللہ قرائی 
وشواہر کےحت فراست م کن سے ء ہم کا عد بیث سےشھوت ماتنا سے انس 7 
نے ا سنمون میں جنابمفتی اتھ یارخاں صاحب بداو فی خ مج اتی بی کوخطاب 
کر نا سے اور جھ ہلگ ھکہنا ہے صرف ان ےکنا ے کیو کاب 2راو جزں“ مفقی 


ناو 0ے جع رس کر ٣س‏ 
صاحب می کاما نشی جا“ 

( اب نت ٥۹ء‏ ےا مطبو بت صفدریہ نز مد رٹ العلوم مگوہ راو ال ) 

مولوی سر فرازیکمع یڑ دب د بی ہندکی کے اس انتا کا خلاصہ یر ےکہ: 
۱ہ وت وزسا ٹی سے گے اوراپنے د لکاغیارڑکا لے کے لے مضتی اج یارخان 

نے اپنے بی ےنام ےتا راے۔ 
۴ جاڑنے وانے قیام کی نظ رکھتے ہیںہ اس لے سرفرازگکمہیزوئ یکو یت جچل 

1-0-2 7 

اس اقتباس کے پیش نظرہ دزائل وشوا کی روش یس مم می نکی 
باب ہی ںکہرمولویی ال یا سکحسن کے دفاع یں مز بد ذّت وڑسواگی سے جن 
اوراپنے خخالف پرخصہ لکالے کے لیے ساجدخان دبوبندی نے ”ووست 
وو ا ےک کی ےکن ات وک تع تک 
نظ رھت ہیں ء جک فراستت معن (ج٘ سکاشدوت عد بی ریف سے سے ) سے 
بی جا ہی ںکہ ا لکنا ب کا اصل ملف ” ساجدخان دیو بندی ے۔ اس 
کاب کااندازف رمیچھی اس بات کی جع یکھار ہا ےکلہ اس کا ملف گا ی 
بازساجدخان دیو :ند یاے۔ 

”لم سام رت موا ناش الا سکس پر لزاما تکاششنی ری جا -- 
کےاصل موا فک نا بکششائی کے جوانے سے داغم نے جو با بیہاں با کا ہیں٠‏ 
ان سے یہ بات دامع ہویچگی ہ ےک" دوست مق ھاریی' دداصصل ”سا جدخان 
دو بندی کا بی فرنشی نام ہےء اس لیے اس جواب میں سا جدخائن دی بندکیکوخاطب 
0 
فی نام ےئ کک کی مت ملا حظہیے۔ 


ممکئتاعی وپ و ری جار اس 
ان ائسل نا مکو چچھیانے سے معلوم ہوتا ےکم ول فکوخو دا نی تین 
یں تر دےء کہ بوقت مواخذ وکٹوائشل انکار اتی رے: موا وی 
یل انٹھو ی دبوبنری 

مولو یٹیل اجٹھو بی دی بن دکی نےککھا ےکہ: 

”نباوصف ا ڑم ومخنر دنز ےم ےی م رپ تن ان 

ا مکوستر اخفاء می ںکنو نکیا ےک جس سے معلوم ہوتا ‏ ےک خوداپٹی اس 

تق اٹل می متردد مود ہا ےتاگنئش اھر اتی رہے“۔ 

( برابڈن نقاطی ن۵ :مطبوص دارالاشاععت.أُرددبازار ءا اے جنا روڈ ہک راگ ) 

اس اقتباس میس مولو یشٹبل امو ی دید بندبی ن ےکھا ےکہ اپ نے علم کے 
کے کے پاوجودا پٹ یفرمپ اپنائسل نام ظا ہر ہکرناء اس با کی دییل ےکہاس 
تن سکوا نین میں ترۂ نی تنک ہے اہ موق مواخذ ہا لت سے إ کا رکیاجا 
کے پالئل ای رح ساجدخان دیو بندگی نے اپنے زیم یں مولوی الا سمحسن 
کادفا کر نک یکوش کی سے مین اس دفا کی صدراقت پرا سکوخو وت ؤ دیجصنی کیک 
ہے اٹ ین ۓےانن نے اپنااصل نا مکی سکھھاء کہ جب خال فک ضا نے انی 
تر کے مندردرجا تکیگکرفت ہو اس کے ان یت رہونے سے ا لمکا رکیا جا مکے۔ 
اپنے اص نام سےکتاب شائع ندکرواناشیتوں سےکمتمان اورتتیہ 
پل لکرناے: قاضی مظب بین دا بندی 

قاصی مضہ بین دید بندبی نےککھاہے: 

ا نا تی تخت انان بن ای تا ای لس اتی 

ایک اشنتمارآر باتھاء جب جنوری۱۹۹۲ء مس جیپ بھی جے ۔کماپ 


رر اناو و ۲ری جار سس 
ملف کانام مولاناااور ان کوٹ یککھھاےء ا سکاب کے نار 
ا ونام تیب مےسپشکٹیل بخاریی ہیں کاب میس تھے ملف صاحب 
کانام یل کا ین خودم لف موصوف نے بے ب ےکنا ب گی سے :جو 
بے ۸ر جب ۴ا۱ہ ماف ۰ اجوری۱۹۹۲ ءکوپز ری ڈاک مصول 
ہوئی ے۔ اور یجان ملف موصوف ک یکنیت ے اوران کانام 
عبدالففورے مم نب ےک انہوں ن کاب پراینانا نی ںکھا۔ 
"میں سای تکی تر د یکرت کرت ان پرکوگی اٹ فو نٹیس ہوک یا ہکتاب 
پراینانام نہ ظا ہرک کےانہوں نے یہاں شھیتوں کےکتمان اورتقیہ پل 
. 
( ما رات “ھا ہراورمسآک اعترال جل د۲ ٥ف‏ ۵اہملبو اوار ومظہمأتقِء ا ہور) 

اس ساط میں ای مظب مجن دیو یندبی نے منرپوککھاے : 

او ابور یجان ” تی گی چادرت اوڑ ھے ہو ۓےنییں اورا سم 
کاب میں بجاۓ نام کےکفیت اور پان ے مو ل کا تخار کفکراناء 
اور یھی نہ ظاہرکر کم وصوف موا نا عبداللد صاحب خیب مرلڑی 
جائع مد اسلا مآ باد کے مددسفرلد نے“ کے ملاس ہیں۔شھیعوں کے 
نزدیک فودین کے وج ےکقیہ میں ہیں اوروہ انے ھکومہ ات ممصومئین 
کے بارے میں می عقیدہ رھت فک وذ اف ائنس ب نلا رکش نکر نے 
تے۔ بلکلران اش کی مرو بباحادبیٹ میس شببعدرا دی نام کے ہھجائے ال نکی 
کفیت استعا لکرتے تھ........فرما یے !ان شیع راو یو ںکون اپۓے 
ت٠‏ کا خوف تھاء اس لیے ہججاے نام کے اما مو ںک کی ت کین ہیں 
مین ابور یا نک سکا خوف ت رایغا نام طا ہرک سکیا۔ ھن سے جن سکی 


مَئتاعو ےو ری جار _ سس 
ردەداری ے۔“ 
( مھا جترا تھا راو رمرآیکِ اعترال ء جل ٣خ‏ ۳ء ۳۸ ,مط+و ےرا رومظبر١‏ این لاہور) 
نماض مظب مین دا بندکی کے ان افقتاسات سے ثابت بہواکمالن کے نز دبک 
اپنے انل نام کے ہجاے اپ یکنزیت سکاب شا عکر بھی تی اور کت ناقق“ 
ہے۔ مجنی اس اصول کے مطابی ساجدخمان دی بندگی ”تق اور” کتا جح“ 
کامرگب ہوا ے_ 
سی اورے ام ےک ماب شع کرواناگلست اوریزو ی ے: 
مولوی عم بدا لچپا کی دیو بندی 
مولوبی بدا لہا نی دلو جندی نے اپ بجال لی اور کے نام سےکتاب 
شا کر ےک لس تاور مزدی' “قراردیاے:اقتاس ذ یل می ملاحظہہو: 
”مولوئی خفرحیات صاحب نے جواب الجواب مم ای ک تاب الفتح 
السمبسن“ شائ کی ءادد یکناب اپنے نام ےیل بل کی اور کے نام 
سے شا کر واک راہن یقلست اور بزد یکا اعتزا فکیا“ 
(تیبة الَاس علی شَوْالْوَسوَاس لاس ص۹ ہمطبو اوار إمظ اتحقتین, 
کھاڑک مان ) 
علا ۓ دلو بنلد کے گی ںکمردوان ا قاسہات سے خابت ہو اک : 
() مولوی شپیل اڑشھو ی کے نز دیک اپنے اصل نام کے جات ےی اورنام سے 
ناپ جات کزان با تکا ول ےک ملف( ساجدنغان دلوبندی) 
کو 2 اصداقت نل ے۔ 
(۴) نقاضی مظب مین دید ہندرکی کے نز دیک اپنے اصمل نام کے ہجائے اٹ یکزیت سے 
کاب شا حکرنا تن تقیے اور ستما نضن سے۔ اہفرااس اصول کے مطابقی 


مت ناو 0 ر٣‏ جاور _ سس 
ساجدخان دای بنلدی فی نام سکاب شا کر کے تقیہ با زاون کتمان 
بی کا م قب قرادپایا۔ 

(۳) مولوی عبدا فی دا بندبی کے نز دی ک کی اور کے نام سے اپٹ یناب شال 
گروانا ” قلست' اور نزو لی ہے لبنااس اصول کے مطابقی ساجدغان 
دلو ند کافرشی نام سےکتاب شا کر ناا سکی” لس تاور نبزد لی“ کی 
کے 
گی سطور بیس ملا حنظہ تیج امہ سا جبد نخان دا بنلدگی کے علادد او کو نکولع رے 

دیوبندی ہیں جواپنے اصل نا مکوظاہرن کر کے ان یوں اع زازات کے سفن 

شرادیاۓے ہیں۔ 

دب ہنی ا حصولوں کے مطا بی اپنے اصمل نا موا ہرتہ نَُ 
وا لے ”یہ با کتما ن نی کےمرق لب نج ول اور 
نل تج ٹوردہ من بد لو ہنی علا کی نا ری 
کاب بر لوب فتۓے' کے مق رمہ گا تی عبدا می ای دلو بندی 

نے اپنااصل ناھ کی سکھا: 

(ا) مولوکی نورشجرمظاہرکی دلو بندی کی کاب ” بر بی ف ہے“ صن ے ٣+:‏ 
(مطبوب ان ا رشاداسلمین+٦-‏ لی ہشا وا بکالو یح ظا می روڈءلا ہو )یڑ اخ الرامقی 
شماہ چان ورک کے نام سے ایک مق مددرن ہے۔ کاب لعدازال' رضاغایول 
کفرسمازیاں “کے نام سے شا گی ہوگی ءال سکاب کے ناش کی جاخب سے اس کے 
مقرمہ کے تل ریفوٹ دیاگیاکہ: 

اعت ض و تج اروف مامد 


پر مم لمعو 0ے رب جار اس 
می لاہورکےنلم سے بادگا رہے۔ چجوانہوں نے اہ ےکی نام وا 
ارام اہ چہان پورگ ےئ رمیفر مایا ھا“ 
(رضانمایو ںک یکنفرساز یں ٣٣ء‏ طبو نف ن نظ رات د اہ بندالکادٹی مک اہی ) 
تاب تال متلہححرات پر بلو“ کے مولف مولو یکریم نل 
دلو بندگی نے ان سکاب پراپنانا می سککھا: 





(۴) دل بند یو ںکی جائب سے اللل نت وجماعت کےخلاف ای کچل 
مت تحفرات پیلد کے نام سےکناب شا ئک یگ ٹیا سکاب برکھی مطتیف 
کا نام ھا ہنی سک امیا تھاء بللہ یو کک ای تھا: 

کے ازعلا وا لن“ (مطبومجدی پرشءلاہور) 

ا کاب کے انکر اتی می سککھا ےک ہ: 

”من تقرسارسالہ بنا من چچمل متلعقرات بر ياوی(مسداهے الہ 

تعالی) ہے۔ جج نکوای ھی عالم لا ہورنے صا ات نے 

اس اقتاس بیس لفنظ ”اھ کے قت حا شیہ میس مولوی عبدالتزرز و ھا جود بی 
دو ہنی نلتھا ےک : 

یی مصسلحت سے وہ عائھم صاحب انانام ظاہرکر انیس جا جے_ 

اورو ییے ا سک یکوکی ا ضرورتگھ ہیں کیو خر اظمایقی ے“۔ 

(چل مت لہ حرات پریلو سی ۳۱ء مطبو کت حفدر یہ نزدو درس نصر العلومممگن کس 

گوتراٹوال.) 

لوٹ:ا سکاب کے مقر مہ بی مولوی سرفرازککمڑوی دلو بندی نے مولوی 
عمدالزی:ؤ ھا جودپلوگی دیو نر یکومولوی رشیدکنگوی دیو ند کے خایفہمولوکی یا مین 


در عو 0خ ری ور _ سس 
ینوی یکا خایہ اعل“کراے_ 
اں ناب کے ہقلر مہ میں مولوکی سرفرازگمکی وی دای بندکی نے لھا ےکہ: 
ج ےک رپا ٹھانیس ۲۸ سال لے حا تق حضرت مولا نا لاح 
کر ہش صاحب مظفرل نی (التوثی:۱۳۷۵ھ) فاضل دنر 
اورامم اے پروفوس رع ری ءگورٹمن ٹف کاخ ء اہو نے فا ند جمامحت 
بر یلدب مولوی احدرضاخمان صاح بکی منحددکابوں ےٹھویں جوا لے 
یک اکر کے ٹول مل رات ب موی کے نام سے ای کفکتابچرمرتب 
کیا تھا۔ چوکلہ اگر کی ورتھااورموصوف 2 گورتمنٹ ارح ء ہو“ 
پروفیسرتےء اس لےکسیمصسلح تک :ناءپرانانام ا ہرکرنامناسب 


23 
ص٦4‏ -۔ 


(چہل مت لحریات پر یلو ف۵ ہمطبو کت صفدربی نزو در نع العلوعممکو شک رگج رانوال) 
ب ھ اک راس کے دلو بندیین رخ بکانا می ںک گیا : 
(۳) دنو ند یو ںکی جانب سے ڑھ کے نام کاب شا ک یکئی مین اس 
پر ملف کے نا مکی با یس ا تاب یککھھاگیا: 
تفر یہ :ناشم امن خدام الو حیدوا لن" ہ جم“ 
(مطبوص دا الا شاعت.أُرددپازارءگرابقی ) 


مم 
٭٭ 


شٹبقی دستاو ہز کے دو بنلدیی ملف نے ا ٹ یلاب مراپنا نا می سکھا: 








(۴)مولوبی ضیاء الرجمان فاروقی دلو بند یک یناب جارعئی دستادی کے جواب 


الہواب فی دتناد :“یراس کے دہ بندی ملف کے اصسل نام کے بججاتۓے 
“ا پوائ تین ادگ لکھاے۔ 


موک ئسا می وو 6 ریچ اس 
مولوکی مہ رشھرد لو ہندکی نے ا یساب پاپنانا مکی ںکایما: 





(۵ )کاب ”شیع اورقی در شتم نہوت مل کک نام ”ابوعنان' “لھا ہے حا لاکن 
یہ مولوکی ہبج رمیانوالی داوبندکی کی تالیف سے۔ج٘س کانوت را کے 
مممون' ا علی حضر کی روشبیعیت ٹیل خد ما تکا اعتزاف :علا ۓ دلو ند کے 
تلم سے“( ہنا ای ضرتہ بش ریف بابت فردرگی ے۱۴۱ء ٹس دیاگیا ے۔ 

گا لی بازد یو بندیی و ل ےکی جاب سے مل کک عفن کے جواب 

میں کیہ گے رسالوں میں شثائل اکر مضاین کے ساط یکا نام 
ہی ھا گی 

(۹ )گال باز دا بندکی ٹول ےکی جانب ےمج کر جن کے جواب جوکالی نے 
کے سے ہیں ان میں ” سوط لفن ٠شارہ:امیسں(جومضامین‏ ال ہیںءاآن 
یس )دومضاشین کے علاہ بات ی کسی ممون کے ساق رمضیمون ڈگا رکا نا منیں 
کل اگیا۔ جن دومض مجن کے سا تح ون ڈگ رو کا نا مھا سے ءان می بھی 
ایک کے سا تصرف ری“ ککیھا سے ای طر جح سو ما انار :ایس جچھ 
مضاین شائل میں ان مس بھی ایک کک کن کے سا تج نکارکانام 
تی کک اگیا۔اورعرتب کے اصمل نام کے بائے” پر فیس راب وداج رضا خمان'“ 
کتھا ہے۔ ایک اورگالی نا ے ضط ”تر ضا مرج بکاناھ اط اح رشا 
خاان تقادریی؟ نا ممکھا ہے جک ایک فی نام ہے ءاس رسمالے میس صرف ایک 
ممون کے ساتھ بر وفوسرابواحررضاخان “ککھاے۔ جک مقاضی مطظب مین 
دلو جندگی کے اصول کےمطا بی تی اور کا وی سن 

خلاص کلام ب کرد و ہندیی علا کے پیا نکردہ أصصولوں (جہ کہ پیل ےآپ ملا کے 


در متا نو کے وقاصر 0۔ اس 
یں سے غاب تہ وگ یاکہ 
(۱ستتاب' ھ یلوب ہے“ کے مقد ثگارہمفتی عبدا یہ ای دلو بندیی (سابقی تن 
ال یث چامعمري(اہور) 
(۴) ”یل مت لحرات پر یا“ کے ملف : مولوی پر وفسرکرمم پش دلو بندگی۔ 
(۳) ند کے کے رب 
(۴ )نیقی دستا وی کے دیو بندی مولف 
(۵) مول وی م رما وا ی دی بندی 
(٦)اورگاکی‏ باز دا بندگی ٹول ےکا اپٹ یف رمرات پراپنااصل نام نہلکصناءاس با تک 
ول ےکا نکوا شی بتک تھا۔انہوں نے“ تیاور کتما نے 
کاملیا۔ نیز پرکورہ بالادیوبندکی'نمزدل او ز نقلست خردہ ہیں 
مولوکی الا سکصسن دید بندک کی ذاتیات پر بح کاجوازءساجرخان 
دب بندی ےنلم اُصول ے: 
ساجدغان دیوبندی نے ششم رسلام حطرت مود نام رالاس کن 
پہرالزاما تکاشٹقی وذققیدبی جائتز ٹس اس بات پر ہہت خص کیا ےکراس میں مولوی 
الا سکس نکی ذاتیات پر با تکیو کیگئی ہے۔ حا لاہ اس اعتز ات کا جواب اس 
گی اپٹ تاب و اب احرضاخمان فاضل ب یلوگی' می مو جود ہے ۔کیوئک ہس میں 
ان نے سیدی ای حطر تک ذاقیات پر با تکرنے کاجواز یا نکر تے ہوئے 
ایت 
مس یک ذاتیات رکب بات ہیکت ہے؟:قارنی نکرام الس کی عیب جو کی 
غیبت ماذ اتا تکو ضوع ۶ص وت ے ور چندصورٹیں ای 


متَئتنعو ے0 6ری 1ور _ اس 

ہیں جہاں خودش رمعت؟ میں اس چچزرکی اجازت دی ےک ہس یکی ذا تکوموضوع 

نہیں ءا سک ٹھی زندگی اس کے معاشی ومعاش تی افعالی ءاس کے اقوال وکارنا موں 

یدک ڈگا: ڈا لککھرےاورکھوٹے میں فر قکردمیں۔اما مخز رَ مه الأیے 

لیف مات ہیں: 
سی زندہ پا رد وی خیبت اس وقت جم ہوجا ےگا جب کسی خو شرعیہ 

کاتمول اس کےبف ےنیس ۔اوراس جوانکی چو ریس ہیں۔ 

(۱) اللسظلم: یں جائز ےس مظلوم کے لیک دو ح ام وقت پا قاضی با٘س کے 
پا اخقیال دہ اس کے پا جا اورلا ۓےکہفلال نے ججھ پت مکیا۔ 

(۴) الاستعانقہمسی مک رکون مککرنے او رکناہگارکوق با تکی طرف لانے کے لیے 
می صاحب انار کے سام اس س ےکنا ہہوں وسیا دکار یو ںکا جک روکرناء 
تکاس ال نکا ول سے وکا جائئے- 

(۳)الاستفصاء:شریجھم کےتصمول کے لیے چنا مج شقی شر کے سا نے اس سکی 
ال ماک یکو بیا نکیاجا ےک یھ پرفلاں نے بی مکیاہےہ اب ش عت بے اس 
سے خلاص یکاکییارست جا ٰی ے؟- 

(۴)تحذیرال مو نین :لوگو ںکواس کےشرےڈرانے کے ہے۔ 

(۵) بسد عنسی:ا لک بدعات سےلوکو ںکو گا وک کےلوگو ںکواس کے اکا ر سے 
اک یب 

)٦(‏ عصرف:لوگوں میں دواسی عیب سے مشہورہوہ جی ےک نا لزا بہراء بھیگاوغیرہ- 
قذاب ان چچزز ول کا ذکرحیب جو بی میں شا رکال ہوگا- 
(ریاض الصالحین للنووی واحیاء علوم الدینء بحواله الرفع والتکمیلء 
ضص۵۰۷۵۳) 


متاعو ے0 جع رب تار ا٣س‏ 

خان صاحب پتتقیداس جدول یل مو جودچڑی اود پا چو یں صورت می لی ے. 
07) گرا یوںء بدخقیرکیوںء سام شی ےآ اہر نے کے 
لیے ہم جنبورہو ےک ان صاحب کا او سک رین ۔ علمانے اس موجح بے 
تض کی را یکو وا نکر نے کے جھازپاجماغ ذکرکیاے لے سے 

شارکیاسے اوراس می ی :- اس نف سکوشاریگ یکیراے جنام نہادفقیہ ی نکرلوگوں 

کو برح تک دگوت دے پافا وفاجرہوہاورلوک ا سے پر کپچ ےک یلم حاصص لکرنے 
جامیں۔لشرفع وکعیل. ۹۷٥)خالن‏ صاحب بر پش یقامٹرانا لو جات جال 
ہیں۔ہنداجھ برواجب تھا اکیییش ا نف کی تقیقت سےلوگو ںک وگ ءکروں :ناکسادہ 
لو عوامماس کےدام نز وم یں پچ سکرا پآ خرتکوب بادشکردیں“۔ 

(نواب اح رضاخان فاضل پر یلو ,بے ۵ء ضط وم می ۃاضسل الس تة 

والجماعقہ کرای ال:۲۰۷۰ء) 

ساجدغان دیو بندی نے اس اقتباس میں سیدی ا لی خر تکی ذاتیات 
کوم وضو پت بنانے اوراس پتقی رک ن ےکا جواز بیا نکیاے۔حالائکہراسی ولیل سے 
اس کے پیڑوامولوبی ال یا سکحسن دا بندر کی ذاتیا تکو وضورح بث بنانے اورال 
یرک نے کا جوازخابت ہوتا ےکیونکمولوی الا سکصسن نے اپنے علقہ میس خو وک 
”نچن طریقتہ مار واعن لغ و تم الام“ مشمپورکررکھا ہے۔ اس لیے ا لیے 
شی کی اصلی تکاوام کےسات جیا نکرنا چایےت لوگ ال کیشرے میں 


مولوئی ال یا سکس نکی زسوائی لیکش صفاکی کے پیا نکردہ اُصو لکی 
روکی میں : 

بنا کام ولیک صفائی ساجدنمان دلی بندگی نے اپٹی ای ککتاب بیس درج ذیل 
منوان ام مکیاے: 





در مت ای 8و 6ر ںی ہار _ اس 

فو اب اتمرضاخائن صاحب او ںکنظرمں“_ 

(نواب اح رضانمان فاضل پر دی ص ف۳ ۱۵ء و میہآ٦ٴُسل‏ السےة 

والجماعةہ کرای اڈل:۲۰۳ء) 

انان کےششت علا تین اللد بن اجب ری یکا ذک رک تے ہو ےککھا ےک ہ: 

”مم صوف نے واب احررضانمان صاحب کے خلاف ای ککتاب 

فیلات انوازاکمحین م ککی, جس یش نان صاح بک الک الک 

مفاتکاؤکرکا جیا وی ےگا ۱ 

(نواب اع رضانمان فال پر باو یف۲۵۷ و میدافضسل السۓة 

والجماعةہ کرای ال:۱۲۰۳ء) 

جعاراتصرہ :سا جدخمائن دلو بندگی کے اس ا ا سکو نظ ررکھتے ہوئۓے کم ہی کی 
فی سکم ولوقی لا نگل نکی مفات ریہ یوک فی علماتے یا نکی ہن٣‏ 
کوجما ری طرف ے وا ن/نا1ٴژست ے۔ 

4 مندرجہ الا اقتاس کے بعد :اکا موکیلِ صفائی نے“ لات نوازا٤عین ٠“‏ 
سے ستری اع ححخرت کےخلاف حوالہ جا تنا لک کےہ ان پرتصرہہکرتے ہو ئے 
لکھا ےک : 

ار کرام !ان (۱۳) خصوصیات کے ساتھ باقی جیلو یت مولودکی 

اح رضاخا نکی تخصبی ت کا آسالی سے پت چلاباجا مکنا ےہ رتحصوصیات 

کی عام بد ملدئی نے ذکرنکی سکیںہ بلہ میلو یوں کے پر خواجِقمرالد بن 

سیالوی کے استتادمول این اللد گن چچشی ایبرکیء صددمدرین درسہ 
معیفیہ اریہ نے ممولوکی اتدرضاخمان کا جیا نگ ہیں ۔ لپنراا سے خود 
بریلولیوں کےگھ سے مولوکی اتمدرضا ا نکی ذات او رتحوصیا ت کاپ 

تل جا تا ےکا حم رضانخا نگ سقراخ کا 1ی تا“ 


ناو ے0 ۲ری 0چر س 
(واب ام رضانمان فاضلِ پر یلو ی “۱۵۲ طوے می داھُل السة والجماعقہکراتی۔ 
تج ازلں٠۰ك۲٣م۔)‏ 
صا ر ارہ :اس تر ہکوکو یا ہوۓ ہم مولوی الا سن سس ا 
ہی ںکہ: 
فاری کرام !ا نتحوصیات(جودائم ن ۓےکتاب” مولوی ال یا کن 
دو ہندگی ای ےکردار ک ےآ مین میں کی جلداول مس میا نکی ہیں ) 
کے ساتھ دو بندیی مرکو مہ نم سلام مولوئی السا یکس یک یحصیت 
کاآساپی سے پن چلااجاسکتا ہے مولوی الا سکس نکی ب ہتصوصیات 
سی عام دیوبندی نے ڈکرییی سکیںء یہ دلو بندبییں کے مومہ 
د نظ اسلام ہخقق محر تر ان ای سنتہ وی احاف. سای“ 
دا بندہ فاضلِ وارالعلوم دا بندہ مولوکی اوک غازی وی داوبندی“۔ 
”خیف: مولوکی ین اچم مدکی دا بندگی اورسا بی سبرادوفاقی المرارء 
مولو یسیع ال مان دای دی“ اسان مس اب سنت والجما حعت ء 
سلطائع المنا ظھ من ء وکیلِ احناف حضرت مو ڑا ابو با لاس جیل ری 
جھیگو یش پورومحروف دہ بندیی بی 'حعارف با یم اختر دیو ہنی 
کے نشی ن جع مظبرداہ بندبی۔ جن ہ ٹیش ٹرش پوردلی بندیی ارک ری 
ایق کے بے ظاری سا مہر یی دو بندی۔ دلو ہنی تع سیا وسحا پ 
(موجودہ نم ائلِ سنت دجما عحعت / کےس یراد چقیئ رن سی علاکوسل 
۸ے جامعہ فاروق کالہ مولوی امر لرعیای دوبندی۔ شور 
دای ندب ملف قاضی طاہ ری ال ہافھی دیو بندگی۔۔ دلو بندی پرمولوی اشن 
شاوہ فاضل دیو بند کے غیفہ مولوی عپدالرتم چاریاری داوبندی۔ 


در نمی 0و ۲ر نچ اس 
اورویو بندگی تی جواعت کے چو تی ز مین العابد بین دا ہند کی جئ 
سحریعہ صاحبہ نے با نک ہیں۔ ادا خود دیو بند یں کےگھ سے موا وی 
ال یا نکسم نکی ذات اورتحصوصیا تکا پیۃ پل جا تا ےکہ الا گن 
مس ماش کا 1 دی ے'۔ 
لاس کے بدا گے مت پر اکہ: 
تج آہادی خانوادہ کے ہاں جناب واب ات ررضاغان صاحب اب 
خی پر بے جا 
(واب ام رضاخمان فال پر یو یی نے ۲۵ طوء بمیۃآفضسل السےے 
والجماعةہ کرای اڈل:۲۰۳ء) 
ہکا رات رہ :اس تی وو نات ہو ےکپ مولوئی ال اس ان ک ےعلق کے ہی ںک: 
تعدددید دی علما کے ہاں جناب الیا لسن ”نبڑئی“۔ ‏ کردا 
لڑوں اورلڑوں سے نکی ء خیب راغلی رکا ت اور نا ئ مم کوروں سے ون 
رق یں کر نار و جرے و پک 
فراڈ' دجالی “سپا یکاہ کےخالف '۔' عماتول اور رمقلدوں 
کےمقائل مناظرہ سےفرار اور دھان لی مین شہور ہو گے تھے 
بل رٹوم یر کے چاکمرسماجد ان داد بندکی نے پیکنوان:قائ مکیا: 
اپپنوں نے نان صاحب کے ساتحددہ بج ےکیاجھ بیانوں ن بھی نکیا ہوگا““ 
(نواب ام رضانمان فاضل پر موی ۴۷٣٣‏ طوے میۃافضسل السئة 
والجماعةہ کرای اڈل:۲۰۳ء) 
ہما رات رہ :اس تج روک ٹاتے ہو ےھ مولوئی الا سکحسن کے تلق سکتے ہیں 


8 


ج مائتاعو 80ے ےو رن جار سس 

اپوں ے ال یا ں گی کے ساتھ دہ پچ کیاجھ بیانوں ن ےکی شہ 

کیا ہوک 

بای سے میں سا جدخان دلو بندگی نے میلک اک ہ: 

”بی الامجدد ےکہ پرائے ےپ را ء ا نے بھی ا سکوکسییٹ ر سے ہیں ء 

کیا کی مبردکی شان ہوٹی ے؟““ 

(نواب ام رضانمان فاضلِ پر یادی ۲۷۵ط و میدافسل الستئة 

والجماعةہ کرای اڈل:۲۰۳ء) 

ہما رات رہ :اس تص روک ٹاتے ہو ےھ مولوئی الا سکحسن کے تلق سکتے ہیں 
18+ 

(ال یا سکحسن) نزالا دمحم الام“ ےکہ پرائے تو یرائۓ ‏ اپ 

بھی ا سکیکھییٹ رسے ہیں ءکیامجی ”عم الام کی شان ہوئٰ 

ے؟“ 

لوٹ :دیو ہنی علانے مولوی الا سکع نکویجس ط رح ”سینا '' ج, اس 
کو جا نے کے لیے رام ک تاب ” مولوٹی الا سححسن دی بنلدیء ا ےکردار کے 


آ یی میں لا ظکر یں۔ 
مولوئی الا سکحسن ےل باصن وی کور 
معیاراورمنا فققت : 


٭ن کام ولیک صغائی ساجدخائن دلو بندیی نے مولوگی ال یا سکحسن کے دفاع 
ہر تل ا پٹ یکنا بک ابترائی سککھا ےکہ: 
اس وَورمی بھی ابل کی دن نک کیا نت 


موک ماع ے80ے ری حجار اس 
کی طرف سے امت مس یتم اسلام حخرت مولا الا کن 
صاحب زیندمسجد ہ مک صورت می ایک تحنردیاگیاہے نکی درٹی 
رما کے ا یئ پراتے سب خرف ہیں 


( لم الام حضرت مول ن مم ال یا سکحسن پرالزامات کاشفقی ونقیدری جائزہہ 
صلےاا:مطبوےنرارد) 


اکام ولیلِ صفائی نے یہاں یت ککیدد کہ مولوکی ال یا سکحسن کے اپنے رائۓ 
سب مترف ہیں ۔جیان ایک سطربعد بی اسے بھی تلی مکرناپڑاکہ ان کے اپ 
دیو بندگی علانے بھی مولوبی الا سکس نکی ذات پراعتراضات سیے ہیں ءا قتیاس 
زل میں ملا حظ ہے : 

سض اپنوں نے بھی مان کے پروپیگنڑے میں آکر بائچھرم 

عصرہونے گی وچر ے ضصرں رت مضنکم الام صاحب 

زیدمجدھ م کی ذات یئن لاسشقی اعتزاضات کی“ 
) مم سام تقر مولا ناش الا سن پرالزاماتکاشققی یی چائزدجصف اہ مطبومنرارر) 

تقا ری نکرام املا حظہسیییے۔ نا کام وکمیلِ صفائی پھلیلکعتا ےکاپنے پراۓ سب 
الا ںکحسن کے مرف ہیں۔ او رب ایک سط بعد یککھتتا ےک اپنے علمان بھی 
مولوی الیا سکس نکی ذات پراعتزاضات کیے ہیں( چا ہے اب بران اعتراضات 
کوصد یامخانشن کے پروپیگنڑےکااشر کییے ہلان نی ایک مقیقت ہے کہ دا بندی 
علمان بھی مولوی الا سکس ن کات دکاہے )۔ اب سوالی ریہ ہ ےکہ یہاں وم صفائ 
کو پت رہ.کیوں یاد ہآ کرس الا سکس نکی می ستھ رای فکرر پاہوں ؟أ کو راۓ 
ققیراےءاپنے بھی مسبیٹ رس ہیں۔ولیلل عفائی کواپنی سناب ”نواب 
ام رضاخان فاضل بر یلوئی کی رآ بیہا ںی پپلکھنا یا ےت ھاکہ: 


رر مُمَا تن عو ے000 ےب رن وچ اس 

”اپنے بپراۓ سب مولوکی امیا سکحسن کے کراب کون 

اورلڑکیوں سے نکی ء خیب راخلائی کا ت اورنائ مع کورتوں سےفون بنشق 

می بتا“ نچندوخور“ ‏ فتنہ پور ”و جال“ نفرا جھوےے 

دو ”سپاو صحابہ کے حالف“ عماتوں اورٹُرمقلروں ے 

مال مناظرہ سے فرا رر اور دھاند می میں مشہور“ ہونے کے مرف 

ہیں ۔ 

لیا سن کاولیلل صفائی ساجدخمان دای یندیی دوڈاپئش سے کیوکہ ا 
حضرت کےخلاف ا پٹ یکتاب ( جس کےا قتباسا تپ ہچجلےفیات میس زی رعنوان 
” مولوی ال یا سکس نکی زسواکی وی صفائی کے بیا نکردہ اُصو لکی رشن ش“ 
طلاظرک رآ ہیں جن )ٹیس اس نے ای حضرت سے ملا کے ا خنا فکوڑے لے 
ےکر بیا نکیاہےء اورائل پراپنا مدکی تج رجگ یت ربرکیاہے۔ چوکہ ا سکاب میں 
رس نے اع ححضرت پراعترائ لک کے اپنا خبار کا لناتھاء اس لیے اپنا بیا نکردہ یہ 
اُصو لنظرانرازگردیاکہ: 

”لا کی علاپ جرح مقبو لکڑیں ہوکی ؛کیوکنہ یر حسدہ محاصرت با مخاین 

کے پروپینڑے کے باعث ہوٹی ہے“ 

بی اصول اس دو لے ویلی صفائی نے لیا ںکسن کے دفاغ ٹیش اپ ایک 
دیڈاپنتریٹش مان کیاے۔اس کے علادہ اپٹی تاب ” شنلم وساام حضرت 
موڈاناشجرال یا سکحسن پر تراما تکا نیقی ونقیریم مز کے۸ سے نےکر اپ 
ھی ہیا نکیاے۔ساجد نما نکی طرف سے اپ نے بیا نکردہ اس اُصو لکی غلاف ورزی 
اود اس پارے میں ا کی منافقت رام ک یناب *ھمولویی الا سکحسن دلو بندگیءاپۓے 
کردار کے سے میں“ کے ے۱۸۹ سے نےکر ی۹۹ اتک بیا نک یگئی ے۔ 


رر مل یلاو وو ق۲رن 80۔ س 

ساجدخمانع دلو بنرکی ککا پیطل کل منافقت ہے ہکیوکمہ اس نے اپٹی ایک اور 
کتاب( یٹس پرااس نے اپنے ہجاۓ مل فکاناع ابوسعدشیق رحمانٰی“آودیاے ) 
میں اس طل رز لکومنا فققت قر ارد ین ہو لھا ےک 

”یہ مافقت ہ ےک ایک طرف جب نے ہیں نذاصو لگھمڑتے ہیں 

اوردوسرکی مخ دہی ان اصولو لکوت ڑ ۓ ہیں“ 

(کشف الخداع عماظھرفی ردالدفا عء جلرا ‏ ۲۹اءڑوے و فا غاھل 

السنة والجماعةایڑى) 

را باج مان دلوینریی نے اعلی حطرت سے چو علما کے شا حکولظور 
اخعترائش یی لک کے اپینے ا صو لکونو ڑاہےء جک۔راس کے اپن بقول من فققت ہے 
مفتی نجیب ارڈ رد ید بنلدی کے اُصو لکی رڈشنی بیس مولوئی الا سکحسن 
دلو ندبی کے تلق دلو بند یں کے مم شمافات 7 وکیں سے جا کت : 

نورق نے ” یک ایک٠‏ پاکستان“ کے تے امیرحافظ سع سجن 
رخوکی صاحب کے خلاف ایک میان دیاٹڑاں لق کی ا ار تق 
نے ای کمضمون ”نال تقادری کا ایا ھا اس مشمون میس مفتی نجیب الد 
0 وو لت رر ا 
رق سے ناب تکیاجاے ء بلہ و ںککھا ےک : 

ا و ا 

عام رض وی کے سب بے راے ارب سےگہرے دوست جے۔ 

پیر انل تق در یکھ کے بویری ہیں“ 

سط رب ہرم ریو کہ 


پر _ مُمَتن عو ے0000 رن ور سس 

ھوضصوف کےاکشافا کرای سڑنہی کیا جا کح“_ 

مفتی جیب کے ان اکشمافا تکو بے کرد ہتقا رین یقن ججراان ہو ہوں گے 
جوا بات ےآ گاہ ہی ںکہ سی دیو بندگیء اہن ھزعو یشنم اسسلام“ مولوبی ال اس 
سن دیو بندگی کے دفاع بیس نشی شھو تکامطالہ ہکرت ہیں ۔ کان یہاں بات 
چون اپ نے نظ بای خخال فک ہے اس کے یہاں دید بند یو کا اصول بد لگیاے۔ 
ای دج سے اپنے سابقہمطالےے اور بیا نکردہ معیار کے میکس یہاں نل قادری 
کے پیا نکوجیکائی قراردیا جار پا ہے ۔ بہرعاللمفتی جیب ال دک رکے ان دوا قتباسمات 
سے اتا ضرورخاہت ہوا دای بندگی اصول کے مطابقی ج بکوئی اپناعا لم د نکی کے 
خلا فکوگی جار شیٹ بیا نکر تو ا سکوٹھٹلا انئیں جاستا۔ ‏ (جاری ے) 


در اتی 0و مرن چا_ اس 


مولوی ا نیتم نو یکی رف سے مولوی قسسم 


ا و کی دیو نکی متا تیافک 
ینم ع اس تا دریی رضوی 


دای بندی نر ہب کے امام مولوئی اعم نا نو کی دیو بندکی نےککھاے : 

”اگ رضطرت مدی علیہ الام سے ہاں پچھرسے پالی تا تھا:نذ شھررسول الد 
صلی الله لہ وَسَلمَ کی اکشثانمبارک ے پالی کے جچٹے جاری ہوۓ تے۔ 
اورظاہہر ےک ہ ز من بررھھے ہوۓ ہھرسے لی کے چچن ےکا بنا اتا جی بکغیں 
جنتناگوشت واسف سے انی کا نا تیب سے ۔کو ن نہیں جا ناکہ ہئ ی تہاں 
اورنانے ہیں سب پہاڑوں اورپٹھروں اورزشین بی سے لے ہیں _ بی کے 
گوشت واوست 7 نے ایک قطرہ یھی دک انیس دریکھا۔ علادہ بر مس ایک بای 
ای بردست مبارک رکددینے سے اشنا مبارک سے پالی کا نلنا صاف اس بات 
پہردلال تکرتا ےنہدست مبار کن البرکات ہے اور بیس ب جح مبار کک یکرامات 
ہے۔ اورسنِ مموسوی سے ز م۳ن پررکددینے کے بعد پافی کا لکنا اگمردلالم تکرتا سے 
قذانقی بی بات پردلاا تکرتا ےک غداوتد عم بڑاتقاور ے“ 

(مبا نے شا پچہانیورص ف۲۹ مطبومنشع میجتا کی ء دی ۔ اشامعت :۱۸۹۱ء ایض ءص“لی۱۹۳ء 
۲۳ امو جموص رساعل تا سی جلدالل ؛مطبوصدادار و الات قا سحیبہ پاکتان ) 

اس ا تاس میس مولوکی تام نا وق کی دیو بندکی ن کہا ےکن یکر صلی الله 
لی بے وَمسلم کی مارک انگیوں ے پا نلاتھاء جح رت ۷ی لیے 





رر ما یناو وو ۲ری چ8۔ یس 
الام کے جھزہ سے بر تکرتھا۔اس با تکوذ ہن یل رکوک رآ کے بے جیے _ 
دلو بندی فرقہ ک ےکم الامت مولوی ا شرلن یھو بی دو بندبی نےککھاے : 
”مم یحورصلی الأۂ عَلَيي وَمَل مک رش اياءعَليھم 
السسلاام کی ابا تکی جاتی ےا سک پالئل ارسی مال ےک ایک بھائی 
کیا مس الس طر گا جا ۓےکہرائس کے دوسرے پھاٹ یکوااس کے سا نے 
یالیاں دی جا یں ۔کیاای مرح ےکوئی ٹن خوش ہوسکنا ےجس میں 
اس کے دوسرمے پھاٹ یکوئھ ا چھاکہاجاۓے اور چھائ یھی کیہ دوقا لب و 
یک جان۔انیاءعَلَيهم اسسلامآ بیس یں سب بھاکی بھاکی ہیں ء ان 
ٹس الباانقاقیق ے کہ ہرگ دوسرے کی ابا ت کو ایک گوارانٹیں 
کرسکتا اوراخیاءعَلَيهم اس لام1کی یٹ ین ہی نو تھڑ یب کے ہاتھ 
بوٹی ے نہیں بدتیزی ے“ 
(الہ راک ف۹۳ :مطبو کتتہتالیفات اش رفیہ تھا نیلون ) 

ای میں میا کےککھاے : 

نیس لوک تہ یب کے سا تھاخمیاء تک عم السسلا مکی نو بی نکرتے 
ہیں اوراس میں عوا مکی نکیا شکای تکیا جائے ء خوائص کک متلا ہیں- 
گومیر ےاس ان ےج تنک لان خوش ہوں کے مرج بات ناطضی 
ہوگی ا سک با نکیادی جا ےگا واعظین و نین صنخن وو ررسین تضور 
صلی الله علیہ وَسلم کی فضیات مت راخياءكَلَيهمُ السّلام ے 

ما ہلہیش ال ط رع سے شابہ کر تے ہی ںکساس سےا کنیٹ لا زم 
آجائی سے۔ وا نکی یت تنفی سکی نہ ہوہمگراس طرح مقابلہ شش 
جخورصَلی الله عَلَيِْ وَسل مکی فضیلت با نک ناج ےدسرے 


در نئاو 8ے ]رن ج8۔ ہس 
امیا ہکی نی کا وب مبھی ہوہ چائ زی ۔اسی لیے میں نے بیکہاتھاکہ 
یح لوک تن یب کے ساتھ اخمیا ءکی فی نکر تے ہیں ال سک ایک 
مال بر ےکہم یق لم ےے السلام کا زم پور ےک ران کے 
پھر رعصامارنے سے پا لی کے ہمت جاری ہوجئے تے۔ اب مض 
ان یہک یکچ کیا لین نے ور و نے 
سار طررملی الله عَليه َسَلَمَ ب7 
,0 چنا مہ انس شچجزہ موس وی کے منقابللہ میس بھی ہے 
ورضلی الله عَليْہ وَسلما ایک جزہ انکر ہی ںک اگ ری 
عَسلّ سے ال شلام مےعصامارنے سے پٹھرسے بینھے اری ہو گئء 
نڈجمارےیتحخورصلی اللہ لہ وَسَل مکی أنگیوں ےدہع ہیے 
پانی جار وکیا تھاءیٹس سے ھا مک رسراب ہوکیا۔اورتضور صلی 
ال عَلَيْه 25 کے اس جھز ہاو جھز 7ک ھ, 2 
کے لے اس طرب تق رمیکرتے ہی ںکہ پٹھرسے پالی کائکلنا یھ زیادہ 
جیب با تنس مکیک شض پچروں ے چنشے خلت ہیں کرک چم سے 
ال کا ادگ ہوجانابہ بہت جیب ہے۔ ا لتقریہ سے”مفضول“ اور 
”اف“ ڑوں کی منص داوم تی ے_ مفضول“ کی میس 
اہر ےک اق ربیل موی لے السلام کے جج زوکی وج 
اتمازکوکنرورکردباگیا ےک پھمرسے پا لی کا لکنا یھ ندال جا کب 
نیس کو با مویا ہے السلام کا ججزہکوئی با بھاری ٹجڑدڑتھا۔ 
اللہ . اک ای ےج زءکو ےق سُْسکاتۂ ای نے جاہا 
اقنان واظہایقدرت کے لے بیا لن فر مایا ے۔ امیا ز می سکروراورسعمولی 


در ممَ ناو 8 0ر ں جچے۔ یس 

تلاءکنتا بڑاحضب ہے۔اورتضورصلی الله عحليه وَسَل مض 

اس سے اس طر لاز مآکی سےکہان حضرات نے اس واقہ کے جھڑہ 

ہونےکوا سو فیا ے_تخورصَلّی ال ف تی 

اُنھیوں سے پان لت تھا۔ ھا لاکمہ ا ایل شموت یں ۔احعاد بی ے 

صرف اسر رمعلو م ہوتا ےرتخورصَلّی ال ےت 

پیالہ می پالی من اکرانادست مبارک اس می رکو دبا بای ا لے لگا۔ 

خخورصَلی الأے عَلِیْے رَسَل میا ٹگیوں ےبریاندے 

أ ہکن ہوانظ رآ ا تماء مس سے بی کہاں معلوم ہنا ےکی جم سے 0 

پت تھا۔ بللہ ہب ش٦ءا‏ ےتخورصَلّی اللّۂ عَليہ وَسَلم ے 

ست مبارک رکہ دسینے سے وہ بای پڑ سے اگاادرجول مارنے 

گااورأگیوں کے درمیان سے اس کاأبلنا نظ نا تھا۔ اب جن صاحب 

نے ای چجزہ کے اتا زکواس بات پرعوقو فکیاکہ پالل رم سے اکا جا 

جن س کا بی نمو نہیں ءنوگوبادر بردوہ دہ اس اعماز کے چجزہ ہونے سے 

انارکرتے ہیں کی کم ےت انی کا لکنا خابت بی ز ہوا“ 

(الہ راک ف۵ ۹:اے ۹ ءمطبو تہ تا لیذات اش فی تھانکھون ) 

مولوی اشنلی تھا دی دیو بندبی کے اس افقتباس سے معلوم ہواکیہ ان کے 
نز دیک مولوی اسم نا نون بی دی بندی نے پھر سے پا لی نل وا لے مز ہکوج یکریم 
صلی الله لہ وَسّلم کےجزہ ےک ترکہرکرحضرت موی حَایه الام بھی 
نکی٤ےءاوردرپردؤ‏ کم صلی الے لے وَسلمم کے جھزہکابھی !ار 
کردیاے کیو آپ صلی الله علیہ وَسل مکی أٹگیوں ے پا ی کاللنا ثابہت 
نہیں سے می کن ےک ہمولویی اشن ی تھا وی دید بندکی نے مولویی قاسع نا فو یکی 


متق یشحو 0 ر ن .0چ ریس 
تا بکادہ ا قباس پٹ ھکر ہر ھا ہو اُوراس سے مرادمولوی مقاحم نا وق کی بی ہو 
کیڑئل اس ا تاس کے روغ میس با لفاظ ہیں : 

نیس لوک تہ یب کےساتھاخمیاء تک عم السسلا مکی نو ڈین‌کرتے 

ہیں اوراس میں عوا مکی ن دکمیاشکای تکیا جاے ء خوائص تک بتلا ہیں- 

گومیرے اس بیان ےن شننگ علا ناخ بہوں کے نکر جو بات ناتضن 

ہوگی ا سکوبیا نکیاری جا ےگا اض واعظین مین وو رین تضور 

لی 20 ت2 کی فضیلت دترانياءعَلَيْهمُ السّلام ے 

تا ہلہ یش ا ط رع سے شاب تکمرتے ہی ںک سال سےا کیچ لازم 

آعلی ۓ'۔ 

ببرعال خابت ہواکہ (دیوبندی مناظھرین کے طرزاسترلال کے مطالی) 
مولوی تقاسم نا نون ہی دید نیہ مولوی اشنی تھانوی دلو بندی کے فےئی سےکتتاخ 


سسے۔ 
ٴ 


در موائتاعو 08ے ےر چ- :اس 


٣:(وش‎ 


مول کی طار مل دو بندریکی طرف سے 


یم عپاس تا درىی رضوی 





دانری عالم ویر تمرالا ین ای (عردان) گی رف سے مولوی طارقی 
گیل دلو ند یکی طرف تن نفففرت لوف شا کی کنا یکاڑد: 
مولوکی ابوسغی خی را ین تقاکی دیو بندی نے مولوی طار ق کیل دیو بندی کی 
رف ےحفرت لوضف عَایہ السلا ہک یگمتتا فی بت ردکرتے ہہوےککھاے : 
چندو ن نٹ لآ زاؤمغ موا ناطار کنل صاحب نے اپنے ایک مان 
یس موضموگی اوراس انی روابی تک یآڑ نےکرحضرت ایشف لے 
الام کےدتفاق ا یےکلمات کیے جو بھی طر ایک نی کے شایان 
نان گھیں۔ اس پرامت کے علما ۓکرام نے اپنے بیانات میں 
قیرف مکی نان تا حال ملا نا کا اعلا شر جو سا ت نی ل7ی“ 
( میگ صفدرہا ہور نے ہشحار ۰۱۱۳٣‏ ۱۳ء ایت جوا گی ءاگست ۰۰٠۲۰ء)‏ 
داوبند یں کے ما نام نغزالی اور“ میس مولوبی طار یکل دیو بندی 
گی طرف سےحطرت اونف عَلیه اللسلامۃک یکنتائیکا ت 
مولوکی ڈاکٹسعیدرادڈ دیو بند یک زبس پیقی شاضع ہونے وانے دیو بند یں 


رم عو 0ر یحور _ رس 
کے ماہنامہ غمزالیء پادر میس مولوکی طار ق گل دیو ند یکی طرف سے حضرت 
انف عَاَیہ السلا ہک یگمتتا فی بت ردکرتے ہو ےککھاے : 
بیان: (طار مل صاحب کے بیان بر ولا نا گی صاحب کا ترہ)۔ 
طار ق ئل صاح بک یان: 
وف لیے اللسلام کے پھائوں ک ےھ مکی وج ہے *٭۴ سال ان 
کودر پدرہونا پڑا۔ ان رہ تگیء زلنانےتبہت ای اور یھر جب 
عودخوں میں با تھی لک اک بجر اض فنجیںہ مجح تو ز لا سے ۔تھوڑی 
بدٹا ہی ہونےگگیءنانضہوں نے اوشف علیہ السلا مکوکد ھے پر یٹھاکےء 
منہ کالاکر کے پارے شبریں کو اد یچچ اعلانٰ گروایاکہ : 
هضذَاجَْرَاءَ مَنْ ارَاد ب بسَيّدہ والتوف جھاپ ےآ قاے راک ی 
تاس ارات یپا کمانکا :ئن لا 


گید تھے پ رھ را جار ا“ 

ملا :ا ش مکی صاح بک میان: 

( مو نا ش مدکی صاحب جوآ جکل روزانہ ہبیت ائڈش ریف کے سائے پرآمدرے 
مس میا نکر تے ہیں ) 


”کت ہی ںکہایک مولوئی صاح ب تق ریف مارہے تھےکحضرت اف 
عَلَي السّلام کیٹیل میس ڈالے سے پل تمالا نکامنہ 
کالاکیاگیا ہمد ھے پرنٹھا گیا ش کے پچکرلکواۓ گے _تَمُوذباللء تم 
تَعُو فباللہلَاعَرْلَ وَلَافْوَةً ِلَاباللٰه الَْلِی العَظیْمٍْ اَالله 
وَا نال سے راج من . ال تھالی اپنے ایا ءکواتتاذ مل اورژسوآنیس 
کَرتۓ ۔ِفَالَتَصُرُرْملَاوَلوِیَْ موا فی العیۃ الدنَاوََوَ 


در نمی 0و ع٣ر1ں‏ <چر- _ یس 
بَقَوَم الاشْهَساڈ ۔ ادتھالیف رما ےکن یم اپنے رسولو ںکی 
دک رت ہیں ۔ لوف عَس لی ےے السا کا جیل میں جانا جوے. 
پادرکھوابہ نوکوئی بطورس زان تھادی نہیں مولوی صاح ب کی نے 
نٹھایا ہوگاگمد ھھ پرءاس لیے اپنا خصہ لوضف لیے السّلام پثال 
رے ہیں۔ بی دنت کے پارے میں عمزیز مھ یھی جاہناتھاکہ وہ بے 
گناہ ہیں یس وسْف اص رض سن ہلا امے اوشف !گچھوڑوائں 
عور تک ۔اور بویا ےلان وَاسْتَففس یڈ يك ۔”تم(زلفا) 
اپ گناہ سے قو رکرو“ أس (اوشث ) کان گناہ یی _ نچھرجب 
عورنؤوں نےکر چلاباتذ اب وش ٹکھبرا گ ےک لن ای کش اب کی 
مرے تچیچے پرکنی ہیں ۔لذانہوں نے خوددھا ایاگ یک :فسسال وب 
اليإسخنْ اَححب اِلی ممَايَح تال .کہ باالشد!ان ےر سے 
و یجھے جیل مج دے۔ فو یلوا نکی اق دعای_ ووسرے رت 
مرارا نکی یئی نے مشورءک اک باتکھیقی ار تی ہے مبت رہ ےک ہم 
ا 00و ا ا 
پچھرسہنت یل می تھی گے نو اتی ان سے در ےک جیا راورساراعملہ 
آ پک اگو باظظام تھا۔ یں نے بیآپ سے خوا بک اتی رس لوییں۔ 
قب پیل نوا نکی انی ماگی ہوئ یتی۔ اس لے وجب بہت عرصہ 
گنز رگیاادرر ہائی نکی ءنذاوشت نے تچ کے وقت الد سے ڈعاگ یک 
ال ا لف تح رم وکیاء فی نشی کی نکی ےن کآنگیاہوں۔ 
ادنے جب ریکل بھی چاکہ یشثک سےکہہ: جیل تم نے ما یھ کان کے 
مر سے ےٹیل زیادہپند ہے ۔کہددی کان ک ےکر سےبھی یچ و 


در نل یناو وو ع۲ر ین 8۔ اس 
ٹیل ےکھی چاو ہم دووں سے بچا لیے ۔اس لیے ا کی بای کر نے 
ےک تشھیڑ کے شیان کے خلاف ہو بنلدہکافرہوجا جاے۔ ای کے 
علمان ےکا ےک یس مولوٹ یکس دینے خی ںک جب الو کے دن میں 
کیٹڑے پڑ گے تھے سرسے پا و ںکک اور پچھرز بان مب لکیٹڑے پٹ گئے۔ 
قوانہوں نے تروک رکم اکہ یاالڈدااک تیرانام لقاتھا۔ اب زبان پپنگی 
کیٹڑ ےآ گے ءا بآ پک نا چھیئیں لے سنا ۔ اس کے باون ن عم 
دیا۔ بای اط بات ہے کیٹرے بپڑناکوئی ای بات ہے؟ جب ق ران 
نے کیا خر نےکہاں ےکی ےک لیے میں تق رآلن ن ےکہا: نی 
سی الضرُوَانْت اَرْحَم الرْحمیْنَ لی مَسَیی الب 
بنْصٌب وَعَذاب ۔ آ پکونحیف ہہوئی ممن بیاہنا اککیٹرڑے پٹ گے 
تہ خلط بات ہے۔ اس لیے وو کواھی ان ھاتہکہدءاندھاکہنا عیب 
ے ساورالل ن بھی ا نکوا رای کہا فرایا:وَقَوَلَی عَنهُموفالَ 
مغ فی عَلٰی يُوَمُفَ وَابَيَصّت عَيَة ِنَ الْکُژن قَهَْكَظيمْ ‏ 
روتے رو ے ھی سفید وی لی نو رکم کیب ر1 اڑمی باجیں کے 
ہو راتس لنگس وَاتساالیّے راجُن . آ نک لکیاکرے ہرآدی من 
گیا مولوبی۔ جس نے گے می ںکیٹراٹڈ ا ل لیا بال شال بڑھا ےہ دہ بین 
گیا مولوی۔ چا ہے اعد ہشھی نہ پڑھا ہو“ 
تیھرہ: مقہروں کے پارے میں بی اسراٗکل کے پاس جوا ات اورروا یتیل 
ںہ انیس اس ایلیا تکہاجا تا ہے۔ بی اسراعل م]ی بیودی اورعیسائی نذا تے ہے 
ایا اور بے کے ہی کہا نکیا ددایات می چیروں کے بارے میں شراب 
پناک کککھا ہوا ہے ۔ اس لیے مسلمان علا کی اکخربیت اس اصمو لکو لیے ہو ہی ںکہ 


پر مم تاحو ل00 رےں 0 وچ- سس 
اسر ایلیا تکوق رآ نکیاضمی راورعد ی ٹکیتش رج اوراخیاء لہ السّلام کےواقیات 
یس پالئل نبیں انا جا ہے۔ چندعلانے یت الی رولیات جوقرآن وعربیثٹ 
اور !سای لمات سے تیلگراردی ہہول ‏ لی ہیں- 

طار ق کنل صاحب بیان یس رگاقی پید ار نے کے لیے اس راعحیلیات اورای 
مر ابل شی کی ردایات با نکر لیت ہیں۔ او غعَلَيّہ السّلام کاوا تج طرح 
انہوں نے بیا نکیاءاس سے اندازہ ہواکہ در یعلمء بلاکی ذہات اور جوش تق رس کے 
ات یں حضرا تی نکینخۃی صحبت نی ںی ہے۔ جس ےآ دی یس اتیاط 
اورفرقی راج بکا ٹیم پیا ہوتا ہے ۔کس یآ وٹ یکی دی کارکردگی ہعوام میں مقبولیت: 
جیش بیان ہن ریکوں میس اہم حشیتل جانء اس سکو درک ر رات صو فی رخلافنوں کے 
ای ایس پہنادپے ہیں ۔ وقتآنے پر مہ بات دا ہوجائی ےک نشی تر یت 
وپ 7زس قارف تت۶ ار ہے کین ون سے 
تا 
(ادارہاش فی ز یز کات جمالن ماہنامنمزالیء پناورہس ۹۰۱۵ء ےاء بات ذوالسقسعسدہء 


ذرالحجة, ١۴ے‏ ۲۱۹٥ءم)‏ (چاریے) 


متعو ے0 6ر1 0چ س 
ا عماتوں کے دبا یندی ہو نے سےحیاتتوں کے 
ازکا رکا شف رر مل جواب 


ینم ع اس :ابی رضوبی 


دیو ندب ں کا حیالیگردوجھو )ان عما یگرو وک دیو بندیی“تلیمکرنے سے 
ا رکرد ینا ہے مولوگی اپوا لیب دیو ہندگی نے فقل خدراوندگی کے مق مہمی لعمای 
دیو بند یں کے تلق کیم ے: 
”جو ان عماتو ںکود اہ بندی کیےء دو علا ہیں“ 
(فتلِ را ونری ی۵۳ ءمطبو کم صوت ال رآنءریوبنر) 
اس سے م زی کےلکھا: 
”اتی بھماورہھارےاکا بر نا نول السنة والعمائ دلو بن رت 
تھے اورن ہیکت ہیں 
(فلِ مرا ونری فی۳ ۵ ممطبو کت صوت الت رآنءولویئر) 
مولو یکمبی ای دید بندہی نے بھی متحددمتقامات پیعماتوں کے د اث بنلدکی ہونے 
سے ا لمکا رکیا ےہ ذ یل می صرف ایک اتانس علا نہک بی : 
”ہم ا نکواہل سنت و جماعت سے نار ن بت ہیں“ 
(فلِ میا ونری فی ۱۹ء مطبو کت صوت ال رآنءدلوئر) 
مماتتوں کے ند یو بندگی“ ہونے سےحراپی دلو بنددیوں کے ا کا رکا شض رجواب 


مَائتاعو ےو 0 ر )کور _ سس 
زل میں ملاظ تھے 
زبردست الزائی جو اب: 
بل طا ہرالتقادرکی کے خلاف عاما ۓ اب سضت ےک یکنابی ںاھی یں ,تڑے 
جارکی سی ہیں من ا سکاعلم ہونے کے پاوجودڈشنام باز دای بندیی ٹولہا نکو ہر یی 
قراردیتاہے۔” منا ظرہکوہاٹ'“ کے مرتب سا جدخان دیو یندیی نے اس کے مقرمہ 
می سکیا ے: 
یلوئی تن الاسلام ڈاکٹ مج طاہرالقادری“۔ 
(روتیدرادمناظ روک اٹ فا ,مطبو ا٦ن‏ دکوۃ اھل السنّة والِجَمَاعَقم 
بل ای نا ظھرہ ٹیس داد بنلدکی من ظمرمولوکی ابوالیوب دیو بندھی ن ےھ یکہاے: 
بیطاہرالقادرئ یک یکناب ے بتہارا شی الاعلام ہے جما ران ا 
(روتیرادمناظ رہکو ان۹۵ لوم ان ن ذوۃ اھل السنَة والحُمَاعَقمِ 
بل مولوی ابواییب دای بندگی نے اپ ی کاب ”دست وگر ببان“ میس بھی 
- 
نفرقہ طاہر یکا قکھی فرقہ بر یلاب سے سے“۔ 
(وست وگر بان ء جلرہ :ف۱ ۲۵ء مطبوب وا رانیم ٹکمنٹ دکان مرا عم رٹاور جن 
سٹریٹ چٹ رگ روڈ اُردوپازار, (اہور) 
عالانک کاب دست وگر یبا“ کے جس مقام پراس نے طاہرالقادری کے 
اق ال سنت وجماعت ب وی سے بتاباےء اس کے چندسفحات بعد 
( نے ۵ ہے ےا تک ) طاہرالققادرکی کےخلاف عا ۓ ال سنت کے جاب سے 
گز لبیل شقن ل فو ےپھیافل سے ہیں ۔لین اس کے پاوجو دیجم طر اباب 
دو ہنی ن لھا ےک : 


مت عو 000ر اس 
نفرقہ طاہر یکا ضھحت کی فرقہ بریلو یی سے سے“۔ 
پل اسی رح ہ ربھی کے ہیں: 
”فر 3 عماہ کات بھی فرقہ دیو بندی سے ہے“ 
ماھو جوابکم فھوجواہنا ۔ 
مولوکی ابوا یب دلو بندی کے اُصول سے عماتوں کے وو بندی 
ہو از بروستتوت : 
بل مولوکی ابوا لوب دو ندرگ نےککھا ےک : 
جب دہ خودکہہ دا ےک می را لک ”نیاوی ے نواس کے قول 
کوکیوںکچاں مات ۔کیا آ پک پان سک نی پاکصَلّی اللّۂ عَلیه 
وَسَلم ےکیافر ابا ہھلاضققت قلبہ بی بات مجھی کے ہیں ہآپ 
ال کادول یر کے دکی لی ےمد ہ انی بات می سا سے پانہیں“۔ 
(وست وگر پان لہ رخ نے ۱۸ء موہ واژرا سی نٹ دکان نسرا رع رٹاورن 
سٹرییٹ چٹ گی روڈ أُردوہاڑ ار (اہور) 
ئل اسی عط رس ب بھی کی ہی ںکہ: 
نج بکمائی خودکہددے ہی ںکہہمارا صلک دیو یندییےءنذژن کے 
قو لکوکیو ںیل مات ؟ کیا آ پک یاوش لک ہیاک صَلّى ال 
صلي وَسَلم نےکیافابا:صلاشققت قلبہ ۔ سی بات ہعرکھ یککتے 
یں ہآ پ ا ادگ تچ کے دی یی کردا پٹی بات می سا ہے پاکیں“ 
داوینری اُصو لک رن شں حا دیوبٹری ں٤‏ مال داویٹریں 
ےھ انز حا کنا تن کر ان سے جان بیننرارن ےکی وشن 


عو 0ری ےار _ رس 
کنا آزسعگلن: 

مولویی ا یوین ٹراروکی دلو ہندکی نے شی تکوجواب دتئے ہوۓکییھا ے 
9 

”آپ فزق شیع مج سےکولی فرقہ ہیں نو یہ لزام سا کی طرح آپ کے 
اتور ےگا“( نیقی دستاو ہز ہہ ءمطبوصہ حضاراتحتقیقات اسلائیء پاکتان ) 

اگل ای طرں مھ کے ہی ںکہ: 

”آپ فرق دی بند پیش ےکوثی فرقہ ہیں توم رام سا یک رح آپ کے 
اتور ےگا 

عمالی دیو بندبیگردہکونامتج کہ کران کے حوالہجات سے جائن ٹچٹرا ےکی 
کوششل ۱اس دیو نرک اصو لکی روے و رستیں ے۔ 
ای چالعتیر,اوراَشْل السےَة والگسمساعحة میں شال میں: 
وائراعلوماکوڑ نیک کاف و ئی: 

یت ملا اسعلام لس ) کے سا لبق س برا مولوی ال دی ہندگی کے 
والدولویعپد اك د لین دگیٴاوراکا برد او ہندری مفتیاِن داز اعلوم اکوڑ و خشیک کے جھوےر 
فزاوٹی سےعماتیوں سک تلق سوال وجواب ذیل میں ملا حظکر می : 

نسوال:مولا نا پیراورانی ک ےن نکوان کے عوقائمددنظریات سے 

اختاف کی با کاخ رکہن اکییسا ے؟ جزان کے ساتج مسلرانوں بے 

تعاقا ت قائ مکنا جائز سے پایں؟ 

الثواب: مو ناٹچ اوران کے می نکاخقید ہچ اورۂ زست ےاوروہ 

2 وت میں واقل ہیں ءاگر ٹن مسرائل میں وت 


در لا ینمی لو 6۲ےے ہار اس 
ےکام لیت ہیں جہکہراد اعترال سے تھاوزکرچی ہے ا سی اور 

جافن گی بازیکی وجہ سے علاے تھانبین نے ال نکی جماعت میس شائل 

ہونے سے نع فر مایا سے نان ا نکوکا فراو رم کنا نیس بعا نۓےکرام 

ےک رکے فی میں بڑی ایا طکاعم دیاسے اورمسلمان ہونے کے 

نا سے الع کےسساتسلمانوں وا لے تعنقات قائ مکنا اور ورست 

ےکس بھی مسلما نو بلا و کا ف نا موج ب تحز ےا 

(فتاوی حفَافّةء باب الفرق الاسلامیه وغیرھا جطرا ٣‏ ۳٠۰٠ء‏ 

نا رجا مع دازامعلوم تا ءاکوڑو نیل ) 

7 0و 0 سر سی سر 
عمائی دہ ند یکرووکوقع العقیدداوراَصل الستّة وا جصاعقی سے قراردیاگیا 
ےب 
ریا عما ‏ یگ رو کا سربرادمولوکی طاہر ندب ہن دک ے: فاری فیش 
مان داوبنری 

بل تاری فو الرحمان دی بندکی نے ”'علماۓ دای بندسرعدکی رون 
کے عنوان سے مال ہککھاےہ اس متقالہ ببس موی طا ہر پیریی داوبندی کی 
(مزکومہ) خدمات گی میا ن کی ہیں۔ ملا جظ ہک میں ”نماہنامہ الرشیدء لا ہوا“ کا 
”وائرامعلوم دا بندک مر (بابتفروروی مارج۷ے۱۹ء ص۲ ۲۳۳۶۲م) 

تا اکر پیرکیء دلو بندکی نیس ہیں نذا نکاس برا مولوئی طا ہریڈ پور ی کے 
یویند ہوگیا؟ 

بل لیم اس احرصد لقی دی بندٹی ن بھی این متقالہ””وائزالعلو مک یتقبیری 


در متا عو 00ےے تار ٣س‏ 
خد مات یس مولوبی طاہرچ بی دلو بند یکاتارف در نع کیا اورق رآ نکرمم 
کے علق ا نکی تفیفات کے نا مل ہکرششق تار فبھ یکر دایاہے۔ ملا عظ ہک بی 
”نما ہنامہالرشیں لا ہو رکا ”وارامعلوم د یویند“ 
(باہتڈروردی مار۹ے۱۹ء )٦٦۷ٰ“‏ 

پرىیگرد ہکا سر براہ مولوکی طاہرڈ بی ” دلو بندی نظریات 
ا بی مر 

بل محتی زروٹی نان دی بندی نے مولوی طا ہر پرکی دیو بندکی کے پارے 
کہا ےکہ: 

صری کی مل ھن یذات اوران کے دورپلی کل ۸ ٹیٹس سن 

سے پت چلاکہ وہ ال سنت وائجمیاعت اورد او بندکی نظریات کے تحت 

پابنلداوربڑ ق٥ت‏ سے اس کے عا حم اورعال تے“ 

(احسن البرھان فی اقوال شیخنامو لانامفتی محمدزرولی خانء 

صزم 0 رر ورااے 

کرا یہ پاکتتان۔ اشاعت :۱۴۲۵ط/ اک م۲۰۰۶۷م) 
قایس الد بین دیو ہندکی ٢ے‏ حجی راوس احمرصد بی دیو بندی 

بل لیم انس احرصد یقی دیو بندی نے اپے مثقالہ””وائرالعلو مک یتقبیری 
اتا فی ف اؤ ت۰ دا ں نچ ری دلوبندگی کے تغارف تین ناخ 
شس الین دی یندی ٹنمک اے: 

وت مو پا فافش ین لن صا حےمْدَطِلٰه جوا نکل او تراوال۔ 

دٹی خد مات یں مصروف ہیں ء حخرت ممولا اض بین لی کے ارشدر 

لائمرہ میس سے ہیں ۔حظرت تقاشی صاحب بج وحرص دائرامعلوم دیو بند 





متاعو ے0 ۲ رہے تار س 
دی رسہے ہیں۔ آپ نے قرآن شریف: لصف آخرکادیں 
دائرامعلوم دیو نی دہا تھا۔ ات بھی درس میں نش سیک ہہوت تھا 

(ماہنامرالرشید لا ہور۔ دارامعلوم دبو نہ باب ت فردروگی ماع۹ ۱۹ء فے۵۸) 
پل عھیع ایوس احمرصد لی دیو یندیی نے اسی مقالہ میں الک سےبھ تقاضیٴس 

ال بین دیو ند یکا تارف میا نکیاے جس می ںککھا ےک : 
حطرت موا نا مم ضیشٴس الین صاحبء سابقی استازواژاعلوم 
07 
نے پ دارالعلوم دلویٹرٹ درس تق رآآن شریف سر 
حضرت موا این لی مرحم سے درس ق رآن حاص لکیاے 
20 ے غلاص ہآ بات رلط پرناصی زوردینے ہیں 
نے پورے ق رآ نکی تفیرتالیف فربائ شی لیکن و ہکوئی صا 
مزا رن گوااردائل لن 

(ماہنامہالرشید لا ہور۔دائرالعلوم دیو بن دنہ بابت فرورویی مار ۱۹2۹ء )٦٠٦۶٣‏ 

ادر ےک ہاش یش الد ین دو کی فائیکن دلریٹر لروں فی ٹرورۓے 

سے یکن یہاں دائرامعلوم دیو بندکی خد مات بیا نکر نی مقصود ہیںہ اس لیے تقاضی 

تن الین ممائیکود یو پندئی لی مکرلیاکیا سے۔ یکا ےک کوئی دلوبندی بے ہہ 

در ےک : تواضی شس الین دای ہنی مان“ نیس ہے اس لیے اسے دیو بندگی 
کک ایا ےن جوا عرش ےل 

با مولوی ابوام دلو رر نسوبی دیو بندیی ( وب جا مع عناشہء تر نر دج پناہہ دنم 

ارخان )ا نےککھاے: 

””ح رۓ مو( ن قاط ی”س ار بن محومء جو”'اتاعت الزحیروالے“ 


و 


ٌ 


متعو ے0 ع٣‏ رہے تار ٢س‏ 

کے اکا ریس سے ہیں ءککعت ہیں“ 

(شکر بن یت تی خوف اک بالیس ف٣٣‏ مو ےت اَهل السُنَة والجَمَاعة 

ے لی لا ہورروڑسرووا) 

برازن زرضقرل ررزنل نے وض شض الرئ رویز لز”اذاعت 
التوحیدوالت“ کے اکا بر میں ےر اردیاے اورسا تر ارت“ چھ یکا ہے مول وی 
یی رای دید بندکی ن بھی وا سح طوربرککھا ےک 

ضر ںوس[ تو لو آوی تے اور اشاء التؤیر“ 

رہ وہ و ررے 

(فتل راونری نے ۸۸۰۸ ءمطبو کک رصوت الث رآ ند یویئر) 

ان حوالہ جا تکی روضنی جس خابت ہواکہ جب دا بندکی دا تگنواٰی ہوںء 
تر حیائی دای یندییء عمائی دیو بند یو ںکو ‏ دنچ یندی مان لیے ہیں ۔ ان جب ان 
(عمالی دلو بنروں) کاکول عالہ ان حا دلو ند یں کے خلاف جنی لںکیاجاے ء 
فان( عماتوں )کے دو نکی ہونے سے ا کا کرد تی ہیں۔ 
مولوکی عنایت ال شا ورای اورمولوی فلام الد دیو بندگی ھ سی 
مماز بلاکراہت جائتڑے:و او بندی تی امنفھ رش مکاف کی 

٭ہولوکی مین نیاوی دیو بندی نے اپ ی کاب میں مولوی اش نی تھانوی 
دو یرت کے ظط ہاوزنش فی عٹانی دا :ری سے والیشت شف دو ہنی کاشنے یئل 
ککیاےء شس می لعماتی دیو بندی فرقہ کے بای مولوبی عن بیت الیل شا ہج راٹی اورھزعومہ 
دای بندی شخ انان مولوی خلام اید دای دی (راولپنڑی )کے تچ ےم زکوبلا اگراہت 
چائزاقراردیاے۔ اگ لی شف دوب تی ہمان خر کوخارج اڑابل نعفت ھت نی 





در لا ئناخو وو صرے 80۔ رس 
لاک راہ ت نما زکا فے کی ضدد تن ذ مل ٹیس برکور وسوال وجواب ملا جک میں : 

”سوال :کیا فرماتے ہیں علاۓ وین ومفتیان شر تین اس متلہ می کہ 
زیدعام دبینغ سے اوردہاپنا ےک حضرت ولا ناعلامہسیدعنایت الد شاہ صاحب 
رای 2 چیہ زمازکیں ہوئی سے اورحضرت مولا نات الرآن فلام اللہ خان 
صاحبن کے تا بھی زیدکایوں دی خیال ہے۔ ز یناہ ےکہ یر حیاث ال کے 
گر ہیں ۔ ایا آپ جواب د ےکر ہمارے رک دش ہکااز الف ماحیں ‏ آپ جواب 
مل اور ملیل دی آ پکی می نونوازش ہوگی ۔فتتاو الام 

لاب :یسب ا چائی لو ہے ,ہما زان سب کے تی بلاکرا ہت ہو جات ی ہے۔ 
وَاللَهَغْلم ۱ 

بند شف دائر لعل مکرا یف ٣۱۹۷۹_۱ب//‏ ۱۹ 

ر دا الاقاء 

اخ تین زا فشک خود ا فحرخ ۱۳۸۸ی“ 

(ندا ےی ؛جلدا فی۳ ےم طبو تہ اشاحعت اسلامء دی ) 
مصولوبی عثایت الد شاہ بٹاری دوبندگیکی زرسرعلز تی عراوی 


تیبہر اکھی دلو بن دی سے 
پل مولو یم رق ای دیو بندکی نے دو بندی علما کے ایک فبرست درخ کیا سے 
اوراس فہرست کے اخق ام پرلکھاے : 
”دہ علا کرام میںہ جودا بندکی شان ہیں ء جن سے دلو ند بی تکی 
پان ہےء جودیو بنلد کے اکا بین ہیں 
(فتلِ را ونری ۲۳۰۱۲۲ اءمطبو کک صوت الث رآ نو لویئر) 


متاخو ے0 6۲ےے 0چر اس 

اس فہرست می اف رپکاے : 

”رت ولا نا سیرعنایت ڈراہ صا حب بار٣“‏ 
لیز: 

قادین !آپ نے ملاظ ہکیاکہ دیوبندگی علاکی مصدقہ تتاب ‏ فص 
مداوندگی کے ملف مولو برای دیو ہندبی کےنز د یک عماکی خر ہکا یمیٹوا موا وی 
خخایت الد شاہ بخارکی ٤د‏ یو بندگی فرقہ کے اکا برمیس سے سے اورد و بندکی ان 
ادرپچپان ھا جاتاے۔ 

ہال اطیضہ بی ےک( مولویمی ای دیی بند کیا )ا کاب کے مقدمہ یل 
مولوبی ابوا لوب دیو بندگی لھا ےلہ 

”جو ان عماتو ںکود اہ بندی کیےء دو علا ہیں“ 

(فحلِ شراوزنری ف۵۳ ء ہو کت صوت الق رآ ند یوین ر) 

ابذاخابت ہواکہ مولوکی عیب رقاھی دیو بندی سیت وہ تام دلو بندی علا ی 
نیس میں جومما تو ںک دیو یندی مات ہیں۔ 

حیانی دلو بندیی علماکے یی سیے گے الن حواللہجات سے خابت پ”گیاک یڑ 2عمالی 
گروۂ ہرز دلو بند یت سے نمار یں ہے۔ 


در لماع کووجمرںے 8 چا_ _ اس 


حضرتعلامہمولا نع بلک رَحْمَة الله | 
تہ کےنزدیک ورای کر شفاعت ہونے کے 
سجبکگمراو ہیں 


ھنم عباس تقاوریی رضوی 


و غ..۔. ...وچ 


حضرتہملا اح رتو ن وحم اللي علیہ مو والانوار“ ‏ سککعت ہیں: 
”المنار“ اور نورالانوار“ می اشن دشار نے احنا ف کا مو ٹف 
با نکیا ےک ہد اپنے اجتنبادییش ورس تگھی ہوا ہے او ری خطا ھی 
کرتاے۔ نیزم اخاف مس ”عفن ایک بی ہوتاے. متعدوکیں 
بڑتا۔ نی اختقلائی مسائل میں دوا لک موفف رن وان ےج بپییں 
ہوسکتے سیفن برایک می م فف ہوگاء انا فکا مو قف سے ۔ مان اس 
و برخلاف معزلہ کے ین کی ہرندوڈ ری پراوتاےء اورموائخ 
اختلاف میں جن“ تتعددہوتا ہے نی اختای ممائل میں الک الک 
موقف رکنے وا نے بھی یچ ”عفن پرہدتے ہیں ارح نے متزلہ 
کے اس موق فکورال قراردیا ےکہ ایک جیدایک چڑ کو علال' 
کپتاے اوردوسراا یکو ”تراحم تا ہے ۔اب دوٹوں یں ےکی ایک 
یکی راۓ عنداادڈ رست ہہوگی۔ ایک بی جچزعندادڈ رن علالی “بھی ہو 
اور ”ماع بھی ء ایی اہی ہوسکنا۔ بچھرشارحع نے وضاح تک ےک 


متَالتامو لو 60ر 0لا _ سس 
بارے اور مت لہ کے درمیان بیرجواختلاف سے نکی امور کے بارے 
یس ہے انا دی ئیں گج ینتنی ممائل یس جھد ری نکی خطلاکے بارے 
جمارا ور تل ہک نرکورہ پامااختلاف ے۔ یہ اعنقادیی مسائل میں 
لاک پارے یز نین سے کیوککہ اعتقادی اممورییں ج اکر نے 
دالا یق کافرہوگا یے بببودونصارگیٰ۔ پاگھراہ ہوگا یس روانش, خوارح 
اورمخنزلہ وغیرہ۔ ج بک اتاد یی امور اختلاف بل ہخاء نہ 
کفادرزگری نر انار“ یل ے: 
٭وھذاالاختلاف فی النقلیات دون العقلیات: أی فی 
الأحکام الفقھیة دون العقائد الدینیة ۔ فان المخطیئ 
فیھاکافرء کالیھودوالنصاریٰ ۔ أومضللء کالروافض 
والخوارج والمعتزلة ونحوھم“ 
(قَنِالَفْمَارشرح نَوْرْالانوارء بحث خطاء المجتھدوصوابہہ 
صلی ۲۵۷۹ء مطبو تہ رجا اق سط غخمزلی سٹریٹ.أُردوپاڑارءلاہور) 
ای ونحوھم“ برعاشی لات ہوے َوْرَالانوار“ ای خرن وید 

موا نا عپ یلاعتو مه اللہ عََ کھت ہیں: 
”قولہ:ونحوھمء کالوھابی المنکرللشفاعة“ 
(ِقَمْرِالَفمَارشرح تَُورَال]نوار: بحث خطاء المجتھدوصرابہ 
صفی ۲۵۷۹ء مطبو تہ رجا ار ضر غزلی سٹریث. أُردوپازارہ لا ہور_ الضاء 
۱۸۹۳ “ڑوم المصباح؛ اُردوپاڑارءلا ہور) 
”ار ں کاٹول ونحوھم“ (وغی ر٥‏ ): یے شنا حع تکامگر وبا ی'“_ 
یی ارب ن گرا ہو ں کی شال یے وت رواش, خوارح اور لہ 


متمامی وو و6 ری 0چر _ 6س 
کا ذک رک نے کے بعد گے جواجم الا و نسح و ہم“ ”اوران کے جیے دوسرے“) 
کھاہے :یس کات جم لفظ وخی “سے چم ن ےکیاہے۔ ا سکی مثال می نشی ححضرتت 
عا میم ولا با عپ ینوی رَحَمَةُ الله نے مر شفاعحت نو بال یکا ذکرکیاے 
کی نز آوررواٹض وخوار نج گمراہہیںءاسی طرح شفاعت کےمگ رپا یچھ یراہ 
ہیں۔ 


رز لاتعی کوچ ]۲ رن چا- _ :اس 


(قا:ا) 
دست وکر ببان“ کل می لف مسائل پرد یو ہندیی علاکی 
ابی اتی کے بیان یہ شفضل الابی جواب بنام 
سے ےم 


دو بندری نما جگی 


نواپ 
وستث - ن 
ملف :مخ عباس تقایری رضوی 
داو دی ولوئی کےتتھ تھا ہہون ےک یکھالی ان کےپ خرن صولو کی زبلی: 
پل مولوی شیع مود اح سی غیرمقلد زین مولوی اساعیل سلفی خی رمقلد) نے 
اپنے ہم مخرج بھائی مولوی بدا پیر دیو بندیی (ابن مولوی سرذراز ان صفدر 
گکہھیزوبی دیو بندکی )کویخاط بکر تے ہو ۓےککھا ے : 
پ عص اق کی وج تتحقید می کے نز دی کبھی تاب قیو نہیں 
او رآ پ کا ننھدار بی ہم عصران چا لکی پیدادارلر مجر پر سے کیا ىہ 
دیو نر یوں یم شس کھیں ہے حضرت مولانا سی رعنایت الد شاہ صاحب 
اریہ قاضی ورام راورقاضی شس الد بین صاحب تلق پک ہم 
حصرازہ پان یں ؟ کیا یج آپ نے نع ےیل کی سکہاءکیا مولانا 
شب اص عنانی اورمول ن ور ٰی کی یں می س کیاکی تی ؟ بھی ھی سے ئل 
موجود ہی ںکیاا نگیو ںکوکمولزااوراس سنڈ ا کی بد پوس ےآ پ لوگوں 
کوآش ناکرنا جات ہیں ؟ کیا مولا نا اد مدکی اور تقارکی طی بکی عالیہ 








در لمْتامی وو )رر بجر اس 
0ئ گی کون کے نان تن گی ہے" واعو 
و 006 
کیا رہ با ای پیا رک علامت سے؟ خدارا ال ںکوڑ ےکرک فکو نی رۓے 
د سے اوراپنے علما کینصحی ککا سا مان ض سی“ 
(علیاۓ دو ہن رکا ماصی تا رن کےا سی میں ؟م یلا ے:مطہوے اوارونش رالتحیروالء (ا ہور) 
دو بندکی علما کے دست وک ببان ہو ےک یکہھالی ٥سا‏ جدنمائن دیو بندی 
کی ذہائی: 
بل گالی بازہ اوریگل میں مبارت تا مہ ر کے دانے ساجدغان دیو بندیی نے 
مولوئی ران ین دإیٹری او سے ہوا آے اک و ویان 
مس دا بندی مسلک کے ملا کے دست گر یبان ہون ےکواجما لآ ان الفا ظا ٹل بیا نکیا: 
”مار دارامعلوم دا بند سےعبیرالڈدس درگ رَحمّے الله کے اہ رٹکالا 
گیا۔ حالی ہی میں زاہد الراشدکی صاحب کے خلا فکیا بج ےکی ںکھا 
گی می زرل اع سن مم اف ار یگیل مزاحب کے بارے 
سکیا ھکیس کے ؟۔ اوراسی””وفاقی المداریل کے اند رخ الاسلام 
موا نا لی عثاٰی صاحب کے خلا ف ن یآ کا ےکہ بر ٹیگوں کے سودگو 
علا ‏ کر رے ہیں۔ معاذ اڈ موڑا نا ف‌ل الشنی صاحب کے غلاف 
رائۓآ ہچگی ےک روہ وفاقی المداررسں می وف انداز یکرت ہیں“ 
مولوب یجن نوازیھنوبی دلو ہندی( ای سیا وضحتا ہہ )اومولوئیپتصل الرحمان 
دلو ہندہیل(س برا ہشیت غعلیاۓ اسلام(ف ))دست وگ بیان: 
نول دیو ندکی علاء م وو یجن نواز دیو بندیی (ہالی ” سیا وسحاب“) کا مولو نل 








در متام پک 10ر رہ ہار اس 
مان دیو بندی (سربراہ بحجیت علاۓے اسلام (ف )) کی شیع نواز ہی ے 
شمد بدا تا ف تھاء اس کےروت ذیل میس ہیی ںکیا جار سے ہیں- 

()۔ دیو یندگ نرہب میس نسغی رشحم وت“ اور فا رہہ کہلانے 

وانے مولوی منظورپچنیوٰی یسل ے اۓے متمون ”1خ ری ما جات 

سےآخری دیدارک یس مولو یح نوازکھگوىی داد بنر یکا رف بقل 

کیاے: 

ناس شصیحت کے بعدفرمانے گ ےک ہآ پکبھی اپنی جماعت (درخواقی 

گمروپ) سے اض وجوبا تا تناء پردیدہ ہیں اوریش ھی اتی 

جدراعت (ففل الما نگروماقی )کی شیع نوازیالیی سےکبیدہ خاطر 

ہوں اورلقر با سچھوڑ کا ہوں'“ 

(ماہنامہ غخلافت راشرہہ ٹیل آبادہ ۹۵ء ۹۷۔ من نوانشویدفس بات 

فروری۱۹۹۱ء۔ ایا ص ۱۸۳سا لنا مہ خر وہ لا ہور۔ باب ت فرورکی ۳۰۱۰ء) 

لوٹ : تو بین میں دوررج الف ظا ءاصل عون میں موجودہیں_ 

اس اقتباس بھی معلوم ہو اک مولوئی جن نوا زگھنگو بی داد بندہی نے مولوی 
وو رر لا ینز رڑے۔ 

(۴)۔مولوکی المیاس بالاکوٹی دا بندیی نے مولو یجن نوا زچھگوبی دہ بندگ یک 
سك پر نوا ن”عالات ووا ات“ ال متقالہکگکاےء اں مالک پہلا اتا 
اطط ینس میں مولو یل الرحمان دیو بند کوشیم فو از اگیاے: 

“اشن کے بحدکیی کغ پپچی ساست نے نیازغ اختیارکرلیاء ان 

انفخابات کے سج میس مرکز می چچلزپارن وسر اقترا رتنئیء ج سکی 

چیترپین بلگہشریک چیتر ین (اں بئی )مس بے ری ( ےےنظی راز 


در ما ئناخو رین چ8۔ ‏ اس 
اقل ) بٹوصاحبہ نے وزارتیٹضن یکافک ران سخیھالا جحثرت موڑ نا عق 
نوازجھنگو یی کے لیے میدن قیامم تکادن تھاکہعالات رف رفتت بیہاں 
کک ج ےک امرالی آسل شیعہ ووبھی مفربی طرزتلیم وت یت بافنۃ 
(ک بلاٛھم چڑھا) ایک دوشیزہ ایک ظیم اسلائی من ککی سربراومللت 
نکی ۔آپ بڑےکرب سے دوچارہ و گے اورا پت یلست گھو لک را کم 
میس بنا ہو گ|ئ ۔ مولا زاعضن نوازواحدمقتزرعا لم تےکہانہوں نے اسی 
وقت ال پر لااظہارفرت دبراھی ششرو ںکردیااورمنیں سے النع کے 
اورمول ناف‌ل الرمان صاحب کے تعلقات می سکشیرگی لی شردح ہو 
17 2 
رما نکاردیہ کک دارر پاے, پٹ اٹ کے احیاءاوراسےکام ٹیل ان 
کے اس رو ےکاخاصنل دنل در پاتھااورمولا نا کے سب سان ےتاج جم 
ا سکھھا کا خوائص اورساتخییوں کے علاد ہوا میم نہ ہونے دیا اوراپتا 
اڑ ورسوںٔ امتعا لک کے ان کاژر غعمل ھی رن ےکی خعمی ہیں گے 
رہے۔ ظاہری رفافت کا رم مقائم رکھا اورکڑے شکابات اور کٹ 
دتبادللہخیالات جاری رے۔ اس وقت موا کوپنص اکا بر واسا تجزہ نے 
مخورود اک ہآ پکاششن اورحنت کا اورآ پک بجماعت سے سیا کی 
وا می دومتضادراستوں پر ققدم ہے ۔آپ بر لا شیع ہکوکاف کے ہیںء 
یڑ ملک وعات کے وشن قرارد نے ہیں ءآ پک تقا ررش بیہا کک 
مان ہوتا ےک شمیعس پیالی مس بای پٹے ہیں اس پیا کوٹ ڑدوء اس 
کپ مس جاۓ نہ بویٹ مس شیعہ پا چا ہو۔ وغیرہ۔ اھ رآ پکی 
اعت کے مو( انل الرمان صا حب شع رہنمانوں سے گلل 


در لمع ینعی 0و ۲ر1 ہار اس 
زج زین نع ےت ات فک فی شیک وو ہیں ان کےساتھ 
مت کہ جدوچہد کےمنصو ہے بنار سے ہیں مولا نا یرد پا وی بڑھر ہاتھاء 
ادظرا ن کال بالہ ا نات اکہ اوھر ےکم ٹفکردوسری طرف چاموں 
اورعلما ‏ ۓےکرا مکی دعڑے بندیی میں می اھ یکر دارشائل ہوء ای لیے 
ا موی ٹل الرما نگمروپ سے تےیے نے گے“ 
(ماہنامہ غلافت راشوہ ٹیل آہادہ ص فی۳ ۱۵ء ۱۵۲ ۔می نوا نشیف بایت 
فروری ۱۹۹۱ء الین ص٥‏ ۹۵۔سالنا مس خ رو لا ہور۔ بای تفرو ری ۳۰۱۰ء) 
)۳١(‏ مولوی الیاس بالاکوٹی دیو بندیی کے مال کا دوسا اقتاس ذمل یں 
ملاحطظ یجس می سکھھا ےک مولو نل الرحمان دلو بندکی نے مولوی 
جن نوازجھنکو یکو پھاریی اکشریت سے جیے کے پاوجو تن جحجیت علام 
فلالرما نگ روپ“ تا بکاامیرتہبنایا: 
نماد جو نی ۱۹۸۹ء ئل [اپہورٹیں یٹ لا نل الا نگروپ سے 
صوبائی انتقابات ہونے نآ پکیصو بائی امارت کے لے ناھزدگی ہوگیء 
ایارک اکن زین نے یت سن ولاف ال اص نے 
عراحل تکیءاس سے؟ کے اکن ہے۔ حاصل بای اک مو نا جھک وی 
کوامارت سے دس ت کٹ ہوناڑاء اورایک صاحبء نج نکا وکا وسابقہ 
عناص کی ط رح بی تھا کو گے لا مایا“ 
(ماہنامہ غلافت راشدوہ ٹیل آہادہ ص۱۵۳ ۔ جن نوازشھ یرہ بابت فروری 
۹۱ء الی صم ۴۹سا لام رشرو لا ہور۔ باب تفر ورگ ۲۰۱۷ء) 
اں ے بھی معلوم ہوتا ےک ان دونوں دیو بندی علا می اختلاف 
موجورھا- 


را ممَ ناو ووےجرں جٹچر سس 
ذریرگزۓعولم الک( نْ ہرک کازاخزا نات 
وواقعات'' کے ووا ھتاس ٹآپ نے أو برعلا نظ لیے ہیں ءاب ذیل 
جس اس مقالہ کے وہ خین اقتباسات ملاحظہ سے جو ”ماہنامہ خلافت 
راشرہ, ٹیل آہادہ ص۵۳اء ۱۵۳۔ عق نوازش یرہ بابت ٹروری 
۹۱ء“ بی نو شال ہیں ءجیان مکچی منقالہ جب ' سا متام مرشروہ لا ہور۔ 
بایت فروری ۱۰۱۴ء“ کے امیر زیت شجینیر یس اح ہوانو اس 
1 
مولوکی تما ءاڈدسعدتجا غآبادییاد لو بندی ہیں- 

پ ہلا اغنتبائں: 
(م) ”مو ناجھنگو بی اورصضرت صاجزاورفخل ا ان صاحبکی 
را پر ایر اہول ازال عرخورمولا انل نع اف ےکن 
لیے اقمرابات کیے جس سے حر جھگو بی صاح بکوڈ ورک نا قصو ری“ 

(ما ہنا خلافت راشدہ نیش لآباد ۵۳ات نو اش یہر باب تفروری۱۹۹۱ء) 


دوسراافتباں: 


(۵)۔”'مولا :انل الرہمان صاحب نے جھن ککادور ہکیاتذ انی ایک 
تقریب میں مولا اح نوازیرطاریہ چوئی سکییںء پھ ارک ن نیع ل بھی 


ہویۓ'۔ 

(ماہنا غلافت راشدہ نیش لآبادد“ فی۵ ۱۵ت نوانش یرٹ باب ت فروری۱۹۹۱ء) 
تیسراافتباں: 
(٦)۔‏ نک صدرغلہ منڑڈیی کے ایک بڑے جلےہ یجس میں جمیت 


متق یع مو ے000 رن 0ر رس 
علاۓ ہند کے امیر ضضرت صا مج زاد مو نار اسعدرصاحب مر ی مد لہ 
بھی نشیک تھے مول :افل الرما ن بھی ساتیہ تے موا ناچھگو یکوھی 
زحو تق دی اگئیء مولا نانے مر کروی اورمو انل ا/مان 
صاح بک آمد تق رھ وڑکر لے گے اورا نکی طر فکوئی القات ٹہ 


2 


(ماہنا غلافت راشدہ نع٥‏ لآبادم فی۵ ۱۵ت نوا نشم یہر باب تفروری۱۹۹۱ء) 

مولوکی ال یا بالکوٹی دی بندیی کے نی سی گن تمام اقتباسات سے مہ بات 

ایت ہولی ےگ ہ: 

ا۔- مولو یکل الرجمان دک بندی شی نواڑزے_ 

×٢‏ مولوینھضل الرجمان دیو ہندی نے ابی ریش مولو یع نوا زچھنگو کی دیو بندی 
پلیہ چو یی سکییں۔ 

۳۔ مولوبی جن نوا زجھنگو بی دیو بندبی نے مولوئین‌ل الرجمان دلو ند یکا پائیکاٹ 
مرویاء مونوی نل اسان دب بندی نے خوگھی مولوی بن نوا ھتوی 
دلو ہناد یکواپنے سے ورکیا۔اود یوں دوفو ںکی رائیں چد اہوکیں_ 

کت عائق نی کن وارق کا یت اب ہب ک اروا رض 
ران نے مولوی جن نوازجھتگو یی دیو بنر یکواپی جماع تکاصو بای امرنہ 
نبا 

(ھ)- دیو بندی فرقہ میں تطیپ پاکتا نکہاا نے وا نے مولوئی ضیاء ات ای دیو بندی 
نے ا نے ممون' نول ناح نوازہ خدا یآ وا سککھھاے : 
”نس پہ بات خہایت وڈڑقی س ےکپچ ہو ںکہ جمعیت کے پا پور 
جماعح تکی جوافرادکی قو شی مو ناج نواز نے تیادہ افرادی قوت 


در ممَ نمی 08ہ ر۸ 0چر _ اس 
تححیت عاما ۓے اسلا مکوعطا کی ہم جب موم ناطن نوا زکووتا رنضلیت 
با ند ےکا وق تآ پان بجی تکی لیڈ رشپ نے بیگروجی سیاس تکاکردہ 
نرہ اتعا لک کے موا ناف نوا زکواس منصب سے وو رکردیاء جس 
کے وہ جھائتقی محن تکی وجہ سےجی دار تہ اس کا جس قررافسؤ ںکما 
جا ےم سے '۔( ص۳۳۵ ۔سا لزا مرو لا ہور۔ باب تفرورکی ٦۲۰۱ء)‏ 
بتقول مولوبی ضا ءالقانھی دیو بنلدکیء بجی ت علما ۓ اسلا مکی قیادت ( می مولوی 
نل الرمان دیو ہنی ) نے روہ چجھکنڑے استعا لک کے مولو یجن نوا زجھنگوی 
دلو بندگیکواسش کے منصب سے وو رگردیا۔ 
(۸)۔مواوی حقخ ٹواڑجھنگوئی :زان نی اوزھواو تل الرعان دا یندکی کے اک 
دوسرے ے اختلاف اور پند یدگ یک وج ولوکی ضیاء القاھی دلو بندی نے 
ان الفاظ شیش بیا نکی ے: 
”نحعیت علاے اسلام (ففل الرعا نگروپ) میس نو موا ناج واز 
شب یت وش ریک رے؛ا یش ن بھی جمعیت کے پلیٹ فارم ےلواء بححیت 
کوایک مضبوطا اف اوکی قوات عطا کی ہمگرموڑا افقل مان ے پیش 
ای رۓے خخے ا سک بڑی ذض بی یھی کہ موا ناف‌ل االمانء 
مو ناجی نوازکی رگ رمیو ںکوفرقہ پرسقی پرعنی قرارد ین تھے مولا نا 
نوازنے ”شی ہکافر“ کاجوفعر “امن ساو صا کود یا تو موا نل 
الرہمان ال سکو پپندیکی ںکرتے تے اورنہ بی موا نان نوا زکاطر ابق کار 
ہیں پنرتتھا۔ بی وجہ ےک زمدگی کےآخ ری دنوں میں موڑا ناج 
فازے مو نل الرحمان بتقیشٹرو نکردی تی“ 


( ل۹٣۲‏ ۔سالنامہسرشرو لا ہور۔ بای تٹروری ۱۰۱۴ء) 


متاعو ے0 جع ر1ں تار ا٣س‏ 

لوٹ :تسین میس دررج الما ظہ اص لمضکمون یل موجود میں _ 

مولوکی ضیاء الق ای دیو بندگی ٦‏ .×× ہوک مولوئ یج 
نوا زکھتگوی اورمولوی ض ال مان دیبندی میں شبعبت ‏ وازی ہے ملہ 
شر یراخلافتھا- 

(۹)۔:قاضی طا ہی ال ہنی دای بندبی نے اپنےمشممون؟ 2س راغ رسای ان سرا ا 
رسال“ بی آص فی زرداریکود لال سے شییس فا ب کیا ہے اورمولوئینضل ران 
مرمنل فلت اق یدک جائظا نفد 7ا2 ارد ہے 
-- 

”ا سنضحییل سے بہ بات شابت ہوگئی ےکیکم ازیکم آصف گی زرداری 

کے شیع ہونے بیل ذڑڑہ براب شر ک کیل بوسلما مان رہ بات ضرورباحث 

جب ےک ہآص فی زددارگیء جمجیت علاۓ اسلا نعل“ اور”نف““ 

کے نفائع مین مو ڑا نا بی ان اورمو :افضل الرجمان کی کل رپوراوراعلاعے 

عمایت واعات سے صودر پاکتتان شب ہہوۓ ہیں اور جحجیت علماۓے 

اسلام کے ممبران صوبکئی لی تو بی ای اوریئنٹ نے باتقاعدہ 

طور رشع ہاأمیروار ےن میس اچيئۓ ووٹ ٹ استعمال لکمر ے موا نا منظور 

انی ء ان کے نف دب یکنندکگان اورشہداۓ نا موی صحا کی اروا ںکو 

تو بت پایا سے '۔( صف ۳۲۹ ۔سا لام رشروء لا ہور۔ء باب تفروریی۱۶۱۰ء) 

اس سےمعلوم ہوا بقول قاضی طا ہی الہاشھی دیو نی مولو نل الرجمان 
دا بندی اورمولو یچ لن دای بندبی نے شییع وا زئیکاا رکا بک کے اپنے اکا کی 
اروا ںکوقوبنپایاے۔ 

(١۱)۔سااقی‏ س یراو نسپاوسحا “ا بوماد یہ مولوئی اششحم طارق دا بنلدیی ن بھی 


در مو0 4ری ور _ اس 
مولویی جح نوا زجھنو کی دیو بندی اورمولو یل الرہممان دیو ہندیی کے درمیان شیع 
کے تلق اختلا ف کا ذک کیاے: 

”نب موا پفخل ا مان صاحب, شیعیت کےکف الیم دا 

بکربست ہوجاتے نو مولانالطف الرمان مصا یانہ انداز بی آ گے 

پڑت 

(مر اج میا ے؟ ء فی ۶۹٤۲ء‏ ناش مولوی شتاء ارفدسع تجاح آ بادئی۔ ن ‏ ےکا پن: 

جائح دیق نوانشجیدہ بل کصرر) 

(۱۱)- م ولوب پنشھم طا رق دای دی (سا لق سر براوسپاوصعا نے مولو نل 
الرجمان دلو ندرک یک اط بکر تے ہو ہر یدکہا: 

جب ک کآپ نے ا نکی سرینتی فرماکی انہوں نے بھی آپ 

کوبرملاقا شی مکییااورآپ ک ےگ نگائے ملین ج بآپ نے یں 

کا نداز یی سکیا بلک برملاطود پہ بیکہناش رو کرد اک جوسپا سحا۴ٹش 

رہناجابتاے دہ جمعیت کچھوڑدے او ریچ را خبارات میس مولا نا کے کین 

اورکاز سے اعلان ان لت یکن ےکی ھرش رد کی بت ۱۹۸۹ء کے خی 

امج ان کے اسلا مآ ہاش آ پک ر پل گا ہبہ پا روک ایک 

صلی سے مل کے لیے یھ ربے کے بعد میں ہوک لے جانے 

کا واقعہ یڑ لآ بات پچ ردہبرملاطور پہ نک فآپ مرا تکی پالیمییو ںی 

خاش تکرنے لک گئ تے بللہخود جع تکا مییران کو کر سا حاب 

کے ین کے سے وقف ہے ۔ 

(میرشر م کیا ے؟ء ۲۸ء ناشر:مولوںی شاء الد سع تجاح آبادمی۔ لے 

کا پن :جا مجارت نوازشمی/ء جن گصرر) 


ناو ل8 ]۲ر ںی ار ٣س‏ 

ترواشم وم لے تی تل دک یگیار ہو یی شری فک ضبہت 
سے دلو ندکی علا کے یں بے گے ال نمگمیارہ اقتبامات سے می بات غابت ہی سے 
کی سا وعھا “مولوئفضل الرجمان دی بند یکوشی ٹوا زشھقی ہے ان دوٹوں دھڑوں 
یش اس نق پشد یداختلاف مو جدہے۔ بک یآپ نے ملاظ کیا ہمولویی انشمم 
طارقی دببندی نے مولوی معضل الرحمان دی بندی کے ہوالے سے 
صرا ا لھا ےکہموصوف برملایہ بات سکجتے ‏ ےک نج ساسحا بے مس رہنا 
نے یرحسد ظا اطم( نالعا نے )قرب ۰ 
اس سے بھی ان دونوں جماعتوں میں موجود اختلا فک شر ت کاپ چتاے۔ 
ازاجودیوبندیی ”پا حا رآ یلعا ملک سویزو ظاف 
کاانکارکرے گا اس کوان حالہ جات کاج اب د ینا ہوگا جو دا ے ان دبوں 
جماعنوں کےاختلاف کےساے میس ہیں سے ہیں۔ 

میاں شی شج شرقورکی کے مل ککی بابت دلو دی تشحرکتھا 

پہلاژرً: 

مولوئی ال یا سکحسن دیو ہندی نے اٹ یکناب ٹیل میاں شی مج ش رتو ر یکو بر بای 
شراردیے ہو لھا ے : 

ہرآدی جانا ےکرشرقجورکی صاحب بر لو یکم گر ےعلق رھت جے 

(فر تڑھما یت کا شی جائزہ صفی+م مرو ملبر ال اللنیۃ دجما ء ے۸ ۔جوبیء لا ہور 
روڈ ہس مگودھاٹ ال ی۲۰۱۳۴ء) 
دوسراژ: 

بل کہ دوسربی طرف مولوی الا سکصسن داد بندکی کام یدمولوکی اواب 








ہس ہہ بد حےغےو کت ال عليیهکا 
ماگ '( موم دومای دیو بندیی مہ انواراھ رین لا ہور۔شحار::ا/) میس مولوکی ال یا 
سن دای بند یک ی تخل اکرتے ہے ابر تکمر ےک یکو سکرتا ےہ ہمیاں 
شی رش ش ری دیو ہندبی مسلک کے نوا تھے 
بل ڈ اکٹ نماللدکودد یو بندگی نے بھی ایت یکتاب'”مطالعہ پر یلو یت“ جلد اڈلء 
صلے ۶م کھاے : 
رت میاں صاحب اپنے مسلِ عالی یش ائس بات کے قائل جے 
دیو بن بی چا رنوری وجود ہیں ءا ٣‏ ےکآ پ دلوبندی 
میک رھت تج 
وو وہوجتویلہ٦آ/|ہآ‏ 
ج مولوی سرفر ازمیکعڑوبی دیو بندکی نےککھاے: 
نپ رکال جضرت موا نامیاں شحدصاحب تقو ری رَ مه نے 
(عبارات اکا رپ ۳۴ء مطلبو کت صفدریی نزد در ےپ رت العلوم مگ روج رانوال) 
پلمشپوردی نی پر ساسینی ےا تاب می ھا ے: 
)١(‏ حفضرت میاں شی حرش توری رحمة خمَة الله عَلَٰ“ 
(۴) رت میاں صا بث و ری رَحمة کن تعالی عَلَيه“ 
(حکابیت مرو فا: شھولہ ماہنا مال رش لا ہورءدا راعلوم دیو یزیر جلر:٣ءشًار(:۳ء‏ 


با ہتفر وریی مار ے۱۹ءءای],خ٥ف‏ ۱۹ء ا٣‏ بمطوص داز الا کول 
7 ا ا ا ا ا 
ا شمادا بکالوٹی میا نظائی روڈ لا ہور) 


٭حافظط اکرشاہ بخاریی دیو بندگی نے اپٹ یکتاب ”نت دکرہ اولیاۓ واوید“ 


در مل عو کو ۲ر 80 ٹس 
(صخی ٢۶۵۰۴۹۹‏ ءمطبو کہ رحاشہ اراس غزلی مٹریٹہء أُرددبازارہ لاہور) مل میال 
شی شش رتبور یکا نکر دشائ لکیاےءذیل میس چنداقتباسمات ملا ض کر بی ئن میں 
میاں صاح بکا نام بہت کتقیرت سےل اگ ا : 
رت میاں ش رش قَورىرَخمَة اللہ عَلیْه“ 
(ات] )۲٦٢۹ ٦“‏ 
تحفرتمیاں صاحب 
(اینكٰ٢)‏ 
تفرتمیاں صاحب 
(ا هؤے٢)‏ 
تفر تمیاں صاحب 
(ای٥۸٥ٰ٣٣٢)‏ 
”صفرت میاں شش رصاحب شرَوررَحخمَة الله عليه“ 
(ان)۸4ذ٣٢)‏ 
”حفرتمیاں صاحب تب رفس یر“ 
(اینا؛.كٰ٣٢٣٢)‏ 
ایک مگزیددوی“ 
(ابن]/۸۵٢)‏ 
نآ پ ایک ول ی کال ت“ 
(ابن]ء/ڑ۸۵٢)‏ 
میاں شش تیور یکود ا بندی قراردہینے وانے دیو ہندگی علما کے حوالہ جات 
سے ثابت ب و اک رمیا ل صاحب دیو بنلدگی مسلک کے ان علما بیس بت نمایاں مقام 


رر ناو 8ے 6ر ںی حجار اس 
رک ہیں۔ 

میاں شیج رقبوری کے تلق بی بی گے الن حوالہ جات سے بیج ایت 
ہوگیاکہ اگرایک طرف مولوی الیاس سن دیو بندی میں تذدوسری طرف 
زانرےلکوورفل مل وگ علق زتگزوی رفک 
صولوکی ابا یوب دیو بندیی اورحافظ اکبرشاہ بفارکی دیو دی ہیںء بیردوفوں فی میاں 
شی شش ترک صاحب کے مل ککی بات باہم دست وگ یبان ہیں۔ 
قاصی مہ سن دیو ہنی اور مولوکی ضیاءالق ای دلو بندی دس ت وک بان: 

مشبوردی ہنی خیب مولوٹی ضیاءال کی دو ہنی ( نیم لآباد) نے تقاضی 
مظب مین دیو بندی( بچکوال )کا روکرتے ہو ےکا ے : 

”من اوھرہارے پچگوال کے ایک مزرک ہیں قاضی مظب رن صاحب۔ 

الد ان کا چھلاککرےہ انہوں نے اپنے ماہنامہ رسالہ ”ضف چاریار 

کا پیٹ ئھرنے کے لے ہارے خلا فی فک کون“ چلادی اور بڈے 

لو کے ساتھ ہماربی ا س کا میا یکوسبوتا کر نے کے لے ون 

نون ککعت ط 0 6 

کیم نین دادد کے ان كت 7غ نہیں نے م سے رابطہ 

کر ےکی ض ھک یکوئی وضاحت طل بک رن ےگ زحمت شگا۔ ہار 

زندگی میں ہار تا کھت وفت ا نکی اس قد ر بے انصائیٰ سےا نکا 

مقام کتزابلنر ہوا؟ با انئیں کیافو ار صل ہو۴ اشن ےتظع ظر 

ہار ےگنن ساتھیوں پر یہ پرو پین و اشرانداز ہوا۔لن ہم نے جمائقی 

اہی کے تل نا موٹی اخقیا رس ےکی اور اپ ےکا می گن رے۔ 

انی دٰوں لا ہور کے اجلائس میں بذدا لی تق رمرکرر ہاتھا۔ مل مات 


در مت نمی 0و ۲ ر1ں تچر- _ اس 
می سکہاکہ اختلا فا تکو ٹ ےکر ن ےکا ایک ذر مجہ جنگ ہہوڑا سے اور ایک 
پیل میاں بیو یکا چھمڑ انیل کلاس ج گان نے ابھی 
ٹتی ہی با کش یک ایک شیع ولاک ہآپ میاں وی کی با تکرے 
ہیں بیز دای کی ھی شادی ہنیس ہوئی۔ بیس لن ےکہایذ دای کیا شادی 
کاانظام میں کرادیتاہوں۔ اس ن ےکہا رشن دکہاں ہے؟ میس ن ےکہا 
شاہی گے ء وہاں س بک سب بذدا ی کیہ مقیدرواورہم نہب 
ہیں رم یش من بھی منالی ہیں ۔ میرک اس بات پہ ہا لنقہوں 
گور اٹھااورشمبہوں کے مشہ لیک ےئ ءا نے ون اشپارٹولیموں نے 
یح را کی و رئش یکو لک رن ا تے اک ظ نان آظر 
ھٹا ہوا۔ اخبا ری مرکو ا یما نکا جتزدہنالیاگیا۔ ہما ر ےکا رکنوں نے بھی 
شر ا کے لق کن کا و لیران ان نے کان 
بھ انیس اورآواز ےکس ۔حظرت تقاصحی صاحب موصو فلوکھی رسالہ 
بچھاپنے کے لیے مواد لگیا۔ ددو بھی صرف ا ےآ پکیٹنل مند بللہ 
عق لکل“ اور باتی س بکو بے فقو ف بت ہیں۔ شی العرب ائم 
حضرت سی مین امیر کے غلبیفہ ہونے کےکھنیٹہ میں انیس اووری 
گچھوئے بڑ ےکی عمز تک یک گی پر وا ہیں _ حا امہ یں خووگھی حضرت 
من کامریرہوں“ 
(سالزامہرخروء لا ہو _ امیرعز بی تشہ یہ ص٥۳۴۳‏ ۔فروری ٣۳۰۱ء)‏ (ہاریے) 


ز_ عُعََا تو 8 ےر ںی حجهمه۔ ٛ2س 
ا:۱۵ 


دلو بندیی خود بد ےکڑیں کاو ںکو بل دتے ہیں 





ینم اس تقاوریی رضوی 


دیو ہدیا ریگ رے٤:‏ 
شجرھانوی کے عاش'۔'التقریرات الرائعة عَلَی الِیْسَائی “ 
مس دلو ند لو ںکانربیف: 

و مرتھالویء دامع کے ممدوں ہیں مولوی انی مانوی دیوبندی ے 
للفوطات ”الا فاضات الیدمیے شی متعددمقامات پران کا ذکر بہت انگ اندازش 
کیالیاے۔ ا نکو یرت بھی سے ہیں۔ اٹھی ش مم حرت خھاندی نے 
”التقریرات الرائعة عَلی الِنْسَائی“ ٹیس دومقامات پر امام الو ہاببیر ین 
عبدالو ہا ب نیرٹ یکا دکیاےء ذیل یس دوفو ں جوانھی یل سے جار سے ہیں اورساتھ 
متعلتہ حدیٹ شریف کاگمل من من یکیاجار ہے جس کے ذیل میں عاشیہ 
ککھاگیاے۔ 

(ا)”اخمَرَنا ناڈ بَنُ ٭+ عذ سَ۰ عَنْ مّعید 

لْمُنریِہ 0 ب َعَك علٌ وك بالیکن بن هَيبَے قَييَة بریَيهَا لی 

7بپ پىپبپب بی تم ”َقََمَهَ رَسُول الله 
صَلّی الله عَلَيْه وَسَلَمبَْنَأرَعَة تر فوع بيي حایس 


دوت دوہ :ہت جھتھھ 
الْکََعَلِيٰ, َغيَنَة بی بَذرِالقرَارِیٔء وَعَلقَمَة بن غلاتَ 
لعَاي ری تم اعد یی کلام وَژیے لطابيٰ ثمَأَحد یی 
تَيَهَانَ“ء فَغَضِبَتٌ قُریش, وَقَال :مَوَّةَأَخْری صَنَادِيد قُرَیْشِء 
0 تعْطی صَنَادِید تَجْدٍ وَتدَعَاء قَالَ: إِنمَا فَعَلّتَ قَِكَ 
27 فَجِٗ رَجْلُ کے الِلْعْيَةمُتْرفٹ الوَجِتَِنِ 
صَائْرَالْعَیتي تَاتۂ الْجَبینِ مَخْلُوق الرَاَسٍ فَقَالَ :اتی اللّهَيا 
مُحَمّہ قال 2 6 یت 
ٌ ولا َأونی؟قَال: كُم در الرَجْلء فَاسَاَدَن رَكُل مِنَ 
وم فی قعله ۔يرَوَ ان حا ین الَلیِ کا تس ال 
مت ا إِكَ مِنْ ضَنٔضء ھَذا قَوْمَا بفَرَنُونَ 
رکا بْجَاوژ عَتَاجِرَهُميَشَليَ اَل الإِسَام. فرح 
َمْل الاُزنان, يَمَرُقُومَ مِنَ الِسُلام كَمَا يَمَزّق المُهُمْمِنَ 
ریہ لن أنرَكنهُْ لافْلنهُمْ قْلَ غاد“ 
جفور ال تس رف ا مَا تَا کے 
کے حت اما الوہابیر ھ بن عبدالد ہاب تیدکی اوراسں کے پپبردکاروں کا دک رتے 
ہو ۓےکیھا ے : 
”کمایمرق السھم الخ یرید ان دخولھم ای الخوارج فی 
الاسلام شم خروجھم مند لم یتمسکوا منە بشیء کالسھم 
دخل فی الرمیةء ٹم نفذ فیھا وخرج منھا ولم یعلق بە 
منھاشیء کذا فی المجمع ٹم لیعلم ان الذین یدینون دین 
ابہن عبدالوهاب النجدی ویسلکون مسالکه فی الاصول 


خ0 


متقئت و 0018ا نس 
والفروع ویدعون فی بلادنا باسم الوھابیین وغیرالمقلدین 
وی زعمون ان تقلید احد الائمة الاربعة رضوان الله علیھم 
شرك وان من خالفھم ھم المش رکون ویستبیحون قتلنااھل 
السنة وسبی نسائناوغیرذلكٰ من العقائدالشععیة التی 
وصلت الینا منھم بواسطة الثقات وسمعناھا بعض منھم 
ایضاھم فرقه من الخوارج وقدصرح بەه العلامة الشامی فی 
سات 1ا1ت عندقول صاحب الدرالمختار 
ویںکفرون اصحاب نیناصّلّی الله عَليه وَسَلمفی کتاب 
البغاۃ حیث قال:قدعلمت ان ھذا غیرشرط فی مسمی 
الخوارج بل ھوبیان لمن خرجوا علی سیّدنَاعلی رَضِیٗ الله 
عَنه والافیکفی فیھم اعتقاد کفرمن خرجوا عليه کَمَاوقع 
وَتَعَلَْوْا لی الْعرَمَیيٍ وَگالُوْا بْعَسطُوٌْ مَدعَبَ العتَابلَة 
لی اِغْتَفَدُوْا الَهُمْ هم الْمْسْلِمُوْمَ وَاَمَنْ عَالفَ 
َغقَا٥َهُمْ‏ مُذْ رکون وَاسمَحُوْا بذِكَ قَعْلَ مل السنّْة وقعل 
عتتعئ کے گئرھی مک کن 
َكَفَرَيهِمْ عَسَاِ رَالمسلميْنَ عَامَ تل وَلَلِيْنَ وَِالَیَن 
ولف ۔ انتھلی ۔“ 
(حاشیینن نال ی ءکصاب ال زکوۃء المؤلفة قلو بھمء جلدا “۰٣۳م‏ جوے 
مع کید بی ۔ابیآ, مد شع ما کی ء لا ہورہ اسان ایآ جلرا ٥٣۳۹ء‏ 
مبوصہ قد یکتب خانہ ہآ رام با کرای ۔ ایضآ ٥مہ‏ راہ اق رآسنشر غزلی 


سٹریٹءاُردوپاڑارءلاہور) 


در مک ئتاخو 0و 0ری 0چ- _ اس 

(۶) فی رو اڑل ے'التقریرات الرائعة عَلی الِیْسَائی'؛ 
ایک اودستقام پریھی ماخ الو ا یھ بن عبدالد باب یدک اوراس کےضع وہاجیوں 
کونمار گی قر اردیاےء پل حد بیٹ شریف اورچلراس پش تھا نو یکا حاشیہملاحظہ 
کھے: 


٭جھ 


سے ہ۔ سس چو و۔ 


وھ تَغَمرٍالَصَرٍی الَحْرِِی قَال 477 
الْ,الِِي َال :کا عحقَاڈ بن مََکہ عَن الَزْرَقِ بن قیْسء عَن 
قَرِيك بن هِهَاب قَالَ:کُنْ َتَمَٹی أن القی رَجْلاین 
اصعاب التٍيٍ صَلَی الله عَليه وَمَلَمأَسألَة عَن الْکَوَارِج, 
لقث آیا بَررَة فی َژُم عید فی تر من أَصْحَابهء لت له: 
قَل یئ رشرل الو صلی الع وَمَلمَْر 
الْخَوَرِع؟ قال: : نْعَمء سَمِعْتُ َعْث رَسُولَ الله صَلَی الله عَليٍ 
تم بی رر تتی٠‏ اي رَسشول الہ لی الل علیہ 
ََلمِعَالِ قَقَسَمَۂء هی مَْعَنْ وید وََنْ عنْ ِعَاله 
وَلَےْ بعَط مَنْ وَرَانے شَبْتًاء فَقَامَ رَجَْل مِن وَرائۓ, 
فَقَال:يَامّحَمَدُ مَا عَدَلَكَ فی الْقَسمَةہ َجلأَوَةمَطَمُومُ 
لََعر عَليْهنَوْکَاناََیَسَانء قَقَقِبَ رَسُولَ الله صَلَی الله 


سے سے 


2:] عَلیْو وَمَلَمَ عَطَب مَیيڈہ رَقالَ :وَاللٰهِلا تَجِذُور بَعدِی 


رجا موَأَغَدلَ يٍیّی 7ن :جج فی آخرالزمان قوم 


سس وق سے مس نے ےردو4٠‏ فی 


کان هَڈا مِنهُمْ یَقرَنُون القْرَن لا یُجَاوز تَرَاقيهُمٍْ مَمْرُقُونَ 
ِن الَإِسّلام كمَ یمر السَهُم مِنَ اَالاكَا رِيَکَامَٰ الخ 
ا يَوَالُونٗیَحْرجُومَعَتَی بَخْرُج آَعِرْهُم مَم الْمَسیح 


14 


در مو0 ےر تار ٣س‏ 
جال قد لَقِتموحُم فَافَْلوهْمْ هُم أَمَرَالْعَلي 
بذَاك الْمَشْهُور“ 
ٌ شجرٹھا نوک اس عد بیث ریف کے الفاظ نیرون“ ےج تککعت ہیں : 
”قولەیخرجون الخ وقدوقع محروجھم مرارا افادہ العینیء 
وقال الشامی: کماوَقَع فی زَمَانتَا فی محروج اتباع 
بالَوَگٌاب اليَ حَرَجُرا تد وَعلوَا علی الَْرٍََْ 
ام عُزافََاقلِ ال وف عُلمههم عی کَمرلل 
تکس لے مر کس وَع تب بلَادَمُم وَطمْرَهِم 
عَسَاكرَالمُسلِمیْنَ تام تل وَقَاِينَ وَمِانتیِ وَالب“ 
(عاش ٣ای‏ ءکتاب المحاربةء من شھرسیفہ ٹم وضعہ فی الناسء 
جل ہن۰ ر۱" ے اب طبو یٹ مب کی دی ) 
قا رین !آپ نے ملاحظ ہکیاکہ شی شحدتھانوىی نے دوفوں مقامات پراحاد یٹ 
شریف کےالفاظ کمایىمرق السھم“ اوز خر جون“ ےک تفرقہ دہامہ 
کا7 دکیاےہ اوراٹی تا تی شل ھن عبدالد ہاب نیدی اوراس کے وپال یگمروہ کے 
رو یں نضرت علا مہ شا ی رح تمہ انی حادکی و راز تا لیے مجن میں 
آپ نے اُسے ”عوام ابی مت وعماۓے اب خقت کا فا اور ”ارگ“ 
وہڑے۔ حرتھافو یکابہ حاشی ‏ ضٹع میقبائی د۰ی ےش ہواخھاء اس نے 
وس جس مھپور دیو یی شا زوا نف یکتب نخان ہآ رام با کرای سے 
شا ہواء ٹا کے متعلقہ مقام سے مھ من عبرالوہاب تچری گی زمرث 7 
ال ززما ٹآڈادیگیاِ اط سن التَکَال “ جل ٣‏ صزیہے(مطوے 


تر ممق یشحو 08ر 0ر _ رس 
ق ری یکتب ان ہآرام با کرای )۔ اگمراس ادار ےکا مطبو ‏ ضمن کسی تقاری کے 
اس موجودے ووہ متعلقہ مقام 7 - 7 ے0 ورپ پھ 
چلنا ےکا سکاب کے جواٹٹی میں سے اس متتعاہ حا شی ہکولطو راع رای فک نشانہ 
بنا گیا ہے۔ پیا لیف ف گ یکتب خان ہآ رام با را گی کے علاوہ مت 
انی“ موم مکتہرحاصءاق راسنٹر زی مٹریٹہہأردوبازار لا ہو “کی 
جلدارف ۳۹۲ ری موجورے_ 

ارد نی دراصل“لو لی“ نجیس ہیں ءاورا نکااما الو اہیٹھ ہن عبدالو اب 
یی ےکی ضز کڈ اکن یی میں ہے( جیاکہ عام طورپربچٹس جانے پریہ 
کے ہیں )نبرا سکی غزمت شفل حا شی ہکیوں گال ے؟- 


در موا عو 8ے چ- اس 


) ”کشف الخداع“ رای کظر 2 
1 1 


کر اش حلوقات کےتوع میں حضرت انسا نکواشرک اخوقا ت مچھا جانا 
سے سس کا ذیادکی سبب الشد رٹ الو کت وولج گررو سور و یا رکی نت ہے 
شس کےسبب !نسمان نصرف اپ ےگمردوٹییل می سآ نے وانے وا فا تکیس و ںکرسکتا 
ہے بککہان کے وا تا تکوایک فا ع مرتملسل می پت کر کے پاسا لیج نت کک دسائی 
بھی اس تق لکی مرہون منت ہے۔ اود بجی خو لی انسا نکودر ٹن مسائل کےیعل میں 
چ سمل ہے۔ دور حا ضر کے موجودہ مرائل میں سبب سے ڑا ل5 عنا رو 
نظریا تکوذجن کے وریچوں پیش شکرنا سے ہگراس 3ور ہشن میں اس قررمتوع 
نات مو جد ہی ںکہایک عمش کے لیے رفص لہکرناانیچائ نشین ہوکیاے.اورتم 
ظ رلنی یی کہ پنظریہ پکار نٹ اہن نظ یکو درست اورق رن وحد یٹ ے 
اخھزپھتتا ہے نین اس سے بڑ لم او رکیا ہوسکنا ےکستا خان رو ل صلی الله 
لیے وَسلمَ بھی خود تصرف سلمان بل اہک سنت کےاعم سےموسونمکر ےنظر 
آےۓے ہیں۔آ٤!‏ 1 سما ن کا کا کی ان کے ھوں سے یل جات سےکیکن ا نکی رہ 
دلی ری بھی فائل دید ےک ان سب 2 پاوجووڑصرف “لا ی کا وگ یگمرتۓے یں 
بک راپن ا نت نظریا تک ماخ ذق رآن وسن تکوظر اردنین میں ذ ڑہ برا تنگ یخوف غرا 
کا للائائین رتا ںہ وم جن ین کے خمائا نہ ناشن مین نے این نکی چٹر 
عبادات ٹیش خدمت ہیں میعبارات ال یک یناب ”لوت الا ایمال نے ماخوذ 
ہیں۔و ونم طرازے: 


در ناو ے00ے رح تار ٢س‏ 
”انسما نآ یں میں سب بھاٹی ہیں جو پڑامزرک ہدوہ بڑا پھاکی ہے سو 
ان کی بڑے پھائ یک یی تیم کیئے اور ما تک س بک خداےء پذدگی اس 
کوچا ہے اس حریث سےمعلوم ہو اک اولیاء انبیاءء امام وامام زادہء 
پروشبیدمجنی جقے خداکےمقرب بندے ہیں دوسب اسان بی ہیں اور 
ےم ار بای کن وت رت کید نال 
ہو ؟ھمکوا نکی فمانبردار اعم ہے ہم ان کےتچھو ٹے ہیں“ 
( وی الا یمان ء نز مم )٣۳ٰ“‏ 
قا رین ! اگربڈگا ہیں مجکا ننحسوں کر میں نے ایک ع رت راس عبار تکو ملاظ 
کسی موصوف پیفرمانا جات ہی ںکاخمیاءاولیاء بڑے بھا کی ط رح ہیں ءلبغراان 
یلیم فتط بڑے بھا کیک کی جا ےا یے ہی الس نے مرمککھاے:- 
دا کی شمان بت بڑکی ےک سب اشمیاء اور اولیاء اس کے دو پر ویک 
ذڑونا پچ ےھ یکم ہیں( تن الا یمان :“۹) 
ناظرین! نوجہ تیچ ےک ایک طرف فو بی موصوف یکین برفصر ت ےک اخیاء اور 
اولیا کی میم فا بڈڑے بھائ یک یک یکرفی جا یے مگ دوس رک جاخب داکے سا ان 
کے متقاممکواس قد رکرانے ٹیس مصروف کے ذ٤‏ نا یز ےگھ یکم تر قراردے ر ہیں 
اوراس مخ ظ ری فکانلم ہچ یت ک میس رکاء بللہ یہا ں کک ککھاکہ:۔ 
ہرخلوق بڑاہو با سچھوٹا خداکآ کے مار بھی زیادوذ بل ے۔ 
( تقو الا یمان:۴(١٢)‏ 
بڑ یتو نکی وضا ھت کرت ہو نود مصنف نےکھھاے : 
معلوم ہواک انا ءواولیاءکوجوایٹ نے سب لوگوں سے بڑابتایا_ٗ“ 


( تقزیدال یمان )۳٣٣24,‏ 


مُملکھاخو ےھر ٹس 
قا رین !ینا گمنتا تی ےجملواس عبارت کے مطالعہ کے بآ پ کے جذ بات 
بھی ھررسلورے بن ٹناف نہہوں ےک ا نمیاءاولیاء جن نکی عفحدت کےت ککرے سے 
ق رآ ن سعمور ہے بیصاحب ال نکی شال اقرس می اس قد ر بد ہاک جو کا استعال 
فمار ہے ہیں جوایمان کے لیے ققات ہیں ۔ساتحساتد ان کے نبھی قاملي 
مزمت ہیں ء جوا ف رکمتا ما نتملوں کے تل یدام کا ان دی می ںکہ: 
”غاب تکمروںگ کی تی الا یمان“ کی دو ما معیارات جن از 
ب یکر ےآپ نے یھ الے دسے ہیں ء دوس بکتاب الد اورسنت 
سلعلی نے عَلَيْه رو کےموافن ہیں لمران می شف رآن 
بعد ی کت جما یکیاگئی ے۔““ 
(شنٹیکا لکش نظارہ ہف عاءکت ری أُردوپاز ار (اہوں) 
م ران ہی ںی ق رآ نک یآیات ہیں جواخیاءکوذ ہنا سکم تر اور مار 
ےکی تشوذساللہ زیادہذ یل اب تکرلی ہیں ۔ مہ بات فی ےک ہرگ زق رآن 
وحد یٹ یل ال لک یا خرافا تہ مو جو یش ء ان کے اپ ذ٠‏ نکی عکا سیا ہے :ا کا 
مات اسسلامیہ کے ماخ وین سےکوٹی علا ق ہنی ۔ قار مین ! آپ دج ج ےک ایک 
طرف ا نکواخماء واولیا ءک یگمتتا خیا ںبھی ق رآ نکی تر جما نی نظ ری ہیں ہنھر دوسریی 
جانب جب ان کے اک بر کےا نٹ یکمتا ما نظ ریا تکومنظرعام پہ لا یا جائے فو نگ 
کول ہوجاتے ہیں او رفک مکی تا یلا تی رکیلہ سے ابیے اکا بی نک پان ےک یی 
فن لت پت ا ون انی ضھ کک کائشی ا ک گی کا جا ےکا 
جا بکی ا سممتانانہ جمارت مرایا ار تکا نیش ڈاکٹرقاری ارشرمسعورپچشتی 
صاحب نے لیا اور جنا بک تاد یلا رکیل ہکیا دعمیاں اڈ اک رک دی ء اھی اس 
سلمہکی ہی جلدی منظرعام پک یگ یکرد یو بند یت بےےجیلن و یق را ہوگئی اور جیے 


۔۔ے_۔۔۔۔ ےت 
ا کائی دبےٹیکااعتراف ہے۔اس نام نہادجواب شی تی رو فرص تکامرہوان 
مت ہے سر وست ہم اختقدا ریسا تحھاا سکنا بکی چند چہا ٹنیس اور ول صفائ یکی 
بےے سی وناکا ئی اور اعترا فلس تکیع تناک داستان رقمککرتے ہیں ۔ سب سے 
ال و یہ بات جمارے قا ری نکی معلومات کے لےعوس ےج ںی مولو کی 
تمرم کا جواب ڈاکیمظاریی ارشرمسحوچپشنی صاحب ن تام جن دکیا تھاء ال لککا جواب 
موصو کی جات ۓسسی اور کے نام سے شاک یا کیا ےہ جوان کےقلس تکی ین 
دیل ہے ۔کیوگہران کےگم مسلک وہ بنخ رنج عمہدا بای نےکھاے : 

چنا خی صاحب السریک آحصو ٣‏ و ے واپت 

اواب میں کاب نت ین شا کیا۔ اود تاب اپنے نام سے 

کین لی اورنام سے شائح کرو اکر ای طلست و بزدٹ یکا اعتزافکر 

لیا( الناس مز و) 

یل دای ند کے اصول کے مطا بن اکرکوئی ٹفش اٹ یکنا بک دفاع خود کر 
کے اورا ےی اور کے نام سے اق کھرے فو مہا لک لس تک دبیل ہے۔اال 
کے مطا لق جمارے معاند نے کھلے ول دے اعترا فلس تکیاے اوراپٹی پڑول یکو 
عامۃ النال پیا لک دیا ہے کہ جناب می ات بھی حبی تی کہ اٹ کاب کے 
دفاغ م۲ رن یی و ےگیں نر 

ام ہکس قصد سے اٹھا کہاں جا ا 

یبا ت ئگ ذ ہن شع ر ےک یبدا لجبا فی صاح بکا را صول مطلا ےہ وگ رنہ 
ناڑے نان نیا ت کی تر کک اتکس نے ا گنی او زگ 
نام سے شا کیا ہے۔ تج را بآ یے اب ہم اس نا تہادجوا بک پھ ھلکیاں بد یے 


پر مُمَلَ لمعو 8رر _ سس 
قا ری نکر تے ہیں کیل صفائی للا ہیں :۔ 

”جیا کا سچھوٹ ہے مولانا عمبدالباری فرگنجلی نےکوئی رجو ں یں 

کیا تھا (کخف الزاغ )٣۲4‏ 

کینگ اس متلہ یپ موضصوف ن ےآ گ ےگ یلا مکیا ے۔ ہم اس نل عوض کے 
دینے ہیںء بی روک صفائی نے خوداپنے بیمضمو نکی طرف سے !ار ہکیا ےہ ان 
شہاتکاازالگھی خودہنودہو جا ےگا۔تقا رین !اط صحخرت رم اللہ عَل نے 
جب ول ن عبدالاری کے پل نی رشرئی افکار پراعتزائ کیانذ آپ نے ہل رجو حکیاء 
رای حضرت رخ مۂ ال تا دکی طرف سےارسا لکردڈنع یرب یج اکرنے 
سے ا جگاری رہے۔ اس یگل رجوں کا ذکرخودعلاع دیو بن کےےألم ے؟ وت 
الف شک بوئل علام صاحب رر پر جخط سے اعرائ سکیا نو اسی بی ضرت علامہ 
مول نا تی خان وَ مه لیے یی هکاننقرےمروفات سے رصن لآپ 
نے رج حکرلی تھا حضرت علا بدا فا عقا یر مه اللہ اَی کھت میں : 

”اس سلسلہمی شآپ نے حضرت موا ناعبدالار ینوی حم ال 

لی کائیھی ذک رکیاے جناب روگی صاحب !ولا نا عپرالپاری صاحب 

دہ ہیں جھآپ کے نز دیک خر برستہ پر برست ۔گیار ہو یس اورعیں 

واے الا ہیں سن تاور پک تین کے مطا بش بدکنی تھے وہ 

قوا یھی سننے تے۔ او ریک رب الاول ے 12 کک روزآنہ بڑے 

ملف اس میاا وشری فکرتے خے میں خودزائی طورے وائیف 

ہیں اں ےی نشی درس آظام کا اک ال سے 

ہوں ۔حضرت موا نا عمبدالپارہی سے رم الشرعلیہ سے نا طور بشرح 

نی نی ےکم ہمت فی کن خسن ےم رز ون 


در معا نمی لو 60 رے ہار اس 

من پراعلی حضرت ن گر ض تفر مائی ۔آ خرکاروصال سے پچجھ پیل خدام 

ال مین کے لس میں علاء بش ریک ہوئے ء اس وقت ہچ الاسلام 

“ولا ناعامدرضانان صاحبرَحمَةُ الله عَلَيْ نے مان ۶رالپاری 

صاحب رضم اللہ لی سےمصافحہندکیااوران کے یہاں قیام سے 

بھی إ لک رکردیا۔ او رف ما یراع حضرت رضم اللی لہ نے جھآپ 

پراعتراضات سے میں ان بانوں سے رجو جیجیے۔ چنا غیرحطرت صدر 

الا فاضل مول ناظم الدب رَحَمَة الله عَليِ ویکوٹ سر ہلان 

کورضرت1۶اعاْرخاذان اح خَْفا اللِْخلَ نگ 

تل ینہ دوٹوں یس میٹ وموائتہ ہوا خخرت ۶ل جار رضا غاع 

نے حضرت موم نا عبدالپارکی کے پاتھ چو ے اس لیک دو صھال کی 

اولادیٹش سے ہیں ۔اورو ہیں تا ف مایا نقی راس موحع پرموجودتھا۔ اس 

خڑی میں دارالشذا ء سے برفیا لآ تی اور پانقاعدہ ای او 

ہیں ل(شم ہریت فی۹ بشمول دو بن میں سے لا جواب سوالات “ف ۷٣ے‏ ) 

اس سےمعلوم ہوا یحضرت موڑانا عبدالباری فرگ نکی میاشمہکی رجوع وفات 
سے پچھڑفرصنئل ہے اب ہوسکنا ےکہ الس حوالہپموصوف پچ لو داو ماگ یں:۔ 

”اڈل بات بر ےک جناب نے اپٹ یکنا بوں کے جا لن بھی دثے جھ 

جھم رج ت کیل ۔( شف الد ذ۸۹) 

مع کرت ہی ںکہجناب ال ط رف آپ اپ ےگھ یٹ ےکس یکا جو 
خاب تک لک سلتے ۔ ہم اس پصردست ایک مال عوت لکرتے ہیں ۔علا و دبو بد کے 
حدوح عبدالما چددر بابادی قادبائیو ںکیاگذمر تخل نر کو رکھتے تھے جس بیخود 
علماع دلو بن دکی شہادقیس موجود ہیں ۔ شون ش کا ری دیو بندیی نےعپدالماچدددیایادگ 


جھتھ تر ھہ وہ ے٠۰‏ جحستھھ 
کت ق کے : 

کیافر ماتے میں تما نہکیلون کے خوش چچیین ٹیچ اس مل ک ےک حضرت 

یع امت کا ایک خوش بین نقاد بای کل یس مرزاخلام ام رقاد بای کی 

ام تکاپشتبان ہے (چنان :”اک ت۹۵ء) 

الب بانھی ن ےکھاے : 

”کدف ای با ت کا ےک ہم ولا نا بے عقا مد رسکنتے ہو ۓے بھی مرزائیوں 

(ہاٹویش ا ہوری مرزائیوں )کے بارے میں نم مکوش رکھتے تھے۔نرم 

گوش کا مطلب بی ہ ےک ان لوگو ںک گنی ران گرا نک ری تی 


تقی عثانی نے ان کت کیا ے: 7 ا 
مولانا عبد الماجد د ہابادیی صاحب تقادیای گر کے پارے میں بھی 

تر دوش ہکا شکارر سے تھے (انعام اریہ صفض۳۳۳) 

مر ایک کیکرکھاے : 

” قادیانیت کے م لہس ا نکا خر مگوشہ پپورکی مت کے لاف تھا اور 
باکہہ با نک یگین تن کٹ یھی جس پرالڈرا نکیمففرت فرما ے۔“ 


.ٰ ( نشی رنگان>ز:۸۰) 
تسین فرائی نےککھاے: 
”من مولا نا در یابادگی انی اجتتجادیٹلشی بای ملین یکی ہناءبقادیانیو ںکی 
لا ہورگی جم عح تکوزیاد ہگھراوکییں یھت ےگ بعدریی ا نکی راۓ بدل 
یی اورقادبانیو کی دونوں جماعتو لکوگھراء یگنن گے جے۔ 

( مبدالما جرد یابادیی سٰ۳۸۲) 


عمار مان نا صرد ہہ ہندگی ن بھی ”ال ش ریہ“ کے ختصویی شارہ می ںعہد الما چردریا 


ج ممَلا عو 80ے ر9 0ار اس 
بادی یکا بی فک رکیاہے۔ چنا نچکھاے: 
نقادبانیوں کی تلق رام الحرو فکارہجان پچ رحرصہمول نا عبد الما جد 
ددیا بادمی کے موق فکی طرف دا سے جو انھیں تاوی کا فائندہ دتے 
ہو ۓےگنی رنہ سے جانے کے انل تھے انا الشریہ جون۴ہ بف۷۸١)‏ 
”نووسرے ببت سے علاء وصنی نکی طرح یح مائل کے پادہ ٹس 
مو لانا درا بادگی مرح بھی اپٹ یکو گی انفرادکی راۓ رکنتے تھے تخصیت 
قح نظ رب ہنیک مسل ہتقیقت ےک جب ورخلاۓ اتکی رائۓ سے 
اشلاف می ںحخت فطرہ ے'_(ما ہنا الفرقا نہکھنو جنوری کے ۱۹ء“ ڑھ) 
اف لمدرعیا نی نےککھاے : 
ناس لیے در یابادکی صاحب کے نز دکیک ص رع دکوکی نبوت کے با جودنہ 
مرزادائرہاسلام سے نار ہیں نہا نکی جماعح تکوسوء نات کا اندبیشہ 
جات ےگ رد یکا سوال اورضران سا سک رن چائڑے_“ 
(حجقادمانیت.م۲/“ٰ٭۹) 
اب ا شھوںتقیقت کے بیس ایک نام فہادمناظ رن ےکھاے:۔ 
نم بی کے ہی ںکہا نکا مونف تاد یاغیت کے بارے میں نرم تھا 
وعات سے چندسال بیلے وو اس مو نف ےر کر جج کےاورا 
کے مفقہ لائھیٹل پآ گے تے۔ اس کے لیے پڑ ”2وہ جھ بے جے 
دوالۓ ول (شم نوت اورصاح بت مالناس ‏ “۲۵) 
یے بیہاں ‏ صوف نے ددبابادکی صاح بکارجوغ خابم تکر نے کے لیے خود 
ایاج یکنا بکا حوالہدیا سے چیہ دوسری جا بمشقیحمادد لو بندیی نےککھاے:- 


سے 
5 
مت 


در لمعو وو ]رن چ8۔ اس 

* زلیس الوکی ل تہاریاگھی مو گی کاب ہے :جو ہار او رت گان 

ا سکوسھا لکراپنے بی گے میس ڈ ال (سیف تق بفم) 

ای ہی اوگر ا زکی ودک ن بھی اس حماقت ےکی رکیا ہے کیا اب کیل 
صفائی ہمارےاس لی مک میں گے؟ ۔کیااب مہ بات با رکرالی جات ۓےک۔اس ا صول 
کیرش می کو ض۱ ٌ 7 1 7 
ویک یکتبکا مطال کر لیت فو اس جال تکاا راب شک رت ےکیوئکہ مال ود نےککھا ے : 

عم مفالل لے انچ یکا وں سے لور ہے جاتے ہیں جن کے والوں رے 

ناشن اپنے مک ککی رائیں جھوارکرتۓ ہیں سو مناس بتپرتا ےکہ 

ان إفراما تکی صفاکی ان یکتابوں سے یی لکی جاۓ جن کے جوا لوں 

فان یکرت نے می اون کون ا نک 

وضاحت ان یکتابوں سے لین ین عرل وانصاف ۓے“۔ 

(خلیا تآ قب ا )٣2“‏ 

ار اجناب ج بآپ عالہجات ہنا رگ یب کے ہی ں۷ ر یی کےا آپ کے 
اصول کے مطا یق ا نکی وضاص بھی ہم اٹ یکتب کی ردشنی می کر یں گے۔اس 
لی ےآ پک اعتراش خوداپنے ہم قید ہک رشن یس درست یں ۔ بل راس سے نہ 
صرفعبدالماجددرہابادئ یکارجوں شاب تکرنا مشکل ہے بل رمیلا و تلق تھا دی 
کا مب یدرجو گی د گا بندیی أصول ے ماب تنلں- 

اذاجناب ج بآ پ حوالہجات جمار کن بک یل ف رما میس کےا نکی وضاحت 
بھی چھ انی تنب چیک رڈنی می سک میں گے۔اس لآ پکااعت را خوداپنے جع مقیرہکی 
ری بیس درس تی ۔ راس سے نصر فکبدالما جدددیاہاد یکارجی غ غاب تکرنا مضئل 
ہے بللہمیااد تلق تھانو یکا رجو بھی دا بنلدیی اصصول سے اب ت یس ہہوگا کی وک 


جیہۓ ےچھریھمچو۔ می 
فرش رجو ں کا قول ہہوجھی نو وہ دید ہندیی اصول سے سو نہہوگا۔ اس لے ڈاکٹرقاری 
زش تی ای نے از ات نی کے تھے ود الک ددرت تھے اوران ہے 
علام یبدا پارریکار جو خابت ہوتا ہے ۔ رد لو ہنلدی تر جمانع ن بھ یککھاے: 

خودمولا نا عبرالبارکی صاحب نے ححضرت تھا وی کےغلاف اورشای 

انصیل شبیری* تقو الا مان ےخلا ف نے کی دیا تھا“ 

( تک ومولان عبرالپاری فرگ لی :فا ۸) 

یج خورآپ کے اپنو ںکوتلیم ےک رحرت موا نا عبد الپاری فرگ یھی نے 
تر فی دس شی دباوکی کے خلا ف کی دا ان نے اکن ا کی از شس پش 
صاحب کے دبے گے والہ جا تک صداقت یہ ہرشبت ہئی ۔ انس سلسلہ میس می 
ایک عو الہش خدمت ےء ایک اورصاحب نت ککھاے:- 

نج بک ہنس مقامات رصرف انی رائۓ کے اظہارکوکاٹی ھا ہے 

ماس طور پرلتض اکا کی کتابو ںکی تر دید بی بلا دییل کے ا ارک دیا 

ہے۔ ایک صاحب نے و چھا ”تقو ییۃ لا یمان“ کے مصنف نے نو ین 

رسال تکا ارا بکیاے پ ایس ؟ تا نکاجو اب سے :هو 

المصوب تقو رت الا مان یش بے شر نین رسول صلی الله عَلَيِْ 

رستے کی سے۔ وارڈاپعلم ۔حرروالفق مج رقیام الد ین عبدالبارگی 

/أص۱۹۰) ( نکر مول نا عبدالپاری ف رگ یحلی بھی )٣۰٣۰‏ 

یی پہ بات عابت ہوگئ یکم وصوف علاع دلو بند کے عقا مد ونظریا تکوکفرو 
گنتا خی و لکرتے تے۔ پھر لیے بی داد بندک تر جمان دنم طراز ہیں :۔ 

فو دوسری طرف کم کے بپردے میں انی چیزوں کی ئل جھے جو 

عم ازک علماۓ دلو بند کے عرارع کےخلاف ہیں متا موڈ نا عبدالپاری 


ََََّ .۔۔. ا۵ت ہے 
با ے ال یا خیب حاصل تھا :تضورائرں صلی الله َليه وا لو 
داع البلا مکنا چائز ہے (3) ذکر مواود ہرز برعت سیک نیس بللہامر 
منروبپ ہے (ھ) نام ایس شُ نکر دونوں لو ےہ عموں سے لگا نا 
ص تب ہے(5) قیام بوقت ذکرولا دت خی رالا نام جائمز وشن کے“ 
( کر مولا نا عپرالپاری ف گی بحفی۸۳۴۸۳۳) 
اور مٹررجہ پالا نظریات جناب کے پیم ماک حفضرات 2" 
بدعت ہیں :تو الین جوآپ کے نزدیک بی ومشرک وہ اس سے استق لا لکرنا 
ہرگ درس ت یں ءکی ون آپ کے مولوکی نا کھت ہیں:۔ 
”عرذائو ںکوچن کی عبارت سے اپنے مل کک جا می حاص٥‏ لک رن کا 
الا اکوئی ف کیل بینا۔اس لی ےکھرزاصاحب نے جواس علبقہ کے 
دوعاٹیٰ پاپ ہیں اپٹی تصاخیف (فکی الیادایک خط اورنترے) مس تم 
اکبرکومستلہ وحدۃالوجود کےسلملہمی می داورزند گی (بفے دمین ) تراردیا 
ہے۔ مرذائیو ںکوش مک رکی ا کی و ا جا 
زند گی ء بے وین ایق نکرتا ہوں۔ا سک عبارات سےسہارا پک ناتظہار 
لیے قط تنا انز کے (متزأخ نبوت اورحلف ص الین بصف۳٣٣)‏ 
ال لیے دلو بن یو ں کا علام بد الپاری فرگ یل یکو اپنے جن میں ٹپ ںکرناجی 
0ب +ب++ب -2 و مولوئی اور ان کے جار بیو ںکوش کرک ی 
چا ہے گر یتقیقتکھی تار کا وراقی پر ےکرشم دحیامءکاعلا دیو بند ے ڈور 
ڈور ککوگی ہیں _ (جارںے) 


در موكئتاعو 00ے ےر ا- اس 







دی ھی کر ےا 


21 





کت 


حترم ارک نکرام: برعت کے دورول میں با لوگ ایک مز نکھت تا رہ 
با کرت ہی کہ لسسدیسن“( یش دین کے لیے )نیا بچھاکام جائتڑے او فی 
السدیسن“ (دبین یں برعت )نیا ا چا کا ما پپادکرنانا چان ہے۔ با پر بی برع ت'“ 
کہکراپنے جد یدکا مو ںکوچائزقرارد ین ہیں لہ ذکرمیلا ای صلی للَهَكََالٰی 
وی عَلي وَالیہ تاب وَسَلم صلووسلاماورابصال ٹوا بک مال وغیرہ 
کوبرع تککتے ہإں_ 
جواب:(1) سب سے کی بات نو یہ ےک و پالی طرات اپنے اصول کے 
مطالق للدین“(مشنی رین کے لے )اوزنفی الدین“ کابیقاعددگیکرمح صَلّی 
الۂعالی وَعَلی عَليہ َال واضضخابہ وَسَلَ سےثاب تک ہیا حاہگرام 
رضوَان اھ تَعَالی عَلیيهمْ این سےا بتک یا مالین وتائع تا ین 
ِضوَائ ال تَعَالی لم امن ساب تک یں۔ عیب بات کہم 
مٹوں سےا ہرہر بات پر شموت مالگا جا تا ہے من خوداتے بڑے ا عرے جم پہ 
شرع تکا دار دا اق مکیاء انس پرو پا یکوئی ای کبھی دییل یی یی کر کت زاجم 
دہایوں سےا تا ععرے کےثزو تکا مطال کر تے ہیں۔ 


در لمعو کو ۲ر ج8۔ سس 

(2)دوسری بات بر ےکیشحگری نتذعد مث 'کل بدعة ضلالہ“ (ہرناکام 
گمراہی ہے )کت ت کے ہی ںکہ بیہاں ‏ فس “ عحومیت کے لیے ہے :نر ہرنا 
کا مگھراہی ہے۔آ اب ؟عم داہیوں سےصوا لکرت ہی ںک للدین“ (ہمی دن کے 
لیے ) ”نیا لفوی برعت ویر ہکہرشن سن ےکا مو ںکو وہای جانئز رر در ےکر یں 
اخیارکرتے ہیں ۔ووسب ال نگل“ کی عمومیت ےس طرں خارنج ہو گئ ہإں؟ 
جب ہر بدعت ( نا کام گراجی ہے ءذ بر کہا ںککھھا ےک وحن اسلام کے لیے 
(سلدین) گمراجی ڈکالناجائے؟گمراج یذ ہب سورس تگھمراچی ہے او یہ بات عد بث 
شریف بیس ظا یی سک دین کے لے ادن“ گمرای جا وضمروری ے۔اوراں 
گمراہی پش لکنا درست ہے۔ مو با ود پاجیوں کے اس قاعرے میں خراپی سے پاکیہ 
(مَا ٤لاس‏ د ین یں جن سک تق یت کے لےکمراہی بین لک ضرورت پڑے۔ 
اب دیع( اسلام )مین ہرز ہرگ زخرال یس ءاس لیے ماننا ڑکا اروا کے اس 
م نکھت اعرے میں خرالی ے۔ 

(3) ترک بات بہ سےکہ پودا ماد رمضمانء تر وا با جماعت پڑ سح کا م 
ور صلی اللهُكعالی وَعَلٰی عَليه ولیہ وَاصعَابہ وَسَلَمْ کےصال ے بجد 
لج و ا ا و ا 
البدحاة ہمذا“ (مشنی )برای برعت ے“_ 

(سخاری شریفء باب فصل من قام رمضان ۔مشکوۃ شریفء جلر 

اژلءباب قیام شھر رمضانءص“ف۶٦۔ت"می)‏ 

نذ اب ام بدرعت کے دوروں میں ہنا لوکوں سےسوا لک۷رتے ہی ںکہ یتر اوح 
کا ات ہماز صسلدین“ (منیدین کے لیے )ہے ”فی المدین“ ؟ ابد لی جھ 
بھی جواب د میں ا سکاشجوت پیلک میں ۔اگرز لصلدین“ (ششنی دین کے لیے )سے 


مُمق شا مو 010ر _ رس 
کیااا لکوعباد تکادرچرد ینا اورکارن ا ببنھنا چا ہوگا؟اوراگر پل فی الدین“ 
ےا کیای کل بدعة ضلالہ“ (ہرناکامگھراہی سے )۔حعخالف ےکییں؟ اور 
درین یش اضافڈ ےکیگیلں؟ 

اسی رح وہای بیشگ یکہددیے ہی ںکنمازت اوح کا ہمکور ہلل“ لغوکی برعت“ 
ہے فو ناچنز سوا لکرتا ےک پاالنفرٹش تی ما نلیا جا کیا بیہلغوکی برعت 
”عبادت ےک ینھیں؟ اس پر اج وذ اب لگ اکینیں؟ اوراسی ط رح اگ رکوئ تخل 
میلاو فی صَلی اللهكعَالی وَعَلٰی عَلَيه وَاللہ وَاَصَعَابہ وَمَلَم'للدین“ 
(ینی وین کے لیے )ھک رانختیارکرتا ےو بل بزح لالرے نار ہوک چائز 
قرار پا ےگ اککییں؟ 

(4) شی بات بی ےک فافش نکا بی قودساختۃقاعدہ یا ابعتے الا 
کعَالٰی وَعَلی عَليْ وَاله وَاصْحابه تَ عم اخنادکا مظہر ہے ۔ک یھگ نی 
إكصَلی اللْهكعَالٰی وََلی عَليه وَالہ وَاَصْعَابه وَسَلَمَ“'فی الدین“ 
دبع اسلام یش )کو شس نف مار ہے ہیں اورجود لن اسلام شل نم للسد ین“ 
( یدن کے لیے )ےت فرمار سے ہیں۔ چنا میتضورصَلی اللهُكعَالی وَعَلٰی 
َليہ وَالله وَصعابہ وَسَلم 8راک 

”من سن فی الاسلام سنة حسنہ فله اجرھا واجر من عمل 

بھا من بعدہ من غیران ینقض من اجور ھم شئی“ ۔ 

”جوکوکی (دین ) اسلام میس اپچھا لر بپقہ جار یکر ےکا ا سک وس (ۓ 

ریہ کے ار یکر نے پر ٹو اب لگا اور سکوھی جو اس پنل 

کہ کی گے۔اورااع کے اب سے پچئزلم نہ ہوگا“ 

(صحیح مسلمء کتاب الزکوۃء /۲۳ے۔ترمذیء کتاب العلمء 


در ممکئماعو 8و ]رن 8۔ ٹس 

۳۔ نسائیء/۱۹۱۔ابن ماجه شریفا۸جّي) 

لہزاضورصّلی اللهْ٤َعَالٰی‏ وَعَالی عَليْه واللہ وَاَصْحابہ وَسَلم ند“ 
احلام میس نا لریقہ کے ےکا کو ہپادکرنے پا جر وا بکی کی سار ہے 
ون کی ن اعت را لکرنے والےئپاَصَلّی اللَ کا عَالی وَعَلی عَلَيْه وَاله 
واضتابے وَسَلم کیخخاافت کرت ہوے فی الاسلام“ (م]ی دن اسلام 
مس )ا بججادا تل کرد سے ہیں ۔ اب خووسو ہے تضور فی الدین“ (وخن اسلام 
ٹس ۓ کا موں )کوجانزف مار سے ہیں اوراختزائ سکرنے وا لے فی السدین“ 
(د ,نا سلام یش ےکا موں )ورای د چا تکپسد ہے ہیں عائال ‏ ظط 

خورصّلی لَهُ>کعَالٰی وَعَلٰي ءا عَلي وَالہ وَاصْعابہ وَسَلَم ےغلاف ہواکہ 
,حر لی الناعتال رَعلءَ 0 
مخالش تی ںکی جاردی؟ 

ادریھریلاگ فی الدین“ سے خرن ہوا للدین“ (ہچنی وین کے 
یے کا نام دےکراچھاترارد پت ہیں تضورصَلی الله كعَالٰی وَعَلٰی عَلَيْه وَاللہ 
وَاصعابه وَسَلمانفی الدین“ ےنمار نکوئُ اف رات ہیں ہ لی اکخد پیارےآ تا 
صلی اللہ کعَالی وَغَلٰی عَليه وَالہ وَضحابہ وَسلمَ ےا شاطْای''مالیس 
سنہ“ جودین یس سے نہ وج جس سکی اصسل دین می خابت نہہدددرد ہے یں ان 
سنفی الدین“ کرو ںک جودین بیس سے نہ و کےالفاظ نو رکرنا جا بیے۔ 

دمعلومانلوکوںکوکیا گا ےک جود بن میں نہ ینیج سکوعضور سی 
اللہ كعالی وَعَلٰی عَأ عَليه وَالِہ وَصعَابہ وَسَلم رفرارےہیں“ ا ”ھرووو“ 
کو یگ لددین“ ) ادن کے لیے ) کا نام درا اہر سے ہیں او ریش سکو 

خورصَلّی اللهُكَعَالی وَعَلٰی عَأ َليه وَالِہ وَاصْعَابہ وَسَلَمَ ”سنة حسیہ“ 


مھنعو 00 رےں وا _ سس 
کرک فی الااسلام“ میں داش لک کےرسے ہیں ا سکو ںیگ فی الدین“ کانام 
دےکرنا جا ئزقاردےرہے ہیں ۔گ وج کا موتضورصَلّی الله كْعَالٰی وَعَلٰی 
لیے وَالٰہ اناہب وَسَلم اچھافربار ہے ہیں الکو بنا جا ئ ہر ہیں اور 
شسلوتضورصَلًی الله کعَالی وَعَلی عَليه واللہ وَاَضْحَابہ وَسَلم مروف 
ر سے ہیں ائ کو ینکر ین چا ئ کہرد سے ہیں مُا الله ااپنرااہمتراش کر ۓے والوں 
کاریگلی راس رارشادات نو صَلّی الله عَالی وَعَلٰی عَلَيْه لہ وَاَصعَابہ 
َو ےخلاف ہے اس لے ہاب يکا”للدین“ (یچنی وین کے لیے )کا بقاعردہء 
یقاب عد می وی صلی الله عَالٰی وَعَلٰی عَليه وَاللہ وَاَصَعَايہ وَسَلَمَ 
ہونے کے باعث مردودہ ہاش لٹھہرا۔ 
5 دححت کے ودوروں میں ب۲ا این کے نز دیک صرف میلادہ عی٠‏ وک صلوج 
ولا م بی ای ےکام ہیں تو فی الدین“ ہیں اود باٹی دیو ںی ما ثل, جا جاویں 
اشفاحعاتکودپالی تفرات للدین“ کبیکر جائزقرارد نے یں؟”للدین“ او فی 
الدین“ کا معیادی ا صول شریعت کے مطال نہیں ءا رایماہوتا ذو ہا صول شر بجعت 
تاباجا تاب للدین“ اوزنفی اللدین“ کی لخاش یکا پچگرنچلایاجاتا- 
خدارا!اصاف خر مایے اش رک وبدحع تک اس خما ضا زش رلعت ٹیل میلا دوظریں 
تی ےکا( جن ہی ں لمت اخما رام مَلَيهمُ السّلاموادلیاء ظا عَلَیْهھم الزحمہ 
ہے بدعت ورام ہیں ۔اوران پاپ ی طرف ے فی الدین“ کا چک چلاتے ہیںء 
مین الع کے علادہ ان کے ام یکحقرت ےکم برعا تک فبرست سے کنل 
کر جات ہوجاتے ہیں ۔کیا کاب وسنت سےکوکی اما حوالہ بن ںکیا جا علتا سے جس 
یس میا دوعس وی رہکونو برعت وترام قراردیا ہو ءاوردمگر تی کرد امو رکوسنت و چائز 
تراردیاو؟مَانوا بُرَعَانَكم اِنْ کشم صیِقِْنَ۔ 


متق شا مو 0۸0ر اس 
+٭ ک 4“ 
تبصرۂ ختب 

نا تاب :مار ہہلدایت بجواب اشریعت باچجہاامت“ 

مؤّف : خلی بی شر قحضرتعلامبہضتاق اح نظائی رَخمَة الله تی لی 

تخ زی جواشی یں :مخ عباس ا ری رضوی ‏ (صضفات۱۵۳) 

اتنام ناش ر ملک ابلِ نت پیر خلا سم اسلام حضرت علامرمولانا 
مجن شا: تا رریمُذَطلّه الَْالی 

ےکا یسل متا بویء دا مادر با مارکیٹلاہور 03214477511 

ا سکاب می پان ابی دیو ہند کی بدنام ز مانتتاب نش اعت یا جہالت “کی 
ا ا ا ا می م0 ا 
وت ما کر کی شائلی یی ین جن مس ”ولس ےکی مین 
دی بندکی نے پالن حا ی دیو بند یک یگذیرکی ے اوردیو بن کےمفتی انلم مہری جن 
دلو بندگی نے پان عقاپی دا بندٹ یک یکتاب ”ش اعت یاچہالت “کو پڑ نے اورا سکی 
نقرمرنخنہ سے کیاسے ۔ تا بکراہتی اورلا ہورییس موجوداملِ سنت کےکنب 
مانوں ہے۔عحوص لک ریں۔ 

۳ 4بجر 

نا مکتاب:مولوی ال یا سکصسسن داد بنلدکی ءا کردا ر کے سے بیس 

مؤوف :مغ عباس قاوری رضوی (صفیات:٢۲۱)‏ 

ا سکاب میں نام تام اسلاممولوئی الا کمن دی ند یکیخصحیت کے 
لف پپہلوئوں سے پردہ أٹھایگیاے, ینس میں مولوگی الا سکحسن دیو بندگی کے 
مبتدع ہونے بسرقہ بازیجکھی بے ما یہ مولوی کیم اخترد یی بنلر کی جاحب سے 
خلافن کی مفسوٹی اور رک داری کے تلق دلو نرک علا ا ورسا ہا ہل کی جاب سے کے 


جھھھارت کو ہ٠‏ دحھشل 
گے اککشافا تکو بیا نکیاگیاے سکاب کےآخرمیسں چچجھابم دستاوییزات کےعکویں 
ھی شائل سے گے ہیں یکنا ب کچھ یکرا تی اور لا ہو ریس موجودائہل سنت ک تب 
اون نے وص لکی جاعی ے۔ 
7۳ اڈ 

نا مکتاب :الو اِرضا (صخاےہ۵۰۷) 

ناش اک رک یگرزءز بید ون اُرددبازار لا ہور 

"0 0 3+9 

تضور رو اعلی حضرت. زا ال نت ہم تشم ء امام علا مہمولا :ام شتی الشاہ 
ا ءرضاعانرضی الله تعالٰی عَنةُ نکی ذات بامرکات کےخلف پپبلو وس پرایک انم 
مھ دستاو ہز( جھکئی سای سے ایا بتھی )شاک ہوئی سے ۔جلدازجلدحاص٥‏ لک میں۔ 

م6 

نا ماب تفہ ابل سنت وجماعت(جلرزؤمءوم) 

مولف: ڈ اک ری اروا حرش ا رش رووا شرف چچشی 

جل رڈؤم صفات:۵۱۳ حلسم صفات :٢ع‏ 

پا اع :ٹاش مس ابلِ نت ء چیک اخلا لغم اسلام ءححضرت علامہمولا نا سید 
مم وی تناطل العَاِلٰی 

اش کت متظرالاسلامء پاکتان 

امٹاکسٹ :مل متا وی داتادد با مارکیٹء لا ہور 03214477511 

ڈشخام بازسماجد نخان دب بند یک کاب دفاع ائل ال سے جواب ناما تحفظ 
الی سزت؟“ کی دوسری او رتیسریی جلرشا کی ہیی ےہ مرو پکام جار ہے یہ 
تا بککیبہ رضا ۓمصعق یگوج رانو الہ اورلا ہوہکرا تی بیس موچودابلی سشت کےکنب 
خانوں سے اص لکی جاق ے۔ 


کت ج ۱ ےت ( یل صفات:۳عم) 

( ٹیش رام وبا ٹین گی ری ااتو٣٣۳۳۷عھ)‏ 

7 َشْرْخ وَصِيّة الامام ابی ا ال 2ک 

(شارع: نشار بھدا لام الال دب نبال ۔۔التوی: ۰٦کھ)‏ 

میم :مفتی حا جن التقادری الغازل 

رک :موڑ نا عاط فسیی رشن ری 

نار یروگ لوکس ء لوضف مارکیٹ ‏ زی سٹریثٹہ.اُردوباڑارء لا ہور 

راائ :03214146464 

ا ںکاب ٹی اماحم یھ کی نے امام اویز رَحمَة الله تَالی عَلیہ کےسبآپ 
کےعلیرم ارک ؟آ پک صحل کرام سے مااقات اورروانت حد بیٹ ہآ پکانڑی مل 
یس کل آپ کے ھی واقحعات اورحیات مبارکہ سے ابم پیلووں پکننگو فائی 
یت رت کٹا نے ان تا حالات دا تھا تاپ تل 
سند کےس ا تحدروای کہا ہے۔ ناما مابو شف اورامام رر سال حاعشمد 
اا کی سل نات پیر اص٥‏ لگنفلکوف مکی ہے۔ا سکاب کے سا تھا سکی افادیہت 
وابمیت مل مز یداضا فک نے کے لے امام ااوطیذہ وَمَة سے تالی عَلدکی ٥‏ 
نشار ہداامام بارٹی کی شر حکوڑھی فک فک یاگ ا جک عقائ اب سنت پرایک 
جاریئی دستاوی:اددج نی سے ۔کی دک ھ یکن بکی رم ےکا ببھی ولا ناعاطل فسلیم 
قشندری صاح ب کا رک سے طظ رعام کی ے۔ 

لوٹ :کمابوں بن روس رس بی مطالع کے بح دکیا جا ا ہے ۔کاب کے ہرم راف سے 
ادار ہکا تفاقی ضرور یں 

جلر ما حر 





ےہ -سحہد ہھے۔ .۔ے 


07 


ا ساب داوینربہت: بر٣‏ 


/ 
ا 








مولوی مل اڈشھو ی دلوبند یی تاب المشَدعَلی المفند یپ یاریں || 
کے 3ن ابی کی ال صن وہیا وا یی شی نچ ٹا ہے مو ۱ 


۱ 
۱ 
: الم ین ےکی 
۱ 


0و 


عَ ا ورڈ 


پاہتمام چٹیٹج- 


۱ 
رتعاام: پر سم طف شا 
ان شاءائ تار 


۹ے ٭-ٌ-سعے. ہے _+ػسے_ --ہ 





ہت