Skip to main content

Full text of "Ghaus E Azam Ki Mujahidana Zindagi Aur Khanqai Nizam Volume No 1,غوث اعظم کی مجاہدانہ زندگی اور موجودہ خانقاہی نظام"

See other formats




2 9 





اإاہسسے ےت و3 تا کہ مت سے سظٰ لی ادا 0 ۱1۸11611 
کس " تر بی 


مریٗۂالعلوماالسلامیەکیشی 


رسس سا کے مت 


شح :163 اش ؟7ر::395 
شع در نظائی :120| شع ور:12 
ورای شب جات یس۹00 سے زا مل بااسو لکیا لی انتک حا لکررے ہیں نیکم وٹیش 20 1عطلراء 
-صسە0۳صەھ8 یت بی ہیں جن کے لحم وقیام اوم یڈ یگ لکا 07 9 بے 
صع.ہ وبا ظر٥‏ 14 اسم" | مصعب در اظای اد وید 2 .از 
ش رص ری عو نی یی کول و۷ یور 14اساتزہ |. بادر ی3 غادم4۸ یکر ار2 
ک ارارک ٹیش 7100 ایل اٹاف 49او ٹل ے۔ 
سر کزالعلوم ال سلا یہ ايد می سیتشادر کرای پاکستان 


رد تس ای وا و و کی بعد ٘د روپ کہ وک ر70 کو رو بزو و و واریھ رٹ۲ 
ار یت 2 ضبق :اون وھ وھ زا رھ وڈ رھ و۸٥٦‏ ہفادھا راو بر تا 
:۱1آ آر رر کو ھا کو اک او ہی ڈارف سا.1 ہے۸ رر ]۱.ا۵۱۱۱٠۱١).‏ ش٘یرئو 
۱٦۱/٢٢۹۳۴۹۵2 ۷۲7‏ ۱۷۸۷۲۹۳0500۸ ۱۷۷۷۷ - 


7۶۰۸۴۱۳۲۲) ۹://۸۷۷۸۷۷۷۷۸۷۹۹ ٥۰۱۶۱۷۱. ھگا ہ۲‎ ٠٢٥۰://۷۸۷۷۷۰۸۰ ۷۰۷۱٥۷۵6: 6011///35661011[/5( 








زٌُە ١‏ 
۱ ضضصسصسسسس.سمل(لْدٹد۔ 





۱ ضو وت )تفم ری اور نکی ران ندگی اور مو جودہ خاْقا ہی نظام 





دلیل کمن فی سیر٥ۃ‏ امام المجاھدین 
٠۰ : 7‏ : ۱ ۱ ےس 
صضورتحوت اعم شی اڈ ح کی مھا ران زن دی 


ہ اور 


موچوروجاتای اظام 
جلراول 
می ضا عو ات فا دری رضری 


تم جامسیدہ خد بج انکر یمابنات 
کوٹ مظفرکگی و ڑی _ 


کت لع ال ررعلن 
حائح مسچ دجو یندم ٹا ئن مان روڈ( ور 


۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 011 71 


ضو رو تی ؛نشم رشن ار کی ادا نہذ ندگی او ہاھاھت 








بسم إلله الرحمن الرحیم 
نا تاب حضورنوث| گر تی اشک ادا تنگ - 
اورم جو دہ خانقای نظام 
جلراڑل صصخیات:۵۵۹ ٰ 
مولئے : مفتی ضہاء ابا دری رض وی 


2٭> 1‏ 0 
کا ری جا رام ودانشو ران 
تح سس 
کیوزیک: ٰ قادریکیوز کین 
ار کت جع الہ درعلنا 
اشاعت: صذ ملف ۱۴۰ب طاب یتب ر۲۰۱۸ء) 


رنہ 

روکگر ریف : الا تاذ ذیا ن رص وی 
کا لع ال رعلینا حامح مسچرخو جہن ریم ٹا ون متتان روڈڑ(ا ہو رہل دارالنو مرگ الا مز در پار ما کیٹ لا ہورد 
۱ و ور یکتب نا نام امم روڈساسی تہ فیضان مد درا ویج در۔یسیرہ دیج اکب ری 
للن و ملف رج مو نا ٹیش احمرقا درکی وی (ے٣‏ سسسدسی ای 


ے۷۹۲ ۳۳٣۴٣۴‏ مس عوورضا تادریا۔ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 1 711 7 





الا مسا ے٠‏ 
تضورحوٹ انم کے وال ما جدالسدرابوصا رح مو جگی دوست رجمۃ ال رتا ی علیہ کے نام 
تضو وٹ )پعنل کی والد ماد دتحضرت سیق ارت الچبا رفا رم ال رتھالیکہاک نام 
پ دش لعف تام اسا ج وکرام ومشا رح ظا زشی لغم کے نام 
پ دش ال نکی تمام اولاد ماک ری ال ٹم کے نام 
بب نی ایل عن ک ےتا امہ ولغ رک رام ری ال ہم کے نام 
آپ ری الڈدع نکی زثوت پر لیک کین والوں کم 
وپ زی الد کے مر کے پا ھا مرو ںکی زین وق فکر نے والوں ےنام 
پ ری الع کے لے لق رکم وا نے بین دنا زان کے نام 
بل زگی والو یکوفو یس روا نکر نے وا نشم راد و الورکی سرک یی زالت با ال ع:م 
۶2 آپ دی شعن کےتما مین وخخا ان کے نام 
مص بی علوم تک تخت ا لے وا ےپ کے ش روغ بن الین این لیا کے نام 
بل الق دی کی کیکیش کرنے وا لن ےجا ہداسلام سلطان نو رالمد بین گی شمی کے نام 
بل القدرس پراسلا مک نٹ الہرانے وا لمجا فظ نا میں رسمالت سلطان الو پی کے نام 
الد لکیا رسب سے پہلاخابرد نے والےآپ کے شاگمرد ات النرکی کے نام 
بآ پ ری ال عن کے مر رائنسںکی تی میس حصہ لین وانے تی الا سلا رن تال علی :ام 
پآ پ ری ال نہ کے ناب امام ائل سنت امام ات رضاخماان رحمت ان تھا لی علی رکے نام 
سلسلہ عالیہقادر یہ کے یھ میا رحافظ ناموس رسالت فا کی ملک متا ز مان قادرکی شم ہیاک نام 
پاپ تضورخوت )مم کے شرائی میا ہرم خبوت فا یتوم ین تق درکی عطارکی کے نام 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 8110011171 





: 


ازاھسراء 


مہ جال تضورحوت !ضحم اشن زگی وللکارا لو ٹی 


تضمورجخ الام امیر لیا ہر ین فضیلیۃ اخ الا مام اافظغام | 


سن رضوی 
<فظہ اش تا ی 
کے الارشاد 
راب خویش جھرروال سنت عاش رسول 
جناب الا شج عا رکف ادرک رضصوی 
صاحب حففظلہ اڈ دنا ی 


ضیاءاجمرنقادریی رضم وی عفا الڈرعنہ 


ہہ -سسےمسب_۔۔_۔س٣۸۔سس‏ .لہس ×× رس_۔۔ ‏ .-.--ٰ ٌ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 10 7211 7 





۰ 5 ٴَ ۱ ۱ 20 لے : 
تض وٹ انل ری الیل ع نر مھاہرا نز ندگی اورمو جودہ خانقا تی نظام ) 


ٰ رستجلراول 


تار ظا 
۶م 
ارم ازسیدصابر مین خشاوصا ہب ہا ری حفظ انتا لی 
الم ر بای ضا لت رت العطاس موا نبررالاسلام صاحب صمد لق مچددی 
ٰ ححضرت علا مہ وا نا مفقیشھ تا راجمردرالی ودنلہالعا لی 
ححضرت العلا ‏ صلی ا عاا مر وققت مو( ن مج اطلبریلی ہاشھی صاحب حفظہ اڈ تھا ی 
قیل رس فیا نل شا صاح برای 
جضورق لو ٹن شا لن ایر اعت ائل سنت اننششل 
تضور پیرس رف رع شادوصا حب تن الید یک جاموٹو شیپرد یلوجھراں 
محتزم جنابمیاں نز براضر صا مپٹ(ر ٹارژتشس) 
موا ناحافظ ری امم رٹرددی طاحب 
رت عل مہ مولا نا بر و ریغت یھ ران ا٦ی‏ حفظہ ال تی 
صطفرت علا مو زا مفقی رض ےمصسطلی قش ری حفظہ اہ 
تحضر عاا موا نا مفت ینقصو داع را دریی رض وی صاحب حفظلہ الڈدنتھا ی 
تع رے موا ارذ واافتقارزص شی تی تادریصا حبحفظ اللہ 
تضرت علا میم ولا نا اک رکنورسلطان امم صاحب 
میا ہرشخم نبومت جنا بج مین الد حفظہ الہ 
مفتی مع ام رنقنشمنری صا حب حفظلہ اڈدتھا ی 
مل ا۔م م ڑا نا یرہ یس عو نھرسعیریحفظہ انڈدتھا ی 


مغ ذکوت اسلا ھی صحضرت علا مہم ولا نا حا ذظ حذیظا اللرک ن'قادری رض وی حفظہ اڈ تھا ی 


قبلہ روٹسرڈ اٹم رعبرالڈرقا در صاحب 
سیرشر مر با شا صاحب 
مزا ناشہر یا ررض وی صاحب 





ٰ ٴ ٰ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 810011171 


0ی شی اور نکی میا برا نہذ نکی اورس جودہ مائق ینظام 











سی رف ری ی شاو صاحب . 
ال رز رش ہیی ری نشیف الت ری 
ححضرت عل مہموڑا ناصفقی یم الد ی نفشمنری مبردکی صا حب 
ححخرت علام ولا ناسا یں خلا مجن شاہ صاح بآ ستان عال یق رشریف سر 
قب مد بینررجمت ایڈدتھالی علیہ کےآستانہ یر 


مفتی ضیاء ار قاددی رضو یک یکتب مقتصرے 
نام رض ےم“ شی اھر ٰ 
اہنامسوے تھا زکا رہ 
بھنت روز ونرا یئ طط تکا نرہ 
مضقی ضیاء اج رادرک رضو یکا تارف ادرغد بات دیتے 
حانقاہ دد رکا ہکا می ادوراس پر لام 
درگا اسم ٰ 
خافقاتی نظا مکی تار اوراہمیت 
مالقای نظام 
ا نقا ہکا نظا 7 بببیت 
آ داب عانقاہ 
مانقاہ اد رآ داب خانقای 
مضرت شہاب الد ین سبروردیی رم ترادشدعلیف ماتے ہیں 
خانفا پٰتمنوں کے فم راتس 
مانقاءکی اصلا 
خمانتقابی مظام کے خدوخال 
گی ظا 
خانقابی نظام اور کیئیں ‏ 
ححضرت لی رعمنت او رتھالی علیفر ماتے ہیں 





٦‏ ۓ 


۹ے 


۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 1007211 71 


حضورفوٹ )ئن ری الع کی میا برا نز ندگی اوس جودہ خانقا دی نظام 





مانقا ہکی اہمیت ضردرت اورال ںکی اڈ مردار یال 


امام ئل خی التونی ۶۵ا )فرراتے ہیں 
کی شر زا زامام اح رضاخمان فاضل بر یلوگ 
پیرکا بنا وض رد ری یں ے - 


مانقا مدرسراوزنٹرع مکا زرلجہ 


خمانقا ہکا لصا بکیاہونا جا کۓ ؟ 

حطر تم ردالف مان ریت ایشا لی علیہ کےنز دیک نانقا وکا نصاب 
نضرت داجا صاحب کے و بک خھانقاہکا نصاب 

رکب وق توف مین ےکس کے بضیرگمز ارڑیں؟ 


ٰ مھاننیبیاے؟ 
اج ا یلائی تی ال عنہ کے ز رک جم کے ےعلی نصاب 
دوسرکی جچفرماتے ہیں 


جو خودحجائل ہووورپب رش راج تکسے ہ وکا ے؟ 
ححضرتسبیرنا مردالف ال اف مان عالی شان 
تن نہ ہو لے والا شیطاان ے ٰ 

س۳ اب پیک ممیعتھرام ہے 


مانقاہو ںکامال-۔ ٰ 
الع جائل رو ںکہ پگا ڑ نے می بھی مولو بیو ںکا ات ے 
ایک اورمولوی صاح کا عال ٰ 
پی اکا بھی عو نے پہ 
ھکر کی ہے 
ےکی نین 
مرارات پرکائ یکا دحندہ 
عزرارات پرشع ہونے والا چند ہکہاں جات ے؟ 
حر ت نرزالی ز ماں سیر اصدرسعیدکانھی رحتۃ اڈ تھی علیہ کھت ہیں 


جائل یراوران کے مزی - 








۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 ۰1072177 





نز گی اور مو جود مال سی نظام 







تضورحوٹ انم ری ال رح نکی بابرا 

شرائیامرشد 

مر یدگ انو اع واقمام 

رو ںکی چا راد اورتعاقات 

رےےعےچرن - 
ری ا سا 


اور 


رحے مغ نے 
اونا ءاش کے ون کات 
نے اما نک یک کرس 


بات کرات کے سد با بکیلئے می رداسلام 


اما رضاخاں علی اکا جار 
مزدگوں کے اعراس میں افعال شطمے 
ارات پرگورنو لک حاضری 
طوا فئبراور لوسے ٰ 
آ داب زیارت روض او لی اللعلی لم 
کر دمزار 
پا گی نز سا لئ رکھنا 
ٰ ارات پر فات کیچ انعلیم 
پل کےس رپراولیاء کے نا مکی چچوٹی رکھنا 
یرت بردہ 
ا ری ۓل کاپزہ 
مرا کی چیم اور ےبپھیکنا 
عرارات اولیا کرام پر چان کیہا؟ 
اگگرعرارات اولیاء پر جا ناش رک ہوتا ١2‏ 
ارات اولیاء پر ہو نے وا یت افات 








۳۲۳ 
۲۵ 
+٦ 
مك‎ 
۳ 


۸ 


۹ 
سا 


.: ٦ 


م۳ 
۳۸ 
رس 


۳۸ 


۳ 


۲۸( 
۳۸ 
کا 
کس 


۹) 


۸۵ 
۰۹ 
فا 
زؤاا 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 1112111 717 





تو رخوٹ ؛تنلھم نشی رش دح نکی مھاہرا نز نی اور مو جودہ مانقا بی نظام 


ول یکون؟ 
ا تتما ‏ ف مان عالخان ے 
ما عبدالو پاب الشعرانی رتمتۃ اش تھا لی علیفر مات ہیں 
رت ملایٹی تق رکی رم اڈ رتا ی عیفر ماتے ہیں 
اما می رمیۃ ال تھا لی علبیفر بات ہیں 
شا یمن ارڈ تھا ی علیفر ماتے ہیں 
جحضرتسیدنا مج ردالف خالی رج اف مات ہیں 

وع اش لطاات ٰ 
+یرت 


مامتا حۃّامہت؟ 


یی عا و ںکی انی دہشستگردی 


قو مکی عمزت کے دنن عائل طقہ 
فسادکی جڑ نی عائل ہیں 
ال یا شیطان؟ 
آ پٹ 
الد یث علامیسعیدی فر مات ہیں 


نز راگ یرت باج ما دکقیرت؟ 


رہبرش ربج تکون؟ 
رت مو نا پیش شی رحمنۃ ادتقا لی علی کھت ہی ںکہ 
ین الا ماس بد الا درا یلا لی شی ادل عفر مات ہیں 
آپ رحمت ارٹ بشحا لی علیٹر مات ہی ںہ 
عبارت طا حطہ٭و 
یےحعضرت سد نا مہ ردال ف شا بی رم الد تا لی علی نے فر مایا 
ا الا ما مع بدالتقا درا پھیلا لی شی الیل عنہنے فرمایا 
تحضرستگی اللد بن ام نع فی رسمت اشدتتھا لی علیفر مات ہیں 
رت سد نا حچردالف شالی رحمیت ارڈ تھی علیہ نے فرمایا 


رف 





لاتھ 


1٦ 


٦ 
٦ 
1۸ 


٦۸ 


۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 89110211 71 





ےرکادرونیش الضل با درس ط بل 


جضرت سید نا الا ماسمحیدرالقا درا یی رنشی ارڈ رع کا ساسلننب 


حضرت ججمال الد بن فا رج الکیلا الد اد کھت ہیں 
ما ولا دت کے تحلق اخ ال ال مین نکیا کابیان 
ایام رضامحعت مل روزہ 
ححفرت نم الا ما ما پیا لی نشی شعن کے والمد بین 
واللدہماجددری اڈ رعنمانے بی روان ہس 
تو لی مکی یک سے پداہوئی ؟ 
سفرلفراؤیس پے مو یکی برک تکاظہور 
حضرت سی نات الاماما یلا یک دالدہماچدہ 
ائغ ال ماس بدرالرشن جا می رم ارتا علےےنظرے۔ 
امام ای نت رسلا لی ررمنۃ ا تھا علیف مات ہیں 
ٰ الکن رفا ج اکا نی کانظریر 
اخ الا ما براقا زا لیا ئی ریش اش رع کا کین 
یل کے ل ہیں پیراہوا ٰ 
یرد الند ےے 
ایک ادا کی چشی نکوئی 
وین می سک کی مت ےک رفا تکا نظ رک نا 


دوران طال بھی تغل ام بدالظادرا لاٹ شی رنہ ک ےجا ہرات 
بخدا رك تثریفآوری 
زمانرطال بے عھی می فاتے سے ہوتے سے 
نون کا طا ری ہونا 
تصمو لیم میس ختیا ںجھیلنا 
٣‏ ماش نے پر بے روانہ سے 
ْ نے استادأتخ حمادرحمۃ انتا ٹی علیہکی بارگاہ ٹش ٰ 
استایکتزم کےامتفان لے پر پ ری الشدح نکاض رر 


٭ ےا 


ے٣‎ 
ے٣‎ 


ےے 


ے٣‎ 


اے٣‎ 


۵ 


اے٦‎ 


بے 
ےءےا 
ےا 


۸ے 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6811001717 





ایک فطب وفت ے لا قات ْ ۸۲٦‏ 


تفہ انی ریت اللہ تھالی علی کے رما نکااڑ ۸۷۰٢‏ 
ْ بس سال می می لیم ٴ تك٦ص ۸۷٣‏ 
سے پاوں اورد ہگ یکا نوس سر چلزا ٰ ے۸2 
دوران طا ےی ارک نوا ہن کا پیراہونا 7 ے۰۸۸۶ 
اما مھ بن ش کرحم ال تھی علیہ کے الغا ظط ہہ یں ۸۰۸ 
کھا نات رکٹ رمادیا ْ ۸۸ 
ا رھ نات ْ ْ ا۰۱_ںيْ ۸۸۰ 
حطر خلا ماس مبدالقا درا یلا لی شی اللرعنہ 
چس کے شا واسا نرہ 
1ماش رس ارب ایگھ می داش ھا لی 
ا1ا بزسعیدائس الا پک اسعارت ۱ 
لیخ رم الصدا لی رح انی علیغرماتے ہیں ٴ ۹۹۹ 
عبادرت سرت ×۷ ۹ ا 
امامالڈئی رحمن ارڈ تھا لی علیغر اے میں ٣‏ ۹۳ 
ْ وصالت یف ٰ ْ ۳ 
ٹلا مامالہسعیرال ارک ب نگ ار می سے مردی عد مخ شریف ۹۳ 
ق را نگم ری مکی حطاو تک نے وا نل ےمسل ما نکی مال ك۹۳ 
استاؤفحوث باک ریی ارڈ رع ہآ بوالنقا سح مکی می نم بن بیان ال رز از ممیت ال تما لی علیہ 
اسم راوتا لی علی ضر تارف ۳ 
حخرت !مجن الھیلاٹی نے حد بث ش ری فکاسا غگیا ۹۵۰ا 
وصال مہارک ۹۵۰ 
نببت درس تگ رو ۱ ْ ۹٦‏ 
نپ تھے دک اک رایت 0 ٦‏ 
دوریروامت ْ ْ ےت ا 





71 86810111 ۰۱۷۷۔۷/۱۷۷۱۷۷ 


حضو رٹ نلم شی ال کی ادا نز ندگی اور مو جودہ انا تی نظا ) ر یں 


ا ار زوا یتیل سی الد ای رم تھا ل علیہ . 























عم ریت وت یکا تصول ٰ 0 

مفق, ریس مراظر ۸ 

پ رم الیل تھا ی علیہ کے یکارڑدے ا ۹ 

مانانی عداشٰقالمليکاقل -- ۲٢‏ 
ٰ دیاقتداری ۲ 

مادات ٢‏ ارک -- ۱ ك٣‏ 

زا لہ کے تی ر ہن ےکی وجہ ٰ ۱ ٰ ۰۳ 

وفا تت۰ رلیف کو ہے 

۱ آ پ مت اد تھا لی علیرے م روک ایک عد عٹث ۱ ۳ 
اخ امام وین سکم ین ددو 7 اوک راید اللد با ال تھی رممت اڈ دای علیہ 

نم ضا در ال تھا ی علی گی وا دنت پاسخادت ۲۰۳۲ ٰ 

حماد رت ا تھالی علی کاعلی مقام ٰ ۳۲ 

کھا کون اکھا تے جے؟ ْ __ے ۵م 

دووعد یٹ اکب ے ْ ْ ۵ 

آپ ٠ۃ‏ ایل تھا عل یی را مال تے 


ابولمظفر رم ا تھی علیلام ۱ . ۷ئ 
میاوی نل اللد با سک شاک رد بی ے٢‏ 


اواب شعال یراو ےت ٢۰.‏ 

حافظائی نکش رم اردتتھا می علیفر ماتے ہیں . ۲٢‏ 

امام الٗہی رن الل تما لی علی سے ہیں ۱ ۸ 

مرانتا می ےدوریکا ہب ٰ ٢٢۸‏ . 
ولا یت مل کان ۲۰۸۰ 
مصن یک سکشر: الو تفر بن اح رالبفد اوک الس ارح رح اد ای علیہ 

۱ ولاد تب سعادت ۰ 

ولادرت ووفات کے تلق ابن خلکا نکا ٹول ٰ ۰۹ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 1001 717 





محو تی نک ین ری سآ پ رحمنۃ اش تا ی عل کا مقام 
امام الفرپی رن الد تھا لی علیہ کے ہیں 
ایخ ابویلی الصدنی ری ان دتالی علی کت ہیں ٰ 
ظا ری مقری مر سر عرمفحق 
ےنم اروش تتفم رین اص ابد ا دکی کے م شا کرام 
ات او ضفرام داد مار اس 
آ پ رحمۃ ایقدنتا نی عا بے مم روک ایک حد مث 





0-2 جج ے 
ااوپرالیندنگی بن الا ماع رش :نسن نآ بن انا ءال بد وی لی رحمتت اتکی عل 


ا راز یبن لا بای ان ین ین الناء 
اہی ا تھا لی علیہ کے مارح مرام 
سا عد مث 
اخ وع بدانشہ مہہ التعالی علیہ کے شا ر- 
امام ز :بی رحمت ال تال علیکا تارج عقیرت 
۱ جج ا بارش رم اپلا ای ع ہےر و سے 


ا ال ما ابو ےھر بن صن رخ امج بن اع الد دی الما فا وگی رحمت الد تھی علیہ 


الوما اب الما فا لی رم ار تھا لی علی کی ولادتاو ات 
الا ما مع بدالتقا درلجیلا فی ککااان سے عحد بی ثکا سا کنا 
ںیل 
ناوخا لب الما ای سے مروی عد مث 
اغ الما مامح اش لطاب جن وف دم ال تال مل 
ابوطا لب بین لوسف رم اڈ تھا ی علیہ 
ا ابوطا لب بن لوسف رحمت اتال ی علی کے مشار 
اخ ابوطا اب بن بوسف حم اش علی کا دصالش ریف 
تی سق رآ ن خوالی 
عبدرارشری نگھررشی این راز کے لے سے لت سے؟ 
حضرت سید نا بلا لی رنشی الی دع کی اذ انع کے راوگی 
ول رسول اسنہ ہے بہت شہہہود وی جا ہے 


زس 





۲٢۰ 


۲۰ 
۲۰ 
٢ 
2 


۳ 


۲ 


۳ 
٢٣ 
۵ 


۲۵ 


۲ 


٦ 


٢۲/‌ۓ‎ 
٢۲اے‎ 
2) 


۲۸ 


۲۲۳ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 8110011171 


تضورنو انف ری اوندحنہکی مواہرا نز ندگی اورموجودہ انا بی نظام 


اخ ال ما مآمحد ت الوسحد یب ن الک رم بن رب نیش ھی رم ال تھا مل 





ات ابوسدریھ بن عبد انکر رھ اد تھا لی علیہ ۲۲۳ 
آپ مد اش تال علی ے٤‏ ظا ۲۲۳ 
ان الما عبدرالقادرا یلا لی شی الع ہکا سا کنا ۲۲۴ 
ایخ الا مامالزٗہی رم اش تھا علیفر مات ہیں ٰ ۱ ۲۲۵ 
آپ سے دی ایک رامع ْ ۲۲۰٢‏ 
پ سے مرو دو یا ردایت ۲۲٦‏ 
حضرت/ءالفزالی رم ایک مشش ی علیہ 
: رت امام الخزا کی رم الڈ تا یع ۲۲۰'۸. 
فرماتے میں ْ ۲۲۸ 
اما مزال یکی لیت باسعحادت تو لتعلیم ۲۸۱ 
امام خمز ای رحمت الد تیالی علی کا ذدو یی ایا رکرنا ٰ چا 
اح العلوم الد ی یکیت یف کا زمانہ ٰ ےہ 
ٰ آپےممۃاشقال علیکا مال ثریف ٰ کو 
رت ماق منہ ورای رسای اتال می 
دلإمتبامعادت کو لم ك٢۲۳‏ 
وٹ ۱ ٰ ۳ب۲ 
تس آ ‏ پ رت ادتقا علیہ کےشاگرد ۲۳ 
حضرت اأشخ لا ماس مکی بن اسحاق بن مند+ عو شی نک نظ میس رک1 
ٰ امام سی رحمنت اش تال علیذر مات ہیں ۰٣‏ 
سمخححدمثامکن ج زی رحمتت اش نتحالی علی کت ہیں ہے پر 
خطبیب بفدادکی رم اتال عطیفیاتے ہیں -- ۲۳۳٣۳‏ 
امام السعالی رم ال تھا علیفر مات ہیں ٰ ۲۳۳٣۳٣۴‏ 
ماب مندہکالقرادآنااور یہال عد مشترلف یا ن/نا جس 
وام یکن رج ےک ی رت ال تی علیتقل میں ...۴۰۰ھ 
امام بای انی رع اتال عمیفراتے ہیں ۲۳۵ 


٭ 


۱۷/۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹ 3 66010171/3 ا٥٥‎ 





الا نام امحد ث ا و ال رکا تح ہن بح جن امم افخ زی الا جر ری ارٹ تنا لی علیہ 


ال امائد مث ابو الہ رکا تتحھ ہن بین اما فرزی 01ھ ۲ 
آ پر ہمت ار تا ی علی کا وصا لت ریف ٣‏ 
اچ ال ما التراہرا شر لصوثی تن الاسلام اروام وشت یی بن عیب مین ا برا یم رحمتۃ لی علیہ 
ولادت پا سعادت ۲۳ 
كاباحد بث م۲۲ 
آپ رم ارتا لی علیہ کے شاگرو ۲۲۸ 
ماما سمعالی رحمت ا تھا ی علبیفرماتے ہیں ٦‏ 
ین کے بی عد یثش رای ف کا ما شمرو کیا ۲ 
تم ابوالوقت رم اد تھا ی عل ےکا ماگ غ رز م۲۲ 
اتنغ ابوال وت رت ال تھا علیح شی نکی نظرٹش "۲ 
تنم زی الیگ لن الہ ز لک رتبا لا لیف مات ہیں ٢۴۰‏ 
ث ابکن ججون ھی رم ا دتتحالی علیہ مات ہیں کہ 
وز پت یآ پ رمع الد تھا لی عل کی شا 0 اظارر یھ ۲٢‏ 
حد بیت شریف کے اد بک وجہ سے سواریاسوارنہ ہو ۓے ۲٢‏ 
ےکھا نے ےبھی زیادہرسول ال ۃ پگ کی حد میٹ خرن فکا جح ند ے سم 
حد یش ری فک یکاہ تک فانندہ ۳۰۰۔م‌م 
وفا تج رلف اور جٹاز ہ ۲۴۳۴ 
آپ رمن ای تھا لی علیرسے رد ایگ عر عث ۲۳۴ 
انج اروا لوقت رحرت ادتقا لی علیرے دوس ری روایہت ۲۳۵ 
بیدمنورو یل جعہاد اکر ن کاو اب ۲٢‏ 
ایج الا ماماروا تفوظ بناج بن لسن 1کموز الف الا پر رتمنت ال تھا ی علیہ 
اخ ابو الا ب رتمت الڈ تھا ٰی علي کی ولا دت پاسعادت ۱ ۸ 
صولگم ۲۲۸ 
ا الا ماس بد الا درا یی شی ارشرعنہ کے استاوالفقہ ۸ 
آپ مت ال تھا علیہ کے شاگرد- کا 
محو می نکی نظ می ںآ پ رحمت ا دنتھالی علیکامقام ٰ ۹ 


۱۷/۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹ 6001107 71 





تضورو تم شی ال نکی یراز نکی اور موجودہ انا ئی ظا م ا 4٢‏ 
اع کیا تم اٹ رتا عل یک نظرمیں ۳۰ 
امام ان سی رحمتت ا دتھالی علیفر مات ہیں کن 
اخ الا مامالداخطا ب رم اڈ تھاکی عل کیم ویات ۵۰ 
مارک ہو مارک ہوممارک ہو ۵۰ 
اضیا د یدک یحم لگا ۵۰ 
رہب کا اجر ۲۵۱ 
ان الا ما رین ین بن نھب خلف بن اعد القاشی ایی ابد اد ا ضیکی رم ا توای مل 
ا اہوینی رجم ار تھالی علیہ سے ماك رام ۵۳ 
من یت ۵۳ 
ااایوپپڈاھا درا یلان رشی ا شع کے اس راد ھی 
القاصی اپوشینی رر انتا بی علی یح خی نکی نظرمیں ۵۲ 
نطب البفد ادی مت ای تالی علیفماتے ہیں ۳ 
ا ابواسیان ری ا تھالی علیفر مات ہیں ۳ 
:. امام الف بی رم ار تتحالی علیف ماتے ہین ۵ 
پڑ ھن وا لو ںکارل ۵۵ 
را یکےگزارتۓ تیے؟ ۵ 
چٹرمارات مال ۵ 
محدسث امن جو زرکی رم ارڈ تما لی علیفر ات ہیں تع 
النقائصی اہوپی کے استاوکت رسکی خیبرت ایمالی کے 
القائصی ابو مکی رم اڈ تھا لی عل کی مرویات ے۲۵ 
دیعب تکر ے والو ںکا ا ایک دو ے کے خلاف بددعا اک رنا ے۵ 
ٰ رص دی یی ای رحنکے لئے جنت واجب ہوئی ے۲۵ 
رن ری ۸ 
رسول الیگ کے ٹیل براخت را ضکمر نے والا ۸ 
اخ الا مام ابوطال بمبدالتقادری نین بوسف ال ادکی لی رم ال تل علیے 
ْ دلاادت پاسعادت وتصو لم 2 
ےر ام ا وطا لک بعبدالقادر کے ش اگرو ۲۰ 











۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 1 11 717 








تو رتو ٹ ضلم ری ان ہکی مھابرا نز حرگی اورموجودہ ما نقاعی نظام 


أ ا ماس برالتقا درا یلا لی نشی ارشرعنہ کے استادالید یٹ 
ا الما ابوطا ا بپکبدالتقادری نج رحمنۃ الد تا ی علیح می نکیننفریٹش 
امام اسعانی رحاش تما مرماے ہیں 
اج ابوطا ہر ضف ی رصن اللہ تھا علیفرماتے ہیں 
وم ال مام الوطا ا بعبرالقادرکاوصال شریف 
ان الامامابوطا ا بعبدرالتقادر جن بن اوسف رت تھی عل کی مرویات 
گناواتےش حکھر ن ےکا اجم 
سورت رآ لی کے پٹ ہکا اجر 
مگ رت اورخ بر ے بھی بد سے 
ما اوال زین ار رم ا تھالی علیہ 
آ پ مت الدتھای عليکانتارف 
الا کپرالقادرا ھیلاٹی ری الڈ دع کے استتا دا لی وٹ 
ایغ الا ما مایوال زج بن ا قارع انتا ی علی کیم ویات 
حفرت سینا اح ین ری ادشدرع کی عاج ٹوح 
ملمان ہرعال می مع میں سے 
انا سیر وللدآدی کی ال علی 7 


اخ ال ما حر ت الحا لم ایواسین ال ارک من عبدا لچ بارالیفد اد العیر ٹْ 


۲۸ 


اوخ رمت ال تھا ی علی کی ولا دت پاسعادت 
ْ آپ رحمت اتا لی علی کے مشار 
ا ابین العلبث ری رحمت اش تھا لی علیہ کےشاگرو 
اتغ این الطییہ کے استادالید بیٹ بح تی نکانظرش 
امام ابو ساسحا بی رحب ال تا ی علبیفرماتے ہیں ْ 
اج ابپیلی بن سر الصدرقی رحمت اش تھا ی علیفرمات ہیں 
ایخ این لطو رھ اتال عليکاوصالٹریف 
ہہ مم سم ۔ 
ا لا ما انال ارک می نع بدا ارک مرویات - 





۲۰۳ 


یھ 


۲۰۲۳ 


۲۵ 
۲۵ 


۲٦ 


۲۷٢ 


۲ 


۲٦۷٦ے‎ 


۲ 
۲۰۸ 


.- ۹ 


۲9 


٢۶ 


۲٢ے‎ 


۲+ 


اے۲ 


۔1(21713[.6017ا:6 ۱۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 


حضو رو عم شی اع کی داز ناورم جودہ ھی لام 
گنا ہو ںکو دو نے وا نے اعمال 


آپ مت انڈدتھا ی علیہ ولا دت باسعادرت 
۱ ا الامامابو تقوب بوسف بن الوب الہمر ای 
مدان یک بےاد پیج سے ایمان چلاگی 
آپ تم ای دتتھالی علیکو ہنی سے والو ںکا مال 
اہن تقوب برنالیسف بن ایب این المد انی علا ءاعلا مکی ریش 
ٰ انام یاٹقی رتمتۃ ایل تھا عیفر ماتے ہیں ۱ 
امام ای ن لت گی بردکی رتمتۃ الد تھا لی عل کت ہیں 
امام اہن الا ےرا کی رحمت ال تھا ی علیفر مات ہیں 
امام اولیتقوب بن اوس بین اواب سن اابمد انی کی مروات 
کیا رسول ارڈ پگ کو دا نکر بعک تھا ؟ 
تی نک رین ریی اکنا کی نحب تکااجر 
رسول ال عون کل کے پارو ںکیاممثت 


ا الامام اقلیب ال ودک ری ای ب نی التم مز کی رت الد تنا لی عل 
ْ م2 یا یا نکی امج کی ولادت باسعادت 
آپ ر جم اش تھا علی کے ما 
خر مات دین اورونا تج ریف 
اتےغ الا ماما لیا لی شی اٹرعنہ کےکھی استاد 
ا الا ما م اہو ذک ریا ای نی راڈ تھا علی سے مردکی عد بی ث شرف 


ائین لام ادا کا لین احھالعاتق لی رم ال ھا لم 
اع الا ما مکی دلادت باسعارت اد سیل یم 
رف یھ سالک نمی لم کے لے سر ٰ 


کو تب 





ك۲ 


ے٣‎ 


ا الا ما ایو یوب ین وسف مین ایب سینا مدائرمتافدھال لی 


٣ 


۴۳ 


۳ 
۲۴٣۳‏ 
۲۵ 
۲۵ 
ا7 
۷ 
۲۲ 
۲ 
ےك 
۸ 


٢۲۸۹ب‎ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 810011 7 





محدرت این جوز کی رم الد تھا لی علیفر ماتے ہیں ۸۲۳ 
امام بن شائح رم الد تھی علی کے ہیں ٣۸۳م‏ 
اخ الا مامابوالب رکا ت لی بن امم الات پی سے مردی حد مت ریف مہ ے 
بین بی ال سادت سے ۸۳۰۲ 
اخ ال ما م مد تث اوطا ہعبرا لکن ین امم البفعد ادکی رم انتا ی علے۔ 
ار ےا سا تاسات َ"‌۳. 
آپ رحم 2 اڈنا ی علیکانتارفکف ٰ ۲۸۰۵" 
ام نی انی اودامام ابی فرماتے ہیں 0۳'۸۰۵ 
امام ائ ناف رکی بردی رحمن ال تھا ی علیفرماتے ہیں ٦‏ 
آ پر ہمت اش تنا ی علیہ کے شا .7- - کے 
ٰ رت الام الیل شی ان کےامتاد ۱ ٦‏ 
اشن لاد : تف ارہ الکن ٹن املابفند ادکی سے مردگ احاد یٹ ك۸ 
من وکا خر کے درمیان کے فر قکمرنے والی چچز ۸ 
ابلڑ روست وظفہ ۸ 
ٰ بل الل تھا کے لے ہونا جا یے ۸۸ 
حرت ا ا ماحیر ث نو ردان نالی الب الترزاز رم اتال لی 
آپ ‏ مت الدتعا ی عليکا تارف ۲۰ 
ححفرت أ تن ال ماما یلا لی شی ا عن کے استاد ٰ ۰ 
آے کے بععدرب تال کی نافخر ما یک سکرو ںا و کم 
بی ارلوک تن ہو تے نو لوگ تاد ہوجاتے _ 2 
ا الا ما م مد ث ال عفان اس اتیل بش الا صا لی رممت اتا ی علیہ 
الامام ابوعقان۱سا یل بن لا صیہا لی رم الیل تھا لی علیہ ۲ 
ِ آپ ر مت ال تھا می علیہ کےاسا توکرام تے م۹۳۰٣‏ 
اخ الاصبہا لی رم ای تھالی علیہ سے ر کے 
ححفرت تال ماما یلا فی نشی اش رعنہ کے استاد ۲۹۳۰ 
اوخ ال مامالاصسہا نی یج دی نکی نظرمیں ْ ۳ 
فا نک را رتھائی عیفر ماتے ہیں ۲۹۳٢٢‏ 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 68,122173/.77۰ 





نورق ٹ اعم ری ارح نکی ماہرانہز نکی اور مو جودہ انا دی نظام 


امام اصہا لی رمنۃ ال تھا ی علیکاوصا ل ریف 
ا الا مام ابوخثان ۱س یل بن مل الاصہالی سے مردئی حد یٹ ش ریف 
ْ اما کادارددا تل ہے 


ٰ رر سے فا (ر ہم 
۱ رَسلائزر ل7 ابر 
”لم ستاوم راتا 1 سم 
درس کی تما ی اکر نے وا نے 
ْ بل رٹیل سے لگا 
الا ما بدا لق درا بھیلانی کے مدرستقادر بیگاشان: ۱ 
ٰ صرفمددسہ کے ددداز ےگ رن ےکی رکرت 


۲۲ 


ٰ اخ الا ما مبدالقا درا لاٹ ریش ا شعن کا ط ریت تر رفیں ٰ 


مز اسا بے کرام ! 
ات نشی ارڈ ح تیر ہعلوم نی نکلا فر ما یکرت جھے 
شاگمردوں برشغفق تک اناء ۱ 
طلبہ رشفق تکاانراز 
کنرذ هن طلبہ چھی عحنت فر مات جے 
فحوت !لم ری اد حعنہنے بیو لک ڈای تر ببی ت کی ےکی ؟ 
0 ْ لہ کے ز وق کالیاز 
یں کے ےکھا اگھص ہے تا 


ْ ۳۰'۰۴۸ 


حضرت أ توعد القادر یل فی شی اش نہ کے شاگرد ۱ 
لئ ے اتی لداع انان ما سی جم ال تھا علیے 


ول دت پاسعادرت 
ٰ مت ھی 
ا عبدالتقادرا یلان ریت الع شا اگردی اختیاری 
شما پان زندگی 


۳ 
اس 
۳ 


۳ 





۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 9111211 77 





ال مخ کی ہوگیا؟ 
تیاس دع ناکاحال 
عحبادات وعادات وخص ال 
قائر شک زنمدگی 
7 تخت ف تی سے نہ ڈر نے 
ان ز بن الد بن ای ننجارتمۃ الڈدتعا ی علي کی والدہماچرہ 
ارک ن نیا مت اڈ تھا لی علیہ کے شاگرو 
ان ای ناک یپجاس میں سلطان صلا الد بین الو ی 
ححوث : اک ری الع اجازت سے رواش ہو ے ٰ 


غ انت ال ما ماک بداڈدا بای رم ال تی علیہ 


ایخ اید ثالایا ماک ےگپرایڈرا جبائی رصن انتا علیہ 
.رع و صول 
ا حاورا لچ کیرحت ا تھا ی علیہ کے ش ارد 
اسلا مکی رف سر 
الام یتو لکیا؟ 
ان الہہاکی ات الا ما عبرالقاررا پھیال ی کی خ دحتم 
نے ع ہدارا لہ بائی رسرارڈدنتالی کے استاداورشاگزد 
رسول انڈمھٹٹھ ےخو اب میں یک سوا لککاجواب ملا 
مھ یکرال 
وصال ریف 
از اروا بھی اد بک/ر تے تھے 
آپ رم اڈ دای علبیرے م رد ایک حر مث 


ٰ اقم اور گر کپ رالوا ےر رمد انتا ی علے- 


ش اکم وفحوٹ پاک یی الاڈ رعنہ 

ہنتف ری بردی رصنع ال تھا ی علی کیچ ہیں 
آپ ےم کی ایِک محر مث 
آپ ے۸ و یدوس کے 





٣ 


۲۳ 


سررسر_ 


۳۰۴٣ 
۳٣۴ 
۳۵ 
۵ 
۲۵ 
٦ 


ك۳ 


٣اے‎ 


. ٤ 


۲۸ 
۸ 


.-_ ۳۴۳۰۸ 


۹ 
۳٣ 
۳+۲۰ 
۳٣ 
۳٣ 


۳۳۲۱ 


سے 
"۳۳۰ 
۳۴۔۳ 
۳۲۵ 





۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 1 01717 





تضو رو یی نلم ری اح نہک مھا راہ حدگی اور مو جودہمانظا ہی نظام 








اع پت الین ع دای رم ارڈ تی علیہ 
شماگمروحوت پاک ری الع 

ا عمبدالقادر بن عخثان رحمت ال تھی عل 
در تے۔ اک ری الڈدعنہ 


ات عمبداللطیف من اپی الف رخ رت ال تھی علیہ 


شا اکر دفو ث پک ری الشرعنہ 
ان کے شاگرو 
وصالشٴریف 
الال عالیہ 
ایخ احربن ال مرج ین ملی رحرد ارت 
شا اگمردفحوٹ یاک زی اشعد 
انم عدالقاورا یلا تی رش ا عن نے اجازت حر مث ۱ 
اخ ابوالحپائئ رتضنہ ایل دنتھا لی علیہ کے شاگرو 
ا لی بن ادریس الیعنقو بی رم ال تا لی علیہ 
ام کی رممنت ان تا بی علیفر مات ہیں 
اخ لصرسری شبید داع اور اتی علیہ 
ٹیس جلد میں نحت یں 
یکا :ا خلا تی دعادات 
رسول ار پش کی ہثارت اورا نکی شارت ٰ 
لعل لیاقا بی ال نی رم ارل تھا ی ع_ 
لان اضعازت 
تو لعلم رتو ل خر خلا ت اوراخلاقی عالیہ 


اخ ال ماحیر ٹیم بن ال رم ارڈ تھا لی علیہ 
اج مر بن لفحضل رح الہ تھالی علیہ 


۳+۳ 


۳-۲ 


۳۲ 
۳۲۶۸ 
۳۸۲۸ 


۶۸ 


۳: 
۳٦۵ 
۲٣۰۲۹ 


۳۳٣ 


س۳٣۳‎ 


۳٣۳ 
۳۴۳[ 


۳۳ 


٣۳٣٣م‎ 


۳٣٣ 


گے 


یھ ہ۔موسسسسسوہ- ملسوسسسسسست- آ+سسسسھ-صهجْة٤]۰|وکسژ“[آ‌[پوٗوی+سوہسويے‏ 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81100171 





ام ذ بی رممتۃ ا دتھا لی عل یر ماتے ہیں ہہ 
ا الا ما سح راڈ ز ز ای رم اتا لی علیہ 


ا الا ما سک راڈ ز ز بای رم اتا لی علیہ ٣۶۳٣۴.‏ 

حور ثاککہی اخ الا ما “لی ان ای بکرم ال تت لی علیہ 
اخ الا مام گی ابین ال یرم ایش تما لی علیہ ۳٣۱(۴‏ 
لی بن الی بر کے ش اگمردادرامام ذ؟پی کے استادکا بیان ۳۳۴س 
امام ذ بی رتمنت اتا لی علیہ کے جے کے مرو اورعماہر ۳۳۵ 

ا ام اخ علی نیش بن سعد رح اڈ دنا ی 
امام علی ین ٰشنلیش من سعد راو تھا 9مم 
ٰ وصا لت ریف ۷ 
ححضرتتخ الا ما امیر بث اإو ضا لم یکپ راللطف رح اڈنا ی علیہ 

ول پاک لا ساحا بات پا سس 
صولظم ٣٣۴‏ 
ا الا ماما بوطا لعبراللطیف شاگرر ي/۶|[۱ٌىمم٣٤٣۳‏ 
ارت او تم ری ۳۳ 
وصا لف ۳۲۳٣۸‏ 

ا ال ما مآمحد ٹراش اما رک مد الڈاتھا ی علے۔ 
اخ الما آححد جم ان ا رک رحمت تھا لی علیہ ۳٢۸‏ 
تو لع دی ۱ ۳۳۸ 
اپنے اوقات ضائح نہہونے دیے ۳٣۸‏ 
وصال ثرف ۳۰٣۳۵ ٰ 7 ٠‏ 

ان الا مام اسبا می رین ئھ ہن نتمان اوک ادا پاٹ انس نب رحمت ادتقا یع 

ٰ شماگم رد امن ا لیلای ۳٣٣٣‏ 
مور رخ ار ن_بھارکی رائے ٣٣۳۳م‏ 
صاحبشغزرات ال +ہب ات میں گا 
وصا لت رف +مك۳۴ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





۱ حضو رو )نلم ری للع نکی اہ رانزندگی اورسوجودہ انا بی نظ م‎ ٣ 





اخ اسباومی کے شاگرد ْ م٣۳‏ 
الا قد ید س ت الفقیہ قطب الد ین میشا لو رکی رم اڈ تھا لی علیہ 
ان قب الد ی نکی ولادت ارول مم ۳۴٣‏ 
راریس میں تر ریس کےف راٹس سراضامد بنا ٰ ۳٣٣۱‏ 
سنا غلاق ووصال ضیف ۳ك-_ 
فصاحت وب(اغت کےشہنشاہ ۳٢‏ 
۴ید ٦س3‏ 8۶ ٰ ۲۴۴| 
انج قطب الد ین مال ری درس قادر یش ےس 
ا قطب الد بن فرشا ری اورندرالمد بی شمیر 71 
بے سے پپپلے دی ن کا ما نیاکون ھا ساس 
تب الد بی غیشا ری کےغلاف بات کدرخت . ٣۴۰۳۰‏ 
شی قطب الد ی نک یآ برسلطان رم ال کا خونل ہونا 4زنر 
ای نٹ بی بردیی رت الیڈرنتھا لی علی کت ہیں ٰ ۳٣٢‏ 
امام دا دی الما لگی رحمت ا تھا ی علی کے ہیں ْ ۳۵ 
اون این ھا رحمتۃ الڈدتتعا لی علی سککتے ہیں ۳٢٣‏ 


اخ امام امحد بابرا میم امم بعد اشھاللے 
ایخ امام امحد 0 ث اکب رام من اسم نا ۳۲۵ 


شی مین لی رت ال تھا علیہ با تاناکم -- ٣۴۷‏ 
حا ین نٹ رم ان تھا علیہ ےمردی اک زےث ۶٦‏ 
ا ملعم اض اہ تث اتطیب اسعداجن 5 امخیا بن الی الب رات رحم< داش قالط 
۱ نام ونب ین : حخنع 
ٰ تو لع اورمشاج کاذکر ۱ ہ۸س 
ْ نم عبدالنقا درا لپیا فی ری ار عنکی خدمت ٹش ۸۷ 
در سکیل لیت دعہدہقق اک بپردگی ۳ 
اس این میا ری ایل تما لی علیر اور الد من زنگیشبر ۳م 
عران کے خطیب ء۶۵ 
آصنف وتالف اورونا تئ ریف ْ . ٢۵۰۰‏ 





.1021713۱ا60 ۱۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 





ری 





آ پک امردیات یں سے ایک حر مث ۰ 
آ پک امردیات مل سے ایل اورعد ہٹ ۳۵ 
ات الا ام لاہ رلغخقیہ ا بین؟ٴ مین الا ین انل ابواسحھ دالھ مک :. 
الخ )ج رن1 یکین ال رک ین اشْل اواکسعو ر ْ ٣۳۲‏ 
قائلی الا مام ال سی رحمیت اش تنا ی علیہ ہج 
صب رک ےکووگران ٰ کو نے 
خطیب بدادیی مہ ا تھا علی کت ہیں - ۳٣‏ 
ان صلا الد بن رت ال تھا لی علی کے ہیں ۳۵۳ 
اج ال یی رت اود تعالی علیہ نے بررس ہا ئ میا بڑے 
اع الا ماس گی بن ات بین وہب بن منارہ الصا موی رحمتت ال تی علیہ 
اتغ ال مامبپی بن ام ین وہب ین مار الصا فی ۳۴“ 
خطیب مفدادکی رحمی الیل تا لی علی کت یں ۵ 
ا الا ماس بدالقادزا یلا یی خدمت می جایس سال ۵ 
جخ ایل امھ ین اسحد من پعلی ابین ا"رابن الصغیر رحمتت ادتقا ی علیہ 
قارنی - ۵۵ 
امام این جمرلتسقرا فی رتمتۃ ال تھا علیفرماتے ہیں ۱ اہ 
ا این ذقیظ رحمتۃ ایل تتھالی عا کت ہیں ے۵ 
محرث امن الد بی کت ہیں ے۳۵ 
ْ وناتش ریف ْ ے۳۵ 
اف والاۃیی بین بردواقی بن ز یوبن اشن بن سعی ری نحمحصر۔ نام راککندیی الد دی 
صلی بن بردواق بن ز بین | نین من سعیربی ححصرد ۵۸م 
اج این ر جب ات موی رت ای تما لی عیفر ماتے ہیں ۵۰۸۰-۰ 
ونم جمال الد بن رم ال تتھالی علی ہکتے ہیں ۹غ 
از مود بن عتان مین رکا رم التعاال رحمیت ارڈ تسا ی علیہ 


ولادت پا سعادت ۱ ۹ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 11121 71 





فو تی اکم شی رح کی ادا نز ندگی اور سو جودو ای ظا 


ایخ ممورین مکارم الدعا لکی نخانقاہ ۴ی کہ رنے دا نے اکا بھ 
اپوال, رجا بن تسکعلھی رح ای دنتھاکی علیرکامیان 
حنابلہ کےکوتو ال ٰ 
امام الوشا مہ رجمتۃ تھا لی علی کیچ ہیں 
ا مالذاہی رم ال تھا ی علی رکچ میں 
.ین جھصورینعتان من کا ملمعال کےشاگرد 
ھا ذڈای نیکش حم انڈدتھا لی علبیہسکچے ہیں 
اج ایوالنفر نج این نی رد ابد تنئی علی رکچ ہیں 
فقہقادری مرف ضگز ارے 
پت زیادداد ‏ سکھاتے جے 
۱ وا ت|‌ث رہف 
نینج صسورین عتان رکا ر مالعا لی مادنا عل یکا ہے 


۳ 
۳.۰ 
۳ 
۳۷۱ 
۳۷۱ 
- 
+۳ 
بن 
۳+۲ 
تر 
سے 


مم 


ٰ ٹوخ ا ملفتی الا مدع بدا لطیف بعد الا : اب نج برااشراجن ای اچیب الاکمر 


شاک ر وٹ پاک 
خطیب بخدرادیی رحمتت ائنڈدتا می علیفرماتے ہیں 
الا مام صلا لد بن رم تھا لی علیہ کچ ہیں 
وعن لج یک اکر تے جے 
عکومت زگ کے ستو ان لو ککون ے؟ 
تم عہراللطیف بج نعبدالقاہرسے مردکی ایگ ردامت 


۳۷۰۴ ً٣ 


سے 
۳۵ 
٦م‏ 
۷۷ 


۷ك 


ام ای اور نال ندال نا دنق مقر مد یہ 


ولادت پاسعادرت 
حصو لعل کے لئ سفراورمشا کا :26 
الا ما مان قد مرجم تھی علیہ کے ش ارد 
موررخغ ان نمیا مالتحا لی علی کے ہیں 
اتی عمرابن الھا جب حم ال تھا ی علیفرمات میں 
امامالز ٗی رممت ال تھای علیٹرماتے ہیں 
اٹ ال با موفن لن ان ا ہک کردہ کے 


لک۔س۔۔۔ےکسےجحس‌ ْ ح ححچحح‬سےحصح ___-ی-----.-2727 ات 


ہ۳۴۷ 


۳١۷ے‎ 


۷/۷۱۷۷۱۷۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 61021131. 7 





حضو وت ؛نقم یی شرع کی مھا برا نز ندگی اور و ور انا یضام 











ایا مابین امہ ک تلق ات اعلام کے تاشر ات ٣‏ 
صن سلوں ْ ٣۱‏ 
عبادت وشاععت اور عادات وخصائل ٣٣‏ 
امام اہ نم امقادری رحمتت ادتھا لی علیہ ٣۳‏ 
ایح عحبدرالنقادرا یلا لی شی اش دع نکی بارگاہ شش ٣٣۱۳٢‏ 
امام اہن کر ام رم الد تاٹی علیمیران جنگ مل ٣٣۳ ٣‏ 
کفار کے سا جح قال ٭|٢ُ٣‏ 
مور نکی راے 2 ٣۰۳۴‏ 
سبطابن جوز کی رم اتا لی علی.کی راے ص۴۶ 
انی یی کر یک یں گی ۵< 

آپ رتمت الڈدتھاٹی علیہ کے نظریات 
اولیاءکیصمحبت می رہ ۵ص٣‏ 
اولیا وک رام ٹور شی ز نہ ہیں ےڈ 
و یف ما یکر تے مے؟ ٣‏ 
ارات اولما کی طرف سفرجائتشراردیا ع٣‏ 
دم نی مہب بیعناشرکرو ك٣‏ 
انم شہابال دبع رم اتا علیرے جناڈپٹھایا-- ےس٣‏ 
امام ابکن نر امہ ےم روگ ایک ردام گا ہے 

اغ ال ما الخقیہ آححر ث اہدگرا این تا مال قدی عاق کل 

ااپنفراین تراما مقدی ص۴ 
ای صول _ ۹ے 
عبارت ناوت 2چ 
چنا وچھرمیران جہادٹش ۸۰ 
اسلطانز بارت کے لئ حاضرہوتے جھے ۳۸۰ 
سیر ٰ ۸۰ 
ریب رت رت ۸ 
نر اوروصال ۸ 
شب برا تکوسورکحت نماز با جا عحت اد اکر تے ۳۸۲ 


۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 811001171 


"١‏ حضو رٹ ام ریی او ح دک مواہرانہ نکی اور جودہ انا ی نظام 












بھائی کےتاشرات ۱ : ۱ 
اخ او کی دعاسے جنگ میں رت ْ ۱ ۸۲ 
د لک بات جان لی " ۲۸۳۰ 
اخ لور رت ال دنا ی علیہ کے اسا تمہ ْ ۸۲۳۰ 
اخ ا گرا بن امہ دنت اد تھا ی علی کے شا رر ۸۰ 
ٰ میں روز گی ں چو ڑسکتا ۸۳۵۵ 
لی می نت کرنے وانے ۵ 
ذوقمادت گے 
ہ ربم کوصدقہ دی اکر تے تھے ۸۷۱ 
مات بیس لوگو ںکی بد دکر نے وا لے ۲ہ 
دی دررقیت ے۳۸ 
ایا رکی انال ك۸ 
مازاداکمر تر ےگ بادشا ءکونہ لے ۰““ك٘ٔ 
ریش روک را دیا ۰۹ہ 
اوخ ابحرابن 3را القدی رم اشقال علیکا رر -- ۸۳۰ 
رکب ودب ہہ پاشاددکوام برک ےتھا؟ ۹ہ 
یا کاںےطل/ی: ہے ۰.۰ ۹۰ 
ا ال مام ولف ین عبداش رن ھب نک ربن القان رحمیت ارد تی علیہ 
اخ الا مام ولف من عبد ایند بین می نک رین التبان . ۳ 
حفرتغ لی نی ری وحن ےےل فقہ حاص لکیا ۳4٣‏ 
۱ آپ رم ال تھالی علیر ےم ر دی ایک عدمٹٹرلف ر 3۳ 
ا الا ما ءامحد نٹ لغقیہ رین اوالفرنج ھب ن؟گی لخد اش بی روم اتال علیے 
لق نصر بین ابوالفرن مب نی ابد ای ہشسنبلی ۳٣۲‏ 
ْ بیت اللد جادرت اورولا دت ووفات ۳٣۹۳۲۰‏ 
اخ الام منص رین اپوالن رج رجمی ای تا لی علیہ کے شاگرو ۳۰۳۴۳۰ 
اخ رن الد تھا عل حرش نی نظریں ۳٣۴‏ 
ایخ رین ایوالفرنجخ سے مرو یک عد یٹ 0 با 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 6601102113 7 





ات امام الخقیہ القاضی مد اتی اعد ب مود ال رای رحمنت ا تھا ی علیہ 


اخ الامامالفقیہ عایر ی نگموداھ رای رر اتی علیہ ۳۵ 
اخ ا یلا ٹی ریشی الش ح نکی خدمت شس حاضری ہے ہم 
اش لا ماس براقا درا یلا کی رش الع نکی شی نکوئی ۳٦‏ 
محر نینظر میں ۳ 
نوراللد یئ شہیدزگی اورأ الا مام عا جن مدان رالی ے۳ 
عہدرخضا تو لک ن نکش رانا اورا نکااپناانصاف ۳۸ 
:ات رحص اف تال کے شا اگ رواوروفا تح لے لف ۲۹۸ 
ےر لا انم اد تک پر شر بکع امم نیہ رحمت اڈنا ٹی علیہ 
ا - م کب در الک رن ات" ہک ن لیم رحمد اللدنا ی علیہ ۹و۲ 


ا الا ا ماد عق ی نع بدال یہت بن صد یدال زی اللدقاقی رم ال تھا کی علیہ 


صدرق. بی نعپدال یز جع بت الندہن حد مثاالاز گا ۰۰م 

اخ الما ائجد ٌ ث الفقیہ ہین اہن عبلر ابع اس من ہت ایب حعبالتقادررحمت ایند تھا لی علیہ 
ہت الج نع دربن ام جن پت الج نیعبدالقاد ۰م 

ایخ ال ماممالرش رین مل ابواع اس اح رین امفر نگل الد تی رم ای تھا سی علرہ 
ولادت پاسعادت ٰ ۲م 
ح رم نکی رانے ۰ 

تو الا ماس داد بن ام من ام نپ بر ای بن نھ رالوشھہ بن الف ب رتمتۃ ال گی علیہ 
ولادوت پاسعادت وتصو لع م ۰۴۳م 
اتا ماب بدالقادرا لیا لی رشن ابر نکی خدمت میں ٰ ۳م 
تمزں ویزریں ٣۳م‏ 
ا الوش نان ب رم ادتقا لی علیہ کے ش ارد ۴م 
ھی کال ۳۴٠م‏ 
نات ووصال ۵م" 
مح رخ نکی راۓے ۵م 
٠د‏ الاسلام ٥م‏ 





( جلرول 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 11 7211 71 





لیا فظدامی نک رفرماتے ہیں 
نے محت الد من این النھاررحمتۃ الد تھالی علہفرماتے ہیں 
مزارات ت او اولیاءکی طرف سٹ رم 
أ الا ما سعرینعثان بن مرزد قامھر کی رحرتت ال تا یع 
ونم سعد بن عتالن بین مرز وقی رح اش تھا لی علی 
پارگاونب وی کے نظورلظر 
ت9 و0 
ا الا مام القادی رمنۃ اود تھا لی علیف مات ڑا 
وصالئ ریف 


۱ ۹م 
خ0 ا الخقی ام نل بش وان بن ز یبن اشن تو کی رم ال دتھا یع 


تارف 
خطبیب بفدرادکی رحمتۃ الڈدتتمالی علیہ سکتے ہیں 
ےنم جمال الد من مت اپ تھا لی عیفر ماتے ہس 
آ پ رم الدتتعا بی علیرے مردکی ایک روایمت 


٦م‏ 
۲م 
۲م 


ے۰ 


66۸ 


ہم 


۹م 


ہگ 


اگ 


۱ اخ الا مامالا ذظا عراش بی نعبدالواحد بن سی بن سو زاریش المتقدسی رحمتت ال تھی علیہ 


لیا زعمبراشی ین عبدا لوا حدب نمی ینس ورابیشد ال مقری 
ام یاشئی رت ال تھا غیفراتے یں -- 
عحبادرت ور ما ضت 
ری فک یآ پ رحمتۃ اش تھا لی علیہ ےمحب تکرتا تھا 
وذات شر ری کا منظر 
اخلاقی عالیرادرانفاتی ثی ٹل اللہ 
کان الٹ گیا خاوت ۔ے؟ 
آپ رحمت الین دعلیہکیحمرائوں پر بیبت 
ج رت7 اتا دت 
عمش کے یے روگ راگ کی عد یش رای فکا دی 
الصالابٰ 
ایا ف بد ای رم ال تھا لی علی کے ماج 


۶۰۳ 
۴۳ 


(۸0۳٣ 


۳۴م -ت. 


)ص2 
٦‏ 
)٦‏ 
ےا 


(00۸ 





م۳۰ 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 1100117 





یئن پنیلای ری الع نکی خدمت مل 
ھا فو برای رحمت ا تھا لی علیہ کے شا ارد 
امیرال ئن نْ الرےۓ 

آپ رمنۃ اتی علی وی اعاد یٹ ز بای یاہشل؟ 

سلطانن نو رالمد بن زگ یش جیدیھی حد یٹ سن ے1 تے 

ات الما عبدراف یکا متام می شی نکی میں 

دی مصرویات 
حولات 
اپ رجمۃالل تال علی موی ایگ روایت 


۴۲ 
۳ 
۳ 


م٣۶‎ 


)۳٣۳ 


.سم 


۶/۲۴ 
۸۲۳" 
۴۲۳۴ 


اع الا ما شہابالد ین ابر دی رم اتال مل 


ولاادت پاسعادت وتصو لم 
ائغ رص اٹ تھالی علی کک تتعلق مور نکی را 


را - 
۱ امامفقی ادن اسبھی رن ئل تالی علییغ ماتے نے میں 


مال کےقااعبییآںل 
الا مگپرالقاورا ای ین ا ۹ای 
تن شہاب الد ین ات العیلافی کے شماکر و میں 
ا الا ما معبدالتقادرا یلا کی شی شعن کی صحبت مین 
اغ ا یلا نی ریشی اش عنکی خدمت مں 

فلضک کاب ےل بک ری 

نام نے لاد ے 
حافظ ارک نکیج رم ال تا لی علیفرماتے 
امام الیذئپی مت اش تھا بی علییٹر مات ہیں 


مرانو ںام 


سر درد ی کان تا پاشتا یکاطاب -- 


ّرمداشقال عليیبادباروظبدیا_ 
ان الفارت شکا مجن شہاب الد ری نکااظما رجبت 
ان عز الد بین بی نع بدالسڈا ‏ ھی شگرد 
وصالت لف 


)۲۰۵ 
۴۲۲ 


۸۲م 


ۓ0 


۴۲ 


۸ 


۴۲۸ 
۲۹) 
۹) 
مم 
کک 
ا٣٣‏ 
ا۳٣‏ 
سم م 


۴۳۹۳م 


۳۴م 


۳م۳۴) 
۳۳م 


۷//۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6891001117 








اخ ماما شبابالد ین سبردردیکی ز بکترم ہے مسم 
ایخ ال مام النقاصی ابوا رخ بن ام بن ہھلتیا الو ای رحید ادتقا لی علیہ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 1 11 717 


وللادت پاسعادت وتصو لم ۳۵) 

ایخ الاماحبرالقادرا یلا نی ری ال ع دک شاگردی میں ۷سام 

ایغ الا مامالا رم ای دنتھا کی علیہ کے شاگرو ۷مم 

مح ‏ نکی را ۓ ۷مم 

اما بی داما خرف الد بین المطر یف ماتے ہیں م۴۳ 

حا فظا ای نکش ر رت دنا لی علیذر مات ہیں ں۳٣‏ 

الماندال یک ودتمے ے٣‏ 

وصال ریف م۲۳ 

اخ الا ماما بورغ سے مروبی ایک عد یٹ ۴۸ 

ات الا ما مجر بن اتھز بن تار سے دوس ری ردابیت ۳۰۵) 
ام مب سم نپھلی بی نتر ںہ یش را گرا اتی اع رما تھا می 

الا امم بدا بن تی ین ات نامقل ابوش ال رای کنا 

اتغ الا اس بدالنقا درا لیلاٹی شی او ع نکی شاگر دی بش ۴ 

امام ز بن اللد ین ہام بن قطلو بنا خر ماتے ہیں ۳ 

رم یہ موم یر ا۳١‏ 

سیرسلطا نج ین سبیرز گن العابد بن رحم اڈ دنا لی علیالمحروفتعخر تی سرور 

حنرت نم زین العابد من رحمت ال تالی علیہ ۱ ۳ ۴۲م 

ٰ ولاوت پاسعادت ۸۸۳۳ 

کا ۳م 

روحا لی تر بت اور بف داد ی اسر سم مم 

امام عبدالقا درا یا ٹی نشی ا رشع نکی شاگردی مل مم 

بفرادملی ے والٹپی اورد من اتی نکی خدرصت ۵) 

آپ رم الشدنتھالی علی کی شہادت اورال کے اسباب ٰ ۸۳۵( 

کیم نکد ایک متا یت او دا کا ز1 ۴۸۷۳ 








ووخوا تین جوحضرت لجّخ/ 


ےس سب سس ےش سس ہہ 


ِ تضورخو انلم یی اعت کی ابا دز اور جودہ ماتھا یظام 





اش بھمر تالق شی رت ار تھا لی علیہ 
آپ رمتۃ ای تھا علیہاکی ولادت وتصو لم 

شنۃ رحتمت: ارتا لی علی ا کے اسا مہ 

اش رحرت انتا کی علیہا کے ش ارد 

ا نکا نما دا نچھی ا نکیا ش اگ رد تھا 

وصال ترلیف 

ش اگ ردونحوت پا ک ری الدعتہ. 

لین بخدادی رجمۃ ا تھاکی علی کچ ہیں 


حوال جات 


حفضرت پت عالطا درا لیا ٹی رنشی اش ع شک شادیال ْ 


ححفرت ت الیل لی ریی اللعنرنے پہلا نا حک بکیا؟ 
اکٹ واج کیا نی کین ہیں _ ْ 
رت شہاب الد بن رحرتۃ الد تنا لی لیف ماتے ہیں 
ڈاکڑھ برا زاقی الگیاا نی فرماتے ہیں 
جن ایا ٹی نشی ا شعن ای کک ز وج عیشت الال ہیں 
حرت جن عبدالقا درا للا ی نشی اڈ رع نہک او لا دمہارک 
ںاو یں تئ٠‏ 
فا وو سے ْ 
ْ ارز رعبدالرزا یگیل نی کاثول 
سب مال 
ایک اور ٹ کا وک ۱ 
ام عبدرا رین طالدٹی ید انا ری الرفا کی ہیں 
اواا یا ککاشقر کر ١‏ ٰ 


ا ما مکپبرالقاورا یلا لٹی نشی ا عنہ مہ ہیں 


“۸۳ 
۸ 


۵۰م 


٣ن+٭۔-‎ 


۵ 
۵۱ 
میں 


۵۳ 


۸۸۳ 
۸۳ 
۸۰۳۴ 


۰۵ م۸ۃ 


"(۸۵ 


ے۸ 


ے۸۶( 


ے۸ 
ے۸ 
۸۹( 


(۸۹ 





۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 0 721171 


رت سینا عبداڈری نکہدالقادرا یلا یی الع 


اش عبدالداب بن بدالقا درا انی 
دلادت پاسعارت 
ماس امو 
اوصا فکالطہ 
سب سے بڑ ےت 
خطیب بنداد یت یں 
آپ ےم روک ایک عدخشرلف _ 
ولادت ومبال 
تج عرالو اب نشی الع کا مارشریف 


ححفرت سید نع ال ما اق ۃعپدال رز اق نک بدالقادرا یا لی ریشی تنا 


ولادت باسعارت 
اہ ن ھا رکاقول 
ایی رج بکاول 
ٰ امام قوج یکاتول 
حافظغیاءەقریکاقل 
جناز دمرا رک کامظر 
ان انھارکاول 
۱ ان رج کا ثول ْ 
اب نف رک بردیی رن ال تھا لی علی کت ہیں 
ام ذ نی مت ایشدتھالی علبیفرماتے ہیں ْ 
میا لین ا عبداا درا کی یا مد 
ولااوت پاسعادت ‏ 
ارک زیار تک جا ے 





.۲۳ 


۸۹۳ 
)/۲۳ 
)۸۳ 
)۸۳ 


۸۳ 


0“ 


م۵ .-. 


۵ 


۵ 


) 


ے۹ . 


ے۲۹ 
ے۹ 


ے۹ 


۸م 


..-. 64 


)9۹ 


۸۹ 


٭٭ 


+وشق: 





۷۷۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹  ,4 7 





تضو وٹ )نلم یی ارح نکی مھا دادزندگی اور چجودہ اتا یظام 





عمبداللتزی: بین ا عبرالتقادرا یلا نی نشی ابعنہ ا۵۰ 
حضرت مت الا مام القد و وعسی بین امن عمدالتقا درا یلا لی شی ار ]تر 
صوںم ا 

مرکا سفر ٰ ہریت 

ای ئارکاول ۵۰۲ 

امام ذآکی من ا رتھائی علیٹر مات ہیں ٰ ۵۰۲ 

یت شا وی بنا بدا انی شی و 
ولادتپاسعادت ٰ ٣۳ن‏ 

سی رای : نگہرالْقادرا عرڑے یا کے ۵۰۳ 

شییل بن ا یبکرجی ےر ٹ1 ب کے شا الو ْ ۵۵ -- 

دی موی بن مبد لتق درا یلا بکبا رح ین یل سے ے ۵٥‏ 
منززشن ٰ 7 

ْ وصالشرلف ۵۰۵ 

ححضرت سید شع الا ما رین ات عبدالقادرا انی شی اشنم 
ول ۵٦‏ 

امام ذ ٠ی‏ ہمت اش شا پی علیفر مات ہیں ْ ۵٦‏ 


سم یس مس پیا کی شی اللہ رص 
تمیل پر 7 


7 خطیب بخداد یککتے ہیں ۱ ے۵۰ 

حصنرت سید نا مم بی بن اش عہداقاددا بای بش ار 

سب چو نے شمرارے ۵۰۸ 

امام بی رحمتۃ ارتا ی علیفرماتے ہیں ْ ۵۰۸ 
ہے عجزایں۔ ۱ 





۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 810011171 





ضو نمو مم نشی انل نہک مجاہرانہز نکی اورموجودہ انا یظام 


ا 





امت ال چارسیر فا رحمرت ار گیا 
اوندیگھی الیل تتھالی کے ولی سے 
.ات عبرالرس نکیا حضرت ات ری ا دح کا اد ببکر نا 
والدکی وع ےت 
سید ود پیےالحلقہہ ز ہرورشی ارڈ نا 
سید سعاد؟ بن ت إجّخم عبرالرز اق لا ی ری اعد 


سیدیی ا لوصا نع ری نع بدا رز اق ا لیا ری الٹعن 


علاس راد ہگ یسکچے ہیں 
خلا مہرد یا رک یکاقول 
خلیضہالظا ہر بامرالشد سے حد بی ثکا سار 
ا ام ذ ای رحمت الیل تا لی علیہ کیچ ہیں 
اخ ابوالصا غرم ای تھا لی عل یی دوزا نر 
نب یشا۶ی - 
سیر ابو لصاح تھ را للا کی رٴشی اللعنہ سے مرو ایک عد یٹ 
ٰ سیرکی ار والصا رح تر ہم نکبرالرز اق تی اشعدل آپ ہور 
0 وصال ریف 
عہد :ضا قبو لک نے کے وقت جوشرازیان میس 


عہد و قضا ےمھزولی کے وق تک رانے میں بیاشعار کے - 


ابی ر جب ا می رح ار دنا بی علیہ کے جا خر ات 
خلیضرنے اق تی رکردی 
عد بی ثکادرس دم اکر تے خے 
تی الئتمنا ۃ نے کے بحدیھی اخلاق مس تید پیک سآلی 
حخرت کے لگ رآخرت کے جوا نے سے اشعار 
تقاصی الیتھنا ‏ رحم.: ارڈ دنا لی علیکی خمرت اما ٰی 


۲۳ھ 


۵۳ 


ه٣‎ 


لالہ 
كٌ۵۳ 
۵ھ 
۸۲۰۵8۵۱[ 
ےا۵ 
ےا۵ 
ےا۵ 
۵۸ 
۵۸ 
۹ھ 
۹ھ 
۹ھ 
۰- 


برلۂ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 011 77 


سای کے پا اپنامعاملہ لین نہ سگئے 
ہنم سیف ال ی نکی رحمن ال تنا لی علیہ 
وصال ریف ٰ 
خھادالدی کے ہیں 
ات سیف الد ی نکافیصلہ 
ان عبدرال میم بن ہدال رز اق ا للا نی شی ارٹعنہ 
آپمنداحد ثھیں 
ا عم بر اشن ب نع ادا لیا نی رش الشرعنہ 
وث پا شی ال رعنہ کے و تے 


سی رحقیف الد بنا الال رمد اتال علے - 


ش ا ردونھوٹ پا اک ری اڈ عٹراور :ہو 
قال اتطیب البفعد اددگی رتمتۃ ال تھا ی علیہ 


سیدینخل ای نعبدالر زاق ا یلان ری اشعد - 


آپ ےم وک ایل مد ِثٹ 
دوسریروامت 
کت عبدالقادری نعپدانڈدا جیا ٰ رک اللعنہ 
ٰ حوث ما اک ری الع کے لے ۱ 
غخحت ماک مض اشعدی پل 
مث پاک ری الع بی 
وٹ اک دی اعد پل 
ٗث اک یی اش عنہ کے ہچوں کے ماموں 
آپ سے مرو ی ایک عد مث 
ولادت ووصال 
ہہ تے حفرت ا یلا فی ری ا شعن 
آپ ےمرودک ایک روامت 


میں 





۲۲۳۲مٰ 
۳مھ 
۳٣ھ‏ 


۵ٰ۳ 


۵۳٣ب‎ 


۵۵ 


۵ -ْ 
۳۰۵ھ 


ا0۳۴ -. 


۵۲۷ 
۵۲ 
۵۲ 
۵۲ 
۹مھ 
۹ٰ 
۵۲۳۰ 


۵۳۰ 


۲۰ھ" 


ا۵۳ 
ا۵۳ 
۵۳۱ 
۵۳ 
۳ن۵ 


۴۳مك۳مٰ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





فوث پاک ضاشعدے ہے - ض٠‏ 
خر تفحوٹ پاک رش الڈ دع ہک ام وللد ٰ ہت 

۲ ا الا ا مم بدالقادرا یلا ٹی شی اٹ رنہ کے ا مورخفاء 
.آحفت اام اف من مر نشھائایگر الا ق وک ادا اہر رما تھی علیہ 


آخری خلی زج سکوخلافت کا تا پنا گیا ۵۹ 
آپ رم2 ال تی علیہ کے شا اک ردان رر . ۵۳۹ ٰ 
ٰ اخ این تفر مات ہیں ٰ ۵۹۰ 
:حخری یداش الا ما الہ الیدجی رم اللہ تما یعل 
اش الا ما مھ الفقیہ الیدنیئی رم اتی عل کا ساسلنب م۵ 
ولادت باسحادت وتصو لیم ارت خلا ن|)اضصول -- م۵ 
حا وف تکیمقیرتٹ ا۵۳ 
ای نکی کات رد اتال لیلق بترارریا----- ۵ - 
٠‏ ایخ اوک یائسی بین بوسف الصرصریی ش درم انشعلیہ 
ررے" نیم اورخلافت ۱ ْ ۵۲ 
رسول انگ کی نعت سےیحشن ۳ 
رسول ےکی زیارت ےش رفا لی ۳ 
کفار ماگ چاداوٹبات -۔ مھ 
ٰ حفرتسیدن شن سع دک الشر ازیرقداشقاژطے -_ 0 ۳۴ھ 
الامام اود یگرا رعرد نمی ْ ۵ھ 
سید ادا اس اوھ تو (۶عم) 
عباد تکاانداز ٰ ۵مھ 
گرئی سرد یکاکوئی ساس نہہوتا تھا ۵٦۷‏ 
ٰ سنوی کے امام اس ہوتے جھے ۷۱م 





۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 01011 7 


ری 








رق الال ی(خ۳ ۱مھ )کوبفدار کی حاضری طعیسب ہوئی فذو ہیں اراد وکیا ضضرت سد نا جن ععبدالقا درا یلا بی رش ارڈرعن 
کی میاہرانہ زندگی کے جوا نے سے پپھوککھا جا ہے فو نخرت مولا نار اض امھ بیضاوئی صاحب نے ےھ مشورہ دیا اور یاوگار اسا فک تعخرمت 
اجلا م موب مفق یی مال ہن قشنری دامت ب رکفم الحالیہ ن ےبھ یمحمف مایا ورای خمائص دعا ول سےنو ا اء اتا یکا نا لیک راس علی مک مرکو 
شردر عکردیاءاب جوسب گ٢‏ اکا مرقواد کن بکی فرا وھ تھی ان س ےکتب نان تالی تہ بازاروں کےکئی چک لگا ےکر ہیں بھ یکوئی 
کراب میصرنہآئی سوائۓ ای کاب کے جوحفریی مق امحصرمفقی مھ نان تقادرکی حفظہ الد لی نے عطافر می ؛پچھرائلرتالی نےکرم 
فر ایا جادی الا و لکوحضرت سید نات عبدالتقادرا یلا لی شی شعن ہکی زیارت ہہوئی دہ اس طط سک ہبیش نے خیدکوححضرت تن ا لجیلا کی 
یشی اللہع نک خمانظاہ یس پا قد ان نر مو ج2 را مک وحن شک یک ہیس زا ہور سے حر سی یا خوٹ إانظمم رش ادشرحہکی زیارت کے لئے 
حعاضرہواہول :نان ول نے کرت لک یاکہلا ہود رس فلال نام کا یکن جنا بکازیارت کے لے حا ہوا ہے؛ اپ ری ابلرعنہ 
نے فرمایا: اس کو کہدو را تٹکودو بے لغ ئے حب میں اکیلا ہو لگاء جب دو بے فو ٹیس حا ضرغدمت ہواادرآپ دی الشدعنہ کے سا نے 
دوزاٹو یٹ گیا آپ ریشی الف دعن کی داڑھی مارک اما کی یر ہے اورٹور پرسااری ے ‏ یس نے عق کی تضور ! می ںآ پ ری ارڈ دع کی 
حیات مبارکہ کنا ب کت کا ارادو رتا ہو ںتگ کت بجی کل لین ایی لٹ ےآپ دی ارشادف بای سک ہآپ نے عداارل کے ہنا اورمیاہر 
کیسے جیا رۓ ؟ ن2 آپ ری الشدعنہ نے می راسوال نے ہی بیاا نکر ناش رد فرمادیاء شیل جب کو بیرارہوان میس ن ےکہااب ان دتعا ی 
ضرور یددفر ما گا رو 

یس برا تھال یکی مرداویتضورحوٹ پاک رش الد عنہ کےنذسل سے بب تک کت ب ماس رآ ہیں اورای فکتاب طول والفد اء 
عنرالصوذی' نے ببہ تکام دیاء ارتا ی خغ اسحا خی بکود نیا آخر تک ببھلا ئا طاف رما ہ ارادہدکیا ا تو رنفحوٹ أئنع مکی مچاہرانہ 
زندکی اورموجودہ نمانظاچی نظام سے پیلے پھفت عوفیا مکرام کے چچہا دب یکا رن موں کے تل بھی لکیہ جا نی ء جب دہ ھن لگا نس 
کین کسۓ اتا کا مہ وااکسوجا ا کو حر کردادیا جا ےت دوجلد یں تیارہوئیں اور نکوانڈتھا لی ک ےےل وکرم سے چپ دی ایاپ 

اب 'تضورفحوت !لح مکی مھا ہراضہزن گی اورموجودہ اق تی نظطاع “جب آکھنانش ور عکیاف ال سکیافوجلد بی یا ہیں :اب ابی سے 
اگ ام جو تضورشحوثپعمفم اورھا ھی ناب ہے دہ باروجلروں پشفل ہے۔ 

تو ریقوت !نشم نشی اوڈعنکیکرعف رہ یاں - 

(١ا‏ جمادی الا ۹٣٣۱ھ‏ )کوتضورسید ان الا ما عبرالقادرا لیا ٹی نشی ا دعنہ کےعریس مقدرس میس شرکلت کے تا لے روانہ 
ہوونے نے علا کرام سے سلسل رابط تھا اورحاضریککاپورااراد وبھی تھا ہمگرادڈ تال یکو چپ اوربی منفورتھاء حاضریی نہ ہ وی ؛ جن رات 
"ا لے ردان ہد ئے ای را تکو ب گی پر بیانیٰ کے الم یس میسو چچار کہ ہوسکنا ےکک وئ یی ہوقی ہوجم سکیا وجہ سے اس بارحاض کی نہ 
گی ء جب ای پ بای یش سوگیاءن کیا اہو ںکحضرت سید ان الا ما معبدالقادرا یلاٹی رش ابشدعنہ ای ککری پر جلدہ فرماہیں 


اورہایت بی خوش ہیں ء او را رود ھکس رفر مار ہے ء اچ کآ پک رکا کھڑے ہد ئے اور جھآپ کے عقب ٹس الما ریئگصی اس 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷ ۵۹6۶89 02711 71 





تضورنکوٹ| کم نی رع ہک مواہرانزندی اور مو جردم مَاتا اینظام 


.بت تم ٹا ےت 
الحمدللہ علی ڈالک 
یہاں پاپ پزر و چلشک راو اکن ضروری چا اہوں جن میں حفرت الطام موا امطتی یلیم ال قد قشہری دامت رامعم 
ا لمکم بحضرت علا مہ مولا نا پیرسیرخورشیدا مشاہ صاحب بفا رگا مجر: جراعت ائل سذییع او رھراں ‏ مصن فکت بک رو تحضر ت علامہ 


سفق خر فاض اجرسعیدری صاحب لا ور لق ال سن تحت علا روا سای امک تی مجح اہب ردکی صاحب ل ددم لء. 


رت علا مہ ولا ا مفتیجھ ومن ش اکن صاحب مفلہنضرت ت برو فیس رضیاءال بن لا ہورگ طفظہ اللہ ہمد ردائل سنت وشن رعول جناب 
تر عار ف ادری رشوکاصا حبجنکہوں نے دعا تی کی اور جمارے دوست جن بجع برق ادری صا ہب بھی اس میں ہمت ہاتھ بٹایا 


أ تھا کی ا رگا و یس انتا ےکم ولا تی اپنا ضس وس یرف ما ۔ 


حخفرت ول رر مو لابا تی ارام قاوزنی صاحب طظہاڈ نے ان لکام کےکرنے میں یبت مرح وصلہ ھا دای ط رح ٰ 


نحضرت یرس رصاب جن شادصا حب بفارگی حفظہ اڈ تھا لی اورتطر تچ مل میاں نما صاحب اوریم اہر نا موی رسالت جنا به لن 


خالرصا حب اد تھا لی س بکوا تی طرف سے مت ران بت ا عطافم ہے ۔ 
ٰ کے ان خلا مال نشم جیلاں رک الشدعنہ 
فقی رز عوا 7 رتا دری رضوی 


۰ ۱۷۷۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 1011 71 





27 


نے حا بر جن شاوصا جب ہٹاریفاردری 


خلیذیجاز رب ثریف 
بسٰم الله الرحمن الرحیم ء نحمدہ ونصلی علی رسولە الکریم 
به بسےم الله کنم آغاز مدح شاہ جیلانی که برقدس درست آید قبائے اعظم الشانی 
اسلام دن فطرت اورضاہطاحیات ہے ء ان کا آغزازحضرت سیدرپ آدم علیہ السلام سے اوراغخام جمارے بی حضرت ایی مض 
می پرہدا۔آ کاپ ارتا لی کےآ خرکی نی ہیں ء تھا لی ن ےآ پک راپ یآ خر یکتاب تق رآ نکر یم نا زل فر کراپ نقت نمامفمادی 
دنو تک باب پیش کے لئ غاد را کرد ال جس مو جودات خاتم نیا رامأتی ممصضقی مل کے بدا کرام یڈنم 
ن بیغ اسلا مکاخر یٹ ران انداز یش سرانمجا م دیائ ان کے بحدتا بین اور جا نین ن بن اسلام کے فرب کوادا کمرنے می سکوکیکسراٹھانہ 
ھی ۔ان کے بعد ریف بض لا امت اوراولیاۓ اٹ کے جوا نے ہواجو اد رقیامصت کک جا ری وسارکی ر ےگا 

ص٥لیائۓ‏ امت میس اوت تمام اولیا ۓکرا مآ سمالن مععرفت کے رشن ستاررے ہیں او مکو پیار نے ہی می ن فو صعرالی محہوب مال 
گی لد سن سییراایشگیبدالقا درئسنی نیا یلالی شی الڈدعنہآ سال اردعانیت برا بن بی نکر گے :1 بعست میں چہاردانک 
الم می یں 

سورع اگگوں کے میکتے تھے چم کک ڈوبے ات فور ۔ ے پر ىش تا 

قب رشدوہرایت قطب الا قطاب خظرت سید :گی الد مع ابشرعبرالقا سی انی الچیلا لی ری الد لہ سنہ ( ٤ح“‏ )یل ' 
ران کک تہ یلان ٹس پا ہدے اپ زڑیاڈرنہکے واگرائی سد ناصازح موی جگی پت لک اوروالد واج جحخرت 
ات الجبارفا ہرم اتا لی عاہاہیں ءکڑن سے ای سامیہ پردیی مرے اٹ یگیاء ات لی مککدر یر حاص لک ء ابنلراء کی نی ےآ پ رش شعن ہکی 
انی سے رشددہرایت کےآ خارفمایاں تے:ق رآ نکریم حف اکیا۔ سن ( ۳۸۸ھ )یس انٹھاروسا لکی عم مارک میس بفدا می مکاصقر( چا رسونیل 
لیوشسر سس سپ سی پ شی اٹ دعنہ کے پا تھ می لتھائی ادریہ بات مچھائ یک 
یش سای کاراستاپنانا۔ 

پ ریت ار عنہسفرییس بی ےک ڈاکوئوں نے تا لے پرتم کردا اورسارے ا نے دلو ںکولوٹ لیا ءآپ ریھی ا نہ نے ا نکوصاف 
صاف چا لد ینار کے بارے ٹیل بتادیاءآپ دشمی الشعنہ کے راس تگوئی یکر ڈ اتا تب ہو یئآ پکی میا ئی ضرب انل ب نکی خراد 
صلی میں جا موراسا کرام سےعلوم دب کی کیل فر بای الع اساظم وکرام می اوالونا لی بقل دی ا بن لی امتمر بی کیء 
اوائْطا فیا الکو ابی ما یئن خ بن تةاضی ابوای ھب تن ب وشن ہقاضی اپوسعی السا رک لا و ینعی رحر: اتا ینا جم 


ٴ 


۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 1 7171 





ضورفوٹ )نلم شی الع ہکی مھاپرانہز نگ اورمو جودو خانھا ھی نظام 


کے اسا گر ائی مایا ہیں۔ 

آپ زی الڈرھنرنے یہاں ةاضیالوسعیدا ارک نکی تی رم اتال علی کے دس تن برست پر ہی تک اورخلا تال 
گیا پ رشی الدعنہنے اپنے چ یقت کے مدرسکواپنامرکلز نا درس وڈ ری کی مند کن ہو ء چا لیس سا ل مب ربرتق ان ومعارف 
کادیس دینے رہے؟آپ رشی ابشدعن کے وعظ ام پرتا شی ر ےک دوردراز سے لو کآنے گے ء اورآپ کے اس ربنتے وو 
نا گیا کآپ دیشی اوٹعنکیآواز میں ات کش اورروھا خی تج یک یدام کے علادوعلا وکرام اوریلواء وفقرا وج یآپ کےگر وید ہ ہد گئے آپ 
علق یس واشل ہو رکش فلکرابات مآ پکاکوگ با نیس تا آپ نے ادا ںکیس +التالی ‏ ےکثرت کے سا7 2 
عطافمائی ہآ پک سماری اولادعا لم پائل اورآپ کےیشش قدم پرکار بندری :نرک کےعلادہآپ نت مار مس 
یس اہ اکر انی جلا والنو اط یفخ الغی ب نی را لجیلانی ٹراش رات متصید ونود شیرادرفدیۃ الطالین ( سوب ) کے ا مروف ہیں - 

آ پ رش اب دعنرنے بفداؤ ٦ی‏ یں سنہ (۳۸۸ھ ) تاسنہ(۵۷۱ھ )ا ھا دی نکیا اک یا یک چلاکٹی بس کے دوررس اشر ات مرتب 
ہدئۓ :آپ کےسلمہ عالیرکاقادر یہ کے نام سےشہرت عا ماورمتقبو لیت انام عاص٥ل‏ ہےءآپ کے اخلاف میدرالنٹمل یس لے بحنل ما تک ٹیل 
سے ادرک مانظا ہیں قائم ہیں ء یو ںآ پکی مھنوکی ردان ولا د کے ساتحساتھآ پکی بی اولا یھی عا لم اسلام یس بھی :کپ ریشی اڈ رعنہ 
کےہیفی اشرات لو کی دنیایر پڑے ء دیرسلائکل اۓطریقتسپردردی:نفشمندب اور چشتہ کے مار کرام نے بھ یآ پک یک کے اشر ات 
قبول کے اور ں1 کے پپچااء ہ رای کو پک مظستدشمان کے پارے میس رطب اللسان پایا ءاک برمشا رع عظام ن ےآ پک فضیلت وجلالت 


ساےن بنا تیم میا دنیائیس شا یل ا یکوگی ای نمانقاہ ہو چچہال سلسلہ عالیہقادر میک فیضان نہ پیا ہدہ کی وجہ ‏ ےک آ رح دنا کو بھی خطہ 


وٹ )ئشم ریشی ار عنہ کے نام لیوا ول کے وجود سے نما یں ہے ۔ 

رت ایا شس الا صفیاسید نی راودا دا پیٹ ینتا الا می۱ ری رن خی تی ںکرفلف زا 
یش آپ کے احوال وآ مار پریکٹ تےکنا ی راکھی جاپگی ہیں ,ہویم لا ءذاری اوراردو ش۲ لآپ کے فان ومنا قب اورکراما تکوس٥ف‏ تق اس 
تخت کیا یا :آپ کے وائے سےا یف تنابوں مج سپ کےتق کی جات ہداس تہگوگی ؛شب بیدارکی ھاوا ضا ؛کاف 
وکمراما تکوفما یا طور پر جن لکیاگیا ہے۱ یتقیقت انب ین شس ےکفحوث پاک ریش ارشرعزیض ای یم ردحالی پیٹ و انیم ال رتبت عا لم بن 
نیس بلک نی ملغ اسلامعدیم ا شال ہس دن ا وی ماپ رسلا ھی تھے ۔آپ رعھی الڈرعناپنوں کے لئ شی شک راو الام کے وشن 
اورمزافقین کے لئ تی ول ت, جابرکھرافوں کے ساٹ بن سلنے ٹیس اپنا ما نی رکھتے تھے۔د بد بفوحیت کے سان ےس کی نیس لق ھی 
ای رآ پ ری٘ھی ارٹ رع نہکی الا دا ممادہخلطا مکراماو رق دریی صوفیا ءکرام ن ےھ پرددر یش مچاہپراشرکرداراداکیا ہے - 

ایض رو نت یکحضرت سید با وٹ امضمم ری یشرع ہکی تا ناک حیات کے بھاہاضہ لد برا یک جم کتاب مرج بک جائی ونس میں 
آ پکی تصذیفات ولفوطات اورکتز بات کے تنا ظ ری ںآ ہرادا اکہاسلام اورصوفیا کرام کے مھاپرادکردار پر انی 
۱ اٹھانے والو ںلویھی مسلت جواب دپاچاتا۔ 
ئمرڈگل زا لک نو جوائن جا لم کل مولا نا مفتی یاءام را دریی روک ز یا مہ نے ا سک یکو ہا یت بی شمرت سو ںکیاء اوراپے 


۱/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6:107173 7 





را ہوارش مکواس جاخب چلایا کپ نے سب سے پپیی 'حصوفیا را مکی ما ہرانہ زندگی اورموجودہ خمانظا ہی زظا کے نام ےکنا ش رد عیاء جس 
کت گے گے ءآ پ کاب کام دتیم جلروں یل ساس ۓغآباء جوسولہسعصفیات مشقل ےب نے ائل نصوف کے لقسور چہا وہہ یت بی 
خواصورت انداز میں صصق راس شف کیا ء مو جرد خمانقا بی نظا سو فیا مرا مکی مھا رانہزندگی کے تاظ می سآ یھی دکھایاے _ 

زان تچاز میس منا نی نکی خو بر یگئی ےہ یز سمش رین کے اعتراضات کے مسکت جوابات د بے گے ہیں ہآپ نے دا لک رشن 
ا بت نرما یہن مو رسالت بلک کا تحفظ جا نو رچھ یکر تے ہیں مکاشش دہ انسمائن ان جافدروں سے دی عہرت حاص لکمرتے جن مویں 
رسالت پگ کے ہوا نے ےا بھی زرل موس کنا و کے پارے می اپیے دل میں نر مکوشرکھتے ہیں۔ 





فوٹ انم شی ارڈرعنہ کے دو شطہات جن ٹیس امراء دسلایلن سے خطا بکیا گیا ہے ءا نکی بدا ما لٰیوں ء بدکارایوں اولم ز اد لہ 


تق فر میا ,آپ کے خطباٹ انل انی وشن الرمای کے نام سے موسوم ہیں موم نامفقی ضیاءاحقادرئی رضوکیانے ا لکانہایت اشہاک کے 
ساتھمطاہکیااورال امو جوذاعاد یٹ شر یْہکوت مہ وی اور کر کے 'مھکو ۃا لپ یلالی'' کے نام سے سا لے ئے ہیں را کاب 
کے میں٦‏ پ شی انعنہ کے صا جزاد ےضحظرت سرع بدالر زا الیل نٰ ری اشعن لاب ال ربعون |لگیاا۔' مھ یخ زجع تین سے 
ساتھ ٹیلف مادی ہے۔اس سے محضرت سی نافث ا اش نشی اشن قد تا ہرد ہرے۔ 
آمدم برسرمطلب 

مو بامفتی ضیاء اجرقادری ری نے'' حضورخوث ائشھم شی ابد عنہکی خمابرانہ زندگی اورمجودہ خانھاچی نظام''کےعنوان سے 
لکن شروخع کیااورا ےھت بی لے گے اور پکی وسعمت مطالعہ او رتضمورنموٹ انلم ری ارعن ےن حقیز تکامی عا لم ےکمموادا تاج 
ہوک اراس سکوسیٹنا مکل ہ وکیا ء ہت کی جلروں ٹیل با مکا مت جیب دیا جاک کنا ب کان تر تیب ؛ انتقاب ونواات فاضل مصن کی لی 
وادلی او نف" یککاوشو ںکا مظہر ے ءاخصا ب تو رحوٹ | فاگش ری اللدعنہ کے والمد بی یک رستین کے نام ہے ؛جشنلن کے سن تہ ہیت سےا می ںحوٹ 

اکن اخ سیغہرالاورا یلائ رگ الع شی ناب رو زگار؟ ست ای اد دد۔ 
ٰ عمرف مق میں اضل مصنف ن تاب ھک فرش دفا تل فرئ ے اود نافائی ظا ملا کلک 
ہے بت پائل ادرشیطان عمفت پپبرو لک خو بش رلی سے ؟آپ نے ہولنزاک ا شمافا تچ فرمائے ہیں بن ماق ہوں ب کن خماند نکی 
وبرانیو ںکانقش ہداس انداز ےکھینیاکہ انان کے روگ کھڑرے ہوجاتے میں جچہاں ارے بزرگوں نے بی ےکرلکر واعلقادکی الا کے 
ل ےک بی ںکھییں اب و ال نت باند ھے جار ہے ہیں۔ 
اپ کاضعلم نہ ٹج کو اگمراز پرہو رپ رقائل ممراث . پد دکیوگرہو 

زال مصنف ن ملف اہواب اورحنوانا تا مر کے تقارکی کے لے ےسا کہم اورپ بنادیاتے۔-- 

جال نررس مات ء بدحعات بگکراتء نمانقا چی نظام ماق امن فلوم ء بر رسہء ول کون ء امام احدرضا مان رحمتۃ الڈدتھا ی علی کا مزارات 
پہہونے وا خرافات کےخلاف چہادرسول اك ےحضو رو لم شی ارح ہکاوہ یش بحضو نوعلم ری ا عنہ یزیت نحت کو 
حضورخوٹ !مم شی ادڈرحن بحیشیت مقلدمہڈگارہ کی ت جا آپ کےکح بات از دداگی زندگی ‏ سوا حیاتہ بدرسہ؛طہ لیس اورطلیہہگمیار ہو مسی 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





ٰ۱ تضورنفو )تع ری انہک ماپ انز نی اورموجودہ ما لھا نظام 


ش نیف عقاو شی تھد مھ شیہءاوراد تی الا ما کر القادا یلال ر٘شی اد عنہء جا معہقادری اور کی شانیل :اعت راضات اوران کے جوابات 
ر بک اصلاع تید بی اب نوانا تکواھا طی لا ئۓ ہیں اوران پرسی رحاصل پچ ٹکگی۔ ایہم زدزو۔ 

آپ نے نہایت متاضت اورجیدگی سے م ضوع کاج ادافم مایا ء اندازلکر اوراسلوب ڈگا بھی خوب تر ہے ؛ لپ دک کاب محققانہ 
عالمانداورصوفپانرنگ لے ہو ہے ماخ وھراش یلو یل فہرست ےہ تقیقت سا ےآ جائی ےک فاضل مصنف نے ہا یت گر قد بی 
ےکا رک یاے اور جنیادی ماخ رانا رکیاہ ءا س ےکنا بک تھا ہت ام ہو اتی ہے؛ بے فی کآپ نے ب کاب دلاگل د براٹ نکی ردکنی یش 


درا لن کے اچانے بھی نے ءائمدوشہ ہار ای ٹ بات ای تا ناک تھء ہار ےعلا وکرام اورمشا رک عظام اور الف تضورسرد باج ال ءا 


عمبدالقا درا للا نی شی الع نہکیا مارک ز مدکی دگات دظز یت سے عہارت ہے بیصن می بھی ہما رے اکا ب مین نے میا را رذ پراپٹی زنرگیاں 
گمز اری ہیں :ے۱۸۵ ءکی جن کآززرادئی یش بھی ہمارے اک بر بین نے نصرف فیادیی جہاد ارکی ٤‏ بلمہمیدران جہادمش صف اول می بھی شال 
تھے ْ 

یہا کی مٹلف جی ء نرک یتریکوں میس تقادانہ انداز مس اہ مکردار اداکیاہے ءنمانظاہوں سے حا کم ومن بہفتی ہق ,مصیف ہفسر 
اورمیاہ بین می نکر لے ؛شھدیھ یہ میک کے خلاف ہہارے اکیابجھ بین لا لمران ۓ اور اکھوں مسلرانو ںکوم رر ہوئے سے بھایاہکر یک قام 
اکستان میں ہارے اکا برک لکر ساس ے؟ٔے اورگا نیش یکی؟ زدڑھیکبھی اا کا پک نہ لگا کی اورحمللت خداد اکتان عرش زی کی رک 
نا میں رسالت کا جنٹرابھی پبیشہ جمارے اکا بین نے بلندرکھاء مرزا اد یا لی گی قاد بای ہ یک کا ممقامل بھی عادے اکابر ٹن نے ڈٹ 
کرکیاء پاککتان میس ( ۱۹۵۳ءادے ۱۹ء )ک یف ری کٹخ نبوت میس جوارہےعلماء وصوفیا کاردا ہا یت ایا رشن اورخمایاں اد اہک کیک یارسول القد 
٠ا‏ ( میگ ) یس ہمارے علا مس مود ام رسوکی رحمت اللد تنالی علیہ ساس ےآ اودما ہو دی بادشابی مسر می یارسول اللہ ( مگ ) کانفیس 
کااذعقاؤکل یس لا ے۔ نما زی نامموس رسالت جناب ملک مت لن ققادرکی شہیر رح اتی علی کا جب مزا مدت دک یذ ہوا ررے علا مہ 
خادم ین رح وی نے لیک ارسول اللہ( من ) کانترہ بلنادفر مایا اورمیراا ن٠ل‏ ٹس ان ے اور بزن5گو ںکی ماتاہروں نیٹ ہول ۓگمدی 
نو ںکوچھی زکوت دىی: ۱ 
ْ ش لک مان ہوں سے اداکر رھ یی 

الامان دا حیٹا: آيٗ بھمنہامیت نازک دور ےگ رر ہے ہیں ء جماریی مسا مہم یا فی علا مکرام سے خالی ہل جاری ٹیل :مار ےئ 
بدا ںکی روپیں ماخند پڑادی ہیں ء ہہاریکئی انقا ہیں وبران ہون ےکی ہیں ؛بتض خمانقا ہوں پ ہکتب نانے بند پڑے یں ء جہاں ناد ونایاب 
کنا ہیں ضائع ہورہی ہیں ۔(ن واللقسلم ومسایسطرون) پل پیراہونے وانےاشھتے جار ہے ہیں ذ وق مطالعاو رکا ب شناسی مفقو رہل 
جارتیٰ ے ہمارکی اکٹ اٹل پیش ورمولوایوں اور یکل نحت خوافوں کے زم راٹر جاچگی ہیں ء جچہاں لاکھوں رو بے لٹا جاتے ہیں :کل کے 
بیع یر جب این ہز رگوں کے اع را سکمرواتے ہیں فو فآ وراشتجمارات ٹیل ابی اورا تی ادلا دکی تما دمیا شائ کر اکرخو ب شویرکرواتے ہیں: 
کیاہھاارے بن رگوں نے بی پچھاکی ںسکھا یا تھا ءکیا ا نمو فکانام دی جاسکتا ےآ ! ۱ 
ہارےا کاب بن دہ تھے جنہوں نے ابی ندال مھابرا ضرا نداز شی ںگمز ار یھی اکم اسلام میں ایک انقلااب بر پاکیاتھا۔ 


. ۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 0 11 7 








انہوںنے مریلف پغام را ی سنایاتھا اہوں نے کفر کامفرور سرقن بر جھکایاتھا 
نہیں نے ممرہوں کو رہبرلت بناہاتھا ننہوں نے داع ن کو ہسمار پچھولوں سے سا سجا اتا 
یں کے دم تدم سے رتتق لک بدکیاں ایس چن مس پرطرف رگییاں رعنایاں ٦‏ 4 


ایک خم موکراپنے اسلا فک نرادو ری منزل ٣‏ 7۲ سے دو ہو تے مار ہے ہہواورائئیل بد نا مکررے ہو 
گر تم مت اسلام کو بدنام کرت ہوں رو حکفرکا باعث سے ود ہکا مکرتے ہو 
دا کے دین کی خیب تج شا مکرتے ہوں سراصرا تام وشن . اسلام کرتے ہو 
۵ك انا جس مکی سے نم میس شمان ایمان سے زان تصرف کین کے لے تو مم سل مان سے 
1 بھی پریمنیرٹس خانقا ہو نکی اریت ٹین تجادر بی ت کا د مک رنی سے ء او راکش رعلام ومشارغ را تضورحوٹ اطم ری ااڈرعنہ 
کی نام لیدابیں خداراآ گے پاعییس :1پ رش ااشدحندک مجاہرانہزندگی کے سینے می موجودہ نمانقائی نظ مکی بھال یک یکوشت کر یں ممسحبد بی 
آبا دک مس اورفحراب ویض ور و ننس اور زی نکی رد ہحا لکر میں اور انا ہوں پرموجو رکب نمافو ںکی حفا تفر ما میں ہ نادردنایاب 
کتابو ںکی حفاظتکر میں ۰ ادرائیں ازس رو شا کر کے فا مکر میں نم وق طال سے محب تکر میں عدارش سے بدحات وشگ را تکودو رک بی 
انی مھا لکوش بت سے دائے میس لاتیںء موس رسمال تک کل کےتحفط کے للے پرآن تیارر ہیں ء جبکگروا ناد ٹس انقلااب 
آم ےذادمام ھی کی نظ ر۴ ی اور ظرن کاازالہ ہو سک ے ولا امفھتی ضیا ا جتقادریی رویز ید مرہ نے خمایت و انداز ٹین الم 
اٹمایاءاورموضور ع کا ادافر ماد یا ءکما فک سطرسطر سے ہا ں تضورحوٹ نم ری ااڈدعنہ سے گہرکی اورے یں عمقیرتنظرآلی ہے 
وبا لن اسلاماوراصلاع معاش ہکا یذ بھی نمایاں طودبپجسؤ کیا جاسکتا ہے ۔ کاب عح رشن کے علاد*علما کرام اورمشا رح عظام کے 
سأ بھی ای کتھفہ بے بہا ے٠‏ دہ ہرسا لیگمیارہو میں ش ری فکاا تما فر مات رت ہیں دہ اس پا رتضو وت امشعم ری ارڈ نہ کے جوا لے 
ےن ہونے دالی ‏ ےکتاب خوولیس اوراپنے علق احباب میں ہیں او رب تنم انا ہوں اور دنر لا ری بوں می بھی ىراج مکتاب 
رورپ اتی ہکرت م می ر ےنوت پشنٹمم ری ارشرعنہ کےکردار سے واقف ہو کے ءامییرواٹن ہہ ےکہائ کاب ےکوشجرمت عام اور بقا ہے 
ام حاصل ہوگی اع شاء ارز ول _ او تھالی نے عحبوب انی مرمصطلنی پل ینیل تضورخوٹ الیم ری اود حنہ کے شید ائی 
مو نامفتقی ضیاءاحمقادری رو یکی ال کاو شکو اتی باگا ہس شر فقب۱ لیت عطافرما ےآ ین ۔مصنف۰ اس کے معا نین اورما مین کے 
لم می بھی یں عطاف ا اوس داد رت کا مال دک مر ڈیہزرے۔ - 
نے مم روید سن 
مرا کو ۓ ع بیننش ریف 
سیدصابر ین باری نقادری نقرلہ 
خلیزبجاز بر ٹیشریف 
ثت ب الہ شریفکش لن کک ججاب پاکستان 
(ااصف المظفہ ۴٣‏ ا ط۳۸ اکس بر ۲۰۱۸ء) بروز ہفتہ اوقت عشاء) 





۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 8110171 





نار رط 


علما بکرم ومشا رح عظام 


ووالٹورا لن امت 


۱//۱۷۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹69111271 77 





7. 


عظرے العڑا ما بابرا لا سا صا حبص د گنی مدکی حفظہ ان تنا ی 
موا ناضیاءاحرادری رضو یک یکتاب تضورو ٹے| امک میاہ راہ نکی ادر مو جودہ خافقای ظا دوک وی او پڑ کرد با با 
ہواءا کا مکی بہت اشدش گر تی :اوراسے بہت کل ہونا ما جے تھا اراس الما بد القادا یلا لی رشی ائلدحنکی حیات مہارک 
سے واتف ہوک رآ پک یمگمیارجو میں ش ری ف کین اکل وشر بک نام ضددیاجا تاء ا سکنا بکو پٹ نے سےاگ ری ءاعنقادی او ری اصلاح 


ہوئی۔ 
ال دنتھا لی ا سکاب کے مو کو جنز ائۓ تیرعخطا خر ما ئۓے ۔ 
پدرالا لام صد گی مچردیی 
مانقاہعالیسلطا یم 


ححضرت مر مہ نا تی نھ متا راع رورا لٌٰ برطلالعا ل 


ال بیث جا مضیگر یضرا العلوم ریم یارخان 

رگ٢‏ تماد ای سن ( “۱٣٣۳۹‏ ) بروزجعرات ید یدمنورہ یں عم زیم فا ض یلیل ما لویل حر مول با مفقی ضیا ءا حقادری 
رنضوىی ے ملاتقات ہوئی :اض لکھتر مم نے اظکہارکیاکہ می نے حضورسید نا الا ما عبدالقادا بیدا فی شی انشدعنہ کسی وس یکا موں پر 
ای کاب تضورحوٹ اشک مکی مھا ہرانہز ن دی ادرمو جودہ انا کی فطاع کے نا مم ےت تیب ددگی ہے۔ 

قبر نے ا سکاب پرکو رکو متحددمتقامات سے د بک ہکاشرف پایاء ماشاء الد فاض لکھتزم نے تہابیت عحت شاقہ فر اک رتضور 
سید ناخ الا ما عبدالتقادرا یلاٹی ریشی الشعنہکی مجاہرانہز ندگی خہا یت نفصیل سے بیا ناف مائی ہے ۔اصل مھاہ اہ نی اللہ رہ ےج[ سک طرف 
اشارفرایا:زوالذین جاہدوفینالنھدینھم سبلنا) سلائل ارب سیل مل الی الد ہیں ۔جھاہد یٹس سے پاعن رشن بہوتا ہے اور می 
چہاد اکر ےہ رسول الڈھڈپٹگ نے فرمایا: (رجعنامن الجھاد الاصغر الی الجھاد الا کبر.) جہادکفار چہاداصغرےاور چھاٹئ جار 
اکبرہےء جچہاداکب ریس کامیاب پان رشن ہہوتا ہے ؛ھرمکالشفہ ء مشاہ ون الھی کی لقت طعیسب ہولی ہے ہچ رخبداوررب تی کے 
درمیاا نکوئی جا ب یسر بتاء ناما شمحرالی عارفر ہالی ریت اللدتتنائی علیفرماتے ؤںك ( المشاھدة ھی ارتفاع الحجب بین 
العصسد وبسن ارب ) مت مشاہرہ شس حیابات جسمالی تجابا تآ سا لی سب دورکردئے جات ہیں ء مھ رمندہ اپنے رب تھا یکو ےباب 
دبا ہے رب اہین بنلدہکو باب د بنا ہے ء کپ جیب لطف روعائی حاصصل ہہوتا ہے۔ 

حضرتسید بت الا مبدا اود یل فی شی الع نظ ہرک د انی ا ہرات کرت مرا تب نےکر بے تھے تب بین مایا 
اناغائض فی بحار علمه ومشاھدتةه ء 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


حضورفوٹ؛پنظ رشی ا رع ہکی ما ہرانہزندگی اورمو جددہ انا بی نظام 











خانقاہی نظام دبی بپبر سے جس ٹس روحالی تر بیت ہواورتضورسرد ناخ الا ما عبدالقا درا للا کی ری الد عنہ کے انقاجی نظام نے 
پنراروں لوگوں کے پاع نکوریش نکیاءاورلاکھوں لوگو کی روعا لی ت ہبی تفر مال - 
اشلضلکڑ مکی ام لعحنت ےکوام وخ اع سکواستتفاد کر تن ےکی تب عطافر ےت 
ٰ ختانّدما 
۱ مض تیشم عتارا درا یٰ ام مدرسمگر ہکرا نا اعلوم ریم العاں۔ 
ٰ ڑےاجمادی ا ال ۔ر(۱۲۳۹م) 
۱ مزملھ پدمورہ 
حطرت العلا مفضیل: اخ 
لام وشت موا نا ماع بی ہانھی صاحب حفلہ اڈ تما ی 
ابسمالله والصلوۃ والسلام علی سید المرسلین وعلی آلە الطاھرین المطھرین واصحابە المقربین 
ترافدین 
امابعد : 

ضرت ملا ریم وڑا زا حا فا مضقی حم رضیاءاحدتقادریی موی مرخ لہالعاکی ہک بہت بن بررس اورق بل منا ظ ملغ اور ما شا ءا ئن صوئی ض 
سکس رالھمز ارج ومتحدرل ال ئن عالم د بین اسلام میں ء ات ہی الد تھا لی نے اع سے ای عیب بکرم مگ کےگئی خی نی کا کام 
یزاشروغ فرمادیا ہے اور یھت بی ریشم انتا تق یک بآب کلم سے می وچ ہیں جن میس سے بکحدسیرت او رتا اسلام 
کے تلق ہیں چوک شاک ہویگی ہیں ہپ رکا بک یتین میس تھلیمات اسلا میہ: مک ک طخ ال سنت و ججماعح تک ری میس او رو فا مک را مکی 
رعایت کےسات بی لکیاککیں ہیں ء دنکہ برال کہ جدبیددور کے احوال اور می اورا نکاسد با بچھی یق صاحب نےکیا ےت 
آ پک ہراب داتتی ایک شفقی مقالہ ہے ا ےکی و نیرٹ لیول پ پٹ لکیاجا جا نز با قاعد وا سکی کر یق فقی برای تی ران 
ہوتاہو ںک جا ببلہ ضتی صاحب مرن لہالحالی ایت سادوصفت اورظا ہی طور برذ یاد کب اورچد بیراشیاءجی کی رک نگ رتصنیف 
نین میں حوالہ جا تکاڈ میراو زم تندردایا تکا چنا اورخٹلف فی مال میس بہت رین اخترالی او فی اندا زک رات ےگ مین سے 
بہت سے لا وکرام او صوفیا وکرا مکی صحبت اوردعاؤ کا اث ماشا رارصا پ نظ رآ اے اورنتصوصا آ پ بر لہالعالی نے بی پار بفداد 
شریف در با رحوشیت بی حاضری کے بعد ہکا ش رو فر مایاد وق حضمو رش نشار رت سینا ومولا ناخ الا ما مم براقا درا مجیلا لی 
سار بفدرادرشی اع نہک اص عنایت ہے٤‏ اور بہت بڑےککام کے لآ پکو ما مو رک یاگیا سے مبرىی مراوتف رت قبل یہ ضتی صاحب| 
رطلہالعا یکی خ نیف لطی فک اب مستطاب*”تضورحوٹ انل مکی مھا رانہ زندگی اورموجودہ انی نظاح ‏ جوکہ پیا ان ڈی مقالہ 
کے ہرا رشن ے لف لن تین شمدرہ اورضرف 7ف محب ت گج رااورسطرسط رادرب وا رام اوردد پارگو یہ کے 2- وبرکات ےگ راور 
ےء اورا لے بی *مھھکو ا یلا نی “کاب جس میں صد ٹیوں بحدریک نیا کام مین یکیا نیا ےکتضورسیی نات الا ما معبدالقا درا مجیلا لی 

























۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 8110171 





تصو رو ث| کم شی ا مد میا ران زندگی او رو ہجودہ جانا سی نظا 1 





شی ازل نکی مردیات احاد یٹ ش ریفہکوشح فرمایاے ء یقینا آپ امت کے لئے صرماری ہیں ء اتال لآپ کےنلم یلم ہذوق وشوق 
میں دن ب رن اضا ففرماے اورد مین نشی نکی خوب خدرصت نے اورڈر یج رکا ت باے ۔ 


مین 
قش اط یی بای پچ سی فی عنہ ٰ 
خز یل مین ر مین ش لین شود لی صاحہا الصلو والسلام 
۲٢(‏ جمادیاثا ٰی سر(۱۲۳۹ھ) 


جغ ایر بے تضورپرسیرسفیا نی شا وصاحب 
ساد ہشن درکا وواحر کرای 


رم 7ف و سیسس سو ۸ کی ما دا نہ زندگی او رم جورہ 
زانقادی زطظا مکی فصل فہرست نظ رس گذر رئیا ایک خوشگوارقرت ہہوکی مو جودوز ماشہمیس وم نے سید ناخورث انشمم شی اڈ دنر 
سرت طی کو فا با یکراما تک محدووکرد پاے او رتضورنموۓ شحلان شی ال رحنہکی اص لتقجد بوری ءروحالنی ھی ہی ادرا میا دبین 
کیلع ٹپ یک یککیں خرما تکنظراندا زکردیاے۔ 
اح صکرسیدنافحوث یا اک رش ال ع نی بارا: نکاڑنیں اور زی بن رگا کین اسلا مک یی بھی اور چھادیکوششیں عام لوگو ںکی 
نا ہوں سے اویل ہیں سے با حعث اخما رکوہ لن کا موقع مت ےلین انرڈ تی ضیاء اھ صاحب زریدیمجدہم نے تصرف الن اہم 
موضو مات بتکم ھا شقن اق کےس ات تضورخوٹ انم ری ادڈرح نک سیر تامیارککا ایک انالد پیٹ ا تیارکرکیاجھ صرف لم 
وشن نکا شا ہکا رای یں بل اغیار کے طعو ن کا مسلت جوا ب گا ے۔ 
بمارکیادعا_ ےک انتا ارک وتوالیمفتی صاح بکی پل لکول اور ناف بنا ۔آ ین با انی کی ارحلی 1آ لوم۔ 
فیس رسغیا نک شا 
ساب نا تب جالع یث جا مع یی (ک راگ ) 
ساد پشن درگادعالیہ بارگادداعدہرگرا ا 


)۱۰٠/۹/٥۱۰۸( 
تضورقب لت یگمو سجن شال صاحب حفظہ اتا ی‎ 


اب رجاعت ال سن اگل 
ححضرٹ چ سی رعبدالقادر جیلا نی رت الد تنا لی علی نیب الط فی ن نی وھنی سید ہیں شیرخوارگی کے زمانے میس ماہ رمضمان 
اللبار ک کا ات را مکیاء بررہرڈُل لاہ کے ذر یی ےآ پکااتترا مکروااگیاء بفداد کے _ل بجی سفر کے دوران خط ناک عالمات میں 


۱۷۷۱۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹ 69811121773/ 7 





بو لکرسیید ہو ای شھوت د ےکر ڈاکوو ںکوراہ راست پذگادیاء بقداد می ق رآآن ود یٹ کاعلم حاص لک نے کے لے مکالیف شاتہ 
انٹھا میں ء پچ ربفدرادد یکوم رکز رشددہرایت بنالیاءآپ کے وال گرا بی نے دد یا مشش بہت ہواسبب شمد یو کک ححاات می سکھالیاء پھر ما کیک 
سے مجانی حاص٥‏ لکن ےکاا ساس بیدرارہواء اس ذر یچ سے الک نما ئن سے شادی ہوئی جویجس تقو یی تعفر ححوٹ پاک نے راہ 
سلوک پر لن والو ںکی رہخمائی فر مال کرد ایس قام کے دو ران رآ خرت اخقیا رکرو ہریت مصطفی پلک یک کر وبلکم پ رھ دس :کرد الد 
تالی کال پیھرو سکرو 
ٰ ما الا مغتی ضیاءاشتا دری رضموی ہن گالت ی1 دبی ہیں بتضورسید نچ عمبدالقادرا یلا لی شی ارڈ ح نک محاہرانہز ندگی کے اکپ 
ایک پہلوکوآپ ن ےکک ما بک یک مجلدات یت رم کر ن ےکی سعحادت حاص لک ہ ا س متا بکوفحوت ا ضحم رحمرت اتی علی ہکی سوا 
حیات الدائر ة المعارف اوورازامنکلو پیٹ اکنا بی مزا سب معلوم ہوتا ےہ ااشدتزا لی موم اکومنر یتب عطافغرماۓ اورائ کا بکواہتی بارگاہ 
میں کول خر ما ے۔ 





مفیکھو ںین شال 
)۱٦/۰/۲۱۰۰۸( ۱‏ 


تضورقیل رس رف۶ یش صا ح بر ویضفظلہ انتا لّ 
تن الین جا میگ بییگو شی ریلودھراں 


بسم الله الرحمن الرحیم 

علا مہ موڑ زامھتی ضیاء ات قادر یک یناب حضو رو ٹک مچاہرانہز ندگی اور مو جودہ مانقای نظام' کا چیدہ چیدہ مطال ہکیاے ؛ 
موضورع پطو مل پٹ اورجوانے ہیں ء جوا نک یکماوں سے وا من یکا پیدد بی ہیں یش نے پھھتھاو یز سفق صا حم بکو بزادی ہیں جم وی طور 
برا نکی ہترری نکاڑش ہے ء الد تعالی اس کے ذر یت مسلرافو ںکولفع عطافرماے ء اور م محاشرے میں گی بے اعتترالیو کان ارک 
کریں۔ ٰ 

ٰ سی نف ری شاء مہ ری 

ام جا م دنو شی مہرد بیلدزھرال 
22 


ھےُ٘جھججچجےچچپسیماوچا 


قب چیرصاحب مر نملرنے جونحرفر مایا تھا اس مفقیرنے بوراپ را لکردیا ہے( مق رضیاءاحہقا ری رضوی) 


۱۷۷۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹ ۹660100171713]. 





تت رم قیل یما رت نو مبیاں ن برا ضر صا حب( ریا رجش) 
تحضو رتحوت [عشھ سببرعبدالتقادر جا یٰ ہمت التھالی علی .کی غیت نعل ت ؛غد مات ادرکارناموں پٍصر ول سےایکھا جار ما ہے ۔ ا 
۱ مد بی اورردعالی ٹیچ یل تی ضیاءا جوا دی رضمو یک یکتاب”حضورخوت امم شی ارح ہک مھا ہرانہزندگی ادرموجددہ خانظائی فا حم ایک 
اہم اورنارراضا ہے۔ بر خاصنی لوم لکتاب ہے یقیاا کا مطال تصوف میں دگی رکھے والوں اورتضورفحوٹ پا اک رتمی ادتقا لی علیررے 
حبت رک والو ںکوذحیہب ہوگا۔اس سکنل مغقی صاح بکیا ای کاب 'صوفیا ءکرا مکی مھاہرانہ زندکی اورموجودہ خانقائی نظام“معظمر عام پر 
گی سے نٹ سمتی نے رج نے ۱۹۵ء) می سلسلہ عالیہقادر یہ ک نی صولی بز رگ حضرت سیدر جج بگلی شاہ صاحب تقادریقندررگی 
سردریی کے دست اق پر بت لھجیاب ہائی ۹ا بکی نت مت بدا ظمہاررائۓ ۓل یس تضویحوٹ پا اک رہمت ا تعالی علی کی حیات مہارکہ 
اروعالی متقام او رتحلمبات کے جوا نے ے ا نینم رات خی نکر نا جا رتا ہوں تا کال امن بی فا ری نکوٹھوڈے سے وت میں چند باج 


پڑ ےکا مو نع ئل جائے۔ 
آپ رم الد تا لی علیرسنہ (٭ےۓ٥حھ)‏ شی ایس عالم رنگ و بوی ستشزیف لا ۓ اورسنہ (۵۷۱-ھ )کوآپ رتمتۃ اللہ تعالی علیہ عا لم ہقاکو 
ہر عاررے۔ 


ولادت کی ش بآپ ریت الڈرتھای عای کے واپلا ار عفن ہے لے ا مڑیٰ نکی دوست رتمنۃ ال تھالی علیہ نے مشابد ہ٥کیاکہسرکار‏ 
دوعا یل ا بن صا کرام رضسواان اوڈٹھہم ا مین کے سا ان ک ےگ میس رو اف روز ہیں :آ پگ نے ارشادفرماا:اے ا لوصا !اہ 
تاکی نے میں ایک بیٹاعطافر ماباے ج کم رادوست بحبوب اوراڈ تال ی الگ یحبوب بے ءاورکنقر یب ا سک شائن اولیاء اڈ الک 
ہوگیجھنی می ری شان انیا را مہہ مالسلا م میں ہے۔ 

اس فرمان رسالات ( )کے مطابق حطرت تچ سیر عبدالقادرجیلائیٰ رحمت الد تعالی علیہ کو بلندت ین روعا لی مقامات 
او رت رذات عطا کے لئے آآپ کے نیو د برا تکاد لا د تکیا شب بین کہورہوا۔ انس شب جیلا نمی پیارا ہو نے دا نے سب ےک کے 
ہیمست وہس ارت و با 
بات کا ظ پور ہواج کنا ےحز ایس نفصییل بیا نکی گی ہؤں_ . 

آپ مت ال تھائی علیہکی جلا لمت می ء رفقعتر ُا اوروحا ی غمس سا پر جج ہردور ے ہزریگوں ؛صاین 
ادراولیا کرام نےآآپ دحمت الیل تھا لی علیک بب نار ران چاو رخوت اکم تلی مکی خومیت اورقطدیت انسالی روعالی متقامات ہیں 
لف ادوار یس ان مقامات یادرجات کے حائل اولیاءکرا مک و ہوتار ا ہے :سھا کرام اورا .ال بییت رضسوان اتا کم اہین 
2 بع رسب بے بنرو ہا تخصیت بح سیگ بدالقادر جیلا لی ر7“ الک دنا ی علی کی ہے می نکوخحوث ان مکہاجا نا سے :نت لق 2 
معنوں ہیں ےکنا مقصودہ وک سب سے بے اعد دکمر نے والا بافریادر لکون بے ٹے شک دہ ارتا لی ہے مم ناگرروحای نظام شش انال 
ما م قوش کی مہ ائ کات نمقصودہو دہ متام تن سیرعبدالتقادر جیلا لی مت اتی علیوھاصمل ہے ؛ انیل اس اعقبار ےنوت امش عم کن 











۱۷۷۱۷۷۷۷۰۱۷۷۹ 8 01717 





یں شر کک اکوئی اتا یس ے ا نمیا مک راھکن چم السلام رےےخرق عادت مڑی ؟ مکی می ہے ہزات 
اکرا مات سب امہ الچ ی ےج یں ءا ن کا مقصدیخاشن با متری نکو ھا کرد ینااورا خی کرام مہم السلام با اولیا مکرا مکی عمزت وک ریم 
کوبلن رک ناہے ہزات نبو ت کالما ز مہ ہیں >ج نکرامات ولا بی تکال ز میں _انیا کر مخشہہم السلا مق عو کی طرف کییے جاتے ہیں 
: اکرلوگ ا نکی پا نکر کےان پرا یمان لا میں مان اولیاءکرامکا معاللہذراحنلف ہےءا نکی چان اور اق راروڑا ناوت پرواج یں 
سے مت اولیا رکم را مکو دا تی ولا یت ادرمتقا مکی ٹیس ہوک اوران سےکراما تکانھمپوریھ یی ہہوتا نان پچ ھی وو صاحب متقام وی اللہ 
ہو تے ہیں اورمم و ان نے وٹ و بات حاص لک کی ہے۔ 

تن حبدالقا در چیلا نی رحمتۃ ایل تی علیہ نعل علیہ بفدا ٣ل‏ می منعقدہونے وا یپا مل ارشاوڈر ایا:(قدمی ھذہ علی 
رقبة کل ولی اللہ:) ماقم ہرد الک گردن پہ ہے۔اس وق تکاس شریف می تقر یبا٭ ۵ مخا رع کرام حا ضر تھے ہب درممۃ اللہ 
تی علی کا یف مان نام البلی رجال الغیب نے برطرف پچھیلادیا ےگ نکر سب نے خوش اپٹ یگمرونیں کا لیس ۔ححضرت سودخوابڑستان 
الد ین ںچ شی اجحیبریی رم اش تھا ی علیہ نے نیک نکر مال م وچ ش لٹ رہایا تضوز ا آ پکاق زم می گر دن پر می رمےم رپراورمیریآگموں 
سآ پ رحمت ئل تما لی علیکیگاس میں موجودمشارغ کرام می سب سے پپیلہ ثن عی من اکیتی اش اور پ درم اید تعالی علی کے اس 
اک رآ پکا قد مارک ان یگردن پر درکولیاءپچھردیگر مار کل لن یکر دس کادیں۔ 
آپ مت ارتا لی علی کی حیات مارک کے چاراددار یں 
3دت اسعادتسس(۴۶۰۶ )ےا ( ۸۸م لے جیاں شرے۔ 
(۴)ست(۸۸٥ھ‏ )ےرس( ۳۹م“ کک بفدادشرریف م رتنلب رک لکی_ 
(۳)سنہ(۹۵٥ھ‏ ) سےجیگرسنہ(۵۳۱ ھک کبجاہرات ور یاضات یل مصروف رئہےے_ 
(۴)ست(٣٣۵ھ‏ ) ےلنک ر۵۷۱ ھ تک دع ءددرل وق ریس اوراق کی خدمات اضچا مد بیی- 
اما محبدرالو ہاب الشعرالی رن ارشد تھا ی علیفر مات ہیں 
وکانت فتواہ تعرض علی العلماء بالعراق فتعجبھم أشد الإعجاب فیقولون سبحان من انعم علیۂ. 
کے 
کہ جب علاءعراقی کے ساٹ ےآپ ریم اولرتنالی علیہ کےکیے ہہومے اوک پیش سے چا تے ےا نکوآپ رع اتا لی 
ایت وپ رود از 3ہ رت ا ےشن نے ان کا لی ت ےلوازاے_۔ 
(الل بات /لکبری: مبدالو اب نآ مھ ب نی ھی ار انی :بش (۱۰۸:۱) ماب ےرا بی ایی داتعے ہعر) 
ضورفحوث اک رح اوڈدرتھالی علیہ نے تصمو ل لم کے لے سعی مخ او رتا ممکاؤشش کے ہوا نے سے ارشا وفر مایا عم ء عالگموں اور عاموںل 
(زیتنی پاکل لا کرام )کی حلاش میس اتا چا ھک نکی ہمت باتی نرہ ہا کک چا کک کی چیغھھارے سی ےکا ساتھھنردرے کے۔ 
جا ما نو اطرتں:۵م) 
آپ رم ال تالی علیہ پرسمال ١ا‏ رب الاو لکوآ مہ مکی خی یفل رکا چا اکر سر بے اقطل 


7 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 11121 717 


ٰ ری 
مک بان ہوتااورقمام حاض رم نیف لکوطدام یڑ یکیاجا تااوراس کے بحدرآپ رم ال دتعالی علبید نے ہر ما ہکی ١اا‏ رر کوام پناس 
شی فکاابطماممکر ناش رد فر مادیاءریبحاشل بذیادی عو پر یادس کی الہ اور پاش کی محبت کے اظہار کے لے ہوقی عھییں بتضور 
اث پاک ممیت اتکی علیہ کے وصال شرلیف کے بح دآپ رم ا دتمالی علیہ کے مر بلھ بین اور جا ہے والول نھگ یمگمیارہ رک 
ال ول اور پراسلائی میی ےک یگیار تار سن کوا یی دی ماش لکوچاری رکھاءاوراز را محبت اورادب ا لںکوگیار ہو بل شی فک نام دیا- 

آپ رسممت اٹ دتھا لی علید نے درس ور ری اورک دبین کے لج درس مار ا ۔ چہا لآآپ رم ان تھا لی علیردر د اکر تے 
تھے ہآ پ رحب لیلد تا لی علیکیجاس دعظا یس بنراروں انان ء جنات اورغی ٢ل‏ ھی ش یک ہوتے تھے ء دوآپ رم اتی علیہ کے وعظ 
سے متا شر ہوک پ رض ورفبت الا قبو لک لیے تھے ہآ پ ری ا تھالی علیہ ن ھی وکقی سرگرمیوں کے ساتھ اپنے مرک جا مہ قادد ٹل 
ایک شعحرکت الجہا انف مایا چا جہاد بالسی فک مکی ت یبیت دی جا ی شی ءآپ رم ال تھا ی علیہ نے ۷اذ والقعدوسن( ۵۳۵ھ )کو 
اتی خانقاہ مم وعن اکر تے ہو وۓ فر مایا شی درب الحزت نے دو چچہادو لک خجردییہ ایک جچھاد ظا ہرادردوسراچہاد باظن ۔ جہاد ان 








شس شر ٹل شیطان اورنل بیع تکا چجہادے او رگن ہوں اورلغخزشوں سے ےکر نا اوراس پا ہت مر ہنا مہوٹوں ادرمرام چز ولک رک 


کرد بناے۔ چہاد ظاہر: کافروں اوررسول ارڈ ینگ کے شمنوں کے سراتھ چہادکرناے :ا کی مکواروں اورتیروں اورٹزو لکامقابلہ 
رن ےا لک ناا وش کیا جانا سے ]شی یرتا لکی راہ ششبیزہونائے_ 

سلطااع صط رح الد بن الو لی رحمتۃ ا تھاھی علیہ کے داد ما رش ال بین الاب زممیت اتکی عاتضورتحوت اعم رت اٹ رتا لی علیہ 
کم بدراورتھ ہبیت با فتہ ماہر تچ ء جب انہوںل ۔ ےآپ کے دست میا رک پ ہی کا سلطان صلاح الع بن ایی رم ا تال علیہک۶ 
فیس سال ھی :کپ رمتۃ الل تھا لی علیرنے سلطاان صلا ح الد بن الو لی رح ایل تھا لی علی کر اپنی ڈگاوٹیل رساں ڈالی اورفرمایا ان شاء ارب 
براسلا مکائفی چھاہرادر فا ہوگا۔آپ رعمیۃ الڈدتھالی عل یکا ریفر مال ش لیف حرف مرف پوراہوا۔ 

سلطالن فو راللد گن زگیشہیررحمبۃ اتی عل یگ جامحہقادد ہہ کے بیت یا مت مماہر تے دوسنہ(۵۳۹ھ )یں دش کے اکم تۓ 
اورانوں نے شعہہ چہاد یل شمائن دارکارنا ےس راضچام د ہے ءا نکی وفات کے بح درعکومت صلاح الد بن الو پی رم تھی علیکوٹی ءان 
کی فرح میں تضو وٹ /نضفم رحمرت اتا لی علیہ کے شاگرد بہت زیادہتعداد یں تھے ء بیکھی میا نکیاجا تا ےکا نکیافو رن کا اکٹ حصہآ پ 


رت اللدتمالی علبیہ کے م بی بین اورشاگردوں شقمل تھاء اوراسی ط رح آپ رحمتت ارڈ دتھا لی علیہ کےیشنرادرے سریرہدال یز رحمی ادا ] 


عل یملف علاثوں سے اہی پرارمواعظ کے ذر بیج اف اج روا نکر رج تھے جس سےٹوراللد بین زگ اورصلاح الد بن الو لی رم اللہ 
نتزالی عل یک یک رمضبوط ہولی رہئی ۔اوردہ سب فان قادریہ سے پرالوارادرروع چجہاد ےس شارت ء انہوں نے صلا الد بین الو لا 
من ایڈدتھا لی علی.کی قیادت می ہرمیران چک میں اور پی می طا قڈ نکوکنلست دی- 

سلسلہ عالیہقادر مکی اساس تن پاٹؤں سے اول : و حی او رااش تا ی کی اطاعت ۔دوم: رسا ات مھ مہ( انگ ) بایان ادراجاع 
سر ۔ سم رم یی فل قی تضورتورو اک من اید تھا لی علیأھلم ت اورمواعنظا صثہمی لپ حید پر بہت ز وراورشٹرک سے د کچ ےکی 
شلقان ہے اوراسی طط رح الڈدتھا لی کے احکامات بی لکرنے اور سکیا اط عم کم ن کیا بہت ت کید ہے ءآپ رحمت قد تی علیہ نے 


٠۲)‏ عللاہل ںل) 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





فرمایا تھا یک اطاعت بہت زباد کردا کا طاعت ا لکویا وکنا ے رپ رخمۃ اتال علہ ایم یس ےکاتھ لک تھا 
ور برراشی رہو ہعبرا خقارکرو ,شیج کیعمل پایندیکردہ بندہ جب اسلام ؛ایمان اورم رفا نکی منزلوں ےکم رتا ہوا قیفش کو 
جا تا ےاذدواطاعت لی کامیاب اورکاس ران ہوکررضائے ای پالتاے۔ 

اناج رسول :رسا لت مم( ماپ ) برایمان لاک راپ کی اطا عم تکمر کے ای ہنارو م ون سرشرد ہوا ہے تضورحوث پاک رم 
ادتعالی علیہ نے فرمایا: دہج بتک ااق تھا یمک یکنماب اوررسول ارھپ کی سن تکی اطا عحت زہکمرے ا ےکس یک کی فلا تعیب 
نیس ہوگی فآ پ رعمتت اڈ لقن لی علیکا ملک بر ےکہ بنددرسول ارعش ھک احجاح کے ذر نے سال لی نپ کا قرب حاص لکمرے 
2 اب کلپ اس کرت تال یکا مضرب بناد یی ءرسول ال پگ سی بنارہ اورانل تا پی کے درمیائن وسیلہ ہیں ۔ اص لصو وورےکں 


کا ا ہرد ان اپلدتا لک کاب اوررسول ادڈع نکی سن تک اتجاح سے صاف ہوجاۓ ء اپ اکا زصوفیا مکرا مکوہی رسول اڈ اہ 


یی کی زبارت اصیب ہولی کے۔ 

شرم تلق نخلوق مد اکوکررادی ۓ پکالنااورا نکی اصلا کر نا خدممت نکی ے:آب رت ادا لی علیہ نے ایک پارلوگو ںکو 
مخاط بک کے اک اگ تھارا بی خی رکے قح یس ہو مکیکمرو گے ؟ ان ہوں ن ‏ کہا : پهم ا سے تچھٹ ران ےک یکو شک میں کے ء 
آپ رمت اش دتتحالی علیہ نف ما اکس یس بھی ور او ریمس جب کسی بنرےکوئ٠ن‏ تی حیطاان کے سیئے ٹم د کھت ہہوں تو 
اے پچٹران ےک یکوص لسکرتا ہوں ۔ 

آپ رم ایل تعالی علیہ کے مواعنا سنہ سے لوگوں ڈیا واو لک دشابدل جانی شی دہش راورخیطان کے رات کوچھو ڑکررا لیم پر 
1 جات تھے نی سل رکف رک چوک راسلا قبو لکر یت آپ رح اود تفالی تی کے دلوں ٹیش دی نکوزند ہکیا ایل ےپ رحمت الد 
لی علیکا لتق بکگی الد ین ہے ۔ غرم تنک کاایک پہلوخادقی کےکا مآنا ےہ ہربندر ےک یس مھ کی حاجات بہو لی ہیں آپ خادت 
کا مظاہ روک کےا نکی حاحبات (پشمو لکھانا پیا ال وغی رہ )پور کن ےکی گھ ریف ماتے تھے ءآپ رحمۃ ارتا یک عماس میں 
تراروں ش رکا مکوکھا کھطا یا چا تا تھا ءآپ رحمت لی علیک فر مان عا لی شالن سی ےک رسا دکیاد نا کیا دولت می رئیا یی برک دی جائے و 
یس کو ںکوکھا ھا دو ۔آپ ریت الد قفا لی عل کی سان لکو نما لی ہاتح نرلوٹاتے ہآپ رہم اللہ تھالی علیہ نے ارشمادفمایا: سوا ی 
کی ھا رکی رف الد تکالہ جراے ر ویر کرای ےو ولکرنے وانق پک ےد ہی 
ححست بہ ‏ ےک جب تم ہارگاہ ای میں سوالی بن کے معن ضہ ہونے کے باوجود اھ پا لو گے ۔آپ رحمت اللہ تھا لی علی ےکا گی فرمان 
ریف ےکیت اہی نا ہرکاسنوارتے ہو نون نے دنا ےکا نقل بکوبھول چات ہو ہے شا تا لی نے د یھنا _ 

زینک کاب جن یرحب القادر جیلا نی رر لٹ تھی علی کی حیات مپارکہ کے ہ رپہلوکا ا حاطکر نی ے موا فکراب فی ضیاءاحمقادری 
رو نے و مطالعہ کے بحدادرکمال مت سےکتاب مم انچائی تی مضا ین تع سے ہیں ۔جصس سے یا تقو ٹن ا روش 
تع رک رقا رین کے سانت ےآ چا تا ہے انوس مولف ن عضو وٹ پل مکی جا ہرانہزندگی پشمول شعہ ادوس ری ز نکی می ںآپ 
کا اورکاپٹیں وا ورپ با نکی ہیں ۔مولف نےحضور وٹ عم رجرۃ تال علیکانسب ازرواق کی ر2۴ رظان 
ا اصلاح محاشرہ بصحرفت الھی حی مار تال رکفت مصصطفی الگ خلا بت راشردہ ہووت اض مكا نظ یہہ ال سضت 
دبماعم تک پروی اور بدمہہہوں سے دوریی ء امت کےپو جواوں کے نام اپعم بپنام بفحوت ا ےت رت کے2 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 0111 71 





ےت ار اکرداراورگیار ہو یش ریف خیش پ رپہلو پرانچائی اہم موادشحع کرد پاےء اس ٰ 


کنا بکا یک نان پپہلو یچھی ےک اس میں مولف نے مضسورحوث پاک رم اتی علیہ کے اسانذو ومشا رع کرام او رآپ کے 


شاگمردو ںکی ایک طو مل پہرست اوران کےشظمرعال تہ غگکردیے ہیں کاب ا رم نکودیگر بہ تک یکتب اوررسالوں سے شیا 


کرنے واپی ہے ءا ے وت پا ککیمشہورتصفیف' نفدیۃ الطا ان کی ری فدیۃ القا می یکنا مناسب ہے مول فبکتا بک یکا ول 
ان صدستائش ے یج امیر ےکہان کنا بکا مطالخسوف یس دی رکے وا نے ردص الین لا کرام مارح عظام او راد 
لا سکسلن اخزائی مفیدہوگا :مد دددور کےپتلوں اودگھراہہو کی تار کی تاب ایگ بینار دلو رثابت وگ ۔ می ری دھا ےکی 
کنا ےنس زا ڈلی اور الاو کی ز غت نہ نے بلگہقارنین کے ذ ہن وخرداو روب ئل چاگز میں ہواوردد اس کے مطالعد ے 
د ٹیا و خر کی چھلا شیا سنیٹ یں ۔ 
آمین بجاہ النبی الامین طَلبّه ٰ ۱ 
ازضٹس(ر) میاں نز انز سال را ہور پاکیلوٹ لا ہور 
سا تھب الا میفظ مال یکل پاکتتان 
سنا شی ائین یغاب بیت الما للا ہور 
وکیل صفائی مفیااب ملک متا زین تماد ری شہیدررحمتۃ انل تھا ی علیہ 
استتاز العلاء ناضل٠‏ بل مامح امعڈو ل وس تول 
ححضرت مو نا حافظ بش رام فردد یگولڑ وگیحفظہ الڈدتعا لی 
بسم الله الرحمن الرحیم _ 

حضورخوت شون سیب ا عمبد الا درا یا فی رش ادلرع ہکی زن رگ علم مس لکی ای کم ینا بک طز نے ہپ کےکردا کی 
خوشبونے ہار د اتک ال کوا نی لبیٹ یس لے لیاءآ پک مھا رانہز ندگی ن ےکم شدگان مض لک منار ون عطا اہ چا گا فو سکوڈلا مم 
تن سے راو رومنزل بنایاءوہا ںتشقگانمکرکوفورعلم سیب را بکردیاء ال سک بعکم کے بادہ خاروں می شی شہاب الد ناس روزدکی رح اٹہ 
تا لی عل یح تی شیا تنک رآ نی ہیں ہآپ کے صا تم ادگان تن عمبرالو ہاب رمیت الل تا ی علیہ ءٌ٘ برا رزائی رم اللد تال علینقہ 
تضریث شرلیق تکی مل زی فرارے رے ءاورگو ہہ نایا بخلوقی خدائیشس پڑاتے ر ہے آپ سکب لم نیش میں - وت ا رینم 
دددات ہو تھے ء بر ایک وقت ال ابھ یآ یاکہتحدادجوآپ کے دعاشریف سے اکسا ب ٹین سک ری نظرآپی ہے ستر بنرارم کک انی سے 
پ شا ان دق تکی مرح سرائ یچس بکمہ لپ ریقوت کے س اتا نک اصلاح فرماتے تےء اوران کے خی رشری افعال پوگر تفر ماتے جے 
٠ال‏ منص بک وج سےآپ کے پاب استقلالل می بھی لغزش نآ کی ؛سلاظی نآپ کے روعای اور یکمالا تک وجہ سے لی دجان سے 
آپ سےعقیرت رھت تے نورالد بن زگی ش مد راولت لی علیہ جح رٹ وعا لم اورفقہ تھے ء ای ط رح سلطائن صلاح الد بن الو لی رم 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 81107171 





انتا لی علیہکی شحضیات پہآپ پ کےفو محر تکااث تواء بیخدارسلی سےلعر د ٹیا ک جم کوفو کک بداری نکا ایک طول سلسملہ وکھعائی 
دیتاءان بش ضرورآپ کت سای نظرآئی ہے آپ کے شاگمردان نے حدادل قائم بے ؛ اددوہاں سے تقاددہ نیل 
پنگر ایک عو ملع رص کک با اگیاء اوران ع١‏ کی ےئق خرائوحر یٹ کرداریل مسائی ھا جز گی :خودداری ء رضاے لی بی 
وطہارت ءز ہر اورانمانی تک غرمصت کے درگکوں سے اپتی ججھولیاں ری ری زم نظ رکا بک ولف مقامات ہے رن لک مادت 
عیب ہوگی جٹس سےجضوررحوث پاک یی ا لدع نکی زندگی مہارک کےشتض اییے پہلوجھی نظ رس ےگمز رے جو پآ شکار نہ تھے ؛مصلف 
نے نہا تع رق د بیز کیا سے جال جات کر کے اسےعلماء وقوامالناس کے لے جاساں مفیید پنادیاے ؛ مصنف نے اد لی لطافتاں پر دلاکل 
کون قیت دکی ہے :چس سکیف رومنزات اور بڑ کی ےہ بلاشبہ ای ھی ضیافت ہے دعا ےکہ او تع لی مصت فک محنتکوان 
کے لئے دماوآخرت میں بپھلای اددکا میا یکا سا مان بنا ۔علامہ صاحب نے جس عرق ربز سی ےتضورخورتٹ امم ری قد حن کی 
بات اد یما ارم ےکر دا تو کو دشا کردا با اتل ان کیا ا کی کا شکوقول فرماۓ۔ 
آمین یجاہ النبی الکریم مال 
نا زحافطط لشبرامذردددیگلڑ وی 
چا رت النمردیں حاصل پور بہاو پور 


رت علا مم ولا نا وشم 
می افو انی حفلہ ایند نمی 


تفر دو رامعلوم جا موح زرضو کوٹ را دسا ای تلع نصور 
نحمدہ ونصلی ونسلم علی رسولە الکریم امابعد 
رنوزتدگ×5 مت ائ رکھنا ہے اورا سکیا حفاظت کے لے اےےا ہےر جال پیکراف مانے ہیں جنٰوں ن ےشن اسلام 
کیہ بیار یکر کے ا س نیش نکوت وجازہ وسلا مت دکھنا سے ا لے ر جال می تق اول سنت ہعیرث المتصر ہشن الید یٹ واشغی رتخرت علامہ 
مو نا مضتی ضیاءا ھا دریی رضمو یکی زات ستو دو صفا تج نو نے اٹ یف بولق رس کے سا تح امت میں ا شنے وا نت لک سرک پ کی ہے؛ 





اس لے می ںآپ کی خحصویسی نوج خافقاہی نظام ہے ء اس سلسملہ می سشآپ نے محطلف تصاخیف فر ماگی ہیں ء یتصزیفں ' حضورفحوث لنٹ مکی[ 


ماہرانہ زندگی اورموجودہ خانقائی زظا ۔ ٠‏ چھی لا جوا یف ے_ 

بس نے ا ستصی فو لف متا مات 00 میں تضورسی بخوت ان مم ری اون رعنہ کے لف اوصا فمیرہ 
اورآپ رش یدع نک ی۹ی دروحانی د چا ہت کا ذکرنہا یت بی محققا را نداز ‏ تکیا ےآ پ شی الڈدعن کی خخصیت مبا رک کےخنلف پپہلوں 
کوزیی پٹ لاک رآپ ن ےش کا عق ادافر مادیا ے۔ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 891002711 7 








ارتا پی سے دعا ےک ہآ پا خی فکاقول عم ا اوراا سکوذ خر ہآ خرت بنا ۓآ می نک مآ مین _ 
پر و فیس مخت یح رانو انی 
لیر یٹ دارالعلوم چا مع نف رضو لوٹ رارعا تی س تصور 
(۹ ائحرم اف رام سنہ ۱۳۴م /٭ مقر ۰۸ء) 


زیت ملا روا نا مفتی رضا ےی نر ی حفظہ ار 


ا ا ا ور 
سید ناوت انشمم ری ارشدعنہ کے عالاٹ پ کان نع یکمیں ہں, زمفظ کراب مصن فکب .ےد امفتی ضاء 
امرقادری رضوی یک یکا ے :ملا نے سینا الا ما عبدالقادرا یلا ٹی نشی ال رعنہکےعاما ت ز رگ پراورتو فک دنیاشش 
آپ رشی الع نکی خد مات پر بڑکیٹشعل سےاکھاےء ایک حد بیث و یکامفبوم سے میں نسح فو ں ت آسانوں ء زمیٹوں میس ضہحا ول 
سا جائں فے من کے دل میں سا جال ء اپیے ای ایک ادرحد بیٹ ہش ری فکاصمطظہوم ۔سے بندوعباد تکر ےکر تے مھیہرمے ا تفاف ریب 
آ جانا ےکمیش اس کہماعتء بصارت اق اورز پان بن چا ہوں جس یا رحوث احشعم ری ای رعنران دونول عد یٹول ہے بحباطود پر 
مصراق ہں سادات کے نےحفرت دیاش پل لت لال رع ببت بی ال ہی ںکرآپ شی الشرعدرنے 
اس سا لکک ہردات می لک لق را نکر مکی عطاد تکا- 
صعفرت علا ولا نامفتی ضیاءاحبقادری رو یکی انا تق اتب یکنا ب کے چندہقا مات مق رنے دی ہیں بے الط فآ بے 
اس سے پییلبھی عو فیا مکرا کی جہادکی خد مات پ“ صوفیمکرا مکی عیاہرانہز نرک اورسوجودہ خانقائی نھاع یپ بڑاکاممکر کے ہیں۔ 
ال تھا لی ولا ناکوجز ائۓ جب عطافر ما اورا سکما بکوانع کے لئ صصدقہ چار بے تا ئۓ - 
رض ےۓمصط لی نقشبسری 
خمادم جا مع رس لی شیراز ہلا ہو 
مطرت عاا موا نا مض مححصو داع ادری رضوی صاحب حفظلہ اتا ی 
خطیب جائ مجر ەل ڈلز ری ائینڑ 

الحمدللء الذی ابدع الافلاک والارضین والصلوۃ ری بک نبیاوآدم بین الماء والطین 
وعلی آله واصحابه اجمعین الی یوم الدین ۱ 
امابعد : ۱ 

درحبی بالگ سے سا نے ٹیش ہہو ے چندنو جوانو ںکود میکھا تق ول ن کہا کت اے بیکھی غیت ی٤‏ رای جن ان سے اس 
!یٹھاجائۓ ء جب میں ان کے پاس بیٹما تو تضمورو اشفلین ری اش رعنہ کے ایک لام سے لا قات ہوگی جب آب نے قیرے 
تارف جا عون کیک یش دی وی تا هک ہم کون ہوں ؟ یکم اپآ پ کسی تارف کے قائل یں پا تار 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





تد بیٹنفت کے طور پر بتاد باہو یک۔نقی رکا پاب کے بے تارج با دشا و خرت علا مہ موا نا مناخ راسلام ‏ لق رن :استاز اترم 
واللشارغ ناب سبی رز بیرشاہ صاحب ریت اتا لی علیہ کے پاش برداروں می شحارہوتاے ءعبتضورحوٹ پاک د٘شی اعد کے 
الےقت نے قرشم دیاکہرانہوں نے ححضرت سید نا اخ ا ام عدالتقادرا یلا لی ری لدع ہکی مارک زندگی 5 نی یل 
کارناصوں پرایک زا ھی ہے اگمرا سے و جکمنا چا ہیں تا سک مسودہ ہمارے اس موجودے بنقبر نے ع کیک یت میں زیارت 
کے لئ حا ہو ںگاء ول سکیا رنحوث امم شی شعن کے مھ کی ر ال گا کک چان نعیسب ہواء او رتحضورحوث باک رش ااشدع تی 
سارک زندگی برع رق م مسودو دب کا شرف حاضصل ہوا جحضورنوت انشعم ری ارڈ حنہکی مھا رانہز کی اورموجددہ اذا بی زظاع !کے 
نام سے وس وم تھا اور مصت فکتا بکا نام نا بی ا مگمرا می ناب حضرت علا میمو(ا زا اض ل پیل حا نویل فی ضیاءاحرادری رض وی ا ولا 
ری مر دی مرا ہے ؟ب نے مڑ انت شاقہ سے کاب ع تب نر بای ے۔ 
جعله الله قبولافی المسلمین ونفعاً للطالبین وشرفاأ للمولف وضیاء فی الدنیاومغفرۃ فی الآخرۃ . 
نقیرنے ا سکتابکو یرہ چیدہ ج”ہوں سے دیکھا نذا سکنا بکوابل اسلام کے _ل ےگع بش پایاہ مھت صاحب نے بپڑے ا سن طر ینہ 
ےن وین کر ائی ےہ اللدتعا یآ پکودوفوں چا نکی مکی ھی ب پر اۓ او رکتما بکوشر فقو ل عطافر مائے آ بن - 

متصو راص رؤا درگی موی تطیب جا میں پوز بر اٹگلنڑ 

(۸ ہمادی اڑا ی سد ( ۳۰٣۱ھ‏ )پر ۔دمورہ 


حضرت موا نا رذ والففمارمعشض لی بای قاددی صاحب حفظ الد 

ْ حامداومصلیاً 
سبیری وسندکیتضورنحواث بک رص الشدعن ہکا ہمہ جبت جامع ومقتوع صفات وکا لمائت سے مرئح اورک زمنظرتا لیف بعنوان' حضور 
تورث | ۱" کی مجاہراضہزندگی اورموجودہ خانظابی نام ' لین اہن موضوع پرایک پالصیئل جداعگا نہمنفرداورا موی کیاش ہے ہم ولف 
دام علیہ وففضلہ وا تپالہ نے جس میاہرے معز مم ءکوششس اورعحرق ربز کیا سےعنوانات وابوا بکا خوبصصورت پارغ اکر انس میں سییرگی 
حوث پاک ری ایشدعنہکی پاکمالی اور باجمال ذات عالی کے خصائش وخصائل وشائل کے جو پچھو لکھطا ۓے ہیں ۰ا نکی یینی سہالی 
فویشبوے مققام جا نکوسعط یتنب کیا فا نکیاز ببائی ادررعنا گی نے رو حکوپالیدکی اورک رکو اکن کی کاسا مان دیا- 
صاشین کے ت نکر ےا نکی عھالل سکیشل تا خی کے متی رہ نک رقلب ولک رکی ہار تکاسا ما نک۷رتت ہیں مقبلطتی صاح بک وہ ی٢ی‏ 
اوریہنی ری نے جوموئی نے ہیں اوراننیس ایح ماب یی س حموبااور بردیاسے با نکیلھی ولرک ذو کا اس سے۔ 
دورعا ضر کے خانْقاچی نظا مکی اصطاع کے لئ کتتاب ای کپ رین اور جا مخ انقلا پی اصلا گی نصا بکیا حیقیت ر قیڑے سر ینوٹ 
پک ریش ی الد عنہ کے امچھدتے پیبرائے اور چامح ادا زکا ڈک ری رآ یہد لکوت کر کے اسےمرفت الہبی کی جولد وگاہ ہناد یا ہےء اورااس 
ررے لآ نک لت وعلاوت او رکیف وس دراوم ز ایس تکس یبھی کل ہہوق ےآ ہوک ررخ سو ےھ مکرنے کے لئے 
کے 
قہلیضتی صاحب کے لئ میس اس اتنا:یکہنا جا ہو ںگاکہ 





- 





۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 1111171 





مت کل چاو پھر سے نک بسں تب اک کہے بدے سے اشان گے ہیں 
تن چیراۓ میں ذکرفو رک ب ہکہکششال ہارگا و خحوحیت یس در رتو لب تکو بیج ادر ہار یک قیا تم کآنے والضسموں کے لے بینارہ 
ارییۓ آلاح۔ 


دا کوودعا جو درکا فوث ورضا 
زوا لفقارصش فی فی قادری 
خطیب جا مع مسچ کن الا یمان جھ پرٹا دن لا ہور 
محضررت قڑا مہ وا نا ڈ اکٹ قب لکنورسلطان اص حفظہ الد تا ی 

ایک سر تقیقت ‏ ےک پردورمی ستضورحروب حا لی شہباز لا مکی غمو ث صوداٹیٰ امسی رات الا ما معمبدالتقادرا یلا ی ری الع 
کو پارگا کلت ورححت مج ںکزرولث مر سے کے ذر نلج نذا نیرت دحبت بی لکنا اب علم ومعرفت اورائل دش وافیرت کے لے رام 
داری نکی حشیت رکتا لے ء ہرز ورس اورسلی لک اورصداخب الراۓ انسا نیپ شی ابڈرعدہ کےتضورشین خیاز جھکا نےکوا بن فرش 
عبت دعقیر ت کھتنا سے ای شعارکوابناتے ہوئے ہمارے مو مال پاکل صن باصغاء عاش رسو لکربھمئپگ ادرذراےخحوث الو ری 
جنابمفتی ضیاءاحبقادری رو برظلہ نے تضورسیب وٹ انشعم رنشی از عنہ کے اجوال واقوال مہا رک ؛تحلیات مطہرہ پش ندا رکتاب 
مرتب فرمای سے کاب کے مفدد جا تک پالا ستتیعا ب فو مطالعہ نکر کا ایک نمی ںین سے ج بھی مسوٹع ا خی ہواہوں مق لیلق 
صاحب اشاءاللدصاح بتکم وق رطس ہیں سر رم وکی رت رم ہیں آپ پیل بھی متتجد کنب ورسائ لک رہن رمیفرماے ہیں ء جن میس 
ارات رش لکتاب 'صوفیا مک را مکی مھا رانہزندگی اورموجودہ انقائی نظاع'اورحد بیٹ چیین مہ شی نک ینظررمیس غمزد وت و ککا مارک 
سفرء دکی می لم اورا یما نکازدال اورجذظ امو رسالت اورچا ورام کی نظ گر میں ہ کاب اچ چک تقد دستادی کا دج رنصتی 
اوراعل شی معیار کے مطان سے حوالہ جات کے انداررج ہنخ جیا کا انا مکی عحنت اور انثا لی سےکیا امیا ےکوی پات خی رحوالہ کے 
تر فرماتے ء اورحوال گی عام سماحوال ہکییں ہوا بل ہرمستنراورعتتدحوالہ ٹین کر نا آپ کا طرہ اقیاز ہے ء پالئل ای رسکاب 
ستطاب'تضورخو انلم شی الرعن ہک مھا ران زندگی اورموجودہ انی نام بھی بعلینققی معیاریاحاگل ے ٢ا‏ ا چلال سا 
سے بی تتحصوصییت اوررام کی ذائی راۓ میس سب سے بڑااعمزاز ہہس ےک کاب ہوک رآ نے سے پھلے ای بادکا وفوحیت جاتب یس 
ا ن تو لیت حاصص لک رپچ یھی ءاور انل مولف کے ہرہرقدم پر ہر ہرآن اور ہل تضو رو ث اتمم ری اش رح ہک رکم رہیء بک مر یوں 
کہا جا ےن ہے ان ہوگا خودتضورسید اح امام براقا درا یلا لی شی ال رع نکی می سے کاب مطص مود بآلی ہے 
أز رفظ رکا بعفمت بب میس فاضل مولف نے رواب موضوحوات نےکانی عدکک اجقناب فر ما ڑے ہ اورتضورسید جن الاىام 
عحبدالقا درا لیا نی ری الندعن کیا حیات مقرسہ کے وہ اوراقی اورو کوچ ےنا بک رن ےک یھی شہغ فر مکی ےء ہما مور برلوگوں 
کی ہا ہوں سے اویل ہی رت ہیں چند موضوعات پر طاترانہنظرذر ما می ہدام کی رائۓ سے ضرور اتفاق فرمامیں کے ؛ 
نادر“وضموحوات ہہ مہؤں - ْ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


و رو انلم بی می انلم پیٹ مفتق نظ | ہیف ربنم ,ردنم منرت ہکوہ موا نی ہیل اقد ہل تی نکیا 
ن میں آبپ ریضی اول ع کا متقامء پطنینگراورنلیکاردہ مدرسہقادر یکا تارف ۰ا وط یق تر ریس :سید ناغوث انم شی قد حنرکی 
قل مات اورک ع رح اض رڈل الن کی اہمیت ۔ ىہ چن تب اور چیدہ چید ہم وضوعات ہیں جوعام روایت ے پالصنل جدا ہیں ءاورآ پکیکخصیت 
مبار کی خی اورمختوع جبتو ںکو بی لکردرہی ہیں ء ہپ رک یکتیاب ای مطتقحع ہے رظ اس 
ولا ممضتی شہاءاحرہادری رظنو یک ینعی ہبی اورروحالی جیتو کی رکا یک رای ہے ء درم بالامنداجات میس سے ج وہ خ رادان ہے 
تی سان نے جوا ش کل رکا تے ہو انان گر میٹ یر ک کاب سح اکوجد ببردور کے تقاموں اورضرورنوں سے ؟ مآ 7 
کردیاے ‏ یقیننہ با ال :ایک نی جبت نے اوراولیا مکرام ری ال ٹم کے فان ابد یکی رشن دحل سے :کس یبھ کاب کی استنادری 
حیقی تکاانداز و اس بات سے لگایاجا جا ےک فاصل مصنف ےگس درس ےک یکن بکا مددس ےکناب ترجیب دک ہے :سب سے مستند 
دمعیار یکباب دلاکھی انی ےج یس ادوس زیادہابتقرائ کنب پراٹکھدارکیاگمیا دہ ماود ی مصا در استعال سے سے ہوں ‏ قب لق 
صاحب نے جد یدک رعیارنخین اوراعلی زوی تنا مظاہززەفر مات ہو ۓ اکش رمیا دی ماغخزوں سے بی اسنتذادوفر مایا ہے چندرکتب للا حظہ 
أفراہے۔ 
تو رنو نٹ )تشم شی ارڈ رع یکتب مبارکہ: 

اسغیت القاور ۔ بفی ا لپیلالی مسر الام رار ہآ داب السل ول الطر لن ای اد جلا او اط راورائنع کےعلادہ ادا اہر پچ الاسرارء 





و رٹ ؛تنلم یی الع ہک میا را نز نرگی ادرموجودہ خانھائی نظام 


شس الذاشہ خلاصت امفاشخرہ اویں کے علادہ جد برکب سے بھی استفادہ فرمااے ء ح اعم أجغ عبرالقادرہ سلطان الاولیاء| 


براقا درا یلا ءارق جامح اج الکیلا نٰ_ 
دھا ےک ا تالی اہ عبی بک ر ال کے وسیلہجلیلہ سے قبلہسطتی صاح بکودار می نکی کامیالی خطاف مائے ہر تو رسید ا حورٹ 
نع ریت اش حعنہک ڈگا دک رمآ پ پرسا کزالی رہ ے۔ 
آممن بجاہ النبی الکریم وت 

خمادم درا وج لٰ 

ڈ اکٹ ورسلطاناھھ 

الیمزی ابیٹ پر ون رگویٹمنٹ ولا یت سان اسلامیکار مان ش ریف 
میا ریم نو تکتزم جنا بیج تین خالرصاحب 
عم وعرفا نک مٹرر 
مروف عا مد ین جناب موا امضتی ضا ءا تادری رضوی صاحب د نی علقوں میس ایک نف رمتقام رن ہیں ہم وصوف درجنول 

کنابوں کے مصنف یں مکی علقتوں میں تہ یتعزت دوقا رک نظ رسے دی چاتے ہیں رحخط نا موی رسا مت پگ کے م وضو رانک یف 
کت نہایت مرو ال ہیں جن کے مطالعہ سے ا لعحبت ردحائی خذاحاص لکر تے ہیں- 





۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 11121 71 





جناب تی ضہاء اممہادری رضو یک :از وتھزیف** تضورخوت إنلمم ریشی ارڈ رح نکی میا رانہ زن دی اورمجودہ خاقاکی نظام 
“ایک اہی شامکا رکتاب ے جوان کےکئی سا مو ںکی انف کمفنڈ کانصرہ سے ۔ میں نے ال کاب کے موضوعوات چی جھر 
د ھا میرے خیال میں مشتی صاحب ن ےمم دم رفان کےسمندرکووزے میں بن کردا ہے ۔ 

حضرت سد ناخوت امم جن عہرالتقادرا لیا می ری الد عن ایک صاح بکراصت مارگ اوراپنے وفت کے شمہورمشا رغ 
کرام میں سے جھے ہآ پ نشی الشرعنقمام مار کرام کےسلطان یں ٠‏ حد یث وفراورعلوم تاکن میں ہا یس بیطو لی ری تھے 7آ پیاد 
ای مس پیش مستغرق ربنے دانے اور تخجاب الدگوات تے ؟آپکو پیبرائند پچ کہا جا تا ہے ۰ای لے چجیدائل ولا یت وسا کان 
بقت انی كبستآ پ شی اش عنہکی ططر فک نے میں نفحسو ںک۷رتے ہیں۔ 

آپ ری اللدع نہک فرمان تھا ی شان ےک ہرد یی نکیا نی کے قدم پہ ہہوتا سے اوریش اہین صورث اصلی حضرت 
سید ن مم رسول ولگ کے قرم پہ ہوں ۔آ نا کے پھحصمردوں ن ےآ پک اخلاقی نحسومی میوں بیا نک سے عم ن ےپ ری اشرعنہ 
کی یذ یٹ سکیچی :قرب ر بای ن ے1 پکواشی الع کو اد ٹب کھایاتھاء خطا بجی یآ پکامی رتا پک گا آپ کے د لک 
تر جا نتھی ء ان سآ پ کا ندم تھاءکشادہ ڈ لی آ پکی سی مکی ء صدافت 7 پ کا ججناتھاء نآ پک پان مگ مدبارگ آپ 
کا ہنرتھاء یا دا لہ یآ پک ز ری ء بردہار یآ پک بضرتھا لک رآ پ کان ن تھا ءاورمشاہ وع نآ پک غمذ ا ےقل ب تھا۔ 

تسین الا ما اتا درا لاٹ ریشی ارشرع نکی ہہ یجہت شخھتیت ان کے وی د برکات او را نکی مار نز ن دک کو 
تج رر نے کے لت عمریں درکار ہیں م خوش قسمت ہیں جناب فی صا حزب جنہوں نے حضورفحوت امم تھی ا حۃہکی میا رانہزندگی 
نلم اشایا اورتن اداگمردیماء ال لاب کے درجنوں موضو مات ہل جوموتو ںکی طرں ہوے لئے ہیں پرصوضسورع بز ات خودایک 
مسوم ےکنا بکادرجہ رکتاے ہ بنراروں صفیات پر یل ہوئے عرپی موا دوگ کر نااور باالاستیحعاب بڑہہناءعرں زگابی سے تر جم 
کنا او کی ژکات اخ ذکرنا ان جوکھو ںکا لام سے سفق صا جب نے مہات اتحن طط ری سے انجام دیاہے۔ ٰ 

درجنو ںکاپوں کے مصنف ہو نے کے باوجودسادگی وعاجڑ کی اوراکسہاری می ر لی گجھر برا برجھی تد یی ںآ کی ور نٹ لوک 
چن رسفا تا ےکر اہۓ نام کے سا تد لی ےمنکبرانہہیوی دیٹ القا بات وخطابات لگا لئے ہیں جتس میس ا نکااصسل نا عم ہو اتا ہے ۔ 

چارجلرول شقل ان موضضوع پر مہ ناددکتاب ایک انائیلوپیٹڈ یا ےکی حیشیت اخقیارکرگئی ے اس پ رمق صاحب 
سبارک پا کے معن ہیں ادرک ےز ویش م اورزیادہ- 

پا زآلیں 


ھن خال لا ہور 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





ْ تضو رو ت )نم نی اع ہک مان نکی اورمو جددہ ما نھا کی ظام 





حضرت عڑا ریموڑا نا مت یمر میتقو ب صاح شون ری حفظہ الد 


شع لد یٹ جامعدرضوی ماڈل اون لا ہور 
بسم الله الرحمن الرحیم 

ز رفظ تاب حضورحوٹ ا مکی میا ران زندی اورموجودہ نمانفا بی زظاعم “ جوحرت صا مہم ولا بامضنی رارقا درکی رضمو یک یتصنیف 
ہےء دہ کیک وقت بدری میا ظ رہق اورخلیب لا خی بھی ہیں اس سے پیل بھی پک یکئی تصاطیف منظرعام پ کر دانسین 
اص٥‏ لکرچھی ہیں م اور کاب تضورخوٹ اط مکی ماہدانہ زادگ اورموجودہ خانظاہی نظام “جو اب منظرجام پہآرہی ہے مہاپا 
ظ1 بی ے الا م لاحب پفاضورفوٹ ض زی ارح دک حیات مارک کے برہ چب سی رحاصل بن شک ہے۔ 

ال دان سے؟ خر دن کک وپ یش ڈیہ کے کین کاز ان ہداز ماک نک ینیم ہو ام نک کرامات ہو + دو بخدائعی می پلم 
افص لکرنےکاز مانہ ہدیا پٹ شی اندعغ کا لوگو لکورشدوہدایت کےتری بک رن ےکادورہو ہآ پکافی فور یکادودإ یا آ پگ 
عبادت ور یاعضت ولیا رہ کے دن ہوں خرضیک ہز رادتقا لگنفشکوفمائی ہے ء رآ پکی او لا داعیاد ینم اٹھایاء نی زآب ب کے 
اس تئز و کت یھ لکر بیا نکیاے اورآ _ ےا لپلڑگوں یپاک لا فرست د٤ے۔‏ ٰ 
میکس جا تکاذک کرو ں1خ ریس یکہوںگ ا پک نکی ےکی پہلوکون نکی س بچھوڑاء ا سکاب کے ہہوتے ہو تے ریا 57 
کی ضردر یں رہ ےکی ءا لکنا ب کچ کر نے یں ہریت علا مامت ی شیا اتاد رش نے انچائی حنت شاقہاورکرق 
رکا ےکا ملیاےے۔ ْ ٰ 





بی مکل ے ہوتا ےا نکی دید ہر چھا 
اما ےا اعت صاحب وا لی افراے وو ۱ 
حا نر بتعوب 
نکر ٹا ون لان روڈ لا مور 


یلیٹ طتی ئا م ری صاحب دامت برا العالی الد یت جاماوییہ ہے | 
۱ ٰ 


بسم الله الرحمن الرحیم 
حصر حا می تقر کی ضبد تہ رم کی اشدضردرت سے ہگر با صلاحیت افرادتچپاون :ئٛکاسل بت نآ سا لی او رآ رام بھی کے جوگر بن گے ہیں 
آرحضرت علا مو نامضتی ضیاءاحمرقا درگی رسکی صاحب تال صدتبریک ہہ ںک کون اگکوںمصروفیات کے ہاو جودآصزیف وتا لی فکیلئ 
ھا اصاواقت مال لین ہیں :جن سکی ولیل ا نکی حال نیف حضورخوتٹ ان مکی ما پرانہزندگی اور جودہ خانظائی نظام کے 
عنوان سے ند ینشجود رآ ری ہے جک نو جلدوں بی شقل ہیں ینس میں فو امم ری اد دحنہکی حیات مبارکہ کے مل فکوشے 
ٰ درا ےی ک یئات :اخلاق عالیہہ از ودای زگ نی ان مین پ٤‏ تنا مجارت صھا تنعل قفظ رر ری 
طاش تکی تیارکیءآب سےمنقول اوعبراوراورادءآ پکا عر یقہم رٹ خانقائی ظا ءآپ کے مدرسہقادد یک ذ تی مآپ 









۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 11121 7 





تضو رٹ ؛ئم زٗی ارح کی ہداز ن ری اورموجودہ مان یظام 








کے ما کرام اودعلا مہ ہکا تلذکرہ ؛گمیارہو میں شر لی کی شری حیشیت بمفس دمورت وم ہم رداو رت امش مکی حیشیت سپ 
کا تارف ,گر اخنظار کے اسباب ؛ اورپ کے مواع ا صتہء اسلا ھی اتماداور ہیت ال مق لک رن آپ کے ارشدلا مہ ہکا د مات 
وی رہکوز یب تر ا لکیاگیاےء ین کاب بڑ کی محفت اورعرق ر بیز کی سے متظرعام ب رآ رای ہے یفن ا یئ جک ردماخول اورسسینول 
اوریھنکڑو ںکتب ور کل می پھی تنا: اضل مصنف نے بھرے ہو قے اورائ نکوسصبیٹ دیاہگو اک یپچھٹڑییوں ےئل بیکیس ای ہشن 
ناداء کاب خوشگوار ہوا کا جھوڑکا بلک ررححت خداوندکی کے خو شا بچھولو ںکا جی نکر درستہ بھی ہنفقی ری یں جار داد بکا انی سر 7 
اور وو 6 صلی و سا کا انی شا کارے۔ ٰ 
سیقلب سے دھا ہ ےک ارڈ تی ا سںکوشر فقو لیت عطافرماے ؛آ مین باد رواپ ۔ 

مفتقیر) می رنقشنری ارم الد مث 

جامعاویے رٹحوے بہاو پور 


( صڈرامظفر ٣م‏ ۲اک ۲۰۱۸) 


تو رمفک راسلا م مو[ا انز وفس مو نپ رسعیری صاحب حفظ الڈتھا ی 
تضورسی ناوت [نظمم تچ عبدالقادرا ای فدس مرکو اش تعالی نے ولا یت وروحاغییت کے جس بلندت بین مرحبہ پر فا 
فر مایا ا کا ا ظا رآپ کے ز مانے ےلیک رآ رخ کک ہردور ٹیس چوتار باء او رقیا مت کک بوتار ےگا ءآ پکا زات اٹری ڈُل ھ۶ 
قزرت الب ےکی طرف س ۓکشش رک یگئی سے در جق بھی اولیا کرام ہیں از یں ا کی مثال من نکی ہے ء ایک طرفتآپ 
زاندائی حیابت وشراف تک وج سے بے شارخ بیوں سے مال مال ےک آوردوسزٹی یر فآپ نے عنت وریاضت می کوٹ یکسرکیل 
چھوڑی ء اس رح ہب دی وی دوٹوں ط رح کے ہے پہاخزافوں سے “مود سے ؛ پیج ہہ ےک یکو بھی ز مانرآپ ک ےن 
گانے دالوں سے نا نیس ر باء ال سشت اورائل ولا بی تکا ال پر اتفاقی ےآ پآ رح بھی لو ری قات کے سا تد نیا جھ میں تصرف 
ْ ہیں ءا بل دتحا لی ادراس کے رسو لیگ کی اک بارگا ہوں سے عطا سے ہو ئے اخختی را تکوا ستعا لی فر مات ٹیس وش رق دنر بآ پ کے 
زین ہیں پکپاعحھ تم امو رگگویفیہ یل روال دوال ہےء جملہاولیاءکرامآپ سک عتا نع اد رآ پکیا ہا اتا کے پابنلد ہیں 
ححضرت صا موا نامضتی ضیاءاحمرادری رقموی بنلرامعالمی ان خوش تعیب لوکوں میں سے ہیں مج نیس براہ رات سی نا حورث 
انلم ری ادل دح نکی بارگاہ سے موسوعالی طرز برا نکی مل سوا اور جا عکمالا تن ر کر نے کے لن متخ بکریامیا ہے ء اکا 
لئے عال خیب ےآ پ کے لے ہرط رح کے اسسا بکاا ضا خودہنو دہوتا چلاگیا- 
دھا سے ال"دتعاپی ا نکی مساگی جیلہکوابتی بارگاہ مس شرف تو لیت عطافر ما اورٹی از ٹیش ظا ہریی دباشن یکا میا ہیوں سے 
واڑے۔ 
آمین ٹم آمین بجاہ النبی الامین ىہ 
ہر سیری ہارپور 





۷۷۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 6 01712173 |6 ٥(7 ۔‎ 





وت اسلائیخض رر تعلامےخوڑا ہوہحضص وری رشسوی ضفظہ اتا لی 
نحمدہ ونصلی علی رسولە الکریم امابعد: 
بنارہ نا نز نے حرت علامہموڑ ناصفتقی ضیاءاحرقادری رضو یک یکتاب'' تضورقورث مض مکی مھ ہرازہ زندکی اورموجودہ خانقای 
نام“ کی زیار تک اورخنلفمقامات سے مطالعہکیاء د لکو بڑالمنان اورسکون ماک ائھنددل رآ رج بھی اس پفشتن دور ٹیس ال لیعلم اورد بن 
کادردر کن وانے اور پاعضل مراہب سے وابست افراد کے اعترا اضات کے جوابات دنین دا لے موجود ہیں ۔ال سکاب می النالوگوں کے 
بھی دریس ہے جنجوین نے حضرت سینا الا ما عبدالقادرا لویلاٹی ری الد ح کی حیات مبا رک وصر فٹگیار ہو بش یی فک عدک 
محر ودکرد یا تھاء یآ پ ری اع نہک حیات لو رکا ایک ایک پپہلد ہمارے لے مل راو ےکآ پ رنشی ای دنہ نے اس نمافقاچی نظا مک 
دی نیس بلنعدی کے لئے کس استعال مایا ہمارا سو جودہ خانقائی ظا ماس ےکیں ہٹکرے۔ ٠<.‏ 
اگ رآرج بھی ہپ ححضرت ام الا ما محب الا زا یلا لی شی ابشدعح کی حیات مبارککوششعلن راہ ہناش نو ہمارے موانشرے ۔سے 
ہراات ء برعقیدگی ط7 او رگنا ہو ںکی 1 لودی شت ہیں ہے ء اوراس سے یں ضیح ضف فا نکی تا مت راہ ہ نمی نے 
جنہوں نے حعفرت اع الا ما مع دالمقا درا اتی رشکی ا حنہکی حا ت مہا کہ برای اش لم انٹھایاکرمیر ینگ یس1 رج جک حطرت اخ نشی الد 
ع نکی حیات مپارک پرا نمیا چا مع اور پرائ کاب لک زریا۔ ۱ 
دھا ۔ ےک الد تھا یمھتقی صاح بک ا کاو کو انی اک اور بلند ہارگا ال جا تول عطافرائے اوراسے ذر نضیات بنائے 
اورکوام انام سکو پل علا وکرامماو وص مشار عظام کے تنا بک رل2 ۔ 
اوال لی حافظاحطبظ ال ن قادری رضوی 
خطیب جائع مس رمک ای لا ہور 


قبلہ روف سر ڈ اک برا قادری صاحب 


سائئی صررشع ساسا بت جامتگ رای 
مفتی ضیاء اج ہقادری رضوی یک یکتاب* تضورخحوت ا کی مدان زندکی اورموجودہ خاقابی نظاء' کاخ اکہز ملظ کراب اہیے 
وت کی ایک ہی نکائش ہے ا سکتا بکامطال ا گیا اوردھروں یا اصلاح کے _ل ےکی جاے وا یمکزششوں میں اخچاکی مددگارثابت 
ہوگا ءا سکاب می ںتضورفحوٹ امم شی ارح کی زن دی ک ےنت اے پابلوزس بکنث لا ئۓ گے ہیں جو دک رکب کے مطا لے سے سا سے 
آ تھی ںآ ءاردوزپان ملک شش تضورخحوٹ مم رش ارشرعنہ می جانے وا کنابوں میں ایک مہتر مین اضازرے عص رما ضرم لصیف 
وا لیف اجکی مشکل تین مرعلہ ہے کی وقلہ پرایک سگھرمواش ٹیس الیھا بھواےء پر صل ضر زمواوکی دستیا لی ایک بببت مڑامسلہ 
ے٠‏ ہف ضیاء اج ادری رضمودی مبا رکہاد کے فی ہیں پک رانپوں نے خھام مسرائل سے ہے نیاز ہوک راس م وضو پرلکم انٹھایا ہے“ می ناپ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





تضورحوٹ امشمم اوخ لا ماس بد الا درا یی شی اش رحنہ کے اڈکارکی ردشنی میں ایک رین محاش رہکی کیل میں اہ کردا راداک رسکی ےہ 
ا لکماب کے مطا لجع سے ین قارکی اکن یل بہت سار ےسوالات پارا ہو گے مج٘ سکاجواب ا یناب م لی پلنبل جاہے 
گاءا سکاب می عقیدواورمتقیرت دوڈول موجود ہیں ءال سکتاب کے مطا لح سےتضورخمو رٹ اتلم ری ارڈ رحن ہک یشحخصی کا جونفسورز ہن 
یآ نا ہے ا لکاسبراکتاب کے مصنف کےس رہےء یکنا بتنقین او بیشن دوٹوں کے لئے یقن ا یک مت رین رما ہے ۔ 
ٰ 7 سر ال رگہراررقادری 
ساہنی صدرشعصبسیاسیات: جام کرای ٰ 
ڑے ا اک ر۳۰۱۸ء) ٰ ٰ 


شی ر را حظرت چرس تح خرم ریا شا صا حب حفظہ انڈدتما ی ٰ 

اداقے دی نکولکا را زشمنان اسلامکو با نہ رسول الگ ےکستاخو ںکو اک می ما ناف کرو کو مار ھا سس 

عخفری تکاس چنا رک خی راونا رکفو کنا ال رکال ریہ ہے ؛اولیا ےکا نکامشن اورعالا د بای کا مشرب ہے۔ ُ 

حعفرت امام پئعلم ابوعنیز ریشی ارح کی بمالی افرو زشخصبیت ہو یا افو امم اش الا ا عمبدانقادرا لجیلاٹی نشی ارشرعدک 

جلا لآف رین یرت ءداتا کن نل ریمتۃ اتی عل کی تق فمائی ہو بیترت بہاءاللد نزک یامطتالی رس ال تھا لی علیہک ز ببائی دخوابڑتان 

الد من چچش امیری بی ریت ارتا لی علی کا نکٹنغ ہو یاامام اتمدرضا مان رت اڈ تھا ی علیہ کےنی مکی اٹ سب نے دجن تی نکی نرت 

أاورائل اسسلا مکی اعاشت دجحا یت فر بائی ۔ ہردورابتلاء می او دوالوں نےکر بل +والو کو پچ تھاماەر ور چہا سسسہت 
کاپنا مدیا۔ 








یگ پٹ صلی را ہرز ماع آڑغیب جااے دنر 
اولیاءگرام اورصوفیا رعظا مکاراوعز بہت پ4 چلنادی نت کی تا تد کے لئ سی نیپ رر ہناعمزت ونا میں زی --- 
یکن دارنا مب کن ال د+وتاے-۔ 
الں ‏ فداک . (زررت یک شعلہ وگر برژزن عشتا 
موراتن لکن صن سب پچھ وک دیا بی جا ن مگ پیارے جلا جانا 


سوفیاءکرام بی جرات وہسالت تقیقت سلوک اورم رف تکا پید دیق ہے اورقر مال رسول اںڈپلگ س ےھ اس عزم دجذ بکا 


تا حر ہولی ہے چنا ححضرتسیدنا سان بن شا بت شی ارڈ رحنہ کے ای عم دخ اورجوشی و اکوسر اہج ہو ئۓ رسول ادڈ لگ نے فرمایا: 
ان روح القدس لایزال یوید س وی پر ہے ْ 
رم ٰ 
اےحمان ! حخرت روں القدر علیہ السلام پیش تیر دوش گار چے ہی ں کین راد تعالی ادرای سے رر پل سے 
ڑشمنوں کے سا تح متا بلک رتار بت ے_ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹ 6 1 77 





تضورڈوٹ )عم ری رع کی عیاہرا ہز نکی ادروجودہ ای نظام 
معلوم ہوک بچاہرا شکرداربی اد ین می نکا تٹیتی شعارے, چہاددی اسلام اورائل اسلام کے _للئ معبو طے حصار ہے ئن دسناں سے 
تی بنلدہ مک نکاعز وقار ہے ۔ ای لئے مرکا رخوث نشم ری وڈ عنہ کے نا ح بکرم اورتضرت امام تنم ا وعذیفہ شی اٹ رح ہکا ہمت 
واہتتا کے اشن ایی صحضرت امام ات رضا نان رحمت اڈ تنالی علی شمنا ناد نکوللکار تے ہو ئے ارشادف مات ہیں : 
کلک رضا ےج رخوففوار برق ہار اعدام سس ےکم دوخ رمنا یں ن شر مس 
صوفیا کرام کے س رتا رن ءاولیاے عنام کے بادشاہ ہس رکا رحوث پک بش ننشاہ دای ارح ہکی حیات مہا رک شش شال مز بت 
رد جہاداورقی پیفربان ہو ےکا جن لی وجرالکرال مو جودہے ہبی وجر ےک۔امام اتد رضاخان رحمتت ال تی علیہ لے آپ کے نا تپ 


شم یکا ہیالن تبردستاںل اورک دی کی ز بان ین یکیاے۔ 





اجوپ ارشادفر ماباے : ۱ ْ 
۱ الاماٛ قرے اےمحوث وہ مییکھا تما مرکے بھی بین سے سوتاکھیں مارا تا 
پادلں سےکمہیں رک ےکایکئی بی ڈالس پچھنٹ جال یں اٹھتاے جو تنا ترا 
ححس کا دک کے منہ اورک رجا جا سے ار آئینہ سے مل انیٹ نمزاجرا 
کو وس رھ ہوٹھ اک وار یل دوپ کا نے اج پڑتاہی گجھیں ول کے او ھا تر 


رت نحورٹ ام شی یشک میاہرا نز ندگی کےجانے سے ذاش فصن منرت مولا: اضق ضہاءامرقادری رضوی ز یزعال 
کا تمددجلروں گرڈ شٹقی او ڑھ یکا ممہابیتحسیی ن کات ہے ہپ نے بڑیامجا انی او گہرے مطالعہ کے سرا تا خفلم موضوع لم 
انٹھایاے اورعلا رام او رین کے لئ ما گل اختای مواوفراہ مکیاءآپ نے م وضو بیکرت ہو ے سیا وٹ لنعم ری اڈ عنہ 
یی منوروتاہاں زندگی نے خوب فرب ضیائ اضعلل کل نر ایاپ کی فصل ممعضبو ما تا ہیں علماء ک ےکتب خانوں ز ببنت اورحل کی می 
کا وقار ہڑھانے ےکا جج راو رسامان یں 
ارہ تھالی ا محیو کر ےی ل1 کاٹسا ول ما افراے ٹین ہیا الخی الا حنللله 
ففنائجرترم شا رض وی ار القادرگ (ا ہور 


فناصلپو جوان موا نا شمشہر با ررضسویحفظلہ اتا ی 
الحمدلله رب لعالمین والصلوۃ والسلام علی سیدی خاتم النہیین وعلی آلە واصحابه الطاھرین وعلی 
ابنه غوث العالمین 
و نشم اي رای انی جلو,شا ناثئدرت لاھولسلام 
سورس نائحوت ری اد عنرقطب الا قطاب ؛فرادالاف راد رالاس رارق الا ولیاء عا لم ر بای فو بیذ دای شبباز لامکای :وٹ 
الکونین امام الف لتق نحبوب سیر اک و نین پاش راد لی ال فضی ری ارشرعنہس رجش فیضان ش ربعت وط ر نت وٹ الافواٹ ۰حضرت میرال 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


ےپ 





(_ 8ع ۱ 


گی الد بن اش عمبدالقادراسنی وا یی الال ری ارعن ہک ذات دالاصفات رت خداوندکیا کے شاکاروں یس ایک شی شمان کے 

ایک ہیں :اویل نے اہین عبدالقادرکو ایی فد رت نماہتایاکہ ہمارے امام الشاہ ار رضاخمان فاضل پر یلدگی رم الد تعالی علیہ وں 

گو یا ہو ۓے ۱ ٰ 

ارہ آقادرکا قظادریی ےگ برالظادر ربا فن پک ہے طاہریھی سےعبدالظادر ْ 

اش تھالی ن ےآ پپکوابسی خوارق عادا تفم حات عطافر مائی ہی ںکاولیا ا ءکرام یں ایافق ات نی او ری نشی سک تیں ای وج 

سے ےکہ گیا ےکہآپ سے اتا زباد ورام تکاظپور ہوا جس طرح سج کا داشٹاٹ جائے ٹو جس رفمار کے سا تج دانے ز مین پآ ل2 
میگھتیز رفآ ری کے سا تھآپ سس ےکرزاما کا ظکہورہوتا سے۔ 

ضور نی رحمت تا جدائرشتم وت امام الاخمیاء عجبی بکبر پلله کےآپ اخچاکی دمح زببزفرزن ہیل ںکآپ ری اشعدک 
رززرت ے172 لآ ا کیپ ن ےآپ کے والد ی نکو شارت سے سرفرازفر ایاء روش بھوئح عنام تکیا دہ ہاانش نر مال یک ابچ رر خور 

عبات انیا مکزا میم السلام میس ا وکا متام رککتے یں دن ایا رکر کم الام کے تا جدارکبلاتے ہیں اہیۓے شقات 
ایا رید اکیہسب نے انھاقی کے سا تاس جا تکےسلی مکی کہ ٰ ٰ 

ححوٹ اعم درمیان اولیا جچوں تر درمیان انیاء 

صضورنخحوٹ اعم ری ا رحنہکی مباِک ذا تک جا حکماما تن خصیت ہونے کے پاو جورآ سد بت 
بے عدعحبت ہد تے ہد ےھ یا می ںآ پکیاحیات کے پچہلوکوں ےآ شنال یکییں ےب یپ کےئ تارف ےجرد مکرد گیا ای وج 
ےآ ئن بد مہب اور بے د بین طبقہ ن ےآ پکواپٹی طرف نچ اپفارونماءب اکر ٹین کر ناش ور غحکردیاے :2 دوسری طرف روانأ بھی اس 
بات کے ھگا ہی ںآ پ ہارے یں +اکی رع دن بد مرج ب بھی اسی طرع کی ئیع دشا مکش کرت رہ ہی ںک کی رح میثابت 
کیاجان ۓکآ پ کال ہار ےلظریات سے ہہ بہرحال ان ےد ول پکیاردناا نول فو اس با تکار ےک ین اہ لآ پ دیشی اللہ 
کان کےکھا تے میں ڈا لے مھ ہیں حلاککان ٹیم اورنا راد الو ںکفوٹ تنم شی او رعنہ کے معقا کدف ریات سے ذ وک رچھی 
آگای ہیں ے۔ 

ا کے علاوہ٦‏ پ شعن کات جو لہ میں پ1 ے وا لی شتقتتیں بعلیم لم میں شو ق1 پ ریش الٹدع شک اسفار 
کی انخرائ ہپ دشی الندعنہ کے اساتجزہ اورمشا رح کانتارف :اور چو خلفاء اورم ریہ مین ومت وی۲ نکا جن نرہ اور دج رکئی اہم مضمائشین اس 
تاب می ںآ پ عفرا تکویعس رآ میں گےء ان مضما شی نکاانداز وفہرست سے ےبھی لگا یا چاسکتا ہہ الف رض بہت بی متتفداورا پیر زکی اردد 
۲ نف یکاؤش ہے نس سےتضورخحوت ری اوڈر نہ کےگینتخیس ومستتقی ہو کے رکا بکانام ای ا کی ض رورت اور اجکی تکو 
اچاگ رکرجاے تضورتحوث شی اڈ رع ہک مھاہرانہزندگی اورموجوہ خانقا ی نظا عٴ “ 

نقیر وش مک ایک خلصا رکز راش نا مہ ہے جویھی ا سکنا بکود کے پاٹ ھے نو دٗگراے احبا بکوائ کاب 09۶ 








ےآ گا ءکھرے ) اور ںکوکتاب پٹ ھن خیب دےء بل می رانذخیالی ےک قمام ابل سنت وجراععت کے عوام وخوا کو ال سکاب 


۱۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 6 107211 71 





و رٹ انل شی ارل رع نکی مبابرانزندگی اورمو جودومانقا دی نظم 


شس شا 





کا مطال کر نا ہت ضردرگی ے اوران امور پل پبرا ہو ن ےکی اش درضرورت ہے ٠‏ 
اتا لی زاضل مصن فکود من ددنیااورآخرت میس بے عدوضماب اہ نل وکرم سےند از ےآ تواتے دو عا لی ھکی عوسی 
گا کرام نھب پواورس رکا رو !ضحم ری ارڈ عنہ کے دردول کا خماصس فضان عطافر مائۓ ۔ 
قش رشب باررضوی اخ القادری 


استزا رالازا ۔عطضرت عڑا موا نا نو رشبد اس سی صاحب حفظہ اد تا ی 
بسم الله الرحمن الرحیم 

الحمدللہ ‏ وکفیٰ والضلوۃ والسلام علی حبیبه المجتبی وعلی آله وصحبە نجوم الاھتداء وعلی التابعین 
وتبعھم والمجتھدین ومقلدیھم والمجددین ومحبیھم الی یوم الجزاء والامام الاعظم والغفوث الاعظم 
والمجددالاعظم الامام احمدر ضاجزاھم الله تعالٰی عناوعن جمیع اھل السنة والجماعة خیرالجزاء . 
امابعد 

ال تال سأخل وکرم وررسول الہپ گل اەرصت نے ےلیم راب تضو وٹ نل ری ارح کی میا راضہ زندگی اورمو جودہ 
زانؾای نام“ جوکہ فاضل نو جوان وال یل من ظ الام متاز الم ومن ال سنت و ماع تکاپچکادمکتاستارہ علا مہ موم نا تی ضیاء 
اح رتظادرکی رضم دی حفظہ الد الحفیظ نے سرکارفحوث اک یی اڈ حنہ کے عالا تکااحاطکیاے :یچس میں ہر جا بکامنفردانداز ہے ءالڈثحا ی 
کی باگا :میں عو ےکا سکتا بکوقبول خا عفر مائۓ ؛اورعلا مہ صاحت کو جزام یل عطافرمائے ؛ اور ال تھا ی زور لصبہب پر ماے 
0 0 اے۔ 

او 
ار" خورشیرا حم تق لووطراں 


صضورقبل یرس رظفریگی شا و صاح ب مب ردئی حفظہ اتا ی 


سض ار یف جا موگربییگوشیہہ ری یلووۓعرال 
بسم الله الرحمن الرحیم 
الحمدلله الدی خلق القلم والصلوۃ والسلام علی سیدنامحمدالذی ‏ زکی بنی آدم وعلم وعلی آلە ذوی 
المجدوالکرم واصحابه الذین ھم لھدی النجم . 
امابعد : ۱ 
فمد طالعت الکتاب البسیط ”حضور غوث اعظم کی مجاھداله زندگی اورموجودہ خانقاھی نظام 
“نجماً نجما للعلامة المفتی ضیاء احمدالقادری الرضوی وجدته نافعاللعلماء والزھاد وسائر الناس . 


( ملرار,ل ) 





۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹69100217 7 





فجزاہ الله جزاء خیراً . 


سید ظفرعلی مھروی غفرله 
الجامعةلغوثیة لودھراں 


ایخ ال رکز یمر ٹر ری ات تخت 
فظہ ا تھا الترکی 


الحمدللہ الدذی وفق عبادہ المخلصین لتوحیدہ رحسن عبادته والصلوۃ والسلام علی امام اھل الحق 
سید الانبیاء والمرسلین وقدوۃ الھداۃ المصلحین. وعلی آلہ الاطھار واصحابہ الاخیارالذین ترسموا 
خطاہ وامتدوا بھداہ ءومن تبعھم باحسان الی یوم الدین وبعد: 
فان الصراع بیین الحق والباطل قدیم ء ومظاھرہ کثیرۃ ءوملاحمہ متواصله دائمة ء لقدبداء منذ 
عصی ابلیس ربە فابی السجود لآدم ابی البشر وحرج بمکیدته ووسوستہ من الجنة ءثم ھبط بفعلته 
الی الارض . 
وکان الشیخ عبدالقادرالجیلانی رضی الله عنه یحارب الفرق الضالة فی دروسە.وکان یقول فی دروسهہ 
یااعداء الله ورسولہ ! کم تنافقون الملوک والسلاطین حتی تاخذوا منھم خطام الدنیاوشھواتھاولذاتھاء 
انغم واکٹرالملوک فی ھهذاالزمن ظلمة وخونة فی مال الله عزوجل فی عبادہ ء اللھم اکسرشوکة 
المنافقین واخذلھم او تب علیھم ء واقمع الظلمة وطھرالارض منھم او اصلحھم آمین. ۱ 
القد امضی الشیخ الامام عبدالقادرالجیلانی رضی الله عنه حیاته کلھافی مجاهدة نفسه اولا ء ٹم فی 
مجاھدة العصاة والضالین والفاسقین والکفار بالنصح والارشاد والامربالمعروف والنھی عن المنکر. 
والکتاب الذی ہین ایدینا”دلیل الکاملین فی سیرۃ امام الجاعدین “من تصنیف الا خ الفاضل فضلیة 
الشیخ ضیاء ہحمدالقادری الرضوی .طالعت ھذالکتاب واقول : فان لە ولامثاله فی انتصازھم للحق 
ودفاعھم عنه اجرالمجاھدین المدافعین عن الحرمات المحیین لمااندٹر من فضائل وقیم ء ء والناشرین فی 
لامة ماضیعت من سنن بارک الله بە وہجھودہ وجعل فی النفع العمیم اله افضل مسٹول واگرم مامول . 
وآخردعواناان الحمدلله رب العالمین .- 

الفقیرمحمدبشیر بن محمدشریف 

من بلدة عرفة التر کیة 

محرم الحرام ۰ ۲۰۱۸/۱۳۴۲۳۲) 

ٹف :ا سکتا بکاعرلی نام ولیمل اکیاملین فی سبرة امام لمجا بین سے 





رف 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 11 7211 7 





تضوروٹ انم 
گا را سا ف اتی اسلف موڑ نا مغتق یلیم المر می نفتشمنری صاحب 
لی اکا نشی ر نے پپل گی میککھا ےکا لکتاب کےمھرک اول حعفرت قبل ملق یعلہم الد بین صاح ۔قشمندی حفظہ الڈد ہیں ء 
یں عم پرفقیرنے کت رانا بامناشرو کا تحضر تمفقی صاحب نے بہت زیادہ دعان٠ی‏ سکیس ؛آپ ا ل_قیر پہ بہت زیادو شغققت 
فرماتے ہیں ءا کاب تضورنحوٹ انم رشی اح کی مھاہرانہ زن دکی اورموجودہ خافقا ھی نظا ما مسودونقیر نے پرست موم نار یاضض 
ایاگ طط ال روا ملق صاحب ٹرنے بے حدٹی کا ھارفراباادر ری فا اکرال کا بکا اہ خٹفرعر سے میں پا یتیل 
کو پپچنا تضو نمو :امش ری شعن یکر امت ہے ءاورصاح بکتاب پ عضو رو ٹ )عم ری ان رع ہکی نماص ڈگ ءکرم ہے ۔مخحتی صاحب 
قلدنے اپنے پان سس ےکتَاپن کے للع یھ یی ےچھ یگچنواے اودفر ما یاکینقیر کے پاس اگراس کے علادوکھی ہے ہد تے فیس ووبھی وتےۓ 
رچ اور سا یسلت صاحب نے نق رب کی خواہ کا ظہارفر مایا پھدہی ونوں کے بد ححضرتہمحتی صاح بکی علالت 2 
یکا م تو کا ال تھا کی بارکا و میں رٹ ہ ےکی ولا تھا یآ پکوجل یح تکامطرعطا فر ما ۓ - 
آمین بجاہ النبی الامین ا انت 


رت علا مہ ولا ناسا یں خلا م مین شاەصاح بآ متا عال یت رشریف سرد 


یی اح نک مواہرازرز نکی اورمو جودہ ای نظام 





موا ال ایشرصاحب جو تعضرت سای فلا مس شا: لاج ا ظ رید خائس ہیں مسو ند شریف می انہوں نے ےپآ 


تا اکہتحخرت چیرصاحب مد بیدمنودہ میں بی حاضر ہیں و بس نے عرت لک یک ہار آپ سے طلا جات ہولی چا نے ء اس ط رح ا نکیا ر نشی 
گا پر یچچ تھوڑىی دم مضرت شاہ صاحب حفظہ اٹ سے ملا قات ہہوئی ء جب موا الیل الشدصاحب ن کاب پیرصاح بکودکھا یل 
پیرصاحب بہت زیادو خوش ہد اورفرمایا: رہن بہت بط اکامم ہے ء اورمضھتی یا ءا ادرک پر اتال یک خائ کم ہے اور ہز رگو ںک نگاہ 
عنایت ہے ۔ رف مانے کے بح تقر کے مات ےکوشاۃقبلہ نے جو ماء ام میس مول باعل ارڈ نے حر کی تضورامغق صاحب کے لئے 
دعاچھ یکرد میں ہن شاو صاحب قبلہ نے فرما کان کے لے دوارسول ادڈیپلل کے موا بش ریف پر حاض ہوک مکر تچ ہیں ء اس فور گاڑی 
یل ےکا حکم ہواء بہت سے مر بل ی ن بھی سا تح ہو یی ؛ نی رکواوراس کے چندساتھییو ںکوچھ گا نڑلیوں پرسوا رک رلیاء پچ جم سیب زسول الہ 
فی کی بارگاہ بس یناد رہچھردہاں شاو صا حبقبلدنے دعاکی۔ 


لپ مم پینررحمتت اڈ لٹا کی علیہ کےآ ستاشہ پہ ْ 


حضرت الا مہم وا نا ابوا لام ادری رضمدی حضظہ انڈد تما یکی رما ی یس تعضرت فطب دی موا ناضیاءالد بن ال تادری 


رضوی رتمت اتا لی علیہ ےشن ارے موم پانل الکن انصاریی رحمنۃ الڈ تھا لی علی کےگھرے حاضری ہوک ء جہاں ‏ یحفل ذکرش ریف ہهوئی ء 
شس بیس بہت س عم رب ال عحبت نے شرکم تکی ء پیعف ل ریف چمعۃ ال ار ککو بعد ما زعصرمضحق موی ہے جج سکی صدارتتضورضیاء 
, الد مین اج مد ی تادری رشوی رم دنا ی علیہ کے پرتے موا ناڈ اکٹ مجر رضموان صاحب حفظہ انتا ی فر ماتے ہیں انتا ءکفل 4 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 810111717 





ول نا ابوالقاسم حفظہ ایند نے ڈاکٹرصاحب ےق رکا تار فک۷روایا او رکب کے تع بھی تا بیاء ج بنقی رن کاب جیی سکیا انہوں نے 
تما بکومتعددمقا بات ےد بیکھا اور ہت خوش ہوئۓ اور بہتکی دعاؤں ےو ازا_ 
مفتی ضیاء ا قادری رض وی حفظہ اد کنب پ ماہاضرضا نے صلی کاتصرہ 
یف عوءا ا دی رضوی یک یکب ایک ظ ریس 
مت شاءاحقادری موی دورحاضر ک ےکی راقتصماغیف مصنف ومولف ہیں موضوعا تکاتتورح ء با حوالہ دلال اوراشعار کے 
یل استحمالل نے ا نک یکتب یل جاذ ہییت اوررگشی پر اکیردںی ے۔ 
انکیٹ مکتب اورسائک لیکاصرس کی مز ولا تظیغ رما میں : 
صوفیا رک رام مکی میا رانہز نکی اورمو جودہ خمانقاہی نظام 
بد ونیم جلدوں سارک جتیاممی دتفتق ماب ہے جلزاول ۹۸ے اورجلردوم ٭٭ ۸صفیات رشقل ہے جلراول ٹیل 
ا نوابواب ہیں اوران ابوا کی مگ ےگئی فصلییں ہیں ہر جلدتقوف کے انچائی معلو اتی مض مین م تل ہے مصدفیا کرام کے ع قد 
سعصولات بس رحاصل پچ ٹک یگئی ے ء ارات اولیا وک رامک چچومناء صا حب عزار سے سوا لکنا عرار کے پاس دع اکنا جو یذ رد 
کے تتحل پیم اورمی کول نکرنا او رکچ پڑ ھن یئ مسا لکانتقیری او رشتنقی جائز ولف اہداب میس یی لک یا یا سے ۔ 
للا دوس ری جلد :جار جج ابواب مشقل ے ,ہن نکی سج ےک یک ٹسلییں ہوں ملف جیدصویا ءکرام اورعلاء کے ماہرانہ 
کارناے میان یئ یئ یں ء رونوں جار مس شی معلومات اورو لیکوگر ماد ہے واے واعات ۔ے سر ہیں ہضق ضام ام رتادری 
رو یکی محنت مال پر رے۔ 


می توق نکر نا او ریچ رڑ ھن اکییسا ؟ 
اڈ ایس “فیا تکارسالہ مور فی مکتاب سے ما خوز ہے مصو فیا وک را مکی مھا ران زمدگی اورموجودہ مانقا ہی نظ می 
جللداو لکا جا ب عم مب تک تی نکر نا یسا ے؟ اورجلدراو لکا پا ب تشخ تک پڑ ہن اکسا ہے؟ ان دتوں موضسوعا ت کی اپ 
یڑ لنظران روٹوں اہوا بکوعأبثعد ہ رسال کی صورت یل شا لح نے 


بارگاہ نہوی اپ 1 رف م کر کے وعا اکر نکیا ؟ 
بای “فا تکارسالجھی کو رشن مکتناب صوفیا مکرا مکی ماپ رانہ زندگی اورموجودہ خانقای نظا مکی جلداول کے ہاب 
ششھم سے ماخوز ہے چوک اخچاگی معلو ماتی ہے اور تل کی اہمیت کے یی نظ را سکوکلیحد و شا کی مکیا سے 





۱ ) جلراول . 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 






سی لم اورابیما نکازوال 


می ضیاءاحدہقادری موی صاحب نے اس معلوماتی سناب میں دیجیچ غ رکا تار فکروایاسے اور نکی شری 


أخرابیو ںکوعلا کرام کے دی جا تکی رش شس میا نکیاے ہا دیقسوب کے موضوع پی پٹ اگ ےء ایق وآ 


رسمالت کےم رکب افرا کے تلق شیع مکود لان کی رڑشفی یس جیا نکیا سے - 


متتاخوں کے خلاف رسول اوڈ لن سک ار :فنص 


بی سط وس فیا تکارسالہ ے' دیج لم اورایما نکازوال سے ما خوڈ ےل ین ین رسالم کی مزا کےگیارہ داتعات احادمٹ 
ش ری کی رشکی میس مان سی سے بین ۔ 


.ای اصحضرت کے ند یرد وا بات 
یبن اصی ححضرت رحمی اد تتالی علیہ کے حالات نز دگی اورالن دا عات اورروابا تکاتجلان وق لکرس ے جومولف 
ک ےکی رمطال کا حاصل ے+ق] دی رو حیات ای نعفرت رح ال تی علیہ ءرساائل ایی نضرت اوران کے تل پک یکئی درجنوں | 
کب ہے اخ سے گے داقتعا تکوا یک بین ول کٹڑیی میں پرودیا گیا ہے بعر بکی حنت قا ٹل دارے_ 


سککو ٹا یا ی وم الا لوا لگیاا لی 

مفتی ضیاء احمرادری رض وی صاحب نے ال سن مکتناب میس حضرت سید نات ال ما معحبدالقادرا لمیلالٰیٰ ری الڈعنہ 
ا ےجو رتژرا مرحتقیرت جی لںکیاے :آپ ری الڈرعٹ ے۷٦٦‏ مواعنز وخطبات ؿب0 ٹس الا ی کے نام ۔ے 
کر کے شائ ۔ک ارات اب لعل تضورنحوت ائنشم شی ارح کی معلیست دبا ریک بئی کے ویر ردان ہو ہے ء ان واعظ وشطبات | 
کی اعادبی کی ت جم وشن ایز عکومفتی صاحب نے مکوت ا بیلاپی کے نام سے مع کیاہے اوزآخر میس ححضررتں 
سیدن عبدالرز اق ا یلا نی شی ایشرع کی مج کر دو' الا ربحون الکیاا لی“ کوبھی ت جم وشن وخ جک کے سا تشم کرد ہا سے _ 
اس ک یگل فا ت۲۴ ہر 5 ْ 

ازا نقاز 

ساب فعت مر میں مفردے ملف تلف ۳٣۰‏ موتوحعات پراحادبیث مہا رک کے کر ے بودئے چواہریا ارےا کین وقیل 
لڑی میس پرودیے گے ہیں ء خطباء دواحطظین اوردرس عحدبیث دسیے وا نے رات کے لئ ایک اشمول نز انہ ے ‏ مضردموضوعات پر 
بت مین مواد سے ابینے خطبا تکو یا گار بنامسکتے ہیں ۔ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81101171 





محوضراراورااس کے نمازی - 


بی رسالیحتی صاح بک انچائی ضفتق یکاوش' اذا ن ھا سے ماخوذ ےءائ نکی ایت کے پیش سد و رسا کیپشکل میں شا 
کرد یاگیاےء بی رسالہمنافقن کے عقامدوفظریا تک نقا ب کال یکرتا ہے۔ 


ڑا نا میں رسا لت اورما لور 
بیمفیدرسال تھی“ اذ ان تما زے ماخوذ ہے اوراس یل مر یداضانے کے گے ہیں ء نا موی رسالمتعاپشگ کے لے ضیدا زار تکی 
تقر پاغوں کے وا ا تکو پٹ کی عم رق ربز کیا سے یگ اک یامیاہے۔ 


ینم تی نکیظررمیس 
یف پل می ان د تع کرک دی ےرا ری شر انل 
تہ یب دشخافت نے انی ط رح روشنااس ہوک ایی دوسرکی تہف یبن اذرشجافت اورز پان کے حائل میک می ںیلم حاص لک یل حد بیٹ جن 
کاعلماء ومفس رن اوریمح رشن کے اتوا لی ری ٹس ہیمفہوم وا کیا ےک زاس ےلم رین حاص لکرنے کے لن سی راو کاپ 
پا مرا ہے :اود دا کیا ےک حدیث بن کال وس پک گی اک انس اوٹسرانوں پا کے اشثرات 
رکا تفبیقت مدان جا مز ہ ہیی لںکیا ہے_۔ 


شع الب ررعلیا ٰ ××( 
ملا دا فی کے موضسوع پرایک اٹچھی تالیف ے اورسیرت الیگ کےمحنل فعنوا زار ت نات مک کے خوبصور تا نداز ۴یس نچی 
7 28060 اکر پاپ ایما نکیا جان ہے اورمولفٹف نے بد رے نیشن اندراز یس سیق 


قاے۔ے 


۱ ثت٠-.-‏ میا .سی رال یناپ 


بی میا دشریف کے موضوع برعر می مضا می ن کا ایس تھ ہے جیدعل را ماورصوفیاوعظام ک ےصق دذستی س ےبھ رو داندازبیان 
ہدامتاشکن ہے ءان مضا ش۴ نکا مطالل ہی کگہرااشمچھوڑتا ہے۔ 


کیامیلا داورکٴس ایک ہإں؟ 
اس رسالہیش مستلتحشبہکواحاد یث ریف اوراقو ال فقہامءکی رشن بی واس جکیاے ‏ ملا داد 7ھ 
وا عکیاے۔ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


)(ژ[ 4رِ)]) 








بی چہاد کے وضصورع پرایک معلو مال ی کاب ہے نز وتہور کی رشن میں مسلرانوں اورم نا شقن کے ہاو یل فر یکوو ا کیا ےب 
2با ہام رضاۓ فی رمضان الم ہار شوال ام زم ز۳۹٢۱ھر/‏ ۰۸ع 


مفتقی ضیاء ا رقادری رضو یک یکتب پرسداے جا ہکا تصرہ 
گتتاخویں کےخلا ف رسول اروپ کےگہار و فنصلے ٰ 


متازتقق دعالم دبین مول بامطتی شیا ءا قادری رضو کی ماز وکنا بکستاخوں کے خلاف رسول ادگ کےگمیار ہلیم شع 
ہوگئی ےج س کا موضورم اس ک کے نا مم سے ظا ر سے کیا رووا نات جورسول الاپ گیا حمیات لیب میں رونما ہوے اوررسول ا رای نے 
خود یل صادرفرماۓ ؟؛کستاغ زسول لگ کی سزاموت پر ىہ مارک پیل بین دلیل اودلم پر پان ہیں ء ا ن کا مطالعہ چہال ردرح 
و ار ےرا یوار أ۷ا مث یداہ رات دک لیر 
روں اسلام ےآ شنائی عط اکر ےگا۔ ٰ 
( ود جا زاب بل ۲۰۱۸مء) 


پارگادنبدی پل کی طرف مت یکر کے دع اکر نکیا ؟ 

اضل مصنف موا نامفتقی ضیاء اسم رقادزکی رنسوئ یک ایک او ماب" ہار ہگگا و ٹبد یف کی طرف من کر کے دع اکر کیا '؟ شاک 

ہئی ہےء کاب اس موقف پردلائل دبراژی نکا نمور لہ مندرجات ‏ حوالہ جات سے ع من سے کا بکا مطا لا سم وضو بردار 
بک ماندے نے ادا رادم را دا ہے ہر س کنا ا کرک یں ۔ 


( سوڑپ جماز ایل ۲۰۱۸م) 


صوفیا ءکرا کی ماہراشہزندگی اورموجودہ خانقاہی نظام 
نو جوان عالم دبن موم نامفقی ضیاء احدقادری رضو یک کاب ' وف مکرا مکی مچاہرانہ زندگی اورموجودہ انا ھی نظام' دوشیم 
حجلاروں میس اع بای معیار کے ساتحوشائع ہوگئی سے ء دوٹوں جلد میں مہ ھ٢‏ فیات پ حیط ہیں ہی جلد یش تار رن توف پور شرح 
داسط کے ساتھ بیا نک ائی ہے ٤ء‏ اد ایت ام ما حث داقو ال ءبشارٹیں اورمتا م اولیا کرام پنبابت می موار کیاکی ہے مکی جک میس 
ات ال داب ہیں ء پر باب می سک یکو فھسلیں تا مک یکنیں ہیں مک ناب ہا د کے ا لیے نم وضسومح پکھھ یکئی ہ ےک جح لک ہردور میں اشد 
ضرورت ری درے ء اورچواسلا مکاا ہم بھم رگن ے ‏ ا سیکا بک ایک والہ ے نت ادا غیت یا فترازکار چہا رکا مل ومسلت جوا بھی 
قراردیا جا سکتا ہے ءکیوللہ تاب جناب رسالت 1ھ ات فت راشدہ رشوان الد تا مہم کےعبد سے شرو ںکر کے عہد 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 001171 





تو فو )تفم ری لح ہک مپاہرانہزندگی اورہ جورہ ما ای نظ 1 








روا کک کے چچید٥دچنیدہواتحات‏ سے مط بین ہےء دوسریی جللد کے جیھے اہ داب ہیں کتناب میں اکا براولیا کرام او یلما عنظا مکی چہادی 

غدرما تکا ہابت ردں پدر ان اے؛ فائصل مصنف نے ماب تکیا ےک اد تھا یکو ماب ران زندگی پنرے اوروہ پز رل مس لاو ںکو پنر 
یں فر ما جا مو ڑا ناضیاء اسمرتقادرکی رضم وی کااندا زف رم حنققانہ ے ء دو حوالہ جاٹی اورسلیقہمندیی سےآسان انراز بیس بام تک تے ہیں ٰ 
اورا ہتکو پرقراررکنے کے _لئ ع ریم نکوحوالہ جات کے سای کرد یت ہیں مار تقصوف پر مض تا بتاعکڑوں جوالہجات پ 

مشقل .ے اے ہدام مر یک ضرورت تقر اردباجامے فو انل با ہوگاء نی زحوام وخوائص اس س ےھ پور استذاد وک کھت ہیں 


میک ا چا لی ومرت الا ربون اکا مد 

اض لگٹ زم سفق ضیاءاحرتادری رضوی 7 مت یرہ شپت الک ری للینا تک ما رسۃ چوٹیںعصفوارتں مشقل روح روم 
افروزجاز ہا لیف'' مگکو ئا لیا ی ومع الا راع نکی وی“ اص٥‏ لمقن اورمتتروال, جات کے سا تی ش اح اگردی ے۲۰۰ااحاد مث 
سار کک ۃ !دای کے بیسلہ حصے یں شال ہیں انداز اس رد سپ اورجائمع دمیلل ہ ےکہ پٹ ھن وا ما ال ےگ رپو راس سے 
اسنثفادوکر لتا قب 
مثال کےطور بعد یٹک ا ۵ ھی اورانرازد کے 
(ا ۵)عَدَتَتا أبُو اود سُليْمَان بن اش شُعَثٍء قال أَحمَرَنَا يَخْيی بُنُ مَعینء ء قال :َدتنا مشام بن 
یُوسُفَء عَنْ عَبّد الله بُنِ سُلَيْمَانَ وی ء عَنْ مکل بل اگلیٰ بن عَبّد الله بن عَبَامي؛ نْ آپیوہ عَنِ 
ان عجاسي؛ قال قال رَسُول الله صلی الله َليه وم ََحِبُوا الله لِمَا يَفْدُوكُمْ مِنْ نِم وَأَحبُونی 

بب الله و اَحبُو ۱ اَهْلبَ یی لحبی. 

رھ سر صر ہث 

یں ابودا و دسل یمان نع الاشحٹف 0 گی ءانمہوں تن ےکہا :یں تی من من نے تج دی ءانہوں تن ےکہا: خی 
ہشام بن اوسف نے عبراوٹید بن سلسمان الولْیٰ سے انہوں کے مھ بن گی ندال جن عباس سے انہولانے اپپنے ول ماحجد سے ان ہیں 7 
ححضرت سید نا عپ راد بن عپاس ری ای نما سے انہوں نے ےکہا: 


رجہ تحت 
رسول ائڈ ہگ نے فر مایا :اتکی ےعحب تکم ددم کوا وتوں کے ات فاد اہ :بے ےا تھا کی خا ریب تکرد 
ادرغی رکاگل بیت سے میہرے سبب مجح تکرو- 
۹عاد یٹ مہا رکہائی انداز ٹیش بیا نک گنی ہیں ۰اس کے بحدرعوالر جات ایک ماع دبا کے ساتھ بیالن کے صیے ہیں اس کے 
بع کا بگکارو مر احص'' ارگ نکیا“ بھی اسی انداز یں مرج بکیگئی ےآ یئ ا سکیا حد می ٹ ہر۳۸ پٹ ھت ہیں ا نراف یہ ہے : 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 1 711 717 





(ماشوراءاوررمضان ا بارک کے روڑ و لکابیان) 
بنا او شتاج مُحمۂ بن أپی ار سی بُْأَحمَد بی عم المَارَ٥َايیٰ‏ قراء٤‏ عَليْه أحيرَن ابُو 
الْفَوَارِسِ طِرَاڈ بُنِ عَلِیٗ الرّینبیٰ اخْبَرَنا ابو مُحَمّدٍ عَبْة الله بن يَحْیّی بُنِ عَبُد الْجْبًارِ السشکریٰ أَحْبَرََ 
إِسْمَاعیل نْ مُحَمّد الصَفار حَقن َحُمَة بن مَنسُو نشور لژتاق علق کزة زا ان عقام خلا ان غرج 


عَنْ غیيْد الله بی أپی تَرية أَنهُسَوع اب عَباس بَقُولٍ ما رٹ رَسُولُ الله صَلی الله عَليْه وَسَلَم ری 
: صٍیام یَوُم يَلَعْمِسُ فَضْلَه عَلَی غَیْرہ الا مَذَا لیو وم َاشُورَاءَوَشْهَرَ رَمَصَانَ, 
مر جھےسرعر بہث 
ہیس اب زشاع مجن ای التراسیژن ان امم ن عم الما ردان نے با نکیا مان کے سان بحد یٹ ش ریف بھی چار تھی ء 
یں خ دی ابوالیوارسش راد ب نکی الزقبی نے ؛پ یی نب ردیی اش رع بداال ‏ ن گی بن عم بدا لچبار الک کیا نے ؛چ٘یس پیا نکیا ا ایل بین حھھ 
االصفار نے ٹیس میا نکیا ام بن منورالر مادگی نے ۷بی جیا نکیا عبدرالرزائی بین ہام نے یں ا نکیا انج نے عویدا ین ال ./ 6 
ہز بیرے ان ہوں نے حعخرت سید نا عپرا دہ نعباس ری اڈ ما مس سناد:فر ماتے ہج ںکہ 


مم دہ ہہ 
نے رسول ایڈیڈپڈ کی دن کے روز ےکی فضیلت کےحلسے ف,آئنالکرمن نیس رکا سواے الن دونوں کے لج جا شورا ر' 
کے روڑ ےاوررمضا لن ا یا رگ کےروڑے۔ 
(موے جاز جون ۲۰۱۸ء) 


مفتی ضا اصرتا دربی رض ویک یک بىفت روز و ندرا ۓ عم کا مصرہ 

موجودہ دور می بیبددوہشود کے کال رز چا داسلائی پر کرد ہے ہیں ء جہاد کےنقصورکوغلط بی لکیاجار ہے ء ادرشرت پنری 
ا ےتشیہدکی ماداجی ہےء جہاداسلا مکی ایک جا اصطلاح ہے جو جہاد پالرالء چہاد پانخس اور جہادہالیف یڑ قا لکااخاطگ لی ےء 
الام کا مان ایا مجاہرانہ سے ٢‏ اوریہ اہی اۓ والوں سے چہ رسس ل کا نا کرتاے ء چاو مم تلق اسلام کے لصو رکا شور چاتزہ 
لیا جا ہے و معلوم بہوگاکہردۓ ز مین یس جج بحم دج راورفقنروضما دس را ٹھاتے ہیں فا سکاس رکیل کے لئ چہاد سے کہ رکوک یل ہیں ےہ 
یآ خرالز مان تحضر ت میگ کی حیات طیب کا مطال ہک مو غرزدات اورع ایا گیا ایک طلو مل فرصت سا ےکی سے ء رسول الپ کے 
وصال ش ریف کے ببحدسحا برک رام رشی ال نشم نے چہادکی سن تکو ار رکھاءاورااس کے بحدرصوفیا مکرام نے ائ نی سنت میں بڑ چٹ وکر 
حص لیا ءمفتی ضیاء اتا ددیی رضموی صاحب نے اپ یذ صوفیا ءکرا مکی مباہرانہزندگی اورموجودہ خاْظا ہی نظا یس بہت خولصورلیٰ 
اوربحنت سے الع اق کا جواب دیا ےک رص وفیا مک را مکا لام یٹ کر وا ک فکر نا اور نما نظا ھی رسو مات اداکہ نے کک دی محر ووکئیں ے مصوفیاء 


لئے 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹ 9211021 





ہیف( 


را مکی ایک طو بل فہرست ہے جچنہوں نے اپٹی زندگی یس د بین اسلا مکی س بلندی کے لے چہاوکداوڑ ہنا چھونا بنا ۓ رکھا مصنف 
نے رع کے نمانقاہوں میس ٹیشھےلوکو ںکجھھ ڑن ےک یکوش شکیا ہے ک ہپ کےآ با واحجدادنے سارک زندگی چہادیی سک اری نلم 
کےخلافسیسسہ پلاگی د یوار نے ر ہے ء ای پ:ررگوں می امام تن بصربی ری اد حشہہامام ما تک بن د ینار ء امام ابرا یکم بین اوھ ٰ 
تر مبداہ بن مارک اورنخضرت سی نا عہدالواحد بن ز ید اورتخثرت پا :یڑ بسطا می اورتضرت جنیر بخرادیی ؛نخر تگ الد بی 
اج نگم یی ن مورصوڈیا کرام چم الرصشائل ہیں اس اکتاب بی مصنفف نے بیا نکیا ےکس رح صدفیا ورام نے شبرول 
سے دور بظیادی۔ ہولیات ‏ ےھ روم لپعما نرہ علاثوں ٹیل خماْقا ہوں کے ر بی ٹر یب وا مکی خر فطاع کے لئے درواز ےکھو لے : 
خم یوں کے لے شی ادارےقائم جیئے ءان کے ئن رکھو نے درومنرو ںکی جسمالٰ اورروحان اورنضیالّ اما تی کے لئ علا ‏ 
گا ہیں بناکیں ؛ ان کے درد ہا نے ہن انظاہو ںای وش من رام روخری بکافرق نہ ہوناء ایک چچٹائی پ ٹیٹھمناء یوں اشاعحت اسلام 





کاسب سے وٹ ذرلیاتابت ہو یلگ اسلام کی طرف مم لے ء ‏ جہاں الل تما لی اوراس کے رسول سپا کا 


تایاجا تا تماد ہیں چجہادی معحبت پید اھر کے اع یو ںکوگ: مایا جا جا ءصوفاءکرام انی خاا ہیں دنن ملک کس رعدس بناتے سے 
اارو یں سے جب طا لم ٥لم‏ یڑ ےک رذکاتا تھا تو اسلا مک ماب کر کا ھا 

کنا بک ایک جلد می ھا کرام ری ائڈٹ نہ مکی ججادکی زم دک یکا نکر ہہ تنعل سے موجودہے؛اوردوند ں جلدوں میں بیصجر 
اک دہند اورد نیا ر کے صصوفیا گرا مکی چہارخد مات اورقرپانیو ںکوا اک ینفصل ہے بیا نکیاگیاے کاب کے تام مضا شا نکو یہالں 
سیٹنائک نکبیں ہے یم دوجلد میں ان تما ملوگو لک پیاس بچھاٹ ےکیلن ےکی ہیں جو جاننا اہج ہی ں کس طرح بذ گان دمین نے محفت 
کر کے اورقربائیال در ےکراوراسلام کے _لئے اپناخون لطورن رانرد ےکر اسلا مکوزنزہ رکھا ,کس ط رح جنگلوں ادروبراندوں یں چاجاکر 
لوگو ںکواسلا مکاپغام نایاء ادر جب جائن دہی ےگا بای آآکی اوللم کے سا ئے ند باند کی پاری آک یق موا رکون روکبر کے ساتجود 
اٹھایااورعبادت ور یاطت کے سات ساشھ جہاد می ںپھ لی مکارناے سراغجام در ہیں ا سکاب ین ان صوفیا ءکرا مکاتزکرہ دہ 
کراندازہ ہوتا ےک اسلام چہال عحبت اوراشس نکیالیم د تا ہے دہال خہرت دحبیت اورشجاععت وھ حی تک یلق نپھ یکنا ہے +اداسلا مکی 
عمزت وکنمست کی ماعط رابنا تھا سن وی نکوق با نکر ن ےکا جذ بھی پیر ارتا تا ہے بصسوفیاءکرا مکی بہادرکی اورغیر تک داضتان بے لے کے 
دس یش ری فایڈی ہیس رہق یکر توف ترک دنا یتھلیم دا بصوفیا مک رام اسلام ک ےی مغ تےءادراسلام کے ہچ مھاہر ےب رکوں 
نے بییشہ پیا رحب تکیا بات ہے جلی اک کاب میں یک داقعموجود ےک ححضرت سید نابابافر لدلد گن رمتت ارتا لی علیہکی خدصت ٹل 
ا نکاایک مر ین یکا تفہ ےک رآیاء ہز رگ نے سوا لک اکم ہکیول لائۓ و؟ جواب دی اکسہ یکا نے کےکاممآ تے گی ءآپ رن اید تھا 
علیہ نے جواب دی ا کہ ہہاراکا م جوڑ نا ےکا غناکڑیں ہے اگ رہل نابی تھا تو سوک دجما الا جج چوڑ نے کے کا )1 ے ‏ ریصوفاءلزام 
کا طرزل تھابنیان جب بات اسلا مک یلم تکی ہو اپنے بیانے سب اسلام کےخلاف تع ہہو چاتے فک سو فیا کرام ام کیل ریت 
دمیرانع نآ ران فو سکی مرکو یمک ہت ہیں سلطا نمو وخر: فو یکیسک رب اورجنگی مرا ت میں صحضریت خواراہواس لن خرقالٰی رم ال تھا 
علی کی دعمااوردوصرے صوفیا مکرا مکی شرکمت اورضرت ا افریل اللد من مسعود رم ادتقا ی علیہ کے ٹیگ ں کا جار مس شید ہونا تارں 





۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 810011 717 





کا تصرے ‏ مغلیہدور یلچ ردالف شال اورتظر ت ‏ پر نیج ارتا یسیا اوردوصر۔ ے مو فیا ۔کرا سک اروا رتا بل زکرے ‏ حطرت 
شمامعبرالعز زمحرث دہلوگی رجمنت اللدنتزا لی علیہنے ٹابدنا ہو نے کے پاو جو دانگر ہز کے خلا ف سب سے پ لے چہادکا فقذ کی جاری فر بایاءاورآپ 
کے شاگردوں میں سے بی حفررت علا ری موا اف ھن ری ایل تال علیرادرائن کےپمنو اعلما کرام نے چیاد کے خلا فےعلم چاد بلنارکیاء اس 
رع کے ببیشمار مز رگو ںک مد ما تکومصنف نے بہت خوبصصورت انلداز ٹل بیا نکیا ہے 

ٰ ٰ ٰ لف روز ندرا ۓ ع رت٣‏ ج۰ اجوری ۲۰۱۸ء) 

ڑا نا میں رسا لت اورچا لور 

رت سینا ابر ہا نکبراللدامصمارکی رن اللدعنفر اتے ہی ںکہکرسول ار پگ نے فر مایا کہزمینوں اورآسانوں می ںکوئی چڑ 
اڑسی یس ہے جو کے نہ جانقی ہہک ین اتال یکارسول ( پل ہوں سوائے نا فر مان جٹوں اورامساپوں کے ۔مسندامام اہب ہل ۔ 

نفضرت مو رت انلم موم نا دا رارصا نب اٹ بارکرا ری تشریف نے گے ء دہاش آی ککتب نا کے ما تک نے الع ۔سےسوال 
کیام کچ ہوں کول ائڈھکپگه ہ نزک جال کی ٠اس‏ نے زین سے ایک کا ٹھایا او کہا ۔کمیارسول اںڈ اھ ا سکویھی جا تن ہیں 
۴پ نے فرمایا :کرت نہ تا کہ بیتنکارسول ادڈ کو جا تا ے؟ فذدہ امو وکیا ءآپ رید اللہ نعالی علیہ نے فرمای اک رسول اللہ 
یکاخ مان عائی شمان ہےکہزسینوں اور سمافوں یی ںکوئ یبھی زا ئیککیں بے جو یھ نہ جا سی ہوک میس اللدتحال یکارسول ( پگ )ہوں 
سوا ناف مان چنوں اورا نماٹو کے کیا یکا ز لن دسمان بی رہ ےکیکاس؟ اب دو نا مو گیا ءنذ آپ نے فرمایا: جب تکارسول 
ٹکو جات ےت کیارسول ارڈیپل کا عرش ریف اتانم ےکا سکویس جا نت زم تصرہ ا سکنما جے' ‏ جحفظ نا موس رسالت اور چا پور 
“میس تیدانا کی نا موس رساات کے لع عخقیرت وحبت اورقر با تا ل مل ف کپ سے اخ رک کے اس می ایک دی حچک ہش کرد یی ہیں 
اورولف یساب ”اذا نما ز ٹس سے ایک ہاب اضافہ کے سا تح شا لکیا کیا ہےء پلک محفت !دیع رق دیز کی کے سا ےکنا اھ یکئی 


سے 
1 





لت روز وندااۓ طمت || ماے ا گیےے۳۰۱مء) 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





معتی ضماء اح را دری رص ویک تارف 




















٠ْ 
اورغر مات دظہ‎ 

تھی : فکد(قر کی (وا ہکینٹ) 
موا نامضتقی ضریاء اج راد ری موی ایککہ یش ن نو جوان عا مد بین ہیں ۔آپ (۹ اقبرے ۱۹۸ء )کیشلع و اڑ یک یاحصی لب سے 
نوکلومیٹردورمش خکوٹ مفظفربیس پید اہ ئۓ ۔؟ اپ کے والدگراب یکا اس مگرا می فیائضش اتد ولدمیاں قطب الد بین ے- ۰ 
ج بآ پکتھوڑے بڑے ہو ئن آپ کے والع ین جھکنمایت نیک اور پارسا فان ے ما کک ہیں نے ناظ رش رآ ن ریم ۹ 
و کے لیے اپپنے ای علاقہ کے ایک عالم دن جناب موا نا حاف ابد امیر صاحب ہبردی علیہ ال رص کے پا ںپچھیناشرو کر دیاء نا ظر ولا 
پڑ من کے بعد پ نے حفظق رآ نکر مکی سنحاد بھی یں سے حاصم لک اور پا وگم سور شش نکتک پڑھاء پچھراس کے بعد مدر 
او اررسرالر کوٹ مظفررییس بائی ق رآ نک ریم کے ذظ کیاسعادت حافظ وا رگی خورشید اص صاحبہقادریی ے حاص لکیا۔ : 
ق رآ نکر مکی با قاعدوتچو یاقر ا تکاعلم سن (۰۰۱ء) می مدرسیعر ہبہ رد تچ ید القرآن اور پور ڈھا وص لکپروڑ اض لع لودھراں ا 
یس ولا نا لارخ تقارکی ضیاِشج مہ ردکی سے حاص لکیاء اور ایک سا لکاکورس جو ناہ می ملک ریا ےت تا ضر می کیل ومن 
واص٥ل‏ 71 7 - 
اس کے بح درعلوم اساا می کےتمو لکی طر گان ہے اور (۱٣۰۰ء)‏ یں بی حائل پور میس چا مدان ارسلطاشی میں داخل لیا 
ینس کےضم مول نا مفتی عطا حرصاحب اددی علیرال رہ تھے ۔ یہاں پآ پ نے فاریکی الال یتب م ولآ با مغتی شھھحفیظہ اہ روسی ۔ے 
ون نف نار یآپ کے استاوصاحب نے فر مایا تھا کہ ضیاء امم ضمرور مدرسل بب گا۔( ۳۰۰۳ء) شی ندا اسلامیرد 
ہت 2 ہور ٹل واردہوۓے اورچامع فْضانھ یکا ہنرییش راخ لہ لیاء پچ لتقم پآ چھ ماہ بحدب نرہ زارلا ہور مل ا چامعہ 
کیا ایک شاغ کاافتتاب ہوائویہ بورادرجہ جامحع مسچرگزارحجی بک دیاگیاادرچھرکڑیں پرآپ نے عامہ کے امتائن دہئے۔او راس کے بحد 

جادت الد بین لگن رخفریی میس ایی کے امتقان د ہے ۔ 
جامد نو شی رو علا مہ اقبال ٹاو نکریم جلاک می درج رالبنہ سے لن ےک رکیل ددیس فظا ہ کک بڑحھائ یکا ۔ یہال پآپ کے 
اساجهز یں فی فیاضش اح سحیدری ‏ موڑا نا تزاضص یتجو بیداللد گن آادریی تے جب کے م وڈ بامفصوراحرقارری علیا رح سان ظطیب جائم چجدر 
دامجادر ہار سے بفا ریش لی کا در سںلمیاادر بفاریش لی فک یآ خری عد یٹ مق متار اح درالی سے ےھ ےکی سعارت حاص لکا- ۱ 
آ پگڑلق متا رام درا لی حفظہ اڈرتھا انےصحا ست او رتضورجار الیشر ریہ موم نااشرر رضاخالن رم ال تعالی علیراورف لحص مخ ق خر | 









اشن قشندیی علیہ الرمرنے اازت حدبیث عطافرمائی۔(۱+۱۱ء ےلگ ر۲۰۱۳م) تک جا مر دنو شی رضوب میس نز راس کے پر ال مر 
انام دے۔ 

امم لم دق پک ایلیا دجو نے چہاں پرآپ نے اضل و جوان فی 
ام نخان عطا رگ الم نی ےت سک الف ہکیا۔ 

آپ کے مارک و میس جناب خواہبدالوا ند مہرد اروف حا جیپ رصاحب مخواہپردالاصلا تر دی سلطالٰ: 
امی ال سنت موا ناال اس عطارقادریی ‏ تار الشرییہمول ناخ رضا مان پر ید ی اورفض یی ا مول نا مھ اط یی با شی کے اسما گرا می 
نررشائل ہیں 

( ۱۰۱۵ء یآ بپگقسص اگ شاو سيا دمٌٌٗ٘ٔٔ‌ٗ‫مےعست 
گرم ہوتا اگیا اور پ دو مآ یا مر کام: تب ے۳۰۱م اور ۲۰۱۸ء میس رادرم 7 ریش در پاررسماللت پسلام کے ےی عا صرہدئے۔ 
انس کے علاو دآپ(ع۴۱م) من بخداوش ریف او رک پا "فک اشر فک حاضر یک سعادت ۔ے بھی ہر مند ہو گے ہیں۔ ٰ 
علوم سال میک یتیل کے بح آپ نے اپی د پیا صلاعیتو ںکوشو بپککھا زا اورااس سلمسلہ یں بحدمما زعشا ‏ علوم درس اہ یکی نر ریس 
کر ہیں اور بعد نماز چم دیس ٹرآ نکی لشست ہوئی ے٠‏ تی ابترا(۲۰۱۵ء) یس ہوئیئھی اور الم سولہ پارےگصل ہو کے 
ژیں۔الق درم ےک کوگی صاحب اصیر تآ پ کے ان در شف رآ عیفر طا سپ تفو نکر نے ۔آپ نے اہی ےآ ای علا کٹ مظفر 
ی بیو کی داوم و بیت کے لاک درس جاموسیدو ہچ اکب رق لیا کے نام ے قائمکیاہے جس ےآ بپ ‏ مبھی 
ں۔ 

علوم اسلا میک یل کے بعد کاسب سے پا ار مآعفیف وت لیف کے میدران شی قم رکھنا تھا ء۱۰۱۷ء )ےپ نے 
اس مکل مییران میقم دکھااورڑھم وق رطاس سے اپناناطہةائ مک تے ہو مے پر یکا بہ یف مائی اد رھ رآپ کےقکل وڈ جن پ رام کا الیما 








اث ہواکہا بکتک* ۵ ک ےکک بین ک بچھدئی پڑی اکنا بی ںتصنیفکر ہے ہیں جک ہآپ کے می زمگرانی لے دا نک ےکتب نان مع البرر ۰ 


علینا سے اع دی ہیں ۔آ ‏ پک کب اس دفت رام کے پا موجود ہیں ان میں : 
صوفیا مرا مکی میاہرانرز ندگی اور مو جودہ خانقابی نظام 

تاب ا بک کآپ کےألم ےلگ ہوقی سب س یم اوعی مکناب ہے۔اس کےمنواان سے تق تین اس کے مندررچار کا 
انداز و زگا سم یں ہکتناب دوشیملروں ممشعقل ے جوا موضوع پمنظر داوروچودو دور کے نانقاہجول اوران کے مم لیے 
عار یمر 7 کنا کے ےکر تکا سا مان لیے بہوپئے ہے ۔دورحاحض میں صوئی ازم اورنحصوف کے نام پرجن٣‏ سط رب کے خی شر گی اورخیرا خلا 
کام یے ار ہے ہیں دوکوام وخوائ کی نظ رسے پیشید ہیں ڈیا ۔ بی رکیام مل یاکے نام پر ججہلاء کے ٹو لے نے جس طرع کےکھناد نے 
کاردپارش رد کرد ہے ہیں الع ے الیل دکی بناہ ان و لق ال با تکا ےکن ز ماننے فص گند یشینء پیر اورصاحب ےط اق تکپلانے 
وا یلم د بن دد نیا ے مکل بے بہرہ یں +اود ظا ہربڑے بڑے جبہ پش اورمام فرش پیرصا حا نکھی مع و یمک ش رلعت وط ر یقت سے 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


تضو وت انم ری ارح ہکی ما ران ذ دی اور ترروھاتزا ینظام 





ری 


بھی وا یں اوراھیں ریبھی معلوم می سک اولیا رکرام وصصوفیا عظا مکیتقی زندگ یکیاشی اورانھوں نےنلن اسلام کے لیک ایق بانیاں 
دیس ۔قہلشق صاحب نے عو مقر کےنوانع ےکا بللی کا جوسبب جیا ئن فرمایاہے دہ خہابیت دیقاہ ل نود ہے ۔آ بت رمیفر مات ٹیل | 
ا سکاب بی اس موضو عکوزسہ بت لا گیا ہے اوران شبات اوراعتراضا تکا مل ر کی اگیا ےک اولیاء وصوفیا ءکا 

دا وکار چنرعبارات ووطا تکف اور نمانقا یرس مات ادالکر نے پر محدرود ہے چچی کی زن گی صوفیاوکرا مکاکردار نو نے کے برابھ 
ہے بصوفیاء پر انرام گا کرد گی راہہو ںکی طرع دیوکی معالطات ےا تن کجھلک رہجتے تھے ب.. مذرکودہ النرامات کے ا سکاب 
نپ لی مراحث وزارینی وا تعات اورتف اگ نکی رشن می جوابات د تے یئ ہیں ساا کاب میں بی ثابم کی ایا ےکآ جک 
ٰ چٹ یبھ یکا ماب فی اوسک ری کناروائیاں وقدئپذ مہ میں ان می اص لئ ر کو تصوفیا وکرام اورائل اکا رف تھی ان صوفیاء 
کا ایک طلو یل فرصت ہے جنہوں نے انی زندگی یس دبین اسلا مکی سر بلندی کے لیے چہادکواوڑھناچھونا بنایا۔ ان بیس اما مجن 
رگیاء مالک بن دیتارہابرا کیم بن الیم بعد ای بن مبارک ‏ سضر تعبدالواحد جن ز یہ با یہ ہسطا یا ؛جنید بفدادکی اورخض رت گی 
الد بن این ۶ر لی جیے نا مور فا کرام شال ہیں۔ - 

زیت ردنا بک مکی جلد٭* ۸اورددسریی جل یھی ٭٭ +صفیات تل ہے ىر سر ےس 
کوپڑی محنت اورعرق رک سے تع کیا گیا سے سکئی نایا کنب ے اس تتقادہ کے سا دسا تق ھک ینیم اود کہ یم عرپ کنب تد" 
صفیات کے مطالع راودا شی مکنا بک ای می لکفی ما وکا عحرصہ ماخ کی طلاش دس ر شی صر فکیا گیا ہے۔ اس جلد شی لصا کرام ۷ ام 
ارہ ددیکراولیا ءکرا مکی خدمات د بی ود یدکی؛ادرائل کے علادہ ان پا کان مت کے چھادن یل ارک ہو ےینفصل طورپ رپ لکیا ما 

ہے۔جیکہ دوسرکی جلد یں ق ون ادگ اورائس کے بععد کے اولیامکرام کے حعال ت نی اود چیادیی سرک رمیوں کے ساتد ات عم بین سے 

عمش نکوڑھ ی7 شیا راک یا یاہے ۔صاحبان مم ؤ نکی تقار ینا نے کا بک اہمیت تی ہی داضافکرداہے۔ بب رعا لاب اپ مضو پر 
صاحب نظ اور دردمنرد لکومطال کی دگوت دے ردی ہے_ ہا فسوی موچودہ چیروں بنقیروں یلد شیٹوں اوران کے خر یکا > 
کنا بکامطالعضرورکرناجاے۔ . 


آچۓےػے پیم 





کیچ 


2 8۵ 


کال ا لپیا بی مبح الا ربعون گیا 

حرت سید ا عبد القادر جیلا لی رضی الشرحدہ کے خطبات ال الر بای دای الرمالی یل مجوداحادیث میا رککا تج 
بین ء اور تک کے ا سکاب میں شائ لکیاسگیا ہے اس کے ساجح ھآپ کے صاسجمزادے جناب سی رعبدالرز اق ا یلا ری اعد 
کرد کاب الا ربتون الکیلا لی ےکا بھی تج تن رمع کے سراتجھ اس میس شمام لک یا گیا ہے اور اس سمارے ہنموم کا ام مکلوم 
یلا“ تجو یز قرمایا ہے ۔کتاب کےیمفحات ہیں ۔اس کے علادہ درج زبیل چندششقمررسائ لچھ یت رس ہے ہیں جو اہینے اہی ےعندا نین کے 
تر تئثحقسرمذنے کے ہاوجودبڑے بی جامح ہیں۔ 
(ہارگا نی ف پل کی رف تک ر کے د ھا نکھدا) - 
( شب نا موی رسالت اورچاثور) 





آر(ر مھھؿ8 ا) 
(نکمتاخوں کےخلاف رسول ارڈ لیگ ک ےار و نیہ ) ٰ 
( مس بیضراراوراس کے نما زی )( می کوکقی نکر اکسا او رکچ ہڑ ھنکیسا؟) ٰ 
(حد یٹ پین)(علم حاصم لکرنے کے ےچین جا زااس روایت ےتا یتطع لات بیا نک اتکی ہیں ) 
(کیامیلا داورک رابک ہیں؟) ٰ ۰ 
اس کے علاد لوٹ پڑ ےم بورکب ورسائلمطبوعہ خی ں بین رام کے پا چون صرف دررح ذ بل بی موجود ہیں اس لیے ان نر 
تارف بہاں میا نگر د اگیا ے۔ اورک رم اض ل تی جناب ضیا ءا ہقادری رضوی نی دامت فم کپ مکوسلاممت پاکمراممت د کے اور 
ا نکوطو یل زن دی اور تکالہ سے نا ے تا کہآپ ایر ں تج رمرکی :تق ربرکی ہہ ری ور پہ ابٹی خد بات دبا سراضجام دیے 
ریں ساں وت ہت شثرت کے سا تح وضرورت ے الا ٹںمزں وتالیف رختن کے شعے پگ ربپورنوجہدکی جاۓ اور نۓ 
نارغ ‏ صیل ار ۵ رسلا پنیا ا سکاگر زکوجد بعصری پا نیورسٹیو ںکی ار رای با مکو اکر ن کیا ا تما مک نا جا 082.20 
دورحاضرمیں بد کے ہویۓ موا شرقی حالاٹ کے مطا یی ذاضکین مت مسل ہک جع ست رہنصمائی اورتر بی ت کا فرلیضہسراجام دی 


یں 


(س ماب یلوہ برھان ا دا ہِکینٹ جال ض٣‏ م۸٠۰٥)‏ ْ 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81100171 





و جود و خانقابی نظام : 


۷۸۷۱۷۷۱۷۷۷۰۱۷۷۵ 960101213]. 7 


ری 








اننقاہ ودرک ایی اوران کلام 


درک د رگا انی 
درا و کے سم ی1 الہ چوککٹ زاقاو ہرد ضہ ارہد بارشائیءخداادد ہار 
اسں کے یعاد تکی مہ کے بیس ہی ںعوامالناس درگ و زار کے لیے ہو لے ہیں۔ 
ال بیس رفظ درگا و مرک نے ء در کےسعی دددازہ ھا تک ء چوکنٹ اورگا و کے “تی مقام- 
درگ ہکا رکب ب کی ہک وٹ اور سان کے لیے ہو لے گے چا ہے شا :کی دد پار ہو یادد با رخداوندکی ہو- 
خمانقاد ےکی اورخانقاہ کے قرا ما مقطیر 
مانقاہ ناری ز با نکا لفظ ےا کے ۱۷ب کک ہیں جاۓ بودن درویٹاں ا چہال "۷ھ 
جا میس یس وبی ممانقاہ سے ٰ 
خماقاہ کے مقصد کے ھوانے سے ایک بی فرما اک تے جےکہمانقا وی ون کامظہر ہے خانقادد کہہے جہاں جا کا شی اورپاہ ٠‏ 
ام ڈگاکی جاے اورنمالی آ و رہ جات ۓےکی ولآ و اورانڈ شی سکوگی فا صلیئیس ے؛ جار یآ دواد نے ایآ ویش میں لے رکھماے۔جہاںآک 
جا اور با سے پا کفکیاجاۓ من ہا جا گر ابا دبا تقافر ملاک کیا جا ۱م 
خانقاہ ہے۔ نمانقا اع ہکھا نے کا نا ممکییل ہے ججہ اک عا لوک کھت ہیں ۔ انا ءک یھ ریف ب رم رانشعرےہ ْ 
خالقاہ مکتعب و مدرسۂ عرفان خانقاہ یا خانهً گاہ یعنی خان حال و حضور ٘ 
گاء دہ حظلہ والقی ےک انما نکونظابرر اخواہ بلط دائم مراقیہ وتضور اور أ ‏ سکی تفائظت شی د ہنا اہی ەت کہ ہر "ہن "اس 
امتاڈنگی کے باعحثہ چچہالن ماک یکا بی مصر فک وارگیوں یل مصروف نر سے او رہش الم اویتی کے ان گارپاے۔. 
کر نال ٰ 
ٰ راہ ھن والا سا لگ پمیش ا ب عیب یس ء تہکہلوکوں کےتفرة وں میں سی کرت ہے ت اک ایک لے کے لیے بھی سی سے جداشہ 


ٰ 





لئ سک و 


ن 


پروسے وطرص سا کناچا ہپیے تب وبدرےیگ رفا نکا نام خانقادے۔ 

پرانے وقتوں مس ج بکوگی ابی میق تک منلاشی ہوتا قھاء انا ہکا ز کرت تھا سے نا چلنا تھاکرردزمز وزنگی أ سی اصل 
اہتء یش انا نکی میق تکیش و اورک فک ذتے دارننیں ۔ دہ محاشرے مس متوارف نام ونس بکو ایک ططرف رکوکرکمال فردتق و 
طلب سے خانقا وکا ر غکرتا تھا کر حاضرا شا کے ساتقہ اس طور پر ذکر کے پینگام میں بتضوردرحال اور ہیر مال کا جج برک سے۔ 


١‏ یش 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 8911111171 


ضورخو رٹ نشم یی ارح ہک مھاہرا ہز ندگی اور مو جودہ مانقا کی نظام 





مانقا بی نظا مکی تار اوراءمیت 
سے ہی ہہت ا سیرمسد 


لکھوں لوگوں نے دین الام قبو کیا اود بجی لوگ اس لے می وین اسلا مکی اشاع تک ذ رہ ہے سلطان اہن خوا ین الد بن 
اٹیب رش ریف میں سے ہہدئے ہیں ء ہندوستتان مشٴ٘ل٭ ۰ اک سے زادلوگوں ن ےآ پک وجہ سے د مین اسلا قجو کیا ۔ ہنروستتاان کےمضل 
پادشاداویگز یب عالکیردورائن اق ارایک پارخوابیلن الد بن شس ابی کی کے در بارش ریف پر حاض رکا د ین نے صدردرداے پر لوا 
یھ ایک ناشن خواجہ سے بدتائی اتک در پاہے۔ عا لی را سکیعرف متوجہ ہوااو رک امیس انددروزے پر حاضریی دیکر وائی لآ جا ہوں 
ا رورا مال ر ہیں نظ ٹل می تھا ران مکردوڑگا تھوڑی دی بعد جب وا یبر وا ںآ با و وہ نابیتا انیس خوش رم ج ٹا ہرا تے بنائی 5 
یھ یھی عا رن ا سے د کیک را دیع رکے بیدا پش سکوا نام واکرام سےڈوازا ۔ال کا نتجات کے اندداقت ار کے دونظام پیل ر سے ہیں 
ایک ظا ہ رکید یا کا نام علومت ےکین ار لیمائی جس پو ری :کیل صدارت: 7 پادرشاہت وظبرہ۔ دوسرا بای روعالی دا کا نظام ے جو 
صصوف کے را سے ملا ہے اس روعالیٰ لی نظام میس طر یقت کے چا رسلسلے وں تادرےء چٹ اقٹھیرے اورسرورری نظام ژں۔ 
اروں کےسحالسلے ہی شف تی کے ا سروحانی نام میا ا رولت ہ ےک عا مآ دن یپچھی محف تک کے اس روحا لی اقہ ار کے اع در پچ 
را سکنا ہے۔اولیا ءک را چھی ججے تے اوران کے مر بد می نچھی یر ے کے پائل لوک تہ پچ رایک دو رآ اک شی اولیا کرام تھی رد 
دوک با زآۓ جنہوں نے دبین اسلا مکونقصان پاہچابا بد نا مکیاہ متسو م لوکو ںکولو یج ر ہے ا ری وی صوفیاکرا کیا لآ رح بھی مو جود 
ہے اوران کے خلاف پردورٹش ال کے وٹ ی1 تے رہہ پردورمیش ال کے ای رکز ید ولوگو ںکی مال تبھ کی جاقی رہی نیس ککیا 
جانا گرا ننہوں نے اپنے مد سمش نک جار ارکھاں _ 

واج ظا لد بنا اون اد یا جمنا ےکنارےتھہاں ہاو کےدد ہار ذادہ دو رہڈاھی ہد ونلئتی ظا مو ںکی 
مال میں نے1 پ کے سان کیا اک گی با دشا کا دٹیا وی ھلوتی نظام اوردسرا اخوارنظام اللد یکا اشن یحلوتی نظام تھا۔ نس میں لڑکوں 
کے ولوں بک رالی ہے اور ہی اصس لجمرالی ہے پردور یل اور ہرعلا یت میس پاضنی ردحائی ظا متکومتکا سلسملہ پچمار پا او رآ بھی مو جود 
سے اس نظاممکو ددی لوگ ہر انداز میس کھت ہیں جو اس راہ کے مسافر ہیں یے دتیادی نظام مس نظا مححمرائی کے عہرے ہیں من 
وزم انلم مصدریٹئردزپتچنگرہوزس بادشادوخیمر: ایی بی باشنی روحالی نظ محکوست می بھی ہہ شس نے حر لک قط بنحوث ابدال خبرہ 
آعہرے ہیں اور بحہد یداد ہرددر ٹیل اود ہرعلاتے یل موجوددتے ہیں ۔ جب ایک علاتے سے ای کععہد یراد اٹھ جا نا ہہ ےئ ا لالہ 
دوسر ےکی ڈمردارکی لگ جائی ہے ۔ددعائی دٹیا کے ان خلا مکاریک کے بحددوصرے کے ن کیا سلسلہ ایر تا ہے اور میہا۔یے این 
توف کےس لس ےکوقائم رھت ہیں جی ےحفضرت تین الد بین شی چڑچیرساملہ کے بای ہی ںآ پکوروعا ی دنا شش خلا ف ت گیا ان کے جانے 
ہے بعدنظا مآلد بن اولیا وکوخلا فتئی اس ط رح بی سلسلہا بکک جادگی ہے اوران شاءائنددوز قیا مس ت تک چارگیار ےگا .ہل یقت کا انا 
سلہلرے چی ہادر یکا حطرت تچ عبدالقادر جیلا نی رنشی الشدعن سے ہے اسی ط رع قتشمنری اورسبرورد یپھی سال ہیں جج سکیل یتفعیبل 
اے ے ےا ککالم میں سینا مکل ہے کال میس مرا 7٦6‏ "مھ ت یا اسچھاے ا لک تا رن می بڑ ی 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 10011 717 





صو و )نشم یھی ارح نکی ماب ران زندگی اور سوجودہ انا ظا م 





ایت اورحشیت ہے بی نمی ج بتک مہ نظطا مم شر انداز ٹس چلتا رپا چاروںطرف اصن وسکون تھا۔ رہ نظا ماگ جآ بھی صوجورے ْ 


ین ہم نے اس سے وا نگ کرو رکردی ۔علا مکرام نے و ما نا می نظاممکوکنرو رکیا۔ خی رض روریی طور پہ ما نھا ہی نظام پیکتجیٹی ساری ھی 
بس سے عا ‏ مل مان اس فظام سے ددر ہو تے سے ۔آ رع کا یک عطبقہراس نظام کے ایا کی سور ولک رکا ہے ۔الل رک ےک لان ےکرام 
فا چی نظ مکوشرکی مر یق سے دوبارہ بھا لکر نے میں اپنا جیپ کرداراداک سیل _ ہم نے انا ند جماینیس اورگردوب اک رتظرقہ بازی 
رد غکمردی بھالی ھا ہکا گل کا ہے ابس کے تیچ میں7 رن امصت سل ای ک ےکنارے ب رکھڑیی سے ججہا ںکئی مسلما نآ باد ہیں اس انا 
پندکی اورگردہ گی وجہ سے خوددی ایک دوسرے کے وشن بن ٹیش ہیں او عام جارسی ہے۔اسلا امن کون اورحبت وا خلائ کا 
دبین ہے ہکم نے ام لکاکیا حال ماداب شال اولیا اید سے درخواس تکرتا ہو لک دو اپنی پان یپھکرانی کے روحالٰی سلسلہیش امم کی مت ری 
کیل مطفرعام پآ نیدیع اسلامماو راس تکی علاگی کے لے اپنادءکرداراداک یں جو پیص نیس اویا ءال کرت ر سے ہیں ا رصوفبام 
کرا مکی خدمستب می لگا کرت ہو یکنرفاظائی ظا مکو بھا لکرنے یس پھر سے اپناکرداراد اکر می اس سلم صواشرہ ایک با چھراسن 
کون عبت د بھائی ار ےکی رف لوٹ کے بداعات او رش رکا نرعقام دکی نٹ یکرت یں یکن ا نکتردد یو ںکی 7ڑ میں مل طور پر 
انا ہی زظام|کدئی خی رآ با کرد یناا مت سنہ کے _ل ےکس ی بھی طود پرورستنہوں ۔ یک بد بت مربہی اخچا پندرکر دو جن نے نمانقا ہو ںکویھی 
کی لٹا نمانقا ہوں می بھی دھا کے ےئ ۔ خمالھا ہو می دعما کےکمر نے کے ہجات ۓےکنردر ول اد نمیو کودورکر نے مل زکوت و 
کا راست اختیارکہمیں ۔عحبت سکون اوران کے ان ماکز کے سا تاور اولیا کے سا بجڑ چاکیں اس یش ہعارکی ہعارے ول کی اور 
اعالم الام اورد بن اسلا مکی مہ رکی اور بلندی ہے ۔مسلمائوں اور اسلا مکی خدمت دکوت ون سے بیکمکن سے ز کہ مرگ انا پہندری 
سےا ٰ 
انا نظام 

ان نی توادر یکین ہیں 

آ ن کے اس یز رفآ رسائٹس اوررخیمنالو گی کے دور میس انسان اس ف'د رت ٹک گیا ےک ہکا تجات کے م راسنتۃ راز وں نت بردرے 
اھار ہا ہےنیان اس کےساتجحدبی دہ ای ذات سے اس قرخائل ہبوت جار ا ےک۔ا بی اصلاب لس کےت کی مقصد ضیا لا س کال 
گی جانب دھیا نک جیا جاتا ہے. یس دوسرو لک امیا او سال نذا سان نظ رآ انی ہیں کان اپنی خلطیال وکونا ہیا فظ رس1 تیں۔ 
ام اپنے چو کودتیادی علوم ےآ راستہ وب راس کر تے ہیں دنیاکی مشکلات سے نین کےط ری بھی بتاتے ہیں رلوگو ںکو کرد ینا بھرو 
فریب اورا ون ٹکاجواب پھر سے دسیے دان کو یکا میا ب مھا جا تا ہے ۔مجصو فک صفاقی اور کہ دی انسال نکی ماع و لی بن چچھی سے 
ہار اپ ور ولناپڑے ت ذکوگی مضا نیس ء انی تر کی اورخشییوں کے لیے کی شخوشییو کو ار ت کر نا 
پڑےذ بھی حر جع ٹیس کیا می تز تی ہے؟ خود سے اورا ظا قیات سے غاٹل اوران خالی سے بےےتجر۔.۔د نیا وک او ظا ہر تر تی کے 
لیے ہمدوقتکوشاں یکن روعا نی وہاطفیت تی سے خافلل ہم اپنے بے ببترسے مت ری نکی علاش میس رت ہنیگن اس مت لی ن کا معیار ہر 
تی کے یی عنلف ےکرتضورعلیہالصلا والسلام نے مہ بین طلب ال دکی طل بکوقراردیا ہے جسمہہعاارے بہت بن مال ددوم تکی 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81001171 





زیادٹیاے کیاااس ہنگا مہ اونٹس بہت کے دور میں اس ام رک ضردر تی سک ہہ لو جوا نو لکی ت ہیت ال شطو ط رک میں ہن شطو ما متضور 
علی صلی والسلام نے مھا برا مکی ببی کیا نکو رین ریہاویشوردی مکش سکو نت کی فراداٹی ینیل بلم ایلرک ادس ہے۔ 
ا نوا صا ولا" می سک دوسروں کے بیبوں ادا مہو ںکٹشی کل ہ اتی اصلا ادا شٹ کی طرف ارد کیک ای ذھگا 
اوراس کےاعمالن کے جوابدہ ہیں ہکردوسرد کی زندگی کے۔ اس کے ےی ضردرت ہے ایک اہِے ما و لک جواضا نک یسب پچ زی لهیا' 
کہ ےکہانسان داشقی بھی میس انسان بن جائے۔ جچہاں مھا لس کے شور کے سرت ساتق ت دک یٹ سکی دولم بھی تعیب ہو۔ نظ ہرک 
اصلاح کےساتحوساھ پا نک بھی درتگی ہہ کیو اگ دو وقلب ‏ اکیتزہہہوں گے ہی نا ہرشھی ا سکی متا بعت میس کیک اور پاک ا مال د 
افعال سر انام د ےگا 

٣‏ ایا اکینزہ ود توخا باخو کی دک یکا لک بارگاہ میں دی مسر سنا ہے۔ یک مرش رکامل 1ل ہی ددہستی ہے جواپٹی نگ کال 
ےن سک ت نکی ہک رتا ہے اورطالپ موی کی تر یٹ تضورعلی الصلا ۃ والسلام کےنششش فقدم پر لت وٹ ۓےکرتا ہے جس کے لیے دہ اک 
تر ہیی ت گا کی بذیادرکننا سے جک غانقاہ کے نام سے جانی جای ہے جہاں نا ہرکی ناک زگ اور اصلاح سے پییلنخس و با نکی پاکی گی اور 


0007 


اصلاب پر زور ڈیا چا جا سے ۔جضورعلیہالصل 2 والسلام کے دور می بھی ایک ایی ہی درسگاہ صفہ کے چیوترے پرقائ نی جہاں قا مك رنے ا( 


وا لے اصحاپ صفہ کے نام سے مروف ہیں ۔ جوانی دتیاویگکرون اورالجھنو ںکوپھ رنڈ کے کر میس مشخول رج جے تو رعل 3 


اصاو والسلام کے دو رحیات کے بحدرشھی صوفیاکرام نے خمانقاہموں کے تی م مکی رداىی تک برق اررکھا ین دفت کے سا تھسا تا وگو کی نگا ہے 


بس نمانقا ہو ںکا نسور رتا گیا ۔ ا سک بفیادیی وجردکوائل تے جن کے وو بے بی ہو نے ے خانظا ہو ںکا معیار بد لگیا۔ ا نقاہوں کے 


شیا کا متمِزل و نکوزگوت ال ارد ینا تھا_ دیاوی عانز ل اورلزۃؤں سے ا نکا م نمو ڑگرا نکا رصان ازلدگی جائب لگانا تھائمیکن جب 


شی ادر بے لگا ترکات کے باعحث نمانقا ہو کا مق م وص می راورکنظم یت لوگو ںکی ڈگ و می ںٹمتم ہوگئی . بقول ا تال : 

اٹھا میں مرسہ اور خالقاہ سے خ ناک نہ زلدگء زہ رفظ نے ضرضۓجء ۓ ن اہ 
ذل ٹیس پگھھالیےکوائل بیان سے جار ہے ہیں جو نمانقاہ بیس قیام پذ میم یل بین اور طالباان مو ٰ کی تر بیت میں ا مکردارادر تے 

ٰ -- 

حانقا ہکا نظا 7 بیبت ٰ 
طا لان موی طط بج اواسں ش صلی اللعلیہدآلہ ول مکی تضوری کے لیے مرش کائل ا کصت می تاذ تا ۔اضرہوتے 

ری ہیں جہاں مرش دک فورالی صحبت اور پ جا ٹ رکنش طالراان موی کے پا نکومنو مک کے کی کی اورفو ریش ہ ےلکن طالم بک دید 








دنیادی اط سے اصل تز بیت مانفاہ یس قیام سے ب یلکن ہے۔ جہاں بت سے مر مد بن اورنین اپنی تر بیت کے لیے قیام پذ می ہدتے 
سط رج دبیادی علو می تصبیل کے ےکی سکول رای او ٹیوریٹی میس داخلہ ینا ض ردری ہے اسی ط رر طالپ موی کے لی بھی 


زید 
٠>‏ 
مان ہو ںکی ہفیاد رک وا نے اول ارام اورفق را کامیشن اس د نیا سے پرد ہکم گے 2 انید بوں رمفادبرستوں نے قب کرلیا ہج نکی خی م 5 


> 
٠> 


ری 








انی اطنیت میت کے لیے خانقاہ بیس قیاممکر نا ضردری ‏ ےاگر چہ یقاس محتقصروقت اور چندروز کے لیے بی ہو۔ 

انا ہکا ما حول سب سے بفیادیی ای تکا حال سے جتہاں طالپ مو لی د میا کی رنگین یوں الال سے دورایک ای ہام پذ مر 
بوتا ہے چچہال ا کا دھیان شی راب سے موک رادل کی طرف مبز و لکیاجاجے۔ 

مافقاہ می ملف ماحول اورعلاقوں کے پروردولو گت ببیت کے لیے قیام پذ یہد تے ہیں جن کے ہار اور رمک ن ہن مل فر بھی 
دوسرےلوگوں پراٹ انداز ہوتا ہے چچہاںئل ہچ لکررتے ہوئے عرار کی نشی اود بول چا لکش کوکھی برداش تک نا ڑا سے دوصریی 
طرف بھائی چا ےک لی بھی د بے ہیں ایک دوسر کی عبت وفرر کو بر داش تک رتپ ڑم سے تن ہے طالباان موک ی کی 
اخلا کی ت جیب تھی ہوٹی ے۔ 

نکی معیازرادرردعانی مراتب کے اعتبار سے طالبان موی را وق رومترفت کےملف موضوعات زبہ چٹ لات ہیں جس 
سے طالہان مو لی کے ذ ہ نکوایک نؿط رزگکرعطا ہد ی ہے۔انسالی ذ لن جود نیش و ہکر مال ددوات کےتصول کے لیے بی سور با رکرتا 
رتا ہے نمانقاہ بیس قیام کے دوران سو کا کی بدل جاجاے- 

ا می قام کے دوران طال ہاو سذ نل یتم کےفرف کی ایا دد بھی ہوقی ہے می اک انی صفائی سر ١‏ 
2.- ای تیاری ادردیرتز قیا لی ا مورجلین اک کنب ود سا کیا شاعت اوردکوت ون کی ادا بی ویر تس نے 
یت سے اداحگی سے طالب مولی نف سپا تر پت ہے اوس سی ہی رر ےگ دور 
جائے ہیں۔ 

خمانقاہ ٹیس طال ان مولی کے لیے با کا نا موجتی او یا کول وی وی سر میسو 
کو براگند ءکر تے ہیں قیام کے دوران طالبان مولی کر ولضو ر| 4 ابشرزات یں مشخول رت ہی ںکیوئلہ خانقاہ یس ذکر ونصورا حم ۳ 
زات کے موا قح فرصت ےئاس رآ تے ہیں اورردعانی ماحو لک برکت ے دی رعبادات می سبھی صردرحواصل ہوتا ہے ۔ ال کا ذکراورنضور 
طالبان: مو یکو صرف روحالی ام ران جات عط ارتا سے بل سا جحدہی سا تد صغا مت لہس سے متص فکرتا ہے اورشل مھ یی جی اک یبر 

آل بھھا۔ رٹنس من اشح وحیامخنایت وجمعیت بلق کی رخثبیت لی ہشحبت لی ءا طاحت الا دن رد بھی فو ازجا 

مافقا یس قیام کے دوران طال پان مو یکوا ننس کے اہ کے فرصت کےلحات موس ر؟ تے ہیں جس ہے باععث دہ ای 
ا ہرک د باشنی اصلاح ادددگی کے لے سو چا سس سب رک رت ککرد یت ہے جوالل پا اک کے می ےآور نا ریگ یک 
اعت وت 8ں۔ 

ہسوسو سب جیب تے ہیں اورم رش دکی نورا لی صحجبت ے طالب مو لی 
اکےدل سے دنا کی عبت انل جاتی ہے اوراشراورااس کے ررسولم٥لی‏ اوشرعلیہ د1ل ےل می عحبت عطا کا اتی ہے طالب موک ای طلب مل 
شرت اورکشق حاص لکرتے ہیں ان کے اندرانقداورال کے رسول اور وین اسلا مکی خدم تکا جذ بہ پیر ەوتاے- 

خمانقاہ یس دوراب قیام ہز رگوں ادراسلا فک روابات ےآ شنائی حاصل ہوٹی ہے۔دس نف کے لیے ا نکیا جدوججہد او رق رپ 


ْ 


تک پک 


071 ۷956601 7ک ۸۷۸۰ 





تو رٹ ام 





ام زی ان ما ہداز نکی اور جودہخانقاحی نظام 








من کے لف ععت سے دای تک بنا طالبان موی کے انی ددی جزرادنشق پیداہوتاہے اورائ یقرب دوصال کے لے ان ْ 


یتڑپ می اضانہہوتاے۔ 

خانقاہ جس قیام کے دوران فا لی وروعالی بہار یوں ملا بنحض وکید صد وک سجچھوٹ وچچ٘لی وغیبرہ بیس امرائش ےبھیضوارت 
عاصل ہوپی ہے اوریکی دوسرے کے تلق پیا ہونے دا لئے خیامات :ا جات اوروساؤیں ہ بھی جا ن ٹھوٹ جا ی ےاورشہت 
دک طرفرقان پیڑاہوتا۔ے_ 

حاصل یت رسب ہکرالن نا مہا دص دفیا گی دنا مکل کے پاو جد ہرز مانہ یس مرش رکائل نر ا ےی 
ا اورینی کے متلای ان خانقا ہو لک کک وی جاتے تے۔ 
1 دا ما آ دا مانقاہ 

خانقا کے اپنے ئآ داب وا ئل یں ۔اہشماح کے معیارات دہال مت نٹیس اور خانقا؛ کےمحی دی کک الیم یر دن نے 
سب رگ تل ب ہیں۔ 

مانقاہ جس داٹل ہبوت وقت فرداپے جودتے أتارد بنا ہے اورقھامتعقوات کے ساتقھ ماف کی ڈیا کاگردوغبارخد سے ال کفکرد تا 

ہے۔دہ خانقاہ می ں تو رکال سے اپ ےکا م پرل تج دا ہے 

لم ء پان راوسا کے ا لیے ودای نا ہاش ھی اوت کر اچ روساددادر یئا اس پت ےہ یوں دوش کر 
پا چو دیتا ہے اک بلندت رازکودد بابش تک کے کوک ناب مآ بی ےخور میں مشغخو لی ںکری ۔أ س کال راس سفید ہے ؛کیو ںک ا ا 
رف تما م1 اودگیوں سے پاک ہونا ہے باہراوراند ریہ شمطگی خا رو پر ای سے سکونت ےآ رام دسسکورن داققی سے نز کیک تزکرد بن 
۴ ۱ ُ 
مانقاد اور راب خمانقای 

حافظمادالکن قادری ایال ںی کھت ہیں ٰ 

چہاں چہاں مسلمان گے ادرمقا ئیالوگوں نے اسلا قو لکیادپال نراک ادا گی کے لیے سا جرتقی ریس اوزسلم موا رہ میس 
مساجد کے ساتوعباد تکاعنص رما ز مکردیاگمیا۔د نیا لیس چا ںچھ کسی خط ہس وین اسلام پچ ول کرام کیک ڑش اورحبت ب کی بدولت 
پچچا۔ جب کچھ کسی ول کال ن کسی دوردراز علاقہ می اکرش اسلا مک اط رڈ رہ لگایا نے اس و یکا کے اروگرد بہت سے طالبارن 
موی اکٹھے ہد نے گے۔ دن طامباان مو یکی ہنی ت ببیت کے لیے ایک امس چ یتیل دی جان گی نکش کےگمرد پردان ےک سالی سے 
اکٹے ہ وگال اورروروراز ےآ نے وا لے طالہاان مو یکومحیت مرمشمد شش رنے کے زیادہ ےزیادہ موا تی لیکیں_اس اض مچ کا نام 
اناو رکھا گیا نخانقاہ پیش سد سے انگ من اس کےقر یب بناگی انی ےکی ون عو فیاکرام نے جس ر بات کول زم قراردیااس کے لیے 
مساجیدنا موزوں یں _ مسا جد یں مسلمافو ںکی کا ہرکی ت بی تکانظام موجودہوتا ہے اور مانقاو یش مسلرافو کو پاطنی تر بیت کے ذر بیج 
من ہنایا اتا ےق را ین ای کائل ڈگاہ سے طالان مو ٰی کا یٹس فر کان کے ولوں میس ایمان دا٘ لک تے ہیں ۔ مانقاہ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 8110171 








نے ۱ 

خمانقاتی نظاممکی بڈیادشگآ قادد چان رد رکا یا تحت شھررسولاوڈی ی٥ی‏ ا رعلی ہد یلم نے اصحاب صف کو مق کے پچ تر ہپ 
امھ اکر کےف میھی۔ 

سورڈالگی کیم ت ُم۸ یس ادتقا لی اصحاب صفہ کے تلق فرما جا ے : 
(وَاصْبر نَتمِک مَع الَدِیْنَ يَغُوْن رَبَهُمْ بِالقداوۃ وَالَضِيْ یُرِیْدُؤْنَ رَجُْھَه پ> 

تر جمہ :او رآ پل( صمکی ال علی دا عسسشٗبس سس سیت 
آرتے۔ 

جبآ پ لی علیہ وآ لہ امم کےا دک ردائن اصعجاب نے امھ ہو ناش روح کردیاج نک فی دید تی نی جوطالپ موی 
ا تےء ان طالہان مو کی طلب صرف اورصرۂ آ اپ اک مکی ال علی و1 لہ یلم ہی پوری فرما سیت ےہ ران میں میم ہوگی اک اے 
انا کال ! آے اأطی 2 لہ یلم ایی طالبان مولی کے سا تر اکم میں ج ہردفت اایڈد تھا یکا چبرہ دبیکعن کے طاللب ہیں ۔ طالمباان 
مو کی طلپ شد بلرکوم نظ رن ہو بی خمانظا کی بخیاد کی جس کا نام صفہتھا۔ائن طامبان مول یکو دن اسلام یل بہت ایت عاصل 
ہے جنوں نے اس ت ہبی تگا می اناو ال مقہ سے تر ہبیت خاص لک اوزا ماپ مہ کے نام سے موسوم ہو ئے ۔ سا کرام ری ال نشم 
کے یىی دہ کی در گا ھی چہاں ان ک ےلوب میں ایا داش لک ماد ربچ راسلام پو ری دٹیائس پچھیلا ۔ اصحاب صفہکی شائن اتی بلند 
ہ ےکیش رآ لن پاک میں ا نک ذکر ملا ہے او ربج رآ قا اک مکی االدعلیہدآلہ یلم ن بھی اب مق ہک شارت دسیتے ہدہے فم مایا اے اصحاب 
مق | میں بغارت ہوک می سے جوکوک ان نو ہیوں پرقائم رہ کا جس پت لیک قائم ادا ات بپہغخش رگا مایا بات 
کے دن مبرار شی ہوگا۔(عوارف العارف ) 

ین اب موق راورارتنا کی رضاآ تا پاکک لی ال علیہ دا یلم قرب سےٹی جوانوں نے دٹیا ہے دو موک را وص کے 
چہوڑے پر پالنش انارک کے حاصص لکی ای قرب سے پاضفی خ بیاں اود ای تر بین اوصاف عحاصل کے اور یی دہ ادوصات ہیں جژ کی 
روا ت7 خرت می سآ پ مکی الدعلیہ دآ لہ ول مکی رفاقت طعییب ہوئی ہے ۔موجودہ دور کے طالبان مول یکوکھی فقرہ رضاتے لی اوراعلْ 
ا ہرد ہا ادصاف اأسی و قتلھیب ہوتے ہیں جب د کی و یکا لک نخانظاہ ٹس حاضہوں اورااس ول یکاہ لکیصحبت ٹیش اگھد یرہ 
آ گر پا کیرش یں 

پیل الشرحعلیہ آل ہویم کے بعد پ کی ال مارک سن تک پیردی می پردور میں اولیا ال نے طالبان مو کی تر بیت کے 
لیے الا ہیں قانھمکییں۔ ٰ 

زمانہااس با تکاشا شاہر ےتید خحوث ااتضعم پچ عمبدرالقادر جیلا نی شی ا شع کی خانقاہ ٹیس بنرارو ں کا جع لگاد ہنا اد نی بترار 
طامبان مو لم دوات اٹھا ےآ پ دیشی ابلرعنہ کے پھواو کی چیوں سے ناک ہونڑں سے کے وا نے تر مگلو سکم بنا کر نے 7 





ٹیس پنرکمسل ا نکوا ار پل مان سے ند لی بالنقل بک ککا سف رن ےکرایا جا تا ہے ت کیم لما ننکوم رتبا تسان پر فائ کم کے بن یکن بنایا 







۱۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 8100111 71 





تو رو پش ریھی الع ہک ہداز دی اور مو جودہ اق بی نظام 








مروف رت ۔ غانقاہ بنانے اور طالم انا مدکی کی باضفی تہ ہی کم لن ےگا اس مبارک سدت رسولی کی اوش علیہ ہل وس مکوسی نا خوٹ ا احظمم ٰ 
عبدرالقادر جیلا لی رعی الشعنرنے مز نم رفرایا۔ ٰ 

می بات اذ ق رآ لن اور قا اک “لی الڈعلیرد لہ مل مکی حدبیٹ اورم ارک سنت سے دامع ہوگئ یکہدعن اسلام می خانقا ہیک اہم 
تر رن ہے اور پہردور یں و یکا لک خمانقا سیت رسولی مل ابمل و لہ ویلم کےگین مطابی ہوئی سے جس میں مسلمانو ںکی اس 
زان کے طابن پا تی تک جال ہے بھی خاظاوکادارددا را کال لک ذات ماک پوناہے۔ جس ط رح پر ذائے کے لے ٰ 
تع کا ہونالا زی ہے پالک اسی ط رح طالباان مو کان بییت کے لیے انساا کا لکیا مو جودگی لاٹ سے۔ خانقاہ ٹس ہروشت ذکرانڈر جاری 
دسا دئاز تا اور چوڈی ں کک می لکوگی ایا انیس ہو اک جب ایلرک ذک نہ جارکی ہو۔اس کے بیس مسا رٹل اوقات کا رحصویل ہو تے 
ہیں ادررا تکوتذ مصحیروں ٹل تا لے نک جاتے ہیں۔ مانقاہ ہروقت ہر نے وانے کے لے صلی رہق ہے نوا ءکوئی خی سکم پ یکیوں نہہو۔ 
مانقا: یس ذکر وعبادت کے لی کوٹ ی نویس اوقار کی کہ نمانقاہ ٹیس دائی کم چارییار بتا ہے۔ انسا کا لکی وت خی سج 
پاٹ نمانظا کی فضا میس ٹیل بی ٹیش ہوتا ہے ناس با کت جک کے باہ رگم ر نے والا اکر باتع اٹ ار دعابجھ کرد ےل ا سک دعاضرور 
قول ہوٹی سے خانقاہ میسن شام ینمی ہروفت الد کے وک کی ہرولت ا سچمی ہل اورکوئ یکئیں ہ وق _ 

خانقاہ یس طالبان موی دیدارالٹی می رق ایج (یاکی) اندکرتے رہچے ہیں۔ خااوم چکگ دیادی نزیس ہدک 
بلہ ہاور پ رپ الیکا ذکرونفسوراورذ امت کے اب رارورموز بر بی ررش ڈالیٰ مال ڑاے۔ 

سور اکن رک یآ بی تگہمر ے٣‏ مل ارشادمبارک ےک :‪ 
رجا لا تُلهْهمْ تِجَارَة ولا نع عَنْ دِکرِاللٰه وَاقام الصّلرۃ وَاقاء الرُکر یچ 

ٰ یآ بیت مبا رک طالبان موی کی ہمت اوراتقامرں ےخلق سے دہ مد سک نہیں اش لی کر کوگی سورا اور خر یو و 

فر ویشتت الد کے ذکراو رما اعم رسک اور زکو ہد ینے سے۔ 

ا ںآ عست میارکریل مردوں سے مرادطا لان مولی ہیں۔- 

مندررجہ پالا آ مت مبارکہ شی ا ےے مکرمردو کا ذکہ ہے جواپٹی مانقاہوں میس ام ارات کے ذک دای نما اور کا اد اکر 
رس ہیں( ایل زکو ۃ صوفا کے زد یکا نی ند کی پرسائش ذکالل کے ناممکرد ینا اوراپی ذا کول اللر کے جوا کرد نے ) اور 
دنیایکوئی چوک سوداخوا و ءکتقادی منان ھن يکیوں نہہوایے طالمبان مو یکو چندا ںکیں ھا جا ادردہ دای راز اور زکراحم ابد زات یل 
اس ذررورہں کے سے ات ایا ہرز سکم فکمصصرف ال کی رف راغخب ہیں 
لواڈگحر سم رَبیک وَتَبْل اِلَیْہ تيْيْلاً 4(المزمل:۸) 

رم اوداپے رٹ کے نام( اللد )کا کر رطرف سےٹو فکرکرو۔ ٰ 

یھی طا لان مولی انتا ہوں ہرطرف سےٹو ٹفکراورقمام د نیاوی محاحلات سے منیموڈک رای کے ذک می ںو ہیں ۔ 
صعخرت شاب الد گن سب روردیی رحمت اڈ دعل یر مائے ہیں : 













۱۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹. 6:8071(21[ ۳ 0017 








ضو وٹ ام شی ارح کی مہا نز نگ ادرموجودہ مانقا بی نظام 





تس طرئ غاظاواڈ ل صن کے نانقاءشین صا کرام ری ارڈیننہم تھے پالئل ان کے مشابہ ہرددر ٹیل خھانظا ین ہو تے ہیں اور 


اگل دی اعمال د ہراتے ہیں جواعمال اصحاب مق ری انڈنہم کے جے۔ مین خانقاہ کے اصول و داب ددی ہیں جوہرلی خمانقاہ کے جھے۔ 
یں اصحاب مق ہادرم جدہاور؟ تدہ انا ْشونوں میں مشا بہت پاکی جالی ہے۔آ پ رح تال علیفر مات ہیں : 

دہ ہروقت ابی نمانقاہ یل رئے ہیں اوران یتب کی ری کرتے ہیں کو یا خانقاہ ا کا ام ہے اوردڈی ا نکا خی وخ گا ہے مس طرئ 
ہرقم کےاف راد ک گر ہو" ہیں ای طربح صوفیا ک ےھ نما ظا یں ہیں ۔ وس اس صورت یی دو ال مقہ سے مشاہ ہیں ۔ اس مشاببہ ت کا 
مر یدشموت لال حد ہف مراللکہ سے متا ے جوحظضرت الوز رع رحمتہ القدعلیہ نے اہیے مشار کی اسنا سے منرت طل ری القدعنہ ے | 
ردابی تکی ےک کپ نے پایا: 

جبکوئی یس من *٭ ال ریسولی من باہرے؟ تا اور اس کا یہا ںکوئی شناسا ہوتا تو اس کے ہاں تا ممکرتا او راگ رکوکی چان پان نہ 
وی تر دوصفہ پآ جا اتا ہشن بھی اانالوگوں یس سے ہہوں جنپوں نے اولی صفہ کے سا تی مکی تھا۔ 

(گوارف العارف۔ہاب۰٥۱)‏ 
1 پر7ت سے برمشا ہت تک جال او او وو کی اردۓ ہیں: 


راوں ےکی ۂم ٹگیااو رص ررخصت ؟ەوگیا سا نڈاو بھی پا ابی ال قشت اودرمحبت مل 


ان مین کلساشیت ہے اوراس پرسب تم ہیں ۔ ایک ساتھ مرگ بس رک تے ہین لی اص تورم بک ری ے ا خلا فنئیں ے نشیا 


ٰ کے نٹ ےکھاتے پت ادا اب گنک رت ےت داقف ہیں ۔ 
( رارف العارف۔ہاب )٥٣:‏ 
ودتُا عادات واطوار جوصفہ کے چوتہ پر ےکی بات اواب شگہ م۲ یں ددی جا داٹ واطوازآ مز وکھی انا ہشینوں ٹس 


وا نظ : ہیں۔وبیآ داپ ہیں نا تاہ ے اور ونی اصول وضواریڑ ہیس خمانتاونٹینوں کے جوا رح سے چور سوسال پھلے کی ما قا مہ۱ 


کے تھے۔ ۱ 

ھانقاہ کے1 داب میں انتا پشینوں کےف لئ اوسر وقیام نا نام کےلو اعد رفبرست ہیں- 
انا ہْشجینوں سے اننس 

ای ہہ میں سی 


ےک ےسب الاصا کاکفالت اکن اکر مل زورون 7 خی ےکا مموں سے اتا ریم 
تر چپ ی ۳ وف لکور کک کے رات دن عپارت میس شخول ر ہیں اپ اوقا تلنہدار یکر اوروردو وا تف ٹیس صروف ر یں 
زمازوںکا انارک مس (نما زاداکر نے کے لیے تیر ہیں )او فنوس سے خودکوفو ا رگیں گرائن بافوں پ مانظاش نل برا ہو جات گا 













۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6811071 








فذدہ ایک ز بردست جار( طالپ مولی ہکن جا گا( عوارف العارف ) ٰ 

خانقاہ یٹس ہرحم کے ی ریش رگ یکا موں سے اجختتا بک نا چا بے گر پیٹ نسواراور ہک مک تش1 درا شیا سے پ ہہ کنا جا ہے ۔نمانقاہ 
ہم کے رٹ دسرودہ موکیقی (موجودہدور کے مطا بن ٹی وی بنلھیں وغیبر رکٹ کیاشن سےہمانعت ہ ‏ ےکہ مد تیاد تی اعمال ہیں 
اور طامباان موٹ یکا نکی زندگی کے اصمل متقصد :یش مع ذ تعن تعالی سے رو کت ہیں ۔ججیا کہ پیلےککھ ایا ےک غانقاہ دہ مہ ہے ججہاں ہر 
لیے ذکر اش جارگیاءر ہنا چا ہے٤‏ ال عم کےئچ اعمال خانقاہ کے نخفر کو پا ما لک تے ہیں ۔ کہ چرطالب مو یکو ہل اور رخف خدا 
ٰ کرت ہوئے ایی ےگ اعمال سے پ ہہک نالازم ہے اسے ہردم بی شال ر ہناجا کرد اپنے مرش دکام لک نگاو ٹس ہے ہناگی الیل 


سراضجام ضددے جوا لکی ابی پکھڑاودم رخ کام لک د 1 زار یکا باعث ہولنکناگ رھ ریھی دہ انل کی خواہشمات پہقابوضہ پا کے اراس ٰ 


کاٹس اسے اپ یٹ اعما لکر نے پراکسائے لے اسے چا کرد دالن خواہشرا تک یکل ذرکرےت اکم اک انا ہک نخلزس اس کے پاتھوں 


ا لی نہد یکا کی طرف سے مقر رکزدہنمانقاہ کے سر و پرلا زم ہ ےکر دوس بات کات ے اترام کر ےکخانقاہ موی ھی ایا ٰ 


می نض*و جو خانقاہ کے فی سکی یا ما یکا سپ ہووت 
یں ا سے ووک راک و لا جا ہے پلا یگ ری کھانے کے لیے لے اسے+ بشسم ال و الرخْمٰن الرّجیٔم 


اڑھک رکھا یناج ہس ےکیو کی کشک رما ا سے یسا ھی ہوشنا بی شفااورگو ری ور ہوتا ہے۔ اش بی کرکھا ا با برکت ہے۔ اسیو لکرکھانے سے ٰ 


ک ڈ تھے 
ٰ نادم خاناء کے لیے ہیام تخل ہ ےک؟ نے وانے مان بی یھ نٹ لککرے۔ جناب اق نرہ شی ال عنہ سے 
اروایت ۔ے جات وف ری صورت یس رسول ارڈ مکی لعل و1 لم کیا خدعمت میں حاصضرہو تو1 آپ کی لعل و لمکا ات 
اوت میں موجو دنہ تھے .ام دہا کم گے مت عا تنشصد یق نشی ادڈدعتہا ن ےعھم د اہ ہاادرے تمہ تا کیا جائۓ ۔ بھارے داسلے 
مھ ہہ تیر ہوا او ایک اع بی کرک رہ مکوکھی امیا جم سب نے مم و کھایا۔ جب رنول انڈ کی ادشرعلی ہد لہ ول رش ربیف لا ئے تو 
ھملوگوں سے در یاف تکیا مک ہچ زکھا ےک )لا ؟ پم نے عورف کیا گی ہاں ارول انیل ال مل ال1 

ای طر نے دالے کے ل بھی بیس تخب سےکسد اٹ یآ یراد رج قرم خاناٰشونوں کے یکپ کر ےاعقول ےر 
سرکارددعا لی ابشرعلیہ لہ ؤملم جب مھ بنمنودہ ش لآتشرلیف لا ے2 پ نے ل2م مال م کے لیے ایک اونٹ ذ حک ریا تھا 

بھی رتھاراہیہا انا نچھی ہوجا تا ےک نانقاہ میس و ۓآ ے وا ے1 داب داغل ےکم گا ہو تے میں اس وفشت دہ ٹھب راجاے 


ہیں (ا نکی بھی سی ںآ اک کی اکر میں )۔ اس لیے مسنون عطربقہ یی ےکہائلی خانقاواان کے پا لآ کرٹیچھییں ووران سے نمی اور ّ 
عبت کے ساتھریں تاکراحس ای ہیی اور داب سے عدم واتفیت سے جوشیران مل پا وکیا ہے دہ دو ہد جاے اس میں بک خیلت| 


ہے سابل خمانقاہ بجی لازم ےکر ےک نے وا لو ںکوخو د1 داب انا ےآ گا وک بیں۔ 


ححریت اہو فا میعن سے م۱ وکیا ےک جب مس رنسوگل فداصکی الڈ علیہ و1 000 پالدت. 


خطبردےرے تھے زم نمیا اہول اڈ لیر یکس شش بب ع+ےدم 


۱۱۷۸۷۷۷۷۷۰۰۱۷۷۸۹ 61002173/:07 





تضوروٹ اأنم ری اش ہکی میا ہراننز ندگی اور موجودہ انا ایام 








معلو مک نا چا ہتا ہے .اس ںلویاں معلو مکرد ری نکیاے اوہ کے ہی ںک تحضورعلی للا والسلا مم خطہ چوک رمیہرے پام سآتش نیف لا ےو سے 
کے پا کوں داٹی ای کک ری لاٹ یگئ یآ پ لی ال علیہ دہ لم اس پتش ریف فر اہو ے اورپ رآ پ صلی الشدعلی دو نے یں دی امو 
یلیم دی اس کے بعد پیملی الل علیہ ہل یسل نے پھرخط روغ فر ادا کوکیل پٹھایا۔ ٰ 

یس ہہ بات نا اورصوفا کے ایی الات مِں راقل ےکمدہ ایۓ مسلرمانع بچھا ول کے سا تجھھ مکی سے ہیں1 میں اور اگ تھے 
اپندیدہ پا شس سفن با یھنا یتو ا نکو برداش تک میں ۔ بھی السا ھی ہوا ہ ےک خانظاہ می سآ نے وا لفقب سے مراسم صوفیا ہکی خلاف 
درزگی ہوجالی ےو ا کوچ کنا اور با رکال د ینا بت بڑ یی ےت 0 "70 بر ے اور اولیا الد الیےبھی ہیں جو 
آ داب خمالقا ھی سے پپادیی پور داقی ت کنل ر کے ہیں مان دہ خزانقاہ مس جج ارادے اور بی ری عقیدت کے ساتھ داشل ہو تے ہیں ۔ 
جب ان ےم الو ککیاجا جا ہاو ان کے دل را رازہ ظا نکرمے .ت7 کان کاسیمروےص سد کی ای 
کاامکائن ہے پیل اس سے پ بی کنا جا بے اوزررسوگل خداصکی بل رعلی و لہ نل کے اخلاقی عالیہکو شش فظررکھنا جا ہےکرتضورعلالصلا تر 
ملاس در جرد دمدرارفرمایامرتے تھے ۔ددایت ےک الیک بدوگ سید( نیوکی) ی۲ سآ با ادرائک نے دہاں پپیشا بکردیا۔ بی دج ےک تضور| 
علی اص والسلام کےعھم کے مطا بن بڑرےڈول مین پافی جھرکر ام سکو ہا دیامگیااو رتضورعلی لص والسلا مم نے اس اعرا نک کاڑیں بل ا 
ایت نرک اورخوش الا ئی کے ساتھراے اس کےفرئل سےآ گا کرد ماگیا۔ 

بادرکھنا چا ےک درضقی اور بدکلا ئیحبثٹ پاضن کی علامت ہے جوصو یا کے عالات کے پالئل مزائی ے_ا 0۳ 
اص1 ئے جوا تقائل نہہ کہا کودپال رکھا جا ہے فے ا ںکوکھا نا شی کر نے کے بروہاں سے رخصس تک دبا جات ےلان لائمت اور 
ٹر کےساتت ھکار باب نمانقا ہکا می ظریڑدے۔( عوارف العارک) 

خانقاینوں کے لیے خمانظاہ میس مہ یاکرد 1ہ یٹس الش کی طرف ان کے پا اماخت ہین .ےت - 
اتال نو جائزددرست ہکان اپی ذ ای مین اور رام کے لیے ا نکا بے جا اتال ترام ونا جائز سے جم انا نو اور بیہا کا 
اتظامكمرنے والہوں کے پان وسرائل یاکھا ہی وی ہ ےک مالک ذات اور مال ددولب دنا کا7 لیس می لکوقی شی فی سپا خانظاء یس فرا ہم 
کرد ہواتوں شا ہی انی دغیمرہکواحقیاط سے استحا لک نا جا ہے ۔ ہہت ےک انیل صرف الل سے قر بک خرن ثتے استحا لکیا جا ہے اور 
زالی اخراضلوضروریات کی یل اب ذانی خر ےکی جا یا قباعحعت اورصب کیا جائۓ ہبہرحال اسراف حول ہی اور ہولتوں 
کے نا چائزاستعمال سے بر ہے اورقرب ورضاے الیکا باعث ے۔ 

ایک دوسرے کے مال پر لظرکشس بونی جاہییے۔یادد ےکا دتھاٹی مال اولادہلباس اور عادا تکوکڑیں دبا سے لہ ایدو کو 
د بنا ہے اور اللہ کے زیادہ نز دیک دبی سے چود یکا زیادہ صاف ہے۔ نانقاوشینو کو ظاہری مال تھ راک یک بھی خصضی خیال دنا 
چا ےکیوککہصفائی نصف ایمان ہے۔ نانقا ہک صا فک نے سے مراداپنادلی صا فک نا بھی ہے۔دل جقتا شفاف ہوگا اتی ینوی بار 
درست اوروا رع نظ ےکی _ ٰ 

بس الد یں از دواد ہوا راس نے عم معرت تی کاڑا کہ نہ کچکھاہواورروعاخبیت کے اگ درچہ نا دد:ز یلم 





ری 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 1100171 





ری 


دبا جانا ےکردہ خانقاووالو ںکی حدم تک ےہ بی خدصت ا لک عبادت شا رکی جات ےگیا۔ دہ ابتیتسون خدمت سے اب الد کے وو کو 
ابنیطرف ما لک ےگا اورا نکی برکا ت اس کے شام لی حعال ہوجا اگ اددا ٹر دو اپ عاد تاد پا وکا کی خدمت کے 
ذریےے سے مین ومددکا رثابہت ہہوگا۔ 

رسوگی مداصکی الشدعلی د1 لہ کا ارشارگرائی ہے کن ایک دو مر ے کے بچھاکی ہیں ۔ ہرم یکن دوس ے ےن ضر ور یا ٹکا 
الاب ہے ول الن می جولوک اہین دوسرے پھائ یکی ضردرت پور یکر میں گے اتی قیامت کے دن ا نکی ضرورجیں پور یک ےگا۔ 

علا دہاز بیں نمادعم قدمت کے با عث سستی اورکا بی ےتفوظار تا سے اور مکی سقیا و یکا رکی د لکی موت سے یتم رم کہا ادگ 
غدم ت گی عحوفا کے نز دسیک تی کا موں میں شال ے اوران ط ربیقوں میں سے ایک طر پقہ ے جن کے زر لیے ارمانے قلے 
یے جاتے ہیں او را نیما لن ای اوضا زی سنہ پیراہوتے ہیں کن ہاپس سے وج رباب تصوف میں سے خروادرہ : 
سے رای کا لا کہ ہوا پاس لھا ات لان م نا سب یں ہے۔ 

مار اور وقیاء خیبروں یا نا ابلوی سے صرف خدمت لدنا ھی نا پن ری سک تے بلنہان سے ارتباط دا ملا طڑچھی ا نکو بین ریس نم 
کیوککہ جوجص ان کےط ری کو پپن دن ںکرتا تو اکر الما ہوتا ےک دہ ان کے طورط ریب کک ہجائے ذاممرے کے نقتصائن ا ٹھا تا سے ۔ 
صوفاے بتقا ضاۓے بش ریت ای افعال مز دہ جات بی کی مک ای کے باعفت خیم ران س ےکرا ہہ تہ“ تے ہیں .۔ اس لیے خمبروں سے 
خدعت لے سے ا نع ضعیاتکیاگر بیز یک نو تن بن یں سے شرمہ بات ۓ ےکہد کسی ملماان پراپٹی بر گا جتارہے ہیں بلہان کے 
گر کیل ومغلق خرارشفقت ے۔ 

جوخمادمان حا کی خدمت ٹیش مروف ہوتا ہے جو اڈ تال یی اطا عحتِ و بن گی یش مصروف می و دہ خماد مچھی ان کےٹو اب 
.می خر یک ہوگیا۔ جہاں خادم مید چھےکرد ہکا تن گی خدصت اس کے بلنداحوال کے پاححث شا ین شمان عطور پراما میں رسلا فو اس 
کی خدمت می مصصروف نہ ہو باجح کی خدم تکمرے جوا سکی خدصتکا ئل ےک اب قق بکی خدمت ال تنا یک عحب تک نٹ 


ےت 
0 













۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹ 600117/3 1 717 


ےن ید نک ری ال عنہ سے باسنامروگی ےک جب رسول خداص٥کی‏ ااڈرعلی وآ رم و تھوگ سے وائں ہو ۓ اور 
رید منورہ کےقریب نیت تضورعلہ الصلے 2 والسلام نے فر ما کی بیہیس دای ے لوک موچود ہیں جچنپوں نے تار ےس ات سفرکیا اور 
راغ راستوں اوروادبیوں ےت ہارے سا تھوگز ر ےسا کرام رصی انم نے عورف کیا اکتور ادہل یر ینرشیل رہ یئ جے( پچ رما راان 
کا سای کس طرج ہوا؟) حضورعلیہالصلے ‏ والسلام نے ارشادفرمایاہاں اا۲ نکوعزر نے روک لیا تھا( حرف اب یل دہ تہارےشریک 
ہیں )۔ لپیں ہن جوصدفیا کی خدم تکرتا ہمان ات کسی ا می کے باحت ان جیے مراحب عالی ہت کی کٹ سکتا یکن بی بھی دو خرصت 
یش مصروفر ہک غانقاہ کےگمرد چک لگا جا ربا او را نکی خدمت یل ابی جھ رو رکشل کے ساتح رگ رمد باادد بی خیا لکرتار پک ہاگرد ان ا 
گا ولف ےیٹحردم رات کیا شابدرغدمت سےا کی پچھۃلافی ہد جا ے فو اتا لی ا کی خدرصت بھی ا سکوضردر بن پاری بج ادرےگا۔ 
دو اپنی اس خدمت سےالل کے بلند پا یی لکازاواربین جا تا ہے۔ 








۱ ز٠ر٥ەی)‏ 
کی ط رح اہلی شف ہبھی تی ککا موں اورتق یٹ ناو نکر تے تے اددد یی مسا پاپٹ جان مال سے مددکرنے کے ےل 
بلک رکا ہکرت رج تھے میں دبھی ادڈدتاٹی کےأحلل لیم کےسزاوار بن سگئ۔ ٰ 
ا خانقاہ یش نس ف رلک وت ہیں دہ اپ اتماداورمتدہ ارادول کے باعث ای کس مکی طر ہدتے ہیں دوسرکی جماعتوں 
ئ۔ اتل ہےان می الا اتھا وکس پایا جا تا۔ چنا مرا تھالیٰ نے مونش نک یتح رنیف ا سط رع فر مائی ے : 
کم مان مزضزصض 
ترجمہ :دو( من )ابی ترفن ہیں اوراس قد رمخبدط ہیں جیسے ایک سبدسہ بای ہوگی د اوار۔ 
یس کے کس سارانوں کے دنو کہ زکراس رر فمایاے : 
ا(تَخسَيهُمْ جیما زَْلنهُم می4 
تر جمہ : قم ا نکویتد تطق خیا لک بے بہوحالائکہران کے دل پراگندہ ہیں ۔ 
ححفرتنھمان من لٹ ری ار رت ردایت ہب ےک می نے رسول خداصسٹی ااڈدعلیر د1ل سمکوریفر مات سنا ےک : 
ہے رک مسلمان ای کنب مکی ما نہ ہیں اگ کی عضو جیا ے رررہوتا ےت تا عم می سکیف ہو ےگ ہے ای ط رب گی ٰ 
می نکوکوئ یلکلی پچ سےا تیام مین ا سکی لیف سو ںکرتے ہیں_ 
تنا مسدفا کے لیے ہلا زی اورضروری وظیفہ ‏ ےکد 1ی عحب کیک رپوتفاظت کر یں ولوں یل پرامگندگی پیرانہ ہد نے ول 
اددلی اورروعالی اتاد سے اس پراگندگ یکا از الہگمرد بی ٠اس‏ لیک دوضب ایک دوعالی رشن یش ضسلک ہیں اورتالیف لی کے راب رے 
پا جھم جھ ے مھ ئے ہیں اورمشاب رک لوب کے سا تھھ وا ہستۃ ہیں بل انا ہول ان کیم جودگی بی اس لیے ےک مکی قلب اور؟ٗ رای 
ٹس حاصل ہواورای ہنا پران کے مان روا وی کا سلسلہائم ہے (سی داد خرن سے ایہاننیں ہے )اس صورت می ان کے لیے 
با بی رگا لی اورصبت درافت ادگ زیاددضروردے۔ - ہ- ٰ 
رت الو پ ری درشی نہ سے مردئی ہ ےکررسول اںڈیلی الڈدعلیہدآ لہ ملم نے ارشادفر مایا مو نآٴ پش یل ایک دوصرے کے ' 
ساتج القت وعحبت ہے ہی ی17 حومسبسوس سس ہے بس 
تارج یں ْ 
ٰ جم ااوزرے طا ۸ 0 لوف رعمترابقرعلیراپے مار ی -صے سرت الد عنہ سے روابہت نکمرتے ہیں مہ 
رسول الد مکی ای علیہ وآ لہ یلم نے ارشادفرمایااروا ئا ایک ری طرئ یں جاک مکش موی ہیں۔ جان پپپچان دا ی اروا آ پل مُل 
ا مانوس ہو جالی ہیں اور جو ایک دوسرے سے متعار ضف یں دا لن ک تنک رہق ہیں _ ٰ 
بیس یہی حال اب خانقاءکا ےک جب بیلوگ ایک مکش ہو جاتے ہیں تو ان کے دل اوران کے با نپبھی یک دوسرے سے جڑ 
اجاتے ہیں اور (جع ہونے سےعحمبیت نار پیرا بجای سے )۔ ان کےلغوس ایک دوسرے کے سرای بن جات یل اور روہ ایک 
ادوسرے کے مال کےگمران ہو تے ہیں جلیہاکمرحد بث ش ریف می ل7 یاے من دوسرے موک نکا ا ینہ ہے۔ یں ج کی میس دوتفرقہ | 








۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 10 0211 77 















ای ید بعد بد ہنشت کا ل2 فرکمرم رسفون سور یھو ید ۳ 


تو رٹ اعم شی شر کی ارذ مدکی اورموجودہماقای ام " 


























یہ انی ما طرادرپراگندگی قلب )کا ظ ور بات ہیں اورد پت ہی ں کر یصونی کے ول یں دوسرے کے خلا ف خیالات پیارا مور ہے ہیں 
فا سے ناپپندکرنے سیت ہیں اس ل ےک تفر ہکاظظہوركغرالی خوا بش لکا نت ہدتا ہے ادرخلہینٹس سے وق ت کا ز یاں ہوتاے نا ضر جب 
پھ کسی درویش می مےکیغیت پیداہوگی ہے ادردش کا شکار و جا تا اذ ررلڑگ الکو پان لے ہیں اد جان لت ہی کہ ناب 
عبت کے دائر نے سے نما رر ہوگیا اود ہلوگ فیصلہصادرکر دیتتے ہہ سک اس ےکم وعیی تکوضات جکیاضریانٹس میں سست بر اورنسن 
رعاعت اوقا تکوت رک کرد یا اس وقت اس کے ساتھ ناراشھگ کا رتا ےکر کےا سکوپ ردائز ہ عبت میں ات اکرلایاجاتاے۔ 

شس رع ا نککا ظاہر رط وضبط ےآ راستتہ سے اکی رح ائن کے باطن میں ىہ ربا و الشت ام رہے ہہ دو تصوعییت ے 
جومومنوں کےسوااو رک یگمزدہ یس پائی جال ۔( جو ارف العارف) 

خانقامشینوش کے لیے یہت ضمرددییا ےکآ پوس بیں بل یل لکراورحبت سے در ہیں یا نگ رکوئی صوئی ایانس سےمخلوب ‏ وکر 
اپنےکسی بھائی سے بنھڑ ٹیے نے دوسرزے نچھال یکویا ہےکہاپنے بھائ یکا منقابلنٹس سے تکرے پللیفف س کا مقا بل قلب سس ےرم ےکیڑککہ 
ج با٣‏ س کا مقابدقلب سس ےکیا جاتا ہے برائی ادرشرکا مادہ زائل ہو جا ا ےل بن پچ پھائی کیا با تکودل بر مت نے اور سک بس 
کم تکومحا فکررے چیہ اک ارشاد با ری نقالیٰ ے : ٦‏ 
دقع ِالییْ می اَحْسَنُ قد الِّیٔبَيْتَک وَبَيْته عَداوَةٌ اه وَلیٗ عَمِیم وَمَا بلقّها الا اليبنَ صَبَرُزا 

(فصلت۔۳۵۰۳۲۳) ْ 

تر جم :ما مھ ربق سے ہیی ںآ وک و چس جس کے سا تج ہاریاعراوت ےہا راگبرادوست ہدجاے اوریطظر یتصرف دہ 
اتعما لک ر کت ہیں جوصابر ہیں 

مرش رک ری مک اس معا ‏ ہکواکیس پہچچانا چا ہے می خوددی موا فک ردداوراگرقم ےسیا بھائ کی د لآ زاری ہوئی سذ فذ راس 
سے معائی ما تک وع نظ کہ دوتم سے بڑ ا ہے یا کچھوٹا امیر سے ار جب بن وکواد ےبھی ماق داستتخفا رکرنا جا اوراپے ا بە ال 
بھی معان مانگنی چا یج سک د لآ ذاری ہہوئی ہو اگمرکسی نے این بوائی سے اب یملع پر محاقی طلن کا اورددسرے نے ا کی 
معائی ادرمتزر تکوقبو یی سکیا نے دس نے نشی ی۔رسول 1ری مکی ابعلی وآ ےم نے فر ماما[ نی کےسانینے اس کے چھوائی نے 
معحزرت کاادرا نے مزر تبہول شلاں پرو یعاد ہوگا جوا رخش پر عاتدہوگا_ 

رت جا برریی ادن دعن سے روابیت ےک معخرت مھ رسول الد کی اش علی و1 لم نے فریا: ْ ْ 

اگرسیخخص تح نے معائ ماگی اور معزر تک اوراسل نے اس محذزرت اورمتا یوق لی سکیا دوہ جوف کور کی ں1 کے 
گ۔_ ْ ٰ 
سادق پنلئ قی رج نما نقاہ یش جم ہے اودچ جتاہ ےک غانقاہ کے مال وقف سے بااس مال ے جوابلي مانقاہ کے لیے مہ اکیا جانا 

ہےےکھائے فو اس کے لے یرد ریہ ےکردہ خداکے ذکر میں اس ططرں مشفول ہو جات ےک اگردوروز یکا جا ت2 ایہاؤک۲راس کے لیکن نہ 

ٰ ۶۶۶ھ" 720 2ئ 0ھ 


رف 








۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81101171 








کےذرائیس پور ےکی کر پا ہے (ر بانت باشفی وظاہری می مصرد فیس سے ) موا لے درویت شکونمانقاہ کے مال وف با دوصرے ذرائح 
سے جو مال خانقاہ کے ےآ یا ہےء انس سس ےکھا نا رد ایس بلہ ال سکوخودا ہے لیے روز کمانا جا بیے۔ائس لی ےک انقا ہکا کھانا تصرف ان 
لوگوں کے لیے سے جھ یاوالھی یس الس رر مصروف ضرق ہی ںکہدوسر ےکا مو ںکی ا نکوفرصت بیکی اوردہ بصہ وفت اور بن 
اپنے مو یکیابادشش مروف ہیں اس لیے دخیادانلے ال نکی خدمص تک تے ہیں ۔ ٰ 

لت اگ کی ا ان ے جو پ رط یقت (م رش کال سے استفادہکرد پاہے اورا لک زیت بیت ہے اور ا لک ہدایت ےراہ 
است پگ رن ہے اس کےکارے میس اکر کیا رائے ہ ےکا کوخانظاہ س ےکھا نا یا چاےذ کا فیصلیض رورسی ارت پڑنی ہوگا۔ 
شا کا اہی مک شی و ںی غدمت میس لا دی جاک 6مم تیالو إا ہے دہ ال سکی خدم تک 
معاوض تھا جا ےگا 

اھ ردالزما )آھ09.. ہیں مہب عرص درا زۂتک حظطرت تید بد ادیی رحمت انڈدعلی .کی خدمت میں د پا اس پودیی مرت مل 
خرت جنیر رح ت ار علیہ نے نہ جج پ رفظ ڈ ای نہ مد یکھ ا کہ می لک ام مکی عیادت یس مشغول ہہوں اور نی آنہوں نے بجھھ ےکطاممکیا 
ہا لت کک ایک روز خانقاہ لکل نال یھی ٹیل اس وت اٹھا اٹ کپٹزے اجارے اور ممانقا ءکوخوب اکیھی طرح صاف ستھ رام دیا۔ پر 
رف پالی چٹ رکا ربیت الف کویی دعوڈالا ۔تخ جنیر وحم تار علیہ جب خانقاہ لآ ے اود یتما مصغائی دشھی اورمیرے او گر دوغپار ہوا 
دکیکھا تق میہرے لیے دعا کی اورطل مرح از اک ال داوز ریت علیک بہا پچ تن پارفزمایا۔ کسی وج ےک یش مارح عظا مو تین جوائو ںکو 
خدمت پر ما صورکرد ین یں تاکردہبرکارگی سے تطو ظا ر ہیں ا سط ر ا نکودو ےل جاتے یں ۔ ایک حصہ معا کا دوس را حص خرم تکا 
(روعالی مرا بھی حاصل ہوں اوراجر غرم تپھی سر1 ۓ )۔(عوارف العارف) 

ریت کا کی لگاکی ہو یکوکی زم داری خواہ وہ ببیت الخ کی صفاگی وحم راکی ینوس ہو قام زا افمال ہے 
لی اس میں طام بکا لی خلس اورصاف خبیت شال ہو طالب کپ لازم ےک رابنا تما وقتصرف لب مول یہ ذک اسم ابشدذات میں ا 
مرش کی طرف سے د ہے من ف رک کی اضجام ددی می شر فکرے کہ اوھ وھ کے فضو لکاموں مم اگنوہ اپ کر ےگا تا ہے 
وش تکونا جا تر اتال میس لا گا کہ ونکہ وق تبھی اش دکی امات سے صےطلپ مولی می خر کر نا تھا۔آ خرت میں ال دش ت کی آماعت کے 
متعل بھی سال جوا بکیاجا ۓگا_ ٰ 

خانھاہْتینوں کے لیے یہ بات بہت ضمروددرگیا ‏ ےکراپنے ہسائیوں کے تقو یکا ال رنحاس یں الیاضہہوکہ ا نک سی عرکمت 
سے ممسابو ںکامسکوکن تبادد بر بادہوجاے۔ نمانقاد می حول د نیاوی بانول ادرشوردفو ا سے پر ہی زکرنا جا ےک دشیاا ودرا لک با تی طالبپ 
وی بھام ہیں- 
انقاءکی اصلاب 

بر ایک سل تقیقت ےک الام د میا اد دداعدد ین ہے جس نے جھوگی طور پر قھام انسا خی تک جار کری ہے گی کیا ہے۔ 

اسلامء ایمان اور احما نکی ان منزلو ںکوحد بیٹ بب راشنل ٹیل بڑی شر دبسط کے ساتتھ ہمارے نی مہ ربا نیپ نے فرمایا ےہ جہاں 








۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 10021 71 






تو رو ؛منلم شی ا رعنہکی ماہرا نز ندگی اور مو جودہ ممانقا بی نظام 


داع رہنمائ یردب یگئی ے۔ 

تار الام یں صسوفیات کرام نے نمافقا ہی نظ مکی یا دی اور پروان جچڑ ھایا۔ انقا درتقتیاقت در ںگا وص کی طرح دوت ببیت 
اہ سے چھال کچ اٹنے مر بلدکی روحالی واغلا قی تر ہبی تکرجا اور سال ارشررب الحزت کے سا ھ جوڑ جا سے ء را انقا کی ظا م مکی اسا 
بھ یبلق باون سے سے بل مانظا تی زظطام کا مقصراولیشن بی ادڈداوراس کے رسو لپ ایی کی محب تکوذر در د ینا سے ۔ 


نشکان ٣ہ‏ ت فیس باب ہو اورلاکھو ںگ مکشتدرا بیو لکویحبت ال یکی من لکاسرا رخ ما۔ 

ہر اہین خا لق سے دن ءد ین کےکا ممکواخی دک یبھی دنیادکی لاج کےسراضجا مد یناء ہرانسا نکوابنے سے بہت ربکھنا۔ انی ذا تک 
یکر ناء ندددپے یی ےعحبت اور ند ای اسے کن بشہرت ونام ورک سے پچناءبیعت میں نکی او مارح یس عا بت کی بی راک نا۔ 

یقت میس می دہ مضیا دکی اوصاف ہیں جن سے لکرتحسو ف کا ابنقرائی ماک تار ہوتاے ۔الد کے و یو ںکی زندگی اٹ ینتعلیدات 
کی من ری ۔ان کےکردار می اک کی وسیرت میں فی ء پیم یس اخلاص اوچوں یس انچائی شفقش تع کبس نے تار کے یچ ا 
دھارو ںکونتد ملک کے رکودیا 0“ 

ررحبت کے ہہ پچ یکم وآ شی کے علچا پچ تا وی الہ چتت جا نے جمونے بعب ئل کے میکددوقارہز پوت کی کے 
نی شاہکارادرعدرل دانصاف کے مہ پیام راس دنیاشیش رہن ال نچ ران دا رگ ماغند جو اپنو ںکڑیھی برساریف راب مکرتا ہے اور بیگا نو ںکو 
بھی :جن سک بچھا وں می دوس تبھی ٹیٹھنۃ ہیں اور نبھی ۔ با یم کے خوش وا ہمد کی کی ماعندرا لی او رق ہستیوں نےخلوق کے ولوں| 
اورز ہنوں ھکوس تک _ ْ 

۱ تق رٹوں اورنھٹؤ ںا مر رز شورشہرے ہگ رافسغ ںکہ جب د یک ھاگ یا کل نو دل دجائن سے ائن برفندا ہر سے ہیں نو پولڑگوں 

نےطلب دنا کی خواجشل میں روحا خی تکالبادہ اوڑ ھا اورپ رکیاھ بودکی کے نام پرلوگو ںکولوش اش رور کر دیا- 


اہول نے ای دکا یں سچ اکر اےکاروبار بنا لیا غی حر خوا ٹین ےیل جول اورنشست کے علادہ بہت سے تب رشرگی افعا لک 


بھی طلربیقت سو فکانام دے ڈالا۔ ییہاں بیرف ضکرتا جیلو ںکصفہو مک ے چوتضور نی اک رمیلگ این اص اصحاب صفکوبتاتے تھے 
دہ ای کم ید پیل یا سج تھا۔ 0س 0 

کہ موری ۸ر لے سے سس مب سح 
ہے سسستت سخ سس ست میسن کن ےرا ے 
بے بے حالف علاقوں یں لے گے تے اور یراول یا ۓےکرام داک یلم د نیا نیش پچھیلاتے رے جو7 بس رکا جا 
اب صش کا بتا ا۴ رت جھے۔ ۱ 


ارت کی طا مت اشن نیت کے جاے ہوئےط رق کرس اب گار نے کا نا وف سے ۔ ہہرعال 


اسلام کےخنواع ےش یت ایمان ےمان سے ع اداد رایھا مات داحسان ک ےپ یپھنوان سک یت 2ے 7072۲ ا 


صوفیاۓکرا گی مانقا میں پبیش سے ال کے بندو کی دادری ءتر یت نیم اور ذکمرولک رکا وہ رگ ری ہیں چہاں سےگروڈول ۱ 


.]أ۹61:771/3 ۱۷۷۷۷۱۷۷۰۱۷۷3۹ 







۱ رو انلم ۱ 


ری ا نہک ما ران ندگی ادرموجودہ ما ھا بی نظام 


ری 


عالات ددسریاجانبگچھی من روش ہونے گےہ چو سندوجبادوٹشونول کے وارٹھ لکوشھی بہوش اورزروز ان نے اہین اہراف ےآ ش اجک ردیاء 
رہوالیو ںکرد ہآ ستانے چچہاں سے لاکھوں ذن رگیوں یل انقلا ب باہو ارت تہ جہاں پرتے ے وف کی منازل ٹ ےکرائی جا ی تھیں, 
چہاں پرانھاقی داتمادادراخوت دہگاگل تکا درس دیاجا تاتھا۔ انس سک ہآ ای درگا ہوں کے پٹ ومسند حا د وشن ف روگی مال میں اہ کرد 
یں 

مریدو ںکیتعداد بڑھاناا یکا متصدب گیا“ جاد وجلال شی ایک دوم ے برقت نے جال ےکالا و دخوشا کا شوق کان اٹول 
سے تعلقات لف دا یکروارسا کی او مکی وتر بیت سے ددرکی کے باععث انپول نے روحاثیت کے پپیشم صا کوگدلاکردیا۔ 

انا ہی نظام کے شی عنا تر میس سا دی لم ول ء تر بیت اوراخلاقیا تکوفقیت حاصل ہے لیکن حعرر حاضرمیں مسب عناصر 
ماق ہوں ےنت پوت لے جار سے ہیں ن 

ع رماضرڈل بماری بہ تک غاناہوں سکع دص صرف ظا ہر دکھلادے کے طور پ بات ہے اورتصو فی نعل رو اور 
یت دماحول پھوغانھا ہل پرموجودئ یکن ذو اب سیاست کےکارد ہار لک بے ہیں۔ 

درپارولۂ نمانقاہوں اورمیلو ںکچھیوں ورٹ ون دداور فال ڑکا لے والو ںا راخ ےءایے ٹس لصو اورماناہوں کے لظام ۰ 
امطاحات :اگز رہوگ ہیں قصوف تو دن ےکآ م اور کاغا م ‏ ےکہ دن انل اتا دروایت سے مطا تالائاےے 

اسلام ما سی تس فکیکک یں وت کےا ام سے نع ہدیس بک نل ےک دومازہروزے ہرود 
2 :یش ری پابندکی ےجو وو1 زایثراردے یادوصرو ںو زادیے پرواتے پا نما سچھرے_ 
٘ کول صون بای ران و انین کے خلا فی۱ لک رن اع نہیں رککتا جو سواشرت اورمعیشت: اخلاق اورستا مات :تق وف ال اور 
عال ر۱7 7 یرود کے تلق ابقداوراس کے رسو لپ نگ نے جائۓ میں اوریع ‏ یکا کرق ر٢‏ نت شال جودے_ 

و ہے تنک اہین ےک ال اوراس کے رسو لپ ھک 
یر دی سے بال برا بجی اراف نکیا جا 

الا ئی توف ربعت سے ا ککوگئی چڑنہیں پش اعت کے اکا وا ای خلیں اتیک مق می کے سا تھ بججالیائے اوراطاعت 
الد سے عحبت اورائسی کےآ خرکی سن انساضی یھگ کے ا ۓ ہد تع لی کے مطا بی زم دک یکز ار ن ےکا نام توفن نے اولاے 
ری ات پچخقذل میس ٹیس ا رکیار بتا ہے:اولیا ے الل کے مارات ےنیل ناریا ہے ادرگوا سن اب ہود سے ہیں۔ 


ما تھا بی زا 1 کے غروخال 













صلی خانتاہ 


الندفتنا کی نے او تآیا ات یٹس ول تاب یتکور لی یلم کے یا دی مقاصدا کن را 











۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 1 711 7 





تضورنو ٹاش نی اشعدل مواہدا ضز خی اور جودہ انتا یظام 


دیے۔ چناغ ین لی اللرعلی ےملم نےبھی اپ ف راخ کو پاکمال وا مادافرماا ہے .آ پ کے ٹیلف رگ یس ےت کین س ھی ہے۔ 
شی امت کےقلوب میس سے خی ارک عحبت او رخ راد کاخ ض کشخ ہوک رارشدوحدہلاشش ری کی عبت اورادادذ دا لا کا خوف پیدراہواان کے 
لب وروج ے بر یاتصکتی ںخقم ہوک کیک اوصاف اور داخلاقی پیراہوں ۔کیوکہ ج بتک ول شب را بداو رکنرےاوصا فک آ انڑل ٰ 
سے با ک نیش ہوتا اس وق تکتک اس مل عبت المیہ ؛محرفت خداوندیی ء رضائۓ باریعز دش ء اطاعت رسول 1 قیرت نہوت او زمرہ 
'اوصاف داعلی اغلا ق :یج یکھی پیدرانجیں ہو کت ریسا راصل چہاں ہوتا ےش رج تک ز باان ٹیش اسے نمانقا سے ہیں ۔ 

مفس مم سن ق مآ نکی مکی سور فو رآ ی تفم ر۳۷ فی ببدت اذن اد -۔ کےعح تفر ماتے ہیں 
افیٰ بُبُوْتٍ اَذِنَ الله اَنْ ترْقع وَ يْذْکر فِیْھَا اسُمُہ ؛ سب ُسَبْٔخْ لَە فِيْھَا بالغدُو وَالاصَال 4 

انگکھروں یی جنییں بای دکران ےکا ان جم دیاہے اوران می ائ کا نام لیا جا اے اڈ یح حر تے ہیں ان می سپ اورشام 

بآ یت ذک راد کے لی بنا یگئی مانظاہو ںکی فضیلت اورؤکر وم را قب کے جس مقصد کے لیے مہ نھانقایں الیک یں‌ان کے 

پورامرنے یکنمت مرد(اللت کل کے 

رشن مسحیروں اور انا ہوں ےت سے چچہا لع دشا ارڈ رکا کر ہوتا ہے ان وں میس ایدتعاٹ یکا نام لیا جاۓ اس مم نکد 
ٹپل اورطا وت ق رآ ئن پاک اوردجکرا کا رسب داخل میں ا نحگھ ردان سے مراسحچد یں اورخانقا یں مراد ہیں ۔ ٰ 

یل قب کے بعد جب سودتبد یکا ررغ ہیی ال دکی رف ہوگیاق قب راو لکی رف د اواراوراس کےیتصمل جوچیی دوا نفقراء 
خرباء سیٹھہرنے کے لے برستو رچھوڑ دب یگئی جن کے لے ےکوئی کا تاد کیم ریا رت ھا یچک صفہ کے نام سے مشہویھی صف انصل می سابان 
اورسا یدارک کی ہیں و وضعذا ملین فقرا شاک بن جواہینے نظ رب رف صابر یا نہ تے بللہامراء داففیاء سے ز ادہش اکر ومسرور جھے 
جب احادیث قر سی راورککمات نب یہ سن کی فرح سے بارگاوضوت ورسالت میں حاض ریت نو یہاں پڑے رج تھے ۔ لوگ ان تنا تکو 
اصحاب صفہکے نام سے با کر تے جے ا ا پر ونز مراو رن یکریھ مکی او علیہ سل مکی اہی جس نے باتراررضاء وریہ تن رکود نا 
کی سلطنت پت نی دی۔ 

خم عب راس جو دا رق ایی (مھھو رۃ یس صفہ کے پا ےٹر اتے ہیں :ش شا کین صلی اود علیہ یلم جن نکا رہ انظمیاز الف رف ری تھا 
اانکی مہ انقا تیاور اسححاب عضہار با بن کل اودار با بت لک ایک فاقہ مست جا عتکھی جو کینٹس پھلم ودانش کےتصو لکی خاطر 
یا نج“مضفی صلی او علی یلم فیس بار ہو ن ےکی خر سے ہرکنڑیی خدرصت عالی میس حاضرر یھی 

خرن دارری مس ےک ححضور کر لی امشرعلیہ وس سنوی شریف می تشریف لائۓ دیکھا فذدہال دوا لک الک علق گے ہے 
تھے .آ پیم الل علیہ یلم نے پہ پچھ الہ ہیلک الک الیک ددعلقوں می ںکیوں پیش ہیں ایک بی علق می سکیو ںی ؟ صھا ہکرام رضوان 
ڈیہ !نین نے ع ضکیاکہ یارسول ایڈییلی الشعلی سکم ری مکا حلقہ ہے اوردوس را ذک رکا علق ہے ۔آ عسے نےفرما پان 
کل خر دوفوں ہی مجر کے حلقے ہیں _ 

علا مہ ذ گی رح اڈ سیر اعلام اڑا شرفر ات ہیں :اما سن بصریی دحا کا الیک نمائ علقہ ای ےگ میس ڈاکرتا تھا اس میں 











۷/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹66011071131. 


تضورفو تشم شی ارح ہک مواہرانہزنلدگی اور سو جودہ انا بی نظام 












ری 


زکح ضائن ا ام نع ن کرت یب کی کم ا پیک ینک ہو نے تھے اس علق کی اتیا زی خ لی ریگ یک 
(یعکلمون فیہ فی اآفات النفوس و طرق علاجہا.) اس مر أفسا ی ببار یں “ڑا کبربحی بس ہش لا مخ ءر یا رادغیمردی 
نیس اوران کے دو رکم نے کےاساب وط ربق جو بیز سے جات جے۔ 

این تلیہ نے اپینے فیادئی بی سککھما ے لداع بن ز بد اوران کے اباب نے بھصرہ یں سب سے یصو فیا وکرا مکی 
ایک مکان ) مانقا:( ٹج رکیا۔ 

خوا عبی ادا 7ار رحاش رط نات صوفیاء بش سکیتے ہیں : دوسریی دی !جج ری ز مان تا انان میس حضرت سفیان نو رکی رض اد کے 
برحص رش ابو اشم رص ابق رکید ذکر ڈنل او نیم وت کی وسلو کیل با قاعدہ خانقاہ کے نام سے مرکا نکی نیا درگ یگئی ۔ یسے اتزظا کیضرورت 
ےت تما مب ۶ ا۱ ےا کرات کے لے مددسجودج سآ یا عہدرسالت مآ بم٥لی‏ اوشرعلیہ مم جس چامعہ دارالعلوم اور | 
مرر۔ ویر ملانوی لاس لاح می سپ ا سے می ت ینس متصفیقلب ادراغلا قیا تکیگکی ت ببیت کے لے نانقادو جود یآ گی ۔ 
زما :رات ایس برامورسور میں ہو گی کیا ھا بیضردرتں کےقت ب یکا م مسر سے مود ہ مرکان می بھی ہوسلا ہے جع ا کہ 
حھرمہ میں ٹیل فا ربااور ید بیدطیب یس پوت وصطہ پر ہوتا تھا یتقیققت شی خمانقاء بی کے خدوخمال تھے جس سے تر ہییت اک رصا کر اھ 
خدای امتمان شی سرخرواورکامیاب ہو محلم اور ذکر کے علق آ رر کے دورکی پیرادارنیں جج اک ینف لوک سیت پچھرتے ہیں بللہ الہ 
کے ئل او علیہ یلم کے ز مانے سے ایر کے یا لٹ :ایب 

اصت اسلا می کےگیل القدراوکیا شر شا سد نا صد لی اکر سید ایی ری ارڈ کہا حضرت سن بصریی :ین ابا ریم بن 
ایم بحضرت سینا لا ما براقا درا یلاٹی رشی اوڈعنہاورحضرت جن مین الدرین جچسکی رش قتیا کی ؛شن فریدالد بینم شکر شع 
مردالک خالی ؛ پیےشنگڑ و لیس بنراروں بل ہلاکھوں افرادا مے ہیں جنن کے واسے سے نی دروعالی ت شی زظا م7 رح بھرکک با سے 
ای نظام یں انسماغبیت کے لیے با بھی محبت ‏ ردادارگی ایر مواسات ہ ہعدردیء خی رخ اوی ء اخدت ہعردت اور نات ہے بی نب یکم 
ص٥ی‏ ادشدعلی یلم کےیبنیمبارک سے پھوسٹۓ وا نے چشم رصان میں ہمارے متا شی ز ہرکاسا مان ت یاقی موجود کے ۔ کہم ای نظامم سے 
عم ربوطاد ہی سذ جماری اغلاتی فرر سس بلند وی ںگی_ ٰ 
مانقا بی نظام اورک ینوی ٰ ٰ 

ا پرفع دور جس جچہاں دنر بہت سار خرابیاں میں دا ںعلم توف کےنہم میس دک اہم اور بی خرالی ہوکی ہے ۔دہ یکا 
نے تول وڈ لکی بے قید یکا نا توف رکولیاے او ریا نے چچن ھا ہرکی رسوم او رکشرت اوراد وو ظطا کی فکوتحو ف لیا سے طز لوف 
کے ککھنہ میں (ا تع را وخلطرا ںکیں شی سے یک ظیرف لو ان کے عقزا تد درصت شررے ینف نگم راد ی کیک میں متا ہد گئۓ اوردوسری 
طر فممنفش حفرات نے بیہا کک تیاو زکیاک اص ل لصو ف کا اکا رکر ڈیے اورتعفرات اولیا ت ۓےکرام کے وف و برکیات سےمھروم بی 
رہے۔اور یز رگا راد می نکیا شان نش لگمتتا فی دبےاد لی کے شوگ رہوگ اور چو دوصد وں یسل مس ئل تو فک کراب وسنت سے خار 
اور ربعت کے خلا ف بج ےک رکوسوں دور پا گن گے او رت تلم تقو فکوش ریعت کے علاوہ ای کید ٥لم‏ یھی ہیں زور مال نو فکو 








۱/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 66101:2113]. 7 





رو )نشم شی اون رح نہک مھا را نز گی اور موجودہ ما نقا بی نظام 103 


تب بہت پا ٹہ جا یج ہیں۔النع حالات می اس ام مکی ضرورت ےک نمانقا :کی نظا مکاکمرداراور ا کی افاد بی تق رن وحر یٹ اورذقہا 


اولیا ‏ کرام رحمتت اید تھا ی ہم انی نکی ححققیقات ادراعما کی رشن میں اسل می توف وسلوک سے تلق ہ رح مکی خلطاغہیاں دورکی 
ای اور جو ریہ جھابلی وا ہرکی رف سے پھیلا اجار ہے ا لکا ق رآن وسن تکی رشن میں گز ہکیاجاے ط یقت ؛عقیقت: 
مرفت, میعت ‏ اخلاقی مھاہرات اکا رہ اشغال ہ مرا قبات ءا حوال و جیببات :تحلیدات مت ککینٹس متہذ جب اخلاقی :اور اصلاب اعمال ہکا 
مر تہ جوصوفیا ءکی اصطا رح می فقو فکہلا جا سے دراص لو ش رلعت بی ہے اورطر بقت ش اعت کے تفع ہے ز کہ انگ راستہ اب ہم اس 
مخ مکودورکر ن ےک یکو سکم میں مھ ےک یش ربیعت وطر ببقت جدرایل پلگ یش ربعت بی اصصل راستہ سے اورعر یقت اس رات پر دج یدکمہ چلنزا ے_ 

شریعت: اد رٹ ال امن نے تضورا رسای ھکوخطا بک تے ہو ئے ارشا دض مایاء 
ظإئم جعلنک علی شریعة من الامرفاتبعھا ولاتتبع اھوآء الذین لا یعلمون ہ انھم لن یغنوا عنک من اللہ 
شیئاٴط وان الظلم یىی بعضھم اولیاء بعض ج واللہ ولی المتقین ہ هذا بصائرللناس وھدی و رحمةلقوم 
یوقنون م4 ْ 
( سور ایام پ4 جح اب اس کے بعراے ‏ یپوگ بھم نے1 پگ و ایک صاف شا ہراوش لت پ راک میا ےکھد اآ پ اک پہ 
گی ماد گوں کی خواہشما تکا اتا نکر میں جوعل میس کھت الڈد کے متا بے میس دہ سہارے پگ یکا می س1 سکتے ۔طالھم لوک ایک 
دومر۔ ے کےسرائصی ہیں او نمیو ںککاسرائی اللہ تزاٹی ہے لیر تک روشنیان ہیں سب لوگوں کے لیے اور ہدابیت اوررحمت ان لوگوں 
کے لیے جو لیقین لا میں انآ جات میس نیقی نکر نے واموں کے نے ٹین لان پل کے حاصسل ہو ےن ےکا کر دے :یرت جو ہاضصنی رڑکنی 
ہے ہدایت جورا ت کی نتا نلڑگ یکمرپی ےءرحمت جو تصورے۔ 
ٹإومن یہعغ غیرالاسلام دیناً فلن یقبل منه وھو فی الآخرة منٰ الخحاسرین مہ 

جوٹس ش راجت اسلا ‏ یکومچھوزک رکوکی دوسراراست ایارک ےگا اس کے ریا کا رکوائڈد ہرقب لی نکر ےگا اورو ارہ پانے 
ان رہوگ عو ل کر کن کی تزی ت ےم جس ایک ایک فر دق کی و کی کا ادارہ نتھا جو دجن کے محاہراور راو کے ڑاپد 
تھے ررسول رتپ کی رعات کے بععداس مکی وم لی جماععت پا فسوی خلفاۓ راشد بین رشی اڈ نٹچھم نے ا سکا ا ہیام مرکھا اک لوک 
ال بنددگی ای رع پرقرارریھیس جن سکیکعلیم رسو لکرم ہلگ نے دی .ھا شی انڈنشہ مکی اعت پا فیس اولون انا ون ز ہر و 
نو بی کا معیار ے ۔خلافت راشدہ کے بعد جب اسلا گی خلافت جھ بندگی رب یل وک لش ل تی اس می کیرات نورار ہونا شرورع 
ہو ے تو ای لن کی واہل ملک مضرات ےلیم وتر بیت کے زظطا رک مض کیا اکم چ خلا فقت راشدہ کے دور میس کی نمافقا ہکی ضرورت یی دہ 
خلافت ہی رشددہرابی تکا مرگز تھا لان بعد کے عالات پھاح بک یھی او رت :تی نظ مکوق ہآ ن وسن تک ررش سابل یعل وعقد نے تر جیب 
زایا چہاں دنیوکی معاحلات اور مال میس را مال یکا اننظام تھا دہاں ت کی یں کے لیے روعالی تر ببی تکا ہما مبھی تما اگمر چہ جمارا 
موضورع اق ہی زا ماورت کیی فیس ہت ب خلا ۓے راشد بن شی ان شیہم کے بدگھرے ہوئے اعاد بی کے ذ ا ئرکوائل الا جاراورنن 
ٹی الد بن کے لیے فقہاءاورروعا لی تر بیت کے لئ صصوفیا تۓےکرا مکا پڑ اکر دار ہے۔اہییے اس ےکا م کے باد جود رسب طبقات ق رآ لن و 


۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 10 7271 7 





پومومفففمسمفویست وک ْ 
ای مال اصواب صفریشی انت مکی انا شی جس می تی ق رآان وسنت کےعلادہروعائی ‏ بی تھی ہہوتی تھی ۔ یی وجہ ےک ید شین 
ان میں ے) اکٹ نے لی اتا درولیات لی اون کے علاد+صوفیا ےکرام ن بھی ان سے ردعائی رت کاذرمیماناہے۔ج ا 
رح سے دوصرے علوم وفنونع اور دب رشعبہ ہا ےعلم کے عاما و ماہ مین ان علوم وقنون کے سال اور کا تک بن اوردات کر نے کے لئے 
ہزن کے لیے اس ز پان اوراصطظا حعات اتی رکی ہیں جج بت ک7 دیکوائ مم نکی ز ان داصطلا حات پرعبو رنہ ہودہ لپ ریط رح عرال 
کو پھھسکما ہے اورتراستتفاد وک رسکتا ہے ۔اسی ط رح صوفیا ۓکرام نے مل یقت وتقیقت کے مسائل دزکات کے لی مخصوس اصطلا حمارت 
مقررکی ہیں بش نک چجھے بی آ دی صوفیاء رح اود تنا یہ مکی با لکی تہ کنمی لپ سکما اور نہ استتفاد وک رسک ہے۔مشثالی کے طور پرائل 
لشتء مائض ء حال بت ) واحد :تع : حاضر ناب بل ۷چ تل ۰ اجوف بلفیف :اور ناف ویر گی اصطلا عا تک مددسے ابا بات 
مجھاتے ہیں اہ ل نو نے رع ء لب جء جزم تصرف اورغی تصرف وظیر کی اصطلاححات اختیارکی ہیں۔ ای ط رر اب داثوں 
نے بھی فردہ اورز ورح ہعع اورتف لق مضرب اورقسحمتء اورتتحیف ‏ جراورکحب مکی خودساختاصطظا حات اختیارکی ہیں ۔جبومیٹری والوں 2 
انےے نمتظراورفاصطہ خط اوروترہ دوائراوربورویرہ فقہاء نے علزت|ء اورمعاول ؛ رنح اورالترامء اس اچتتاداورا ما وظمرہ۔او رح رشن 5 
نے مرفیع مل ءاحادہ متو ات ہچ او ریصن ءاو ریف ء جرح ذتعدل :او نشین نے عض و جواہرہ جز اورک ہج اود بای ء دی روک 
أاصططا حعات ایچایس جس سے دو انی بات مکی لکن دوضرنے ایل فون کے بلس صوفیا ۓکرام نے ط یقت کے مسا وزحارت 
کے بیان کے لے جوز بائن اوراصطلا حعات وم داغخقتا کی ہیں اس یل ان کے سمازنٹ صرف بی ایک مقصہدتہتھا کان مسائل دزکات 
کو اگیم بے مکھایا جا کے بلمہان کے سا نے بی فص رھ تھھاکہاان با نکوجنن لکول فی ضردرکی ہوان سے اا نکواورا جن مطلو 
دائتڑے میس مرو درکھا جا سے ال کی ض ردرت اس لئ بی ۷ت یت یک اولل تقصوف وطز یقت کا ذ لنشین بی ہق کہلوگوں کے ان در 
دیندارگی اورخدا پیک ا اصل دو کو بیداراور ای سار کیا چائۓ جوا نمیا عم السلا مکی وتکا٥‏ لمتقصودتھا یلان ىہ بات جار 
و الم بادشا ہوں اورظا رھ ررانو ںکوگوارو یھی اس لئ صوفاءا بات ابی زہان اوراصطلا حعات یں با نک ۔ت رت ےکہالن کے اہینے 
ا نہ کے لوگ نے ا سکو ای طرح سبجھ لیس بین اکم مہ بات الن کے علقہ سے پاہ ہو دوصرے اس ساسلہ کے بعی رکون بای کو یا اب 
توف کے ٹل کفگروہو ںکی اصطلاحات الع م وف یک یح لی دفنی اصلا مات بی نی بللہ سے ا نگروہوال ریس زان 
6 )می ہے۔ بس کے ذ ریت د٤‏ یک دوسرےکو پان اور این مش نکوایک دوسر ےکک بات ہیں ریف چٹ س ےک رشدد 
ہرابیت نو شرلیعت بی سے اوران یاعیم کے لے ارس ونمانقا ہیں تا 1 7 گیں۔ دای 7ن7 سے ارت غظار دراوم و 
فو نکیلیم کےساتھیقینا تق کید پ ہی زگاریکابھی درس دباجا ا تا ہنملبام ہصلمین زیادہ وق ٹلیم لم اج رمرکوز رک کی وجرے | 
مطلو رت کی جوام الناہ کک مت لی سک باتے سا نوبی ما ل کال استنختام وقضا ھی مال وعبادا تکا ظا ہرک بچبلداورتر درا رت عقید؟ 
تر حیددرسالت ایمانیات اورمجاتکا تارف اورتا رع سے7 گا ہی پدرج کا لکھایا جا تا ہے می وجہ ہ ےکررنقی دنا تک ش ریت مطاہرہ 
ای صلی حالت میں قائم ہے ادرر ہ گی انشاء اللہ یعبادا کی پشٹی اقمام ہیں ان ہگ لکرنا نی ا صطلا حات می ںو ادا 0 





اط ]۹96607172 ۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷3 





تدحو نشی ال نہک میاہرانہذ نکی اورموجودہمانقا بی نظام 





یش تقا نو کوئی ما ٹیس ۔جیکن اولل (علر وقت )شی صسوفیا کرام ان شرئی اعما لکی ادا گی سی ال روح کے مطا بن بنان ےکی تر ہییت 
کرت ہیں خلا نما زکو نے یس یش راز مہ ہی سکیلماس ‏ لہ ما اک ہوطہار تگمل ہو :دنت پادا کی جائےء سم ےش وط یئ کا ر کے ا 
مطاٰق ہوادر ےش ہاصول کے مطابق ہو نشی مال قرا نے ےی اور و تکی رہشی مل نمازی اک مسلران ٹس بی متمارف ہوگا 
ا ما شاء اش ان نمو فکی ردشی ٹین مصوفیاءاا سک اہیت اس ططر) پیا کر تے اودت بی ہکرت ہی سک نماز گی اتا کے در بار میں١‏ 
حعاضرہون ےکی تیاری می لک نکیفیات ہگ رتا ہ ےک ددہاغخلائ کے سات اڈ سے ڈرہ ہوامعلے پکھٹراہور پا ہے ا کے د لک یکیفی تکیا 
ہ ےکا ا لک نماز برائیدوی سے روک پا ےگ یکیا الد کے شیقی بندہ بہونے اور جن ت کا سفن ہونے او رچ جم کے راب سے پچھلکا را مل ےکا 
انس پڑرا ہوا ہے ید اصساس ہے جوصوفاء کےمطلف لبق اہیے شاگر رات اورارادت مندمر بد بین یٹس تر بی نظام کے ذر یت 
پراکمرتے ہیں یہال ای دضاحت ضردریی ہے ۔ق رآ ن میں جس تی کنا مت کیرادرحست ہے اورعد مشش را یف می اس یکوا ما نکانام 
دیاگیا ہے بی چ زاصطاب صربا ری ںاو کے ہام سے مشہور ہولی ۔ ہہارا موضورع فی نہیں بللہ ماناہی نظام سے انس لئ ا سی ٰ 
افادریت کے چچن بچبلو با نکر میں گے امک راب نوا رکی طرف سے اس پورے نظ مک برع تقر ارد ہی اور ائ لیم وت بیت کے شع ےکووح: 
لاک رعوام الزاہ کو شبہ یل ڈالی ر ہے ہیں اود( ہم چو ما دمگرننے یست )کے مصداقی بین ر سے ہیں اوھ خانقاتی نظا مکی موجھ دوشکل و 
صورت بی بات گا تا ہلوگ اندنھیعتقیرت کے ہبھائے اولیا ہے کا مم لد کے مھاہرات در یا ضت ان کےگرداراورروعائٰی ‏ بییت 
کی رش میس اپناردار بنالعھینل ۔ ودرار اور غاناپلاٹی می صرف انا غرقی ہ ےک بارس مم تنصوی لوک بی استفاد ہک تے یج خانقاہ 
ردام ووائس پ ےکھد اوران پٹ ھدد یبای شک سان ومزدو رس عم دشر سلپ رط گر کےلوگ انی استدراد کے مطا لن ٹیٹس یا اتے 
ہیں ۔چن زانفاہ تنا کال ہوگااننا بی اپینے مر بین پراثانداز ہوگا اورلی کمقیرت کی بیاد پر اپ پیرے والہاضہمزت دا رام سےا کے | ٠‏ 

اطکامات پیش لکر نے ٹیل ایلدکی خوشفودی اور خرم تک یکا میا یکا ذر می نے ہیں ۔ اور چچونکہمرارش کے مقاے بی مانقا ہوں بیل روعانی 
تر بی تکا اما مز یادہ بد وم مبوطار تا ہے اورا کے علادوخوواولیام ۓےگرا کاگردار وا خلا تی الس قد رقاب لکش ہوتا ےج سک وجررے 
کھوں خی سم ہوتے ہیں اورہدے ہیں جار کے اوراقی اس ےگوہ ہیں ۔ دوس کی رف لوگ ا ہے ہع مشری بن راتھیوں کے ساتھ وا لات |ٴ 
حبت ہندردی رسکتے ہیں جواسلائی محاشر ےکا مقصد ہے ۔ ال طر یقت اولیائۓ ععظا م17 یں میس جم را زکھی ہو میں اد وف کے 
ْ اموذومارف کے واقق گی _ چوال ل یقت کےاصوف کے بارے ہیس اقوال استفادة عام کے لے یی ے جات ہیں۔ 

رت یئھب نہلی بن ین نکی بن الی طالب ری بل تا تصحرفماتے ہیں 
(العصوف خلق فمن زاد علیک فی الخلق زاد علیک فی التعصرف) 

ین توف تیک خوئ یک نام ہے, جقناکوی شس کیک نول یس بڑھاہدا گا ءاتتا توف میں بڑ ےکر ہوگا۔ 
حطر منئتش رت ایل تھا لی عل رف مات ہں 
(التصوف حسن الخلق) 

توف کی ںل قکو کت ہیں۔ 





سب ہے 


۷/۷۷۸۷۵ 


106 





ا ا کی ابہعتضرورت اور کی امدارہاںل 
الا ماما سا ینعی اکنتوئی ( ۳ا۱ت فرماتے ہیں 


ولا تمَجدوا أَيَمَانَكُمْ دَخَلا بَيْنَكُمْ فتَرِل قَدمْ بَعْدَ کُبویِھا وَتَڈُوقُوا السُوء ِمَا صَدَذِنمْ عَنْ سَہیلِ الله وَلكُم| 
داب عَطِيحٌ (پسورة السحل :رقم الّیة : ۹۳)َوَلا تمَجڈُوا أيْمَانكُمْ دَخَلا بَينَکُمْ فَرلَ فَدمْبَعْذ تُْوَهَ 
وَتَذودُوا السُوء 'ْمَا صَدَدِتُمْ عَنْ سَبیلِ الله وَلكُمْ عَذابِ عَظِيمٌ ولا تَشَْرُوا بعَهُدِ الله تما قُلِیلا إِنمَا عِند 
الله هُوَ حَيلكُم إِ كُنهُم تَعْنمُومَ ٢)‏ عِنْدکُم قد وَمَا عِنْد الله باق وَلَتجْزِيَن الِّينَ صَبَرُوا أجْرَهُمْ بأحُسَنِ 
ما کانوا یَعَمّلون. ْ 
الحقة ما یجری بین المویدین الصادقین والشیوخ الکاملین من البیعة وھی لازمة حعی یلقوا الله تعالی 
وفی الایة اشارۃ الی المرید الذی تعلق بذیل ارادة صاحب ولایة من المشایخ وعامدہ علی صدق الطلب 
والثبات عليه عند مقاساۃ شدائد المجاھدات والتصبر علی مخالفات النفس والھوی وملازمات الصحبة 6 
والانقیاد للخدمة والتحمل علی الامحوان وحفظ الأدب معھم ففی أثناء تحمل هدہ المشاق تسام نفسه | 
ورتضعف عن حمل ھذہ الأثقال فینقض عھدہ ویفسخ عزمه ویرجع قھقری ٹم یتخذ ما کان اسباب طلب ٠|‏ 
الله من الارادۃ والمجاہدة ولبس الخرقة وملازمة الصحبة والخدمة والفتوحات العی فتح الله لە فی أاء 
ْ الطلب والسیر آلات طلب الدٹا وادوات تحصیال ھا ُء بالتصنع والمرأۃ والسمعة ابتلاء من 
الله إظھارا للعزۃ إذا عظمت النفس وشھواتھا فی نظر النِس وأعرضت عن الله فی طلبھا فمٹل ھذا|: 
حسبےه جھٔمم البعد والقطیعة قال حضرۃ الشیخ الشھیر ہافتادہ قدس سرہ ھنارجل اہن ابن المولی جلال| ذ 
یقال لە دیوانه چلبی یاکل ویشرب ویشعغل بالشھوات ویزعم ان لە نظرا الی الحقیقة من المظاھر حفظنا 
الله تعالی من الالحاد ففی حالة الاحتضار استغفر وقال یا حسرتا لم اعرف الطظریق ویر جی,ان یعفی لسبق 
ندامه وکان لە کشوف سفلیة وقطع بخطوۃ واحدة سبعین محطوۃ واکٹر ولکن الکشوفِ السفلیة مٹلھا 
مما کان فی مرتبة الطبیعة غیر مقبولة بل ھی من الشیطان وعوام الىاس یعدون اصحاب أمٹال ھذہ 
الکشوف الشیطانیة الاقطاب بل الغوث الأعظم لکونھم علی الجھل الجمادی لا یمیزون بین الخیر 
والشر ولصعوبة ھذا الأمر قال المولی الجامی قدس سرہ فی بعض رباعیاته. ٰ 


0 3 


۷/۰.62 


در مسجد وخائقه بسی کردیدم بس شیخ ومرید را کە پابوسیدم 
نە یکساعت از ھستی خود رستم نه آنکە ز حویش رسعہ باشد دیدم 


اللھم اعصمنا من الدعوی واجعلنا من اھل التعقوی 





رق 


آییت ٹس اشمار ہہ ےک جب م رید اپیے تم کال تر ہوتا ہے دہ اس کے سا تھ محاب ٥ک‏ رتا ےکا شیا سلوک میس ہر 
طر حکی ہکا لیف ادردکددردادر بر بیٹاتیال م مس رکھوںگا اور پٹمک ننس اورخواہشات نما لی کی خالشت اور کا لکیصحبت اوران کے ہر 
عم کےسا نے صلی ت رکرو گا اور ہرخدمت کے سل ےک روستۃ اور پیر چھا تو سکیا ہرٗیشج یک وکیا بات برد پارکی ادرحوصلہاورران کے سا تھ 
تن اخلاقی اوراد بے یآ کو لگا ء پھر جب سال ککو ا شا سلوک مخکالیف اور بر بیشاشیاں ستا تی نے نأ سک وت علال ہوا ے 
اوراشتابد جھانٹھانے سےآرا تا ے ءاوددہ جا بتا ےک تن کس ارت کےسا تم کیا ا س کے مکمر کے اہین دنیادگی 
کیاموں مرو ہرچاوّں ۔ چنا یٹس کےاکسمانے پر ہیع تن زکرنفسمانی خواہشات بر مل ےکا سے نان پچھمروہ برستورسا بی میاہرات 2 
دریاضات ملاع لگ للا :ا لی الو رن کیامحبت وخدمت مس حاضر بائش ہو ن ےگا ے ۰ا سے اگ رسلو کک وجہ سے پچحوفتے جات ای 
نیب ہوں ‏ دورما شرع نظ رکا سے ال شہوات غسالی کے جائ ہوتا ےل مج اسے ادیمدتعالی نے7 زمائش میں ڈال دیاے؛ 
ےلاو ںکو نچ روف را کیج نم میس ڈ الا جاک ےگا۔ ح 

تی سد نال لیر با فمادہنن دک سرظر ات ہی کہ یہاں ای ک شی تحضر ت موم نا جلا یکا لوا ےجس سکولوک د بدا نی کے 2 
نام سے پکالرتے میں دو تو بکھا تا بنا ءاونٹس اناپ کی لب نک لک ا٤ے‏ اورا کے پاوجود تی تک مدگی ے اورد ہکہتنا ےک : 
مظا رق ن بج وکرائ سط ر کرت ہے ء ایشد تھا ی می اناد ےتفو ظا ر کے ؛ جب ابس پر ح طااری ہوگی فے اس وت تا تب بوااورکہا :افو کہ 
یس نیقی را وسلو کفکونہ پیا نا ادراسی ریت میس م کیا مین ےالاایا پل یں نرامس تک وج سےبشش درے؛ اس کی ارکک۷راہمت ّ 
بہتششپوری دہ ےک تقر مو لکی مساف تکوصرف ایک قرم میس لی لیا تھائگو یا اس گی الا رفس حاصل تھا مو فیا مکرام کے نز دیک ِ 
ای ںکشوف سغلیہ ےل رکیا جا جاے او رکشوف سغلیہ اش تتما لی کے نز دکیک نامتقبول ہے اس لےکہ مہ رتصطبی پل شیطامی ہے ؛افسویل َ‫ 
ےک یدام ای ےکشف وک رامصت عطبعیہ کے ظا ہرک نے وا لن کوقطب اورحوث ہکھتے ہیں _ ٌ 

یسب پیل الع کی وجہ سے سے ء ان اعمقو لک یروش کیتیڈنیں ,اس مشکل موا کو کوک ولا نایا ھی رر الد تالی علیہ نے 
مرمایا: بہت کی خانقاہوں اور چروں 2ےس اہوں اورضت ےت ادرم یو ک2 چو ے مان ای کک بل ربھی اابٹی ہت یکو 
نا مناسکاء بللمرا نکوشم ی فا نیت ےکی لور پایاء ایبیل غلط دگوںل سے ہیا ئے اورار لق کی بنا ئے ۔ 
۱ (روخ ا بیان: :زس عیلمتی بر مصطفی ور ست نیدی بن الو تی لم لا بوالقد ا(۵ :ا ے) وا رالفگر بب روت 
جن کی شرائطازاماماصرضاخان فانل پر یلدی 

از مع بھی مور ڈ اکنا :رام دو رتصیل بسولی بلح برائیوں مسمول ام مھ یھر رروڑ دوشزز واج ) 

ناب فی ماب شیج بخش٤‏ فیا زماں, موا نا مولوکی اطدرضاخمال صاحب دام افضالہہ بعدسلام علیک دست بسۃ عرضل 
خدمت میل بے ےکلہ 

(۱) جیا اورخماندانوں شی سلسلہ پچ رکیام یرک جا رکا ے ای طط رح سے جناب تحرت شاہ مدارصاح بکا سے پاکیاں؟ 





(۲) خدامز ارت مکنپو رکی اپینے تن نما ندان خلغاءوججرییشاہ مدارصاحب سے بقلاتے ہیں ۔ لہاان سے ہریعت بہونا جا تھے ہے | 
اس ؟ کبوکلہ فی ز مانہ ارت نما نداا نک :بیع تک اور نما نرا نک یک سس ء اورنیزی بھی سے ہی ںکہ مر یر رت شاہ بمرارصاحب 
مر یضر تحبوب سبوانی قطب ر بای غحوث اعم سے زیادہ نہیں ء ام تد لبق طلب ہے ؛ پا تد پیرد ہک بداو باء پرورکی اورینرہ 
نوازبی عم سے اطلا شی جائے۔ ْ 


اواب 


تضورسی با خو نیٹ لم علیہ ال رشسوان سیر الا ولیاء ہیں صطرت شاہ برع لد بن عدارق رس سرہ الس مکوان ے اض لکہنا ہجہل 
اوطقیان وائت زا دبا ن ے۔ بیععت کے لے لا زم ےکپ رجارشرطو ںکاجامح ہو_ 

() لیر 

)٢(‏ صاحبسللہ 

(۴) رضم نی ٴ :۰ 

(۴) اتماعلمد بین رین وال انی ضردد یا تکاعح مکتراب سے کال سے ۔ : 

چان ان شرلوں یس ےکو شر لاک سے بجعت جا وی وا گی الم 2 

ناوک روم ما ما مات رضاخان ذاصل لوک حم ال نما یعل(۳۳:۲۹٣)‏ 2 
پچ رکا بنا بی رہ وسرو ریہ یں ت ٴ : 
الریاء والتفاق والمعاصی سبب الفقر والڈل والطرٌد من باب الحق عرٌ وجل ء المرائی المنافق یأاخذ لا 
الدنیا بدیههە وتزییە ہبزی الصالحین من غیر أھلیة فیەء یعکلم ِکلامھم ویتلیس بثیابھم ولا یعمل مثل : 
عملهمْ ء یدعی النسب إلیھم ولیس هو من نسبھم. ٰ 
تھے 

ریا کارکی اودنفاقی ءاورگزاونْق رولت اورانشدتھا کی بارگاہ سے دورک یکا سبب ہیں ء ریا کارمنا ین انیچنے وین کے نے یس 
لوکوں سے ا لکھا نا ےء اورقیکوں دای صرفشکل بنا تا سے حالاجکہہاس یسکو یبھی اہی ت نیس ہول ء اور پڑ ےل گوں وا للا مکرتا سے 
اوران یی ےکپٹڑے ہنا ہےء اوران جی-ے اعما لی لکرتاء اہی ےآ پکواان کے نب سے من ےکا و یکرتا ہے ھا مالکہایائیں ہے۔ 


رز راغ عبالق رکیل لیٴ:۱۷۵) 
٠ 4ُ ٠‏ 
خانقاہ بد رسراورنٹ رع مکا زرلعہ 


ان سلسملہ میس جو انا ءکاانداز ہوناجا یے ابھی چم اس پ لا مکرہ سے ہیں ء جج بک ربیک ما ِکتتان پل رج یھی من ہمارے اسلاف 
ٹس سے ححضرت مورتث بکجھوسچھ وی رحمتہ الیل تھالی علیہ نے اس وفت ایک نصاب دیانتھاء اس میس انمہوں نے سرفہرست م کہا تاج لم 


( ہلراول ) 





مانقاہ کا نصا بکیا ہہونا جا ہے 

رت مردالف اپ رحمت ان دحا لی علیہ کے نز دیک نا نقا کا اب 

صنرت مر دالف خالی رحمت الڈدتتعالی علیفر مات ہی ںکہ 
درمجلس شریف از کتعب تصوف مذکورمی شود ءواز کتب فقه نیز مذدکور می شود . 
آجہ 

مانقا یش جوگسشریف ہواس میں نو فک یکن بکادرس ہونا جا اورفق کاو ںکا درس ہو نا جا ہے _ 

اک رآ می نے دنا کہ غانقا ہکا نصا بکیا ےو ا سے حضرت سیدر نات الا ما عبدالقا درا یلا فی دادعت ہکی ان اکر ا) 
انی حایے یجس نے دب ناک خانقا ہکا نصا بکیا ہن اے و الا ماس ہداتق درا یلا ٹی ریش الشدحتہکی فذح الغیب پڑھن چان ءال 
شآب ری الشعن کی ہر ہل سکی تفعیلات موجود ہیں ۔ جس نے مد ھن ہوکہ نمانقاہ اک یاکردار ہے فو وو ححضرت سید با تن الامام 
عبدالقا درا یلا لی شی ان دعنہ کے ایک لا کوش اگمردو کو د یھ نے اوردہ پچردل گے وگزرہ رط ہک مور ت٣‏ ظررنت 
کیایء دہ جہاں صولی دسا رک تے بل نخوث جے اوروٹ پتنم تے ءا نکی مصرد فی تکیایا؟ دہاز مانے کے برریس اپمضعم ے .کون 


7.۔ 1021131 ۹ ۱//۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ 






1010 





تضو وت )کنل یھی الع کی ما ہدا نز ندگی اورسوجودہ انا جی نظ م 








ہے جودا نگجھرٹیں انٹھار سج پڑہائۓے ددئحوٹ پاک ریش اعد تے جو پڑ ھا یکرت جے ۔ می عا لم جج ںکوآ رج کا نے لف ظ کیک کچھ وڈ 


دا ے حطرت سی ناخحوت انلم ری الد عنہ نے روزرانہ اٹھارہ انٹمار ھن مک یکا نے لفظ پڑ ہا ہیں ٦دق‏ رآن وسنت اورفقہ دمیان 
رٹ رصرف وط ر یقت وش رلعت کے ٢جق‏ د نکر مڑ ہاتے در سے ۔اور ماندازدبااو رپچ راننہوں نے شس سا کک پٹ ھایاء ہرسال ان 
سےتین جرا رعلا ومرا مکی جاععت یل سے وا ررغ ہوٹ یھی ءا یک ل ونس کے شاگردہوں و موصعم بہوتا ہےء ریشناخت ہ ےک نھانقاہ 
کیا ے؟ لو ککپکعت ہی سک مسولی ساجبہ بین لے اد رچکٹڑىی باندھ لیے سے نظطاس نمانقا ہی یل جا نا سے ۔اس انا نکی سو یی ائیل کی ہیں 
حضرت سینا لا ما بد القادرا لیا لی شی اللدعنہ نے جس انداز میس نحانقاءکونفرس دبا ہے او رکرداردیا ہے اب جم سکوفومث اک ری 
اش رعنہ سےمقیرت ہے ال لک یگیا رہ یں کے نام پراپناایک بیاد بی نکودے دو ہن گار ہو سی دا نے پچبر نے ایک اک وکوخود بے ایا ھاء چھ 
ان کے پا پٹ ھے تھے دہ مو مچھذزٹےے لو یں تھ ری نغفرت سینا خوت پعشھم یھی ااڈد نہ کے بد درس ہکا طال یلم اجس نے 
ورالر نی زگ کی فور میس اہ مکمردار اداکیاءاوزرصطارجع الد بین الو لی رحمنۃ اش تھی عل کی ا "۳" َو انے والے تھے ء جب 
بسلا خعلہہ جع سید اقصی میس نکی تح کے بھااا یا حضرت سیدن ات الام مگپرالقادرا ای نشی ال عنہ کے ش اگ اورآپ کےنمیخسش 

۱ ا جناب!ما مکی لک اتا علیہ نے رجا 

اس لے مہ نخانقاہ چہادیھی او یجاب یھی بر یاضت شی اورم پش تبھی, .شر تکھی اور خی تکھی۔ 

ححضرت سید انم الا ما حر القا درا لیا نی ری ای رعنہنے خانقا ءہکواسٴاندراز سے چلایا ےک حضرت چردالف لف کال رت: اشقال 
فان گے 
اکە درمجلس شریف ا زکتب تصوف واز کتب فقه . 

انقاہ یس سو فک یکن بجی پٹ ھا ادرفقہ یکا یں بھی بڑ ھا2 
رت داما صا جب کے مز د یک خانقاہکا نصاب 
۱ کہا ہو ںکہخا نا وکا صاب لئے کے لے حیتسیدن دا تا صاحب رم تھا لی علیک کت ینک او بتریف بڑ عو 
اس مکوانقاو کے لصا بکا پند گا - 

تلیم ورضا کے مب بر ےس ءاورصرمیانے سےسق بخض میانے کےسوق بضع کے سق ہاج کی کے سق ؛ کی کے 
سب :ای اخلاقق کےسیق ,ا جچھوعقیرے کےسبق لچ نف او ب م حقید انل دوفو کو یا نکیا ہے مر ےکی بات ہہ ہ ےک" 
ایک ہاب اشات نرک ہے اورایک باب ا شبات لمکا سے ہنحضرت سی ناد تا صاحب رت ال تھا ی علیہ نےنق یی مکومقد مکیا ہے ؛ پل باب 
تھا شبات لم ربا بسکھھاا شبات نظ راور یکو ںکو ابا س ہس ساس نہ کے 
حائل بعر یل ےء 

برگںوونہرے ہاو ہمرنول: اور خر عی۴ 
اورپ نے لا ہہور یل خوداپنا مدرسہ ہنا ہداتھاءآپ من الشدتھالی علیہ نے اپنے شاگمردو لکیا جھائننیس تیارکر کے پیارے جتجاب یل 





۱۷۷۱۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 661000+21[/3[.٥/7 





تضور وٹ[ نشم شی ارعش کی ھا رانہزنمدگی اور جرد مانقا بی نظام 


ردان کی اورآ رج افو لک جبات ىہ ےکا ںکی خمانقاء ٹیس بی ےک کی سے ہ سک شر بجعت ور یقت ددا لک الگ 
رات ہی ںکحوز پالد۔ ِ" 

نیس نے خانقا ہکا نصاب د بکھناہونھ دو حضرت ابوطال کی رتی الہ تا لی علی کی قورت النقلو بکا مطا لئ دکرے ١‏ می کاب “میں 
ادگ چز مس جیا کرای ےک جس نے نف رکا نصاب پڑ ھن ہو وحضرت سنا می ردالف ال رحمنۃ ادا لی علی ہک یک بات ش ریف بڑھ 
نے ءاورائسی رب ہہارنے ہ رہ ربز ریگ کےکتو ہار نظ رس ےھرے ہوم ہیں خوا وو ہش ہوں پا قشمنریی خواددہتقادری ہہوں پا ردردی 
سا نک یت رمیوں میس ایی الیےگھشن کہ ہیں ؛انہوں نے اتی وض اضق کی ہی ں لیران لوکو ںکوکنوائش تہ دوج خانقا کا نخرس پا عمال 
کنا جات ہیں اور انا کو ہر فتقید بناکرلوگوں کے ولوں سے ا نکی محبت کا لمنا ات ہیں ء ان طالموں سے اپٹی ماق مو کو بچا نے 
سو یبن سا شس .ات 

آواز بر ہورہی ے۔_ ٰ 


کت وہ وف می سکس کے گنز ار ہیں 


حضرت سنا مر دالف شاب رحمتت اتا لی علیفرمازیتے می ںکہ 
بلکە از کتعب تصوف اگرمذ کور نە شود باک ٹیست آں باحوال تعلق دارد. 
ہ.. 
اذا وک یٹس میں نو کا ور بھی ہواورف تق کا در ں بھی ہوہ جرف مان مگ ےک اگ رتسوف یھ بڑ اف کوکی بات کیل اس لے 
را سکاتعلق احوال کےساتجھ ہے اورد وا و می سے بلراعمال مقدم ہیں - 





( مہات ری حص او لجلراول:۸ے) 

حضرت سینا مہردالف خا بی رصنت ال تھا ی علیہ کے نز دیکصصوی اورببراورر ہب رر یقت دو ےک جم سک خانقاہ شی نمو فکادرں 

ہونہہم+وفقہ کے در سکا ا تما حمسرور ہو نا جا ما لکش 2 لق رال ہونا ہے امم لکودرستطلم لڈدےا داکرنا یا ہے ہاگ رمعاذ 

ال غانقاہ بی الکی ہو ججہاں درس مددیا جا کیل ن ھکوگی شک ی نیس ہے می دوصرےلوگکوں کےکام ہیں ہ ہم د لک یا ز یں دارانتے ہیں 

؛ادردل کے روزے رککھے ہیں ء پچ رجن کچھ یکوئی د لکی بی ہوگی ڑنس میں مہ جا میں کے ء رب نتحال کی جنت میس دہ جات ےگا جورب 
تعالی کے اون کے مطا بن بنلدک یکر نے والا ہوگا۔ 

ححضرت سینا شاوولی الڈرمثرث دوگ رحمتت اللتالی عیفر مات ہی ںکہم شمدی شرائمط اوراہلیت یش سب سے بجی اورضردری 

بات ىہ ےےآہد و رآ نکمر یم اورحد یٹ شی فکاعکم رکتا ہد ءاس سے ھا ری مراد کی کرد ہ ان علوم یل چو یکیامہارت رکا ہوء اس سے 

مرادیہ ےک ردوق رآ نمکریم اورحد یٹ شریف کے ضروری علوم سے پا خی رہوہ تق ب ارک یا جا لن با اض مک کوئ خی کی کاب سی 

یر عا لد بین سے بجھ کا ہد ہر تسا اب ومعالی ءا کی لات مشکیلہ ءشان نزول اوصنص وخیبرہاوراعراب سے پاش رہوء اک | 


2 جلداول سر 


7..۔ ]010113 ۹9 ۷/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ 








اطرح احعادیٹ شر یپ نک کر مق رہ پڑھ کا ہدہ بی زاسے ا کے معالی اورا کے محاورات بمشکل | 
اورناد راکیب ے وا یت ہو, یز وا راب کل اورا لی محمل سےسلسے می تہ رکرا کی7 مکی مطابفقت ے پاخم ہو( مکل سے 
امراددہ دشوارلفظہ ہے جو بااخقبارلفظ اور کی بنحوی وییدرہ ہواورشتمل دہ ہے جس کے معالی مشتبہہوں مصی ایک مت یتین نہ ہوکق 
ہد ء اس کے لے ق رکا نکر مکاحافظ ہونایاراو لوں کے عالات سے پاش رونا ضرورینیں ہے آپ جاٹن ہی کہ تا مین اوربع جا تن 
حد بیٹ مکل اورحد رٹ عفلٹ کی قبو لک رلراکر تم جے ء ؛مقصدی ہب ےکعد بیٹش ریف کے بارے می اس بات کا پخند شقن ہو جات ےک 
ا کی اسنادرسول ارڑ ھی طرف تج ے۔ 

(التول؛ یلق ان ماء ایشا رٹ دروی: ۹۲۰))مطویاوری طالیگجرائواں باکتان 
انم ا وی ای اع کے نز دک کے لئے ےی نصاب 
کن فی تصرفانک مع شمس التوحید والشرع والنقوی فان ھذہ الشمس تمنعک عن الوقوع فی 
شبکة الھوی والنفس والشیطان . 
ت2 

ول یں لو حیراورٹر بت )انال اڈ ماتھ بک بل یش مھے خوا ہش یس اوس امارہاورخیطان 

آکے جال بی وا ہونے سے ہیا گی۔ 


سورنحوث | ث ام یی اک ابیز نرک اورم جودہمانقا ای ظام 








( ایخ ال بای الا ما مبد اق درا لی بی :ے١)‏ عطبو مہ 
اب شس ہے ہے پا ل9 یر لتت اورلؤ یک ا کے شیطان دس امارہو سے کی سک ے؟ 
دوسرکی خر ےت 
تفقه بالفقه الظاھرٹم اعتزل الی الفقه الباطن اعمل بھذالظاھرحتی یقربک العمل الیٗ علم لم تکن تعلم . 
ہے 
۳ جن شمربیت کے نظ ہرکی احکا ماع مین کے بعد پانی اعمال پاعم حاصص لکرنے کے لئے ییسوئی اق کر پیل ش لنٹ کے | 
ا ہرک ا ھکاس پش کرت اک را تلم پل کاکمال کے ال کک بچچات ےگا جح سکواس سے بیلے نیس جا تھا۔ 


چپ خودجائل مووە ریرش لیس کے پ سح سے 


ححفرت سید ناخ لا ما ممبدالقا درا لاٹ شی ا عفر ماتے ہی ںک 
من لم یکن الشرع زان تی مع الہ فھومالک من الھالکین .۔ 
99۷۰۶ ٰ ٌ 
ین جس نے (چیر)ش ربج تکو ہرحال اپنا رین ایل ہنایانذدہ شود ہلاگ ہہونے الا ہے دوسرد لک فلا کاکیاسبب بن 


) بی‎ ٠) 





زار ربیخ 7 تی الا ماسمبدالقادرا لحیلایٰ:ےہ) 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 661002-173/ 7 


تضورفوٹ انم یی اڈ رع کی مھا راز ندگی اور جودہ ما نھا ای نظام ٰ 113 


سکتاے۔ 








(ائ ار پان ی مغ الا ما بدا لقادرا میا ی:۸٢۱)‏ 
اب ٹس پپرکو اتا کا عط رگج ی نہیں7 تا ا ےگ رہش لی تکہا جا ا ےہ لتاب ام ہے اور جوشود یہت بڑا جال ہے دولوگوں 
یتر جبی تک یاکھر ےگا ؟ 
ححضرتسودنا مجر دال فا ی کا فر مان عا یشان 
پیربرائر آن غرضگل میگرند کە دلالت بشریعت نمایند. 


ناس ےا جکڑ تے ہی ں پیش رمع تکی رہنمائ یکمرے۔ 
بات ش یر۴ )وف رسوم ح تم ) 
2 ث لی سلمر ہپ الخ بتک لاب رہ نکراو کا بازار رک مدکی کے نام گر اجار ہے بن خداکوشری اظامات 


سے بیگا ن اجار ہاے اورطیتی بن ران د مغ کے سم رتقصوف وططر لق تک بدنام یکا جوسامالن تیارکیاجار اے دہ پیبدد وتصارگی کے احبار 
ور ہبا نکی دہ ل کا بیوں سے دہ برا ٹل ف کی ہے ایس ین ای ل جن ہائل فصییرت اوریق شناس دنق بین علا دی نکی موی تق راد پالی 
ےکا گرا اہی کےخلا فکون کوشراب دض رکی تہ پیک جناے ہدز تا نکا اضھا ممکو گے شیطان تل فکییں ہہوگا۔ ْ 

جن یہ او لے والا خرطان ے 

مَنْ سُکت عَنِ الْحَقٌ قَھُوَ شَیْطَانٌ أَحَرَس. 

7ت 


جیٹس ام بالمعروف اورٹچ ین اکر کے تقا سے اورے تہکرمے و گیا شیطان سے 
زا مس شر سک من الحجاح: و زکر ما نمی الد سی جن شرف النودی (۰۳٣٣)دا‏ مرا حیاء الت اث الصر لی ۔بیردوت 

اب علا گرا م برضردریی ےک دو اان چاہئل اورز ند لن بیروں سے تو مکی جا نپ کردا یں ما تو مکوزادراست لا یا جا گے_ 
جال پچیری تام سے 
واگردرپیرازین ھرسه شرائط یکے مفقود بود بیعت باوجائزنە باشدواگر کسے از سبب نادانی بااوبیعت 
کردہ باشد کە ازآن بیعت بگردد. ْ 
پبرومرشدرہونے کے لے مرکورہجش رئیا میس سےصی پبریی سکوکی ش رط شہہ وذ بچمرااس کے اتجھ یر ہیی تکرنا جات نیس ےگ کوٹ 
تس :ا دای کی وجرے ا لک بعد تک چک ہو انس سے جا نتچھٹرانے _ 
( سی ستابل ازم رعبالوائ مگ را ی:۵٥)‏ مط وم ور ررضوے[ا ہور 





بے ٹل ٢ے‏ ٹیٹس سے ٹس جیسشہپیشٹس پیش ٹ,شسم٠سج۲ٹٹٹ ‏ ٹکہش رس پچ ہچ ت ‏ شڈ سس ٹ یپ ل_مم_ُ۔مہجہجہےہ۔ ح٠‏ سسس ےت سگہچییسسسسسسٹسسےعبڑہب-ہینتکھیتےحکتبےبعبسےسسمسسسسسًمسسسوسصسىس-۔-س سے سشسی-ٹ- 
۱ 


0071 پت 68611071 ۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹ 


114 





عو وٹ امم ری اش ہکی ماہرا ضز نی اور مو جودہ خمانقا دی نظام 


جائل یبراوران کم بد 


اس ممون میس محانشرے کے اندرصرطا نکی رح میم ہوئے نام نہادیچھو ےکاردپاری پچیرد سک خر یگئی ہے اور سک کت 
اہسد کی بر نا کی کے اچم تین پپلوکی طرف بلک منددبارغ اوردددمندول رکھے والو نوم ای ہے ۔ لہا انس سار ے مو نکو 
کا پادری پچیروں کے تنا ظ رش بی بڑھاجاۓ ودنہ ہمارے نز دریک دلابیت بی ہےمگرامات اولیاعشگی بین ہیں ۔ 


بجر اید ہنر مل اسلام بھیلا کے ےک سہراصصوفیاث ۓےکمرام کے سر ے۔سید نا گی چوس کی رحمتت اد کی علیہ خواجہ نین الد من پش 
ا رت اتکی علی خ ات نظا الد ین اولیا رح ارتا لی علیہ با پاف الد مین شک حم اد تھا لی علیہہسلطان الارن سلطان پاہورم۰ۃ الد( 


تالی علپرسی نا عمان مردندیی رحمت الیل تنالی علیادرشاہ رگن عا کم رحمت ارڈ تھا لی علیہ وط رٹم کے اسما وگ رای خماال ہیں ۔ ان قمامم کے وست 
تن برست پر بلاشہہلاکھوں لوکوں نے بیع تک او نی کر مکی اوقرعلی یلم کے اصتی ہونے کے دارشھہرے ںآ رخ اس خطے یس اسلا مکی 
چہل پل نظ رآرہی ہےءاٹچی خشرامستو کین تکاشرہ ہے ء ان ضرات کےکردارواخلاقی نے ولو کی ز مین کی موا وک رام کے 
لال ار ہعہ کے فا یک زتادنے اسلا ماع ل کا یمان باج سک یتآ بھی ہری بری ہے۔ 


سلا ین اسلام نے وا مکی فلا و ہجبدد کے لیے چک ا تین اورمنا گل ہنواتلیں بات صوفا ا کرام نے اق ہی ںآ پاوکییں۔ ٰ 


نمانقا ہس کی ممنوں انسان تار یعھیں اور ےتا تے او ری اب ہو تے یخس لو کک یکئی دن قیا مر تے ۔ ا نآ ے 
والوں شئقراءاورورویٹوںل کے سا تھسا تح را ہج ہا را ہج وزراءاورنو ا ببگھی ہت ۔حمب استطا ھت ائنع کے نا انف کا ہئروہت 


کھیاجا تا اور ہر مکی ہہولت فراہ مک انی ۔چخ ومرشد کے دخیاسے پردہکر جا کے کے بعدچھی ر سمل نارگی رتا ۔ لکوت یسلسلہا بکھگ 


جاری ہے ۔جیکرن قیام وطعام کے جومتقاصدنظ رآ تے تتے رع ناپبید ہیں ۔ دو درحاض کی بڑ کی مڑی نمانقا ہیں با نج گی میں اورع ارات بے 
شی فظ رہ تے ہیں ۔کوکی اف راد ی طور بران سےکسب فیخ لکرتا ہو ہکن سے مان اتی طور برع ارات اسلا می اکم ددردول رےکوسول 
دوزنظ رآ تے ہیں ۔تہابیت افسو سکا مقام ےکآ دجیاچہا نکا نشہہ بے حیاکی ادرخیرشرگی امورا شی هارات پرنظ رآ تے ہین مز شیزرندں 
ایک مزار پر فا تی نرن سے جانا ہوا۔دروازے پر یذ جو تے ات دای گئ.۔ ام نے بہت ذزیاد ہک ہاکاہم اہپنے جو کی تفاخظت تو کر 
یس گےکیان باہرٹینھے مافیانے ز برق ہھ تین دوستوں سے روہے اھ لیے ۔اندر نے کن عورٹیں بے پردہپچھردخیھیں۔عالا لکیہ 


ایعا حر ت٣‏ الڑختا رای ہیں ج ب کک روضہ اط یش رسول ارڈ ادرمیرے دالمرسید نا ابوگرصد لب ریش ال عدہ رشن رے ؛ 


نے اق رمال رق ان جب سےسد نا عمرریصشی ال عنہرضن ہو ئے ہیں میس <یا کی وجہ سے حا دریش لپ فک جانےگگی۔ل(صندامھ ) 
ہرگائی د نیا ما گے دہال چیا ہوا تھا۔ مارک ایک خالی دواد پرجگ چک عاجاتاکھی ہوئ یی صاحب مزار کےحضور ٹیش ہو ہے قذدہا بھی 
جیب منفظرتھاء سے بیاانکرنا اس سے باہرسے نو موگفلییس روحا نیت بے ہمان کی ہججائے ال کا گلا د باریپعھیں .ایک جو لی ہو رخ یی 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 8110011 7 





حضورفوٹ )تفم ری ال رع کی ما رانز نی اورسو جرد ما ‌ظام 


او اورکائیعورت کے پا ان سی کروی 
اگ رعکومت جا ہے نے برسسارادحنرا بن رگ رق سے ۔ بین شاب یں دوسر ےکا موں سے فرص تتنہیں ) پچ روہ ای اکنا ہی نہیں 
جات .سال کےشردر م لگمہاوقا فا جاخب سے ایک ر پٹ پی یگ جس می ارا تک یآ ران شما ئک یگئی سحل ہا وقاف کے 
از مراہتمام بای نار کے ق یب کچھدٹے پڑے عرارات شی باادہ کےےقر جیب بڑے بڑےھتیارات ہیں مج نک یآ مرلن بل مبالقداد بول رد پے 
ہے_ نل سیی یی جچجوم ریا رحمت الد تنا لی علیہ( الحروف واتا کی ہش ) کے عنرارکی سالا نہآ مد یتمی ںکروڑ بای لاکوٹیش برارددٹے ہے۔ 
آحضرت مادھولال ین کے مرا رک یآ مرن بیالنس لاکورو بے در پارتحخرت شاہ بسالی رحمت ای تھا لی علیہکی چوالیس اک حخرت سیرمیال 
میمت اتی علیہ ین چوایس لاک سیدفریدالمد ی نکی شک رحمنت الڈتالی علیہکی سا تکروڑ ءا ماع لی لع کی پا کروڑہ در بارشاہ 
دول یآ مرن ساڑ ھے جک روڑرویے کے تر جب ہے۔ بی تد ےکیکمائی ہے ہ زا ماگیروں ھائی اس کے علادہ ہے لا کا 4 
زہبیں ء اث ار لال کا 
سوچ کی بات ہ ےک ات کاٹ یکہاں جائی ہے؟ سال میس سکتے خی رسلسو ںکوا سکماکی کے ذ ری دحوت اسلام دی سای ہے؟ 
کے :ا داراوک اس سےمستتفید ہو تے ہیں؟ سککتنے لوک ہیں جوا سںکماکی کے مل بد تے پر اداد یگ ہکر جات ہیں؟ سکتن جفا ظط اورعلما ران 
مار تکی زمگگراٹی تیارہور سے ہیں ؟کعن یم تہ کالم ہق ناال یہس ہوتا ے؟معئی بیوائؤں اورجیو ںکی دادری ہوئی ہے؟ مہرےخال 
یش سب سز یادوائن نادارہ ب ےگس او ریو دلوگو ںک یما یکوشی ماد یھ مک پٹ پکیا جا نا ہے؟ اگ مسا رک یکمائی د بین اسلا مکی خدمت مل 
تک ری ہے( لی ٹاک اولیا ارڈ کا شیب دتھا) و وولظر رکیوںگی ںان ؟ کک م سک رپیشٹی اور نے !بای کیوں مھت جارہی ے؟مگمدینجیتوں 
کی جاگیردل میس دن بلرن اضاذہکہوں ود پاہے؟ ان کےگیبراجوں میں سے مئے ما ڑل رک یگا ڑ با ںکہاں ےآ رپی ہیں؟ ان کے ہے مضریی 
ما جک میں الیم وص لکر تے نظ رآ تے ہیں جس ایوس ن رانے دسیے وا لے سر یدوں کے الیم ے2 مکیوں ہیں؟ در ہاروں پہ 
قضہ ماف یکا اخقسا بکب ہوگا؟ خی بکب انا ںبھی پو جچرتا جج کے لیے اپنے دض با ت ےگا ؟ ان کے خطاف سوموٹ ا یش کس ص ری میں لیا 
جا گا ؟ کا !مہ چندہ ال ہتللو ںکی بجاے فلا و بجبدداورحلغْ دن کے لیے فرب ہہوتا کا !خرہاء وم این اس سے مستقفیر 
ہوتے اورلوگوں کے دلو ںکی جج رز ین زرخیرکرنے کےکا مآ تاذ آ ج مک ککا تش ہاور ہوا ۔چھ یبھی وئت ہےکوگ یا 
خانتاہو ںکاحال 
آپ دکیرلی سک اک رآ ہرخانھاہ ایک باادارہ ہوقی اور یہت بٹ کی لو نیوریی ہہوقی ند س ق رر کا سیا بآ یا ہداہو:اءآ رح سہاجر 
یں امام ور ےی ہور ہے اورخلی بیس مل ر ہے او پھر ہا تقعد جم سکوامام اورضلی بکہاجاۓ دہ سے لوگ ہیں جو ہما ریی ماج شیل 
لات ہیں ۱ ٰ 
اگ سحبدکی انی ضرورت پپودر ایی ہی و مسر یکی ضردرس تکیا پر یکر ےکی ہمسورشریف میں جس پت من ہراحی تکاسماں 
ْ ہوگا و پھر جاک گی موہ درست ہہوگاء یرگ یکیوں داٹحم ہدگیء جوم راک تے دہاںل مررسکاا تما مم ضہہوا بصرف چندجچکہول مل ا سک ضرورت 


کوئسو ںکیاگیاادرد ہا کا م ہود ہا ےہ باقی کہ تک یجہمیں ہیں جہاں خامڑی سے اور ہتس یج ہیں اکم بدرنن ای ہیں جچہاں طالاب لم 


۱/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹611121131. 





0416 


تورو ث| ' شی الل کی مھاہرانہڑ نی اوزموم رو ممانقائی نظام 


ا نے عم عم ک سے ۱ 
یس جلکسہا نکیا چک جا ورر مھ ہوۓ اس 





کت خا بی مک رک ےکا خحانہ منادہا 


ای کک عالم دی نکابیان ےکم یل پیا ان ڈی کے دوران تھے ماوسفریس رہا۔ میں منلف عراکز ب رگاس ل کہم بج 


لو طا ‏ کی ض رورس گا ہیک بہت بڑئ یگداس جتجا بک جوسیایگمدبوں ٹل سے ہے٤‏ یجھے پنۃ چلاکہ ہاں پر ہڑ گی نے موجود ٰ 


پل ااریہاںل پرمیری صروزت ری ہق ہے یس جب دہاں شام کے وقت کاپا دردازہ ٹر قاگب ایا وررا ز ہک ککھل کیا یس 
گار اک چہال پر لائج رب یگ ہواکر یکیو ا کھرے بت ہوئے ہیں۔ ٰ 

ٹس نے ات یآتگھوں سے دررکک مشاہ ہکیاەھی را خیال تھاکہاندر لامج مرک ہے؛ او رکا یں ہیں بر جب درواز ہکھطان ا سکصرے 
شس سے ای کت اود اہ کا یت نادم ڈاما جس کو چلاتا راتا ہے اورگ رن لکردار پاہے ء پچ راندر نے جا تا ہے ء ے انا رتھاکہ دوسرے 
کر ے میں شاب لا کی ہدکیاء جب دو ےکبزےکادرداز کھلانذ اندر سے ای فکتا او را کا سرت 0م تاریخ 
مل اکمرااس نے بھی اندر پانمدتددیا۔ 

سی طر مقرببا تین کروں6ث لال نے کو ےب چانددۂکی کبا ری جویہں اق 7 
نہوں ن ےکہا: جم نے ذو وکا ہیں یھی یی ہیں۔' ٰ ٰ 

جھہ انناافنسویس ہواکہ جہاں پنتسوف کے ہام پلا نے جا ے اور جہاں پرلڑگو ںکی اصلا ح کی جا یھی ء اور جہاں بج درکوں 
نے ہاکھوں ےکنابی نیس اوریکر ھا اکرلوگوں کے لے برای تکاسامال کیا ءان کے مووں اور بڑپپناں نے اور بح دکینسموں نے 
1 7ں رات رن یں نان ران سکیا ؟ جچہاں انہوں نے خود یکر بڑ ھایااورخود یٹک رکتبہ سکیس اب دہال ان 
یی اولادوں نے ے2" کون ہے کہ یبا نکیاسجادہجڑن یکا شناد ارد سے ہیں۔ 
ہہ سے وہ افصشکروارت سی وجہ سے ہیں زوا کا مشرد پچھنا ٹر پا اس واسلے بذیادکی اصلاع کات بہ ‏ ےکہ جہاں ےآ کے 
اصلاع ہو ٰیٰ ےاگرو ا ںکیاصورت عال! ان اف رد درو ںکاگیا. کیا گا؟ 
کاکتائھی ےی میں 

ححضرت موم نا شا :الو رای رم اللد تھی علیفرما تے ج ےکم ریس ایک بار ایک درگا ہیر حاضریی دی کے سلسللے می ںسگییاہوا تھا ھی 
ٹس دہاں مو جو د تھا لاٹ پچ لگئی ء ج بک کی ف ھکنوں کےبھو سک کی7 دازآ ن گی ء یٹس ن ےکہا:ہکیا ہوگیا ین ۃکنز لک یآ واز یں 
رد یی ں؟ ا بکنذا کید زی ںکیوں 7 ناش وم ہولنی اگ ال کت لکاا ےکی بندہ گیا ہے اس بل ےکتو لکی داز پآ ہی ہیں 
کت ںکوکرییئھسوں ہوربی ے_ ۲ ْ ٰ 

فرمانے گ ےکہانسان ن گی میس پھرر سے ہیں یکن ہا ای چا بی کے کے ھی ا ےکی یش رچے ہیں وا سے پالم 
کیا ہوا ؟ اورااس سے بڑ اع مکی وگ ؟ 


اس ل۱ بالن نا طہادہ چا اورشیطا ن مت وں کے ساتھ چا رک ضرورت ہے داودا کا ٣ٰ‏ مر ناضروری سے وگ رنہ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 011 71 





تو رو ٹ )تنم ری ارح ہک مھاہرا نز ندگی اورسوجردہ مان ینظام 


کی عال ہوہار ےگ اک نمانقا ہوں پر کت با ند ھے جات ر ہیں کے اورا نما نو ںکود کے پا تے مر ہیں کے۔ 
ان جائٹل رو ںکو رگا ڑ نے می بھی مولو لو لو ں کا راج ے : 

چیک بارعرارا تک ز ارت کےسلل م ف رپ کیک مولدی صاحب جک ہمارے بدد بک ےیطشراستاد جے ت ےکا - 
چا ہتاہو ںکہمیرے جن کا لکی زیار تک تے چی ہل من ےکھا :ہک یھیک ہے ذ ارم تک لئے ہیں ء جب ہم دال ےت قبلہبیرصاحب 
ک ےکمرے یں دوعددلی وی ر کے ہو قۓ ہیں اوریرصاح ب میں دبکھنے کے از حدرشوقین ہیں :جب پیرصاحب سے پچ چھاگ امہ جناب 
کہاں سے بپڑ ھھ ہو ئے شی نان ہوں ن ےکہا: ٹیش ہہومید پٹیٹیک ڈ اکٹ رہہوں ء اس کے علاد ٥د‏ نکیل پڑ ھا۔ 

سر جب ان تیسے جاہاون کے پاس اکر مولو بھی م بیدبن جا میں ینان کےو ماع می ر ال نووا ہونا ے۔ 
ایک اورمولوی صا حجب٤کاعال‏ 

ہمارےسا تق یک موا وی صاحب پڑھاکرتے تھے جب دہ دوروشریف میس بین نو ا جا تک جو ڑگر لے گے ء لو نے پر پا چلا چلاکہ 
دو ایک یرصاحب کےا ستتانہ کے مچھا ڑ و پیک ہیں ء ان پیرصاح بکو بیس زالی طور بر جا ضا ہہ ول٤‏ دہ حا ضرسروس السپلٹت اورروزانہ 
کیا ہیک ڈیو پر جات فو میں آئکیس د یکھال رتا ۶لک الا کرٹ ہوتاادربیرصاحب زدرزور ےش لگاتے جارے ہو تے جے 
اب جب اسر کے بڑھھےککھ ےلوگ جاہ للوکوں کے مرح خواں بن جایں نذ وہ جائل پبرخوولیلم دمترف تکا این بکھنےنک جا نہیں کے 
او یکییھی ماعط یی یس انیس کے _ 

ٰ یا بک بھی ایک نام یگمرائی غانقاہ بر جال ےکااتفاق ہواء دوبان جیا ورس جو دتھادولوگو ںک اعد ہلیم دے رپ تھا کہجلدری 

جللد ید وک راو دوسرو نشی موںح دو ٰ 

یش جب وہال سے وائی ںآ یا فو یش نے اہین اباب سے ا کا ذکمرکیان اہول نے نا اک دو لوگ ات کیینے ہی ںکہفلا نک 
عال دجن دہال گے اورانہوں نے ا نکش کیا انہوں نے ا نکو ینکر بہت مارا اورک کیہ کی اور رط ب کا بداو ہے جھ ہا لآ گیا ہے۔ 
اس یصو نے ٰ 

تہ حر لص اکپ ہیا 
جو نا ھاء جب سپ تو جب منظ رق کہ بی رصاح ب بھی پراڈو یر اورپ ر کے ستت بھی پہاڈو رآ ۓ جب مکان بر یی نو اس خیب صاحب 
کوکیلری مس حجار بائی ھا گیا جک پرادر یی کےکمز کوک کے اندرصسونے پرنٹھایاگیا۔ ٰ 

تق کی ننظرییس .یسا رافصور علامکرا مکی ےکیوکلہ انہوں نے ہرپیرکوس رپ مٹھا بایان جب ددی بی رطاققت میس 7ت مر 
ےو رسب کم ےب 
می کی 7 

اسیک کہ میں اما متکر دا تا ٹاک ہائیک فی بے لکن لگا کہ ہما رے مرش دتش لیف مار سے ہیں ء ٹل مابتا ہو لک ہآ پک انقات 
کردادوں ؛ یش ن ےکا ضردرگی مکی نماز میس ہی دہ پیر گی یئ ہمماز کے بعد یچجھے نے مگ ےکہ می ںآ پکوکوگی نات ص یح مکی ملقین 









ےا 


ٰ 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 0 7211 7 





تو رٹ انف رارف رع ہکی انز دی اور مو جودہ اق بی نظام 118 





نایا رتا ہوںء ٹیس ن ےکباضرور۔ د ہگو یا ہو ن ےک اصمل خدازتالی ححقرتی ری ارڈ دنہ ہیں او راڈ تی خو دترم تی ری ارڈ دنہ کے 
ات وذ پالن مرن ذکک ۔ یس بیرصاح بل وسچھانے لگا فدہ سکنے مگ ےک اصل می ںآ پ میں مک کی ہے ء اس ل ےکپ می ریا محرفت 
ےکن رو و ولوب ہیں کے ء نے رت ا ماب گار اور ازر ےگ الال راد 
س2 شرلیعت کےاجکام معا فکرنے وانے 

ق ر کے بچھو ‏ پھائی ایک بی رصاحب کے مم بیدبن سے ان سے مک کے لے بھی امھ کے ےج ب ہم دہاں لان 
کے خدام اص جو تھے دہ نما زگیں پڑت تھے چم نے جب ا نکی خحدصت میں عخ کیا کتضور ا آ پ نما زگہیں پڑت ؟ نوہ نے گے 
آ پ دن مم یا یڑ ھت یں بھم مہ وفت با ری نماز یل مصروف رت ہیں ءاسن میں یرصا حب تہ لیگ یمودارہو ۓ اوران کےساتھ 
ان کےشجرادرے جوز ماگ رپرظل یقت اور ہب رش رلعت تے ہم نے جب ا نکودنیکھا فدہ دالنھی منڑے تھے ؛ بیرصاحب سے جب سوال 
کیاکمہ کیا ڑھد ہے ہیں فو فرمانے مگ ےک بی ائگ پی ا ےکمرر سے ہیں ء جب واڑھی کے تلق سوا لکیاف فرمانے گج ےک ہم نے خوددی 
اجازت دے گیا ےک آپ ج بکک ا بی ائی یی سکر لمت تب کک دای ضردکھو۔ الا مان الحیظا_ 
کی کین رین ٴ 
سنہ( ۲۰۱۸ء) نیک بات ےکہوخیاب مین ایک پچ رکا تام رکیا نے اس کول د وا او اض نات 
نر فی نکیاگئیءادرااس کے بحداس کے لے دا نے مغف رھ یکیکئیا۔ 
اب تو رکم می ںآ پ لوک جن جابلو ںکونذ راضرد نے یں د ہکہالں ز ؾحّ ہوتانے؟ 
موزانا عون شھ رس ری حفظہ انتا ی الم ہں 

ایک ددوقت تھاکہ باہز یرد جنیدٹسی ہستیاں اضان لہ پرشژن ہون ینکر تےش ن1 ر کک برصاحبان اہی فزندکی مس در بارہنواکر 
اولا کے لی ےکا رو پارکا سلسلشردر حکر کے جاتے ہیں انڈد کے نار وی دی نکا کیا ممکرددارس جناد جاضعات بناومساجد بناداگرم نے بی ال 
خویش دتاکوا نے ین سے چٹ اےرکھنا ےو عا مل رافوں کے ولوں سے و نیا کی عحبت پا لک ان دک محب تکو نوا ےگا ؟ نا موس رسسالرت 
پر مل ہور ہد مین کےشعارکومٹایا جار پالیاداور ےد یٹ یکو پ ومو فکیاجار پاا سے وققت می کیا ہما ری ذ مرداری ہس اش ےک مین بعد 
مگیارہو می ںکاشخم اورسالا نہ اینے والدصا ح بکا عری سک دادل پبرصاح بکا در بار کیہ لیس اور رصاح بک اگوی بنگظہرد یی اوردونوں 
کے درمیائن الا ماش اڈ داگرلوگو ںکودکھا نے کے لیے درس بزاہی میا ےل ام سکی حا ات جیل س ےگ کیل چچہال رت ے دا نے بچو ںکوخلام ب نکر 
رکھا جا جاان بچوں کے ست مق لکی ان لوکو ںکوکوئ یکک نیس دہ پاٹ نٹی یا چھاز .. دوسرکی طرف ا نکی اپٹی اما د میں شتٹرادو ںکی رح رہق 
7 

خداک یا مولو یکو پ اھ پرا بدا کیا کو برایال میا نک دا کول کوگامیاں دویا نآ رخ ھی اس دی نکی بقا اس مول وی کے دم 
قرم سے سے چسحدکی اننظامیہ سے لن ےک ممسجھ کے ایک ایک فردکی مخالشت ابینے ص مل ےگا لیکن دی نکا کا ممکمر ےگا ل کو سے صدقات 
نےکر زکوۃ ےکر مدرارس جاصحات مساجد بنا ےگا اور وگو ںکی ا قیں بت گا_ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 8910011 71 


"019 





ترواشم ری ارح نکی میابرانہز نی اور مو جودہ انا بی نظام 





انار ہر ےم یدرکروٹڑوں در ہار پرلگدا ےکیاایبائمکن ‏ ےکہ پت رصاحبِ مداررش دجامعات بناناشرد کم بی اوم یپ تددے ادگ 
جائ لکوام شبحہہ من رتی ے اور بڑھیاگمھیعوام د بای د ہو نی بن رای ہے اور جو رہ گے ہیں ا نکوبیرصاحب نے سواور ہنا دالی چھونگوں پہ 


لابا ہوا ے 

تی اج یارخا نم یگھی کیچ سکیتے چیے مل ےکلہ --٭ 
لی سنت بر توالی و عیں داوبندی ز نفات و ون 
شر کی بر مور و خانقاہ ٹر ری پر علوم و وراہ 


ہے سو تن ےگا جات اس بار بارس .: 
مرارات کا یکا رھْرہ 0 
ری ١‏ مثگائی ادرخود یی کے این دور می پر ان حال سفیر پل حب ارد سکون حاصس لکر نا اہتنا ہے اوک یا ءکرام کے 
ارات پر اگر ذک رای میں مشخول ہوک دی کون حاص لکرتا ہے ۔ ا ب موی مہ ہوتا س ےک ارات پھی خر یب لوگو ںکی لع سے دور 
ہوتے جار سے ہی ںکل ال خا نہ کے چم راو طض تی پچوم کی ( الع وف دا تا صاحب ) کے مرار بر حاض ری یک یل گیا۔ جو کی رک نکی حکہ ببرکیا 
پل ید کیرک رت رائن اود بی پان ہواک جو لی کا جوڑا رک کی ارتا اد یی :رای ری ہو یک ابھی کہ مال اججرت ھ دد ےگ اب 
آپ (دز مرا د٥قاف‏ ۴ بجی بت ن٠ی‏ سک ایک فر یب ج ھکس مار کے نز دیک|ں رپائن پلڈسہ ہے۔ پا دوقت نماز پڑ نک أجرت* ۵ رد پے اوا 
کرے۔ رک یت کے ہو قبت ڈ ئل ہوگئی۔ ہمارے از ہاب انار جک داکھو ںکر وڑوں رو بے اکٹ ےکر تے ہیں ان 
کوٹ رکی اس طط رف جرد تی جا ہے اورانیک عاممتمازکی ا درا ضریی دہینے والو ںکیامہ پر بای دو رک لی جا ے 
شادکیاتر جاۓ تیرے دل می میرک بات۔ 
مرارات برح ہو ے والا چنر ہکہاں جات ے؟ 
پیک خبارگیر لاٹ ےء ا ںکوطلا تفر ائمیں 
نان (سئ یر پور محکمہاوقاف جنجاب کے میکنٹرول در پاروں پر جھےکیششبکسوں میں داکھوں روہ ےک یکرٹیش نکااککشراف 
ہین میں لقدنات افسرائن نےمن پہند افرادکودر بااروں ردنا تک دیا ہاب کے یں سے زان بڑے در بااروںل پر ہر جن 
ای او پن کک جائی سےمعمول ے زامد مگنے وا نل ےکیش کوچ اکر بنرر پاش فک جائی ہے سکیل ںہ کی اسا می پہنگرالن نات ہہدنے کے 
لے مابانہ پیچاس بنرار رد بے سے ایک لاک درد ہے اضرا نکونز راو کی شکل میس یل کے جاتے ہیں اوقاف شی ول کے مطاین ہر پش 
گھلنے وا ےکیٹ ش لسوں سس ےگمفشن سا لکی ذہدت ٣۰‏ فیصد ایس راکش دنا چا ےن ن بھی بھی در پااروں سے ۰ فیص کی شی اکا بلنہ 
ا ہے افیص رکیشر بکارڈ یں شال لکیاجا نا ےکم اوقا کا جانب سے ددہاروں پرتن سے پار اف راوتحنات کئے جات ہین در بار 
کاگران یباچ سے دی افراوکوخو یرٹ یکم رتا ہے مل نکی ڈلوٹیاں در باروں پآ نے وانے زائز بین کے نے میس چا در ڈا لکن رانے کے 


سی راد نین کے لیے دوچارمدارس جا مات بنا عکوگی مشک لیس دہ بی جواشار وک ےو مر بد اکھو ںک یت لکرواورے پیر 


۷/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 10771131. 7 


+20 





تضو وٹ )نشم شی اڈ رع کی ما راز ندگی اور مو جددہ انا تی نظام 








یی وصو لک ناء راغ کےتیل کے نام پر بے لیناشائل ہوا ہے من سکیا وجہسے دوردراز ےآ نے دانےزائری نیکوشد یرم گلا تکاسا ما 
کرن مث جار ہا تفصیل کے مطاب حکہاوقاف ییاب کے فزمرکنٹردلنمیں سے زائد ڑے در پاروں ء در پارتحضرت شاو رگن عا مءدد بادا 
صحضر فوث بہا لد بین کیا الہ دد ہا رتحضرت شا وش در بار پا پیا اک داسئء دد با رتحضرت ز بین الحابد بین در بار ضر ت کی سردرہ 

در ہا رحخرت ثوا تہ فلامفظربدہ در ہارنحخرت پاپ فرید الد ینگ شکرہ ور پارحضرت وا ا شکرہ ور ہار تحضریت باپا بھی شاو ہ در بار تخت نشاہ 
جال ءدر مارتعر مل اوولنتلء جیر جراحتعی شاوہ پیرسی سن ری :در بارظرت شا سلطان ء در با عثرت موی پاک ‏ سیت دنر 
درگا ہیں شائل میں جا ما اتا ےک کی ساب یچنظیمموں وسحزز یئ ش کی جاخب سس ےمحگمادقاف جپخجاب کے ایی افسرا نکودر پااروں پر و نے دای 
کربیشن ا وق امم نکودریشی مسا لکی جاخب ےآ گا کیا یلین ھھ یبھ یکوئی ڑ یکجاردائ یل می لی ں1 الہ راف ایک 

دد ہار سے دو ہے دز پا رہ یرتا دی کرد باجا تا ےکا نکربیشن ےلم ایر ما ارت 


۱ لش۱۸)‎ ۱٢۴١( 

لگا کیو ٹک باز ارآ و وش ۶۹9-9 0 

رت تر می ز ماں سی راص سح رکا شی ری اتال عل کھت ہیں ۱ : 
سے اکشرمتظامات سب یں اوس لی یلام ےط بیقوں پر ہد تے یلکن زپیشا مالس ھی بی بھی میں جن ہیں جن کا 

یں فاشی کےہرتاک منا یی الا علان دیکات ہن بنلو یکیاصوبت مش ۔ٹپشارخ بات پا جال یں اور نکاس رپہق ارد ۔ 
کے سجادہ ور ایض ردرت نیک ولا ےکرام کے ا رون رازہ اناو ںکوا بجی طا لت کے ذر یھ یھ پ رم و 
گی برائی سے پا ککیا جائے۔ 


(مقالا تک ای جار جار-ش۳۱۷) - 
موا نا کا ۃاشتال یتال یہد ے٣‏ سال ہو یرف و ںکہی شی بت رقائھم ےج سکی شا ھی مو نا _ 
5 ھی۔ 


شراکیامرشدر 
مرزان۶وںسبریح ظاذقا لگۓہں ---- ٰ 
کی جامم شرالیام شی بی تھی ایک تب اور پا رک تکا ہس جمسسضسائتے 
ٰ مرش دکام لکیا چارش را ئا ارشادفر مکی ہیں ان کے خی را سکا ہت یدناج نزیس -۔ 
الحقیررمسللان ہوڑی ائل سنت وا لماعت ے وایستۃ ہوہ برکقیر ہاور بر رہب شہہو- 
نار کے دلال اورتا مرا ہکا شرع کا عال حم ہنی کہ رس1 دہ م تل کا صل با نکرسلاہو(می ٹف ہر )_ 
علم کے میطا نگم لکرجا ہو ف الہ واججبات مطضن او بات بب د ایال پیبراہوادرقم مم رمات وکردبات سے پچ ہ۔ 









تو رفوت نشم ری رشع نکی میاہرا نز ندگی اور مو چودہ خ انا ی نظام 


رسوگل اوڈی٥لی‏ اللہ علیہ آ لہ ےل مک ا سکیضیدت ہل ہو ہنی اس کے مارک کا سلسلہرسول صلی ارڈرعلیہ د1ل ہدس کک پپپچتا ہ1 
جارےز مانے میں پعنع عم لوک وعظا دن کر تے میں اور جب پئھوعلقہ بن جا ا ہےٹذلوکوں سے بیعت دنا بھی شرو جرد ین ہیں ۔ 
لگ اہی یھ یکا عیب پچھانے کے لے عا ینیع کر تے ہیں ءاا نکومنافن اور یکل کت ہیں ۔ سا بی خو وک و ائل اٹ رک محت 
سے ہوۓ اولیاء اب دی صف میں شا رکروان ےکی ترغیب دسیے ہیں۔سادہ لوج عوام علا مک وچھوڑکر ایی نیلم واعظین اور ےیل 
مرشمد بین کےعلتقہارادت می لکشثزت کےساتوشمائل ہور ہے ہیں ۔ چم اس چہالت او رتعصب سے الیقدکی پناہ حا تے ہیں - 
(فاوی اررشش ۱۳۔۷۹ !لصا : مہوت ور بینہ پہیشن کھائ کرای ) 
مرکورٰش را ئیاکوسا نے رت ہوۓ اگرموجودہ اکتالی محاشرہ پرنظ رڈالیس نے ہیں ہرطرف ای ےکا ردباری پییرو ںک فورح ظۂ 
مرح نظ رآ ای مم الکو پل الا دورددرکک پیڈنٹس ہوگا کک یکا خقید وخراب ےکس یکا سمل خی نل ...کوک بابندسضتتننیس 
ےا کوکی اعلاضہ فان دذاچ. یع مکی ش رط ملا نرک یں پے اس پر او رے ملک یس معدرورے ند بیرصاحمان بیکشکل بورے ات تل 
1 میں کے لی رو کا بہت بوالشکہ ضرف بی میق رآ ن دحد بیٹ ادرفقہ ولام سے بے تجرے بلل رد 6لم اورعلما مک خت وش نبھی سے۔ 
یوک جس رح سرمامبدارہ جاکیرداراورسیا متقد ال نکی خی راسی میل کرت مم جال ملق ر ہے ای ط رع تھو نے پیرو سک شان دش وک تکا 9 
رازشھی اسی میس پشید ےک تقو مم بل سے گا حر ہے کیک ان پٹ لیگ انکیٹ رح چو ھتے جا سے یں ا رر پڑھےکک ا 5 
یی ںکرتے بی بھی پر کے ملا تا تو ںکو سا نکر یئ 1 سپکوانع پڑ اود پڑ ھی لوگوں کے اندرلا جات می فماباں فر نظ رآ ےا 
گا ۔ 












077 


ن0 
0۷ 
جح ہے صس طعس ا کرک راچ1 پک سککتق شی سد وجواعت ے اتا 
مو بکر کےا لک بدنائی اودرسوا یکاسب نے ہیں۔نزدہعلاء سے رق رق بھ کے ہی ںکسددا کان فیاد زی رہ ق ملق شتآ 
کی نت مت :شنک د ین نک ون لوگ ای ے ز پہرلے ہی ںکہانہوں نے ات یشبہو تکار لیوں سے مس و یکواد موا کے رک د ہا 5 
ہے۔النع ٹیش سے یلوگ نا مور پ ریگو ںیک ید اوں سے سوب ہیں یل صاع اوش رج تکیا پا ہدیا چاو ہک یف لوگو کا ص رپس ۱ 
کہ تے ہیں ادس گیبردں سے ال نکی دوستتیاں ہیں ۔ الکشن یس سک ہے ناممکواستحا لکرتے ہوۓ بہار امم نے ہیں او ز پچ رسیکولر 
جائوں کےسا تی لکر ای کے این ےکوفروخغ دی ےکا باعث نت ہیں ۔۔ اس تما قرا یکی بفمیاددرتقیقشت ا نکارو باری مولو ہیں ھ۶ 
فرا بح کی سے جو یں( مسعمولی غدرمت کےجون ) لوکوں کے سا مت ےو ث ز مال قطب عا حم بش ہنشا ددم یت دمرہ بنا شی کرت ہیں۔ 
ان عفرا تکی سرت وک ردارگوقر جب سے دیس نو ان کے فرکو لی لیے ؛ شبیطا لی عادات داطواارہ بیز بودی رسوم دروارع۔-۔نمنڑول 
اور برمعاشو ںکیاس رسکی ء چوروں اورڈاکوکو ںکی بیشت پنااکی۔۔ ۔ پاضل اعمال اورعتقیرےء اعراس کے نام براسلا مگ لے شھے۔-۔ 
گزں ہیں گان تنہو ہدس ںکلوری۔_۔۔ے ٣۶‏ قراے ر2 جا ےرات سے ولا بہت کی 
پائش.۔ ۔علاء کے خطاف سبینوں می لک ری 7 گ٠‏ ہلت وریکوت میس اپنی مثا لآ پ ۔.۔ د بن وش رمع کیا بات پر مضہ سے مت 
اارے۔۔ تما ز روز ےکا وقتآ نے برمرس اسہالءزکو؟ وچادکا امم لت کی پیٹ می در دق ۔۔ رج رن بکورل کو بے پردەمر ید 





کرنا اوران سے ای دڑوانا..-۔ ہیں و ہکا ےک رثات جوائن پہیروں کے نامرا عمال میس درع ہیں 

ارآ پان کےکفر یڑ ر رکیبادرمبالآ میزاشعارپرمھنوگیطور پر برست ہوک رچھوسٹے اورنا ین وانے چا بل مر رو ںکودنکھیں 
گو یں ڈ غ کیا جار ڑاے۔۔۔انع کےتحویڑوں اور فو ںکودیکھیں نز شیاٹیسن سے استفالہ پنیا جادوڈو نے کے پادرے معلوم 
وں۔۔۔ا نکی ممقدیس مندرو ںکو دیس و ان کسی یک سے تی کہ د یکا بیٹھ جانا یا صرف پا ول لک جانا بھی اع در ہب ےک یگستا خی خار 


او 


بر پیرائن عنظ مکی ا نگمدریوں ش لپھی مال د چائیدادکی ط رح وراعت چ گی ے( کہ ہی اب ایک منانع مجن کرد ہار بین 


چکاہے) با پک یگمدییابرادلا دی میٹھےکی خواووہکی کیو نہب ۔ کیم یدک کیا چا لکردہ بی ما لک جادگ یکا تر ارہ رےخوا وہ 
کیسسا بھی رازرگی درز ال یکیوں نپ واورنی نا١‏ اوروراشت سب سے بڑاسبب ہیں خمانظا کی نظا مکی تا ت یکا_ 

زاخوں کےرفٹ مس عقابوں ک ےشن 

بیشیا جیب انفاقی ہ ےق یبآ ایی فقام بپیرصاحبا نک ذالی لود پش رن دحد بیث اورفقہ وکا مکینلیم وم اوردیش وج رس 
س ےکوی داسیاکاس ہہوتا۔ پپورے ملک میس شا یدب یکول اگیرداراؤرکھا تا تا رآ پکوایا گرا جن سک اولائلیر ت00 
لاٹ یکی لیم حاص لکرربی ہو وونز آ پکوگی وی می شی تر مین سکولوں با فہوں یس حطبقہامراء کے ساتھ کنل قکودتی نظ ۓے گی اویلم دین 
ےکودگیا ہو نے کے باوجودمسند پرکھی دہی ٹیش ےگ _ 

- ما ہرپچر ریخا یش رکتا سے کرای کے مریدوں کی تجرارروزاظز ول ہو دوسرے بییروں کے مم بای تیضیاب ہو نے کے لے 
لی شی طرح اس کے سلسلہ عالیہ جس شال و جا میں اود اس خوا ہن سکو پودرکرنے کے _لئۓ طرح طرح سےنشجیری وی 
ڈٹھکنیڑ ۓبھی اسقعمال کے جات ہیں ۔ اگ رم ری پچ رکےمر یگ ہوں تو ود ا صا کر گیا یس ب لا موجا جا ے اورزیادہ بہو ںو اما بر ی 
کا شکارہرتا کا . ْ 

کئی نام تبادبرد ا مار +نانے ادرکی دبیان کے لاف ہو تے ہیں اورا سکی معز دیل ىد تن ہا کسی ہمارے نز رگوں 
اکا طر نار ے۔ بے یر ے ایک فہایتہ مج رصاح مم ول دوست جوخو داب طرایقت میں سے ہیں نے ابناذ اتی دا ٹا 
۱ شش سرکودھا کے ایک پیرصاح بکی جار دا اکر گیا فو ان کے ہاں پچو ںکوسارا وشن تیکھلت گودتے اور اری کرت دک ےکر 
ٰ یرصاحب سے پہ چا کک یآ پ کے ال دیس پچو ںکوق رآ لن پا کک یلیم داوانےکاکوئی انا یں ے؟ فر مانے گے :ایک وو یکو 
ہچ پیڑھانے کے .لئ درکھا تار دونھبیں ب یملق نکرتا رتا تا ا ود می شک کے نماز پڑعییس اب بتا می کیا ہم اتی مصروفیات اورمر بن 
گی چھلاگی اورامور کے کا مو ںکوہھوڑک سد یش نماز پڑ ھی ےکس ط رح چاسکتے تھے ۔لہ الس کے بار باریس بی خی زی نر ید 
سے اسے فارر کرد یاگیا_ ۱ 

گا انی شان می تید ےگھواتے ہیا وکنا شا کرداتے یں .کی راشتھاروں ادرجیٹروں پیصرف انا ا من ہم 
جار یکرت ہیں گی دوسرکی خی تک نام ان کے لے سو ران روح ہوا سے ۔ کسی پرکا مر یداگرزیادہمشچدد ہد نے لک جائے وذ اےفورا 


سے 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 8110011171 









تضو وٹ اعم یھی ار نکی ماہرا نز ندگی اور مو جددہ انی نظام 13 












علتقہارادرت سے فارکردیا جا ا ہے ۔آنقر یبآ ہر پیردوسرے پچ کی شا نگھنانے کے لئ صراطن ہبی اشارجا وکنلیے ضروننفیع سکرتا ے_ 
ا ۓآ پ کال بنا ہےاوردوص رہ ےکو اص ۔ چائل پیر عالم یر ک تخل یو ںکتا ےک ہد وٹ علاء میں سے ہے مع ملق ت کا بادشا ون2 میں 
ہوں۔ ٰ 

ان چاثل یرد ںکی اب یلم ےکبھی بظاہرنماصی ددیتی ہوثی ہے ۔ ایس شوقق ہوتا ‏ ےکہعلا ان کے مر ید ضرور ہنی گر ہر بات 
ش1 گلھیں بنرکر کے ان کے چیہ ین ر ہیں کسی مستلہریس ا خلا کی ان کے ہا ںکوئ یکنا یس ہہوئی ۔ایے پیرو کا امک موہ ہوتا 
ہ کیم اہی ےگ یں رک کے رھ پا و گے اوراس بات کے لئ دو وا قش روم عیہاالسلا مکا سہارا لے ہیں ۔ 

چه نسبت خاک رابعالم پاک 

ا را کی نس جک ار ےک کین ای ا گے کا ائا رک کررے 
ان کےن بن می لآ گ کلک اتی ہے اکر پ رضاح بک ال می ںکوکی بیردلی حعا بھی مرو ہوادرودصرف ایند ورسو لک یتح ری فکر کے 
ما جا ۓ نو پیرصاح ب1 تندہ کے لئے اح کو نہ پان ےکا عند رہد ے دستت ہیں _ ح 

ضس چپیروں کے ہاں ش نیعت وط ربق تکی با قاعدہ جن کر وائی جا ہے اور با فرط یقت کا پہاداان ش رمعت کے پہلوا نکوأ ٣‏ 
ارول شانے جچتگراد تا ہے اورا کیا رح کانحرہلگادیا جاتا سے کنیا جائل پر اپنےم بیو لکولیوں درس د سی ہی سک ہمارے پا پاضفی 3 
ٰ علم سے او ر لا رکے پا ظا رکلم ہم نے الاڈ چک ہلاو ولا کے7 کے ڈال دی ہےےہکرہیں ہم نےبھای میں نپا : 
مود یں (علاء )کے سا سے ینک دہ ے ہیں ۔حال بی میس ایک مقاح پ گت رون کے زمر سی لاکھوں رو ہے اک ریتفمل نت وقو ای ٌّ 
اٹمؾر ہٹی جس کے پنڈال کے می نیٹ پری ہداہتاگھی ہو یی مولو ادا نوع ےا پل مس جوابمان سوزاوردل دوش ری اکا 
اٹر لونک جیا یکئی اس > پ(اعوذ بالله من الشیطن الرجیم) نی کہاجا ٣ا‏ ے۔ ٰ 

علامہابن جو زی کھت ہیں :اک ان جائل پیرو ںکوعلماء کے مر ےکا پنے ہل جا تق این ٢‏ پکوان کے ساس ےگوا اور نرعا 2 

شس رٹیں 5 

نس یر جتیاں بن دکروا ک0 دوں ح ‏ حی۔ ہیں ۔کئی بیبرر مان کے مقدرس ہین یی نکمردوںن اذر 
حور ںک و نے سا نے ٹواکر افطار یا لک داتے ہیں .پچ ران 0 ۲ 000708۳۳0 
ترائم دہاں سیت ےت ت2 . بہت طف بش ارام جحگ مہ ا وقاف ےم ان وپ وہل کےگلوں سعوام 
ار سہددی یہام ودب ری رر تر شر رای 
دوات کے یی مصرف ے1 انکر یں۔ 

ٰ جم اگ رت کر سس کے شکا یت ہوگی ۱ 

,ملک می تر تی ھی ون رڑسی خدمت اوراجقاعیت کے ل بھی سن گرا خابت بد تے ہیں زخودکا مک تے ہیں نہ 


) جلراول 








. ٠ فَ۲ ' ظط ی* ۰ مم‎ ٦ 
تضو روف اش ری الع نکی برا نز ندگی ادر مو ودہخاقا ہی لظام‎ / 





تی دوسر ےکور نے دسیتے ہیں۔ بہت سے بی راپینے عم ربیدو ںکو یبھی فوا ل تیم سے وابس ٹیٹس ہد نے دینے ۔ ہا گر پیرنے اہن یکوگی 
7 ےا کو چلانا سب بیدوں کے لئ فرح س مین ہوا سے۔ 

گر ھمیں خانقاہ وھمیں پیراں کار مریداں تمام خحواهد شد 

ان سب عالاٹ کے پاوجودآپ سیل ک ےکہ پریچکہجائل مرو لکا ایک بہت پڑاگردہ نمی پیروں کے کی بڑے ادب 
کےساتھ پاتھ باند تن رآ ۓگا۔ ا کی وجہ مہ ےک وظیفخورعلاء ج بکھ یآق رم کرت میں ور الا إِن اَوْلیّاء الله لا موق عَلَيْھم 
لام نون ) پڑت پڑ کر پی کی طرف اشار کرت ہیں ۔کااردباری لع ت خوا نم ولعت پڑت پڑ کر پچیرکی جاب اش ار ےگرتا 
سے اورائس رع چھہلا مرکو یی کا ہے دامح غلام ین جال ےکی ج بائی ترغی بلق سے ۔ و ےآ ر جک کا رو ہادریی علا کا کاروبار خاصا منراچار 
ےکی ونکمہ اب ا کی سی ٹ کا ردہا گی نت خواں نے جال پی ہے۔ اس لے یرد ںکواپنا کا ردہار جیکانے کے لے اب مولو یو ںکیکوئی 
ضرورت کی را۔ 

ان پیروں کے ذر یع مر یدرو کی شس ط رح مز جیت ہودچی ہی د ھی اخچھائی از یت ناک ہےء ند ایک تر بیتی منا ظ ملا حظہہوں 

پیرصاحب جونھی اہینے دولت خا نکی دایٹر سے باہرفرم رھت ہیں نو ددوازے پ نظ ری گا ڑے مر ید بین پہگویاخز ک یکیفیت 
طاری ہو جائی ہے۔ ہوک صدانہیں بلندہوگی ہی ںپلائی شوں کی1 بز اپ لائی جالیاں ہا ا ےہکوئی درددوسلام بڑہتا ےبکوئی 


















نصرے کا 1 ےکوئی جھ ےے اجارت سے ۔کوٹی پچ وکرتا سے او رکوٹی پچ کرتا ہے اپ سا کا تکا سللت روغ با ہے٤‏ چیرصا سَےن و ز' ۱ 





کے جراٹھم سے نے کے لے پاتھوں پیر دستمانے چٹ ھا لیے ہیں ککوئی مر برق رموں می ںگم اچنوا سے کسی نے کھت تھا مر جھے میں وگ یمکندیھوں 
کیو سے دمےر ا ےکوی بش شت سے پا ہواےمکوئی اتد چو سے کے پر میں نے خرضیک ایک ہنا مہ۷ یا اور ڈشمھ رکیل ہورہی سے۔ 
( حا لاک ایک ملا نکوخماز کے _لل بھی بش یل اور چھاگ دو ڑکی اجاز ت نیس ہے ) کہ بی رصاجب نے بے کاشمان ہے خیا زی سے 
اتآ کیا ہوا ےس یکو یک پا ملا تے ہیں نکی کے لے مبلا تے ہیں یکو ایک الگ ینتھھاتے ہیں مت یکو دا یں پیٹ رصاح بکی 
آ عدددرفت پر پار پارگی اٹک یففک ہو ے۔ ہاتھ جوڑ جو کم با تک جال سے جا نکی اما طل بکی جالی سے کوئی ححالت قیام ٹیش 
ےن ھکوکی حالت رکورع ٹیس کوک ی جج کرد با ےن ھکوکی اقیات یس ھا ہوا سے۔ ار خدرافح است ہآ ب نے پیرصا سب کے رات جج سے مین 
ذ درا یکوتاب کک فو ٹس ! بپبرصاح بک غیب وب د یھن والا ہوتا ے1 نمی ں شعلہ پارہو جائی ہیں اد رن ھرتھرتھ ران ےکنا ہے ۔آ ‏ پیک 
نظ ریبش میں مر ید بین سے مرق ی نکیا صف میں شائ لک لے جاتے ہیں ۔ ای طرع اگ رآ پ ن ےکی مھبو ری کےححت ن رانرکی دای 
گی ارد ور جار حر سوہ شوگ رکب و سوہ رما رد راس یہ 

1 عوتاےڑ مین وآ سا نکی تما مآ ذات آپ کےکص کا مقدرظھہرتی ہیں ۔ا ےم ری کےگھ ریس ق ما درکھنگویا پیرصاحب کے لے 
ہسوس‫سو)ت 

پیرصاح بک اولاد کے لے شاپ نلابارہوں 2ب ایی مہتتےتہتی۔ 


۱ 
سد 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 01001131. 7 


425 





وت سے اتا استقا کیا جاتا ےک الد تھالہیٰ ےجیک اتنا نی نکیا جاتا۔ئی پر ہڑۓ بس پھیڑا نے والے ۹۵٥٥ەمہەں8)‏ 


6ہ )۲)) نے ہیں۔ یش نظ ریس چھکا کے رت ہیں جائل مر ید اپینے پچ رکی صصرف ای نظ رکرم کے لئ نت پھر کت ےم 
گر رگج ایما تا ہوتا ےک لح گر کے لئ د ھن پچھ یکوارا نی ںکرتا۔اگ کی مر برای پیر کے خی رککعتۃ ال کا طوا فکر لو پیرصاحب 
اس با تکورسول پاکک مکی او علیہ لہ یلم اورتخرت عثا نکی ری ارڈ عنہ کے واققعہ ہق سک کے اس سے پیش کے لئے نارائض ہو 
جاتے ہیں۔ ٗ ٰ 

ہرپیر کے مر بد ںکی میحدہ شناخت ہولی ہے۔ نماعصس رت کک ٹو لی اور ماع ش مکی سلاکی ؛ نخائص رت کک چکٹڑی اور اع ض مکی 
زی ہے بات شاب دکوئ ای عقائل اعترائض نہ ہو لی ممرافسوسناک امریہ ےکم ہماقد اعد شناخشتال دالے مر بل جب ایک دوصرےکو 
لے ہیں تو یو ںکھور کے د یھت ہیی ےاپھ یکھا چپاجانفیں کے۔ بیوعرصہ بے سلسملہ ا بت الفتوں اور سیا ہت کا سبب ہو تے ‏ گر 
اب فرنوںل اورعداون لک باعث شح .تق رہن کے خلا فکوو کلت حاصم لکیں ہوٹی جو بی رصاح بک جا درو حڑاصل ہہونی سے سکاب اللہ 
کیکرونر جا ڑادی جائی گر بی سا ہللا لکوغازہ ہنا جانا ہے سرک صفائی سے برکت وص لکر نے سے تق بھی سوا بھی نہیں 


- 


ہو کر صرصا حس بک ی گا ڑ یکوکماموں کے سا تق صا فکیاجا تا ہے اود چادد بی لگا لاک رج راسودکی ط رع پو سے د ہے جاتے ہیں ۔کئی چیروں 2 


کاللحاب دنن لبطورتبرک استعا لکیاجا جاے او رکئی یبروں کے پاتھھو کا ما م سمل نوش جا نکیاجا تا ے۔ 
أم یوک افدار داتاء 

جیما مضہو کی جرد کے مصرا ی1 نکی کے مر بدچھی انداغ وا قسمام کے ہلت ہیں ۔ بہت سے لوک مر بد ہو تے دنت ا سے رکا 
اتا گر تے ہیں نس کے نعاقا ت دع ت ہد اوردہ پاز ارسیاست می بڑے اش و رورغ کا ما کیک ہوںینخ ل لوک حرف ایک یرب راکتذاء 
رج ٍ-  ,‏ ہو پیر بد لج رت ہیں ۔بتعل م رید اب گی کے انی پیر ےزیادہنعلقات زا کے رھت یں 
نس سے وقاوف تھا اج مفادات ۔اصل کے جاکیں بنخش مر بدا لی ےکھی ہو ہے ہیں جن نکیا مقصدحیات اہہے یرک نظ رٹ دوصرے پیر 
بھا و ںکی حیشی تکوکراناادراپنی ضیی تکوہڑھانا ہوتا سے اوراس کے لئے شکا یا تکی ایک بہت بکی لوگ ہردقت ان کے سا تد رہقی سے ن 

میم ید جب چرے یہ داڈھی اورسر کی سا لیے ہیں تو دہ اہی ےک1 بکیمفتی اش مبچھناشرو کم دسنریتے ہیں ہارب ان کے 
کا ا ا ا ای 0 مل را مو ھا سعائنع کے یج مس ایک دہ ہد تے ہیں اودردوسراا کا پیر ول 
1 جک لبنح چیروں نے خلا وط تکی منڑ یب لگا رکھی ےل ہدا ہت سے بندگا ننس اےے بی یرد کو بی د نے ہیں اور چندروز یل 
خلاوفت حاص لک کے سار ہے فو ںتطبوں کے مسردار بن جات ہیں ۔ بی رالن باصفا کی تر ہبیت اد رکا ردپاری مولویوں کےنھح تک بتاء پہ 
سب مر بیدوں کے نز دیک النع کے پپپ رک بات 7 فآ خراورپچھر کی مدکی سے بللہ رکا ایک اشار وجھی دی شی طائقت رکتتا ےل اکوئی 
بڑے سے بڑاعال مچھی پیرصاحب کے اقو ال زد ی ںکوق رآ نع وحد بی ٹک یکسوٹیٰ پر پر کی جرا تی کرسکاء ورتددہبڑا بے ادب ؛جھوٹا اور 
ھ0 ْ 


حدم بل ایۓے رک مر یرون ےکوجا دظاوقا ری ہونے ےکی ززیادہ ہا عو ث فضبلت مھت ہیں او راس ط رح کلام اید نو ٹین 2 


3*66017121/[ 


> 
ک 
> 


۷۷ 





تضو روٹم شی لن جا انز نکی ورس جودہ ھی لام 


راب ہدتے یں ۔ ہوم رید جواھکا ش رت کےقری بچھیکیس بھگت دہ پورصا ح کی خرصت می سآ ئے دروزکی عاضریا ںآلو اکر جڑے 
۱ ا چگکرداتے یں ترما ہر ڈوک مریدددمرے پیک ا ادداپے کان میں میا نکر کے ارد ہد جانے کا یں داب 
ہے۔ اپپنے چیرکی ہد تکو ہی کے نام کے ساج لگا تے رن کیا کہت بڑکی کی اورخرت دمن ھا جانا ہے۔ اگ ر ایک پچ کا مر بی 
ددسرے پچ کین لی فگ۷رد ےل ا ےٹورأر 'رەدرگ وراردے دا جات ے_ 
پچیرو ںکی اداد اورتعلقات ْ 
تھنکڑوں براروں مرع زی وٹ دی ککارو با کروڈوں ار بوں کے یک میلس :گی تب ن گا ڈیاں میگ تن علاقوں 
یں نحلات او روھال فا میدسٹارذ وگول کےکھانے اودد ایس شا امھ بن ارت یا آخیاں جانیاںء ای ری سے لونتی وخ تی 
لعلقات ‏ اہ ر7 بن او ادول اور غائزاون یس رش ای سولیات ات کسر پڑے بڑے وڑ بھی د برک ردشک سے م رجا تی ۔کسی 
بی لوس تکوان ‏ ےکوگی خط یں ہوناں ٣‏ ْ ٰ ۱ 
رآ نے ول مت ہرادا “ۃ ا نک شی ربادحاصس لکری ہے۔ ا خقلفعہدوں ےا ارا جا جا ے٠‏ وزارت ٹٹ کی عاتی 
یں ءکانفنسوں میں مہمان خصوی بنایا جاتا ے, خی مکی دورےکوائے جاتے ہیں ہی بہا تا کف دپے جاتے مہہ ہونت ضرورت 
قز انوس کے منران کے ل حول دپے جات ہین پچ را ا نکی ڈ ان رن دطیفہ+وتا ہےہنررغ الاکن ادزالٰ توزءا کا یٹ می 
۱ صدائمیں د ینا ےکفق را لتقارخداہر چآ یر فادرفا_ا نکا مم مندر ہےبھی زیاذوگرادل پکار پیا رکر می کٹا ے 
ھل من مزیدء ھل من مزید. .- - 
صاجب پاش ریت مول یش کھت یں :کل یہ تھے اگوی نے پیرکا مر یکو پش نا لیا :سال نم بیدوں 
مد در ےکر تے یداد رح رر سے ری ہر تت ہیں ج نوخ راضسد وا موں کے موس مکیا اج ہے ۔ بہت سے ابی میں 
اس کے لے جپھوٹ اورفر یب سےکام لیے ہیں ي(سب )نا جائڑے۔ - ۱ 
ْ ۱ (پہارشریعتء (٢:۴۰):مطو‏ جع پراررز لا ہور )۔ 
علامہرامىن جوزی مت یں ینم بیزرانے ىکاطابت رکھت یں دگردوساراون اہ آستاوں پرلڑوگوں سے تج رات وصعول لے 
ارپے ہیں۔ ان کا دمیاان پہروفت اس طرف اگار تا ہ ےک کوک عقیدت مندآ ےگا اورنذ ران ین کر ےگا۔ حا کش ہا وا تج یز 
ےکیلنی اودق یش کے لئے خیرات لونا چا وی ( ہبی کیک ے ) 
انیس انیس ۳۳٣٣:‏ ), مہو کت رجا ا ہور) 
ەہرعا پیرکام بیدی ایک امت ٹن بن کاروپاراو ربز کنا ذر جب دو زار ہے اس میں خمار ےکا سودایا کل یس سے کوک ی 
ام رن کے یھ جائے ا کاٹ یکا خر نی مت کے ٹن بھائے چنا رتا ے پر ید آسامیاں پچحضرانے کے لے ےکنگر کے 
گی دافرمقداریش لت رتے ہیں ۔ ای لے اتال تن کہا تا: 
090 بے برا نع مم کا 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


۹27 





رن کے چنر سج 

یآ آپ سو رہے ہوں گ ےک انقاما ٹپ کاردبار یقینبویگانوں ادمشقتوں کے بعدہی چا ہا تھانے کت پاٹ پسلنے 
: پڑاتے ہوں کے او کہا لکہا ںکی راک جھا نی ڑلی ہگی۔حالامکہپی بنا اس دنا کا ْ سان تر ری ن کا م ہے۔ اگ رآ پ ای ینا ندان اسر 
ا نداان ےلت رت ہیں نذ بر1 پ بن ہنائے سکم ند یر ہیں ۔ یرام یدگ پکا خاندانی ادرمودوثی عق ہےء جےکوئی ماک کول 
بھی1 پ س ےی ننوی ‏ سکناء بتک گے تیچچللری اوررنکبھی چوکھا 7 ہے ٰ ٰ 

اگ رای انیس اوزآ پجھوڑا بہت اکنا پڑہھنا جات ہیں فو بچھر با زار سے عائل بزانے وال یحو بے مک یکول ی کاب یلیل اوردم 
درو چا ڑ بھی کا سلسلیجشردر حکرد بس ۔آ پکاریکاادد ہار برق رفا ری ےتز ث یکر ےگا رانوں دا تآ پکا نام پیرائن عظا مکی ہرست 
یس شا لکرلیا جا گا او چندپیادنوں بح چہلا مک را م7 پک دست لی کے لے ایک دوسرےکود گے د ےر ہے ہہوں گے۔ 

اکر یھ یی ن کوکی ایا ش ط یقت ڈحونڑ لیے جو بای ات سہقوں کے بعد پکوخلافت دے ڈا لے ببھ یآ پ وہ القاب 
وم رات حاصس لک لیس کے مج نکا ہڑے بے ہے علا مکرا مھ یتو نما لک سکنتے ۔ پیر بن جانے کے بحددز ن گی کے وارے خیارےفے کے ہیں : 
مرنے کے بعر یئل خوالی یلم بیس ارہ مالظقاآوراولا دکیض رپہیتی دی رہ کےھتفل گر مندرہون ےکی قط کوک ی ضردرت یں مسب ججھ ات 


خود ین ۱٣٥۲۲9121۱۷‏ ۸) ہوا چلا جا ےگا نماز وغیزہ پڑ سح نکی ضرور تن الک لننیں مکوئی بو چا طکہرد ہچ کی ری میں بڑست أ ا 
آہیں۔ جوا بگھ ابقدائی ایام کے لئے ہے جو بعدری سآ کہ سکٹے ہی ںک یما زومر وذ متدی لوگوں کے لے ہوٹی ہ ےم چی تی یں 

کوا سک ی۷ا ضرورت؟ ۱ 

بیز علا رج ےب ہر سے 


هھم نے بکذ نے تاد یاگھم پ ہیزنکشس جا کے۔یاد رھییےعلم دبین سے پ جینز بے حدضردری ہے۔ بادرہ بادہ سال من تک لی پالی': 
ہے دن رات ای فک نے پڑت ہیں ء اسان !کی نکیا ں بی بڑ کی ہیں ء مدزطہ کےٹوائین اوعم وط کا خیال رکھنا پڑتا سے 
صب خواچش یس علتاء جیب خرن ک یھی ہوکی ے اورامتمانات سس ےچھ یگ ر نا ڑا ہے۔ پھر جب بندرہ عالحم بنا جاتا سصت 
کھالی ڑلکی ہیں مسا میں مقنز طر لو کی خوشابد مداریس ‏ ش مین سینفڑے :تق رمروں می ںوی جذ با تک خالٰ وغاتاہں کل ہروں' 
کیتھرٹفیںہ بازاروں میس لوگکوں کے ملع ہ7 ہر یپھ یکم معز تچھ یھوڑ می وطیرہ وغیبرہ۔ اور ایج یآ پ کو کوکی و بے ا کش تڑھ 
گیا یرجھ یگئی ء رر یرجھ یمیا قرب ی بھی بندہ یرد لک بددعای بھی ساتع ءمر بیروں کےکصجے چچڑ حہ من نذ ال بھی خو بن ۃ ددصرے 
ملک دالےآذ دی بی آپ کےعالف ہیں اینے ملک وا لن ھی جو تے مار میں کے ۔کسی وانشور ن ےکہا تھا دوستوں تم بے ہیا لد 
کو ں7 اض ول تار 

2 پ دیں وت ریش سے واہست یز جنش اگردو یکو پ یی و سای پڑعا میں ےاگکرورکسی کے مرید ہوم ت2ب 
سے حاص لک ہہوئی سار یٹلم کیٹ تلق ملا کت پھر ک ےک رسب پئحومیمرے یر کے چو لککا صدقہ ہے ۔آآپ کے پا مس بچھو لک 
بھی ہیں میں کےگمر پیر کے در بآ ۓ روزکی حاضریا ںکدانمیں کے.آ ‏ پکی دعائمی لکوکی اٹ نہ پائمیں ھکرپ ری دعا یک دم ای رہد 


پل ہس ین ۷/۷۸۰// 


کر ج١‏ 
کر 5 





رتا ش ری اول یح کی ا راشہز نکی اور مو جودہ خانقا ای ظام 





گی نے رانے ٹین کم یں کے پرکی خدمت میں ءآپ سے الٹا ھا پیا کے جا میں کے۔ دو تکم میں ےق ھ7 پکومضت بل نا بھی ند 


نی ںکر میں ک ےکر پ کٹل پر وٹوکولی کے ساتھ بلایں کے ۔ اگ رآ پ اورپ رصاح بھی اکٹ ہو ےت پل پی کے تن مو ںکو چومیس کے 
پھرآپ سے پ اق لاکیں گے۔ نس پیر نے ساد عمرسوائے حاضر ول کے چچئکیل دیا اور ارول دد پے سیا را ہے ا کو مب بین 
پنشست مٹھا میں گے اور پ جکہسار یگ رمفز مار یکر تے ر سے ہیں اوڑملیعم وت ببیت کے مرائل ےگ ارک اسیک مقام یلاکن اکیاان 
کوچ رصاحب کے ترموںن مٹھا میس کے ۔ چیہ ویرصاحب کے لئ فاص اتنظاممکیا جات ےگا اور پ وصرف نکی کیل جائے و 
بھی زیمت ہے۔ پی اک اکہلا نے می بھی رفس کر میں کے او رآ پ کا ش اگ رک ہلا نے می بھی عارنس کر می کیا رسب نذدفادارشاگرد 
کی پچرجیا تھی او رادافو اس ت1 کا شاگردجدا الاب ر؟؟ ۴مہ اعافیت ای مل ہ ےکہ پی رکا ھ یدک کا پیش اختیا رک میں اینوں 
خیروں س بکی اھ واگ یکا تارابال جا کے ۔ بے بڑے دز مردشیرادردولت مندآپ کے نر موں می ںبشیٹھیں سے _ ٰ 

آ رح جو یجان نا حم ہا دکاارد ہارگی یرد اوزنحت خوانولی کے با ۔ہےسارا کا سا راساد دلو ح عوام ائل سفن ت کا ہے ۔ بر سب ہاگھ 
ان لوگؤوں کے اتی استعال مس ےء دم نعکو اہ کا ڈراہ برابرگھی اد وکیں ہے جھ پل ھاکڑیں دیا میا تھادوعقائ مہ کے فرورغ ء دی نکی 
سربلنری اوزعلم و لکی تر تی کی شبیت سے دیاگیا تھامگررارب چسنہ ےآ شنکارا ہو کا ےکہ یلوگ دی نکی حدم تک با ےکم پر ور یکا کا ممکر 
.آارے ہیں تو برعلا بن کافرض بذنا سےکہردو ان ہقدر ارد بای ںکاعل اسیا بکر میں۔ ایک زند و تقیققت ہ ےکہ امن لوگو ںکی عز تا 
مفظمت, مال ددولت سب یج لا رگرا مکی وجہ سے سے بآ بھی اگرعلا را ما نکی حمایت سے پا ملاس اورقوا مکو تاکن ےآ گا 
کرناشرو خحکرد میں نذا نکاروبار یں کےتھام پلازے ورلڈڑ بی ضشرکی طرح دہ ام سے ز مین پآ گر بس گے ۔ بیچھی یادنحی سکب سک 
ای سنت و جماع تک اور لک نام ہے ا نکاردپار یو ںکا نفزس رقرار رک ےکا نا میں ہے میٹ دای لوگ ہیں جھن کے کا نل کرو نو ںی 
یبرے بد اشن اور بتقید ولوکوںکوسک کن پر ڑا چھا ےکا مدق مل ر اے۔ 

بت ہ موی کا فرانڈرکی می ہے 
ٰ انلوگوںکی تفم رساززش کے تج میس اب لوکو ںکاعلما ون بھی اعم داتھ چا سے او را نکیا : ۳ نیل 7 مارتی سے رائم 





لہ بنا ےنم یدکواس پر یی نکی ںآ گا۔ د یر مسا کیک میں تصرف اورصرف ملا وکواہمیت حاصل سے۔الن کے لے سب پاجھا ہکا عا لم 
وا ے۔ او کیا نک زین ساش مان سے پ ایی ہد گر مارے نک رسب بہار رتخا 
بنے ٹپیشھے ہیں اور رین بے چارے اضچائی مفلوک افال یں 

عقائ رک یکا ف روغ اورد بی فک ارکی بقاءگکی نگ انی علاءکولڑ کی ڑکی سے ۔لہنر اضروریی ےک لا کرام اہی مق ممکوپچچا یس اورائ سکا 
ححفناک میں می سکہاکرنا ہو ںکہ جب وقتتتھوڑ؛ ہونے سی اونفلیں پچھوڑ دی پڑ تی ہیں اورپ ڈتش ادا ک٤‏ جاتے ہیں لم می نکا 





تصول فیس ہے اور بات یگفلیں وطیروز اد سے زیادوسخبات می شال ہیں۔اس دورز وال می اب قب تکا وق تی ربا تی 


(ڑ جللارلیٰ ). 


٠ ۲‏ ۱ ٰ۱ 5 7۲ ۰. 
اھ رو فکوخودایک چائل رن ےگ اکہ جو متلہہم متادیش چا ہے دہ غلط ا یکیوں شہ ہو پھر پک رموتا ہے ءا بکوگی بڑے سے و امضت بھی جع ۱ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 8110171 


129 





دی ہو سکیل رکا رس ا یں اورسا بقع د یکا مکرنے وانے رار کومخبو طکیا جائے ۔ اک 


لی کدوزیادہ سے زیادہ چندفوں کا ہوا ےگ ایگ مدد۔صد یو ںکک !پیا رشن یلا تار تاہے۔اگ کرد بی برای قائرکر 
دئے جا نیس تو رڈ یکا الیم اسیا با ےگ کان یرد لکوس چا ےکی مین 2 , 


سای تی و رادران کےاشرات 
۱ لے کن کت 3تت تی سے سی راو ضف ات تا أ 2 


اس تہ للخ پ ین ام پڈھی فی ہوں اوران کےز یت د1کراھان دابقان اود کین کی دوت سے ڈرازہ ۱ 






















۔ 

ححخر ت7 دم خلیرالسام سے لن ےکرگمتتاان غبوت ےآ ۲ری پچھول ایر تال ی کے سب سے پڑےرسول ححضرت میگ جیک عتع 
امیا ور لآ ئ سب نے اہ ف راک کازج یق سے نچھایااورص رای سنعشیم ‏ ےبھگی ہوک فلو قکوم فت لی سے نو زا انی مکرام 
مم رسلا کے بعد بے راولوگو ںکوراورامست پر لگا نے ء بلک ہے لوگو ںکو ان سے ملا نے ٭ را ونم کے مسا ڈرو لک وس اکرراو نت پر 
ٰ چلوانے اورتا کیک وس و دلو ںکوٹو رت حیداورسشض رسو یپ سے مکانے او گان ےکی ذ مدا کی علما عون مڑشمی اولیا ظا مکی سے 
ا ولیاء ایند کے ٹون وبرکات 


کی تحلیمات سے روشنام سکیااورکفر وشرک ہغمت , چہالات سے ب اکرفو را یمان و طائکیاسی رن غوٹ انم حضریت اتا نل رخوا تین 
الد من چچشکی اجحییری ‏ خواجہ بہا الد ی ننقشمندءسیدہ مچردالف ما لی خوام نت رشمہ چوراہی می ججرا عبت لی شا: لا مال محرسثیی مورک حا ذظ 
سیر جرا عم ت لی مشاہ مبردامام امدرضاخاں مو باصغا حا یش اوس فک یمیبراور بڑے جن مکائل :شس الحا رن ء برا لیا مین ہتضو رمفکر 
اسلام پر وف یی نآ سی دو مقدرس افراد ہیں جنہوں نے اپیے 1 پکودسین اسلام کے لےاگممل طور بر وق فکیاہہوا وا ہش رسو پل 
کےساپجے میں ای عل کے تےکرتول دحل ۲کفتار وک دا ر ہخلوت وجلوت,سف روط خر پ رپہلو میں سدت رسو ل پل کی متا بت تن 
لی ے۔بقول شاعم : 

نکی ہرہرا داسد تی ےیل یقت پ لاکھوں‌سلام 


کھت نے برا مق 7را م روہ چچزوں کےقریب جانا باع شئ رد گر دانے ج نف س شی ساس حدم ککوشت لف رم ےک نوا ری اوریارات 
زک رای میں مصروف رت اخلاق ایما تق اک رو۰ نپھ یش لک ش کرات ء بہادرادرجری ایی ت ےک جابرسلطان کے سان کلت ینہ سے 


ڑل جلداہل ) 


ارد اس مقدیسگردواولیاء نے خداوائعکم وحکمت لوس ول ہیت اور ایز ہک ردار سے زاکھوں مک روڑ ول لوگو سکود بن اسلام| 


اولیا عظا مکی زنرگیوں میں ش اعت اسلا ہیک پابندی اس حدم کٹع یک ہفرائض دواجبات ٹ کان ذخا تکوچھی جچھوڑ نا گناہ 


ی٠‏ نکر تے انت اوجات قیروہندکی صعو تی ںبھی برداش تک نا یق ںی کہ جافوں کے نز رانے بھی پیک نا یڑ ت ےکی نک تن کن 
سے پاز نہ1 تےء اشاحمت اسلام یں اس حلص ت ےک اس سےلے میس نت اینے 1را مکی پروا کر تے اور شرای اپٹی دولت می کی کا 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81001171 





نصورل تے شب ورو یی اسلام کے لیے طو ہیل اورمشکل سف رت فرماتے اوراپتی دولم کو پالی کی رب بہاتے تھے مکی وجہ ےک بیلوگ 
ہا لچھی گے دہاں عالییشان مساجداور ارس اسلا مب یکا جال بچھاد یا ءا لا گیا ماکھسی یاں نوا شی ء رفاو عامہ ک ےک رکا مرروائۓے بش رجت 
اسلامیہ پرفہا یت اہتمام تی لکیاءاخلاقی ضتہ سے لوگو ںکواپنامگرویدہبنایا لک چوگھی ا نک بارگا می لآ اٹ یکا ہوکردہ جا اور( زا می 


لم )ازند شمدت بن جا نا۔ مشارکعظام کے پاکیرکرداراورتر بی تک برکتں سےمسلمان لہ ےکی مضبو مار مسلران بن ےہ 


چس یکردار سے بلن دی کردا رکی منزل جک سج گر تھے کو رکوس کے ابیمان اورعمزت وآ برد کے محافظ بن سگئے۔ دوس ری 
رف د یا ےکف رم سپھکہلی گی ء بت بپسقی اورکفردشرک کے میلے اج نے گے ء دشمزان اسلام اس صورستی حا لکو یک را نکی رشان 
ہوۓے اورسو نے گ ےک اسلام کے ان پتقی خراعدروں او لن س سن اسلام کے دشمنالن اسسلا مکی سانش اشاحمت اسلام کے سلمسلہ یل 
تیزرکیاے بڑ ھت ہو ئے مو ںکواکیسے رکا چاۓ اورالن بیرلڑگو کا بے پناہ انا دکییسےف ڑاجائۓ ء الن ای دوا لو ںکی درگانہوں اور نانقاہوں 
پرتقیرت منروں ےجو مک وی ےک مکیا جا کے ۔ چنا غچ را لکام کے لی انہوں نے ود لیوں اوریساخیوں می سے ذ ین وشن لوگ نےکر 
ا نوا سلا بی علوم سی اک مسلھ علا ول می ں بھی اورمسلرافوں بی روک رح سام کے نام پراسلام وشن اوراختا اروافتر اق پچھیلان ےکا رب 
کا رچھایاااس کے سا تسا تعرانہوں نے مسلرانوں بی چنددبین فر دن خر بیدے ایس عہد ے اوردولت کالاچ در ےکر این سا جج ملا لیا نچھر 
یھ ای ربکت ہہ مناضفن اور خمرارو کا لگا و ںگانوں ہگ یکگی اتی جات پچھر کر نے لگا۔ نمازء روز ہ وغیمرہ اورل کے نام برلوگو ںکو 
رسالت مآ ب رقرتۃ مدع ان حطرت ماپ کی معحبت نیعم اور اولیاء عنظا مکی بانگاہ یس حاضریی سے رو کے لگاء اسسلام کے نام ب کت ہیں 
تصزی ف یں اورا نکتابوں بیس ابی ای پا یں شا لکرد میں بن ن کا اسلام سے دو رکابھ یمک یس بنا شض اسلا می عقائمداور بن رگا لن د ین 
کےسلمولا تکوانہوںل نشرک و برع تک نام دے دیا ملا یا رسول اوڈاله کنا نشرک ہے الطری عطاےحضور پا کل کے للےیلم 
می بکا عقید و رکناشرک ہے میاا دش ری کیاشفل سھانا شک ہے بعریس من نا رام ہہ ایال ٹو اب کے لکقر یب جانا حرام ہہ رب 
کے دٹ یک قب بر حاضرہوناادردہاں چاکرصاحب را رکویحبت سے پکا رن رام ےء پا غوث امشضعم نشی ارڈ رحخنہ لن ےکوی ر تمہ رایا ایامک ن ا نکی 
لا کوششوں کے پاوچجورمسلرانوں نے اسلا بی عقا مد اود بز رگن ومن کے لم ولا م کوضرز ان بناۓ رکھا۔ بلن رگم رام اور باشر رح مشرارح 
عظام کےگمقیرت منروں نے فو ری جا نلیا کراولیاء ایند ہرگ ہرگ مشرک بی یی ہیں بلہامسلا ہی عتقائمداور بن رگا لن د بنا کے سصولات 
بشرک دبدع تک رافزں رنے وانے خودشرک و پرتی ہیں ۔اسلام و ن تو نوں نے ا نی اسنا کا می کے بد دو مار وکو لوا کمن 
اسلام سے ال تل ک نیم کے مسلرانچھی ا ہرک لیے ہمسلمانوں کے مقا رد سو ما تکوشرک دبدع تبچھاقر ارد ےلیا:شرل وبدع تک 


بے جا بانسری چان کے لے چائل اور ہ ملوگو کوک بل وعظ وىنغ کے لے یےبھ یج دیج راس کے باوجودکا میالپی حاصل یش ہو رای سے ۱ 


تس کا اصل سب بکائل الا پان ء بلن کر داراولیاء اٹ کاو جود ہےکیوں شدالی اکم ب کرای راہ سے اس رکا و ٹکو ڑا میں اوریسلرا فو کان پر 
اخناچ مکردریں ءا سکردہ اولیا مکا نی ٹم مر نے کے لیے انمہوں نی پیر پر سیےہمسلران علاقوں بیس یی ء ان ل کو ںکیسکلئیس ہے 
ڈگ ی نیس اوران کےاعمال ا نکی شکلوں ےبھی ز یاد شی تھے ۔اننہوں نے اسلا ہی قایس پی رپچ رک نا شرو کرد یا سا کرام شی الڈد 


عن رج نکیا یمان االیڈد نے ہمارے لیے معیار بنایا ے ان پلھن ش٦ر‏ نے گے اوراسلا ہی اکا مام کی جا ما :شر ام تک نا شردر حکردبسی 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81100171 





صورفوٹ امم یھی وڈ رع کی مچابرانہز ندگی اور جردہ مانھا دی نظام 131 


عا لیکو ںکی نما زط ہی ول ہے او رکم انشدواکو لک نمازد لکی ہوئی ہے( معاذ اللہ )اس کے علمادہ ہے پردگی دے حا یکوان لوگوں 


نے علر یقت کا نام دے دباء اور ڑھول ڈ جک اور نار کیشکل می ناو ا اکپ لکو کور سک نام دے د یا جس کی وج سے پیبران عنظا مرکو بد نا مکیا 
جانے لگا لان الن جائل پیبروں کے بر ےکرفذ فول کے پاوجود چنلد چا ال لوگ ان چائل پچیرو ںکوپیربی لصو رک تے در سے اوراا نکیا عزت و 
تمرم کرت مر سے جس 7 وج ے پپشرورء ماد مت برستلوگو ںکواس میران میس ےک موتع طاادرانہوں نے ری کی کس بھی ری 
کرد دونوں پانتھوں سے لوگوں کے مال سے ان یتجور یا ںکی میں :عمقا تد الا مییرادرنش رلعت اسلا عییہ سے منہموڑابللہا نکائ ماق اڑ ایاکہ 
ول لو نکیا با ٹیں ہیں ان نے ہفقو ںکامیاصلق؟ معازانڈر | 

شنان‌اسلام کے پیداردوسازنی پیبروں ادر پھی ہکا پر نے دانے ان می اور چائل رو ںکی وج ے لخاد تیم بافنزلول 
دن اسلاام کے اص عمقا مر اورستمو ات ائل سنت سے بی مٹہموڑ نے گے اوران ٘علی چیبرو ںکواصل بیرق ارد ےک رتمام مارح اوران کے 
عقاولا کو ہلت اور پبی فگمرد پروگرا مقر ارد ہین گےء دراصل دشمزان اسلا مکی طرف سے سانش اوریچمی پیر پیر اکر نے ےکا اصل 
مق یھی پیٹ اکیمسلمافو ںکواان کے عونرا مد سے نشنظ کر کے او سوا مت ائل سض تکوشرک دبدعات تر ارد ےک اپپنے داسکن تڑ وہ ٹل 
پنسایاجا ۓ لوگو ںکوان چائل پیبرو ںکی وج ےی اولیا ءالشرپدا ناخ مکیاجا ےت اک یدام ان کے پائس نہ جا نی اورپ مشارغ ان کے 
ما کی ات گی ْ 

سن انی اس سازشش میس بک تزکی ےکایاب ہلک پا تھا مخت ار ساڑش کے برے!شرات پر ہرصاحب ول او ہنس من 
پر نان تھا اور تل لآتق بر وگری یا ذای او روخ سے ا کا راکرد تھا زمر مطالہ یکا بگگیا ای لس ہک ای ککڑ کی ہے جے ایک 
مخلص مو" دن صا حب ررراؤو جوان خر تر رگ اور بز ما تسییہ کے ڑا ف ہردقت گرم ر بے دای حفصیت 
نے رمیکیاہے۔ اس مل انمہوں نے چائل پیرد لکیحطلف علامات اوران کے سعتصولات پرر وی ڈ لی ےتا کسام بنرے ا نکیخمی نین 
علاما تکود رکرو ری بح جا خی سکیرمہ چائل اود جار چرس اوراس سے اچتتناب برمتک۷ راس مےب اھ بذر کپ یا۔ 
اٹ تھا لی میہرےاسد بی پھا یکی ا ں خلصا شا شش سکوقبد لف رما ۓ اوراس کے دورریس ار ات خطافر ما ے ۔آنگپن 


(شار :جورل٢٠)‏ 
صاجزاد سی نشیٹس ال ران درا لی 


شی میں ہم لی مضصد الیل سے ارے می سب مل یی ہحفص داڈشل ابوارم طالب مد 
مر یکا انگ اور عالم ہم رد دم رپ یکا الگ ہوتا ای نآ خر منزل دوفو لک ایک ہوئی ہے ۔ میق تکی حاش کے لی منزرل مراد کے 
کے لے م ربکا ارادہ اور مخز لکک بہہیانے کے لیے چن کا ارادہ جب پا بھی تال ونتاون سے مآ ہنگ ہوتا ےن بل ارد تنا یگ ہر 
محصورروٹوں کے پا تج و1 جا ا ہے اوردوفول اپینے این ارادے: متصداورشل می سکامیاب ہو جات ہیں - 


۱۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹ +6010021773177 





رەس 


جھم نے ابتقرائی طور برق ن امم کے سونین اوحنعھم کے مر یدرو ں کا ڈوک رکیاے معکم اور پرچھی قین طرع کے ہد تے ہیں ایک تو خود 
ساخہ لی اوردہ نا مہاد رہد تے ہیں جوصول و ںکا روپ دھا رر م۳پ ردستنا رس اک رعلا مکی رح جب پچ نکرخودکو حعا ئل مکیائل اور پیر 
ان کا ڈوک رجات ہیں ۔ائ ہم کے لوک زیادوت گمنڈ تو یذ اورکھو ٹے وم ددددکا کیارد اک تے ہیں اوراپے پا ؟ نے والوں 
سے ہی بد رػیں ہڈ رت ہیں ۔درین سے ناواقف اس رع کے عامل بعوٹ ء چبرادر پادے اہ ےس گر و سے پچوٹنت جن سی کر 

نے رٹائے بپپٹجھنا قاہ ہم الفا ط مھ وکر نین اور یدرول پر پچھو کت رت ہیں اورسا گی عالات کے ج می پا انل نکو 
فی ری یکر ہے بگی بناتے ہیں ۔ ای سی یکگی ری ںکاغ بر ڈا لکرتحو بے بناتے ہیں اورمو لئے سوکی دھاموں پگ ہیں 
ذا لج اوران پر پچھو کت رج ہیی _ ز یادو تر وضعیف العقیدوعورٹیں اور چائل ان بے لوگ ان کے مر بل ہہوتے ہیں جو نآ سیب 
ازارنے اورتمو بی ڈگنٹڑ ہکرانے ان کے پا کک یت ہیں ۔ اٹ ےجچھو نے چب رہ رمانہذ من کے ولوک ہو تے ہیں ج مور مرداورگورنںل 
سے ا نک زنک کے ننقیہ انز ح اص لک۷ر کے سا ری عمرا نکو بای ک مت لک تے رہ ہیں۔ بیطرع رم کے ہرائم اور بدکا ری میس علوثٹ 
ہدتے ہیں ۔تبرستتان سے نر دو ںکی ٹیا ںاورکھ وڈان وکا لکر ان ب چو نف یمیا رتکر ن ےکا ڈعوتک رح اکر وگو ںکودھ وکا ہے 
ہیں ۔ جیب جیب ناموں سے ابنادنداکر تے ہیں ۔کوکی ممیانسی ہوتا ےکوکی ہہگالی باداءکوئی عائل پیرغقبر لوک سای سیب اتار نے 
اورھدت پر بیت لک _ل کی ڈرامہ با کیب کرت ہیں وی دداتچال نین کا کا رو بارتی _ ان ججرائم پیش افراد میں نعل بہت بااڑ 
ہوئے ہیں _ متقا ھی وی سکو تد بے جوالنٔ کے کرو حر ےشن یداخحلل تی ںسکرکی _ کش سکی بت بنااکی سے بی لوگ اپتا 
ناجائم زکاردبار حجاریی ر ہے ہہوتے ہی۔7 ر جک لگن دنوب او رچھا ڑا چو کک نےاوا ےکا روہاری بی غقبراور عائل مل نظ ر1 تے 
ہیں ختف العقیرہ اف رادمردگو رق نیا کہ بڑے پڑ ےس رکاری اف رادرس تقد ال ن نگ ان کے سال می س کچ سکرسا ری عهر کے لیے 
ین اوزاخصا لی امرائ‌ کا شکار ہد جاتے ہیں ہندو کیہ عیساگی اور نکنل کے بے ابیماان ہمشرک اور پدعقیہ جا دوگ او رکا ہن 
میا تک ہکا روپارکرتے جل نظ ر1 ہس ہیں بڈے ڑم ۓےگھرانو ںکی ماڈ رن خوا جن ان بہردہو ںکا زیادوشکار موی 1ہ 
ملا نک جن جوا اعم کےمش رکا ضہافعا لک تے ہیں لوق خداکودموکا دینے دی اپنے دن دا یمان بھی پا تح دعو بی ہیں جع 
العقیر مل ران خوا ٹن اورمردو کا یں م ےون سے دورر ہنا ببہت ضروریی سے ۔۔مملیات اور روعا بت کے نام پہ لوک و ۵ 
گنرے او رت رکا شراعما لگھرتے ہیں جن نکا شحا گنا ٥کبی‏ رہ بی ہوا ے ۔اےے بناوثی عاموں اورپ نقبروں کے ہاں جا نے اوران ے 


علق رھنے وا ن بج یکنا وکیبرہ کے مرتکب ہوتے ہیں او رجنخ فو عص ربج شر ککا ا رکا ببھ یکر تے ہیں یق دمکر نے اورتحو یکا ْ 


اب ماخ زق مآ ن سکع مک یآ یا تک بی ہو پا ہیں ۔تشریی طر یقہ ے دم اورتوب کر نے والائٹھص کیک تفم ء پ ہی زگ راورائشدسٹ ڑیخا 
دالا ہوتا ہے3 وثنلوق خدراکی پھلا کی کے یش رلیجعت کے مطابن دمتتوی کرتا سے اور یت سکونتصالن بھانے وا لے ہ عم کے نی را 
شیک لکرنے سےاجقتا پ ہے 

روس مشش ےس مس ضمدےس سس و 
مناسب دی اور انقا ا ینیم ور بیت سے بے بہرہ ایے بڑو لکیا وفات کے دی اہلیت اور اخوققاقی سے اخی رہہ مطلب برست 
مر یدوں یاخاندان کے پلجول وگ لک درد سے مز رگو ںکیکمدبیوں اورمساندطر یقت پر فیعض کر لمت ہیں رشدو رایت کے یی مساند پر مین 
کے لے د ہنی لیم وت بیت کے علاو وط ربق کی الیم مت بیت اورسلوک وتصواف کے میبرائن یش ریا ضتء مشنقت او رجا ہک اشد 







۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


133 





قرور ےل ےسب جب ا ںام کے ئا ال میراٹ خورحادوں پر فضہ با لیت ہیں ادر چرام یڑ کا کا روپارشٹرو ‏ حر ہیں ان کے 


مر بڑش ربجت وططرلققت ےکی رات ےےل ھروسم رج میا ہیں وہ رین ےکی ماتحع دع مشمتہ یں ۔ ان پڑت پیر مریدد ںکوو دی 
سکھانے سےر ہے الٹا ان کے خی رش رجح ات د بکرم بھی ددیا یج کر ن ےنگ جاتے ہیں اورنجیی دن سے دور ہو تے جاتے ہیں۔ 


مر دو یپلولش کر نک یکیش نل کرت ہیں جوان کے چپ رکرتے رہتے ہیں ان یے پیرو ںکی سب سے بڑی نشای جع وت پنماز 


ایض عح تکاشہ بڑ ہنا لماش ل سک دکھاناء ہروقت باوضونر ہنااورسب سے بک فنضول اورلا یئ یو می وشتگمز ارنا ہولٰی ے۔ 

' ری ام دک یکا کاردبارکرنے والوں ٹیس اک اما ہوتا کہ ےکک ای ک گنر یی وراشتٹ سے ےکی بھی اوررشت دارمیران میں ا7 
تے ہیں اورسب اصکی ساد ڑشین ہون کا دع یکر تے ہیں ۔ا سط رم وسحبادہ پاگمدیکئی توں می ںییم ہدج ای ے اور ہردکو بدار 
این جھےکا الک رہن جا تا ہے ۔ یرون کی رع ان کے خلفاء اورمر بھی مل فک یں میں میم ہوجات ہیں۔ پرغلیفہاورم ید 
این بی بی رک پ مکنا اور دوسرے پیک وکھموٹا ءکا ب اور خاص ب خر ارد یتا ہے ۔گویابیگاکی دوکالن یا کاروپارکی منڑی ہو ہسے۔ بج 


شراکت دارآئں میس یھ مردتے ان ۔چادوں اورگر ال کے اکر ورشاء درگا ہہوںل اور ارات بر ہونے وا نے نر راے اور 


حطیا کی رتو م کے بھرنے کے لیے پار میرک تے ہیں ۔ درگا ہہوں او رع ارات پرااس رح مع ہونے دا لے نے رائو نکی رقوم 


اکڈموروٹی سیا دہٰشین پیرو ںکا سب سے ہڈازر لچ رآ دنہ وی یں برخودساختداورنا 7 دپچیرائلل علا لا ےے کے لس ےکوگ یکا 


کا :ارت اور ملا زمصت نمی کر تے ء ا نکی رہ نبوئن بادشا ہو جییی ہہوٹی سے اور بیو کعمو با شاہ صاحب +شاہ ہیا اور یرس میں 
کہا تئے ہیں ۔ال نکیا جاہ کت٠‏ پٹ کیپ یکونیوں او حا کی شمان وش وت بھی اکڑ مر بلراان کے ڈانی غلام نت ہیں ۔ ڈپنی 
اورجسا ٰ فلا ی ٹیس کے جابل مر برا "سے بے خحوف ان خووسا خدکروں کے ماج میں بری طرع نے ہوتے ہیں لت ان 


تاور جائل مر بگراہ پچروں کےسا نع ڈیم کھیکرتے ہی لیکن ا نکی سےا مت لن ےت کر ن ےکی ہیا 1کشر ہراس 


ا ات ترکت پرسحکوت افخقیارکرتے ہیں بن خودسسا خی یبران کے سان ےج بُتطیم یمک رن ےکی جومل ا فزال یک تے ہیں سم بیدادب د 
لیم اولیاء کے نام برتر ککا اریطا بکرتے ہیں ۔ پخو کو لاکن ارب دون!م مقدیس اور پارنز وہ ےکرشرک کے م رکب بہوتے ہیں۔ 
ا ےآ پکوائسںط رم ینزو اور مقر ںسکہلدانے وانے افراد کے پارے ٹیس رب بل شان ہکا ارشاد ےا : ٰ 
ام تر لی الَِي بُکون أنفُسَهُم بل الله بجی مَن بَشَاء' َلاَبُظلمُونییلاپ4زالنساءٴ:۲۹) 
کان نے ا نکوندرد بیکھا۔ جو( باوجود بے شمارخراہیوں اورشرک میں پتلا ہونے کے ) اہی آ آ کو اکیزہ(اودمقرین) نان یں ۔ 
زوا رت ای وا رم یت زین کات کین )کال تالی بیج سکوجاہتاے پا ککرتاے.( اک کے 
الددے ۔انسان کے اہیے شر پل ہیں ا ےک کی او یپ ےکیاناے اص ےراب ہے شا )اور 
ان بابک دھا گے کے پرابرکھ یٹلم نہہوگاین ا نکواس قد رمزاضرور لل گی جس کے دو مقار ہیں 

ادۂؤکا بش رک دن اسلام یس سب سے ڑ اناو ہے۔ الد تالی کے سواکسی خی رارق ہکحر کر نا رام سے بس :بت مودّ: 
درشتء پپہاڑہقبر یا زار ویبرہ کے سا نے پھشا یکوز مین بر رک کاحم ل بد ہ ہے۔ اکر بل عبادم تک نیت سس ےکیا جا ۓ نے اعلاشیش رک 
ے او راگرنتظہم وگ ریم ممیت سکیا جائے فذ مرامملئی او رگن ءکی رہ ہے ۔سابقش یعتں را سی سد ہ روا تھا نین شر یع محر ی صلی 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 11001 717 


.. 4 





ار عای وآ لویل می انی مکی ا شک لکوقرامقر ارد یاگیانتھا۔ بردد تیوک می بھی مرا تھا اور رح بھی اسی ط رح ای کحرا مل پت جابل 


خورساخت پبراورالن ڑم ساد ہشن بڑے دع نے سے مر بیدوں کے ا س7ا م۱ لکوا ہا رت سیت کر تے ہیں ادرتاد مل کے لیے 
اکا بر اولیا تک کا نام نے سے ےگھی درٹن کی کر تے ۔ دن سے ناوافف پیلک سکبتے ہی ںک اکا اولیا جج نے اپینے پچبروں کے ساس ےحبدہ 
تتفیس بالات تھے یہ پرنے در ےکا مجھوٹ :کب اور افتزراء سے ۔صی صاح یلم بذریگ اور وی یلد نے ا پمتل حرام ما بھی 
انا بکیاادرنہہی اہ نمی تصلم یام بک اپنے سائے بای دوسرنے بذرگ کے سامئے ای اکر ن ےکیا اجازت دگ۔ اولیاء الما ۓ 
رین ےانمہوں نے پیش دحا نرونتعال یکیو حی رکا پر چارکیااورام تکو7رام سے بچان ےکی جد ون دکی فدم بڑی کے لیےبھی اگ کوکی 
مر انا کی پیر کے قزر موں پ یبد وکی صورتب میس رکدد ہے نز نی مکی ریش بھی رام سے۔ نم مدکی کے نام پک یکا ای بین ایارک را 


کھردچٛف بی اد رگنا یم ہے اس ط رح کے ادب وتلیم سے را لتق ومسلمانء عا لم اورپ کا بچنالا زم ے۔ اکٹ ران ڑب اور چائل ۱ 


لگ ہزرکوں کے مزارات پرحاضنریی کے وقنت بد ہیی بھالما تے ہیں ۔ پیش لبھی مرام ہے اور رت شی کی“صکی ارڈعلی د1ل یسل مک یحم 
اکھطاخلاف ورزیی ےن بنضح نادان لوگ ارات کے سا ثٹے نماز بڑعنی شرور حر د تین ہیں جوش راع تکی رد سے خت نا چائے سے اور اس 
سے اقناب ضرورگی سے اگ رس یفص ے ناوگمی ل کسی پیراکے سام الین جرکمتسرذدہوگئی ہو یاکسی پیر ن ےس یش سکوا ہے 
ٰ سان ہہس یکر نے دبا ہو سکیس زنشی نکی ہہواو رام پش پوت اختیارکیا ونس یرہ عاٴل اورمم کوٹ رکی طور پر ارڈ دتتحالی کے 
ور رک کے مخفرتطل بک لی جیا ہی اورآ دہ یکا نے ارکی کت سے تاب ہونا چا ہے کسی فردوشرکو اپ مود تکیانیس ہوتی۔ 
سے حر تی سے۔ مو کا وت نے سے پیل اب ےگناہو ںکی معائی ماگنی چا بے اور بییشہ ہبیش کے لیذ کر کے پوری 
طرح ان ہونا جا ہے بہت سمارے دسا خد پیراورخہا لمت ہا >ارل 1150٥٥٥6٥۲‏ 03۲35109[08] 16 30) ٹڈ ۶ا مال 


بے بے 


ری این اپنے مریدوں کےسا نے کیب وف ری بٹھھورالی ء بٹےسرد پا مک اکھت اورائیی لا می با یکر تے رہ ے ہی ںکرنی نکاخ رآ ناد 


سنت ے روررو رکا دا سیک یں 9 سے شلا نس کت ہی سک قیامت کے دن ان ےمم بیدان کےجچھنڑ نے ےہ ہوں ےر امن ٴ 


ان کے اعمال جا ہے بی بھی ہوں اورۂ و کیےجھ یگنام کے م تک بکیوں نون ہوں ۔ال کی شفاععت ےل سکیا موا خر و کے خی رجزت 
یت ےکی موروٹی ان پڑت پر ام یکا ابا عتقید ورام اورشرک کی الہ ة کے زمرہ می۲ س7 تا ہے ۔شفا عح تکا مرتبرف اورصرف 
یکنش مکی او علیہ ہل دسل مکوحاصسل ہے ۔ ان پڑت یرد ں کا ال لحم کے خودسا ختنظ ریا تکا مر بیدوں کے ساتے با نکمٹا رام ہے۔ 
ابس یم نکھت پان ںکاسلوک وطل یقت ےکوئ یق یس ہے مگ زشتہاددار بی اب بی نظ ریات ادرعقا مدکی وج سے اکر اق ام مل 
ای دب بادئی سے دو جار وتلیں ۔آ خرت کے پاارے ٹیں اس عم کے فا نظ رات زندگی می مل ء اخلاصص۰ ا حمان اور فک اہمی تکو 
کس رز لک دیے ہیں اورم یی ان لخوشرافات پر اکن اکر کے ابی ساد زندگی ب ےی می لگ ار دی ہیں ۔ انمائن کے لیے دا یش 
ااطاعتٹ!لی کے جز ہہ سے سر شا ہوک رصدرق واخلائص ےم لک نا بی شیا تکابا عٹ ہوتا ہے یل کے خی رپردکارو ںکی نھالی وک جز با ی 
یرت اوران بڑ ہہ بچبرد لک گرا ہکن با تقو لکونحجا تکاز ری ۔بھنا ام خیالی اورخفلت ونسائُ لکیاخط ناک تر بین صصورت ہولی ہے ۔میدران 


حشرییس الست اولیا ۓےکامین اورعلا ۓ رین اپنے کی ککمل بشق یہ پ ہی زگ رم ری مین او صلی نکی شفاعت کے لیے تفع لمفنٹین نمی 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 111 717 





وٹ )نلم ریا رع نکی ارہز مدکی اور مو جودہ انی نظام 





رححت صلی الدعلی دہ لہ دع مک جارگا دب ےس نا میس الا اورسفارش شک ریس کے اوربطورشاہدرالن کے اعمال حسنہ دای د بس گے .می اکا 
و کی شہادت ہہوگی ۔ جس ط رع امت مم دیگرادیان کے پر دکاروں پر قیامت کے ون شا ہوگی ۔ سوہ لق روک یآ بی ت۳ ائیس 
ارشادانی ہے۔اورای ط رح جم نے 2ا ےم ل افخ مکوایک اعتترال پر ٹنے دای امت نایا کہ( اف راطونفر بیڑ سے پاک ہوک مم :2 
کے لے مرکز گور ہدایت ہنواور) تم لوگوں پرگواہ رہواور (جمارا) رسول صلی اود علیہ دآلہ وم تم برگواہ ر ہے( تمہا راگرائن حالی ہ۔ 
ہار ےےل صارغ نوا :0ل) الد تھی نے ا س1آ یت میس امت سل فک وگوا وق ارد یا سے اورمگوابی ا سکی مقبول ہولی ہے نو عادل او رخیک 
ہو۔ا 1 بیت کےاولین ما طپ او رمصدراقی حعقریات صا کرام رضوان اعم این ہیں .سو بیت اس با ےزم سے تما مسحابہ 
ری الد ٹم عادل او رکیک ہیں اورج کے ہی ںکرسول اوڈییی اد علیہ دآ لہ عم کے وصال کے بح دنین ار کے و اباٹی تما مھا ہہ( ال اذ 
الل) مرج ہو گے تے۔اان کا یکنا ال اوزمطرددے۔ نی صا کرام رشی انڈ ٹم کے علا دہ قیا مت تک کے تی م الما بھی امت لم 
یں خا :اد ہلعش داخل ہیں اوراسس میس دلیئل ےک امت مسل یھ یگرادی پ گت نیس ہوک یکول ا نکاگرادی پشع ہوا ا نکی عدرالت 

























گی کےخلاف ہے اور جو عاول نہ ہوڈ وگایں ہیکت اس لے قرام امت مس کاگواہ ہونا امت لم کےاجماع اوج تو جزم ہے |. 


اود یردام ر ےک یکن شرک اور برعت عرالت کے منائقی ے_ ن ناش صلی ا رعلی دہ لہ مک یکوای او رشبادت تا مطلب مہہ ےکآ پہ 
صلی اوہ علیہ ے1ل مل تا لی امتوں اوراپٹی امت وسط اوران قامأمتوں کے احوال سے واقف ہیں جوون ک ےپور کے بح دچھ یگمراہ 
رےاورآ پ کی اش دعلیہدآ زلم ہنی امت کےتمہان ہیں ۔لہڈ ١آ‏ پ کی اللدعلیہ وآ لو سب ہوا ہی دی گے _تمران پچ کی صورہ 
السا مکی اکا وس می ںآ کر ری ارشادربانیٰ ے۔ اس وف تکیاحال ہوک ٹپ رات سے ای کگواہلامیں کے اور پ کی اش علیہ 
لہ ول مکوان ل(سب ) پہگواہ ہن اکم لایس کے علامہ پیمادگی ری ار علیہ آنےککھھا ہی ےکہ پ رسکی ا علیہ لہ یلم ای ات کے فار 
ار اورئر ےاعمال کے خلا فگوای دہ ےگا اون یی ااڈعلی وہل تام نیو ںکیگوای کےصدرق پرگوائی دمیں گے ۔ا سآ یت سے 
ٰ معلوم ڈو اک میرم ہناش مسلی ا علیہ د1 لہ وس ہقاممامتوں کے احوال بیع ہیں ؛کیدکل فی یکم کےگوای انیس ہے ۔ 

ان ڑ جاور جال خودساخند:خوف خد سے عاری پی لف طربیقوں سے اپنے جائل م بیروں کے اذ پان ولک بکوقا و میں ر کے 
کے یطر رح کے پیٹھکنڑ ےا ستعحا لکرتے ہیں ۔اا نک یکوشش ہوئی ےکہان کے مم بڑمچدوںل سے دورر ٹہیی ۔علا یئ ےق نک یناو 
سی اور ںای صا ٣لم‏ ینز ش ربعت بیبط یق تکیائلس میں چائہیں.. :اکا نک یشک نکر3 اپ ان پڑ داد بل پیر سے پرکشنۃ نہ 
ہز عا تشیی۔ں عائ ران مربروں کے ذہنو ںکوش نگکعز تکہائیوں پر فریب افسائوںل او رچھو لے ڈھکیسلوں سے و جمان تک ای 
7 ائادبنادٹن ہی ںکیم یڈ رادرشوف کے مارےچ بات سور سکتے ہیں اورنہ پیر کے سا سم ےکوی شی بای بات لو چھے با کی ےکی ججراتں 
کک گت یی ۔ بہت سارےالن پڑت پیراینے مر رو ںکود ٹ کب کے مطا للع ےش حکرت ہیں وہ سک ہی سک1 دب یکاعلم جن اکم ہوہ الد 
کے پا ںآ کا موا غزز کی اتاج یکم ہوگا گنس رآچھی کت سک ہکناہوں کے انررن ما ہربی علوم ہد تے ہیں جن بکمہ چیردولی کے پامس 
ای اورردعالی کم ہوتا ےب ظا ری علوم یڑ ین سے مرییروں پر پان ی علوم کے درواڑے بندہد جات ہیں اوران پروعا ی ارارک الف 
باہو جانا سے ۔م بد کے لے ےضرددی ےک ہو وصصزف اپے پچ رکی باٹ نے اور اہی کا نو ںکوضلاءکی ماشو نے اور کو ںکوکابہوں سے 


۱ 








۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 810011171 





تو رف انم 


مطاے کے سے بنلرریییس توف خداننہہون نکیا وجہ سے اک اکم کے چیروں کے دل پپچھرکی ط رب حخت ہدتے ہیں ۔ اس طرح کےخود 
ساختد ٹیعلم پیرہچھ کی طرع ہہوتے ہیں جو خو دیج یمرابی کےسحندر میں ڈد بے ہمدتے ہیں اوراپۓ سا تدم یدرو لکوبھی جہاات کے 
سمند رک یگ رئیو لکن رک/رد سیت ہیں ۔آ رع کے دو رفتن ٹس دین سے ےت راورمل وم ش اعت وط بققت ے زا وا ١ف‏ مخ خودساختد پیر 
دعل تب یکرت ہی کہ3 وا یفلوں میں اپنے پیردکا رو ںکواپنی وج سے رسو لکرس صلی اوشدعلیہ دہ لہ یل مکی زار کرات ہیں۔ذ ہ 
مر یا کی نکمرتے ہی ںکرد ہچرگ صورت پرتج رم رکوزکر کے بی خیا لک ےک جیے و و ہو بہو ٹیکانش مکی ار علیہ وآ لہ یع مکودچھر سے ہیں۔ 
ان کا ارہاز خیال یسے یس تو ىی ہوگا۔ اسی طرح یرک صورت المعیاذ ایر ٹچ یکر صکی اود علیہ لہ مل مکی صورت یی تبد مل ہگی۔ ایا 
مقیدہ رکھنا با مر دو ںکواں مقر ےکی نکر نا اورا نکوائس ط رح کے ارز خیال پ مجبورکرنا نا جائز اورطرام ہے۔ اکر جائش پیراہۓے 
مر یدوں کے سامئے ابی خراوات بنا سے یہہ با تن جوذ ‏ مر بیدوں کے سات ھکر تے ہیں .3ؤ و خود ےنا ںکر تے بللمہ الد سے پراہ 
راس تک کرمر بیدوں کے ساگئے بیا نکر ت ہیں کسی چائل پیرکا لیا لقیدہ رکنا ترام اد رگن ہکببرہ ہے بیصرف جائل مر بیو ںکورام 
رن ےکا ایک ڈوک ہوتا ہے ۔ ار کے بارے یں نھلولی یی گرا وک ن نظ ریہ ر کے وا نے لوگ اڑیی با خی کرت اور ہندرددھرم ے متا 
ہوکگرا یی خرافات کت ہیں ۔مسلما تو ںکوا لے نا ہا فوں اوربیروں نے دورر ہناجا ں 


اپنے ایھا نکیگ رک رس 
رع فان نیم کھت ہس 

یہا نک آ خ ریدقت ھا ءز کا عا لم طا رک تھا او شی بھی وقت۔اخجس تی ےت ٹیس ایآ ینا یف کے میس دانل 
ہوکی اورمرنے وا لے کے س رانے بی ےکی ء اس نے مرنے دانے سے و مچھا' میا اس کا تجات مل ال رکا وجدد سے 'مرنے وانے نے 
جواب دیا''پالئل ہے اس نے انگلاسوا کیا" تہارے پاص ا سک یکوگی ول سے ''صرنے وانے بہت پڑے الم ,مو رٹ ضرا ورفقہ 
تھے ان ہوں نے خداکے وجود پر دلانگل د بیناشٹرور غحکیرد ہے ۔ دہ جن چھی داانلل دی سی ےکررے میں مو جو نخصعیت ان کے لال روک کی ری 
؛ بی دی ء دوسری دی تیسری وی لا کہانبوں نے مت دلائل دے اور دوسرری طرف سے پیک کی مس سب دلا کا دکر دیا 
گیا۔ اب ای ںتشو فی دنن ہوگ کہ انا نکون سے جوھری ہر دم لکا جواب دہپے جار پا ہے۔ الد نکر اگر ای رح فی ریا ہر 


نی ار نکی مرا نہذ مدکی اورموجودہ ما ھا بی نظام 16 





(ماہنام دشر ان اسلام جون٢٠۰٥)‏ 


دی کا جواب دتا رپا یس الد کے وچودکا مگ رہ وک رم رجاو ںگا ۔انہوں نے اورز ور سے اور کم دزائل د ینارد رحکرد ہے جبہبات! 


نے د لا لب ککپئی ادرصرف ایک دلیل باقی ری نذ نیس لیے مچھوۓ گے دوک اگ ےک اگمراس حالت میس مو تآ فی نے اخیرابمان 
دیاے رخصت ہوجاو لگا اوھ بای شش میس خے اد نے ان ےج کواس سارے موا لے مع گرریا 9ۃ اس وقت وضوکرر سے 
تھے ان کے پا تھ میس پالی کا بن تھا اہول نے ا سے( مین پہ چورکاک انس مرد دودوم یکیو ں بیس سک کہ میس بخی رد ئل کے الد کے 
ورک قائل ہوں۔انہوں نے مچی الا ظود ہرائۓے نے شیطا نکھرے سے بھانگ لکلا۔ گی بای یرامامم راز کی ادرشیطان کے درمیان مکل تھاء 
امام رازگ اي وقت کے ہت بپڑ ےنلم بحورث اورفقہہ تھے :سا ری زندگی د بین اسلا مکی حفحاضی تکو ہیا ن انی جسبآ تخ ری وش تآ با و 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹60 071 7 













خودشیطان کے س ےک شکار ہو گئ ال دارم ہواادر بی شبیطان کے مے سے ہے لئے وگمر نہ شیطاا نکی ری پل ےک دو حاللت 
ہکرساری زن گی عبادات می لگ ارک او رآ خیش ایمائن سے پا تح دھوٹیشھے ۔ایمائن والی وت انس د نیا کیا سب سے بڑکا_حقت ےاورئلیں 
اس دعاکواپے معمولات میں شائ لک نا جا ہے ۔ 

بھم انس ودقت جن نازک دور ےگ رر سے ہیں ائس ٹس لہ اما ن لو ۓ کے اڑے لہ ہوئۓ ہیس جھوئے پیبرہ بنگالی انے 
اورقعلی حا ءاڑسی صصورت می اگ رکوکیُ ان ترامفتفوں سے اپنادان برا یما نک مو تم رجائے ف می کہت ہک اکا میال ا ہے۔ 
(۳٢۱ب‏ بل )٦۰٠۸‏ 


برعمات وشحگہرات کے سد با کیل مچ رداسلام 
امام ا حر رضاخمان علی ال رک چماد 


ایک صاغ ء اکیزہاسلا می معا شر ہک گی لکیلئ پر حات دشگکزات بخرافات ولولیات اورلخو با تکیانشا ند اوران کےتر ارک 
کیل مو کزششو ںکی اشرضردرت ہوئی سے ۔عاماذاسا ذو بملکمہ ین دی :بن اوذار ہاب ایق ارکو ا سک سام رگکری نکی ,سال ٰکڑششئیں 
لی جا یی ۔ امام اتمرضا نان نے معانشرہ میس لے ہے صککرات و پعات کے لا فبھر ہو مکی جوا رنٹمائی اورخرافا کی کی 
فرمائی۔ ٰ 

سار ا القادری۱۹۹۲ء )دیسرس کال بی نیورئ ی17 فکانورہ بوار کھت ہیں :اسلا ہی محاشرے کے ص17 پ ن ےکیا ار 
اما نام دیا ہے اور طط رح ۔سے اسلا ئی متاش ر ےکو براائوں سے پان کک ن ےک یھی پیک مکی ہ ےم کا انعداز 8آ نے دانے(ددرخ ذ یل ) 
حوالوں ےگا اسکا ہے اس طرح الا می معاشر ےکی اصلا کا تقورسسی دوصرے کے ہا لیس ملا اگ امام ام رضا ہیی یکواس 
دک یکا سب سے بڑاسماج سدحار ککہا اذ خی رمنا سب شہہوگا۔امام ا رضا ان ہلوگ الا جاز ۃالرضمویہ ھی ایس اپنی ند یکی 
خر بات ہوہے خو کھت ہی سک نیج تم نکاموں سے دی سے اورا نکیل نبھی یھ عطاک یکئی سے :۔ حفظ نا وی رساللت سید 
انح یم لصو واسڑا مرکی حا بی تکرنا۔ بدنقتھ ‏ لکی کی جودد مین کے دگوبیدار ہیں حا امک مفمد ہیں ۔حسباستطاعت اور وا 
تی کے مطاب ق ینوی ۔ یہاں خر برقت پکاکردارلاحظەء- 

عو تضور ہز گان دن کے اعراس میس جوافعالل نا جات ہوتے ہیں ان سے الع ضرا تکنلیف ول ے؟ ارشاد :اش ہاور 
کی وص ے ران تضرات ن بھی جک فر ادکی ورنہ یی مس گر رون ہووت تے دا بکہای۔ 


مزح ہیں ہرصا ہب ابمان سے اکس کا ایمان مین ےک یکونن سکرتا ے۔ کی لیے لا سکتتے ہی ںکہاش سے ایمان والی وت واگی جا ہے ۔ بہتہ ١‏ 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 6:0,7721713۱.۲0٥7 


دے 








رارات پکورنڈ لکی حاضری 

تضورا گی ریف میں خواجرصاحب کے ہار پگورنو کا چانا چا ہے پانیں؟ جواب زحدیۃ میس سے ہی نہ ایپ دک یجول کا 
مزار بر چانا جات سے پاکیں بللہے کچھ وکس عورت برلع تس زرہوی سے الف دی طرف ےار 5 سنا .اف 
ے خ رق زا سے زرل ےےلعمنت شر وع ہوجا ی ے اور جب تک وا ہیں1 لَٰ ہے طا بلعت کے رہے ل٣دانے‏ 
روضہ اور کسی مزار مک ھانے گی اجاز ت یں دہا کی حا ضری الہ سنت جلیل فی قر یب الواجبات ہے ت رآ ن ٹیم نے اے| 
مفضرت ذو بپکاض یا ایا ے۔- 


طو ن2 اور اوسے, 

ایک سوال کے جواب می اماماحم ضا نخان فرماتے ہیں :بل شی رع موق کا طواف فی نا انز ہے او رغی رخداکودہجماری 
ش اعت یی ترام ہے اوس یق میں علا موا ختا ف ہے اوداج یح ہے تحلوص] ارات طبہراولیام ۓےکمرام۔ ہہ رےعلاء نے پر فر مال یک 
ما کم ار تح فاص ےکھڑرا ہبی ادب ہین 
آ داز بارت روض الو ری الدعلہ 3 5 ٰ 

خردار ا چالی ہش نی فکو بوسہدسینے یا ات لگانے سے پیک خلا فف ادب ہے بللم جار پاتھ پا صلے سے ذیادہھر یب نہ جاء یہ نک 
رص تکیاکم ہ ےک ت مکواپ نے تضور بلا ا اپنے مواجرا رس مل مکی تشفیا .ا نکی ڈگ امم اکر چہ پر ہار طر کی ا ب تصوعییت اورال 
درجہ کے سا تھے - زیارت روضرالورسی اط سی ال تزالی علیہ کم کے وقت زردلوالکریمکو ہاتھدلاۓ نہ چدے۔نراس سے مم نہ 
موا فک رے شہز یکنا چو ےکم رسب بح تکویہ ہیں ۔ اوس مل اخلاف ہے اور چومنا چنا اس کےےصل اورا جو مزح اورعلت خلا ڈے 
ادب ہو ناش رر لباب میس ہے۔ 
جار 

7 را رد دی حرام زار چابلوں سیل سے وھک نرکھائے للا ء پا لک پیرد یکر سے ۔ 

جس 

می نے ذات کیچ کوساسے رک ہک بی فا تےکر ےکوضردر یات د ہن یس ےچ اکر س کے اخ رفا تہ درس ت یں بش رو سیل ۰ 
اٹ ترے۔ا ےش لے ٹرلا زم ہے ا سا کات ہہو یا ساےئے موجودنہ ہد ہرحال میں نات درست اور جات ے-۔ 
070تھ7 ٣‏ ۱ 

امام اعدرضاخخائن مزارات پر فا ت کی بو ل تملیم دی ہیں :عرارات شریضہ پرحاضرہونے میس پاعت کی طرف سے جاے اور از 
71- تھ کے فا صلہ برمواچمہ می لکھڑ اہہواورمتو سآ واز ٹیس پا ادب سلا مر ے | الام یکم با سیر درممیۃ انشددب رکا دہچھردردڑنو کٹ 
انان پالم دش ریف تن با رآ ری الک کیا ؛ ایک بارسودہ اخلائل ءسسات با چھردددزنو شی اور وقت فرصت دنےپے سورو مین اورسورہ مک 
بھی بے مک ارڈرعق وچمل سے دہ ٗکمر ےکم ایا اس قرامدت پر بے انان اب دے چوتتیرےکمرمم کے اقائل سے ۔ ند امن جوم رسیئمل کے 
نے ےب ےی تس مہ مہہ ہے ےت 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 811001171 


قائل ہے ادراسے مب ری طرف سے اس بند+مقبو لکونز رہہچیا۔ بچھراپناجومطلب چائرز ری ہوا سکیلنۓ وذ عاکے اورصاحب مارک روح 
کوادڈ دع وہ لک بارگاہ میس اپناوسیا ہق ار دے پچ راسی طرح ملا مجر کے دائہ کے س ہنا کو باجح تہ لگائے ۔ تہ بوسردے اورطواف 
اما ناش نا جات ے۔ادربجرہ7ام- 
یں کے پراولیاء کے نا مکی چون رکھنا 

او راگرو پنقصودج وت پاب لعورتوں می دستور ےک بے کےس ررض اولیاہ ۓےکرامم کے نا مکی چچ ڈی ریصتی ہیں اور 
ا سکی پچحومعیادمق کی ہیں اس معیادکک کت ہی بار چےکاسرمنڑے دہ چو ٹی برق راریعصتی ہیں پچھرسعیا دک ارک رمرار پہ لے 
اتی ہیں پان بال تا رٹی ہیں تر یق ردیچض بے ال دبدعت ے۔ 
بی رس بر8۵ 

۴۶ کا تا لال کرام اس سنلہی شک ہیرسے پردہ ہے بای ؟ بر گلورقوں سے اقی رقاب سے علقہ 
کرات ہیں اورعلقہ کے تیچ یس بز درک صاحب ٹیٹھتے ہیں نوج رای دتینے ہی ںعور٘یس ہے ہو ہو چائی ہیں لئ یکودکی ہیں اور 
ا نک یآ داز ماع سے با ہرسناکی دب ہے الما بیعت ہو اکھنا ے؟ 





تو رٹ )تنم یھی ال رع کی ما را نز نی اور مو جودہ انا یظام 


اواب :رے دہ واچپ سے کی جحرم تہ ہہ یصو رر تن خلا ہے ولا مب حماء ہے اپیے بی رس ہتت نہ 


ماے۔_ 


یہ یجھ 


اُستاد ےڑک یکایردہ 

ڑ یک ل ڑیی کا ببدہأستادے بعد باورغ ہونا چا ہے ا٘ل بلورغ بھی ؟ اس سوال کے جواب مس امام صاحب اپ بددائے پیش 
کھرتے ہیں :2دا بردہ اس میس أستادوظی راستادہ عا لم وغی رعال مہ پیرسب باب یں نو بیل ےک مکیالڑک یکو پرد ہیی عا| ت نہیں اورا 2 . 
جب پنددہ بی لک ہوسب خرمحارم سے پردہ داجب اورٹو سے پن رر سا لپک اگ ر7 ار بلورغ اہ رہوں نو واجب اور نہ ظا ہ رہل - 
مت بتصوصآبارہ رس کے بعد بہت وک دکہہیز ماقرب بلو غح دکمال اشنا کاے۔ 


ومن لم یعرف اھل زمانه فھوجاھل نسال الله العفووالعافیة والله تعالٰی اعلم. 


۱0۳95660727 کک 


(کوالہ رکنیا 
تجرات تک پر س اور ےکچیٹکنا 
ماماحرضاغان پل اورکوٹھوں پر سے رو کٹ ویر ہچگیگن اور بد روں ٹیل ےش ربہت 2 ایکعال کے 
جواب می ںاھت ہیں سم بیییٹ ‏ یٹ یر سسجت 
اوشرب تکا ضا کر نامگمناہ ہے۔(ماخوذ:یادگاررضا) 


مزارات وا بکرم برجا ا کیا؟۔ 


سے بے 1 )۷ ا ۰ 
ارات اولیاء پر جانا جاتمز او ر تح بکام سے ۔ ھی دا کے عظرت بر یلد ہ ری الند عضرے زوایت ےکلہ : رسول الاپ ے 





تطورفوٹ امم ری ارح ہک میا ہرانہز دی ادرمو جودہما لھا ای نظام 140 


رما یاکٹش نے مکی ںترد ںکیاز یارت ےش حکیاتھا۔ اب زڑ یارم تکیاکرو۔ 
) مسلش ریف کتاب انا حور ی ک۰ ٢۲٢٢‏ مطبوب دا السا مء دیاش سحودگی عرب ) 
سوال کیا تاپ بھی ارات پنشریف نے جابامرتے تے؟ 








نبواب :ما مان ا مضورعلیرالسلا مچھی مزارات پتشریف نے جا پاکرتے تھے ۔جلی اک سلرشریف میں حعخرت ابد ہری و نشی 


7 عنر سے روایت ‏ ےک تضمورعلیرالسلام نے ابی داللد ہکیاقبرکی زیار تکیا۔ پکاھٹگ نے دہا لگ میفر مایا اور جو ا ا پاپ کے 
سا تبھ جے وومی رر ئے۔ 0 ٰ 
( مه ش ریف ؛کتاب ال نان ءحدیت ۲۲۵۸ ءمطہ وط داررالسلام ءر یاخ سعود یکرب ) 
نی کی ا وا ری ور نا ترفن ان عا بسن شائی علیالرص(وصال۱۷۵۲- ) راو 
امام برک علیہ ال رح کے استماد امام اہن اللی شب سے روابیت ےک مور علیہ الام پرسسا لی شہداء اعد کے مزرارات رش ریف نے 
جاتے تھے۔ 
(ردامخ رء پاب مطلب لی ز با ر7 اقب ررمطہو ‏ وارالفگرہ بیروت ) 
ما تر الد بین رانزیی علیہ ارہ (سن وصال ٦٠۹ھ“‏ ) اپ انفبر می فرمات ہیں : تضور علیہ السلام پرسال شہداء اعد کے 
طزا۔ات :پرکنٹر یف نے جاتے او رآ پ٤ّه‏ کے وصال مارک کے بعد چاروں لف کرام شیہم ال رضسواا نبھی الیہا:ع یکرت تتے۔ 
) لف کی زرححت) ہر ٹف م۲۰)سور وا رور ) 
سال : کیا صھا گرا یھی مال روا نبھی ا کے مار برجاتے خے؟ 
تواب: 
یں اصھا کرام مہم الرضوا ن تضوراپلگ کے مزرارافرس پر حاضری د ہکات تھے ۔ جیا رک شحخرت مالک داری اللہ تا لی 
عنرسے رداہی تیچ ےک تعفر عم رہن خطاب ری الند عنہ کے ز مانے میں لوک ققط میں بنا پہر گے .ایک سھالی ن یکر مھ یلیگ کی قب راطبر حر 
ے ادرف کیا ۔ یا سو ل پل پ انی امت کے لئ پاش مال ےکیونکیہدہ بلاک ہوگئی۔ 
ٰ ( مصنف امن الی شی کاب الخفصائل ءحد بی ٹک ۳۲۰۶۲) کت ال رشدہر پائ سو دی عرب) 
فدہ :زیارت ہار کے سا تج ءصا ہب ھزرارے بدوطل بفکرنا صا کا مر پڑدے_۔ 
فضرت زاوَد اع ص٤‏ سے رد ےلوہ با نگمرتے ہی ںک ایک دو مردا ن یا اور ال ےے د ریکھا ک اک آ بی تضور ی 
کربپلگ کی مرا انور پراپنا منرر کے ہو ہے اس (مردان بن ےکھا: کیا جاضنا ےکن ےکیارد ار ے؟ جب مردائن ا سکی طرف بڑھا 
تد یکھا ووصحالی رسو ل پل حضرت ابد ایب افصاری رش اڈعنہ تھے ۔ اورانہدل نے جواب دیا۔ ہاش شی چادتا ہوں۔ مل رسول 
پچ کے پا ؟ یا ہو مات الج می لی پھر کے پا یی ںآ یا۔ 
(منرامام مین بل ,ور یٹک ٢۲۳۷۹۴۷‏ بمطبوے دا اسفگرہ ہی روت ) 
ال :عد بیغ شریف می ےک تن میروں ( مس رترام ہمسچدرانشصی اورسو نیدی شریف )کے سو ای حچگ کا سفرنہکیا جا - پچ راک 


ہے ےت کے 


: 
1 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹69 77 





مرارات اولیا ء پر حا ضرییکی غیت سے سفرکیو ںکر تے ہیں؟ 
جواب :اس حد یٹ کا مطلب مہ ہہ ےکہ ان تال مسوروں می نما زکا قذاب زیادہ متا ہے۔ چنا مسج اترام یس ایک نما زکا 
قذ اب ایک کو کے پرابرسرانصی او سنوی شریف میس یک نما زکا ناب پچائصس جار کے براجر ہے .لہا اان مساجید ٹیل بی تک کے 
دورے؟ نا چو فا کرو مند ہےء جات ہے .لان سی او زسحیدکی طرف سفرک ناوک کرد ہال نو اب زیادہ ما ہے ۔ ہنا چان ےکیوکگہ ہرجکہ 
امج میں فو اب جاساں ہے اورعد یث مل ای غیت سےسفرک فر مایا ہے۔آ رج لوک جات کے لئے سفرکر تے ہیں عم دن کے لئے 
سفرکرتے ہیں کل کے لئ سن کر تے ہیس اور ہے شھاردخیادک یکا موں کے لا ےئ یحم سےسفر گے جات ہیں ۔کیابرسب سر7 ام ہوں 
گے؟ پرک یں بللہ برسارے سفرجائز ہیں اورا نکا امک کول یپھ یی سک رسلا نے پچ رعرارات اولیاء کے لئ سف کنا زا جات کیو گا بللہ 
لکھوں شفعوں کے پش امام شیا شی علیرال رہ (سن دصا ل ۷٢۰٣ھ‏ ) فرماتے ہیں می امام ابوحفیذ ری ال رعنہ سے برکمت حاص لکرتا 
ہوں اوران کے مار بر جاہوں۔ اگ ھکوئی خاججت دریش ہوئی نو دورکننیس بڑہتا ہوں اوران کے عرار کے پاس چاکر ار سے دعا 
کرت ہوںن لاج تج رلری وم ڑکا 
(رداح مقرمہمطبوء دا گر بیردت )| ' 
ٰ نرہ :امام شافتی علیہ ال رح اہ وط نفستطبن سس ےع زا کیا سف کر کے امام صاحب کے زار پہتحشریف لاتے ے ادرھار سے 
ہرکمتی بھی حاص لکر تے تھے ۔کیاا نکا سن رکرنابجھیانا یئز تھا ؟ 
بن سمتمر سے ددامیت ےک کے یں :امام آمحد شین اپویبن خی علی ارحص جن مد شین ابر لننقفی علیہ ار اوران کے 
ساتگئی مشا رئا “لی رضا بن موک یھی ال تھا نما کے عرار بر حاض رہؤنیے اورعزا ری خو ب تی رفرماکی ۔ 
( ہز بب الد یں :مروف تین ا مل ہو وا اکر ء"جردت ت)|: 
اگرعاراتاولماء رجا ناش رک ہوتا تو | 
کیا تضو الگ ابی والدہماجدہاورشہدا ءاعد کے مزارول پت ریف لے چا ؟ 
کیاصیا کرام تاپ کے مار برانو ار بر حاضریی د ہی ؟ کیا ما لتان ہم رشن ممفس رین مد بین مزیارات اولیاء بر اض رکی کے لئ 
سفرکر رتے ؟ 
چلا ارات پر اض یی تو علیرالسلا میگ کپ کے اصحاب اورامت کے چلد بین رمح ٹین او ریفس ری نکی سنت ہے او می 
اي اسلامکاعلر قد ہے اوراس مبارکیمل پشرک کے فی د ہین وا لص راپ ٹیم سے بک ہو تے ہیں 5 
ارات اولباء بر ہو نے وا ی ترافذفات 
اکٹ مخالشن مزا رات اولیام مزا ارات پر ہو نے والیخرافا تگوامام اح رضا مان فانل بر بلدئی علیہ ال رح کی رف مغسو بر تے 
ہس ء ھی لتقیفقت ب ےک عرارات اولیاء پہ ہد نے دائی خر افا تکا اعت اعت ہ ےکو فیس ہما مابلسدت الشا وا رض 
خان فا لحارم نے اپیتصایف میس انا ررض ے۔ 


00717 جو عو ا ۷۷۷۷۰// 





وی وب یں 


(ا کا ش اعت حص ہاو لی ص۹۳ ءمطب وع مکتبت الد ینہک ابگی ) 
جل...... نیا زکاکھا لھا نا طرام ہے بکھان کا ایمالھا اہے اد ڑٰے۔ - 
(فراوئی رضوررجد بدجل د۳٢‏ بس ا٣‏ رضا فا نڑم“شنء(ا ہور ) 


...ارات مو باتہم یکر تام بے ۰ 
۰ پۃروشی کو جراج 


وم ۃریس سوہ ۱۱ یں رد سیر بی 2 
( ماد رضور چر ید ج٢٢‏ بجشس۹ سے ءرضا ماد ٹرمیشن ۶۰ر ۵ 


6 


5 


ول کون؟ : 


1ل ہمارے ملک میں لوگ پرا سمش سکوو اش بجھناشروحمرد تے ہیںء جو بغتیننسل زہکرے ایال لے بط رک نے 
تس ول پکاوٹی الد ہے ءندہنماز پڑ ھھے مضہدوز ےر حے اورنرووش ربعت پگ لک تے ہیں اورن یکس کوک نے دی یں اور رات 
سے دوریکوہی معیارولا بیت قر ارد یت ہیں ء اودد بین نی میں اس حدم ک کے ہی ںکمردہ کے ہی ںکش لت وعطر ایق تک آ لیس میں 
بہت پرائی وشن ہے :اہ من میس چع ضردریی چان ہی ںکہپیگات اولیاءانڈ نت لکرد ہے چا میں تا موہ وکہروکی انڈرکون ہوتا ے؟ 
نے ئل لخانے ِ 


ہے عھ ہر ظط حر 


الایۂ ٣۰+۲ء۲۳۴‏ 7 
مد ی یرسرس رییکرتے ہیں۔ 


ل(+ لال ز) 


143 





ترواشم ری امہ یظام 








قش و بد جا فص نس ۱ 


1 میں سشخول ر ہے اور ا سکا ول نو مرجلالي | ۲ کی مورت یس ضرق ہو جب د کے زائ ت برر تی | یی ود بے اور جب نے ال کی 
7 یی ہی نے اور جب بد لے اے رکا اتی کے سساتحد و نے اور جب رک تک رے طاعمتں ای ٹن رک کر نے اور کول 
کرےاسی ام رم کش لکرے جوذد دفر بی ای ہدہالل کے کر سے ناورم دل سے خداکے سوا خی رک رد سے ء مت اولیا کی 
ےء بنرہ جپ ا عال پ> چا ےن ادا سکاوکی دنا صراورمیان دیددگا ر متا ے منکامین سے ہیں وٹ دد ے جوا تا ا یشنائنی بردلنل 
رکتا ہواوراعمالی صا پیش ربیٹ کے مطا لن بالات ہو بس عارفین نے فرمایا کہ ولا یت نام ےق بای اور ہمیش راد کے سا تی سشخول 
رب ے گا۔ جب بد اس مقام پہ چنا ےا ا سکی کا وفجیر تا اور ںی ہے کےفدت ہون ام ہوتا سے ۔حاضرت ائلن عپاسل 
نشی اکن مانے فر ما اہو کی دو ہے جم کور کین سے الد یادآ ئے بی ہر یک حد بیث می ل بھی سے .اہن ف یلد لن ےکہاکس ہد کی دائیا سے مس 
یس و وصفت ہہوجوا سآ بیت میس پور ہے 
الَدِیْنَ امَنَوٰا وَكانوایتفقُوْنَ ہ 

یتم ابمان ولقا ى رونو ںکا ام اہو ینخض کا نے رما یک ولی دہ ہیں جو مال ال کے لئے نھب تک می ٤اولیا‏ کی رصق 
احادی کججمرہ ئیش وادہوگی سے نف اکا جر نے فمز ما باوادہ ہیں جوطا عت حر بای کی للا ےک رت ہیں اورا ئل تی ارم 
اا نک یکارسازی ف رما تا ے دوش نک دای تکار ان کےساتھا وا داد وا کات بدگی اداکر نے اورا ںکظن برق مر نے 
لے وقف ہو گئ ۔ یر سای اورعبارات اگ چرجدا گا زہ ہی ںنیکان ان می اختلاف بجھگھیانجیس ہ ےکیوکنہ ہنیک عبارت میں و کی آیا 
یک سقت یا کرد گے جس ےت بےا لی حا بوتاہے ریت یفات اع ہولی ہیں ولا یت کے در ہے اواب می برا : 
ایک بقدراینے در ہے کیل وشرف رکھتا ہے۔ 

یٹ ناشن الع وق سو ون سی ٹر لمجا رر کرای ا کتان) 
ماس یدالو اب اش رالی ریت تھا علیرف مات ہیں 

ولاتری لغیر ربکء وجودٗٴمع لزوم الحدودء وحفظ الأوامرء 7 فان انخرم فیک شیء من 
الحدود یہی رب اہو دوہ تی ای حکر ار 2 ہیی سی 
لأن کل حقیقة لا تشھد لھا الشریعة فھی باطلة. 
٣‏ یھ 


71 8110111 ۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 
و 


ریا ارک یکاکحنت سے نے کے للۓ ضمرددریی ےک تی اورکو نما ریس نہ لا ءاس کے سانش ربج تک بل رعدوداوراوا مر وو ای 
1 ابندیاچھی ضردری ے او راگ ریا عدشر یی ا ای یی ظا ہوای سی اکب ر گناو میں متا دراو تو یق نکر ن ےک لو فنرمیس بنا ہوکر 
۱ شیطا نکاھلونابن کا سے ہن جلدری ےگھ شر یکی طرف رجو کر کےا سکاالتزا مکراورخھاچش لف سکوکچھوڑ در ے ؛کی ون کر دارش ربعت 








تورخو اقم ری ا دع کی انز ندگی اور موجودہ انا تنظام 








کےمواف٠ن‏ ضہودہپافل بی ہوتاہے۔ 


(الط با ت الگبری: عبدالو ہاب می نیم من گی 7 ہہ ما یشاجن الحفی ءالکُٹر ای ءآبیشمر(۱:٢٢۱)مل‏ خر بھی ف 
ممیت اتے ہیں 
فان الولی من واظب علی الطاعات ولم یرتکب شیئاً من المحرمات . 


7ے 
سادلی الشدتی ہکن ہے جوا ھکا شر پش لکرنے والا ہواوراسی پرگٹگی اخھتیارکر نے والا ہواورکس یبھی حا مقول دن ل کا ارجا 
اہرے۔ ْ 
۱ ٰ ( شرف راکبراز لی تا کی رم الڈ: تی علیہ ۱٥۸‏ مطبو مرک شید یلوہ پکتان ) 
اما می ری اڈ دتتعا لی عفر ماتے ہیں ۳ ٰ 


الولی ھوالعازف بالله تعالی وصفاته حسب مایمکن المواظب علی الطاعات المجتب عن المعاصی | 
المعرض عن الانھماک فی اللذات والشھوات . 
7مہ 
انار سنداشاد کے ایی دیس ے جوا ایک ذات دسفات ےعلق صب استطا تلم رکتا را سورات 
شرعیہ پر یش عائل ہو گنا ہوں سے ےتفوظا ہو خی رش دی لات دشواہشا یٹس نے ا تا بک ہو_۔ 
(شرح عق یز مل لیف : ۸۰)مطوصلصرحا لا ہور ا اتک : 
امام شا ھی مت اش دتتماپی عیفر مائے ہیں 
قَیْشْتَرَط فی کو مَحْفُوظًا کم بُشْمَرَط فی التَبیٔ كَونَه مَمْضُوْمًَ 
امھ 
6سے2 ا ہوں ےو ہن شڈ ہے ہی می کے لمعو ہگ لگ 
(زرداتا ری الددا ار :اہی عابلہ ین رآ بیکن بن عمرمنعپالحز بڑھابڑ من الرشل ین ھٹا ۔بیردت 
رت سید نا محچردال ما ی رم اڈ فمماتے ہس 
لوہ 2-71 
مگ 
یی جج اولیاء ای رکا اک وکنا ہوں سےتفوظ ہونا ش رط ولا یت ے۔ 


الک علامات 


(الہرءوالمار:۲۳) مطوء دب انڑیا) 





۳ص " ۷/۷۷۷۷۰ 





ہس بور ہہ 

ب.....بنض عارفین نے فر ما یاکہولا بی ت تر ب ا لی اور پیش ا ڈیڈ گل کے سا تھومشخول رٹ ےکا نام ہے جب بندہ اس مقام 
ہہیا ےتا کسی یکا خو فی ربا اور کیا سےفوت ہو ےکا ہوتا ہے 

1 7 ححضی تن بدا بن عاس نشی ال ایشا نے فر مایا کیہ و کی دو ےج کور نے سے ال" تھا لی بادآ تۓ ء سی ط رر یک 
عد بیٹ می ل بھی ہے۔ 

۳ اہن ز بلھ لن کہ اک وی دہی ےگس میں ووصفت ہوجوااسل سے انگ یآ یت میں برکور سے ری امم او ئ تو 
یی ابمان وت کی رونو ںکا ام ہو_ 

2 7 . پپ(چھ ہناش نے ےم رں ۔أولیا مکی رمحفت بکقزرت أحادبیث میں ذکر ہوئی 


سےا ۱ 
٭.....بض بزرگالن د بین نے فرمایا :( کی دہ ہیں ج طانعت ڑم فر مانب ردارکی سے قرب ال کی طل ببکر تے ہیں اور اڈ تال 
گمرامت سے ال نک یکارسا زی فر اتا ہے یاد دش نکی ہراب کال ساسا التعالی ایل موادرددالڈ تھا یکاج 92۵ھ ۳ت0 
لوق پر رکم نے کے لئ وفف ہو سے ۔ ۱ ۱ 
( لی را ط انان ازملغتی مھت اسم قادری (م:۵٣٣)‏ 
اولیایکرا مکی اقمام ٰ 
مَارٌرِیَ عن أبی الدرداء رَضٍی الله عَنةقَال ان البَاء عَلَيْهم السّلام کانُوا اُوتاد الازض فَلَما انقطعت 
ابو أبدل الله تَعَالَّی مکانھم قوما من أمة انحمد یُقّال لَھُم الآبدال لم یفضلوا الاس بِکَىْرَۃ صَوْم وَلا صَلاة 
ولا تَمٍْیح وَلکن بحسن الخلق وبصدق الورع وَحسن اللیّة وسلامة قُلُوبھم لجمیع الْمُسلمین 
والنصیحة للے تعَالی ابْتِغاء مرضاته بصبر وحلم ولب وتواضع فی غیر مذلة فھم خلفاء من الانبیّاء قوم 
اصطفاہم الله لی لَفه واستخلصھم ولیہ الد رهم تقر صدیقا ینم تال را علپامتنل 
يَقِین إِبْرَاھیم عَلیل الرُحْمَن بھم تدفع المکارہ عَن اأھل الّزُض والبلایا عَن الناس وبھم یمطرؤون وبھم 
یرُزقُونَ لا یَمُوت الرجل مِنُهُم ابدا حُتی یکون الله تعَالَی قد دشا من یخلفہ ولا یعلدون شیا وا يُوذْونَ من 
تختھم ولا یعطاولون عَلَیْهم ولا یحقرونھم وَلا یحسدون من فَُوْقھم وَلا یحرصون علی الدنیَا لَیسُوا 
بمتماوتین ولا متکبرین وَلا متخشعین أطیب الاس برا وأورعھم أنفسا طبیعتھم السخاء وصفتھم 
الملاقة من دَغُوٌی الّاس قبلھم ا تطرق صفتھمْ لَیْسُوأ الوم فی ححال حشیّة وَغدا فی خَال غَفلَة وَلُکن 
مداومین علی تحالھم وھم فِيمّا بَینھم وَبّین رَبھم لا تتد رکھم الرٌیح العاصف وَلا الیل المجراة قَلوٰبھم 
تصعد فی السَُمَاء ارتیاحا إِلَی الله تَعَالَی واشتیاقا إِلَیْهِ قدما فی اشتیاق الَخیرّات 


۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 8110171 


تضو رضم زی ا نہک مھاہرانہز ن گی ادرموجودہ انا نظام 146 


فاأوڈیک جرب الله الا ا جرب الله هُمُ الْمُفْلْحُوْنَ یہ 
7ے 











او کرام میٹ رام ہیں جا رفرت ابودردا زی ال لیخ سے مردکی ہے بے شک انا کر مم 
صَلوۂ ٣‏ زین کےأوتار ےہ جب نید تکا ساسلیأخم ہوا تا رتالی نے ڈمسپ اح صلی اللہ ماک کی وہ سکم میس سے ای توم کو نک 
اخب بنا جنبویں آبدا لمت ہیں ددحنرات (ذط روز وومازاو رع نیس یل کٹ تک وجہ سے لوگوں سے نعل نیس ہے لیا پنےنسن 
اخلاقء ور دق کی سچائی ؛نی تکی ابچوائی تام مسلمائوں سے اپینے سیف کی سای ءا ڈیو وت نکی رضا کے لی ےعلم : راز اضت یر 
کتردری کے ماج سی او تم مل ما نوں کی خی خواد کی وبرے ال ہوے ہیں۔ لیں وواخمیا وکرا مہم اللہ ال مم کے ناخب ہیں ۔ دہ 
ابی قوم ہی ںکہ ایل تی نے انی انی ذات پاک کے _ل ختپ اور اہ ےعلماوررضا کے لے ماع لک رکیاہے۔ دہ" صد بی ہیں ین یش سے 
۹× رشن تق وحملی کیل حعفرت ا برا ڈیم عکئہ الو و الا مم کے یقن اکیاصل ہیں ۔ان کے ذر ہیی سے ال ز مین سے جلا میس اور وگوں سے 
میتی دورہوتی ہیں ءان کے زر یج سے یا اش ہہولی اوررز قی دیا جا جا ےء ان یل ےکوگی سی وقت فدت ہوتا سے جب او تھا ئی ال کی 


میٹ یکیل یکو روانردے چا ہوتا ے۔ وی اعت س کیج :اہن راختو ‏ ںکوز یت کیل دی ء ان پردست درا زک یج کرت ءأ کی لتقیر ۱ 


نیس جات مخود کو قیت رک والوں سے ض دنو سک تے ود نکی تی یی سکر تے ؛دکھا ور ےکی نما موی اتا کی سکرتے منکب کی کر تے اور 
7 08028008ھ2۶*۶۹ کیاچھی کی کر تے۔ دوب تفگمر نے مین تما لوگوں سے ابیچھے انس کے ا ار سے زبادہ پر ہی گار ہیں فا وت الن کی فطرت ٹش 
شائمل ےہ لاف نے جن( نا مناسب ) رد ںکوبچھوڑا ان ےک مو ظار ہنا ا نکیاعفقت ے ءا نکی ریحفت حدا نہیں ہو ہآ جع خثی تکی 
حواات میں ہو اورک لفلت مل پڑے ہول وو اہن حال پر ایی اخیا رککرتے ہیں ءدواپنے اوراینے رٹ کت تی کے درمیان ایک خائل 
تلق رککت ہیں ء چہاں تک دوس ےس کی رسائینییں۔ ان کے دل ال نت کی رضاورشوق می ںآ سما نکی طرف بلند ہو تے ہیں ء2 چرم 


ای اع را 
پاوڈیک جزبب اللہ الا ا جزب اللہ ہم الطلکحون بت جم کر الجر فان :مدکی جخاعت ہے بن لو !ال جماعت 
یکا ماب ے۔ 


(واورالا صول نی ) حا یٹ ارول ہ٥لی‏ ارڈ رعلی یلم ھب نپکی بن ا نو بد اللہ ِ اتی (:٢٢۲)راراشیل‏ ۔بیروت ) 

اب دہ یرجھ کے لڑرانے وانے ہدیچ اور ہنددو کا تما شہ وھ وانے اورکودق کا نا یھن دا نے شیطا نکائل ہو سکت ہیں شا بھی 

ھیبیں ہو مت ق رآ نکر اوراحاد میٹ شر ینہ اور جم لف ہا ءکرام اور ملسلا لعل یقت کےسلہ جزرگوں کے ان اقوال ونتلیما تک تقاہ ىہ ےکہ 

سے اولیاء ای دکی مچھو ے اما ے2 7ت٣‏ ہے ہی ولایت کے لے شرلعت کے مقر کردو اس غیرمقنازصمعیار کے مطا نی ادا اضر نے 

وا نے ہخرا تکو معنی میس اویا اڈ سوک ران کے دام ن نی لکوچھا ما جا وبچھوٹدں اورف راڈ ول اوردوہرٹنی یبروں کے دام تزدمہ ےن وکوادرگوام الناس 

کو ماپ جاۓ تاکن اق اداہوہاور ہج اولیا اک نات ولیات سے تی ون ےکی راہ یس عائل الن ماش کاو لکوعن ہد مک ک ےکی 
داکوانصل ہے تتفیض ہون کا مو تع ف راہ مکیا جاۓ لان بیج سوال پبیرا ہوا ےک ای ام ےون ؟ ۱ 





۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 101211 717 





ہی ہق ٭ی* 
مرا مت ا انتا 
اہ تا ا ختققامت 
آ چک لکرامتو ںکی کبھ مار ےہ ہ رپچ رک کوک ی یرکوٹ یکرامت ضرور بیا نکی جاٹی ہے اک ہلوگ ںکومعلوم کہ مدان وٹ اللہ ٹإںء 
عالاکنہہمارے مقار کرام رحمتۃ تھا لی علبیرنے دا طور پرنکیھا ےکرو لی کے ل ےکرامتکا ہوناضروریینیں ہے: ا بکئی خطبا مکی 
دیکھا ےک و جس سللے کے جع یس ہوں ایس کے بن رگکوں کے نا مم کرامات جیا نکرنا شور حکردینے ہیں امہ چچردہ ال سے صادرنہ 
ہوئی ہوں ء ای ط رح کل بعلی بییروں نے اہی آستافوں بی لوگو ںکومٹھایا ہواہے ت کرد نے دلو کو بی رصاح بک یکرامات بیان 
کم مس اورا نک ہہ پاو کرای سک تفر تن بہت ینیچ ہو ئے ہیں ءآ رج فو یم اتفاعام ہ گیا ےکہ ہپ پیا یٹ یمکرائتنیں خودس ول میڈ اہ بیان 
کرد پاے ء اوران رع اس گر دع بی یکاہ بڑھایا جار سے ہیں ما ہود کے ای یک بہت بڑے ہزرگ سے ہار طاتمات ہولی 
دوراان ملا تقات انمہوںل نے بیامشما فک کہ میہرے پائس ایک علاقہ کے پجھولو کئے اور سکینے مگ ےک ہماررے والد ماجد اید تی کے و ی آح 
گمز رے ہیں ءآآپ ان کے عالات پ ہکا بٗت رمیکمردبس ادرائی ٹیس الیک جا بکرابا تکا بھی لکھنا ہے ہ ان ہول نے فر مایا : یل ن ےپ کے 5 
ٰ واللد مجر کےُتحل کوئ یمک را میتی می ,ذو ں گا کیے؟ تانہو تن کہا: ہم پحدد نک دد بارش ریف مارکیٹ جا ہیں کےاوروہال رے - 
ےکنا ڈیں لامیس ےآ پ ان میس پیتبد پی کے ات ال می نکد دنا الس مزح یکا م پا یکن لم کک جا ےگا وذ با کن ذ تک - ٌِ 
لا ہور شی پی ایک نیا بی باذیاب ہوا ے اور سک یکمراصت انا کی تی را من ہے۱ دو لو سکراس کےسرکے پال ے ہو تے ہیں ءا 
> 
٠>‏ 
ح 


تس 


ارد وشود بیا نکرتا ‏ ےکہ بی دمفمائن الار کک ستا تی تار کو بالی بے میں ہوا یک ہیس سو باہواتھاجب بیرارہوا نبال چے ہوئے تے ا 
اب مال لک یکمراممت سے اورلو فکیج رتدراد بی اس کے پالو لک ز باارعت مک نے تے ہیں ۔اوردو شو وکنا ےک اگ ہگ ر امت زہہولی 
قست مس ما رع کوکیوں یلت ؟ ال مان ا حیظ- 

تن اید یٹول نا پیرشجھ صاحب رحمتۃ الڈتھالی علیفرماتے ہی ںک اس م وضو کے تل ایک تاجن فوخ بات نیہ ہ ےک یش جم تک 
زان شس مز گان د من کے مطا بی اولیاءانش کے لے ج ششک اکراممت ہوککتی سےا ےفنظ را ندا نکر کے پا لیا مو رارق لاوز تکواولیاء 
رام کی گراصت مو رکیا جا کے ج ھی یلم اور سد یا اوٹڑی سے می صاور مات ہیں من ڑاگ 
برکمڑراہونااورہواشی اڑناءاوردر کی سح پر لے یس خلاف عادت اورعام انمائوں کے لے جال نکام اولیاء اڈ دک یکراممت کے جوا نے 
سے اس ےتقیقق تجوامی زم نکا اش اتماعام ہو ڑکا ہے ء اس ماحول کے ایج نا سے اب لعل مبھی ق رن وسض تک نگاہ میس وٹین یک رات 
ہے اےبھو لکرااس کے پچکمرمیس پڑ جاتے ہیں ء ا چچیل زدہماحول ے اٹ لیے وا لے پچ وضرات میں نے ای ےچھی د بے ہیں جوایے 
مامت رر نل رم را رئا ال روم و نکر تق کے اس رگ میس گی نکر ن ےک یکوشت لک ر تے ہیں ء 
ای میں ضردری جات ہو ںکہاولیاء الد کے لج ق رآاان وصد یی ٹکیا رشن می اور ہز ران دی نک نر جات کے مطاان ج نٹ یک راصت 








ہے ال سکااس وا یکراممت کے سا تج مواز نہ بی يک کے صصورمال وا حککردں ہ یہال پر ہمارا مقصرصرف اورصر فکرامات اولیاء کے 
وانے سے اسلائی اور راسلا بی ذم نکیا مواز شک ربا تقصود ہے اس می لکوکی شی ککیں ہ ےکا مور نمارقق: اللعادۃ کیاصادر ہناش عام 
انماو ںکی طافت ے ماوراءنائمک نکیا مو ںکا ال تالی کی کیک بنرے سے صادرہونا تھا اکی رف سےعزت افزائی اورک ر امت 
کےطور بھی ہوسکتا سے :ارس کے اوراقی میں ا سکی یھ یکئی منالی سی ہیں رمیا ن ا س کا بر مطلب لھا اکہالیے نی رنسک ن کا مو ںکاصادرہونای 
ان ضرا تک یکر امت ہے باریشمو کرای ےکا مو لکنا صدوراویا ءال کا ای خاصہ ے کہ یکا م|چی ‏ ہز ہ اوروٹی کیکرامت کے اش ری 
اورے اھ اورز پان ےے ا ہیں ہوسا ء ن رف غلط بل ون صرفاط ہے بے جیاداو ری راسلا می لور سے من یکراممت کے ما سے 
جح جوائی ڈْن ہے ؛کیوکلہائ اعم کے بظاہرائمک نکیا مو کا صدور :ہو راگ نی کےےجخزہ اورو یک یکرامت کے سا اص ہوجا و جو 


گول اور ہند کا اور ییوں یی زشمنان الام ےمم بھی ما ہر ڑتاء جب تقیقت اس کے ہنس ہے ء؛کیوکل ہیی مھاہرداورملیات ٰ 


کے نیج می ںبھی امتقدران کے ور نیاوی اوڈدتائ یکیاطرف ےکی ماع حکمت کت اانمگمراہوں سے ام تم کے مکل ا مور خار قد 
الحاد تکاظپوراورصدوزہوتار بتا ے جیلے د جال کے ٤٦‏ 00000 ہرہونے کے تلق احاد بیٹ شر یفہ 
ٰ یل بہت یلی سو چودسے_۔ 
تعخرت بای بر بسطا یرص ال ال فرا جہن 
أُمُوسّی بُن عیسی یَقُول :َال لی ابی قَالَ و يَزید لو نظرتھم إِلّی رجل اعطی من الکرامات ختی یرتقی فی | 
الھواء فلا تختروا به حتی تنظروا كِیْفَ تجدونە عِتد الأمر والنھی وحفظ الحدود واداء الشریعة. 
موی منگھزسی رحمتت اتا لی علیغر مات ہی سکہ گے میرے والد ماجدرحمت اڈ دتقالی علیفر مات ہہ ںکہصعضرت با یز بد بسطا می رم٭< 
اتا لی عایف با اکر تے ت ےک گر کسی ای ےن کور یھو سکوط رح ط رح کے نارق العادت اموردتۓ گے ہیں جن میں لو کک راصت 
کھت ہیں پل رجگ یتم اس پر کہم تکھا 3ء ہا ں کم کفکہ پیل اس کےکردا رکش بجعت کےت از و می پل ہکا وامروڈو ابی حدودا لاو رآ داب 
مس ٰ 
(زالرسالت: شی بی :عبدانگریم بن ہوازان من بدا لکک مشیر ی(۵۸:۱)دارا لعاف :القاہر7) 

ححضرت سد نا جن فی الد بن انگ۶ پت اللرتالی علید نے نی 8101 ۶ئ بہ تا یفصیل کین سے ہو رلطورنتے 
فرمایا: 
فالعلماء ھم آمنون من التلبیس. 
ر رم ۱ 

شکرامات کے پہانے اورشیطا یس سے ال علا وک را مکی پیتفو ظط ہو سکتے ہیں ۔ 

اہر ےکہ ال علام+ودی ہوتے ہیں ج تلم فی الد بین ہوں ملڑی امتقا تل الد بین ہی ار یکراممت ہے جس می کم یاضم 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹68110011171 


تضو رٹ نلم ری اڈ رع نکی ماہ راڈ نادرم جودہ انا دی نظام 


کااتندار اکرش تملیات اورشیطا یم سمکن نہیں ہوک _ 

ححضرت سد نا مر دالف شالی رن الد نا لی علی خر ماتے ہس 

ومکاشفہ ومعاینة درمرایاء صورعالم برظھور می آیدحکماء یونا ن وجو گیان ھندوبراهمه درین معىی 
شریک اند علامت صدق احوال موافقت علوم شریعہ است باجتتاب از ارتکاب امورمحرمہ ومشعبہ . 
ھی 

نی لاک نکی صورتؤں 7ر انیٹ شوں ھی یزرو ں کا ظجور اور کاشفہ بہوسلنیاے ء ان نما اور روسان ص۵ ور 
ا جویبھی ا سکیف می اش یک ںام ہج بکہ ا ٹم سےکیفی حالت کے ہے ہونے کی علاص تصرف اورصرف اجکا من رلعت 


4 











کےعم ول کے مطابق ہہونا ہے ۔ک د رت عقیرہ کل کے ساتترام شبات س ےبھی ین الو میس اگمراہیے فی عالات پائے 


جا یں نذدہ ا نکی پئیکرامست ہوٹی ے۔ 
(گ توبات امامر با ی مو بل ر۷۷٣‏ حصہ چہارم دفتزاول ) 
مل رھ کی چززو ںکواولیاء ا دکی ماع صفت اورمعارتر ارد ینانا رف ان کی یق یکرامت سے بے التخالی سے بلمہ 
لاس ان الہ لبھی ہے مکیوکک ہق ہکان وسض تکی ری لف وصالین اور ہز رگان دی نک یشرع تی رکے مطا بن اولیاء انیقی 
اکرامتڈ ت مرا سلاجم می کا سر و ہدنے کے سما تسا تح ادلیا ءاش رکا الما خماصس وصف ہوا ہے جوان کےکامل ”کن گے سای 


اورکونھیی بی ہوسکتا, خی سکم جوگی ہنددییے وشمنان الام مق دو ری بات ہے ران عفرا تکا می نما عصفت ایمان وق کی کےکرال می ںآ“ 


کرورسلم فو ںکواھی نی بیس جہوٹی ہج اراتا لی نے فرمایا: 

ان اکرمکم عندالله اتقاکم . 

تھی 

عندانرسب سے بڑےگرامت وا لے ودی ہو کت ہیں جوسب سے زیاد تق بی ۔سور؟ الج رات ت:٢٣)‏ 

ا لآ یی تک بی کی رشنی می سلف وصا ین نے امنققامت فی الد بی نکواولیاء ای کے _لئشیت" یکراخخمت قراردیاے ‏ جس میں 
جوگی ان کے ساتحش کیک ہو سے ہیں اورنہ ھی ہتددادر یپودیی ان کے چم وصف ہو سکتے ہیں ء شہکوئی اورٹس ر جات کے ذر لیج اسے 
ا حاص لک رتا ہے نراسسندارجع کےطور پر جاک ضرت سید نان الا ما مک بدالتقاددا لچیلاٹی ریشی ال عفر مات ہیں کک 
وکرامة الولی استقامة فعل علی قانون قول النبی تَلّه . 
کے 

مکی ہے ولی! آراسح سن یکس گرا ہاش یک ہونائمکن ہوا کے سوا اور وی کہا اک ردارا تال ی کے رول 
ماپ کے جا ہو تے اصوا لصتم ہوکش اتا مت لی لد بن ہو۔ ٰ 

ہچ الاہرا ار :از امام اوائسن امشطنو یرت انڈرتھالی علی:۳۹) مطہو یکا فی کال ی ۸ء 
(الا رشاداوالاسترشادفٰ الاسلاماز پیش جچسکی رم ایڈرتھالی علیہ:ںك۴۴) مطبو لف پیش رز پڈاور ) 


00717 لد ۹681021 ۱۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ 





0 


اص تکیں ا متام 
وَقَال ابُو عَلَی الجوزجانی کن صاحب الاستقامة لا طٔالب الکرامة فٌإِن نفسک متح رکة فی طلب 
الکرامة وربک عَوٌ وَجْل یطالبک بالاستقامة, 
رم 

اماما رای الچوز چا رحمتۃ اڈتھالی علییفرماتے ہی ںکینے صاحب الاستقامت بن نکر طا لم بکمر ات ؛کیوفگہ تی راف سوب جا بت ےک 
تو گرا ما تکانپو رہ گر تیر مو ای چھھ سے استنقا مت ڈی اللد ی نکا مطالہہکرتاے۔ 

زالر۔ال: لقشے ے : ۶را اکب بن وا زان بن مالک القشیر ى(٢‏ 7102 ( 

اص لکال ا حتمقاصتں ال ر نے 
وقیل لأہی یَزید :فُلان یمشی هی لیلة إِلَی مَکُة .كَقَال :الشیطان یمشی فِی ساعة من المشرق إِلَی المغرب 


فی لعنة الله ۱ 
وقیل لَهُ :فُلان یمشی عَلَی الماء ویطیر فی الھواء فَقَالَ الطیر :یطیر فی الھواء والسمک یمر عَلّی الماء ۔ 
مھ ۱ 


ححضرت سید با!مام ابوالتقاسحم الششیر می رتمنت ائڈدتنالی عیفر ماتے ہی ںکہححضرت سیدنبائر: بد بسطا ٹی رممنت الد تال ی علی ہی خدہمت 
یں ع لک یکئی تضور! فلا لص ایک بی رات ی سکلر مک جا جا ہے :تپ زم ال تی علیہ نے فر مایا اس طرح و شیطا نکھی 
مشرق سےمضر بک ککافا ص اک ساعت می کر لیا سے سے پھ اضق ے۔ 

اورای طرر ایک بارغر فک یگئی :فلا نیس بالی بر چتا سےاورہوائیس اڑتا ےت آپ رحمتت اتی علیہ نے فر مایا دو برنرے 
بھی ہوا میس اٹ تے ہیں اوریچ یھی لی بیس تم کی سے۔ 

ٰ (الر۔الۃ لتشرے : حبدالگ ریم بن ہواز ن م ننعبرا کی القشی ری (۵۳۳:۲) 

اس سے ثایت ہو اک اص لکرامت استقققا مت فی الد بن ے- ٰ 
خر جنیر إضدرادکی رح اڈ دای ع کال 
وقیل :لَّهُ إِن فلانا یمشی عَلَی الماء فقال سی ار نے کل ال کی تی سا کہ فْهَُ فَهُوأَعظُم من 
المشی فی الھواء . 
7م 

حضرت سید اما مابوالقاسسم شی کی رحمت الد تالی علییفر مات ہی ںک یرت سینا مجنید بخرادکی رم اتا لی علی.کی خدمت یل 
رت کئیکفلا شس پالی ب تا ہے آپ رت اتل علیہ نے فرایا میرے نز د یک انس کے پا بے ےگگ بڑ کیا بات بر ےکہ 
دو اش سکی ال تک نے برٹا بت رم رے۔ 





زال رازہ لٹ کین ہوازن بن الک لق ی(+۳۴۳٥۵)‏ 


ْ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





فو )عم ری ال رع نکی مرا نز نی ادرمو جرد انا اینظام 


ا ا مت کہا سے 
قال ابن رجب ۔رحمہ الله تعالی :-أصل الاستقامة استقامة القلب علی التوحید. 
مہ ۱ ۱ 
رت امام ابن ر جب ا س_لی رحمت ای تھا ی علیفرماتے ہی ںکاستتتقام تک اص دل کےلو حید بررقائم رپ ےکا نام ہے۔ 
( لمت ات تیعم کی رکا رمآ خلا تی الرسول انگ رم ( ٢-۰۵:۲‏ ) دا رالوسی یل لنٹر وال زیخ جر1) 
مامت تجص ان ےکا 
محرسث اہن جو گی فرماتے ہی ںنک ایک اڈداتھا کی کے وٹی سے ج برا مت ظا ہرہوگی فو اننہوں نے فر مایا 
ویجب کتمانه وأن لا!أنحدث بە فان من شرط الکرامة کتمانھا . 
رجہ 
کرات کو چیا ناو اچب ہےء ای لئ شل ہیا نی لکرتا ہو ںکیوننہ ہکرام تکی ش را ئا یش سے ہ ےکا نعکوخق رکھا جا ئے - 
1 ہیں اٹشس : سال العد ینآ بوالذررح عہر الکن الو زگی: )۳۳2۸۰٣‏ وا رافک للطاعۃ والشٹر ء بیردت:لمنان) 
اا موی رن ارتا ی علیذرماتے ہیں 
والأصل فی الکرامة الاخف ٠‏ والکتمان وکٹیرا ما یکون ظھو رھا فتنة للناس. 
7- 
ا امھ رشیر بن لی رضاالقکمو کی رن ایڈدتھالی علیف ماتے ہی ںکگزامت میس اصل پچھپازاادرخفیررکھنا ہ ےکیوککہ بببت سے لوک 
ای یجرے نہیں ملا ہدماتے ٢ل‏ _ ْ 
(الوڑی اد بی ٹج رید بن لی رضا ین ٹس الر غن ب یم رالقرو لا ایی :۴)دار الک القمیۃ ۔یردت ) 
کین صو فا کر ممیاراے 
ِن المحققین من الصوفیة یوافقون علماء الکلام والأاصول علی میع توالی الکرامات وتکرارهاء ومنع 
إظھارھا. 
مھ رشی بن پلی رضاالقامو لی رمتۃ اوہ تا لی علیفر مات ہی ںک لقن وف کرام رحیۃ ارتا یہ امیا علا الام دالاصول 
کی اس محانے می مو اکر تے ہی ںک کرام تکاہار پاراظپہاراورا سکپاجھرارنشعح سے اوراسی ط رح ا سکوظا ہرک نا یع ہے۔ 
(ااوڑی ار ی ٹج رید بن لی رضا بن شس الد من ہم رانقلرو ل١‏ ین ۵۳۰)رارالککت العلی ۔بجروت ) 
سیا کی اس رفا گی رم انتا ی عل کا ثول ٰ 
وقال الشیخ اأحمد رفاعی جس مسترہ مصبہ. رم نس 
وصرحوا بانھا لیست بشرط للولایة ولا دلیل علیھا. 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 1 7211 7 





12 


أتغ سارک اجررۂاعی ریمۃ الڈتھا لی عیفر مات ہی ںکہ دقیةاویاءکرا خود سے نطاہ رہد نے وال یمراما تکواس رح چجاتے ہیں 
یےکورٹیں اہ خی ایام کے مع لکپٹرد ںکو چھپای ہیں ۔اورانہوںل نے بیلھی نتر کی ےک ایت کے _ل کرام تکا ہو ناش رطا 
یں ہے اورشرای ال پرد ہیں 
وق حر ی : ھرشید بن لی رضا یٹس الد مین بح رالقلمو نیا لسن ۳)اراککسب العلم× ۔یروت ) 
ا مبداتا یگنشت :دا شیع شی سے یں 
ان الولی یجب عليه اخفاء تر ور ىر مس رجات 
تمہ ۱ 
ہے شک و پ راج ا ہکرام تکو پچھپا نے جب اکا موشجہرحمت ارڈ تا لی علیہ نے اٹ یکتاب یں ا لک فص کی ےہ 
۱ ڈالدای ‏ تارتنالمدایں عبرالقادر بن را ھی النشتی(م: ۸۰) ا رالکنص العفی) ِ 
والد مارکا :مج ب ناراش ہونا 
ومن کرامانہ ما باغنی آن زار مالابیہ ماہلا چچربی المدینة الشریفۃہ فنبجھم کلب ھناک, فالفت| 5 
۔اإليه إبرا ھیم المذ کورء فتعفل فی وجھهہ: فمات الکلب: فغضب عليه ابوہ لاظھارہ مثل هدہ الکرامة 
العظیمة من غیر ضرورة . 
کم 


شش 


۷۷۷۷77۷ 
۳ 


ا ال ما مایوالسباس ام بن موی رمت ارڈ تنالی عل کین میس اپ والد ما ہد رتمتۃ اڈ تھی علیہ کےمراہ جار سے ہیں نت آپ 

اٹ تھالی علیہ ےگرام تکااظہہارہوان آپ کے والد ماج رتحخرت امام موی ا“ فی رت الشرضقاٰ علپعلال ل٦‏ 
( مر ا لان دعہرة ال یتطان: ُبیش حفیف الد مین ع ہداب ن اعد بن لی بن لان ال انی )٥۵۹:۴(‏ 

ححضرت نوا حا لم رحیت الد تنالپی علی کا مہا رکیل 

رت عاگی پیرصاحب رحمی اید دای علبیہ سے دوران سف رای فکرامت اہ رہوگی ؛ جب ا کی اطلارع حضرت خواجہ حا لم 
شمرصادقی رت او تھا لی علی کو ہوئی تبہندنیغرمایاءا درب ارشاوفر مایا :الیا نا کر نا این ؛کیونکت زرفنارکھوڈ ےکی عرتھوڑی ہوئی ہے_ 
سبیری فریاحص ا زسفت گی ال من قش ری مر دکی:۲۴۵) مطبوح خانقادسلطاد ۰ پاکتتان 
تمورسرد منج ا یلا بی رنشی اررع فک تو ل بل 
ی8 ۱ل جا یی یوم یظھرمن وجودہ الشریف 
کرامات متعددةۃ یخفیھا ولایظھرھا. 
ویقول الشیخ الامام الجیلانی رضی الله عدە : من یظھرخوارق العادات والکرامات الالامر اولحکمة 
ولم یخفھافھوطالب الدنیا .ومن یکن مریدی ویاخذ الخلافة من اولاد ی اؤ من خلفائی ویصل الی مرتبة 





الکرامة ویظھرمقصدہ وارادته یکون وجھه مسودافی الدارین . 
تج 
ححضرت سید نا اما عہدالتقادرالا ربگی رحمتت الیل تھالی علیفر مات ہی ںک ران الا ما عبدانقادرا لیلاٹی نشی الد عنہ کے وجودش ریف 
سے ہرد نکرا مات کا پور ہوتار بنا تھا اورآپ دش دع نا نکراما تکو شید و رسکھتے تے او کی پا ہر نکر تے تھے ۔ 
ورای طط رع ان الا ما عبرالقادرا یلا ی شی اللعنفر مات ہی سک جوف خوارق عادات ا مور او رکرابا تکوکسی اھر یا حکست 
کے حشحت اہ کرت ہے اورا نکو پیشید ہگہیں رکتادہ الب دٹیا ہےء اور جوشٹحس میرک اولاد سے بامیہرے خلظاء سے خلا شت پاے اورمرتہ 
کرام تم کلک جا ۓ اوراس ے ابنا محمد با ارادہ ظا ہرک ےو ال لکا مشرد شیا وآخرت می کالما و جات ۓگا- 
۱ ( تفع الا جن الا ما عبدالقادرالار ہی:۵٥)‏ 
اس سار ےکلام سے نا پز ہو اک اصل چچڑر اعت کی لان ے سافن ہا وشن کی لے جن جن مز 
ادا سکرتادوجھی وکی ایل بنا جیا سے ء ایآ چا میں جوفس ش بجعت مرا رک کے اس سعم پک لی سکرتا فذ ود لی ول یئ ہ وکیا کیونکہ ولا یت 


اتمقاصتئٰ الد نکا نام ے۔ 
مہ 
ابادر رو یں؟ 


اص لموضورغ اور برعا کی طر فآ نے ےل چنداہہم باتیں مرا نوف بعوفاء تق پیر مخا ا کرام کے خلاف کس 
یں _ میں شودتصوف وط ر یقت سیت اولیا ءکا قائل ہو ں مان ئل ہو ن ےکا مطلمپف ہرز یکن کہ جوا پئی ز بان سے میالمٹھوبن یٹ ہم ا: 
ا کودٹی با پیر مان لیس ۔ ا صا ف امت میں سال طط یقت لوف ٠‏ اولبا مکی ہت دازراد کر نا سب ات سے نان افسوںطلب امم 
بی ہے فاص طور پر ہمارے پال بیصن ریس مال یی ر ےکپچ ری مر ار تقصوف وط یقت ہم رفت وسلو فکومچھوڑک رف یک رک دہ گئی ہے اور 
پی ہمان ےکا ایک دہندہ ب نگیا ہے۔ ہرشہ ری سک یگ یکوکی باباء بی رجیٹھا ےج کا ش لت ےکوکی لدناد ینانیں یکوئی کیہ لیے پالل رک کر 
کوئی اجکی پاپ انگیوں میس دیس اوٹمیاں با نکر دی نکو رگا ڑن ےک وش کرد ہا ہے ۔ان چپیروں اور باپالوگو ںکوخھازاورش راز کاب داہ 
کنئیں تم پالا ے تم فذ ہکیگوام الناس بھی دی نکواس قد رمحاذ انڈشم معاذ ارڈ تق رھ رکھا۔ہ ےک ارس رددد وذ ڈ اکٹ کی اجازت 
کے بضی ردوائ نیس لمت لین ش بجعت اوراسلا ما مستلہ ہوہعل ربیقت او رتو فک جات ہو ذس بھی جائل کے سا نے جا مینتے ہیں یران 
کرام اور جن کا کا مکیا ہوتا ہےء بی یا جن یش رائی اکا ہو نی ہیں رکون یبر ہوسکتا ہے اورکو نی س؟ ان با اگ یی ٹیش جال بییرو کینلم 
ہے شدائع پچیردل کے پاش چانے واٹیعوامکو۔ ہمارے پال دوسرابڑالییہ یہ ےک جس کے داداء پر دادا اش کے وی ؛ذ ریگ ےآ رع ا نکی 
اولادر کل بر یٹٹھی ہیں اورگوامالناس ان دی عحبت سکم ہیں۔ اورتے نت ات رصی ازلرعشما رسول ا راپ یش رادری ہوکرساری سار 
را تیروں می سکز ارٹیں موا کرام زی الڈد نم یس سےکوگی ای بھی نمکھو کر ادا انیل بنا۔ الا ف امت می لپ می ہیں ایا اکوئی 





"8 70 


نه 
2 
> 
٠>‏ 





شوت یس ماک کی نا ء ہزارگ٠‏ یرک اولا دای پیربتی ہو ۔ کی کا والدقت ہوا تو ش رلعت وططر بیقت کے_م سے جائل ہلا جھ با پ کا جناز ہ 
تک نہب تھا سلت ہودہ پا پکاگندیشن ب گیا ہو۔آ پ تار کھنگا لکر دی سآ پکوہی کی اما مر یقت وش لیج تک اولا د(جمیکم و 
مل سے جائل ہو )اپنے بڑوں کے جانے کے بح مدکی صنیھا تی نظ رنہ ےگیا۔ 

إابفدت ہوا نذ اب ال کا ٹا ء؛بتقاء چھاحجا سب پیرجن گے بی چا ہلا شر دم ہندکەول ادرف رگونو سکیا ہے ۔ا نککا بر وہت م رجا تا نو 
اس کے نما ندرالن ٹیل نے الس کے بعد کے بڑےکو پر دہت منادیا چا تایا پچھ ری رم فرکونو ںکیاھی کہ باپ ھرتان بنا باپ کےحنت پر ٹیٹھ جا تا 
اوھ رد وف رگو نکہلا تا اسلام میق قطعا ہہ :تھا ۔ اگ رر یقت اورپ کی عر یدک ای رک کا نام ہوتا ت2 اما مر یقت متصوف کے موضوع پرللم 
اٹھانے وا لن یلے امام ء!ما تج یکی اولا ددراولا دک مد ی1 ر بھی پل رہی ہوتی ۔اگرعلر یقت ای چچ یکا نام ہوتا تق جات مشا رک کرام 
کی اولا دع ت٠‏ کگمدگی شع پل یک رجی ہہوتی ہلیح االقیائس جمارے ال ہرمرنے دا لن ےکی اوما دربن جائی سے وا ق عوا متس 
اوقات عالماء مفتیا نکرا مچھ یصی بی رصاحب کے جائل صاجزادرے کے سا سے اھ باندھ ےکر ےهر تے ہیں کیا یقت اور 
توف اسی چماال تکا ام ے؟ ۴ ما لاک توف وط وبقت بش ربعت کلم کےکسکن بیییں ۔ یکن ےکا ڈرال سکواپنادوست اور 
دی بنالنے جوایرادراس کے رسو لپ کی ش اعت پیل بی کرجا ہدہ جوارڈدورسو لپ کاعھمئیس ماضادوعاش اوروٹ یکا ےگا ؟؟؟۲ 
اسماءالرچال وہتارں گ یکتب کےسسندر می نفو طز یکر میں تو معلوم ہہ وک اسلاف میں جو جوگھ یک خ سط ربق تکہلوائۓ وو سب ش راجمت 
کے ماگ ھی تھے اپینے دورکےمحرث اورفقہ تھے ای ای بھی الیماضتھا ہنس نے ش لص تک الف بے ند“ ہوء جن سکوماز کے واجبات 
ککاعلم ن ہو باےےنمازی ہو جے اتماعلم نہ دک ید ءکر ن ےکی ش را ئا می کت ی یی نکا زین پرلکنالازم ہے اوردہ تن اور پیر نگیا ہو- 
1آ پ داتا شی رحرت اتی علی نو امم رشمی الطعنہہ اما تج ری منۃ اڈدتالپی علیہ وطی رب مس یک سوا پڑ لی ںآ پکوان کے 
اسا نزیس بے ار ضرا تم رشن وفقہ لاس گے دہ یر جن یا ان رکا دی سے ہد ما ہے جوارلر کےحرو پگ کے د بین سے جائل ہو 
ینس کا پل اود کےکہدبپڈپگ ک ےمم اورا نکی عد بیث کےئخا لف ہو ءکیاا لے جال لکواسقداپناد لی بنا ۓگ ؟؟ 

عو یز سہاح وغی رکا زائل ہوں مین پیا نکرام؛ مشارغ کرا مکا کا م ف تو یذ د ینا ءسما کی شا ئیک یں پشت ڈ ا لک گرا ہکن 
اشعار پیشنی سم حکرواناء دجالیس ڈالنا نیس تھا_ اولیا نذ دہ تے جو این مر بلھ بی نکوماز و ںکا پابند بنائےے تے ا نکش ایم تکی لیم دریتے 
تھے ینآ کلف پیر با با لوک خودما زگئیں پڑت اور اگ رکوئی پا جچھ ل ےکی رصاحب نے نما زکب ادا کی ے ان کے بد ےکم 
جال مر یفرماتے ہی ںکہچیرصاحب مراتیے یس ادا فرما لے ہیں تبرت ہے اسے پچرنمازنذ مرا تے یس اد ارت ہیں من صرح و میا 
کے جیٹف بی ےکھانے ہویش دہواس می سکھا ت ہیں ۔ 

اولیاء برا نکرام مار قذدہ تھے جوش رلعت پل چبراہدتے تے :بن کے سا سن ے اگ رکوگی غیرعورت؟ جائی ود وخ وط ریس جھکا 
لین ءا سکو پر ر ےکا حم دہیے میک نکر کل بد بت ایے آ پک پی رہل انے وا نے گورٹول سے کے لے ہیں _ باد حا سک ای کوئ یبھی 
تی جاےاس کےم رپرعما مہہ ہلان گا چ مار نک ٹیٹھا ہو یا ای آ پکودروییش ہاب تک نے کے لئ ای ند ٹیس ٹیٹھا ہہ دای 
اڑا ہومگھفٹوں دعالیس ڈاتما ہوہ دو ز پان ے الفاظ کا نے نذ بات لو ری ہو ی بہوہ جو وی بہوریان گرا سکا ای کم ل بھی شر یت کےعکم 


]ہ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹ 721 77 


15 





ضورنوٹ اکم شی ال نک میابرانز ندگی اود جردہ ما نھا ینام 


فی پاصر جم کے منانی ہےتذدہ جادوکرہد جال تذ ہوا ےء دہ شیطا نکا یذ ہنا ے انشرکادل قدماٹیس ہوکتا۔ لار یگ ں رص 
کیا بات لو ری و جائۓ وہ ایل کا د بھی ہوءدجال کے بارے میں احاد یٹ کاممپومم ےکر دہ جو چا ےگ اکر ےگا لہا لی تنس جن س ما 
کائ یل ش ربیعت کے منائی ہے ددالٹرکا دی ئیس ہوسکتا۔ جس سکی تچھوی می مال ىہ ہےکمرد کے لے سو نا پہننا با چا دئ یک لیک وقت میں 
ایک نے والی ایک انی سےزیادہ پہفنا رام سے لہ اجوفشس سو ا یک یکئی اکوٹمیاں بین ھا ہدہ دوخ دح امن ل کا رکب ہوک گنا کی را 
گر با ےووہ دوسروں ات یی تکیا اکفکر ےگا ؟ ٰ 

علم می اضا نے کے لئے اصلاف ام کی تقلیمما تکی شی میس پیر کی شرا یٹ کرتاہوں؛ 

.ہاش کا سلہ یل بت تضور خی اکر ملک ستقفل اورتعل ہو ما زین سک دوسیدزادہ اور ل رو ل ماگ ہو جن 
انس کا عر یق تکا سال ہکہامےخودکس سے اجاز تی ط یقت ہے ہم برک رن ےک اجازت سے سے اسی طر حعمل سلسل بین تضور 
انی اکر پک یی ہو۔ 

٢......پرصاح‏ کا عقیرہ درست ہو _اورگقیرہ ردرست | سس وفت ہہوگا جب پیرصاح بکوعقیر ہکا عم ہکا 7ے م7 
موجورہ پیروں ےعقیرہکیافنلی اوراصطلا ہیر ایت لو مکی جائے تو دود ہکا دوھ پا کا پا ہد جائے۔ او مکی انچ لئآ سنزاوں: 
پیبروں ء با پا لوگو ںکی با تی سنوق حددرجکف یک ہیں شلحیات کے نام پبطرح ط رح کےالا پ شناپ ہو گت ہیں ۔ج٘ سکوحقبیر یاعلم ہی نہ 
ٰ ہوء یلم نہہ دک یکو نکون سےنظ ریا اکا عقی ہرس ےنام کا حقیرد درس تکیاخا ال ہوگا؟؟ 

جک 7 پیبرعا لم دن ہو مقولہ ہے لے کیم خذاں خداراشناخشتت یلم پچ چاہ لکوالڈد سن تن 
صلم سے بی جائل ہے عالم بیس ہن عار ف کے ہوسکتا ہے؟ الہ اچ اہی ےآ پکوپی ر تو پل دک لی سک راس ن ےکم انرک ش یج ت کا 
مس سے پڑ ھا ہے؟؟7 با ش ربعت اورد مین پڑ ھا بھی س ےکینیس ؟ ۴ کرونک یہ اخی یکم کے عبار تک نے والا شیطان کے پت می ں سرد ہوتا 
ہے۔ھکایات دروایات الس پر دال ہی ںکہفقطاعاہرکوشیطائن با سای بر بادکرد یت ہے۔احاد یٹ مططہر ہکا مہو مچھی ہ ےک شیطان کے لئے 
ایک عالم ایک بزار عابد سے ذیادہ چھاری ہے ۔لہنز اجس نےعلم ش ربعت ددی نکو پڑھا یکس ء جوق رآ ئن کے احکامات: تظابہات تیر 
ار ومنسورغ وظیمرہءحد بیٹ کے ا ہکا کل وی رہ یافقہ کے اصول ومرائ لکوئیس جات فدہ دوسرد لکی تر ببی ت کی ےک رتا جج اوردوصرد کا 
پیراورچ کے بن سکتا ے؟ ۴ ست مت کہ ہمارے ال ای چا لن کو مل وت کامت یہی معلومہ کات مت 
ہے اسے پیر یقت اورر رش بجعت کے التقابات دم کرد بین کے سا تجھ مرا ککییا جا جا سے ۔ 

ج...... پی رذاسنمتکن نہد ھت یک ددا حکام ج گنا نا ءکیبرہ ہیں ء جن ےن سے عک ایا سے۔د ہکا مر نے والا ہو لہ !یبا 
فص جوڈم زنڑیں بڑ تا تو ںکو گے لگا تا ہےء ات می لک یکئی اگوٹمیاں پبنا ےنگ تل گار بنا ےہکوئ یھکل ش ریت ک مک تی کے 
خلا فکرتا ےءدد جا ےگراممت کے ثام بسن درکا رن موڑدےہ چادوگ رق ہوسلکا ‏ ان اکا وک یا کی ہوسا 

عوام النائس سے ئرئ ہ ےک خدار اپ یمان اورد می نیکوایے پنتں ۔ ےتفوظا یھ . ائن پڑت چائل یرگ یی بٹھ بابےہ ہر 
لے سد ھھےکام کے لےتتوبذز جج لوگ قطعا یس مو سکنے ۔ اہی مائوں بہنوں می ںکوالن کے پا جانے ےت ۔ لوک دبچرار 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6811(21[ ٦ 0017 





6 






تو رٹ انم شی الع نکی میابرانزندگی او رو جودہ مھا نظام 


اورسی ایل کے دبا ریگ کےئی بلرد من کے وشن اور ہندتووں کے پروہتوں کےگمدیی شنین ہیں ۔کوگی بن رک فدت جہو لت ا نک اولاد 
اکرش ریعت ون کییلم سے چائل ہےءالن کے اعوال اہکام ش ربعت سے منالی ہیں دو قطعا یل ہو سکتے اور پے ال لو ںکؤ ہز کو کا 
گمدیٹشین بناناءا نکی خی تک زاءا نکا اد بک نا سب مرام او رگناددے- 

احاب اق ار بھی عو ےکہ اس رح سے دی ن کا نام لگا ڑ ناء دی نکو بنا ءد بن کے نام پر بے ین یک نا وقرا مک مو ںکوابئی 
مرا مت کہناءکنٹیا کا ںکومحچقو ببی تکہناءد بین کے مخالی فکا مک کےپپٹی ہوک یشحخفصییت بنا لوگ ںکدد بین دش بت ے دو کر نا بھی رسول 
الک کے دی نک یکمتائی ہے۔ایےاوگوں سکخلاف پا قاع پریشن ہو چا اورانوقرار دی سزاد یی چا 


چعلی ا مو ںکییگلی دہش تگمردی 


دہش رتگمرد یکا زط اس نل کا سے ماش رے میں لوگوں کے ولوں بیس دہشت پچ یلا نے بیس ال ن اکا بہت ٹا بات ہے ء جوا ننہول 
اقم یس سرد پک شرد خکروائی ہوئی ہے ا سک اط رف یکو ویجنٹٹس ہے ہکوئیبھی نشیس ان کے پاس جا تا ہن اف را کے میں | د 
۳م جس اص اورش ہی رشت دارن ےآپ پر جادوگردایا ہواے ء اورآ پکا نو یڑ ہعرق ہو جا گا اد ریس ہی دنس وہاں 
چکناے نو فورآووز ہین نل ے می اقری رش الا پل وہل اپ لاح یمان + دن شروغ ہو جات ےب بھی رشتددار 

لم یہو فورأا یکی طرف ذ من جا تا ےک الس ن ےکیا وکا ؛ہمارے ا لعل وعظرکوشابیراس با تک ادرا ک کی ور ہاکرائن شیطانول 
وج ے ت نگم روزانہ بدا ٰی کاشکارہورے ہیں او رت رت ہیں چوروڑاترا نر ای نکیا وج سے بر بادہور ہے ہیں ۔ 

میرے پاس امش ادا نے جا کہ نے اپ اک شاک دہ اپ رشنۃدادں سے گرا ےا 
آے ہی چاددگیاھرے والر ماچ گیل روسال بعدففت ہو گے ء اوراب میرک مال کے تیج ےکی ہوکی ء اس پر چادوگرواری .اہ 
تا راچھائی ےہ ا کو نات ہیں دو ما تا یس ء جمارے پھائ کوک یکرہ نہ ما ںک ینکر ہے اون دی با پک کارب می نے جب ال 
سے لو چھاکہآ پکوکیسے پیند چلاکراس نے ای اکیاہے؟ اس نے جواب دیاکہاباگ یکو بفار ہوتاھا ہم ایک عائلی کے پان سے جھے 
ان ہو نے پا لآپ کے الد ماجد پر جادوکیاہواہے اورکیائچھی ال نے ہے جودہتا جح یآپ کےگح میں سے ء اودو ای یقن 
اک بات سے ہواکردوروڑانبسرے وال ماج دکوشنل فکپچھلو ںکا چوس بن کرد اکر یم ۔انانقدوالیدراججولنع۔ 
ا بآ ب کی تا یں ال ںگھمیمیسٹڑزاکی کی کرانے والاکون ہے؟ ا ںگھ کون خرا بک نے والاکولنا ہے 
یں تن وضاح تکرناضروری جا اہو ںکہ جمارے ملف مقامات پر جو ائل مل ہیں اورشتر خانقاہیں ہیں اگی طرف موجہ 
ہوناجائۓ کم ازم دوا نلوگ راو نی سک می گے۔ 

صرف ای ک بآ پکی کا با اٹ تا ہے :صصرف ایک رات کےیمل ےآ پک پہ بای کا گان سے اہ ہمیاں مو کا 
ا: شی ہسنگمد لی سے سککمد یحو بآ پ کے قرموں یہ ہما رالحتو ینہ دشاکے ہرک نے اورسا تمندز پارگگ ا کرت ےہ سفلی پیکتذ رکے 








راد 


ٌ0 ت سے سس بے 











وی 









بے تار بادشاہ عائل بر وفسرعا لی شہرت یاف گول میڑا سی گی ء جٹںٹنننی پٹ ویاہءوالد بن کےگھرم چھائی وق 
کیا ںکیوں؟ پیرصاحب کےکامیاب چلنشی اکرش :ایاج پیمسشھوشاہ ہز دای ەکائل یر پر دیز ء ہنگال ءانڈ و نیشیا سرک لنکا اور٢و‏ دی عرب 
کےکامیاب دورے کے بحعرا بآ پ کےشپ میس کا رد پاری نز مک یلو ناچاقی ء ادوٹ ضہ: جن نگبھو تکاسایہہ ہب ردکن ملک سفرامقان یل 
کامیالی ؛ہ بپندکی شمادی بصرف چندفدں می لپحبو بآ پ کے قزموں میں :او دکی بنئشہ ئک نکنکن ہنا ہیں ء جو چا میں سو یں ٠آ‏ 
تی می ےکائل ابا بشگا لکا چقن ھا ڑتا اس رآ ف دی بلیک ٹیک ٠‏ پرطرف خوشیاں بی خوشیاں ہب اکتتان کے تنا م بے تن رکوالیذا یٹ عا عو 
بروفیسرو ںکوکھا سخ ار تر سر ہد س ھب سس رپھیسں 
کذر سے اعم ان مک اک رشیۂء ہرکا مکا رن اویل راز داری کے ساتقی :ساس بہوکا جھڑ امو ہق موں میس ءگع ٹیشھے مھا ئۓ روحالی علا رح اور 
تتو یز کے لیے جس لکواکف مع جوالی اذہ کے ساتاگھیں۔ ْ ۱ 
یہ ہیں چندر الیل جن سے ہمار نے صفف اول کے اخبارات ء رسرائل بسنڈڑے ایرلیشن ؛شاہرات اور لی وی اشتما رات جھرے 
ھب الع اشتارات میں پرکرش سا ڑہورادرلاچارلوگوں یس تما یں اورسما نے خواب فروضت کرت ہیں اور ذگوے ای کر تے 
ہیں جیے سب پچئ ےکر ان کے پا نمی بات ایل ہے مین س کا نت بی لھا ےکمجبوراورحالات کے ستتائے لوک ایک با را پٹ یاغسمت ضرور 
1ز ماتے ہیں کوکی انی بئی کے پاللوں شس سا نی اتکی د یوک چجبو .ےن کوک بررسوں سے ہبرو گا سے فراان ےو تح ا 











ہے پہ لابو ںکامارا بیہمھتنا۔ ےکالن کے1 انی ا( لال الھرے یٹپ دای اع سوجودے صرف چچرصاحب اورشاہ کی ْ 


الیک پپھ تک اورحو یف سے مبری سارک پ یٹاتیال دو ر۶ چا 2" .ال کین خائل رقم ہیں دولوک چیم ول کے راس ےک ومچھو ڑکرکو یز 
گنڑوں کے لیے دک ککھار سے میں ءا نکیا ےی ال نوجہ سے جو ایک الد کے درک وچھوفکردردرکی اک پچھانے ہیں ۹ مکیو ںکیس کھت 
کہاگ یدنہ چا ےن کون ہے چو جعا رے مسرائ لی لکردےہ اکر پیشلٹ ڈاکٹ ڑل یکو شفاد ہین وانے ہو و خودای با رگ ےئانہ 
مرتے ‏ اگ رطوٹلے بی انسال نک یقصت اور پر بیڈانیوں مشکلات ےآ زادکروانے برنقادر ہوتے فو خودکو پپیلے بج رے س ےآ تاوارراے 
قسست جانے دانے پوں نٹ پاقھوں پہنہز لئے ء دوکان ومکا نکی رو کت کے وی اورآ یں دیں دین ررہے میں نے وانے پیل 
ای ےکا روپار یس برکمت لاے جوخوجھوٹ بو لام رز قکمار ہے دددوسروںل کے رز ت یکا بنڑنل 2 تر کرنے کے چو ےکی ےکریر'ے؟ 

وس کی حر بھی کے باععتث ان عامو ںکی تح را ولس بصعت مجاری ے اور رعائل ال پٹ ہاور بیوقو ف لوگوں وص خوا می نکو 
چا ری معاوضوں کے جوٹ دھڑ ادھ لوٹ رے ہیں ۔ پیشارخوا ین اہن شو ہرد لکورا و راست پرلانے کے لیے 1 ستا دح حا سر 

دق دکھاکی دبتقی ہیں سد و ضش صظ سحعضست 
قستیں دیق ہیں بکمہانی ع زج کک ان عائل بھیٹ ریا ںکی ہو ںکی بعینٹ چٹ ساد بی ہیں ءپاکستان کے اکٹشروں اوردیہا تل شی 
ان عائگل تحخرات کے نھکائے ہی ںج ہیں1 تو کا نام دا جا جاسے+ان دد ئل ضرا تک بہتآ اي بیچیان وٹ ے٠آ‏ پ 
دور سے ای د کا نکو پان سے ہی ںک مد ین حم یما کان ہے گنر من ےکپٹرے پی ےکا ال کی سے ائے ہوئۓ اور 


مو ںککیس تھا تے ءا ات می کڑاء گل میس کے کان یں مندررکی ء دوفو اتھو ںک یآ ٹھالگیوں مل کم کے چھ روا اگوٹھیاں | 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 77 





تضورے اش ری ار نہکی مہا نز دی اورموجودہ ما ھا دی نظام 








اەمنہسےلسواراو دسر بی ٹکیا بد بوءصفاگی چو ہما رے د ین اسلام میس نصف ایمان ےکی ای کبھی بتک7 پکواس میں نی سآ ےکی 


ری سبھ ی نہیں1 یں رح کرد داکٹردیچھے چاتے ہیں ءا حم کےف راڈ ےکا نے جادواو رفلیئل ں استال 
نے کے لے ےگوہ ماش کیا دال ءانڑ ےہ سپارگیہ نا مل ء زعف ران ء تو رارصور کے پرہشہد ہآ ککا ہیودا ءکدے کے سید سح باز دکا| 
پ4 ہی رکآ گواورومءالوکی جبیٹء انسانی ناشن ء جاندروں اورانسافول کش مکی حنلف پٹ یا ہسیندورلونگ سوئیال ء پن کسی 
شواصصور تعحورت کے بال چوتازوسری ہواوراضما یکھو یىی وغیر مگواتۓے یں تناک دوسر ےآ رگ پان کے رعحب اور مکا ڈیار یہ 


بڑ ایل عتاطاندازے کے مطاقی اس وقت پاکستان می یڑ وحم کے نا نہادجا دو یکملیاتشہور ہیں ل کفبھرشٹں پزارو ںآ 


کی تداد میس بی عا ئل مل ارد بارکرر ہے ہیں ؛ ان پآ شوب عالات یس جب ہرطرف بدحقیاری اورگمراہ یکا دو رکیل جا ے٠‏ 
ار باب اخ تما ر جن کی یسور ہیں لا او ربغین حضرا بھی اس طوذا نگمراہی کے کے بن با مد یس ےہ نظ 1 رج 
یں کیا اس پیا |کوسب لوکو بتک چان اورال کیک ہوارگی ذ مردار ینیل ؟کیاىہ پا ہراشت کک چان ہمارافرن نی سک جوائڈہ 
کے درکوگچھوڑ دی ہیں ا نکیکغصت بین درداکیشھ کر می لکیددی جات ہیں ہ جار یکھوثی قسمت ایل کے سواکوئ یک رب یھی سکرسک تا یقن 
کم یی جھادگی تنا پادی ہوککقی ہے ہماری ای سن بن ائمکرن کن ہو سکم ہے اگ پھ صصرف اس ذ ات ل(ا یٹ ےلوڑکا چو ہر 
تنا پر یکرنے والا ہے جو نامگ نکونکن بنانے وا یئا ۔اور جو ال اود ہیں ان کے ہاں جاتے ہد ہے ہا رےلوگو ںکوموت نظ رآ 
ہے ینگ گان کے اس جا شیں تو انہوں نے صرف انی کے گے دع اکر کی ےکا تھا تجرفرمادےگاءاوردہ ال نک وھ نے خواب 
نی دکھاتے اس لئے الن کے پا جانے می ا نکوستل پوت ےد ٰ 
تو اعمزت کے صن عا لطقہ -.-٣٦‏ ۱ 

ا ب ورک رم می کی بن بی اد کر ےگھر ےکی کےساتھ پیا جاے فان ائل نخان کے سا تج کیا شی ہے دجخر جیب لوگ 
معانشرے میس مضہردکھانے کے تقا کیل در بے ؛ اب د ہگھ ردانے ال سک کے کے جانی نین بن جات نہیں کہا ذیل نے ہما رکیعمزت 
اک میں ممادیی ہے او رکیل من دکھانے کے اب یں ر سے با اوقات ای اچھی ہمونا ےک اس لی اور کے دونو سک لکردیاجا ےہ 
وین اوجات انل لکومود تک یکھاٹ اتاردیاجاجاے۔ -- 

اب می راسوال بہ ےک بین ہو گے ذبیل اویل کے لاکن پھر مر ہے پچ رآپ کے نز دیک دومن ززلوگ ٹن جوسرعا مد لواروں 
پرادراشبارات می م لھا ہی کے آ پکیکحبو برآپ کے قرموں میں ٰ 

بعادے نز دیک ان دونوں سے پٹ ذبیل بی عال ے اوران رے زیادہ بے شرم دہ لوگ ہیں جو د بیتتے ہی ںکہانہوں نے ہے 
تھا ہوا ےک ہآ پک یمحبوبہآپ کے قرموں یل +ل پر بندہ بی سو خک رآ کے بڑھ جا ا ےکہ می کیا اودکیا ہکن اود ٹیا کے پارے میں 
ککما ہوا سے _ ٰ 
اور ہھارے نز د یک لوگو لیا ال اور بہتول اوریڈو ںی۶“ ت کے ین می جائل عائل ہیں_ 
دی ہیی مال یں 


سی رح کا ایک اور مل۔ککھ ہداہوتا ہےک۔“ ادف ماخبردا رش اپنے خمادندکو طائع دار بزانے کے لعیا یک بار ہمارے پا 


کسی سا سے نے مد سب وس ست سا ےب وو ۳د ادس سے سپ سے سے جو سح 





۱۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 8110011 7 





اب ا لہ ے س.ت ت الا میشیل تیوک پر نماون دک فرمانبرداریلازم ہے پاماوند پر 
ازم ہہ ےکردہ اتی ہیی کے سا اھ باند ھک رکھٹرار ہے ۔ ای سب سے ہت ےگ پر باد ہو ئئے ۔ 
ہربنادے پرلازم ہکان کےخلاف چا دکرے ۔ اور چہا لچ میلو گنیس اا نکوزت شردکی جائئے یقت میس بی کوک 
ہمارے معاشرے میں فنمادیچھ یلا نے والنے ہیں ۔ 
عائل باشیطان؟ 
مر ت خوامہ تن الاری ن شس الد مجن سمالوکی رح ال تنا لی علیمرماتے مہ ںکہ جب بب یکوکی عائل حرتخوا جرسلیماا ن فسوی 
رم اڑا لعل یں یف جلآجاتا آپ فرما اکر تے تکاس حیطا نکر یہاں سے رکال دوتا اکم ا کی نحوست ےت فو ظا رہ 
یں 
(م ر31 الوارشین مرف سیدیمرسعی:۵۸) مطبوح اس لامک بک فا2 میشن لاہور) 
اورک می کہ ہوارے مشا رک را ا عکوشیطا کیل او رہم ا نکوپی رکیل ۷اس سے ثابت ہو اک ہم اپے مشا رح کرام کے را ستے 
سے ہہٹ گے ہیں۔ ۱ 
کیینلز لوسواس الا یی لوک ہیں جولوگکوں کے ولون بین وسو سے ڈا لے ہیں اورلوگو ںکو پر با نکر کےا نا مد حاص لکمرتے 
ہیں۔ ۱ 
کرات نسدت ما طذ سب ہوجالی سے 
ٰ صعقر تج مور انل الرشس نک مرادآبادکی رحمت: اتال ی علیہ کے ایک مم پیر جن نکومہ کم تھا مو نانضل ار نکی مرادآبادی 
رن اویل تھا کی علیبامیا کرت ہہیں جس کے سبب انع کے پام سل کو لکاریش گار ہنا ہےە ایک بار جن بآپ کے پا لآآا نت ےپ مولا ناس 
کے ول کے خطرے لع ہے اورفر مایا نوز پارڈ اتغف راولت مکیا یھت ہوک جم عائل ہیں پچ رف مایا :کیا مکویملوم ےک یمبیات سے" 
بت باطندساب ہو ای ہے 
(الا فا ضات الو می مولوی اشر ف ےک تھان وی (۱۸۷۹۰۷) موم اراروتا لیذات اش فان پاگتان)| 


۱/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹681:1213]. 


اور ڈیف مایا: 
قر ان جاتیں رسول اد ےکآ پگ کی ںفضولیات سے ب اک رضرودری یو ںکی ططرف لائے ء میس نے ان چچردں[ 
کہے ا عو ںکود یلما ےک الع می سکوئی پان می یس ہہوتا بلنلمت ‏ ڑگ ے۔- 
ْ (ال فاضات الیومی مولوی اش رع نانوی (۱۸۵:۴) 
ا ے ائرازہ گا خی سک جمارے ہز رگ کے ا نکملیات سے پاکمرتے ے اورریفر مات کہ ان ےفسعت باطت سلب 
ہوحاتی ہے شی ولا بیت ساب ہوجاتی ہےءاورعاموں کے د یکا لے ہو تے ہیں - 








میںسے(۳۴۰۶۰۳۶م) می حاصل راد ٹم کردا او شرف ماک تک اپ نے کے 
لابا او رکہا: ٹا! آپ پجاددکے اث ا ت ہو ہور ہے ہیں ءادرس ات ھی جیب یس پچ سےمر جو دای وی کا لکردبااورفرمیاز بے ١‏ 
یس رکھو ہآ ب سے اس سےبھی بھی شر خنہیں یں ہوں گے ء اس وقت ٹچ رکا وقت تھاء بیس جب نہر نماز اد را ینید 
ڈیرپ یمان ٹیٹھا ہدا ھا ؛ ٹیس نے اوب سے مرخ لی ۃضورکیا یب رثالی ہے؟ نو ودفر مانے جج ےک بیٹا! آر حکوٹ یتو یذ لی نی ںآ یا میں نے 
روٹ ین سکھائی ۔ یس نے ددیتحویز جیب سے کالما اورا نیکوئو٘ شک :حضرت اتد یذ ہ ےپ اسے جیب یل رکجٹل اممی دہ ےک ہپ کے 
کی سے ےکم میں ہوں کے اورآپ ال طرح یی ر ہیں گے۔ 
لحویزات را ملق 
تر تخوا حر صادش صا ح نکی مدکی رحمت ارتا لی علیظر مات ہی سک دوا کے ا ندرش نا اڈ تاپ ی کی نے ھی ژك,"2مئ0) 
تزالی بی شفانردرے نز دوابھی انی ںکرالی ءاسی طر ح تحوبذ ات اوردوصرےکملیا بھی بھی فائندہ دی ہیں جب اید تا یکومنظور ہوء| 
حعاجت مندکو ہ ریز امتحا لکرتے ہہوئۓے خیال رکھناجاي ےکم بیرف دسیلرے اور نا7 ترور ینا اد تنا می کے پا تجھ مس ےب 
(ارمخان‌طر پش مرجب مغ یح کیم الد بن نقشمنری مردی ۸۰) ما ھا وش لم ما کتان )ا 
انالد بیےعلامسعیدری فرماتے ہں 
ا تھالی کے رات کیا سب سے بی رکاوٹ چیردں کےآستانے ہیں ہھانقا ہیں ہیں نشی ے کان تا فو ایپ ا ا 
ہیں خال یکرت ہیں ۔ز یب سادہفلاں وفلاں پزرگ ہیں ءجس یپ خرس باب مخارع کی نمی ں بھی خی رشری ہیں ۔ جن کے 
دنم یدوں سےتحوی ڈگمنڑوں سے نز رانے وو لکرنے اورراتقیں عماشییوں می سک رکی ہیں جولو بی ذگمنڑوں کےکاروپار سے خر با وکو : 
لو ہیں چزللم سے اش اورل سےمفلس ہیں جج نکی ز با نہیں فرشت کی پاکی گی اورقلب ایس کے روسیاہی ہیں جن نکیکختاررش کے 
بقل اورکردارتنگ ا ما نیت سے کوٹ یکھوڑے شا سے جس کے زار رگھوڑوں کے بہت ججڑہھاۓ جا یں کوٹ یکتوں وا ی 
سرکارے چہا ںکنو ںکونزرس حاصصل ہے کوکی بی والی سار ےکوکی اکیاے اورکو یکیاے د وشن ےم بیدفا کش ہیں اور بی اکھوں کے 
کے خر بیدکر ہنارو ںکاحشرط پرلڑاتے ہیں مس یکوکتے خر بد ےکا شوق سے من کوی بامخر بین ےکارسیا سے تکوکی سور کے شیک رکا ش وشن سے 
کو یکیارو ںکیی خر یداری ٹیس بازیانے جانا جاہتا ہےء اور برتا شوق مر بد ی نکی میں خا یکر نے سے ایا پورے و تے بین کیابیلوک 
تح کے تھا پوررے۷رر سے ہیں رکیاان رای اورنا اید وروگ الیحا واداواا را ے بدگائیےخطرےٹ ے میں جتاء 


یں ہوں کے_ 


۷۷566110210 377 


( مجانشرے کے نا سورائ ملا مرفلام رسول سیر ی:۱۳۶۰۱۳) مطب وص فر یلد بک شال لا ہور) 
یہ ہمارےاولیاء اید نے ای ےکردار کے ذر بی تل وگو ںکواسلا مکی طرف بلایا ہآ نج ایل کے عارات پر ہد نے وا خرافا تک 
بے ات رر ہو جار۔ہے یں ءا سے بٹرااروں لوگ جارے معاشر ے میں مو جود ہیں جو ان ارات بر ہو نے وا ی خرافات 11 





161 





ویکوٹ نشم یی دع کی ارہز ندگی اور مو جودہ انی نظام 








یج سے بد مہب ہو سے ہیں ۔ ہما رے پز رگج نکی خد مات اسلام کے لئے لا ز وا لیس اب ای کی اولا میں اسلام اوران ہز رگو ںکی 


ہط* جپ چجی* 
ار ران فدرت ما ہ رما ہحعرت 
چی* جچ چپ 
ما رام کے نفرانے جو لکرن ےکی وجہ ماش یمردہ امراء سے نے لے اورٹھر باء خر کھردتینے جے بی مت ل رت 
نات الا ما عبدالقادزا لاٹ شی الا نہ نے بیان فرمایاے ےآ پ کاب می تخحتیل ہے ساتقھ بڑھیس ج ےک امراء سے لے 
اداورخر باء پیشر خگردد ہکوہ یلوگ نو وف رباء پر نمی کر تے ہر مشارح کرا مکذقحفہ پانذ ران کے طور پر ٹپ کرت ہیں مق اس لئے 
مارے مشا را کراممائنع سے نز رانہقو لف مات تے ادددہجھی اس خبیت کے سا تھ کے ان سےقجو لک کے نبا مکوودرے د میں گے یا ولک 
ان کے پا ںی ات تننفرءاورلحاءکی جماعحت النا رم فرمادینے جے۔ 
کل جمارے دور بی ںبھی اس مار گرا مموجود ہیں جاہینے پاس ہم ہونے وانے نذ راو ںکومصارف دیٹیہ پیج 
کر تے ہیں یکن ساتحسا تح الیے پیرمفا ںبھ یمیس ہیں جو( تس 1 گے ت ےکی میا گے تے جدوں اس ی؟آتے لی فی کی دلو گے ) کھت 
ہیں ءادرمر بدکاسماراگھ جا کر ک ےبھی لکن من برکانعرہ لگا ر سے ہو تے ہین .۔اوزآھوذ پائڈ رن ذ اتک اس طرم کے پپیبروں نے با تقاعدہ 
ٹیس یارکی ہولی ہی ںکساراسال مر ییدوں کے ال جانا ہے اورک یبئی دنع کے امم کے بحدنقتری نز راشرا ئک سے وصو لک نا سے اس 
بات انداز و تب ہواجب ہم ایک پبرصاح بک ا نکی ذیادت کے لئے عاض ہو نے فے پیرصاحب قبلہ کے سا سن ےگئی صفوا کی فرتیں ‏ 
مو جوئیں اورا نکی تیا گی ہودنینھیاء ہی مبھی بہت دب تک دبیھتار ہے بعدازال پا زضاحب شود گیا ہلان ےکی ہار ےم بد ہیں اورہم ہر 


سال ان کےگھ پچ لگا تے ہیں ادرساار ےسا لکاراشن ش کرت ہیں ۔اب با میں جب پیرصاحب خود موق لبڑیں ہیں ءا نکوم ریزو ںآ 


پر روسہ ہے ادرساراسال ان سے اصید یں لگالی ہیں تو دہ بی رصاحب الن مر بیدد لک ت بی تک ےر کے 

شس نب تچ وٹاساتھاہمارے ابا اجداد کے مار کرام قائم ود حاصل پور کے ربئے وانے ھے ء بڑے بن رو ں کیا نام حضررت 
سی نا عبرالدگیاا نی رح اللہ تما لی علی تما ءان کشا ےکا نا ممحفضرت پیرسی خلا یگیل نی رم“ تی علہ تھادہ ا ک ار ہک رستچاوں 
نشیف لائۓ اورسب مر بیرو ںکوتشػ کیا اورفر مایا اک کم ددم نفیرکررے ہیں اس کے سل ےآپ کے ناو نیک ضرورت ے) اورا رد 
۰ ْ 

علاقہ دالوں نے د لکھو لکر چندہ دبا او رتضرت پپبرسید فلا مع شاہ صاحب رجمتۃ ایل تھا ی علیہ نے ایک مددسش ریف غانقاہ ر 
72 رکیااورووائمدلرآرخ ھی ابی طرئح لیر پاے اور شی و انم ری الطعن ےتجھولیا ںکجرر ہے ہیں ۔ 

یہ با ت کا مقصمد ہ ےکہانہوں نم یبھی این لئ لوکوں سے نذ ران ہکا عطال ہنی سکیا ء ایک با کہا تذدوجھی مدرسشر بیط کے 





( رہل ) 


۱۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 6٥0ا7(21713۱.۲077‎ ۰ 


12 





اس سے یہ جات گھ ی بجی لآ لی ےک الگ می یب رمدادرش چلانے شرور حکرد یں ف ہیس پچئرکوئ یبھی طعنہ ند ےکم یلوگ بڑ ھن 
پڑھانے ےتک یں رھت ۔ادریروں کے پاس شع ہدنے دانے ن ران بھی بدراس اورمسماجد پر خر رخ ہہو لت اکمہ جار ےل گوں یل 
د یحور بیدار 7 ْ ٰ ْ 
رسول ارڈ ایی کال مارک 
قال الشیخ الامام عبّدالقادرالجیلانی رضی الله عه :کان الرسرل شا یاخد الصدقات یفرقھاعلی 
الفقراء والمساکین والمجاھدین ٹم پاتی بیوت ازواجه یقول : هل فتح شئی ؟ جاء ناشئی ؟ فاذاقیل: لا . 
یقول : انی اذاصائم . 
رھ 


ححضرت سی ناخ امام عبرالقادرا لجیلاٹی ریشی الد عنفر ماتے ہی ںکہ رسول ادڈڈپلگ صدرقا ت کا مال قبول فر مایارتے تھے ۷ 


اور ےآقرا اورملا مین او یمام من رنیم +ر 77 تھے اس کے بعداپنی از واج معظرات ری الکن کے مچمروں می ںتتشریف 
لاتے نو دریافت فر ما ےک ہک واکوکی ڑگ یگئی ے؟کوگی نز جمارنے لے آآکی ہے؟ عو سک جانی .5 یں اس پر پگ فا ےک 


اٌمااپ واراروزدے۔ 


رت اتغ ا للا یکا ما رٹل 

ان الشیخ عبدالقادرالجیلانی رضی الله عنه کان اذاجاءہ احدبالذھب ء یقول لە : ضعه تحت 
الس٢جادة‏ ولایمسه بیدہ فاذاجاء ہ خادمہ قال لە : خذ ماتخحت السجادة واعطه الخباز والبقال ‏ وکان 
ا ذاجاء ٥‏ الخلعة من الخلیفة یقول ۔: اعطوھالابی الفضل الطحان وکان یاخحذ منه الدقیق بالقر ض 
لاجل خبز الفقھاء والاضیاف . ْ 

“ہے 


زا ال انی وأ الرجما نیم الا ما س ہداتق درا لاٹ ری الڈرعن:۳۱۸) 





ا ال ما عبدالتقادرا ای نشی انشعنہ کے پاس ج بھی کوگی سون اڑا ےک رآ تافآ پ اسے خر مات ےکا کوسادہ 
کے یج درکھ دواورا سکواپنا ات مبارک نہ لگاتے تے ء جب غاد م٦5‏ آپ اسے فرمات ےکم حجادہ کے پچ جو دبھیا اسے 
اٹھالواوراغبائی اورسیزی وا لن ےکودے دواور ج ب بھی خلیفروق تک جاخب ےآ پکوضلحت یی کی اتی قوف رما یمہاب وفضل 
گر ےوک پ نشی اد عنرالن ےآ نا رض لم کھرتے ے الس سے فقہا کرام اورمہرانوں کے لے روٹیاں انی 
یں 

ےہر اس صسرساراہ 





]ا ۱/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6:1172173 





تو رفو )نلم شی ول حنکی مان ندگی اور مو جددہ انی نظام ْ 13 


رت سینا خواج ما مک مارک 

جائع مد الفردیں کے پپپلو بیس دوعارات ہیں ان سے حاصل شدو نز رانو ںکا مصرف اس رح ےک قاع رخ الندخطاری 
اتی علی کے مرارش ری فک یآ دی سا لگرکفو ظا ری جاتی ہےسالا ہیٹخ راس سا لک جع شد ہ1 ہر ی مسچرالفردو ںکی ت تی ہنس 
اتی ریس ا نکی جاخب سے(ان کے الال ٹو اب کے لے )خر کی جالی ہسے۔ 
و ۱ نم د ین ک ےکا مموں میس صرف ہودتے ہیں نماندان کے ذاٹی ممارف میں نی ںآ تے ء 
خوردلی 2 کھوانے بن ےکی اشیاء ) سگیوں می ںی مکردی جانی ہیں اوردیگراشیاء باد جات اورالکٹ یش سکاسامان مساجد ک قب ری 
کیا موں می لصصرف ہوتا ہے .لگ ارجا رت ھاما رگ را ماوروروھتوںل ۳ ہی ہوتے ا 

(ارمغال‌طر نت ا زمشتق یلیم الد می نکششمنری می رد ی۰ ۹ ما ھا وش کی 7ے ( 

اورآر بھی لق انقاو سلطاش کان ایز از ےکہ یہال پآ نے وا نے علا گرم اورمشار ععظام ول یاعا مکوام ا نکو ای پا تھ 
کس لوٹایا جا تا ؛علما ءکمرا مکوکھان ےکی اشیاءاو ربا ہ مک خعطاکیاجا ا ہے اوراسی طرح خانقا دشر یذ ہکی رف نہابیت اص معیا ری طباعت 
کر واکرعلماءومشا راد عام النائس می شب مکیا ای ہین 
سود ہے ران کا 

ای مر الام مو نا رضا نا قب مصطنا کی لہ اید تعالی نے اہین ایک دعظ بی فر مایا :لیک پارڈ اکٹ مرا قبال ریت اش تعالی علیہ 
اپ ےگھ میں تش ریف فر ا تےکہا نکویک پیرصاحب لے کے ےآ تے ےجا لان ک ےکی م بدکویی ند ہی چرصا ح بکازیار ت۷ 
حا رہواءاو رت کی :تضمور !ری بئ کی شادیپچھ یکر کی ہے اور مکی عالما تگھی ہجو دک ررکوں ہیں اور جھ پر ایک سورد ےکا ق رخ بھی سے 
*دعاف ما تلیں اید تال یک رجف ماۓے ہ پیرصاحب نے دعا کے لئے باج اناد ئے ‏ عم بد نے رخحصت ہو ت وقت پیبرصا بکودش روہے 

رانہ ی کیا جج کہ رصا مر نشی قبول فرمالیاءعلامہ اقال زم اشتما ل عقاو دک کرٹ ی ؟ گی جب و ەم رب 
رخصت ہوان پیرصاحب نر مان گ ےکآ پ ماق ےکیوں تھے؟ عللا ہن ےکہا: جنا بسکیا دعا کی قجو أی کیرحت پر ۔ائسی نے ےکہا:دہکیسے 
عم ب1 رب اپ نے اس س ےت سس ستسشی ون / 
روپ ےکامف رد ہوکیاے۔ 

جب علا مہ رحمیت اڈ تا لی علیرنے دی ھ اک بی رصاحب قبل نو خر یب م یی رھایڈئیں دہ 7 اپ نے کرس ڑا ایکھا: 

بم کو می میں می کادبابھی مک رپ ای کے راوں سے سے ریشن 


ری ہودیبا ی ہوصراں سے سادہ انند بتاں تھے ہیں کید ہے برجھن 
نزرانہ میں سود سے پیران 7م کا پہفقہ سالییں کے اندر سے مہانتن 


مبراث می ںآ کی سے یں صن ارشاد کے تصرف و ے عتاوں ےی 
ا کلام ٹیس علا مرحم ایق دتھا ی نے ان رو ںکوکر سے کے سا تح کش دی ےہ جن سر حکوا تچھو نے کچھولے بوں۔ے؟ شر 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 











اڑا مین اتا ہے اسی رح رپلو بھی یکورعای ت نیل دہ - ٰ 
(ہال چرل:۱۲۸)مطوےنز یز پبلشرز ا ہور) 


نہ ےر شرپوستیکون؟. 


ضرت مو نز پش یچستی زحت ا دنتوالی عا ککعتے ں ۶ 

اولیاءالل ہد نے کے لے جب ایماان وق یک یکسولی پر پودااتر تن ےکواڈند تھا لی نے معیارقر ارد پاے :ف پچھرا ‏ ےنظ ا ند کر کے 
اہج ہیں ےکوگی ندرا کرنے کا الا دسا :او قیدرو بن لکیسائی اودابان قر یک جنگ کامعارولا یت +وناجحبکبد| 
صا کرام شی ا یڈنم سے_نر ا بتک کے جتملہسلف حا شی نکیاتفقہ رہب اورنا مقائل اکا رتقیقت ہے ء اریے میں پال علما مکرا مک 
دلاحیت سے جاک کے اولیاء اللرکوانع کے منقا بے میس لاٹ ےکا چوفسور اہپنے مزانشرے میں ہم دکچدر سے ہیں ا سکااسلام کے سا تج کوک 
تلق نہیں ے, اس مزا ارس خی راسل می نقصور بین نا صر ضف ضف التقید عوام ہنا ء ہیں بل نیم خواند علا ءکی طالب اکثریت ممیت 
ایجے نا سے اا ل٥ل‏ بھی چاہلستان کے اس زندان کے ایر ےآ ر سے ہیں ء امن سلسلے یس بے اپنے م لی اوراستادموڑ نا عطا مد بن ای 
رصن اللہ تالی علی کی وہ پا مقص گنگ یادآرہی سے ؟آرح ےآتقم ببانصسف دی پبیے سیال شریف کے ز مانہ طا می یں پور حصر 
رکش بردار ضر کی معیت میں صھ ا ءکی طرف جار پا اک نطرت نے لا ومیشا راو رہہ کےکز در کے جوا لے سے خر ما کہ اارے 
راریش میں پٹ ھن وا ل ےط کی عیب ردشل ےک رو میں جب و ہت ان پڑھ جائل ہدتے میں جب پڑھانے وانے اساتذہ 
اورشبورغ ان کے ساتی مخ زخور یکر کے چندسا موں میس یں یھ ہنا لے ہیں نیس این ان اسا تھزہ اورشمب وخ کی عحنت او رکا رک دی 
کابدامت ا ساس ہو کے چم ان پڑت چائل تےء اب اگر لت جانۓ گے ہیں فو یراستزادکی برکت ے ء اگرلق رمیکر نے کے توائل 


ہوۓ ہیں نے ریکھی جمارے استزا دی من تکاشم سے ء اور جائز ون جات کیافیٹرک نے کے تقائل ہے یادرس ون دلو کر نے کے قائل ہد ئے | 


ہی تق یسب پا نک یلیم وت بی تکامتجہ ہے :اس احاس میں انیس ا ہے مم وص رپ کی محنت وا غلاص او رکا رک رد یکا سور ہوتا سے 
کہ بیلہ یس اسلا می عقا مد داعمائل سے اوران کے طل وت ہتصسول سے نال اورنا آشناتھاءاوراب اس ہوانے سے منز لآ شا ہد ڑکا ہول 
تھا یک وش کے بح دمیرے استاداوری فی کااحصائنع ے ءا کی شذقشت اوریحن تکاش ہے ؛اورا کی تز بی تکاب کی او رئیم 
ہے ا ل فی اصاس کے پاوجوددہ اک کیا چائل بر کے م بد ہدتے ہیں جو نا نک یکا بکاعلم دے کھت ہیں اورنہ ی تق لکاءمقیرہ 
کیالیم وت بیت دے کت ہیں اورنہبی اعما لک ہشری اکا مکی فمیزیھینجیس دے مت ۔اورنرہی ان کےتعمول کےط بیو کی ءاسلائی 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 1011 7 


165 





عقزا بر واعمال یس چپ یکی ت بیت دے کت ہیں اورتراان یش اغلائش پیداکمر نکی ادرانئیل ببہال سے پجھھ حاصل ہہو نے کا بھی احساس 


ہوتا ہے لق دو اس با تکو چان ہی ںکہ ہار اعکم ول ا بھی دہ ہے جو نر؟بی استاددمر پا کے پا س سے سیک ہآ ئے ہیں مہا ںآ نے 
کے بعد آ لا نکما کان )نمی مر بید ہد نے کے وشت جیما تھا ا بچھی اسیا حا ات میں ہے اگ رکوگی اس سے پیھک فلا پیر کے مر بل ہے 
تھے بیجھےسات سال ہوئے ا عر سے می سکیا پچھھسیکھا؟ جو پییلہ اہین نر/بی نادرم پیا ےنیس سیا تھا۔ ول بی عدم تحمو این 
ہوتے ہو ےت ما حول ای ا کی ہنا ء پر مکی جواب د ےگ اکمہ پیل مدکی استاد دم پیا سے میں نے ش راج تکاعل ول سیکا اب پیرعلر یقت 
سے مر ایق تکی بریات حائص لکرر باہوں رمنازل سلوں کرد پابہوںء اورپ ررگوں سد میس ان ہوکرفرییف سلوک اخیام درے 
رپاہیوں۔ 

یقت بے جوا بت ہم ستقی ماع فعقیدہ اپ رکی مدکی کے ھوانے سے خلط رح ادرردا پنیا ہونے کے سوااور جج ینیل 
ے :اس کے بعد صحطرت استادصاضب نے ائس وفنت کے ایک فراڈ کی پبراورااس کے پعنرے میس مجنسے ہو ایک مم خوازندہ مولوی 
صاحبکا ایک تیب واقلڈ یا نک نے سےا ری مر یی کے جوانے سے علق لک یتہج اکرضتیض العقیر وکوا مکوا نگمراہوں سے 
بی گ‌ 00۳" درت بتایاء اس کے ساتھ اہی پیر وم رشمد اوزمیرے دادام رش رت سید نا پیرمہرڑگی شماہ رت انل تسا لی علیہ کول | ۱ 
را 

حفت ش رک کی تقیقت لین ا ہکا ش ریت پش لکرنے می اخائ کا مومع رکب ت ےآ بی کر یہ : 
ئل ان صَلایِیٗ وَدسُكِیْ وَمَحْیَایَ وَمَمَاِیٔ لِله رَبً الَعلمِیْن چسورۃ الانعام : )۱٦١‏ 

تج کش الا بمان: 

تقر فر ما ؤ بے شک ھیری نمازادرمی ری تقر بافیاں اد ریما جینا ادرمی رامرنا سب ار کے لے ہے جورب ہے سارے چہا نکا- 

کا مہ رتا تے نیزفرمایا: شش نے اپ استتادوص ری ححضرت مول نا ار بد ا لوی رم اتی علی کا ادب وا رام رت سے 
مھ ی بھی ںکیاء عزفمایاکہ می نے اپ ےشن وم ری استا وو پیش پر دمرشد تیمھا ہے ء اور برا حیب زمر یدکوچا ہی ےکردہ اپنے 
استتادوم پ یکو پیر ےک نہچھے؛ جوحرات اپ رای اتاد کے متقابے یس پیکون بی دپینے ہیں یا یرس ےکم عزت وا تر ام استاد یکر تے 
ہیں ت ا نکی جہاات ہے ءاےے علاء چا ہے کت بڑے عالم ول یکیوں مہ ہوم کے شمرات دبرکات سے ہجرہ مندکیں ہو کت 
۱ ۔جزفرماما: جب بی روم رشد سے ایے رای جن اورمرل یکوکم درجہ دیۓ والو ںکیھ ما لمڑ یکا رحال ےکی چائل اور براۓے نام 
ہلان والوں ےمم یر ہوک اےتر زی دتے دالے تصرف م کے کرات روم ہہوتے ہیں بلکد دو ممنا ہگ راو تچھل مرکب کے 
گر قزر اوراحمان را وٹ یکیلحنت می ںگر فیا رہد تے ہیں _ 

یجزفرما ماک حائل ہیردں کے جال توم یل بین نک لعصنت اتی عام ہوچی ےکا تھے نما سے عاما بھی 00 ؛ مر 
رما کہ اس جانے نیقی علا ول نکو ےآ ن ےکی ضرورت ہے اوراصل یق لک یقیٹ اکر اصمل وف لکی ا سگمرا ہی سے بچاناعلما موق کے 


ف رحس میں ششائل ے ,رج سے نصرف صددر یلیل حطرت چی شورخ موڈ زا عطا مج بند یا کی رحمت اتکی علیہکی مارک ز بان ےک ہوئی 


0717 ص۳ -0) ۷۷۷۷۰// 





تضو رٹ )نشم شی اول رح ہک مھا ہرا نز نکی او مو جودہ مھا بی نظام 16 


ان پالڑ ںو یہاں ور نکمرنے سے مرا مقصمدصرف اورصرف بی بتانا۔ ےک نمرمعیاری مشار اورروُمپیروں کے پچھنرے میس نے 
کا مق لکوئی اج اتک عادشٹں سے بللیتضف اخنمقاداورت ہم پرقی او یٹپل سے پیا ہو نے از مرخ صروں پہاناےء پردورتارںن کے 
تی مشارخح اور اما ےج نے مسلما نو ںکوائس کے متعری جر مھم سے ین کین فراکی ے۔ 
اخ الا ماس عیدالتقادرا لاف ری ال عزفرماتے ہیں 
اتبع الشیوخ العلماء بالکتاب والسنة العاملین بھماواحسن الظن بھم وتعلم منھم واحسن الادب بین 
ایدیھم والعشرۃ معھم ءاذالم تتبع الکتاب والسنة ولاالشیوخ العارفین بھمافماتفلح ابدا. ٰ 
آجے 
تن کاب وسنت کے پپائل علا کرام اورشیبوخ کی جا دار یکردہ اوران کے ساتھ نین رکھوہ اوران سے د بین سیکھوء اوران 
کے تضورارب سے یی ل1 اوران کے سا میسن محاشریت اغخقیارکرو۔ 
ج بن کراب وسطت اوران مشا رع گرا ماد علا گرا مکوپی بک را نکی پبروئ ینمی سک ےگا و بھی بھی م راونس با تگا۔ 
(ا ال با ازالا ما پرالقاورا یلا ری اللرعد:۱۳۲۹)مطومفھر) 
اف مان شریف سے واج ہواکشخیقی مشا را وی علا مرا مچی ہیں ج بل ہیں- 
طحخرت سد نا دا زا عگی چو مکی رحمیۃ یڈ تھا لی علیہ نے اپٹ یکنا بکشف او رب ش ری فگھ جائل مار اورغیرمعیاری یروں کے | 
ڈبحل وفر یب سےلوگو ںکوہانے کے لئےاکھی سےا 
آب رت ادتقا بی علخ ماتے ہہ ں کہ ٰ 
اتاارہباب معانی اندرمیان ایشان مھجور گشتہ اندوایشان غلبه گرفته چنانچه اندفطرت اولی اھل بیت 
رسول الله تهبآل مروان . 
تمہ 
یی 1م اور رمعیاری مقار کا تخل ہوا ےک ہخیقی مخاغ رام اس موانشرہ یں مت روک ہہو گے ہیں یے اس سے سے 
وقت می ئل مردان نے رسول اڑپ ھک ی 1ال مارک کے س اج وکیا_ 
رکف ب انز دا ا صلی چو ےکی رحمتۃ ادتقا لی علی: ے٦٦‏ ) مطہو ‏ الوری الو یہ پبلشٹتگ ا ہور با اگتان) 
حضرت سید نم ردالف ای رحمتت تھا لی علیرد بین فرش اورجائل چییروں سے :ین کے ل جےنحبحمتکر تے ہو ےکھت ہی ںکلہ 
واکٹرجھلائے صوفی نمائے این زمانه حکم علماء سوء دارند فساد ایٹھانیزفساد متعدی است. 


۷ ھم 
مشنی موجودوز مانے کے !کشرصونی خما جال پیرعلا سوک درجہ رک ہی سکہ یرک مر بیدگی کےلمباس بی ا کا فرادگھی علا سو سے 
فمادگی طرح متعدی مر بے۔ 


۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81001171 





ری 


(اکتوباتامامر بانی بک پٹہرےم رجلا :نز ادل) 
ول 0 وووچظُ00سھ7] وا توا ری طر سے پل مرا ی یی مل ےکی بنیادکی دج جات یل ان کے گموٹ اوروگل 
وفری کوسب سے بڈارشل ہے ا سگھنا ئن کا دبا رکوتر تی درہنۓ کے لئ وو تو فکولطورھاستا لکر تے ہیں ء اور ہج صصوفیا کرام 
اد بے رگاند بین کے ان کے اہیے دورتا رس کی ز پان اورا صا رع کے نما الف کو اوک کے ان جم خوائد وعلا ء دکوام کے سا سے اسقعوال 
کر کے دموکہ دبینے ہیں اوران میس پتض ای ےبھی ہیں جو تو فکو اصل اسلا مم کرا یکو دیااورآخر تا کامیاہیوں محکاضامن 
تہ راکراپنامطلب لا لے ہیں ءاوریشحض چائل ان میس ای ےبھی ہیں جوحح تمقیدرہ ول کے متعلقہ فلا ولغ ی اورفیشی سلو کک اجمیت 
ےت اکا ار ال رگان سے منقول پححرارات ے( کلرنۃط ار ید برال بل ) کور برفلذ اتد لا لک کے١‏ نی دکا لن ضرا نکو 
سیاتے ہیں مال کے عو رتحضرت سید نا با یز ید بسطا ھی ممیت اش دتتعا ی علیہ ےم نقول سے 
من لم یکن لە استاد فامامه الشیطان ۱ 
جم 
جس سک ٗی استتاددرہخممانہہواس سکوگرا کم نے کے لئ شبطائن ال کا یڑاہو تا ہے۔ 
(عوارف المعارف از شہاب الد بن سروری: ۸ے ) مطبو کت رید بیکوگد پاکمتان) 
بی پیرو ںکی طرف سے بیگا کیو رکیا جانے والا تہ جم ٘ش لک یرد +وگاا کاپ شیطان ہوگا ایرپ نا ہٹس پرفرش .سے 
:اک شیطانع سے ہے ء اورأتض ہوشیاراورتفیات شزاس عم کے خی راز مشا رک ححضرت سینا جنید بخرادکی او رتضرت سد وب 
رن اتا لی لااو رححضرت سی نا س بی شی رح تھا لی علی یسل گان د بین سے منقول اہ س مکی عبارا تکا مطلب( مسن لسم 
یکن لە مرشد فمرشدہ الشیطان .) شی جس کا یرنہ ہوا سک پیرشیطان ہوگا یش ورک کے التااس ان پال رط لکر نے کے راج 
توف کو ہرایک کے لئ ناگز رقر لے آآۓے یں یئن بپرشد بد ردکرتے ہے ححضرت سی ناآمامر بای رم“ ارڈ تھا پی علیہ نے ال تے 
ایککتب بنا نف رید بخاری میں فر مایا: 
عبارت ملا حطظہ؟۶ 
فردائے قیامت از شریعت خوھندپرسیداز تصوف نە خواهندپرسیددمحول جنت وتجنب از نازوابسنته 
باتیان شریعت است انبیاء صلوات الله تعالی وتسلمیة کے بھترین کائنات اندوبشرائع دعوت کردہ 
اندومدارنجات بران ماندہ ومقصود از بعثت این اکاہرتبلیغ شرائع است . 
7ے ْ 








تن یکل قیا مس تکوش بجعت بک لکرنے با نکر نے کے تحلق مو مھا چاۓےگگااو تقصوف کے تل نیس بی جچماجاث ےگا ء جحشت ہیں 
دال بہونے اوران نم ۔ضجات پان کا مرارش اعت پش لکر نے ٹیس سے مات انا کرام کلہم السلامم جوقرا مکا کات ٹیس مت بین 
وق ہیں اما مشر وس تک دگوت د پت ر ہے ہیں او رجا تکا مد ایی اکا مش ر بجعت پگ لک نے بیس ہے اوران ہرگ بی و تو ںکی لعقت 


۱/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6610:2113]. 7 





رس 


جوچ3ّٰ٭ش سا 


( توبات اماممر پالی مو بفس ر۳۸ ءجل رہ رفتزاول ) 
ان لیا تک سم محاشرہ بیس پچھیلا نک اکوگی متقول ا تنظام بہوتا رعلا موق نکواس کیاکی اراس ہوتاء اور بن گان د بن کے سساتیھ 
عقمیرت رئے دا لوم دخوائ سکوانن ےآ گا کیا جا جا نذا نکی تخلات کے پنک ستقصوف چیپائل با مرا چیرکوسب بفرت شعن سکن ےکی 
جہار تکس یکون ہوثی لو لق بی کےا کا مکوسلوک ارادمتد پر گور ن ےکی یل جرات ضہ وی او رحب تعمقید ہوم لکی ذرضی تک گل 
تو فوضروری تر ارد ہی ےکی ہے مصرف شی رنہ ہوٹی ءعلاء ومارغ کا مواز نکر تے ہوئے ز گان د بین نے پاش عاما مکرا ‏ مکو پل تفاقی 
اولیا ءال لھا ے ءکبوکیہ تحفرات سور لپ سکی مور ہآ بی کر بہسہ کے مصدا تی میلیی ایم نیک وس 3را ےکی بناء برا نکی 
ولا یت یل شش کک یکو یکفیائش بی مشش رہتی اوراپنے مت وین اوراپنے پنے تین اورت ببیت پانے والوں کے میتی یب وضرشد ہو تے ہیں۔ 
بے ححضرتسدن محجدادال فا لی رت لد ایی علی نے فر 0 
پمرتعلیم ھم استاد شریعت استِ ءوھم رھنمائے طریقت بخلاف پیر حرقه پس رعایت اداب پیرتعلیم 
بیشتر بجاہایدآورد واسم پیری اواحق باشد. ٰ 
کے 
نز ینیم در ولا استماداورت ہب تک نے والا ربممانۓ ط ربق تگگی ہے ؛ لاف اس چپیرکے ج چیہ موی سے ہلھحطر انس نے 
یی دی ہے اس کے1 داب ذیادہ ےڈ یادہ ماما نے چا ہیں ءاوراس استا وگ جح نے ش رلعت پڑھائی ہےاگر پیردم رش درکا نام د یا جا تے 
وزیاد مزا سب ہسے۔ 
( کت بات اما مر بای ہمذ بفہس ۳۴۱٣ء‏ ضز اول ) حصہ چہارم) 
کیوکلہ ای استاد نے بی فو اے شراعت بڑحھائی سے اور ہی استتاد بی اس کار ہہ رش ریعت ہوالھذہ ااسے گیا پش اعت ۰ 
اوررببرطر یقت کے 
ال ملا کرام کے اولیا ءا ہونے می ںکوگی اختا یس سے یز پال علا کرام میس خی رمعیار یک یکو یکنائ یں ہے ہکوہ 
جب دو عالگم اور ہائل ہیں یی اپ یقت گکری وٹ یکی اما مو ںکو شا ءموما تا لی کے مطا ٹن صر فکر نے دا نے ہیں نذ پچ ری رمعیاری ہو نے 
کا سور ہونابی نافمکان ےجیک مشارئ اورپ شور ہو نے والو کی خا لب دادغب رسعیا ری جعترا رمشقمل ےاورجوائل کیبل جج سیار 
کے مطای کی ہاتے جات ہیں فذ و بھی پائل عالم ہون کی رولت ہی ںگو یا پائل اکم ہو ۓ اض رمعیاری پیر دمرشد بن ےکا سور اسلام 
ائیں ہے۔ ابی نی رمشار اد ری رمعیاری پچیرو ںکوا ےل فک رن ےکی دگدت دی ہو : 
اج الا ماس بدالتقادرا یلا ی نشی این دعنہ نے فر مایا 
تفقه ٹم اعتزل من عبدالله بغیرعلم کان مایفسدہ اکٹرمایصلحه . 
ھی 


۷/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6۵811121131 ..7 


( طللارل 


تضوروۓ ام ری اوع کی ما را نز نکی اورموجودہ لھا عی نظام 





رس 


پل پاصل الم بن جا 2اس کے بحا کو ش میتی ایا رکرنا ر0 70 کے الد اپ ی کی ماد تکرتا ہے اس کے باضحد ۔ سے 
پگاڑاورفسادا لک اصلا۔ےزیادہ ہوتا ےے۔ 
( تہ الا سرارالا ما نو رائسن لشتو بی رت الہ رتا لی علی:۰٣)‏ مطبوممصر) 
تحضر تی ال بین امن ع لی رمع الڈد تعا لی علیذریاتے ہیں 
فالعلماء ھم الآمنون من التلبیس. 
کم 
مس بھی شمیطا نکی ابس یمیس سےصرفعلا رکرام ب اطوط ہو سکتے ہیں 
۱ (التی حات ال مکی از امن شی اللد بن این عر پا رمد اللتقا ٰ علے( ۳٣۸:۳‏ امطبو بی وت نان ) 
ا عہارت نے معلوم ہوا تضررت تی ا گی الد بین این ع کی رمنۃ الد تما لی علیہ کے نز دب ک بھی معیاری مرشمدادرچ ہو نے کے 
ٰ لے الم پل ہو ناضردزی ہے ؛کیوف رک یکو بنانے کے لج اصسل مقصیدرائ| سک فری بکارایوں سے ین کے سا تھسا تح اسلامیاعقب رہ 
لک نکی اوراخلائصس پیرار نے کے سوا پٹ ٹین ہے 
خرت سینا مر دالف ای رحمت اتا کی خلیہ نے فر مایا 
استاد پیسربرائے آن غرض میگرند کەدلالت بشریعت نمایندوہبرکت ایشان یسروسھولت دراعتقاد | 
وعمل بشریعت پیداشوندآنکە مریدان ھرچه دانندکنندوھرچە محواهندخورندوپیران سہرایٹھاگرندو 'ز 
عذاب نگاہ دارند کە این معنی متمنائے محض است . 
7ے 
ىزئہی استادادریبراس لئ پھڑتے ہی نکش نع تکی راہ دکھداے ہ اواوا نکی برکت بت ےش ربعت کے لم ول حاص لکرنے میس 
سبولت او رسای وہ یراس نیس پکمڑاچا کہا سام بد ہد نے کے بعد چائز ونا چا ئ کنیٹ کے خی جو چا ےکمرے اورعلال درا مکی 
تین سے بغی رج چا ےکھا نے بکہ یراس کے لے ڈہال ہ نکرعذاب سے بانے یی رپ نے کا مقص می یج ینا رای خوا ہش کے علاوہ 
یں ہے۔ 
ٰ ) کوبات امام با لی ؛کتو بفم رام وفتزسوم) ح رشحم ) 
کیا لک ہم وجودہ دذر یں پچرکی مر یلک یکر نے وا لن ےترام کی الب اکخریت تما وریت ؛ بشحنیبت :قشمد بیت اورسبردرد یرت 
پفٹرکرتۓ ہو ئۓےنھی ںگلتی ءان مخارغ کرا مکا نام پیج کی ہجاتے ال نکی مرکو وتلیمات پگ لک ری ؛اسلام۷انساضیت اویلم ول کے ئے 
ان ممقدرسں ححفضرات کمن بیس ان کے سا تح موا قش تک کی ان کے اروپ مکردارد ہکمرال نکی طرف اتی بس تکیاسچاکی ماب تک ری نہ 
اص رف لوت وعل ربق تک بلہانسا فی تکیاچھی بی خدمت مو لی - ٰ 
سلاکل ار ہل یقت کے پذارگو نکی طرف ےش نیعت مقر الیم واوترا مکی ا لت الک ہا نول نے دیٹی عدادیس می مگیا 





۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 7211 7 


170 








تعلیم وت بییت حاصم لکر نے ا لے طا لب ملھو ںکوکو ٹہ منی اختیارکرنے وا انےدرویٹوں سے زیاد ہق بل انرام اورافط لق راردیا۔ 
کادرولیش ال با مد درس کا طالمب م۷ ٰ 

حضرت سید نا مجر دالف شا لی ریت اتا ی علیفر ماتے ہی ںکہ 
درتقدیم طالب علمان ترویج شریعت است حاملان موی سج سے آله 
الصلوات والتسلیمات بایشان برپاست . 
رجہ 





د بی مدرسہ کےطبکودرولیشوں پرمتقد مکر نے یی ش راع تک تر ورک ےک یھعقرات حا مین ش ریعت ہیں اورمات مصطذو یل 
کا خیا مان کے دم سے ہسے۔ 
ٰ ٰ (اکتوباتاما مر بای توب ر۴۸ دفتاول ) حصرروم) 
ٰ مشا رك کرام اورعلا کے ازم نے مس بذرگان دی کا فیصل یش ال علام وین اوران کے زرتلیم وت بت ظلباء 
کاجھی نانظانی مشارئ اور جج بروں کے متقا ئل ین ہے جو ہیا ہے خود لم پل ہہوتے ہو ہے لوت جین یکوجلوت پرتر بی دی ہیں 
اورعدہ لیم 7 سرسضت اع ڑکا کو در ےک کوٹ می اخوتیارکر لیت یں ورن ترمعیاری مشا رک اویل لوان حظرات کے 
بپچائسبثخاک راباغالم پاک“ 

کی وک عا لم ال سر بانج لیقین اولیاء اید ادرتیرالنا سم ن نع الناس ) کے مصداق ہیں اوران کر وق بت می 
علوم بے وا نے طااب کر تعری ترک رکے دربے ہو نے کی وج سے اگئے لم ٹیس ہو تے ہس تی پپرادرغرمعیاری مشا وںڑ 
ہیں ءلوگوں کےد بین دد جیا کے ین ہیں اورش بجعت وط ربق کی راہ بیس پگ دفماد ہیں ۔ تھا لی بین ان کےشرسے بیائۓے ۔ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81101 71 





ححضرت سیدر نات ال مم عبد انا درا پیا ٹی نشی انڈرعنہ 
کا سمل نہپ 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹ ۹6681117 71 





اچ 
۱ 


حفورفوٹ انلم زی اوح نکی ما را نز ندگی اور مو جودو ای نظام 


نیت جمال الد بن فا نلیا الیفد ادی لمت یں 

اوأبو صالح عبد القادر بن موسی الثالث بن عبد الله الجیلی بن یحیی الزاھد بن محمدالمدنی بن داود 
امرس الٹانی بن عبد الله الصالح بن موسی الجون بن عبدالله الخالص بن الحسن المٹنی بن 
الحسن السبط بن امیر المؤمنین علی بن بی طالب بن عبد المطلب بن ھاشم بن عبد منا ف بن قصی بن 
اکلاب بن مرۃ بن کعب بن للؤی بن غالب بن فھر بن مالک بن قریش بن کنانة بن محزیمة بن مدرکة بن 
إلیاس بن مضر بن تزارہن معد بن عدنان. 

مرجم 


722 














ٰ 








وہ الا عبرالقادررضی الد نمی شارت کے سے و ع دا وڈ ای 2 تے کی کے ئۓ ء وہ زار کے وم 


الد ی کے ٹج ء دو دا 2لا می ز کے ےہ دد موی عالی کے ے ء دہعمبدادالصاغ کے ےہ دو موی اون کے جج ہ و عبرالد ْ 


فیس کے بی ء دہ انس نامھنی کے نیے ہوو یخت سدناما تن کے بے رو وححضرت سینا ای ال تی نی بین الی طا لب رشی اللہ 
عن کے لے وو حضرت سید عبرالمطلب کے یٹ دہ ہاش کے بے ۷دوعبدمناف کے بے ووٹعی کے بے ۰د وکلااب کے ٹ 2.70 
مرکے بے ۱د وکحب کے بیج دولوٹی کے بے دو ضا اب کے ٹے ہ دہ فہر کے ٹٹۓے ٭ وو ما کیک کے ٹے ہ وق میس کے سے ہد وکنا تہ 
کے یی دخ یس کے یئ ٤‏ دو مد رک کے بے وو الیاس کے ہے ء وو معفر کے ہے ووغمزار کے جج ء وو مد کے جۓے ‏ وہ عرنان 
0 ٰ 


(دک اغ راودا لین یش اث عہل جال الین فا لگیل ن:۴٠‏ 


منقام ولا دت کے تلق امت جال الد مین الکیلا کیا ریان 

ھنا خلاف فی محل ولادته وتوجد روایات متعددة ءیمھا أنە ولد فی جیلان )تقر أ بالجیم العربیة کما 

تقر ا بالجیم المصریة فیقا ل لھاجیلان أو کیلان سنە(٭ ے ٥/ےے ٠‏ ۱ء)وھی تقع فی شمال إیران حالیاً 

علی ضفاف بحر قزوین ویقا ل أنە ولد فی جیلان العراقیة وھی قریة تاریخیة قرب المدائن ۰ کیلو متر 

جنوب بغدادء وھوما ترجحو الدراسات التاریخیةالحدیثة وتعتمدہ الاسرة الکیلانیة ببغداد. 

ْ حفرت اخ مال !لد مین 1کیا فی فرماتے ہی ںکححخرت اتنج الا ما معبدالتقادرا بیدا لی رشی ایند عنہ کے مقام ولادت کے 
متعلق اختلا ف ہے اورا تع لف روایات میا نکی جائی ہیں ء ان میس سے ایک نو بی ےک ان الا ما عہدالتقا درا للا ری 
ا عحنک دلادت پاسعادتجیلا ن' یٹس ہوثی ء میگ پا ز ان شی تی پٹ ھا جا جا ہے جیی اک مرک ز پان می شتیم بڑ ھاجا تا ے اس 
کو جیلا نع ہا کچ رکیاا ‏ نکہا جا تا ہے :آپ ری الد ح کی ولادت پا سحادت سنہ( ے۲ طس ے٭۱ء) یل ہہوگی ‏ اور ببعلاقہ ا ان کے 
شمال بیس بکرقزدین ک ےکنا رے پر دض ہےء اور پگ یکھاجا تا ےک ا الا ما معحبدالقا درا لی ری ند حن ہکا ولا دت ہا سعادت 
اس جیلان میس ہہوگی جکع رق میں وائح ہے ىہ بخداجلی سے چا لی سکلومیٹجنوب یں جودائن کے علاقہ ٹیل داػع سے ۔جد ید 








۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹ 1721773 |. 77 





ضورفو انم یی ان نہک مپاہرانہز ندگی او رم جودہ مھا دی ام 13 


موریینن اورمو ججودہ نما ندا نکیا شی جو بضداد می ںجلو وف ماے ا نکی بھی می راگۓے سے_۔ 
(حمز نع ےج اتا درا لیا کی شی ازذدعنتےخ 0007 )۱٢:۵‏ 
ایام رضاعحت میں روزہ 
وحکی عن أمه رضی الله عنھاء وکان لھا قدم فی الطریق اأُنھا قالت لما وضعت ولدی عبد القادر کان لا 
یرضع شدیە فی نھار رمضانء ولقد غم علی الناس ھلال رمضان فأتونی وسالونی عنه فقلت لھم :إنه لم 
یلعقم الیوم لە ثدیا ٹم اتضح ان ذلک الیوم کان من رمضانء واشتھر ببلدنا فی ذلک الوقت أنه ولد 
لاأشراف ولد لا پرضع فی نھار رمضان. ٰ 
کم 
ححضرت سی نما معبرالو پاب الشعمرائی رحمنۃ الد تھالی علیفر ماتے ہی ںکم ران الا ما عبدالتقادرا یلا انشدعش کی دالدہماجدہ ری | 
اٹ نہا فرمالی ہیں (اما ‏ شعرای رتمت اید تھالی علیفرماتے ہی ںکہ ماکی صاحبررنشی ارڈ دع نہ کا چھی عطر لققت میں بر امقا م تھا )جب میرے بے 
عحبہ اللقادرا ای پیدا ہے ف رمضمان ا سارک کے دن میں ددد یں پی ارت ےہ ایک بارآسمان بر بادل جا بل لک وجہ سے 
لوکوں سے رمغمان المبار ک کاچ خد ایل ہہ وکیا لوگوں نے بے سےسوا لکیا تق یش نے ا نکےکہا: رمضمان ال ار ککا چا زط رآ سکیا ان 
وہ میرے ہے ععپرالنقا درا چیا بی رش الندعنہ نے دود یں پیاسے ‏ مس جار سے یی بات سز یگ ین 22 
سادات ک ےگ میس ایک بنا پارا ہواے ججور ضرانع ا سارک یل دن کے وقت دود کال چنا ے_ 
(لوا رخ ال نوارٹی طبقات ا خیار عمہدلو باب بین نکی نکی :لہپ لیران ال شر ای ای (ا: ۱۰۸ 
ححضرت ان الا ماما لچ یلا نی رشی ال عنم والد بن 
أتخغ یم الصلا بی ریت ا تھالی عیفر ماتے ہیں 
تعالف من والدہ الذی کان مشھوراً بالصلاح والعبادۃ وحسن السیرة ووالدته فاطمة ام الخیر بنت أبی 
عبد الله الصومعی المعروف بالتقوی والورع وعمتہ التی کانت علی جانب کبیز من الخیر والصلاح 
وقد وصف الشیخ عبدالقادر الجیلانی بقوله :اشُلنی الله عز وجل ببرکات متابعتی للرسول صلی الله 
علیهە٭وسلموبری بوالدی ووالداتی رحمھما الله عز وجلء والدی زاهد فی الدنیا مع قدرته علیھا 
ووالدتی وافقته علی ذلک ورضیت بفعله کانا من اأُھل الصلاح والدیانة والشفقة علی الخلق. 
کے 
ات الا ما عبدالقادرا لیلاپی ریش انشرعت کو اہین والمد ماجر سے بببت الشتحی ہآ پ ری ارڈ دعنہ کے دالمد ماد ریت ال تی علی 
گی وعبارت ءز پر وق ی اورنسن سیرت میں شور تے؛ اورآپ رص الع ہکی والد ماجد و صحضرت سبید و ام ا شر ہت اوح بدایقر لص تی رش 
یھبا بھی ی ور مین شپو یں +اورامی ط رع اتل ماما یلال شی او نہک پچلویھیا جان نہایت کیک نا نہیں : 
3 الامام ا یلال ری ارد عنہخودفرمائے ہی ںنکہ بے اتا ی نے سو اریپ کی اتا ع کی برات سے اس اب٣‏ لنکیاے 


پمم 









تو رٹ امم یی ارح ہکی مماہرا نز نی او رم جودہ ممانقا ای نظام 4 
















اد رمیرے اس اما نکی وجہ سے چجو ٹیل اینے داللد بین کے سا تج ھکرتا ھا بییرے والمد ماچچدرشی ایل دعنردٹیاٹل بادجودفر رت کے ہر جھز ے 
منہموڑے رکھتے تھے )او رمیری والدہ ماجد وھی ھیررے اپاضمورکی موا فقق کر یعحھیں اوروالد ماجد شی الد عنہجوگگ یکر تتے تھے مال بی 
اس پرراشی ر ہیں ءالفرن لک دوٹوں ال الصلا ح وابل الد بات تھ اوشلق خدابر ہے شطیق سے ۔ ٰ 
رپ ایی لی لص یا(٢:۶٣۲)مطبوص‏ بروت ان ) 

دالمدہ ماجر و ری اڈ عنمانے بل رواش کے 
قال :وکنت أقعات ببخرنوب الشوک, وقمامة البقلء وورق الخس من جانب النھر والشطہ وبلغت 
الضائقة فی غلاء نزل ببغداد إلی ان بقیت أیاما لم آکل فیھا طعاماء ہل کنت أتتبع المنبو ذات اُطعمھاء 
فخرجت یوما من شدة الجوع إلی الشط لعلی اجد ورق الخس وو البقلء أو غیر ڈلک فأتقوت بە .فما 
ذھبت إلی موضع إلا وغیری قد سبقنی إلیە وإن وجدت أجد الفقراء یتزاحمون عليه فا رکە حباء 
فرجعت اأمشی وسط البلد ادرک منبوذا إلا وقد سبقت إلیەء حعی وصلت إلی مسجد یاسین بسوق 
الریحائیین ببغداد وقد اجھدنی الضعف: وعجزت عن التماسک,ء فدخلت إليه وقعدت فی جانب منه 
وقد کدت أصافح الموت,ء إذ دخل شاب اأعجمی ومعه خحبز صافی وشواء ء وجلس پأاکلء فکنت اآکاد 
کلما رفع یدہ باللقحة ان أفتح فمی من شدة الجوٍعء حتی أنکرت ڈلک علی نفسی :فقلت ماھذا. 
وقلت :ما ھھنا إلا اللهء أو ما قضاہ من الموت,ء إذ القفت إلی العجمی فرآنیء فقال :بسے الله یا ُحیء 
قاستعۃ فاقسم علی فبادرت نفسی فخالفتھاء فاقسم أیضاء فاجہتہء فکلت متقاصراء فأاخذ پسالنی :ما 
شغلک .ومن أین انت .وبمن تعرف؟ فقلت :أنا معفقه من جیلان,.فقال :وأنامن جیلان فھل تعرف شابا 
جیلانیا یسمی عبد القادر یعرف بسبط أبی عبد الله الصومعی الزاہد؟ فقلت :انا هو فاضطرب وتغیر 
وجھهه وقال :واللہه لقد وصلت إلی بغدادء معی بقیة نفقة لیء فسالت عنک فلم یرشدنی أحد ونفذت 
عقتیء ولی ٹلاٹثة أیام لا أُجد ٹمن قوتیء إلا مما کان لک معی. وقد حلت لی المیتةء وأخذدت من 
ودیعتک ھذا الخبز والشواء ء فکل طیبّاء فانما هو لک وأنا ضیفک الآنء بعد أن کنت ضیفی)؛ فقلت 
له :وما ذاک .فقال :امک وجھت لک معی ٹمائیة دنانیرء فاشتریت منھا هذا للاضطرارء فأنا معتذر 
إلیکء فسکتہء وطیبت نفسہء ودفعت إليه باقی الطعامء وشیئا من الذھب برسم النفقةء فقبله وانصرف, 
کے 
کیماتہ : 

ححضرت سینا مام اب ر جب سی ریت او دتھالی عیفر ماتے ہی ںک ات الا ماممعبدالقادرا یلا ری ارشدعنر نے فرمایا: جب 
یرک دالدہ ماجدہ کے درئۓے ہو تے پٹ نتم ہے یس سنرمے کے ملاش بیس در یائۓ دجلہ ک ےکنا رر ےکنزارے جا تا تھا ء کہ وہای سے 
کی نرک یا ددشت کے پت جا تی ناسل سے پیی ٹک پھوکض مکی جا کہ جب بھی مس سی طرف جا جات جھے سے پیل ےکوئی شہکوئی 
دا تق کا ہونا نہ می وائی ںآ جا تاء ایک دن مج مخت مو ککی فو جس جلت لت دریائۓ دجلہ کےکنارے جا یپا ٹیس نے دکیکھا کہ 


رف 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 1 711 717 


دی 


وا فقی رھ بھی پپیلے موجود ہیں تہ میس دہاں سے دا ںآمگیاا ورس یاین مس پھو ککی شر تکی وج سے وہاں لی گیا قریب 
تھ ایل مت کے من میں چلا جاولں- 

ىہ سس 
اس نے ج بی کی حاات زاردشھھی و بی بھی انس ن ےکھانے یش رکیک ون کیا دکوت دک ء ٹیش نے اڈکارکیانذ اس نے پھ راص را رکیاتز 
اس کے سا ھکھا نے یش یک ہوریالکھا نے کے بعدائس نے باقوں ہاو می ہج سے سوا وجو اب ش رو کرد ہے ءا کات ےکہا :تم 
کون ہو؟ اوھ اتار فکیاے؟ اور مکہاں کے رب ے وانے ہو؟ یس نے ا سکوکہا: مس جیلا نار ے والا ہوں اور یہاں "یْ 
ک9ئ2 ۲۴ پہ نہ پڑ نے آیاہوں ‏ اس ن ےکہا: ایگ و جوان چلال ینس کا نام عبرالظادر ہے اوروہ عحضرت سیدناعارف اللد ا 
اح ہار الص تی رمث اقترا لی نخلی کا فو اس سے ا سکو جا تن ہو؟ بیس ت ےکہا: دو میں ہہوں ء دو اس دفت بہت زیادہ پر بشان گیا اوراس 
کے چھرےکارنک بد لیگمیاء ان ن ےکہا: اتال لکیاضم اس جب سے بخدا ھی پہچچاہوں جوھصرے پییے پاس تھ ددچھی تم ہوسئ 
ادرین آپ کالوگوں ے إإ پارپاہرں اوراب ٹن دانع ہے یرے بے بھی تم ہو گئے ءا ب مھا ے ٹیوں ے یں ے اہ 
کھا ناخ بداے؟آ پکھا فیس مآ پ ایا کاکھانا ہے ادرشل ا بآ پ کا مہمائن ہو۱ ائس سے پیل ھآپ مہ رےم ہمان ے ؛ انس نےکما: ار 
ا پک والدہماجدوےآپ کے لئ 1ی ینارد یئ ہے :نو یل نے مچبورااس یل ےکھا ناخ براےء می لآپ سے مر ت خواہ ہوں 
؛ نے کے بصددہ امو ہوگیاءاو رین نے اق ہک ھآا ا سکی طرف بڑ حواذبااورسو ن کا ای ککگڑابھی ا سکولطورمفق کے دے دیاء جس سکواس 
ان ےو لکیااوردہاں سے چلاگیا۔ 

(ز یل ططبذات اکنا بل :من اللد لین عپدرالرنکن بنا بن ر جب بن 7 یءالپفر ادیء ھم الد نشتی یی ز )۳۰۳۰۱۰٣‏ 

3ی علام لھ یٹس الد ی نآبو بدا ڈش ری نآ مین عثان بن انا زالزتی (۶۳۹۰۳) ٰ 
تصول میک بک سے اہول ؟ ۱ 
وقال الشیخ محمد بن قائد الّوَانی -وسیأآتی ذکرہ فی ھهذا الکتاب :-کنٹ عند سیدنا عبد القادر - 
رضی الله عنه -. فساآله سائل :علامَ بنیت امرک؟ قال ::علی الصذق ما کذبث قٌطہ ولا لما ,کٹ فی 
المکتبء ٹم قال کن صغیرًا فی بلدناء فخرجث إلی السُواد فی یوم عَرّفةء وتبعت بقرًا حَرٌالةء فالضتث| 
إلیٌ بقوۃء وقالت لی :یا عبد القادرء ما لھذا خَلِقتَ فک ولا بھدا ارت افرجعث فَرِعًا إلی دارنا: ء رصَعڈٹ 
إلی سطح الڈارء ۂ فرأیث النّاس واقفین بعرفاتء فجنُث إئی اُیء وقلث ٹھا : مبینی للە عرٌ وجلٌء واڈنی لی 
فی المسیر إلی بغداد أشعغل بالعلّمء وازور الصٌالحین .فسالعىی عن سبب ذلک؟ فاخبرتھاخبریء 
کت 












ححفرت سید نان الا ما م رشح جن قائکدالا انی رت انتا لی علیفرماتے ہی ںکہمیش ححضرت سیی :ات الا ما معبدالتقادرا یلا فی رش 










وو امم ری اع کی مواہراشہز نکی ادرسوجودہ ما نقائی نظام 





ارح نرکی خدصت میں د جا تھاء ایک د نیا ن ےپ ریش اللعنہ سے سوال اک ہآ پ رش ال عنہ کےا مرک جنیادکس چتیز رر اگئی ے؟ 
2اچ ال ماما یلان شی ال رعنرنے فر مایا ہک رمے امک جیا مدق پر دش یگئی ہے بی نے بھ یب یکمذرب میانی ےکام میس لیا۔ 
ایک دنا کے دن می کین میس ایک پار ہل میں لاعت ایک کیل کے جج ج یجول پا تھ اکا سکیل نے مر ی طرف دک 





مو 


ک رکہا: ا ےمبدالقاد اخ مکواس کے لے پیدائئا ںکیاگیااو رنہ بی ت مکوائ اعم دیاگاہے ۔فذ یں ڈرگیاادراٹ ےگھ کی مت پت ڑم گیا 
پش نے ای ےگھ رکی حمت ےے مرا نعرفذات می یٹ ہو ئۓ حا جیو لکود یکھاء اس کے بعد یس نے انی والعدہ ماجیدہ شی الڈعنہا کی 
خدصت اقدس میلعت لک :کہآپ جشھے اتی کے راہ یش وق کفکردمیںءاور بے بخداد جال ےکی اجازت عطاظمانیں۔ سکیٹ دہاں 
اعم د بین حاصم کون ادراڈ تی کے کیک بندو لک ذیار تکروں- 
آپ ری انف دکنہانے بج سے ای نکا سبب در یافت فر مایا: ٹس نے یل والا قص گر کیا آپ شی ارلدعنہاکی مب ر ک1 مھوں 
میں1 نے 
( رآ ال مان نی نوار ق0 عیان :شس الد مین)بوالمظر لسف سپط ابجن اجوزی):۸۱:۳۱)) 
(حات الا تع العلا یبدا لگن چا ؟ ھی ہمت ائلدتھا ی علبفارکی :۳۷۸)مطومراماں) 
سفرافدادیڈی سے جگو یکی برک تکاظہور 
قال الشیخ عبد القادر الکیلانی رضی الله عنه بدیت أمری علی الصدق وذلک آئی محرجت من مکة 
لی بغداد اطلب العلم فاعطعی امی أربعین دینار! وعاھدتنی علی الصدق فلما وصلنا رض ھمدان 
خرج علیعاعرب فأخذوا القافلة فمر واحد منھم وقال مامعھک قلت اربعون دینارا فظن آنی أھز ا بە 
فصرکنی فرآئی رجل آخر فقال ما معک فاأخبرتہ فاخذنی إلی کبیرھم فسالنی فأخبرته فقال ما حملک: 
علی الصدق قلت عامدتنی أمی علی الصدق فاخاف ان اون عھدھا فصاح ومزق ثیابه وقال ألت ۰ 
تخاف ان تخون عھد امک وأنا لا ماف ان اخون عھد الله ٹم أمر برد ما أخذوہ من القافلة وقال أنا 


تائب لله علی یدیک فقال من معه أنت کبیرھم فی قطع الطریق وأنت الیوم کبیرنا فی التوبةفتابوا _| 


مہم 

اسم الا ما معبدرالقاددا یلا لی ر٘ی الشدعن فرماتے ٠ی‏ نک میہرے معامل کی یادی صرںل پر کی ےء) مل جب جلان ے 
وی عکم کے لئ روا ہوات میری ماں نے بچھے چس دیناردتۓ تے اوریوعدولیاتھ اکم نے بی ولناے ء جب اہم ہعدران سے 
تو عحر بقزاتوں نے یں پزلیاءای مر ے پا ک اپآ یاادراس نے ج]ےکہا :تھا رے پا لکیاہے؟ نو بیس ن ےکہا: میہرے پا 
7 لد بنار ہیں ؛ذ اس نے یھ چچھوڑ دبااور مچھا اکہییل اس کے س اھ برای رد اہوں ار یش ایک اورآ یا اوراس نے بھی جج ے 
بچی سوا لکیانو شش نے ا ںلڑٹھی دی واب دیا ءال نے مھ پڑاادرا نے سردار کے پا لن گیا اس نے ہج سے سوا کیا تھا رے 
پا کیاہے؟ نر نے ا لکوکھا: مہرے پائس الس دیناد ہیں مق یش نے ا کوک لکردیھاد ےمذ ال نے بت سوا لکیا :کرت 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 






رن 


نے ال اکیو ںکی ات مھ نہ بات و محھارے پییے پا جاتے ؟ نذ یج الا مام ا انی ریش الد عنہ نے فرمابا: جب ٹیس اپ ےگھع سے 
لا مان میبری مال نے بج سے پ لیا ق اک رٹیل پیش بی بی پولو ںگاء اور یھی خوف موس ہواکیےکہیں مال کے ساد کے ہوئے معاہرے 


تضونوٹ )نم شی ال رع یمیا انز ندگی اورمو جودہ انتا ظام 











ٹیس خیاقت نہ ہوجاے اس لج شس نے م کہدیا۔ اس میسطناتھاکرال چوروں کے مردار نے اہی ےکپٹرے پھاڑ لے اورز ورز ور سے ْ 


رونے لگا اور سے لگا: می بچراپتی ماں سے ۓ وعد ہک خلاف ورزئ یی لکرتااوریش ہو ںمکاپے رب سے کے ہوئے وع ےکونوڑ 
ربا ہموںء اوران لن ےکا: اےگپرالقادرا یلا !یں جر ے پا برا برک رتا ہھوں ناس کےسا ھھیوں ن ےکہا:ج ب ہم ڑ کشا کر ۓ 
نو اس وش ت یھی نو بی ہمازامٹ اتھااوراب | گرم نےتو مکی ےو اب ری بما زا داےە لئ کک دو سار ےل کر نے گے وو 
سای الا ما قد القادرا یلا نی شی اش رنہ کے ہو لن ےکا کم ت گیا ۔ 

زنر" مالس وت لعفائں پدا یع یع بدالسلا الصقو ری (ا: ) 





آب ری الع نپانے جب رت ضید نات الا ما مبدالقا درا یلال شی ا لدع کو رخست کیا اس کے بعد ا پک ما ت 
اج یلان لے ہوئی ے پانہیں ہوئی ءااس کے تحلق علا تق نکیخطلف الا راء ہیں ۔سب سے بیلہ پم پ ےک رد کا ح ہت 
کا نکانظریہ یہ ےک ران الا ما محبرالقادرا یلا فی نشی الڈرع کو جب والدہ ماجدر نے رخصس تکیان فر اماتھاکہ بنا! قیامت کے دن ہی 
میں کے ساورائ کے بدا نکی ملا تس ہوگی او مان یتر کا صا ش ربی کیل میں بی ہوا۔ 
ای 1لا ام دنن جا رم اتال عليانظر۔ 

جب حعرت سید ناخ الا یا مکبرالقادرا دی زی دنر تا ےا لاجد :سےا مےتول لم کے لے جنے گاجازت 
طل بک نآ پک والدہماجددرشی اڈ رعتان ےآ پکواجازت دی ہہ مے فرمایا: 

اے فرزند! بر وکه برائے خدای تعالی از فی وتاقیامت روی ترانخواھم دید. 
02 ٰ 
اسےصضرے ‏ ای ستھھارکی جدائی الل تھا لی کے لے جگواراکرنی ہوں اوراب مس قیامت کے دن تک تیزاچ یی دلو کی ۔ 











۷۸/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 7 211 71 


ات الال از علا موا نا عب الکن جا فی:۳۷۱)]ْ 


ماما نج رحستملا فی رم ئل تھالی علیفرماتے ہیں 

ٰ ان الشیخ مفرج بن شھاب رحمة الله تعالی عليه کان فی مجلس الشیخ الامام عبدالقادرالجیلانی رضی _ 
الله عنه وھو یعکلم ء ء فقطع کلام ودمعت عیناہ وقال : ماتت امی ‏ قال الشیخ ابن الشھاب فار حناہ 
فجاء الخبربعدمدة وت سس الوقت . 


تھے 











اٹ الما مضرج بن شہاب رم تھی علفراتے ہیک یش اخ امام ممبداقادرا یلان یی اش ع یی میں تھا کہ 








079 





ا کآ پیش الد عنہرنے دعظظ روک دبااوردردد نے گے اورف ما کیرک داللدہماجد انقا لکرگئی ہیں ۔ ہم نے جار لی ء جب ایک 
مس تگز رنے کے بح گیا نع ےر کی تو ہا لکل دبی وشت تما جب ام الا ما ا یلا کی شی الشدعنہ نے بتایا تھا- 
ٰ اتحاف الاکا بی سیر ومن قب الا مام مکی الد بی ن۔عبدالقاد رن عبدا یر بن طرال نگ :۱۹۷) 
ان دونوں روایچوں سے و معلوم ہوا رہ ےکا الا ما ممبدالتقادرا یلا لی ری الشدعنہ جب سے بفد ا٦ل‏ یآ ہیں اس کے بعر 
اہی دالدہ ما جدہ ےی لے جم رصشققین محاص ری نکھت ہی سک ہآ پ رش انڈدح کی والمدہ ماجدہ یخدا٦ی‏ آ یمیس اورآپ کے سا رج 
یں بھی سا ہیں ۔ دوس ری جمانعت میں س ذہرست مجح ال کور فا کیا نی ہیں -۔ 
یں یں نی کالظ --٦‏ 
وتوکد المصادر والمراجع ء انھاسفرتان لاواحدة ء وکانت بقصد اداء فریضة الحج ء وقد کانت الحجة 
الاولی سلة (۹ ۵۰)) وفي(ھ4االتعقی الشیخ عصدی بن مسسافسر واماالحجة الثشانیة فکانت سنۃة ) 
۵وَ وفھاالقی بعدة شیوخ من ابرزھم الشیخ ابی مدین شعیب وغیرہ من الاعلام ‏ وکانت برفقتہ 
والدته وقال اللشیخ الامام عبدالرزاق بن الشیخ الامام عبدالقادرالجیلانی رضی الله عنه لم یحج والدی 
رضی الله عىے بعد ان اشتھرامرہ الاحجة واحدة وکنت فیھاقائدزمام راحلته ولم یعرف لشیخ الامام 
عبدالقادرالجیلانی رضی الله عده غیرھذہ السفرات وبعدھاانقطع للعدریس والوعظ والارشاد . 
پر ہے 
ا جال الد بین فا الکیلا پی بیع ہی ںکرمصہا دروصرائقع سے بی بات معلوم ہوئی ےک انج الا مامبحبدالقا درا یلا لی رشی اللہ 
عضردیارمقدس ایک پارال بل دد ہار گے ہیں ء می بارسنہ(۵۰۹ت- ) یش اوراس سف می کپ رشی الف دعنہ سے امت ال مام دی بن مسافر 
رت ابشدتعالی علیہ سے ملاتقات ہوگی اوردوسریی ہار ری سنہ( ۵۵۵“ ) نم سکیا اوزاس سفربیس امم الا مام ابو ین شعیب المفر ہی سے 
لاتقات بہوگی (اورانہوں نے ات الما مکبدالقاورا یلا کی شی الشرعنرے اجازت عد بی ٹکا شرف پایا) ادرائس سفرمیں ضرت سید مغ 
لا ام بد القادرا یلا لی شی ایل دح نکی دالدہ ماد ھی سا تی میں ہ امت الا ما عبدرالرزاقی رش ادشدعنفر مات ہی نکبھہرے والد مداخ 
لا مامالھیلاٹی ریش ال عنہ نے اپٹیشہرت کے معدصر فیک جکیاہے اورااس رن می لآ پ دی ا دحنہکی سوا رکیاکی مہا ربصرے پا یل 
7 
اوخ واج کیل نی کیعت ہی ںکححضرت سدہا ات الامامالبیدا لی شی انح ہکی مبارک زنک یکا اس کے علاد وکوئی سف ہیں ےبھی 
ثا بت کیں ہےء اس کے بح رآ پ ری اد عفہنے اہی ےآ پکونر ریش وعظ اودلوگو لک رشدو رایت کے لئے وق فک رمیا تھا۔ 
(جفرافیت الازالاشہب از اللرکتور مال الد سن فا رخ گیا )۳٣:ٰ‏ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 1 077 





تضورفو "الم 


شال م براقا درا لی ری الڈرع ہکا ٹن 


112 پیراہوا ْ 
قال اشع الگام عیدالادرالجیلانی رضی اللہ عنہ کت صغیراً فی اھلی کلماھممت ان العب مع 
الے تا و سی سس سس سب 
کر کے 
اخ ام ا براقا دا یلان شی ا ذف باتے ہی ںکریش جضسبارۓ ینےگھمر ر تنا نھاادرم رای نکاز ار اجب بھ یکھیل ہکا ارادہ 
کرتتا نمی لیکو کت ہو ستا: :اے کت دانے !یس میں ڈر جات اورک مکی طرف دوڑتا ہوا آ 7 اوراپ ےآ پگوا پچ دالدہماجد ہل دح 
شس گرادیتا۔ 


شی ا عکی موابرانہز نکی اور مو جودہمانھا بی نظام 479 





(اتحاف الا کاچ ثی سیر دمنا قب الا مام نی الد مین عبدالقا دن عمبدا لج ربن طالنی 7 
و الدردے ۱ 
قیل لشیخ الامام عبدالقادرالجیلانی رضی الله عنه مٹی علمت انک ولی الله ؟ قال : کدت واناابن عشر 
سنین فی بلدناامحرج من دارناواذھب الی المکتب فاری الملائکة علیھم السلام یمشون حولی 
فاذاوصلت الی المکتب سمعت الملائکة یقولون : افسحوا لولی الله حتی یجلس . 
أٹغ الا ما حم بدالقادرا یلان شی اللعنہ سے دد اتک یاگ اک تحفرت ! آ پکوکب_لم ہوک ہآ پ اقدتخا لی کے وک ہیں ؟ آپ 
شی الیل عنہ نے فمایا: ری جب جرد سا لک اھ تو یں اپ ےگ رسے بدر سک طرف جا جا تذ فرش سراتحدسم تحت تھے :ا ورس لاکن 
کود یک ھاکرتاتھاء جب میس درس می لپ جا تا تو لا کرام پچ کوک ےک ارڈ ای کے دل کے لئ ہہیا دو دہ بیلیگیں_ 
(فائکداچوا رما ماممئھ منص الزادنی )٣۹٣:‏ مہو ال الا مع ر) 





اک ابدا لک چتی نگوکی 
قال الشیےخ الامام عبدالقادرالجیلانی رضی الله عنه مر بنایوماً رجل ماعرفته یومئذ ء قال سیکون 
لھذاشان عظیم ء قال الشیخ الامام عبدالقادررضی الله عنه ٹم عر فت ڈلک الرجل بعد اربعین سنة 
فاذامومن ابدال ڈلک الوقت . 

ہے 





ان الا ما مکپرالقادرا یی شی اوٹ ح نف ماتے خی ںکیگیلا ان ٹل ایک دن ایک بز رگ مسرے پا سکم رےانہوں نے بے 





۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 66010:21131 71 





تضو نے شی اع نہکی ما انز می اور مو جودہ ماْقا بی نظام 


دک یوک رف مایا سی ہج ےکا ایک بہت بٹ کی شمان ہ گی تب میس ا نکونیس چیا ا تھاء پچ کے اا نکی پچیان ہہوئی جب جا لیس سال ہیت گے دہ 


اکیاوثت ےابرال جھے-_ 


(تحاف الاکابرفی سیر ومن قب امامام شی الد ین ‌عبدالقا دن عمبدا لیبن طال دی :ے۱۹)] 


تن فینصت تع رفا ت کا فا زا 


ا الا ما م بد اللقا دز لجیلاپی ری انشدعنفر ما تے ہی ںسک می یک ارک کی جچت 77 اث یٹس نے د یھ اکمیدرا نع رذات ٹش 


رو 


ا خحکرامکھنڑے ہیںء یس یچ ات ااد رٹیل نے اپتی دالدہ ےرت شکا: 
انی اری المسیر الی بغداد لاشعغل بالعلم وازورالصالحین . 
ےے 
یس بفدرادکا ف رک نا جا تا ہول اک یش ہا مک د بین حاص لکروں اورائڈدتھالی کے اولیا کرام مکی ز یار تک وں- 
( اکر الچواہرل ما سیھب ٗی التادٰ:۵٦)‏ 





ورانطال بی تمالا ام ہلازا ہلاٹی شی ال عن کےا رات 


اح یت لی ٹگآوری 

قَال ابِن نجار فی (تارِیِٔی دٌخل الشیٔخ غَبُ لاجر بَعْدَاد کی سَْلِثِمّان وثمَاييْنَ اعم مائةء َعفقة عَلَی : 

بن غَقِيْلء ابی الحَطٔاب, وَالمُحْرَیِیٰ؛ وأ بی الحْسَیْنٍ بنِ الَْوٌاءء,ء حَتی اَحَكَمَ لْصْرلَ 05" 
وَالخلافء وَسّمع الحَِیٔك, وَقرَا الادبَ عَلَی ابی رَكَرِیا الْبْرِيْرِیٔء وَاشْتَعَل بالوعظِإِلَی أنْ برَر فِيْهہ تُمَ 
لام العَلوََ وَلَْاصَة وَالمُجَامهذَة وَالسیَاحَة وَالمقامَ فی الخرَابِ وَالصٌحراء) وَصَحبَ اللَبَاسء تم إِنَ 3 
الله أَظْهْرَ لِلْعَلی, ء وع له القبول العَظیْم, ء قد مَجْلِسَ الوعظ فی سَنة إِخُدی وَعِشرِِنَ وَاظهرَ اللہ 
ال حَکُمَة عَلی لِسَاهء؛ لم كرّسَء وَأَفتَیء َصَار يَصَد بالرََارَة َالنڈُورء وَصَنْف فٔی لاصُوْلِ َالفرُوعء وَلَه 
کلام عَلَی لِسَان مل الطٔرِيقَةِ عال. 

تم 
امام الرئی رحمیۃ اللد تھا ی علیرفر مات ہی ںکہ اخ این انار رہمت الد تا لی علیہ نے اپنی جار می سککھا ےک امت الامام 
عھہدالقا درا یلا لی ریشی ابشدعنہ پخدراؤسح٦ی‏ سنہ( ۴۸۸ھ )می لئے آآپ ری الف عفر نے امن یل ء ابو ا نطاب ۰ بی ءابوائسن بن الفراء 
یت اتا مہم سےعلم فقہ پڑھاء یہا ںج کک علوم یس اوراصول وفروع یس شارت تامہ حاص لک ؛ حدیٹ شرلی فکاسا ان 
الو زکر ا امتمر بیز رت ارڈ دتتالی علیہ ےکیاءبچھروعنا یش شمخول ہو گے ہا لم کک ہآ پ یی اد دعف کے وخون کا ہ رط رف نحلفلہ بلندہوگیا ءآپ 


۷//۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 10 7211 71 





حضورقو تنم زی اوح نکی مواہرانہز مرگ اورموجودہمانھائی نظام 





شی او عنر نے خلوتشھنی :عیاہرہ رسیا حتکولا ز مکپلڑااورنگلوں اورسھرائوں میں ر نے گے ۔ پچ را حمادالم پا رحمت اتی علی کی 


صحبت اخقتیارکی ء پیھ الد نما ی ن ےآ پکوغلبہ دیاءلڑگوں ںول عام حاصل جوا ءآپ دشی ااشدعنہ نے سنہ (۳۱ھ۵ تہ ) می سس وعظ 
معقرفرمائی ء اللہ تھا ی ن ےآ پکی مارک زان پرححمت کے چٹے جار فرمادۓے :آپ در بھی د اھر تے ادرف کی بھی دینے جے 
اور ہا لک ککیبت سے لو کآپ رش الڈدع نکی زیارت کے لئ نے گے اورنز رانے شی کر نے گے + اورپ دیشی اید عنہ نے 
اصول وذ وع می سکتت یت یف اتی ءال عل یقت بان شی ںآ پ دش اللع کا کلام بلند پابیشا نکاعالٰٛے۔ - 
(سیرآعلام اغڑا ونس الد نال وعبرانڈ می نم بن عثالن بن کائما ز ای گی ( ٣۰‏ ۲۳9) 
زانۂطال بک می فا سے ہوتے تھے 
5 بن لجا : کب إِلی عَبّد الله بن بی الحَسَن ابی قال :قال لی الشیٔخ عَبّد القادر گنت نی 
اشحر رز ھی لوا قال لی کیل لئأُر حم اقعرِض مَا تَسُععینُ ہو عَلَی طلب الف 
فَقَلْتُ :كٴیٔف اقعرض وانا فقیر وَلاٴوَفَاء لی؟ قّال اقعرِض وَعَلیْنَا الوَفاءٴ ۱ قَاتیثٗ بَقالا فَقْنّتُ :تغاملبی 


ٗی 


بشَرٌطِ إِذَا سَھِّل الله اغطیتک, َإِن مُت تَجعليی فی جل تَعطیَبی کل يَوُم رَغِْفا ُا َرشادا .قبَکی وَقال: 
انا بُگیک فَأححدث مِنْه مُقَةَ فَضَاق صضذری؛: فَاطْن اه قال :َقِیْل لی :امضِ إِلی مَوّضضع گڈاء ای 
شیٰء _رََبْتَ عَلَی الڈگةء فَحْذْهُء وَادفغۂ إِلَی البَقال قَلمَا جئٔث رَأَیْ قطعة دَهب کَبِيْرَةَء فَأَعَطينهَا البقَلٰی. 
بر مہ ۱ 

اش این شارت ال تھا ی علبیفرماے ہی ںک بے اج عبدا جن ابواسن الچبائی رم انتا ی لی ن ےکا ےک بے اشن 
لا ام برالقاددا لاٹ شی ابشرعنرنے فرمایا:یٹس ج ٣لم‏ فقہ ھا تاب می لصا می سکھومتار بت تھا اس وقت ٹیل فا تے سے ہوتاتھاء 
یگ تی نے دریکھا یں تھانے بج ےکہا :تم فرس نے لو جس رت عکم تہ ماضص لک سوہ یس نے ےکہا: میں لو یہو ںکے 
اداکروںگا ؟ اس ت ےکا م نےلواداک نا ہمارے مہ سے ۔ میں کرد ای ےس رکیا فرش کے ا ںآ یااورائ سکوکہا: می رےساتحغم معاطمہ 
کرلوہ دو ےک ہاگمر اد تھا کی نے1 سای پیدراکردی و می لک مکودے دو ںکا آری وے ض52 موا ن رر بناء گے روزانہ 
ایک روگ اون ری دے وی دہ دہ بقاٹی رو نے گا اوراس ن ےکھا: جو جنا بکاعم ہوبیل ا ۓےکوتیارہوں ء یس ٹین اس سے دوٹیال 
۱ تار ہا لک کک ایک دن می راسینہ ہت ز یادونگ ہواء ٹس نے ےگما نک کہ ےوک یکہرد پا ےکم فلال جچکہ الد ال برسدن ےک ڈ 
7 کیاے دہ ےےکواوریین رک فرش شکودرے دو ہس یل دہاں سے رواشہہو اجب وہاں الو ٹیل نے وہاں سو ےکا بت بڑ اناد بیکھاء| 5 
کواٹ یں نے اس بقا یکورےدیا۔ ٰ 

ٰ ٰ ( یلام نبرا ۲ ٹس الد لین پوعبدارڈش رب نب نخان من انا زالذگی (۱۸۳:۱۵) 
(ز مل طنقرات الحنابلد لن الد من مہدالشلن ب نا بن ر جب بن اص السا ئیءال بد اد ی شر ال مشتی را کععلی )۴۰٠۳.٣٣(‏ 





0017 غفطت ۷۵۶۵810721 ۷/۷۷۷۷۰ 





تضورنوٹ )کشم شی انہک میا را نز نکی اورسو جودہ انا ہی نظام 


جو نکا طاری ہونا ُٰ 
وَلَحقَبی الجُنونْ مرٰةٌ وَحْمِلَث إِلَی المَارستانء فَطَرَقَعبی الأخْوَالَ خی سَىبُوا نی مُء وَجَاؤُوا بالگفنء 
وَجَعَلونی عَلَی المُغْتَسَلٍء مس وَقمُثُ, 
کے ْ 
لسوت نینج رجہ وت ضای ۰ و تی را 
ٹیس ایک جنون طارکی ہگیاءمشھے مارستناان نے گے ء گرا ےس عالمات پدا مد ۓےک لکول نے بے مب تممچھاء یہا ںک کک د ہکن نے ے 
وادر ےسک دنن کے لئے ان ہویں نے میت وا نے مخت پر لیشاد یا ءچھرا اتک ہیی طبیحعت جم لکئی اور بیس اط کٹراہوا۔ 
(سیرآعلام الخطاء تس الد می ناوک بدا شرب نج بن عفان بن کائماز ال گی (۱۸۳:۱۵) ْ 
(ز مل مات انالد من اللد ین عہرا ین نا مم بن ر جب اں (م۰۳:۳) 



















تصولیعم بی ںختا نجھیلنا 
فکنت اشتغل بالعلمء فینطرقنی الحالء فاخرج إلی الصحاری لیلا أر نھاراء فاصرخء وأهج علی 
وجھیء فصرخحت لیلةء فسمعنی العبارونء ففزعواء وجاء وا فعرفونیء فقالوا :عبد القادر المجنونء 
آفزعتناء کان رہما أغشی علیٔء فیغسلونیء ویحسبون آئی مت من الحال العی تطرقنیء _ 
7ے 
حصقرتسید ناما ان رج ب سای رم“ الیل تھا لی علیر مات خی کہا الا ما مبدالقا درا یی شی انشرعنہ نے رمیا ما 
عاص لکرنے میس شفخول ر ہاء یھ حالات نے بیہا تک تاہیاد ہا اک ہی محخراؤ ںکی طر فپئل جا جا تھا بھی را کون بھی د نکودہاں میں ا ّ 
تار تا تھاء ایک پارجش را تکوزورزور سے چ رہ اتھا قاکہراگیروں نے ےکن لیا نذدہ ٹون گے ؛ جب میرے پا لآاتے فو انمہوں نے بے |< 
پیا نلیا ءانہوں نے بی ھےکہا: اےعبدالقاد نو نٹ نے پھمکوڈ رادیا۔ 
ات ال ماس براقا درا پیا فی رش الڈ عنہ نے فرمایا کی ارم رے سا ت الما ہ اک ہہ پٹشی طارکی ہوگئی لوک بے میت بھکرسل 
دن سگگت ء ای اپ حال ھی بجھ ہیکز رے ہیں یی ان عالات می ھی بیس ن ےمم دبین حاص لکیاہے۔ 
(عل طبقات التا بل :ز من اللد گن پر الین بی نآ مم من ر جب! سور ۳) 
(سرآعلام الطا مر :شس الد می ناویح بدرایڈشھ بن امن علثان بن اما زال زی (۰٣:۳۹م)‏ 
رت تیاکش لکر بی حاصل ہوا ہے اگ رآ رج ہمارے دور کےطاہ اےکی کے یچ بی ےکر اورقرے دب با یھ کیم یلم دن 
حاصل نکر یں اجچنائی افو ں کا مقام ے۔ ْ 
ان نے جرح زا شرے 
|قال اوکست أقعات بخرنوب الشوک, وقمامة البقلء وورق الخس من جانب النھر والشط ء وبلغت 
الضائقة فی غلاء نزل ہبغداد إلی ان ہقیت أیاما لم آکل فیھا طعاماء بل کدت أتتبع المنبوذات اأُطعمھاء 


835*60601007 +71 





رہن 


فخرجت یوما من شدة الجوع إلی الشط لعلی أجد ورق الخس وو البقلء او غیر ڈذلک فاتقوت بە .فما 
ذھبت إلی موضع إلا وغیری قد سبقنعی إلیه وإن وجدت اجد الفقراء یعزاحمون عليه فات رک حباء 
فرجعت أمشی وسط البلد أدرک مبوذا إلا وقد سبقت إلیەء حعی وصلت إلی مسجد یاسین بسوق 
الریىحانیین ببغداد وقد أجھدنی الضعف:؛ وعجزت عن التماسک, فدمحلت إليه وقعدت فی جانب منه 
وقد کدت أصافح المرت: إذ دخل شاب اأعجمی ومعہ خبز صافی وشواء ء وجلس یأاکلء فکنت أکاد 
کلمارفع یدہ باللقحة أن أفتح فمی من شدة الجوعء حتی أُذکرت ڈلک علی نفسی 'فقلت ماھذا۔. 
وقلت :ما ھھنا إلا اللەء أو ما قضاہ من الموت, إذ العفت إلی العجمی فرآنیء فقال :بسے الله یا أمخیء 
فابیتء فاقسمغعلی فبادرت نفسی فخالفتھاء فاقسم أیضاء فاجبتەء فکلت متقاصراء فأمحذ یسالنی :ما 
شغفلک .ومن این األت ,وبمن تعرف؟ فقلت :انا متفقه من جیلان .فقال :وأنامن جیلان فھل تعرف شابا 
جیلانیا یسمی عبد القادر پعرفٹ بسبط أبی عبد الله الصومعی الزامد؟ فقلت :انا هو فاضطرب وتغیر 
وجھہء وقال :والله لقد وصلت إلی بغدادء معی بقیة نفقة لیء فسالت عنک فلم یرشدنی أحد ونفدت 
اعقتی, ولی ٹلائة أیام لا اجد ٹمن قوتیء إلأ مما کان لک معی؛ وقد حلت لی المیعةء و أمحذدت من 
ودیععک ھذا الخبز والشواء ء فکل طیبّاء فإنما هو لک وأنا ضیفک الآنء بعد أن کدت ضیفیء فقلت 
له وما ذاک .فقال :امک وجھت لک معی ثمانیة دلائیرء فاشتریت منھا ھذا للاضطرارء فأنا مععذر 
إلیکء فسکتەہ؛ وطیبت نفسہء ودفعت إليه باقی الطعامء وشیئا من الذھب برسم النفقةء فقبله وانصرف. 
7مہ 





















یت سینا ما بن ر جب می رت انتا ی علیف ماتے ہیں ران الامام۶پرالقادرا بیلای رنشی انل دعنہ نے فرمایا: جب 
میری دالدہ ماجدہ کے د ہے ہو ئے نتم ہو نے یل سہنرے کے لا میس ودیائے د لہ کےکفار ےکنا رے جا تا تھا ء اک روہال .سے 
اکوئی نر ناس کے درخت کے ہے ئل جا تی اس سے پہی کی لوک مکی جا ےہ جن ب بھی می لی رف نا جا تو بھ سے پی ےکوی نہ 
کوئی دہاں کچ کا ہوتا میس دا لہ ںآ جا تاء ایک دن بج ےنت مو کک فو بس یلت لے دریائۓے دجلہ کےکناررمے جائہانھ ہیں نے 
دی اکہوہا لق رھ ےس ےبھی پل موججود ہی ں نو ٹیس دہاں سے والہ ںیا او سد باسٹین می سبپلو ککیا شر تک وجہ سے دہاں لی فگیاء ہس 
ریب تھ اکہٹیل مدت کے من رٹیل چلاجاولں- 

اج ۰م اپ کہیونو جوا یں سے بنا ہواگوشت اور اذ روڈ لیک سر ریف میں داٹل بوااوراک طرف بی ےک رکمانے لگا: 
ای نے جب مبری حالت زاردشھی فو یھےبھی اث ےکھانے ٹیش ش یک ہن ےکی دحوت دی ء یش نے الک رکیا ناس نے پھراصرا ریا 
جس اس کے سا تح کھانے یں ش یک 6 گیا ۔کھانے کے بلداس نے پان پافوں بیس ہچ سےسوال جوا بش رد حکردئے ۲ اس نل ےکہا :عم 
کون ہو؟ اورینجھاراتار فکیاے ؟ اور مکہاں کے رہنئے والے ہو؟ بیس نے اس سک وکہا: یں جیلا نککار تچ ے والا ہول اور یہاں ّن 
و میں علم وھ پڑ سے آیاموں ٤اس‏ لن ےکہا: ایک وجوان جا ی بس کا نام عبرالتقادرے اوروہ ححخرت سی :اعارف الد ان 


۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ 36611:2113]. 77 











تو رف وٹ )ضحم ری اع ہک میابرانز ندگی اورمو رہ ما ای نظا 8 








الوم رادڈد ا لص وی رحمنت ارد تھا لی علی کا نو اسہ سے ا کو جات ہو؟ ٹیل لن ےکہا: دہ میں ہوں و ال وت بہت ذیادہ پر ایثان گیا اوراس 
کے چجر ےکا رنک بر لگمیاء اس لن ےکہا: اڈ دتھائ یک یکم !یس جب بضداد کی بیچھا چا جھ پاس مبہرے پاس ے ددچھ نتم ہے اور می ں7 ب ۱ 
کالوگوں سے پا تار اہول اوراب تین دن بہوئۓ مہرے بھی بھی ضتم ہہو گے ءا ب تھا رے جیہوں سے میس ن کھا ناخ بیراے ؛آ اب 
کھا میں بیآپ بی کارکھانا ہے اور لآ پکا اب ہمائن ہو ۱ال سے بی ےپ میہرےم ہمالع تھے ء اس ن ےکہاآ و ٰ 
آپ کے لآ درد تھے :فیس نے چیب درااس مس س ےکھا نا خر بیداے ء می لآپ سے معزرت خواہ بہول ء یہ سکنئے کے بعد وہ 
امو ہوگیاءاوریٹس نے اق ہکھاناا سک طرف بڑحادیااورسو نے کا ای ککھڑابھی ا سکوبطورنففشہ کے درے دیا جن سکو اس نے قبول 
کیاادردہاؤل سے چلاگیا۔ 
(ذ یں لبق ت انا بن رید یبر ر4 موی 
برعلا لغ ونس الع نوراڈ شب نان عثان بن انم ز ال زی (۰۲۰٠۳9۹م)‏ 
اسۓ استمادامجےنم حا درحمت اید کی علہ کی با رگا و میں 
تم وَقَع فی تَفُسسی ان اخ رج مِنْ بغداد لکٹرق‌الفتن, ؛ فَخَرَجثُ إِلَی باب العَلبَةء فَقَال لی قائل لی ان 
تمْخٍِی ؟وَفقَعَیی دفعَة عَرَرْتُ مِتُهَاء وَقَالَ ای پا بلس یک تنفف کا كت ريد سَلامَةً دِینی ۔قال: 
لک ڈاک وَلَمْ ار شُحصَۂ ثُمٌَبَعْد دُلک طرَقیی الاخوَال, فَكَنبُ اتمنی مَنْ يَكشِفهَا لیء فَاجعرژك 
الْفِيّةہ فَقعَع رَجْل دارَۂء وَقَالَ نا عَبد القَاورِء ایشَ طلبت الَارِحَة؟ فدسیث: فَسکكٹء فاغتاظء وَدفع 
7وی رھ دو فعَةٌ عَظِیْمَةٌء لم َشیث دگرْث فَرَججعث أَطلبٔ البَابَ قَلمْ اَجۂ, قَالَ وَكان حَمّادا 
ہی تم عَرَفْتةبَعُذء وَکشق لی جَمیٔع ما کان یُشْکلُ عَلَی, ء نٹ إِذا غبث عَنْه لطلب العلم وَجنْث: 
عَرل جَاء بک الَیناء انت فَقِيْة مُرَّإِلَی الفْقَهَاءٴ انا ُسکٹ. 
ےھ 
تحضرت سینا امام الی کی رححمالقد تھا نی فرمائے ہی کہا الا ماما بیلاٹی ریشی اشدعنہ نے فر مایا: بدا یں بوکلہا وتتیں 
کے بر پا تے تو میں نے سو چاکہ یہاں سے لکل جائوں :میس وہال ےئن لکر باب اتتلب ہکی یر فآ گیا اتک مشھے کین ےکہا :کہا 
جار ہے ہو؟:ادرسما تی بے دہ کادے دیاءئنس سے می سک گیا ءاورائس نے بی کہا : دای جات تی ری ذات سےلوگو لکوشع ےگا بین نے 
کہا: شیں اپپنے دی نکی سلائتی ابا ہوں اس لے بیہاں سے جار پاہوں ؛ذ انس نے بجُھےکہا: دی نکی سای و تھے حاصل سے اورییس نے 
اش سکود یچھاننیس تھاءگچلرا لیے حالات ہو ےکی نے جا کرکوئی ای فنص ہوک جومیرا ہم تایت لکرے میس 'الط لے چلاگیاء ایک 
کر رکا درواز دکھولا مو ال نے بج کہا :اےکبدالقا دررات سے کیاطل بک پاے؟ جب ال نے جج سے سوا لکیانو جج 
دہ بات بی مو لگئی اوریس نما مل ہ وکیا ات می اےخص ہآ گیا ادراس نےگھ رکا درواز و زور سے مسرے منہ کہ ماراء پچمرد ای سے رواتہ 
ہوا ءا میس بش دو بات یا دہ گنی چھرجب مس درواز و پآ پا بے دہش لیس ملا رححضرت سیر نات الا مام مد التقادرا یی شی انشرعنہ 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹ 96۵1(2 ری نے‎ 007٦ 








تو رفوٹ ام ری اوخ ہک میا برا نہذ ندگی اورمو ججودہ ممانقای لظام ).188 
فرہاتے ہی ںک ووشم ححضرت سید نا حماداللد بارحم الڈدتالی علیہ ت ءاوراس کے بد یس ا نکو پپچا نگیاءادر جشے میہرے اشکالات جے 
رے برک گت رت کت کل ا کر ےی اجب ان ا نک صرصت ی701 یڑ ا اکر تے تھے : 
ہا ںکیو ںآ یا ے؟ وو خو دق ےہ جا فقہاء کے پا سںقذ یل خامونش ہمو جا تا تھا۔ ْ 

(سیرآعلام اج اء : تس الد ف ناوک بدرائڈ جب نت مین پعثان ین اما زالز تی (۱۸۳:۱۵) 
( یل طبقات الحتابل :ز من الد ین عبدرالکسن ب نم بن ر جب اص (۳:۲) 
استاکٹزم کے امتفےائغ پآ پ ریا الشدعتہکاصر 
نما کا یم جُمُعد حَرَجث مع الجَمَائة فی شِڈۂ البَرُدء ققعبی أَلقَایی فی المَاء, ققلّتُ :غُسُلُ الحْمُعَةِ, 
باسم اللي رَكَائَعَلَیٗ مَُاَصْرٴث, فی کُمّی أَجرَاءٗء قرفعت كُمّی نل تھلک الاجزاء/ وَخَلَوْنِیء 
وَمَدواء فَعصَرْث الجبّةہ وَتََعْنهُمء وَتَأذّیْثُ بالبردِ کیراء وَكانَ الشیٔخ يُو ہبی َبَضربٔییء راڈ جب 
َقُوْل جاء نَا الوم الب الكيئںُوَالقالودَجٔء وَأکلَا وا عَبنَا لک وَحَمَة عَلَیْکَ, فطمع ِیٗ أَصْحَابهہ 
وَفَالوا ات فَقِیْڈہ آیش تَُمَل مَعَنَا فَللمَا ر آھُم يُذْونیء غَارَ لی؛ وَقَال یا کلابُ لِم توُڈُوتۂ؟ وَاللەمَا 
یکم مللّهء وَإنمَا أوِی لمتجتۂء فَأَرَاهُ جب ء لا یعحرُک. 
رت 
ححضرت سید ناامام الزیی رح اتال فر مات ہی کان الا ماما یلا فی نشی ال دنہ نے فر مایا :ایک با معن سار ک کان تھاء 
سحخت سردی میس ججرماعت کے سا تح بات بے اتی الا ما حماد الد اس رحب اتی علید نے در یائۓے دجلریس پل سے پالئی یل رادیاء 
نے یس ات و ےکا ین جک ےس کی ضیف رتا ون آوئیل نے مم الد پڑت می ۔اوراس وفت بجھ بر اہ کاچ تھاء 
میرے از ویش پجھواجتزاتے جومیں نے ایور ے ےہ بے ا نک یکرت یکین لہ نہ پھیک ا یں اس یل یس نے ا نی کلاگ کواد برا ٹھائے 
رکھاءادرانہوں نے بے بچھوڑااور لے گے ء یں پائی سے باہرکگلا ادرف نے اپ ےکپٹرے نچوڑے اوران کے تییےہ کیا ادر چے سردی 
سے بہت زیادہ اذیت ہوئی ؛پچلرگھی ٹیں نے استتاوکترم کی تلق دل می ںکوئی بات ہآ نے دکیاء جن ماد ال امن رم اشدتھا بی علیبطور 
امخان ١ے‏ بہت زیادومار تے جاور بہت زیادہ نیف د مر تے تے۔ 
"و ان رت ا عماداللد پا س رم اللدنتاکی علی کی شدمت میں حاض ہوا لو یھ فر ماتے : آ رخ ہماڑے اس بہت 
زیادو روا ںآئیتحیں اورفالودہگھ یآ یانتھا ہم ن ےةکھام یا اورتیرے لئے پچ وڈھ یکیں دکھا دوصرمےلڑ ہے جوا جا عمادالد پا سی رم انتا ی 
علیہ کے پال رج تےء وہ جج ےکھتے سے تم نو لم ہوقم یہا ںکیا لی ےآ تے ہہو؟ جب ان حمادالمدپاس رحمیت الد تعالی علیہ نے ال نکود یھ اک 
تن عبدالتقا درا ھی لی نشی ابع کلنکلیف دسیتے ہیں و اخ حمادرحمتت ال دتقعالی علیہ نے ا نکوفر مایا :اوت ۓےکتو !ٹم کیوں ا سکو دک د یت 
ہو؟ اتال کیم !انس جعیسا بن وم می کو یپھ یں ہےء بے شیک میس اس سکانکیف اس کے امخان کے لئے د اہول ؛اورمیس ےے ا 
کوآزمالیا سے پیٹ بب رکا پہاڑے چوترکم تی ںکرتا۔ ٰ 














۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 6۵811:7111. 7 





- ا --- 009 
رر حضوروٹ ام ال حکی ران مکی اور جودہخاھائی ظھام 








(سیرآعلا ما گا ء نس الین آبوبداڈیگہ م نآ بن عثان بن ان ال ہی (۱۸۳:۱۵) 
ذ گل طبقات الحتابلت :ز من الد نعبدا لقن بی نام بن ر جب اصعپیلی (۳:۴) 
























اط وفت سے طا قات 

یوسیم قيم رَجُل مِنْ هَمَذَاَ يُقَاللَه ا اج سُف الهَمَدَایٰء وَكان بَُال إنَهُ القطبء ونزل فی رباطء 
فمشیت إلیہء فلم ره وَقِيْل لی یی الشزْةپ: فَنْزَلَہُ إِلَيْهء فَلَمً فَلَمَا رای قام, وَاجلسییء لفرشنی؛ 

ری میم أَخُوَالِیء وَحلَ لی المُخْکَلَ عَلَی, تم قَال لی مَکُلمْ لی الَاسِ, قَقلك یا سیدیء أنا 

رجل أعَجیٰفُخ َرسُء اک لی فُسعَاء بَعْدَاد؟ الَقَال لی حَؤظت اليقّة وَأصُوْلَه والخلات 

خر َاللَقة َتفسیر القْرّآن لَبَصلٔع لک ان تلم ااصعَد عَلی الگرْسِیٔ, وََکلْمْ انی ای فیک 


ححضرت سید ناما مال گکی ریت ال تھالی علیف مات ہی ںک ان الا ما معبدالقادرا یلا ی ری الڈدعنفر مات ہی ںک ایک مردت کے 
معز الع ےایک بن رکش ریف لا ہے مج نکو لوسف ال ہمد ا کہا جا تا خھاءادر ہلگ گکہاجا تا تھاکہ دہ دنت کے قطب ہیں ہاور مانقاد ٹل 
تشریف فر ما ہے ہ بی بھی ا نکو لی ےگمیاء یٹس نے ا نکو بے دبیکھا ہو ایل تھاء دو تہ اہی لتش ریف ر کھت تہ بیس جب ات کان کے 
ال ےہاوہ بے در یھت ہی ام ھکھرے ہے اور بے ہشمآیااورمی ے تام احوال بے پہ کر گۓ اوربری قمام مشکا ت ع٦‏ کرد ہیل.۔ 
ٹر ایام لوگوں ےکا مکیاکردہ میس نے عوی سکیا :سیریی امیس می کمھیاجنص ہوں, بفدا ئگ وین لوکوں کے سا سے کی ےکا مکروں 
۹ یھ انمہوں نے فرمایا: دیجم وا تم نے فت اصول ف کو حف اک رلیاے ‏ مس اُل خلاف پخھو واعت او خی ال ان الک رممبھی پڑ لیا ے :اب 
توارے لے چائ نی ںکیتم خاموش رہو۔ پل مکری پرٹیٹھواو رکا مکردکیونگ میس دکد پاہو ںکرتم ین ای جو رکا خوشہ ہے جونقر یب 
رکشت ئن جاے گار 


۱/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 6610:2113]. 7 


(سیرآعلام الام : رفس الد نو پرایڈ جم نأ من عنمان ہن ابا ز ال ذ گی (۱۸۳۰۱۵: 
لو :یو سرن نے عل کا نا ہما ھا ہے اورچچ نے بدا نآکھاے اس لئ لح ہمد الی سکع ہیں اور یہ 
بعدا نی کھت ہیں ۱ 
سف ہن ای رحمت الیڈ دنا ی علیہ کےفر ما نکااڑ 
َال الجْبائی َال لی الفَِْخعَيْدُ القادر كت اَومَروَأنهَی فی الوم رَالیةہ وکا یغلبٔ عَلی الکلامٍُ 
وَيزدحِمٔ علی قَلبٍی بِكُلَمْ لم أكلَمْ بو ختی آگاڈ اَحْسی, وَلافدرُ اسکٹ: وَكَانٌ یَجلس عِندی رَجُلان 
وَنَلاَةہ تُم تَسَامِع النْاسُ بیء وَازدحَم عَلَیٗ الحَلٰق ء خَتّی صَار یَحضر مَجْلٰسٍی نَخوَمِنْ سَبْعِْنَأَلفا. 
ہے 
حضرت خ الجبائی رت الد تھا لی علیرفرماتے ہی ںکہ می اج الا ما معبدالقادرا چیلاٹی نشی ارد عنہ نے فر مایا: بے نین یل 





تضوروٹ سکم یی الع کی مرا نز نی اورموجودہ الا چی نام 


اور ورای شی مگ یکر نے اور پرائی سے رن اعم دباجا تا ما ءاو رھ پا مکرناا تقاط اب گیا اورمہرے دل پ۰ لو چھ ہونے کا ءا تا بے 
بو چوس ہواک اگ می کلام نک رتا میل اپنا لاد ہا لیتقاء اور جھ بی نما شش ر تن ےکی طافت کی ندرکی ‏ شردر شردع شس میہرے با 
دوٹان لوگ یٹ اکر تے جوم راکلام سے تھے ء رات لو کآ نے مگ ےکہاا نکارش ہہدنے لگا بہا لت کک میہرے پا سترستر بٹرا رلک جع 
ہوجاتے اورمیرراوعظا سن اکر تے تھے ۔ 


یس سا یک کلم 
اخ یش مھ الصدا لی رت ارڈ تھا ی علیفر مات ہیں 
وقد أمضی فی طلب العلم النین وٹلاٹین سنة . 
7ے 
أتغ ا ماس بدا درا یی یدنہ نے تمولعلم مج ہنی سال صرف کے ۔ 
(حص راز ول الرنک یی علی مر ال ی:۲٣۳)‏ 


(سیراعلا م للا ء :۱ مس ال ری نا ویھپدرانڈ ھب نا بن عثان بن انا زالزی(۱۸۳:۱۵) 


ے با و اورد وھ یکھاشوں سر لزا 
وکان رضی الله عنه یقول :قاسیت الأهوال فی ہدایتی وکان لباسی جبة صوف وعلی راُسی خحریقة 
وکنت أمشی حافیاً فی الشوک وغیر. 
ححضرت سید نا الا ما ہر الو ہاب الشع رای رجمت اتی علأئل فرماتے ہی ںک امن الما ماس عبدالتقا درا للا نی شی ااشدعنفرماتے ہیں 
کھیرے انار انے ٠۰‏ .نل ا تخت عالات پیرا ہو ث ےک مجہرے پا س پورال پان ںصرف ایک جب تھا ا فدہ رمے ‏ رپ ایک پچطا و اکپٹڑرے 
کا ای ککگڑاہوتا تھا اور میس گے پا و ںکاشڈںل پر چلاکرتا تھا۔ ۱ 
(اوا 0 نوارفی طبظات الا خیار مبدلد باب نا ب نٹ انی ا اٹیٰءررشر(ا:۱۰۸) 
دوران طا اپ کی اک وا ی6 پاراہونا ۹ 
وَكتبَ إِلَیٗ عَبّدُ الله بن بی الحَسَنِ الجُبْائیٰ :قال لِی الشیٔخ بد القَاوِرِ :طَالَٔیی نَفُسی یَوْما بشْه-ُرٍَ 
فَكَنْہ اصَاجوٰمَاء وَادخَلُ فی کرُبء وأَحرْج مِنْ آخر اطلّبْ الصّحزاء)َ فَرَأیْث رُفعَة مُلَقَاةَء اذا فِيْھا ما 
لاقرِبَاء رَالشْھوَاتِء وَإنمَا ُلِقَّتٍ الشُْھوّاٹ لِلصْعَفَاء, فُحَرَجتِ الشَُهُوَة مِنْ قلبی, 
ہے 
ححضرت سید ناما ممالبہی ریت تھا لی علیفر مات ہی ںک ےا عمبدا جن الی اشن ال بائی رصن اد تھا لی علیہ ن کک کہ بجے 
ت الامام عبدالقادرا یلال شی اللہ عد نے فرمایا:ایک الو ےی نے ےکی یڑ ےکھانے کا مطال ہمان میں ا کو 
تچٹرکتارپاءاورییس باتک میں داشل ہڑگیااوروہاں ے نح ل کرای مطلویہ چ کی علاش میں صحراء م٠س‏ گیا نے ٹس نے ایک رقعہ 


جلرا دل 


7.۔ 610721131 ۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹9 





تمورنحوٹ| اش رشی ال نک میاہرانہز نی اور مو جودہ مانظا بی نظام 


دس 


پڑاہوادیکھا نو ا ب یس عبار تاگھی ہوک نی ول طاتذ رد یکونفماٹنی خواہشات سےکیاغرضل ؟ 70 وو کے لے 











پیلد اکاگئی یں ہچ 
چھرمیرے دل سےا کی خوا ہن نگ لکئی ۔ 


(سیراعلام الخلاء :ت٠س‏ اللد ناو برائڈ شب نم بن عثان بن انا زالزشی (۳:٭۳٣)‏ 
الا ما مھ بن ش اکر من ال دای علیہ کے الا ظط یں 
وفی فوافات الوفیات :أنا أُمشی إذ رأیت رقعة ملقاة فإاذا فیھا :ماللأقوباء والشھوات؟ إنما حلقت 
الشھوات للضعفاء یتقوون بھا علی طاعتی,ء فلما قراتھا خرجت تلک الشھوۃ من قلبی. 
تم 
ذات الوفیات میں ب الفاظ نک اج الا مام عبدالقادرا یلان رض قاع نے را نے کے رق کان جس 


ا ہرم نال اہشات ےکاخ شا تا زدروں کے ےھ ایا ودای کے سام رک طا مت ۱ 


قوت حاص لکریل نب میس نے اس رق کو بڑخات فو رأہی دوخواہٹل د ‏ حکردبی_ 
(فوات الوفیات : بن ش اکب نم ہن عپدالکن بن ش اکر بن بارون ب؛ن شک رالمطقب بھھزا رح الر بن )٣2٤:۳(‏ 


کمانا رز کزادیا 
وکان رضی الله عنه یقول بقست إلاما کرگزاۃ لم اایتعاٰ اڑھا بطعام فلقینی إنسان اعطانی صرة فیھا 
دراهم فاخذت منھا خبزاً سمیداء وخبیصاً فجلست کلہ فإذا برقعة مکتوب فیھا قال الله تعالی فی بعض 
کتبه المنزلة ''إنما جعلت الشھوات لضعفاء خلقی لیسععینوا بھا علی الطاعات اما الأقویاء فما لھم 
وللشھوات "فترکت الأکلء وانصرفت. 
تم 


دن ہوم ےک ےٹیل ن ےکھا نان کھااتھاء ای کنشفس بے ملا ال نے بے ای ک یی دی دنن میس کی و خے مس زاس جے لوم کا مور 
کا علوولیاء جب می سکھوانے کے لئے طیلھافذ اس میس ایک رقنہ ملا جس می ت راک ہبڈ تالی نے انی ناز لکرد ہی یکرا اھر ما پاےے 
کے کن سا اک دی مات رت ٢‏ نکاس ور تی تا کے 


پیداہویئے ہیں اورشہ بی ہہ یں ان کے لے پیداہوگی ہیں بحطرت أچنغ الامام الجیلانی ریش الل عحنہ فرماتے ہیں میں نے 


کھا نا ھوڑ ااوروائیک ںآ گیا۔ 
(لواخ ا0 نوارثی طبققات ا ہار :بداو ہاب بل نآ بن کی ھی :ما لمران ایت شر ای ءاش م(ا:۱۰۸) 
رات د نکی معروفیات 


کا سے لم کی ساس جات رس ڈرت ا سی 


ححضرت سد ناما عبدرالو ہاب الشمرالی رحمی الشدتھالی علیفرماتے ہی ںک ہا الا ما عبدالتقادرا یلا کی ائٹدعذف مات ہہ ںکہ بہت 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 691112177 77 





تو رو )تنحم ری للع نہکی انز نرگی اورموجودہمانھا نی اظام ر١وەںں‏ 


ودرساً من الحدیث ودرسآً من المدھب, ودرسآً من الخلافء وکانوا یقرء ون عليه طرفی النھار 
العفسیرء وعلوم الحدیث والمذھب,: والخلافء والأصولء والنحو کان رضی الله عنہ یقر القرآن 
بالقراء ات؛ بعد الظھر. 
کے 
رت سید نا الما معمبدرالو اب امش رای رح الل لی علیلنفل فرماتے ہی ںک رن الا ما ہداتق درا للا کی ریشی ادڈدعن تیر علوم 
سکڑامفر ما یکرت ے ءطل یپ ری ارشدعدہ۔تیٹقمی رکا درس لت تے حد یت ش ری فکاسج بھی پڑحتے تے ہ نر ہب مسائل خلا کچھ 
پڑھارتے ےم وشام وآ پ بی الڈرعدر ےش رہعلوم حدبیث ءالمذ ہب ءاقلاف ؛الاصول روہ پڑ اکر تے جھےء جب ہرک نماز 
اداکر لت فو آ پ ریش الد عنق رآ نکمزی مک قرات پڑ ہاب ارت تھے۔ 
.(لوا خ۷ نواری طقاث ا خیار یداو اب من ام نی ھی :نسہل خراین لحکذی ءالکٹر ال *آبشم(۱۰۸:۱) 








۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





رٹ امش یی رع کی برا نز ندگی اور مو جودہ انا ئی نام 


حخرت ات الا مامالا درا یی شی 
ٰ کے روک نرہ 


لرعث 


سے 
۲٢ 19٢ |(‏ 





۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 60100:2131. 7 





وٹ ا اث ماگ یھی ارعش کے استاد 


الام الضی ابوسعیدال مارک ب نال یا رتمتت ال مکی علہ 

آپ رم اڈ نپا لی علیہ نے اپنامد رس رامخ الا ماما یلاک شی الع ۃکددیاھا نس میں ا ا انی رش ارشدعنہنے ز ز دی جرد ین 
کیا جلائۓر 
ا ماما وتتیفرائحہ مکی ولادت پاسعادت 
إِن مولدہ سنة ست واربعین وأربعمائة, 

ان الا مام !سی دا ارک نل لگز ھی رمیت ایتھالی علیہکی ولادت پاسعادت سنہ" ۴ھ پش ہولی- 

( لات اتا بات : اوائسین ای نآ لیت بھی ن گر (۲۵۸۰:۲) 

یش مد اڑا کی رحس ال زتنا لی عفر راتے بس 
ابو سعید 'المبارک بن علی المغ یڈ اس 8ابلة تفقه بالقاضی ابی یعلی وہنی مدرسة باب الأز جألا 
درس بھا بعدہ تلمیذہ الشیخ عبد القادر الجیلانی بعد إن طوٗرھا وأدخل علیھا بعض التوسعة والعجدیدء 
وکان نزیھا عفیفاًء وقد فتحت عليه الدنیاء فبٹی داراً وحماماً وبستاناء مات سنة (۱۳ )٤۵‏ 
ہم 


71 ([۷۵۸۶66112 کسکرفا 


ا ویسی ال انرک ینعی از یا ررمتۃ اتال ی علب تن انال تھے ؟آپ رت اوٹ تال علیہ نے تقاضی ایی رحر" اد تدالی علیہ >< 
ےملم فقہ بڑھااور باب الازرع یل اپنا مدرس فی رکیاء جس میں ان کے شاگرد اص امت الامام عبدالتقادزا کیاکی شی اد عنہ درل 
دیاکرتے تہ پچھ راس میں م۰ کم ہون ےکی وجہ سے اس میس وس پچ یکی اورا سکو مۓ انداز ےت کیا فآ پ رمستۃ ایڈدیتھالی علیتہایت ا 
اک دائکن تہ جب دنیاکے ددواز ےآ پ رہم اتا لی علیہ پ کین آپ نےگھع حا اور باغا تتی کر دائے ‏ اورپ رحمت ادا ی 


علی کا وصا ل ش ریفس( ۵۱۳ھ )ٹل ہوا 
(ححصرالر ول۔ الزککی : عی مخ رلضٌٌّ لں:٣۳٣۳)‏ 
گعیادت سرت 
رَكانَ مداوما للصیام والتھجد باللیل کانت سیرتہ جمیلة رعشرتہ ملیحۂ _وّكانَ ملیح المناظرة. 
مم 


صاحب الطبقا ت امام ایوائین بن ای “کیھب نج حم اٹ تھا ی علیفرماتے ہیں 0 بن کی 7- کی رم 











تورث اعم ریا نزک ارم وجودہ انا ی ظا 





اراتا ی علیہ پیش ون یس روز ور کے وانے اوررائو ںکوت نام نے دانے تۓ ٦:‏ پ رم2 
خواصورت مزا ظ رت _ ( نات الحتابل: او اسان این اپ یی جم یش ( ۶۵۸:۱۴ 


ام لی رمع ال تتمای علیفٰر ماتے ۰ہیں 


َء شی الحنابلة او سعد المبَارکٔ بی عَلی الشخرمیَ البَعدادِیٰ تَفقہ بالقَاضی ابی يَعْلَیء تم بابی 
ھکر نیاوی قب بن سُطورا ارز َلازمهما عَلّی ساد بی مدرسَة تاب ال 
درس حدۂ بَا ِمیٔذہ الشْیَْخ عبُة القَادر وَکِْراء راو نَرها وف ناب فی القَصَاءٍ وَحَصّل کا 


عم 


عَلیْمَة وَحَدڈُث عَنْ ابی جَغْفقَرٍ بن المْسْیِمَۃہ بی الغنائم بن المأمُوُن, وَتَفَقةيهِ خلق .رَوّی عَنْه المبَارکٔ 
بنْ کاہِ. 
7ے 
الا مامالا اھب وسعیدا ارک بن کل اج ٹیا ال یف ادکی رت ارتا لی علیرنےعلم فقہ اچم القاضی ابولیلی رض اڈ 
تال لیے پشی پک راغ مرن ابی اقب ورالہز بی سے پی ران دوفو کی غدمت میں ر سے گھ یہا ںی ککہ 
اتہاء کےسردار کن گے ء اوران پول نے جاب از رخ مآ اش رر یں بیس میں اپنے ش اگ رد الا ما مم بدا لقاددا یلا لی نشی ارڈ ع کہ 
امتماومف رکا ادا مد سکرام دا دا لیے سے انداز سے وسعت کے میک +اورآپ رتمۃ اتال 
ٰ یناب ا گار ہادآپ نے بہت اینب گا ا لکیی ہلال لے یفن اس شر 
اکمامدنع سے اعادبیث روای تک یر تے تھے ,اور پا من اق تھالی علبیدے بب تب یلو نے کلم وق اص لک رپ ےرات آرے 
داللوں میں مغ الپ اک بن کا بھی شائل ہیں۔ 


( الام الظاء : شی الین او ڈیب نام بن عنانائن کان زالزہی ( ۱:س سام 
وصالٹریف 


وتوٹی فی لیلة الجمعة ثانیة عشر محرم سنة ثلاث عشرة وخحمسمائة وصلى عَلَيه فی عدة مواضع 
دفعمان اسضامع القصر الشریف کنت آنا الإمام فی إحداھا ودفن بالقرب من قبر إمامنا أَحمّد ز حمة الله 
عَلَيْه وَكان دفنه قبل صلاةۃ الجمعة , 

جم ْ 

صاحب الطیقات امام ابو اسؤظئری تنیز ران وس یل ٤‏ 
اتال لکادصال شریف ت٣‏ ۵۳د )ہم ہوادان پک اما جنازہپڑھامگیا جائع تر ددبر اما راس میں سے 
اش شر نے مات گی اوما نک ترفن جار ام میا امت یتیل رۃا شال لہ کر ب شی ہوفی ءاورطر ٹن چھوہ 
کفا کی وا 


( طقات ایال پاہ وی 


) 7 ا 


تی ملک سیرت انچائی خویصور تی راو بہت | 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





تو رٹ )نم یی الشرعنہکی میا ران نرگی ادرموجودہ ما ھا دی نظام 13 













من الا مالیسعیدال ارک :نعل اھ ھی سے مردیاحد یٹ شریف 

رر نک ری مکی یو یم ٰ 
رن ُقاضی او غد المبَازک بُْ لین الْحسْن المخريیقزاء کی اه فی شھْرِ یی الحَرِسََدَسَنٍ 
وین وَأرئع ء اہ غَلَیٰدارِ صضَاجب الْمَحْرن بِرَحَبَة الْجابع, َھو وَاقثء وَأبُو الْحَسَنِ عَلی بن بب الله ہي نَصَر بُنٍ 
يد الله الذَغويِیٰء بقراء تی عَليّه َء الا ا ُو جَْقر مُحَمَہ بن أَحْمَذ بی غُمر بن الْمْسِْمة الْمعَدُلَ, ء ِمَلاءٌ آنا 


و اَْصْلِ غیيْة الله يْنْعَبُ الرّعْمنٍ می الڑهرِیٔء نا او بَگر جَعْقربنْ محمد بن الححسَن الْْرَّایٰء نا بن وید نا 


و عزَةہ عغن اف ھن اس بن ملیکِ, عَنْ بی موی الَطْرِی ال قال رسُول اللہ صَلی الله عليهوَملََ مل 


الُمُوْمِنِ دی يَقرَا الْرْق مَلْ رد ِیھ طيبٌ وَطممهَا طِیْبٌء وَمَعَلَ الْمُوْينٍ پ لی لا يَقرا لقرْآنَ مرف لا 
رخ لها رمعم عُلرٌء رَمْلالممَوِق الَِّی یَقرأ هي مل الريْحانَہ رِیحُھَا طيْبٌ وَهممُهَامْر ول لمَافي الَِی لا 
'قرَ اْفرْآن كمَلِ الَنطل لیْس لھا ریخ وَطَعمهَا مُرٍ 
: رھ سرحر ہثٹ 

اض وس دک ہیس سر ۳۵ھ )را ا مر و 
اب 7 ن کےگع رت یف فرما تھے ء اورا زوس ن لی رن عبیداالل بن نع بن عبیر اہ لیذ ائو لی نے بیرے ان پر پٹ نے 
بردری ءان دووں ن ےکہا:نھمیں ابوقط رم بن اب نع بن مسامہ الممحد لی نے اما کرات ہہو ےش ری میں پان می دای 
عمبدااششن الز ہری نے خر دی :اہی ابو رتعف رب ھب نان الفیالی نےےخیردی ای ںقتبہ بن جیا نے ت رد :نیس ابوگوانہ نے اد سے 
؛انہوں نے ححضرت سی نا اس ین ما لک شی اعد تج ردیی نہیں نے صفرت سدتا یہی شع کی ان سس رد کیا 
فرماے ہہ لہ 
۱ رو“ وریفق 

رسول انگ نے فرمایا حست ا نکی جاور تکرتاے ا سک مثال ترسح کی ط رع ہے ہج سک خوشبو پند یہ ادرذا تیگ 
ھا ےء اور جوم نتر ۱ 1ا نکر مکویں بڑہتا ا سکی مثا لمچورکی طرح سے نس میں جو وو یں ےگھر سے بیٹھا او رج کا فرش مآ نگ رب مکی 


لاو تکرتا ےا سکیا عثالل ر با نکی ط رح ےجنس میں خوش دو نہیں میشن دہ بیٹھا ہوتا سے اور جو منا فی ق رآ 0 7090 گی 


مال اندرائ کی ط رع اس میں خوشدوکییس سے اور ےھ یکڑ دا۔ 
(الراخ وال ا ثژن من مھ اابفد ادیلا ی طاہر۱ ضف صو زا من وط راشلھی الا صیہا لی:٢۲)‏ موتح الب الا سلامی ) 
(اش لبق ا - مخطوط :صدرالد من ءپوطا ہر اش٦لھی‏ جم ب یبن الا صیہای (۵۱۰۳) آعد ولغ مل :حر اففر ی) 


( طلریل ) ٰ 



















۷۷۷۷۷۰ ۲۳۳٣۶ 0٥(( 


تضورفو انم شی ارح کی ران ندگی اورسوجودہ انا ہی ظا 1 
ا اث با ک ری الدعنہ 


وا ھا ھی نآ مین بیالن ال راز رم ال تھی علیہ 

اخ الوالنتا م رح یت ات لی علیاششر تارف 
علی بن ای تو اتب با جا اقافہی نی طاب السری الگاف+: ال خی روز :من 
سی سم 7 و ہو سر سی سا یر سے :إنه من أولاد عمر بن الخطاب 
ارضی الله عہء اسمعه والدہ فی صباہ من أبی الْْحَسَنِ مُحمّد بُ ُنْ مُحمّد بن مُحَمّدِ بْن مخلد (و) أبی علی 
الحسن ہن أحمد ہن شاذان وآباء القاسم عبد الملک بن مُحَمّد بن بشران وعبد الرحمن بن عبید الله 
الحرفی وطلحة بن علی بن الصقر بن عبد المجیب والقاضی أبی یعلی مُحمّد بن علی بن یعقوب 
الواسطی وابی الفرج الحسن ہن علی بن المذدھب وابی عبد الله مُحَمّد بن علی الصوریء وانفرد 
بالروایة عٰن اکٹرھم وعمر حتی اشتھرت علہ الروایة وصارت الرحلة إليه ‏ وکعب عنە الحففاظ والأئمةء 
وروی ع٥ه‏ الکبارء وکتب عئه ابو غالب الذدھلی والمژتمن الساجیء وروی عنه الإمام المسترشد بالله | : 
ہو منصور الفضل أمیر المؤمنین وأبو القاسم بن السمرقندی وأبو الفضل بن ناصر وخلق کثیر من سائر 
اقطار الدنیاء یجوزون الإحصاء ء وڑوی لیا عنہ آبو الغ زج بن کلیب وھو آحر من روی عنه علی وجۂ 
الأرض. 
7ے 

ام لی بن اھ بن بین اید اسم ین ابوطا لب الری الا جب المعروف ابع الہرز از ریت ارڈ تی علیرالمفیر بے کر ہے وا 
تےء تاواسم رم الد تھا لی علیک تھی یس میں نے پڑ ار ےکا نہوں ےکا ایر وا سی 
رت سینا ام ال جن کر ذاروقی ری ارڈ رح نکی اوا دا مادشیں سے تھے _ 

آپ رق الد تا لی علیہ کے والد ماجد نے ال نکو کین سے ای عد یٹ ش رای فکا سار گر وایا تی می رت کے انھو مو سام 
کمیاان می ات ابواس نم ب نم بن ھب تقد ءال ان بین ام بن شاذ ان ء اہو الظاس مبدالمیک بن ین پش ران یلین بین عبیر 
لال رف لیبن لی بن الصتتر نع بدا لیب ءالقاخضی ابولٰتلی مھ بن “لی بن لعتقو ب الوامی +ابوالف رخ ین ب نکی جن المذ جب ١ا‏ ود الد 
بن لی ااصوری ء شال ہیں- 

ان مس اشن دہ ہی ںکشن سے روابی تکر نے والوں میں سے ا ابوالقاسحم رحرت اید تعالی علیہ منضرد ہیں اتیج ابو اسم 
رت ال تھا لی علیہ نے اتی حد مث ش را لیف ردابی تک یک یآپ رم الیتھالی عل کی ردایت بہت زیادہشہور ہوثی ءاور بہت زیادولو گآپ 
رم ال ای عل کے پا حد بی ش لی فکاسحا پر نے کے یل نے ےہ سے 
7 ہورے گی اور بڈڑے بڑے مح دجن ن ےکپ وحم الد تھالی علیہ سے عد بیٹش ریف روایمت کی ءاورابوغااب ال اگ اورا وی 





071 کا ا ا ۷۷۷۷۰// 


دہ 


الماہگی نے حد بیث دواحی تکیاء او رآ پ رحمیت الد تھالی علیہ کے شا ارد یس الا ما اھ الونییناممستز شر پارڈ او نصورأفحضل رم اللہ 
تسای عل بجی شال ہیں- 
اورابوالقاسم بن اسر قنری ء ابو ال بن ناصراوران کے علادہ د میا کےکون ےکونے سے ل وگول نے حاض رخدرصت ہوک رعد بث 
شرلی فکا سا غعکیاءاوررو ئۓ ز ۲ن برسب ےآ خر می اے ابوالقاسم رحمہت اید تاکی علیہ سے عد بیث ش لیف کا سا حر نے وا نے اون 
ہن کلی ہیں اوراننہوں نے پھییں بھی اس اروالتقا سم رحمت الد تا لی علی سے اعاد مٹ شر یش میا نگلاں۔ 
(جا رن إفراد : ویک رب نپی بن شابت ب نان مہدری ایب البفد ای (۲۳۰۰:۱۸) 
حخرتأچغ ا لیا نی نے عد بیفش لی کا سا کیا 
قال الامام الجوزی رحمة الله تعا لی عليه فسمع الشیخ الجیلانی رضی الله عنه الحدیث من أبی القاسم 
علی بن احمد بن بیان الرزاڑ. ْ ٰ 
7ے 
حطرت امام محرث اہن جوزگی رمممتہ ارد تا لی عیفر مائے سے ام ما رق نشی البندعنہ نے سن 
0 ا ہیں اکا یکا سام عکیا۔ 
جار م ولملرک تال امن آزوالفرج عم پدا اشن نکی نپا لچوزیی (۱۸:١ك۱)‏ 





صفمو وٹ )تنم شی اول رع کی میا را نہذ ندگی اور موجودنمانقا بی نظام 








وصال مارک 
قال مُحَمّد بن ناصر الحافظ قال :مات الٛ لشیخ الرئیس أبو القاسم علی بن أحمد بن بیان الرزاز فی لیلة 
الأربعاء السادس من شعبان سنة عشر یعنی وخمسمائة وصلی عليه فی یوم الخمیس فی سابع شعبان فی 
الجامع من دار الخلیفة وحمل إلی مقبرۃ باب حرب فدفن قناک: کان قدربلغ من العمر تسعًا وتسعین 
سنةہ وھو آخر من حدث بحدیث الحسن بن عرفة عن ابن مخلدء وآخر من حدثِعن أبی القاسم بن 
بشران وابی القاسم الحرفی والقاضی أبی العلاء الواسطی, وکان سماعة صحیخا۔ 
7 ٰ 
خطیب بغدادی رم اللدتا لی علیفرماتے ہیں ۰7‪ش۰/ۂ-”:۶٣٤یٹ٣٣ب‏ 0 90 
باان الرزاز رم الد تام مل کا وصال شریف جج شعہان امتظ مس( ۵۱۰ھ )بر ھک را تک ہواء اورناز جنازہ ۔ذمرات سا ت شخبجان 
دا رقاب کی جائمح می ہواءاورا نکاجناز ہ باب ترب کےقبرنتنائن ٹیل لا یاگیااورو ہیں ا نکی تر ٹین ہوئی ۔خ بآ پ رتمنۃ الڈدتھال 
عل کی حر ما ال موی ۔آپ مت دای علیہ ا ظ7 ٣۰۶1‏ مع حطر خر اب کر خر دای تر نے 
وا نے7 خری جے اور ابوالقاسم بن بشررانع سے روایہ تک نے وا ن بھی آخری تھے ء ابوالقاسم الھ نی اورالقاضی الطا الواعھی سے 
روابی تک نے وا بھی1 زی ۓۓء اور پ رمتت اتال ی علی کا ساپ تھا ٰ 
(جار ڑم پفداد : ویک راج رینپ بن طابت ہم نام ہن مدکی اتطیب البفد ادکی )۲٣۰:۱۸(‏ 





۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹681101717 


تضوروٹ )تشم زی الع ہکی مھاہرانہز ندگی ارم جردہ انا بی نظام ٰ _-.۔. ( 9وك 





نببت درس تگرو 

قال الخطیب البغدادی رحمة الله تعالٰی عليه ::سمعت شھاب الحاتمی بھراة یقول ست ا سے 
السمعانی یقول محمد تنعل نی الہزاز یقول :کان أہو القاسم بن بیان یقول :أنتم ما 
تطلبون الحدیث والعلمء نتم تطلبون العلو فی السنل: 

کے 





ً خیب بفدالڑی رم الڈتھالی علی کیچ ہیں :شس نے شاب ایی رم ال تھالی علیہ سے رات ہش مناکرد کے جےکہ 


نے امن ابواسعدالسسعا لی رحمت ایق تھا لی علیہ سے ستا: وہ سکیتے جھےک یس نے اج مجر بن عپدال بای المز از رمحمت: ارتا لی علیہ سے سناوہ| 


فرماتے ےکا ازوالقاسم بین بیان ریت اڈ رتھا لی علی فا اکر تے تے :کت عد بیث اورڑمطل بی ںکر تے ء بللیقم علوسنرطل بکر تے 


یپ 
( جا ۴ن اداد : اوک رات بن لی بین مایہت نام بن مر انطیب البخد ادکی )۲٥۰:۱۱۸(‏ 
تس متسطر عآ رع لوکوں می شںصرف ڈگ مر یک تپ ہد ینک لکوک یمیس ۔آ رج لو مگ بھی پڑت ہی سذ سنر کے لے شدراققزالی کے 
ل ےکی بڑ ھت ۔ ٰ 
آب سے مرو یی ایک روایت 


ُحبرَنَ ابُو الْفرٌَج عَبّد المنعم بُن عَبّد الوهاب بُن سعد بن صدقة بن الخضر بن کلیب الخرانی قراء ة عليە 
وأنا سمع غیر مرة أنبنا أبو القاسم علی بن أحمد بن بیان قراء ة عليه فی سنة ست وخمسمائة: انان اہُو 
لحَس بی مَخْلد قرَاءَة لیو فی سنةسیع عشرۃواریععادتہ انان ابو علی ِسمَاعِيل بن محمد ان 
ِسمَاعِیل الصفار فی سنلانسع وٹلاثین وثلاثمائةء حد حدثا بو علی الْحَسَنِ بْنْعَرَقة بن يَرِیذ العْدِیٰ صة 
ست وخمسین ومائتین جیضی مو ذو اہی پضحاق الش ول ھی لایع خی زں ابی 
گی عَن ابی قلابَة عَنْ ای الْمُهَاجرِ عَ بُريدة الّسْلَمی قَالَ :کان رَسُول الله ضَلّی الله عَليهِ وَسَلمَ فی 
بعْض عَرَرَايِه فَقَال وا فی الصلاۃ فی توم اعم كَلَه تی ترک صَلا اضر خبط عَکَلةُ 
7 ھےسترحر ہثٹث 

“ہیں ابوالفررحع ریم بن عمبدالد باب بن سحد بن صدقہ بن افخ ری نکلمیب افف رای ان ےتمردییا جب ان پہ بعد بیث بن 
جار یش اوریس نے اع سے بیبعد بی ٹک پارکی :بیس ابوالقاس لی بن امر بن بانع نے بتایا جب سنہ( ۵۰۷۹ھ) ٹل ان پہ ے 
ح یٹ شریف پڑھی جار یتتیا :ایی ابواسن بن مد نے بحد بی ش ریف سنائی جب ان پہ بی سنہ( ٣۱ھ‏ ) یل حد مشش ریف 
یھی جاردیعی ایی ابیلی اس ما عیل من رن اس نل الصفاار نے ستہ( ۹٣ھ‏ ) ٹیس بعد بیٹ شرف سنالکی جب ان بے نی 
جار تیجی یس ایوائسن بن عرف من یز بیدامبدی نے سنہ( ۹ھ ) شں بعد مٹاشریف سال ء ھی یی بین میکس بن ای اسحاق 
کے رف ےئن ن ےت بن ایی سے انوں نے بدا شی الشرعنہ سے اہو نے ابا جر سے انہویں نے 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81101171 





حفرت پریدہاگمی یی الرحن سے دہف ماتے ہیں: 
تج محر بیث 
رسول ارڈ وی غزدہ می ںتش ریف فرما تھےکہفر مایا : جن دن بادل ہوں اس د نحص رکی فرازجلری اداکاکرو ےکی جس 
نے عمسریی نما زنر کیا اس کے سارےاعمال پبادہوھئ_ ٰ 
( جا رن بفداد : ابویک رم نمی بن شا بت م نم بن مدکی اخطیب مد 
( بی الخاری :بن ٣س‏ ل) و دادلرا ری ایعھی )۱٣۴:۱(‏ دارطوق اتاج 


دوسری ردایت 
اأُخبرنا عالیا أبو القاسم علی بن أحمد بن بیان الرزاز فی کتابه وأخبرنا أبو المکارم سلطان بن یحیی بن 
علی القرشی وآبو إبراهیم داود بن محمد بن الحسن قالا انا محمد بن محمد بن محمد بن مخلد انا 
إِسماعیل الصفا نا الحسن بن عرفة حدثنی محمد بن فضیل بن غزوان الضبی عن یونس بن عمرو عن 
مجاھد عن عائشة قالت کا ال رَسُولِ الله صَلّی الله علیہ وَسَلم وَخخش گان إِڈا حَرَج رَسُولْ الله صَلَی 
الله عَلِيْه وَسَلمء لب رام وَاَل ار راس ا شون الله صلی الله اه َسَلمْ قد دحل رض 
۱ لم يعرَمْرَمْ مَا دَامَ فی الْبَیْتٍ كَرَاهیة أَنُ يُوِيَة 
کت درحصدر مث 

“یں سند عالی کے ساتجھ اب لقاع ھی جن اچم ین بیاان ال راز رحزنۃ ایشدنتھا لی علیہ نے ای کاب میں مدکی اورامیں ابد ارہ 


سلطان بی نمی بر ن علی ایی اور اپوارا کیم دا بن مین | ان نے خمردیی ان دوفوں لن ےکھا: می سم بن مھ بن لد نے بیا نکیا نہیں 


اما ئحنل الصفار اشن جن عرذہ نے بعد یٹ شریف بیا نک ۱ انہوں ہے گا انان نت ل ان خر دان ایی نے ماس بن عهھر سے 
اورانہوں نے ححظرت مچاہر سے اننہوں نے ححضرت عا تشد یق ری اڈ دنا ے : 
کے ہی اح ضرف ٰ 
حعفرت عا کشصد قش ائلمننماف ای ہی ںکرسول ار ٹچ کے اال خاش کے پا س ایک جانو رقھاء جب رسول اسم سے 
باہرآشریف نے جات فو دوکھاتا تھااورآ گے تچ اتا تماء جب رسول الہپ کا شاضہرافرس پرتشریف نے1 تے تو ووسکون کے سرت 
کھٹرابہدجا ا اورک یکیفیت رآقی ج بک بتک ول ارع اه وگ میں شر یف فرمارہچت ‏ دواس بات سے ڈ رتا تھا ایس مر ےک تکر نے 
سے رسول الڑھاپ نیف ہو۔ 
(م رج زشن سی ہے اہ ار(۲۸۷۰۳) 
می را اما تھرمن ہل :اموک بدالل ا جج بن بن بل من پلال می نآ سدالشمیا نی )٣٣۰:۳(‏ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 8110011 71 





وو )مم ری اع ہکی مھاہرانز ندگی اورموجودہ مان اینظام 8.:. 





اناوت اک ری الڈرعنہ 
ا الا ما ابولوفا ڑل بنگتیل نسعیلی البخد ادی رم ائل تنا لی علے 


صد بیت وف کا تصول 
قال الامام الذھبی رحم الله تعالٰی عليه 
.روی و محمد الجوھریٗء وتفقه علی القاضی أبی پعلی وغیرہء وأخد علم الکلام عن أبی علی بن 
الولید وأنی القاسم بن الْتبّان. :' 
قال السٌلفیٔ :مارایت مٹلء وما کان أحدُ یقدر دس سی پر ساس ہد 
توفی فی جمادی الأولی ولە ٹلاٹ وثمانون سنة. 
تیم أ 
أئے ا ماما پوا لوف پکلی بن یل ایی الیفید دی رحم راڈ تن لی نے اادیش الچ ہیی رحمتۃ ارڈ تعالی علیہ سے اعاد بیث مہا دکرروامت 
کییں ہ اویلم فان التقاضی ابو شی اوران کے علا وو فقتہا کرام سے حاص لکیاءاورع مکظام اخ ال ام ابی ین الوفیید اورایوانقاسم بن 


اتاان رحمت ا دنا لی علیہ ے حاص لکیا- 
( لص فی خی ن قب :ٹس ادن ناروعیدرانڈش رم نک مین عنمالن ین اما زالزٗہی (۳: ۸۰ )دا رالکتب العلیۃ ۔بیردت 
می رر ماظر 


قال ابن الجوزی وأفتی ابن عقیل ء ودرّس وناظر الفحولء واستفعی فی الدیوان فی زمن القائم فی زمرةۃ 
من الکبار .وجمع علم الفروع والأصولء وصنف فیھا الکتب لے وکان دائم التشاغل بالعلمء حتی 
إنی رأیت بخطہ :إنی لا یىحل لی ان اضیع ساعة من عمریء حتی إذا تعطل لسانی عِن مذاکرۃ ومناظرة: 
وبصری عن مطالعةء أعملت فکری فی حال راحتیء وأنا مستطرح فلا أئهیض إلا وقد مخطر لی ما 
أسطرہ.وقال ابن الجوزی أیضا :وکان اہن عقیل قویٗ الذڈینء حافظا للحدود ۔ وکان کریما ینفق مایجدء 
فلم یخلف سوی کتبه وثیاب بدنہء وکانت ہمقدار کفنهء وأداء دینە .انتھی. وکان ۔رحمہ الله تعالی ۔ 
بارعا فی الفقه وأصولہ .له فی ڈذلک استنباطات عظیمة حسدةء وتحریرات کثیرۃ مستحسدۂة. 
محرث ابین جوزکی ری الد تا ی علی فر مات ہہ ںک امت ابوا لوف ہی یٹیل ری الد تتعا لی علیننذی دیاکرتے ‏ دیس دتے 
اور بپڈڑے پڑے!الل ٥لم‏ سے مزا ظ رر وی اکر تے ےہ التظائھم باص راڈ کے ز ماشہ یل دٹیوان می بی الع ۔ ےن کی لیا جا تا ھاء اورآپ تم اللہ 
تزالی علیہ جامح الاصول والف روح تھے ۔آآپ راولت لی نے بہت یکن بپھ یت رمیفر ما یتھیںہ پیش یع یکا موں میں مصروف در پر تے 
تھء یہا ںک کک ہیی نے خودا نکیت رم یس دریکھا ےک د ہککھت ہیں :میرے لئے عطا لکل ہہ ےکہ بی اپنی فزندگی میس سے بک بھی 


۱/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 611113]. 





تو وٹ | ١‏ یی ارع کی ما رانز نکی درو جودہ انی نظام 9 


ضا کروں پہا کک میں ہو لے سے عا وآ ئ م ےی مراکرداورمن ظمروجچھوٹ سے اوراسی ط رح مبربی میں د ینہ سے 


عاجز آ جا یں مطاللعہ سے رک ستاہوں وگ نکی صور تی سک ہی سکب بئی تر کفکردو او ریش خ بتک دب یکا مکرتارہو لگا جب 
تک میں ا سائل ہوں می ںکرتارہو ںگا_ 
محرث اہن جو ز کیرحت ال دا ی علیر مات ہی ںکی انم اب نکیل رحمتۃ ادنقزالی عل یتو کیا الد بن اوراحدددکی طفاظ تک نے وا لے 
تے۔اور بہت ز یاد گی تھے ء جو یھی پاش ہہوتا اتکی کے نام پردے دسیتے ےہ بیہا لک فک جب ا نکا دصال ش ریف ہوانکھ یل 
سوائے بن ہوۓ لہا او رکب کے بج بھی نہ اور ال صرف اتوا ئل اک جھس سس ےکپ یاکفن خر بد اجا کے اورقرض اد کیا جا سے 
۔ادرآپ مت اڈدتھالی علنیلم فقہادراس کے اصول بی بہت زیادہ ارت رھت تھے اوراس بی ان کے ا اط ڑ ‏ ے تیم او مان ہیں 
او ہیں نہا یت خواتصور تاور بہتتاز یادہ ہیں - ۱ 
را )انگ ںانین ذ ہب : حبداگی ناج نچ ابن الع والتظر یی * اروا فلا (۵۸:۹) 
آب مت انل دتھالی علیہ کے یک نے 
علو همة الامام أہی الوفاء بن عقیل الحنبلی رحمہ الله 
الامام أبو الوفاء علی بن عقیل الحنبلی البغدادی ھو الذی یقول فيه شیخ الاسلام ابن ٹیمیة رحمه الله 
تعالی :إنە من أذکیاء العالم.بلغ فی محافظته علی الزمن مبلغاً اٹمر اکبر کتاب عرف فی الدنیا لعالمء 
وھو کتاب زالفنون) فی ثمانمائة مجلدء وفیه اختلاف فی عدد المجلدات,ء وبعضھم یجزم بأنه ثمانمائة 
مجلدہ فتخیل عالماً یؤلف کتاباً فی ٹمانمائة مجلد !وھ'ڈا الکتاب جمع فیه التفسیر والحدیث والفقہ 
واصول الفقمه واصول التوحید والنحو واللغة والشعر والتاریخ والحکایات: وفیه مناظراته رمجالسه 
العی وقعت لہ وخواطرہ ونتائج فکرہ.یقول ابن الجوزی :وکان لە الخاطر العاطرء والبحث عن 
الغوامض والدقائقء وجعل کتابه المسمی بالفنون مناطاً لحواطرہء وواقعاً فیهء ومن تأمل فیه عرف غور 
الرجل ۔وقال سبط ابن الجوزی :واخعصر منە جدی -ای :اہن الجوزی عشر۔ة مجلدات, فرقھا فی 
تصانیفہ رقد طالعت مہ فی بغداد فی وقت المأمونیة نحواً من سبعینء وفیه حکایات ومناظرات 
وغرائب وعجائب وأشعار. 
تمہ أ 
انم از مام ایوالو فا لی بن پیل ات ےعلی البفعد ادکی ری اللہ تھا ی علیہ کے تل این تتببیہ ن کہا ےک ہآ پ رجم ایل لی علیہ 
زہانے گر کے دا نا لوکوں یں سے تتے ؛آآپ رم اد تھا لی علبیہ نے ز مان مگ ری سب سے ب ٹک یکنا بک ریف مکی اودرا کا نام ساب 
الفنون' رکھا جم سکی؟ مخ سوجلد بی ہیں ا سک تداد می۲ سلوکوں نے اختا فکیاے اورینفل نے پالجھز مکہا ےکا سک جلمد میں7 سو بی 
ہیں ء ای کو گی عا لی سگمز اراٹصس ن ےآ مھھسوجللدو لک یکنا بہ رم کی ہو. ا سکاب می سپ رت ارت لی علیہ ن کلم رہ حد حیث ؛ فقہ 
اوراصول ذڑ, اصول ٹپ حید تح و لفت بشعر ا رننّء مایا تءاورا ہج منا ظھرے اور نی ماس اوراہ ۓککمری تاج کبیا نکاے۔ 


۷/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹61:231. 7 





محرث ابن جوا گی رم ال تھی علیف ماتے ہی ںکہآپ رتمیۃ ارڈ تھا لی علی بک یلک کے حائل تاور پڑے دمیقق سے دبیقی مال 
کوچ یآ سا می کے سا تی لک۷ردینے تے اورا پ یکنا بکانام جا مع الفتون رکھاء جوش اس می ںورک ےگا ددخودچالن لگا _ 

بط اہنع جو کی رعمت ایڈد تھا لی علیہ نے فر ما اک ریہرے جدامچہراہن جوز کیا مم اڈدتالی علی نے ا سکتراب جا ممح النفنو نکا انار 
کبیا تھا چ کر یل جلروں پر مشقل تھی اورمیں نے خود بفداری یس ماموشے کے دور میس ا کا مطالع ہکیا سے وہا تقر یبا ا سک مت رجلد بی 
مو جوڑگ اس ٹیس حکایات ء مناظهمرمے ‏ ج انب فراب اوراشعارت۔ - 


(سالیملۃعلوالہ: : مرج وس اجپتلامقدم(۱:۱۳) مصدراکتاب یں صوسی تام یٹہا وت الب ا علامیأ 


٢٢٦://۷۸۷۷۷۷۰۱۹۱8۲۳۲۱۷۷۵۲۳۲ ۲‏ 
(فل الفطا بک النز روا رق ن1 داب : ئرٹھرا لی گید (۳ )٣٣‏ اع روللخا ملعم الغریب ال شر ی 
حافظہ ذ؟ری بحم ال دتتنالی عليکا ٹول 
ْ لیا فظ اللز گی رت انتا لی عا کا قوالی دیفس اچ اب نکیل تل اتال عل کاب ےنتا قکیافاتے ہیں 
وقال الحافظ الذھبی فی تاریخ الم ىف فی الدنیا أکبر من ھذا الکتاب حدٹنی من رأی منہ المعله 
الفلانی بعد الأربعمائة. 
ہے ٰ 
تنم الا فطاللزئی ری الد تھالی علیہ نے فرمایا :ای نچہان یجاح ولون سے بلڑ یکنا نی نکھ یگئی اور بے اس نے وو 
ا نکیا ہش نے ا لکی جن جار سو کے بعرکوئی جلددشھ یی 
( نل طبقرات الحنابل :نز بن الد ی نعبدالنن می نآ بن ر جب ہن | سن ڈراو گلءاہذر اری:+ ثنشت ہیی ( ف۳۸۳۰۳) 
دمامت داری 
وینقل الذھبی عن أبی المظفر سبط اہن الجوزی قول ابن عقیل :حججت فاألتقطت عاقمد لژلؤ فی حیط 
احمر فإذاشیخ أعمی یىشدہ ویہذل لملتقطہه مائة دیدار فرددته عليه فقال اخل الدنائیر قامتنعت 
رضرسے (لی الغام رزرت انس ر نصدت لاد ارت لب زلی مسعد رتا ردان انم تتولی 
فصلیت بھم فاطعموئی وکان أول رمضان فقالوا :إمامنا توفی فصل بنا ھهذا الشھر ففعلت فقالوا :لإمامنا 
بنت فتزوجت بھا وأقمت معھا سنة وأولدتھا ولداً ذکراً فمرضت فی نفامھا فعاملٹھا یوما فإذا فی عنقھا 
العقد بعینه بخیطە الأحمر فقلت لھا :لھذا قصةء وحکیت لھاء 
فبکت وقالت :انت هو والله لقد کان أبی یبکی :وریقول :اللھم أرزق ابنعی مثل الذی رد العقد علیٗ وقد 
استجاب الله مه ٹم ماتت فاخذت العقد والمیراٹ وعدت إلی بغداد . ٰ 
7ع 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6112113 1.۰. 7 


ام ذ ہی رجم ایڈدائی لی ابو مظفر وی رص ای ے ا1ال 2 8"+*+* 




















۱ تضوزفو ٹ پنفظم ری :شر کی میاہرانرز نرگی اور موجودہ مھا ہی ظام 201 
ہی سک.: ا صلی ب نکیل ری ارلدتھا لی علیہ نے فر مایا : شیل ر کر گیا دوران رخ یھ د با لا سے ارک باج ھکد رر رنگ کے دحا نے ٹیس 


پردیاہدا تھا لگیاء ا اتک مس نے ایک نابینا مک دیھاجھ بر اعطا نکررے جک ججوخ بھی بے مہ رابا راونا در ےکا میس ا کو ایک 
سود ینارا ندم دو ںگا نیش نے فو رآدہپاران کے پاتھ پر دکہ یا دہاز بدں نے سود ینارد ینا جیا ےگ یں نے الک کرد باء یش شا مکی طرف 
يکھٹراہوااورمیس نے ہبیت ال ملک کیا زیار تک اود بیفدادعلی کے ارارے سے نگ لکھٹراہوہ جب میں علب تی بے بیو کبھ یکھی 
ہنی جب میں سد ریف میس دائل ہوانوانہوں نے نماز بڑہانے کے لے معصلی برک ارد یائٹش نے ا نکونغماز پٹ ھائی نما کے بعددہ 
بر ے ل ۓےکھا نا لا ے ععلب گی در مضمائن ارک تاذ نہوں نے بش ےکہا :کہ ہمارے امام صاح بکا انال ہوگیا ہآ پ مب ال یکر کے | 
بی ای گنما بی پٹ حجاد یی :لے شی نے حا کی کی انہوں نے مھےکہاکمہجمارےاعام صاح بکی ایک بئی ہب ےاگ رآ پ اس کےسا تھ 

ا حک ریس ذ تو میں اس مائی ضلحتہ کے ساتحع مکاح کھ یک رلیا بش تھا لی نے یھ اس مائی صاحبہ سے اہک ب ٹا بھی خطایاءکیمردہ مائی 
برای ماگ انت نال یلا ھگ انت لو مس نے ایک دن ان کے لے میس ددی مار دیکھاجوسرر رنک کے ددہا گے میں تھا تو 
نے ا سکوددی قص سنا :فذدو یک نگردو ن ےگ اورال ن بھی دای قص سناباادردو تے ہو ۓکہا :ضحم خدا تھا یک ہتم دی ہو مرےآح 
دالد ماچررد اکر تے تے اور دعاکر تھے با لا میرک ٹنیاکوایبا کیک ش ہرخطا ف رما نا جس نے مبرابار وائو کیا ے ء رس اڈ دتتالی نے 3 
ٰ میرے والد ما رکی دعاقبول فرمائی نز می راپ کےس اتھٹا کنا اش لی بننقیل رحمت اللتعالی عیفر ماتے ہی ںک پھردہمائی صا ات 
وت ہہوکی اوردہپار کے دیرات یں لگا اور لاو ال لے اشدا کی پا 


0٥ 


(ححص ال وت الرکیزعکی مج اَم ل )۳٣۳:۱(‏ 
(سراعلا ما طاء مس ا ن ابو پدرارڈ ھب ناج مین ععثالن بن قائماز ال زگ (۴۴۲۳:۱۹) 
(ال ما مع ہدافقاد اکا بی یش ارشعنل کور جال ال فا نکیا ٹی(١۱)‏ دا کنب دالو ان بخدادعراتی 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹66:01777:/3 


عادا تما رہ 
وقد نقل عنه الذھبی قو له :عصمنو الله فی شبابی بانواع من العصمة وقصر محبتی علی العلم وما 
خلطت لعاباً قط ولا عاشرت إِلّ امٹالی من طلبة العلم وأنا الآن فی عشر الغمانین اجد من الحر ص علی 
العلم أشد مما کنت اجدہ وأنا ابن العشرین وبلغت لائنتی عشرۃ سنة وأنا الیوم لا أری نقصاً فی الخاطر 
والفکر والحفظ وحدّة النظر بالعین لرؤیة الأھلة الخفیة إِل أن القوة ضعیفة . 
قال ابن الجوزی :کان ابن عقیل دینا حافظا للحدود توفی لە ابنان فظھر منه من الصہر ما یتعجب منه 
تمہ 
رت امام از ابی رید اتا لی علیہ نیل فر مایا کش اب نیل رہمتۃ الد تعالی علیفرماتے ےک اید تعالی نے بے ہرطرح 
سے پا امدائن رکھااوری س بھی بچھ یھی لکووکر نے دالوں کے سج شر یں ہوااورٹیس نے ج بھی صحبت اخحتیارکی ہے فو دجن کے 
البوں کے سا تع بیٹھا ہوں اوراب یں اسی سا لکاہموگ یا ہوں جع مکی میس ہم یس ٹیس سا لک یع می راھی اب اس سے پک ے٤‏ اورچھ 








جچچجہ بد <- ۲ 
( تضوفوٹ تع شی ال ع کی اہ را نز ندگی اور جودہمانظادی نظام )02ھ ) 


ار سا لکی عم می نظ رک راورسوی نشی اورقت حا فظہتھااب ایا سا لک یع رم لپ کرد لی ےکا و ے اکیاد باادد با رکیک سے با دکیک چنزکھی 
ام ریپ بای کے دک لیا ہو صرف ایک فرق پڑ اہے اورد کم ر ےش می کن در یآمکئی ہے۔ 

حرسث اکن جو زکی رم ارد تھا نی فر ماتے ہی سکاب یٹیل رحرتۃ اڈ دمتالی علِخہایت دیندار عدددالند کے محافظ تھے ء اوران کے 
دوسخےفزت ہگ اص کیاک رجش کو دک رکراوگ تب ہو مے۔ 








(حصرالر ولی: الزرمکیعکی ٹج لصَل ی (۳+۳۱) 
وکان یقول :ھمذالمذھب إنما ظلمه أصحابه لأن أاصحاب أبی حنیفة والشافعی إذا برع واحد منھم فی 
العلم تولی القضاء وغیره من الولایات .فکانت الولایة لعدریسه واشکعغاله بالعلم .فأما أصحاب اأحمد : 
فانه قل فیھم من تعلق بطرفٍ من العلم إلا ویخرجه ذلک إلی التعبد والتزھد لغلبة الخیر علی القومء 
فینقطعون عن التشاغل بالعلم, 

جم 
ا نکتیل رم ال تال علیفر ا کر ےکی طز ہب نک خودصبوں نے ج یکا ےءاس لل ےکاحناف وشواطھ 5+ 
سے جب کوگیعلم می ںکرال حاص لکر یتاذ ان سکوعبدہ قضا وط تو کرد باج تا تھااوراسی ط رح جن رلیس کے شع ےھ ضسلک ہوجاتے 
تھے اوررے امام امہ کل کے پیردیار وٛھی مشفو لی تکی طر کب یہ ے ہیں بی ےتصویملم سے فا رر ہو ۓ عبادت اورز ہدک 
رف مائل ہو گے ا سک بھی وجیھی اوردہ یتو م کے لئے خی رکے جذ بے ےکاشرتی س٥*معیی'‏ 


ھے۔ 





ہےےو ہے۔ ۷۷۷۷۸۷۰ 


۱ ۰ 1 تل 
ز مل طیقات الحنابل انالد گن پھپدائرنن من اج مر جب :الکن انا جی الد اددئی ما تی یی (۱: ۴۴ 


وتوفی أبو الوفاء رحمه الله تعالی-بکرہة الجمعقہ ثانی عشر جمادی الأولی وصلی عليه فی جامعی 
القصر والمنصور .وکان الجمع یفوت الاإحصاء . 
ت89 
ےئ ابوالوفا پھلی اب نیل رحمتۃ ایل تا لی علی نے جح عتۃ السارک سنہ( ۵۱۳ھ ) ججمادی الاولی میس وصا ل نر مایاءاورا نکا نماڑ چنازہ 
اع انقصر اور جا مع منصو ریش ادا یک یگئیءاورائی نعدادیی لو کش ریبک ہو نت ےکا نکیکنفی ضہہ کیتی۔ 
(ا لوا ہل می ٹی طبقات احدفی :مبدالقادر بن تی الد من نی )٣2۰۷۴۰۱(‏ گنن فاق کی 
آب رم اڈ مفا لی علیہ ےم روک ایل عر مث 
أَخْبَرَت ِشعاق اسَدیٗ :آنا مو الَفَاء یش ان عبذ اللہ ٔیْ اَخمَة الحَطیبُء أَبَا اہو الْوَقَاءَعَلیٗ بُنْ 
عَقِيلِ الْقِة اود مُحَمّدِ الْجَوْهَریٔء ابا ابو بکُر الْقَطیعِیٰء ء نا شر بْنُ مُوسَی تَا مَوْذء بَا عوْف, عَنْ 





سکفتہ سےسہشست ۱ 


رس 








سُعیدِ بٔنِ أہی الحَسَن قَال :نٹ عِسذ بن عَبّاسٍ إِذ اه رَجْلْ لَقَالَ إنْمَا مَعِيخًی من صَنعوِيَدي 
اَْاوبِ فقال ابْنْعَبَاس ِسَمِعُث رَسُون الله صَلی الله عَليْه َسَلَم يَقُولُ :مَنْ صَوٌر صررَةء عَدذَبَهُ اللّ 
وم وو عتی َكغ اہ ولیس تنائخ اھ یدا. 
مجر ہٹ 

ہیں اسحاق الاسدی نے تردی یں ابدالبقا ہعیش تے بعد یٹ شروف تائی بی ںعپدامن اھ بن اتطبیب نے بعد بث 
شربیف ستائی :یں ابوالوفا ععلی نیل الفقیہ نے مہ چنا بیس اموشھر الچ ہرکی ریت ال دتھالی علیہ نے مہ پیا :یی ابوبر اتی نے تتایاء 
فی پچ میروںن یس ہو نے بتایا ایل کوف نے سعیربن ال اشن سے بیا نکیا دو کے ہیں: 

7 اس لاس زیم ےا یہد ھک یئ اک غیت می ماشر داد شر ے 
گا :تضمورا می راکا مم یہ ہ ےک میں اپنے ہا تد ےٹوم میں بنا اہول اور نمکوفروخم کم کے اپئی روڈ کا ا ہوں؟ تو صحضرت سید نا عحبدا رڈ بن 
انس ریشی ادڈ رک مانے فرمابا: بیس نے رسول ایی ہکوفر ماتے ہوئے سن اک گرب مآ مان پگ نے فر مایا : جوشس اہ اص ےے نوم میں 
بنا تا ہے الد تھی ال لکوت بتک ع اب دےگاج بک اس میسن دہو رد زہبچھونک نےءادرد و روح پچھ و کگھیکیں گا ۔ 

(جارئالا سلام دوفیات ا شا ول علام :الد ری ناو پدارڈ ش٠‏ نآ بن عثان بن انا زالزگی )٣۵۲۳:۳۵(‏ 
(سی نا لی داود : آبوداودسل یمان بن الا شحث بن لاحات بن ہش بن شداد بی نم ردال زی اس٥شعا‏ نی( 1۳ٌٰ) 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 7711 7 


) تضورنوٹ انم ری ار ہکی ما برا :رز ندگی او رو جودہ مانھا بی نظام 








عحوث ما اک ری اش دعشہ کےےاصصوف کے استاد 


اخ الما رما وین سلم بن دد و ابو رایداللد پائس ال تی رحمت اڈدتعای علیہ 
ات حا درحمی* یتما لی عل کی ولا رت باسعادت 
حمَادبن مسْلم بن ددّوہة ابو عبد الله الدبّاس الوٌحبیٔء رحبة مالک بن طوق .الراهد العارف وَلِد 
ٰ بالرخبَّة ورنشأاببغداد .وکان لے کارکاللدئسءیجلس فی غرفتھا .وکان من الأولیاء اأولی 
الکرامات .صحجبّه خلُقء فارشدھم إلی الله تعالیء وظھرت ب رکتە علیھمء وکان یعکلم علی الأحوال . 
ٰ وقد کتبوا من کلامه نحوا من مائة جزء .وکان أمَیْا لا یکتعب. 
رم 
او بن لم بن ددو 7 او الہ اللد بس الرتی رحمنۃ الد تھالی علیہ ما تک بن طوق گر وزارت ہ ںکی ولادت 
ا سحادت ال ریت می ہوگی اور بخداؤسلی بیس پروی پاگی ءاورا کاو سکاکاروہارتھا زوش شک وشیرہ بنانے اورفروش کر ن ےکا کاددبار 
کو کے ہیں ) آپ رم ا دتھا ی علی ای ےگح میس بی ٹیش رت جے اورآپ رحمتۃ ااڈددتنالی علیرصاح بک رامت اولیاء انل شش سے جےء 
۱ ا نکی کت لوگوں پ بہت زیادہ ظاہ رہوگ اور بہ تج یناو نک وآپ نے ادڈد تھا یکیا جاشب متوج ہکیاءآ پ رمت ا دای علیراحوال اع پہ 
کلا مکی اکر تے تھے اورپ رحمت اید تا لی علی کے شاگمردوں ن ےآ پ رحر اتا کی علیہ کے مفو ظا تکوی ع کیا فو اس کے اج اء ایک وت 
زا ہو گے ءا کک پ رجمتت الد تھا لی علیرامی تھے پچھویھی لک کت ے_ 
(جار ںازا ملا ووفیات ا شا یٍِدالاً علام :تس المد 8 نوع بدرانڈ جم ناج بن علثان بن اما ال زی (۱۲۸:۳۷) 
ا صا در ابق تھا علیکاعلی قام 
قال عبد الرحمن بن محمد بن حمزۃ الشّاھد :رأیت فی المنام کانٌ قائلا یقول لی :حمّاد شیخ العارفین 
والأبدال .وقال احمد بن صالح الجیلیٔ :سمع من أہی الفضل بن عَیْرُرن وکان یکلم علی آفات 
الأاعمال فی المعاملاتء والریاضیات: والورےء والاخلاصٰ 





۷۷۱۷۷۷۷۰۱۷۷۹ 86611017173 77 









اج عبداارتن مین مر ب نجزہ الاب رم الد تھا لی علیفرماتے ہی نک یس نے خواب کیک ھاکوکگی ےکہدر اے :ماد 
رن اورشخ ام برال ہیں ۔اورأ اھر بن الصا رح اشیٹی فر مات ہی ں کہ میں نے ابوضل بین خی رون رت اتا ھی علیکوف رما تے 
ہہ نے اد بن سکم بن دود؟ 2 1م" ہیں ان پراورمچاہرات مل بی اوراخلاگ پہ 
کلام فر مایامرتے جھے۔ 

(جارنٗالإ سلام دوفیات ا لشاہیِدلا علام :تنس الد ناوک پارڈ ٹھب نا عیب نخان بن قّائما گی (۱۳۸:۳۷) 
(الصر پی خر : نس الد نا وع بدادڈشھ بی نأ بن عنان بن ائاز ال گی )٣۴۵ :٣(‏ 





لے 


سس ک‫ لِ۱ل0زظ‫ٗ“ ۔۔ 
سے سسجت لد 
م٭×سمشو- ہے 


7 





ھا وش اکھج ےا 
وقال ابو سعد السٌمعانیٔ :سمعت آبا نصر عبد الواحد بن عبد الملک یقول :کان الشیخ حمّاد یاکل 
من النْڈُرء ثمٌ ترکە لمّا بلغه قوله عليه السّلام إِنّه یستخرجہ بە من البخیلء فکرہ ال مال البخیل ۔وصار 
یاکل بالمنام .کان الإنسان یری فی الوم أَنٌ قائلا یقول لە :اعط حمَادا کذا فیصبح ویحمل ڈذلک إلی 
الشیخ. 


اخ ابوسعرالسمعا لی رحمت: ادتقا لی علیفر مات ہہ سکیس نے الوفص رعہر الو اعد نعپدا میک رحمت ارڈ تا لی علیہ سے تاد کنے جتھ 
کہ :ات حمادرمت ال رتا لی علی ران قبو لجھ کر تے اوراس یل سےکھا تے بھی ے ء ج بآ بکورسول الڈ ھپ کی میبعد ےش ریف 
بی ِنہ یسسخرجہ بہ من الخحیل پت آپ مت ارتا لی عل یت ل کا مال دنا :ا پندفرما تے تھے ءادرآپ ریت اتا علبعرف 
دواشیارکھا کر تے تھے جو نا می ہوتی یں سا کا مل ب بی امام اہی رم ال دتالی علیرنے بیا نکیا ےک وین خواب د بتاک 


ا ںکوکوئ یکہ۔د پا ےق فطاں چزش اد رت الڈرتھالی علیکدےک/11ءلیں جب گج ہوئی ولیک خرمت اقس میں حاضرمدجا جاناں 2ے 
(جار الا سلام دوفیات ا شاہیرِدلا علام : نس اللد یگ نوم پارڈ ھب نا ین عان بن انا زالزگٍں(۱۲۸:۲۳۷) اک 
(الصر پیش ٹر : مس الد ی نوع ہدانڈشب نآ بن علمان بن قّائیمازالذ بی )٣۴۵:۳(‏ 5 
دو حد ببث ما ک سرے ٠‏ 
عَی ابو نعَیْمء عَدقنا سُفيَانء عَن مَنْصُورء عَنْ عَبّ الله بن مرقء تي ابٔي عُمَر رَضِی الله عَنهْمَا: فال :ھی 
اَی صَلی الله عَلَيه وَسَلَمَ عن النْذرِء وَقال إِنه لأىَرّڈُ شَيْنَء وَإِنَمَا بُسْمَخْرَجج ہو مِنّ الَضیلِ. 5 
ہیں الیم نے بعد حیت میا نکی :یل سغیان نے متصور سے اننہوں نے عبدااق بن مر سے اننہوں نے تحررت سید نا عبدرااگ ئن 5 
عھرریی ائیڈ ٹن اے : 
رورغ 


ححضرت سد ناعبداوڈ بی نع ری ادڈہمافرماتے ہی نک رسول ارڈت لگ نے نر سےٹڑع خر مایا ے۷ ءا دررسول ارڈ تن ذرمایا: 
نر تل “سی چچکوا گےکم رسکی ےاورتہ ؟ تچ یےالہ تاس کےذر بی ےت ل کا مال ڈیا لا جا سکتا ہے۔ 


(جااری 7 ا یرہ )٢۳‏ 
| وقال الشٌیخ ابو النجیب عبد القاھر :مرض الشٌیخ حمّادہ فاحتاج إلی التتشُق بماء وردء فحمل !یه أبو 
المظفر محمد بن علیٗ الشّهُرُزُو ری القَرَضی منه شینًاء فلما وضع بین یدیه قال :رُڈوہ فإنه نجس ۔فرڈّرہ 
إلی ابی المُظَفُر فقال:صَذق الشٌیخء کان قد وقع فی طرفه نجاسة وت رکتە وحدہ لأریقہء فنسیت. 































صضورفوٹ اپمضمم دی اح ہکی مجاہرانذ ندگی ادرموجودہ انا تیاظام 








کر حم 
إتخ ایب بد التا ہمت ایند تا لی علیفر ات ہی ںکہجب ا حا دی نس ماللد اس رحمت ا تھا ی علیہ بیار ہو گے و ا نکوعرق 
لاب س وگ نکی حاجت ہوگی نت اروا مظر بن لی الشبر وزری انی رحم الڈدتھالی عل یلگ حاضرخدمت ہے ج بآ پ رممۃ اللہ 
تتالی علیہ کے سا دکھاگیا تق آپ مت ا تھالی علیہ نے فرمایا: اسے دا ئل نے چا ریس ہےء جب اج ا والمففر رحمی وا لی عل یکو 
وایں د یاگئی اورا تی ماد رن اللدتھالی علیکافرما نبھی سنا اگ یاکہ دہ کے ہی ںکہ رس ےن لغ ابا مطفر رحنۃ اللہ تالی علیہ نے 
فم ما الاجا تماد رت اتی علیہ فرماتے ہیں یہن میں ناس تر ای می نے ا کوگرانے کے لئے ھپ ہچ ری وج سے 
جھو لیگیا_ ٰ 
( جار الا لام ودفیات ا شا ِ دا علام بش الد ین ابو پارڈ مب نا بن نان بن انا زالزئی(۱۸:۳۲) 


(الصر میٹ رس ٹر شس الد ینا پڑھراڈ شمم ناج بن عثان بن کان زالزی(۵:۲مم) 
علماءکی انی ںآ پکامقام 
وقال المبار ہن کامل :مات الشیخ العارف,الورع الناطق بالحکمة حمّاد الْدبّاس فی سنة 
خمس ولم ار فی زمانی مشله صعبّه سٹین وسمعت کلام وکان مکاضَفًا یتکلم علی 
الخواطرء مسلوب الامحتیارء زِیّه زی الأغنیاء * وتارۃ زَيَه زی الفقراء متلوُنء کیف ادیر دار. 
وکان شیخ وقتهء یشبه کلامه کلام الحصریٌ کانت المشایخ إذا جاء ت إليه کالمیت بین 
یدی الغاسل . 
رجہ 
و ال ارک می نکائل روم اق تھا ی علییفر مات ہی ںک را امارف پازڈرەصاح ب تق ی رح ت کا رما درحرد ایڈرتوال 
علبیکا وصاال ش ریف سنہ( ۵۲۵ھ ) یس ہواءاوریٹس نے ا نکی صحیت بس پا سا لگمز راے ہیں اور ٹیس نے ان جھیما ا نسا نز مانے 
می سکیل دبیکھا اور یل نے ا نا کا مچھی سنا سے صاح بکشف جے اوردل می ل٦‏ نے وا نے خر ت کلام ق رما اکر تے جھے ہآ ۱ 
نت ای نا لی علی لوب الاختیا رج ببکھی اغخضا اک شٹصی ہیت اپنا لق بھی قرامدالی بھی اس طر ق بھی اس ط رب رط 





۰ 


رت ٹس حاض رو تے نو ان کے سا تےارشے یش ہو تے یس مردوخسال کے با تق میں ہہو۔ 
( جار الإ سلام دوفیات ا مشاہیردا علام :تس الد ی نآ بوحبرانڈ شب نا جم بن عثان مین انا زال گی )۱٢۸:۳۷٣(‏ 
(الصر می خرس ظر کس ال یداش نا مان بن الا (۴: ۴) 
الو مغ رحرت ار تھا ی عل ےکا کڑا 
فقال ٴبو المظفر :ولو لم یکن لحمّاد من الفضائل الَعی اتصف بھا فی زهادتہ 802 الا ان الشیخ عبد 


القادر احد تلامذته. 








چ ہے 


اتا ی علیہ ایے ز مانے کے تھے او رآ پکا کلام شر کی رجمت تھا ی علیہ لام سے تا جن تھا شر کرام جب ا نکی ٰ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


207 





تضورفوٹ انم یی ارح کی مہ انز ندگی اور مو جودہ ھانقاعی نظام 
تم ٰ 
انم ابو مر رت انتا بی علیفرماتے ہیں اک ممادرتمت ال دتتحا لی علیہ کے وو فضائل بھی ہہوں جن کے ساتھ ا نکومتصف 

کیاجا تا ہے چییےنتسوف وزراورق کی وغیب رون ان کے لئ ا تاب یکائی ےک اتی الا ما براقا درا یلاک ی رشی ارلدعنہان کے ش ارد ہیں ۔ 
( جار ایا لام ددفیات امشاہیروالہ علام :شس الد نوع بدانڈ شرب ن مھ بن عثان بن اما زالزتی )۱٢۸:۳۷(‏ 
( لص می خری یر : شس الد بی ناپ وع یداش ب٢‏ نأ ین عثان بن قانما زال زی (۵:۳مم) 


ادن تھمالل با سک ش ار دی میس 


وقال محمدمحمدالصلابہی رحمة الله تعالی عليه کان الشیخ عبد القادر من تلامذته . 


مرج 
تنم مر لصر من ا تھالی علی کت ہی ںک راغ الا ما محبدالتا درا لیا کی ریشی انشرع ات ای ن سکم بن دودق الد پا رم 
.ال دنتھا یع ک ےپ اکر دج ا 


(حصرالر ولیۃ الرمکییعکی رم الشل ں(:.۳-۳×س 
ال ماس پزالقادرالکیلا بی شی اش رعنل کور سال الد بن فا الگا نٴ(١١)‏ 
امام پا نی ریت ال تا ی عیفر 1و 

قال الامام یافعی رحمة الله تعالی عليه :الشیخ الکبیر الولی الٹھیر ألعارف باللمہ الخبیر ذو الکرامات 
الکریمات والأحوال العظیمات والمقامات العلیة والطریقة السنیة أبو عبد الله حماد بن مسلم الدباسء 
کان أمیاء وفتح عليه بالمعارف والأسرارء وصار قدوۃ لامشایخ الکبارء و کبرت بە الأصاغرء وھو 
الشیخ الدڈی حضعت لە رقاب الشیوخ الأکابر محیی الدین آبیٰ محمد عبد ألقادر الجیلانی -رضی الله 
تعالٰی عنھمء ونقعنا بھم آمین -ولکل واحد من الکرامات ما لا یسعه إلا مجلداتء 


امام اتی رم اید تنالی علی سکتے ہہ سکہ بہت بڑ ےکی مشھوروٹیء عارف بائند صاح ب۔کر امت صاخب احوا یعظیمےء صاخٹ 


مقامات عالیہءعر یق سعیہ الو برایشرحماد ین سم الد باس رحمتۃ اد تھالی علیا ھی تے ء الد تھالی نے ان برعلوم وشمحرفت کے درواز ‏ ےکھول 
در آپ من اللدتعالی علیہ مار کبار کے بھی استاد بین گے اوریچھو ےآ پک کت سے بڑے بین گے اورائن یں ایک بہت 
ہڈانا متخ الا ما سم بدالقادرا للا لی ریش الشحنہکاچھی ہے جن کے لے اولیا وگرالم نے ایگ دمیں چھکادمیں ءا تا یمیس ا نکی بات 
ےنام از یت رک ےک ا نات سا کت کن کا ےکن شس رتا روی۔ 
( مر :الجنائن دعبرة امیقظان :ا اش حخیف الد لین عبداد رم نأ سحد نی بن سلیصسان الیاٹقی (۱۸۵:۳) 
حافظظ ام نکش ررمممت ا دنتھا ی علی خر ماتے ہس 
قال اہن کثیسر رحمة الله تعالی عليه حَمّاد بُنْ مُسُلِم الرخبى الدَبّاسء کان یکر لهُأَخُوَالَ رَمُكَاشْفَاتٌ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





ضورنموٹ الف شی او رع ہکی ماہرازہز مدکی اورمو جودہخانقا تی نظام 
وَاطَلاعٌ عَلی مُغييَاتٍء وَعَيْرُ ذَلِک مِنّ المَقَمَاتِ. 
ہم 
ا ا وی نس الرتی الد بااس رم2 اش تھی علیمآپ کےاحوال وکا ت اورمخجبات پرآپ کےتجر پان ےکا فک کیا جا تاے 
اور دن رمتقاما تکا ھی زگ رکیاجا تا ے۔ ۱ 
(الہ را والہا أبوالفد ام اس عیل بن گی نکی رالترشی البصر ین ال رضػ تی )٥۵۱:۱۲(‏ 


ایام الزڈھی رم ادتیائی علیہ ون 


َكَانَ يَجِلس فی غَرقَة کارکە الدذبسء ای أويَاء الله وی الکرَاقاِ, اشفع بشحيہ خلق, ء کان 


کلم عَلَى الإخوال. 
ره 
ا حمادالد پااس رت ایل تنا لی علیرای ےکمرہ یٹس ٹیش رج تے اورآپ ریت اتی علیراولیاء ادس سے تے اورصا حب 
کرامات تھے ہبہ تک یوق ن ےپ رحمت الد تی علیہ محبت سے پا یا ہے ادرآپ احوا لقلوب پکلامفر مایاک/رتے تھے۔ 
( سی علام الخاء ٰ تس الع ی الو پرانڈرشھ می نک من عفان جن انا زالزگی( )٠۰۵:۱۲۴‏ 
ٰ (جا راب ن‌الورری :عمرربن مفف رب رین راہ نک لی الغوارس مہ تض٘شس ءز بین الد بین اہن اموردیی اع ری الکن ری )۳٠٣:۳(‏ 
مدانشا پی ےوورگیکا ہب ٰ ٰ 
قال الشیخ حماد بن مسلم الدباس رحمة الله تعالی عليه ”گے سد سک سٛ 
۸دمہ 


انحوی نسلمالد باس رہممت الطدتنالی علیفر مات ہی ںک تیر لوق ٹین بی نکر ہناتھے ادڈدتالی سے دورکرد ےگا 
(الوائی الوفیات :صلاب الد نل بین] یک ؛ نک رانٹرالصفر ی(۵۳:۱۳٥)‏ 
ولا بیت لم کال 
وقال الشیخ حماد بن مسلم الدباس رضی الله عنه :-من ھرب من البلاء لا یصل إلی باب الولاء . 
مھ 
ا ادن سلم‌لد با رس اڈدتھالی عیفر بااکرتے تھے جوٹشس مصیبت سے پھ کنا ہے دو ولا یت یس با سکتا۔ 
(غزرات الذ ہبڈ أخہا رن ز ہب ٹاش ہہ ہ'ٌِ0) ی تی الف رع 3 )٣۴۳‏ 


۷۸/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷ ۵۹6 81011171 


( جار این الوردیی : عمرین مفظف من عمش رام نا لی الغوارس ؟ؿتفعھص مز بین الد بین این الموردیی اع ری !کن ری )٠٣:٣(‏ 





اتتاکاٹ با ک ری الٹعنہ 
ت. ا مآمحد ث الفقیہ یق الشا رح مصن فک شسکجبر: ااوش حتف بین اجرالبخد ادگی 


السرارج رم اڈنا یع 

ولادت)) سعادرت 

اُبو محمد جعفر بن اُحمد البغدای السراج :الشیخ البارع المحدث المسند بقیة المشایخ کتب بخطه 

الکٹیر وصنف الکتب کان صدوقاً الف فی فنون شنّی وکان ممن یفتخر برؤیته وروایاته لدیانته ودرایتہ 

ثقة مامون عالم صالح ولد سنة (ے ٥‏ ٥٢)ھ‏ وتوفی سنة ( )٤٠۵۰‏ 
تمہ 

وش جتتفمربن اح البفد اد السرارخ رحمت انتا لی علیہ ج کات ال بارغ ءامجد ث بنقیی ال شارغ ہیں نے ببہت ڑیادوککھااور بہت 

کب بین رمق ما میں او لف علومفن پرآپ نکیا مکیا ہے ہپ رمت اڈ تھا لی علیبحد ین کے نز دیک صصد بل تھے ءآآپ رحمۃ اڈ 


تا ی عل یی زیارت اورآ پک ردامت پف گیا جاجا ےآ پگ دمانٹف کی وج ےءاوررواہت لآ پ ریت اڈ دتھالی علیہ مامون ءصار ْ 


اورعالم ہیں ء اورپ رحمتت او تھی علیہکی ولا دت پا سنحادت تد ڑ ےا۳ -“ مین ہوک ؛جیہوفاتش ریف سنہ( ۵۰۰ھ )شش ہوئی- 
(عحصرالیر ول الیک یتعکی مر اش ىی )۳+٣۳۱(‏ 
7۶7 جات ر6 ٰ ْ 
وکانت ولادشہ إما فی آواخر سنة سبع عشرة واربعمائ الااراللَة لمانيلَرۃ وأربعمالۃہ وذکر 
الشریف أبو المعمر المبارک بن اأحمد بن عبد العزیزالأنصاری فی کتاب '"'وفیات الشیوخ "ان مولدہ 
سنةست عشرۃ ببغدادء وتوفی بھا لیلة الأحد الحادی والعشرین من صفر سنة حمسمائة ؤدفن ہباب 
ُبرز. 
ت2 
تج ابو تتفربن ا حم الس ارح البفعد ادکی رحمتت الد تا لی علی کی ولادت باسعادت ایک قول کے مطا لی سنہ لے اھ ) کے 
آخر بیس ہو گی اورایکقول کے مطا لق سنہ(۱۸ مھ ) کے تروع میں ہوگی یں اس الشر یف اب وا حم الیسبارک من امم من عپرال زی 
الا تصماری رمتت ال دنتھا ی علبیرنے ایت تاب ”وفیات الٹموغ “۲ں کر کیا ےکآ پ رم الڈد تھا ی علیہ ا دت باسعادت سن( 
۹ھ ) یل ہوگی جج ہآ پ رحمت ادتقا لی علیکی وفات ش ریف ست(۵۳۱ سیت ا مطفر میں ہوکی اور پک ن ٹین 
باب ابرز یل ہوئی۔ 
رتخا ان "ِ0099 ربی(:ے۳۵)دارصادر ۔بیروت ) 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





ور 210 





شی ال عنہکی مواہ راز ری اورمو جودو مانظا بی نظام 


می رین کی نظ شی سآ پ مت اش دتتھای علیکامقام 
قال الامام یافعی رحمة الله تعالی عليه:حافظ عصرہ وعلامة زمانه :ابو محمد جعفر بن أحمد المعرورف 
بابن السراج القاریء البغدادیء صاحب التصانیف العجیبةء منھا :کتاب مصارع العشاق وغیرہء حدث 
عن بی علی بن شاذانء وأبی الفتح بن شاھین, والخلال وغیرھم .وأمخذ عنه حلق کثیر؛ ولە شعر حسن. 
تم 
ام یافقی رمتت ان تھا ی علیفرماتے ہیں: حا فطخصراورعلا مز مان اش مجنظمرین احم اروف ابن السرارخ الظاری البفد ادکی ر7- 
ا تھالی علیدنے پک بجی کنتبک مرف مالی ہیں ءان مل ای ککتاب کاب مصار العا ق'''ے۔ 
آپ رم اتا ی عل ان وی بن شاذ ان ء ایام جن شا ٹین ء الال اوران کے علادہ بہت سے محد شین سے عد بیث ش ریف 
با نکیا ہیں اوران ےھ بہت تےلوکوں نے حد یثش ریف بڑعھی ے اورشع بھی اس اک اکر تے ھھے۔ 
( مآ الا ن پیش رحفیف الد بین ہدایدم نأ سعد بن|عپی بن سلیان الیا لی )۱٣۴:۳(‏ 
امام الی سی مت ال تتحای علی سکتے ہیں 
کتب بخطہ الگییْر ؛ وَصَیْفَ کِتَاب ''مَضَارع العشّاق'ء وَکتَاب "'حکم الضْبْیَان '' وَکتَاب 
'مناقب الحَیّش " نظم الگیئر فی اللہ وفی الموَاعئظ وَاللَةہ وَفِعرّہ حلوٌ عذب فی ُنُْنِ 


القرِیضء الْعخب السْلفِی ءَ عَلَيْہ ا رلہ فلہتق جُرُماآء مدث ببَمْداء وَمضرء +دعٌشق: وسمع 
مه شَیَمْۂة الو انخاق العتان. 


مرج 








اخ ابویشھ تتظرابین اص الس ارح الیفد ادگی رجمنۃ الل تھی علیہ نے پت ز اد ون رمیف مایا اور 'مصارر العثایی' اور ٰ 


تاب '' حم الصییا ان نا اورکناب'' منا قب صسش ؟ ‏ جحر ری اورمسرائل فقہی کوع یکن مکیاء اورمواحنط اورلض کشم 
کیاءاورشعرفن ن ق یل میں بہت بی خو لصو رس ک اھر تے حے ان کےتہ اخ اہ الف ریہ انتا کی علیہ نے ان 
کے اصول میں میں اج اءئئع سے ہیں ء امت اوو شحف رین امم الس رارح البفد ایی رحمتت ای دنت بی علیرنے بفد اڈسسلی بعصر 
اورزشن میں احاد بیث مبارکہ میا نکیل ۔ بیہا لک کفکہان کے جج ابدا حا الال رح االند تھا لی نے بھی ان ۔سےسمارع 
آے 
(سیرآعلا م الا ء : شس الد ناپ وعبدرایڈ شرب نآ بن عژان بین ڈانما زالز تی )٣۱۵:۱۳(‏ 
(ال ما مع برالقادرالکیلا فی ریشی الشعنرل رر مال الد ین فا لکیڑا لی )۱١(‏ 
تن ایی لصدٹی رت ایل تنا لی علی کت ہیں ٰ 
وَقَال ابو عَِی الصٌّذفی :مو شَیٔخ فَاضٍلء جمیلّ وَسیم, مَشْهُوریَقّهَمء عِنْدَۂ لُعَة وقراء اث َكَانَ العَلِبُْ 
عَلَيْهِ الشْعْرُء نَم کتاب ''التنبیه "لأژبی إسحاقء ونظم منسگا. 





۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 811001171 


فو ٹ )تنم شی الیل رع ہکی مہا نز ندگی او رسوجودہ مانقا ئی نظ م +21 








ہج 
ٹغ ایی الصرنی رضنۃ الل تی علی کت ہیں :تغ ابوش تفرابن ام الس ارح البفد ادکی ریہ انل تھالی علی شنء اض ل نہایت بی 
خوبصورت تے ماہرلفت وقرات تے اوران پر الب شع مگو یعھی ہب رم اید تعالی علیہ نے ابواسحاقی رممنۃ اد تی علی دک یکتاب 
کراب التقبی' لو مکیا۔ 


( سیآ لام للا ء :تسس الم نآ وع بدرانیڈ یش ناج مین عثالن بن انا ز ال گی (۲۱۵:۱۳) 
(زال ما براقا درالکیڈا بی رش ابشعنرل کت ر جال الد بن فا رج نکیا ٰٴ(۱۳) 
قاری مکی حرت شع تی 
وقال السلفی :کان الإمام يُففتَخر بوٌویَعه وَروَایَاه لِدیَائعہ وَدِرّایتہء لَه توَالِیف مفیدةء وَفی شیُوُحہ کثرةء 
اأعلاهُم ابْنْ شَاذَانَ. 
وَقَال حَمّاڈ الحَرٌانی :سُیْلَ السّلَفِیَ عن السٌَُرٗاجء فَقَالَ :كَانٗ غالِماً بالقراء اتء وَالخوء وَاللغةء بِفَة لبتا 
ہے 
یغ ابوبکر بن ابی رحمت اولدتعالی علیف مات ہی ںک ات ااوش ضف ربن اح الس ارح البخدہ ادکی رمع اڈ تی عل یهت عا لم ؛مقری 
جھے ءا نکا ادب طاہرتھا- ٰ 
طا ہراشھلفی رن الدتھالی علی کے ہیں یددہامام ہیں جن نکی ردایت وڈ یارت پت کیا جا تا ہے ؛آ پت رات بجوہلشت کے عالم 
بے :لہ ءخحبت اورکجرالتصاغف تجے۔ 
ےن حمادالھ انی رحمتۃ ا تھا کی علی کت ہیں :ا فی رۂ از لے اش یفن اسر ابد ادی یلق 
سوا لکیا افو انہوں نے فرمایا :مہ یرددامام یں جک نکیا ردایت دز یارت پبفظ رکیاجا تا ہے ءآ ب قر ات بح ءلخقت کے عاللم جھے ء لہ شرمت 


او رگج الصا نف ھے۔ 





۷۸۷۱۷۷۱۷۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 7 


( سیآ عالطا عم : شس الد بی نیو راڈ شب نآ من عثان بین انا زالغگی )٥۱۵:۱۳(‏ 
۱ ٍ (ال ما مع بدالتقادرائکیطا می ر٘ی انشرعنرل رک ر جمال الد ین فا رج نکیا بٰٰ(١۱)‏ 
افخ ابیش رف رین امرالبفد ادکی کے مشا حا کرام 
قال الامام الذھبی رحمه الله تعالی عليه 
سَمع :بَا عَلِیّ بن شَاذَایَء تم سَمع بِنَقْيه می أُخُمّد بن عَلِیٗ الوُزٍیء وَمُحَمّد بن إِسْمَاعِیْل بن سُشبک, 
ابی محمد العَلْلَء وَعُبَيْد الله بیٔ عُمَرَ بن شَاهیْنء وَابی مُحَمّدِ الحَسَیْنِ بنِ المقَیرء وَابی طالِبٍ 
الغیْلانیء ابی الحَسن بن القَروِیْیء بی إِسْحَاق البَرْمَکی ابی القایم التو حیء ابی القتح بن 





تو رو ٹ )تنم ری الع کی ماپراشہز نرگی اور مو جودہ انا بی نظام 212 


شِیطاء وَعِذَة ب تاذ 


وَسَمع مبِنَ ہت تم سے سے ء ومن مُحَمّل بن إِبْرَاهيمَالاردََُاِیٰ, 

وب مصر بن :الشْیٔخ بد العَزِیٔر بن الَسَنِ الضرٗابء وَطَائِقة وَبِدِمُشْقمِنْ ابی القَاسِم الجنائیء 

وَالحَطِیْب؛ وَحَوّج لَه شَیْحْةُ الحَطِیْبْ حَمْسَة اَجڑاء مَشْهُورَة سَوِغتَاا. 
قم 

امامالزگی رنہ ای لتھالی علیفماۓ ہ سک اج ابوش عفر بن ا البفد اادیی امسرارج رحمتۃ ال تنا لی علیہ نے ارول ںخازان 

سے حعد بیث جح رای فکا سا لیا ء پر نج اص بن پل التو زی بجر ین اسمائیل ین سیک ا وش الفاا لی عبیدر اہن عمرشا بین ء الیشجراسبین جن 
انقتر,ابوطالب الخیاا لی ءابواسن برع القرزو نی ء اہواسحاق اب رگی ‏ ابوالقاسم التوی ‏ ابو اخ بن شیطا اوران گت ہے 
ہے بح مین سے عحد بی ٹج لیف فکاتمال عکیا 
اوراسی طر اج الیا فط ابوٹھ راسخر گی ء سےکگر می یل حد بی ثکا سا عکیاءاورش بن ابرا یم الا ردستا لی ء او رمص میس امت عہ الع 





بن ائسن الضراب سے اوریک بببت بڑ گی اعت سے ءاوروش میں ان ابوالقاسم الحنا کی سے اوراخطیب رج اد تا لی سے حد بہث ۱ 


ش ریف کا سا عکیا۔الن کےچی نے ا نکو باریچ اج اء جویحطظا سے ے دہ ہم نے اپنے تن حم اید تعالی علیہ سے سے ہیں۔ 
(سر]آعلام الجلاء ا نس ال نوعب رایڈ ھی نک م بن عثان بن کانما ز ال بی )٥۱۵:۱۳(‏ 
(زل) معبرالقا و کیا ی ری الع اکر جال الد من فا کیا )٢(ٰ‏ 
اخ ارم تفر بن اح رالمسرا رح البفد اد ی1 شا کرد 


7 _:۰- 7و 


حدت عَنه ابُسُهُ؛ تَعْلّبء وَابُو القّایم بن السُمَرٴگندیء وعبد الرهاب الأنماطیء رمحمد بن ناصرء وأبو 
بْ البَصٌٔی وَأبُو اھر السٌلَفِیٰء وَسَلَمَان السْحَامٌ, وَبُو الحَسَنِ بن الخلَ, وَعَبْدُ الحَیّ الیْوُْفِی 
َبُو الفَضْلٍ خطیبُ المَوصِلء وَشُهُدَة بنٔت الإبری وَخَلَق کَبیْر 
تی" 
تج ریش رف رین اص دالس ارح البفد دی رحمت اتی علیہ سے عد بیث‌شرلیف با نکرنے والوں می 7ب کے ہے لفضل بین 
فرابن اح الس ار البفد ادیءابوالقاسم بن اسر قنذری +بدالو ہاب الاخمای بش بن نار ا بے بن بی :ابو طا را صلی لان امام 
؛ااواصسن ن ال بح ران لی ابو فشتضل چ ور مل کےخطیب تے ء اورتہدہ نت الا برک ادرالن کے علادہ بہت سے لکول نے آب 
مت اش دتتنا لی علیہ ے عحد بیثشٴ ریف کا سا عکیا۔ 
(سیآعلا الجاء ٠‏ تس الل ری ناب وعبدر اڈ شب نم بن عثان کن اما زال گی ( )٦۱۵:۱۳‏ 
(زال ما م کپ رالق و رالکیلا فی شی اللعنلرکتزر جال الد من اج گیا ل(٢)‏ 
آب رم ال دتتنا لی علی ہے م روک ایک عرد بہث 


۰ 7 کے کے ےر ے6 ً 
روی لنا محمد بن یاقوت الخیاط وعبد الکریم بن محمد بن أحمد قالا :انبَانا عَبّد الٰومَاب بُن احُمّد بن 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


رت 





ریشم نی ا ع کی ماب ران زندی اور تورم انا یظام 











کل تی گر 0ا10 لد مان ام بی الحْسَیْي السَراجء بنا الحسَنْ ُنْ أَحْمَد بن 
شْاذانَء انا عُنْمَايُنْ أححمَد ہي عَبُد الله الدكّاء حدلا یی بُنْ کس انا عَمرُو بْٔعَبٍّ الغفار: 
حدئن الاصمَش وَفِطُرٌ عَنْ إِسُمَاعِیلَ بُنِ رَُجَاء ٍعنْ وس بُنِ صَمُعَج عَنْ ابی مَسمُودِ النضَارِیٗ قَال :فَال 
رَسْول الله صلی الله عَلَيْهِ وسلم لیم القوم اقراهم ِیَِابِ الله عَر وَجَلَ, ء لن گانوا ھی القراءة سَوَاء' 
فعُلمُُمْبالشنْة ء فَّإ کَالُوا فی الم بِالسُنة سَوَاءٴَأقدمُهُمْ هجْرَهء فَإن کالُوا فی الھِجْرَۃ سَوَاء'َأُيَرُهُمْ 
ىنّاء وَلا يُومَ رَجْلْ فی بَبِهِ وَلا فی سُلطاِهء وَلا یُجْلَس عَلی تَکرِمیہ إِلا بإدُنه. 
مرج سٹرور بہث 
یی ین پاقت فا ط بکرم جن مھ بن ات نے با نا یں عہدالو ہاب بن ام بن مج الل کی نے بتایاء “سیا 
ابی تفر بن اجد بن ]بین السرارخ البفر ادگ نے ایا یں اشن بن ام بن شماذالن ئے ایا "یں نان جن ام٠‏ ہنیعب دا ندال رقال نے 
تا با :گی ں شی می نچنغر نے بعد یٹ ش ریف جیا نکی :پئیںعھرد ین عبدالغفار نے بتایا یں لامش اورفطرنے ا ایل بن رجا سے 
ہو نے او بن کیم لے انہوں ے الہ نیدالمارگی ری الع سے بعد شش رف میا نگا: 
تر ی۰ نحدث 
ات رسول !نٹ نےفر ۷ مکی اماصت دہش سکرنے تاب اکا سب سے زیادجلم تاس اورض ےا یق اترتا اہ 
اگکرا نکیا قرات مماوی ہونذ وش امامستکرمے بج نے ان مس مب سے لے ارت اض یس رگن : 
اماص کر ےج لکی عم رسب سے (یادہ نہ :لی کےگھ را دا ںکیگومت نویس امش ہن دور نی کی اجازت کے خی را سکیا 1 
مند پر ٹیگھے_ 


72٦1 


۷۷۰ذ۰]ء/۸۵م٣‪_3۰‎ 


و ئ"م,/ > 
(مصندا ئمیری : لوک راید بن النز ہی رہن گی بن عیی ادا لت گی الا سمری! ری ائی(ا:ےا ہگ ٠‏ 











استناوکوث با پا ک ری العنہ 
آ برا گی بن الا ام پان بنا رین ان ود ایی رت ال اپ یع 


ولاد تپ سعادت 
کان الحافظ عبید الله بن عیسی الأندلسی یشنی عليه ونمدحه ویطریه ویصفە بالعلم والفضل وحسن 
اإأاخلاق وشرک الِفضول وعمارۃ المسجد وملازمتہ ولد سنةز ۵۳ ٥)ھ‏ وتوفی سنةز( | )۵٥‏ ھؤلاء 
من أُشھر شیوخ الشیخ الامام عبد القادرالجیلانی رضی الله عنه الذین اأخذ عنھم وکان لھم الأثر الکبیر 
فی حیاته . 
ج- 
اخ مم لص مہ ولک یسکس اد دای الام ری رم ارتا ی علی. نے اجّخ اإوگپرادد 
سی بن الا ما م ابپشل بسن ن۱م الگ ےر ادی ا پ یی نت الل تھا ی علیونے رت کی ےاورا نک شا ن4م ضل | ج 
ایرنن اخلاق کے ساتھ میا نکی سے اور جج کہا ےکا این انا رحمتۃ ااژشدنتھا کی علیہ مسا زی رکی ار تے حے او نسح | پ٦‏ 
پیر اکر تے تھے ء ا نکی ولا دت باسعادت سنہ( ۴۵۳ھ )جس ہوگی اوردفا تشریفسن(۵۳۱ھ )ٹل ہوئی- 
پم+موسشسشحو یی کپ کی صحبت او ریحن تکااڑ ے جو ان الامام 
عبرالقا درا پیا گی ری ار دحنہکی حیات مبا رک شی ظا ہرہوا۔ 


۱ لے [1(2ا۷۷۵۹۶۹6۴6. 


(عحصررال رولت الرمک یتعلی رم الشل لس بس | نے 
ٍ (ال ماس برالقا زایا کی شی ا لعل ہکن ر جال الد جن فا رج لیا زہ اڈ 
ال پرانش من انیڈ رتا ی علیہ کے ما کرام 
قال الامام الذھبی رحمة الله تعالٰی عليه :وأبو عبد الله یحیی بن الحسن بن أحمد بن الہناء البغدادیٰء 
روی عن بی الحسین بن الہنوسیء وعبد الصمد بن المامون .وکان ذا علمٍ وصلاح. 
الا ماممالوپدانڈی بن صن بن اہن الما البخد دی رم ازڈرتھا لی علی ات اون بن الا ہنی الا با مب الد ین 
الما موان ریہ اڈ تھا یعچنکم سے روابی تک اکر تے جے اورپ دنت اتا لی علیرصاحب عم وصلاح تے۔ 
(ااصر می ضس ٹر : مس الد یناور ارڈ شی ن جن عثان ب ناما ز ال بی (۴۴:۳) 
( مر ا لان دعب ۃ اميتطان : پیش حغیف الد من بدائڈری نآ سعد ب لی بن سلیمان ال یاتّق (۱۹۸:۳) 


تو رفوٹ ام یھی ال نکی مہا نہذ ندگی اور/و ور ماقای نظام 












٣اباحدیث‏ 
قال ابن رجہب :ولد یوم الجمعة رابع عشری ذی القعدةء سنة ثلاث وحمسین وأربعمائةء وبگر بە أبرہ 
فی السماعء فسمع من بی الحسین بن المھعدیء وابن الأبنوسیء واہن النقورء ووالدہ بی علی بن البناء 
وغیرهم. 
ہھے 
ال ام این ری مب ری ال نتمالی علیفرماتے ہیں ہن این الہنا رحمتت اید تنا ٹی علیکی ولادت پاسعادت زوالقحرہ 
کی جودونا رد سنہ( ۳۵۳“ کوہوئی اوران کے والد ماحچر نے ا نکوان کے کپڑین سے چی اخ ابو امس ین ین اھ دہ ی این ال نی ران 
النقور وخ مد شن سے حد نیش نی فکاسنار حکر وایاءاوراٹہوں نے خوداہیے والد ماجد میا عد بٹش ر یف کاساب ان 
(غزرا ت ال ہب ڈ آخپارکن ذ ہب انی بن سب ردان العا ولنگر یز بی آبوال فلا (ا )٦١‏ 
۱ (حصرال رولت ال کک ییزعگی رم الم ى (۳+۶۳۱) 
ایم اب وع برا مت ایل تتعالی علیہ کے ش ارد 
وحڈث وروی عندہ جماعة من الحفَاظہ منھم :ابٰن عساکرء وابن الجوزیء وابن بوش ۔(١)‏ والشیخ 
الامام عبدالقادر الجیلانی رضی الله عنه (٢)ورری‏ عن ابن السمعانی إجازة .وقال :کان شیخا صالحاء 
حسن السیرةء واسع الروایةء حسن الأاخلاقء متودّداء متواضعاء براء لطیفا بالطلبةء مشفقا علیھمء 
وتوفی لیلة الجمعة ٹامن شھر ربیع الأول. ۱ 
بھی 
جغم ابوع بارحم ارتا ی علیہ نے حد بیث شریف میا نکیاء اورپ رم الڈرنتھای علیہ سے روابم تک نے والول 
شب( س جا ظحد بیث شائل ہیں ء ان میس اب نکسم اک ہمحرث ابن چو زکی ‏ این بش اوراس الا مامکبرالقادرا یلا ی ری الدعدءان 
سے روابیت پالا از کرنے والوں میں اج این ااسمعا لی رحمتۃ اولرتھا ی علی بھی ہیں ہ اوراہے شی کے تحلق سکتے ہی نم 
ابوپراشدرمۃ الرتا عیب ءصارً جن یرت کے ا یچوس وپ سس وی ول ر کے 


رات ایت م از نار کرنے واانے رطللہ رش شفن کر ے وا لے جے_ تشم رحمت ارلندتتنا بی علیکاوصال شریف ٣‏ 


شب جآ رب اڑاو لکوہوا_ 
() شذررات ال ہب ڈا خہارن ذ ہب یجس )١١‏ 
(۴) حصرالر ول الزگ تل شرث رلضًٌّ ى ))۳٣۳:۱(‏ 
ام ہی رم ال تحائی علی کا تا ععقیدت ‏ 
الشْیٔح الإمَامء الصَادِق الْعَابدء للخَیْرٌ المتبع الفْقِيء المغابك ہو عبد الله یحیی بن الإمام ابی 
علی الحسن بن أحمد بن البتاء البَعَدَادِیٰء الحَتبَلیٰ. ٰ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 1 711 7 


وٹ انم یھی ارح ہک میا ہرانہز نی اورموجودہ مانقاجی نظام 216 











ڑم 

مامالزاہی رح رالتھالی علیفر مات ہیں :ای ءالا ما عباد تگمز ار ہکیاکارہ اجاخ اکرنے وانے ہی بقلشا راو رئش کی 

بن الا ما لی بین ا 7ت ۶ض رم اتا ٰی علیہ_ 
(سرآعلا مالجاء نس ال بدا بن رشان بن ا ال (۱۳: ۲۵). 
کچ سے ہے سے ٰ 
عبد الملک بن حبیب, أبو القاسم البزاز الحنبلی :من ساکنی سوق السلاحء حدث عن أبی بکر احمد 
بن !: بتواهیم بن شاذانء روی عنه أبو علی بن البناء فی مشیختہ اسان ابو اْفرُج الْحرَاِیٰء عَْ يحی بن 
غَفْمَانٌ بن الشژا قَال :الْبَاَنَا أُبُو عَلِیّ الْحَسَن بُنْ أَحْمَد بن البناء قراء ة عليه قال :انبانا ابُو الْقَاِم عَبْدُ 
الْمَلِک بُیُ حبیب الْبَرَارُچارنا بسوق السلاحء انبانا او گر أححمّد بن إِمَاھیم بُن شَاذَائ, حدثنا جبیر 
بن در پھی سال کڈ ان الج الَقداویٗ بای السٍیّ حدثنا عمر بن عبد الواحدحدٹنا 


ہاا ۴ تر ۔۔ 


ِسُعاق عَبْلِ اللہ عَنْ عَِیٌ بن تہ 2 عَن الْبرَاء بن تاب قَال :قال لی صلی الله عَلَبهوَسَلمَ امَن 
صَام رَمَصَانَ َسِنَة ام مِن شُوال کا صیام لالَة کلھا. 
رھ سرحر مث 
ال ورام بن ابرائیم بن شا ان سے رواب کیا الع سے اوک بن الہناء نے اپٹی مشیقہ ٹیس روابی تکیا ہیں ابوا رج الھ رای نے 
تایاءانہوں ن سی بن عنان بن الشوا سے انہوں تن ےکہا نیس ای اشن بن ان المناء نے بیا نکیا جب ان یہ ررحد یٹ شر ریف رڑھ ال 
جار یی ء ان ہوںل نت ےکہا: یں ابو الا مرا میک من حجیب المز از تے کہ ہماریے اسائے تھےنے بیا نکیا یں ایور اح بن ابر زیمت 
بن شاالن نے ببحد ب١ٹ‏ بیا نکی یل ہی رہ ن گج الد اسیا نے ببحدیٹ ہوا نک :اکا بن صارغح الد ادگ ئن ال امسریٰنے ےحدریٹ لے 
با نکیا کی عم رین اعبدالواحد نے بعد بیث بیان کی بچمی اسحاق بن عبداللد تے عدیی بن شابت سے انہوں نے رام بن عانزب نشی ادا 
عضرے ببعد مشش ریف بیا نگا۔ 
ےگ یریت 
رسول الاٹھاپ نے فرمایا: سس نے رمضیان اکسا نک ےر ارول ازم بی رو ےزےد ریا 
یی اکرائس نے ساراسسال روز ےر تھے 
(جارتبفداہکنظیب بخراری (۱۵:۱۷) 
(مس ندرا مام] جن کٹبل :یو ہدارل جم نم گل من ہلال م نآس الیل (۵۹:۳۳) ٰ 


77 


)۷/۸۷ سج ج6 





استزا تحضر تحت ماک دی ادعنہ 


تین الاما اروا مجن صن بن ات بن ئن الیفد ادکی الا فا کی رحم ارتا ی عل 
ا وی اب الما فلا کی رحمتت ال تی علی کی وا دت وفات 
محمد بن الٰحسن بن اُجمد بن الحسن البغدادیء أُبو غالب الباقلاوی :ولد سنة احدی وأربعمائة؛ وسمع 
أُباعبہد الله المحاملیء وأہا علی بن شاذانء وأبا بکر البرقانیء وأبا العلاء الواسطی وغیرھم .حدٹثنا عنہ 
أشیاخناء وم ومن بیت الحدیثء وکان شیخا صالحا کثیر البکاء من محشیة الله تعالیء صبورا علی 
إِسماع الحدیث.وتوفی فی ربیع الآحر من هذہ السنة ودفن بمقبرۃ باب حرب, 
تم 
ٰ ان الا مام بدا لب شھرن ان بن اتھ !ون اص الیفعد ادیی ال با فا وی رحمت دای علیہکی ولا دت باسعادت سن (ا٭7حھ )ش 
وئی ءاوراضوں نے اخ ھا گی ء ایی بن شا اع ءاوبکر الب رقانی ءاوالعلا الد اسعھی رحمت اد تھا یمہہم سے حد یث مبار ککا سام 
کیا۔ یں ہما رے شورخ نے بتا کہا نعکاگحمہا مرش نکپاگھ اہ اون نو دشڑیٰ ام ابوطا لب الرا لا لی رحمت ان"دتھالی علہ ثمایت تک 
"انان ءالشدتھا یا کےخوف سے بہت زیاددرونے دانےاورحد بث ش ریف کےا غکزوانے یی ہاب تع رسےکام بن دا نے تے اوران 
کا وصال:ش لیف ای سال رب الای ٹیس ہوا۔اورا نکیا نشین پا بب کےقبتتنان شس ہوئی _ 
ٰ (خضظمن چر5 عم ول مل وک : جال الد ینا بوالذرج عبد الاکن ب نی بن ئجہ الو زی (ے۵:۱٠۱)‏ 
اخ الا ماس حبدالقادربجیلانی کان سے عد بی ث کا سا کنا 
قال الامام الدھبی رحمة الله تعالی عليه : 
الشُیٔخ اُبُو مُحمّد الْجیلیٔء الحتبلیٔء الرژامدء صاحب الکرامات والمقاماتء وشیخ الحنابلة رحمة الله 
عَلَيْه .سمع الحدیث من واہی غالب الباقلانیٔ رحمة الله تعالی عليه . 
تم ة. 5 
امام الز یہی رتمتۃ الڈدتھالی علیفر مات ہی ںکا تع الا مام ابی رحبدالتقادرا یلاٹی یی اڈ عنہج عابددز پل ہیں ادرصاح بک رامارتٹ 
یں اورصا حب مقامات عالیہ ہیں اورتنابلہ کے نے ہیں نے بھی مجن اوغا اب البا فلا لی ریت انڈد تھا لی علیر سے عد بیث‌ش لی فکا سار عکیا۔ 
(جاراا سلام ددفیات ا شا دا علام : تنس الد من ابو برارڈ شب نأ بک نخان بن کا نما زالزی(۳۹:ءے۸) 
آنیوں امال 
وقال أبو غالب کنت اختلف إلی ابی أمامة بالشامء فد خلت یوما علی فتی مریض من جیران ابی أمامة 
وعندہ عم لە وھو یقول لە :یا عدو الله ألم آمرکے؟ الم ُنھکے؟ فقال الصبی :یاعماہ لو ان الله تعالی 
دفعئىی إلی والدتی کیف کالت صانعة بی؟ قال :کانت تدخلک الجنة: قال :إن رہی الله أشفق من 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81100171 





والدتی وأرحم بی منھا ۔وقبض الفتی من ساعته؛ فلما جھزہ عمه وصلی عليهء وآراد ان یضعہ فی لحدہ 
سورس سس سی بی سی :ما شانکے؟ قال :فسح لی فی قبرہ وملء نورا 


فذدھشت منه. 

تھے 

اخ ابوغا لب ال ای رن ال دنتحا ی علیفر ماتے ہی ںک میس شام میس ات ا داما مہ رحمتۃ ارڈ تسا لی علی کی خدصمت 
یس حا ض رید بتا تھا ایک دن میں ایک نو جوان کے پا سکیا ج کم ریئش تھاء ا سکا پپچےا انس کے پا میٹ اہر ہا تھا: میس 
مکو یی کنا تھا ؟ می لق مکوا کا م سح ضہکرتا تھا ؟ دو ڑکا سم ے لگا : اے می رے ا !ریہ بتاک اگ ری را اید یھے مہبری مال 
کے بر دکرد چڈالایری مکی می رے ساچ کی الو فک ےگ تو چان ےکہا: ترک مال کے پا قح می حا رآ جا ہے فذ دہ مجچے 
ہز بی راخل لا ےا و اکا کے لگا :ھی را اشک بی نو می ری مال سے زیادہ جتھ برک رم بھی سے اور رتب مبھی ےن ھککیادہ 
پھ بر رتمم شف ما ےگا ؟ متخ ام دطا لب البا فلا ٹی رحمتۃ اڈندتتعا لی علیفر ماتے ہی ںنکہ :ای وفت انس ڑ سک ےکا اغفزال ہہوگیاء 
تاس کے پچانے ا سکی ھی رکش نکا اغنظا مکیااورماز جناز ہ ادا ہموگئیفذ میس اورائ سکا پا ا کی قی میس ات ےل ا حا تک 
اس کے بتانے تی ماری ادرخوف زدہ ہوگیاء یں نے اس ںکوکہا: ج ٹکیا ہدا؟ ت2 وہ نے لگا :ا سک قب ر دس کرد یگئی سے 
اوراس میس تو رکجلرد گیا ہے و اس لئ دہشت زدہہوگیاہوں -_ 


(1 زک ربا حوال ال وی مور لہ آیوعپداڈ شرب نآحراففز ربیشسالد الترطٹی(د:ےہ ے‌).. 


اس سےمعلوم امارڈ تھالی کے ساس نین رک ےکا کنا بڑافا رہ ہے۔ 
اخ ابوغالب امیا ای سے مرو عدبیٹ 
قرأك علی إشتامیل بن عبْد الرَخمي الشتال ما از لال امام او مم بس فدائکہ 
فَهدَة بن أپی ضر أَحْمرنهُم انا ابو غَالب البَاقَلَانِیء انا ابو عَلِیٗ بُن شَاذَایء انا اب سَهُلِ بُنزيَاِ ثنا 
ِمْماعہل بُنْ إشحاقء ٹا تُسْلِم بن إِترَاهِممَ: ٠‏ ا مُبَّارک بُنْ فَضَالَةہ عَنِ الْحَسَنء غَنْ انس قَال دَخلث 
عَلّی اللَّى صَلّی الله عََیه وسلم وھو علی سریر مرمول)بشریطء تخت راہ مِرَفَةٌعَشُوْعَالِیت, 
دحل عَلیْه ناس مِنْ أَصْحَاہوہ فيهھم عمَر رَضیٗ الله عَنهء َاعوَخج اَی صَلّی الله عَليْه وَسلم اغرِجَاجَةہ 
رای عم اق الشْرِیط فی جَْبٍ اللٍَیٗ صَلی الله یه وَسَلمَ لبیگی, فقال ا الٔىٰ صَلی الله عَليْه رَمَلَمَ : 
ما یبیکیکب ؟ فقال :کسری وقیصر یعبثان فِيمَا يَعیٹا ن فِیهء وَأنْتَ عَلی هَذًا السُرِیرِ ِفقَال :آمَا تَرٌضی أَنْ 
نون لَهُمْ الدُنیا وَلَتا الآخْرَة ؟ قّال :بَلَیء فقال فَهُوَ رَالله کلک إِسَافَه حَسَن ‏ 
بب رص بث ۱ 
ام الگ رتمتت ائلمرتھالی علیفماتے ہی ںکہیس نے اسمائیل بین عہدالرتشن المعد لی سے سنہ( ۹۴ھ۵تھ یس مڑ ھا مکوابور بین 
رامہامقدی ن ےت مکوخج رد یک دہ بعت لی تص رن ےت مکوخ ردبی :یی ابوطا لب الب فا لی رحمتت اتی علیہ نے خی ردی بای ایی بن 


۱۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹ 6610021777317 


219 









شمازالنع نے بنا بای ال ول بن ز اد نے بتایا “یی اساشیل جن اسحاق نے بعد میثش ریف سنائی :کیل سم بن ابرا کیم نے ببحد مث 
شرییف جیا نکی ہایس مارک بن فضالہنے صن سے اٹول نے ححفرت سید ناس بن ما کک شی شعن سے روج تکیا: 
تن رےۓ ٰ 
مس تی کت جس ٹیس رسول الاپ خر بت میس حا مدان رسول انڈھگ جو رکی جچرال 
گاب ہوئی ری سے بی ہہوکی جار با لی راف مار ہے تھے اور پ کل کے سرمبارک کے ین چھر ےکا مکل ینس می ںسجورکی بچھا کی ری 
ہوئ یی ء ام یس حضرت سید ناع رین خطاب دی الد عتہاوردوصرے ھا کرام ری ارڈ شٹہم حاض رخرمت ہو ہے نفک ری مآ انال نے 
کمروٹ می قحب عمرررشی ار دعنہ نے رسول الگ کے پپہلو یں ہہ ہو ئے ان ررسوں کے نشانا تکودبیکھا فو رو نے گے رسول الد 
ٹل نے فر مایا : ا ےگ را شی اڈ دحن تم کیوں روتے ہو؟ ححضرم عم ری ارڈ دع نیرت سکم ار ہو ئے :یا رسول ار پگ ا و ےک 
یش میں دواسی عال میس ہیں ارآ اس حالل میس ہیں و رسول اویل نے فرماا: ا ےگ رالکیاتمکویہپیندنکٹس ہ ےکردخیاان کے 
لے یل آخرت میں نٹ ہمارے لے و انہوں نے ع رح سکم ارول لپ یشک رس دا ہیں :نو رسول انی نے 
فمر مایا :ان شا الد تما ی اببای ہوگا- 
ٰ (جارجایا سلام ووفیات ا شاہردلاً علام مس المم ن الو داب نان عثان ین انا زالزگی )٣۷۵:۱(‏ 
(ہندالا ام ری نگمل: راڈ دص میں تج بین یل بین پلال ب نآسدالشیبا لی ۳۱٣:۱۹(‏ ( 






00717 


۱۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 010731 





فور ٹ )نلم یھی للع ہکی مجاہرانز ندگی ادرموجودہمانھا ھی نظام 


ٰ ۱ استنادحث با ک ری الٹعنہ 





اخ ال ما مامحد ث ابوطااب بین بیسف رم ال تھا ی علیے _ 
ابوطالب بن لوسف رحت الد تسا ی علہ 
قال المحدث ابن الجوزی رحماة الله تعالی عليه 
.ا فسمع الشیخ الجیلانی رضی الله عنه الحدیث من اہی طالب بن یوسف رحمة الله تعالی عليه . 
محرثٹ اہن ججوہگی ریت دنا لی علیف مات ہی سکرام الا ما معبدالقادرا لیا کی رش ادڈعنہ نے امت ابوطالب من اوسف رم“ 
انتا لی علیہ ےےمواحد یش ریف روایی تک - 
(اضفرن ج ر0 اموک : مال الد نپوا فرح عبدالن بن لی بن ئگ الجوز کی (۱۸ :۳ء١)‏ 
اخ الوطا لب ین اوسف رح ا تھا علیہ کے شا 
حدث 'أُبُو طالب بن يُوسُف عن اب ىإِسْخَاق إِبْرَاھیم بن عمر بن احمد لبْرُمَکی الْفَقِيه الَحَنبَلِیَ 
ِقة حدث عن ابی مُحمّد عبد الله بن إِبْرّاھیم بن أیُوب بن ماسی وٌابی بکر اُححمد بن جَعُفَر بن 
حمدان الْقطیعی وَغَیرهمَّا . 
کے 





ا ابوطالب بن اوسف رم الد تا لی علیہ اخ ابواسمات ابرائیم مین عم بن اجالرگی اق بی رم الد نما ی علیہ رے 
حد بیٹ ش ریف روای تک یکر تے تھے ءآپ رتمت الد تھی علی ٹپ محرث تےۂ اورا ادا بن !بدا کیم بن الب جن مایا سے اور ال ور 
احر ین تفم رم ن مان فی سے اوران کے علا وو( مح رشن ےگج ی1 پ صد یش رن یف روای تکیا کرت تھے ں 
( مال ال مال : مھ می نبرا اش ج نال ی پھر بن شحجاع وین ال من مان نل شی الد ادی (ا ۹) 

اخ ابوطالب بن لوسف علی کا وصال یش ریف 

تج ہعبار درحمتت انید تھا پی علیف مات ہیں 

آبو الب بن یُوسُف رحمة الله تعالی عليه ء فَقِيه صَالحء مَاتٌ سنة الََیْن وَلمَالِينَ وَحمُس مثة. 

رظ 

انج ابوطالب بن لوسف رم الہ تمالی علی خہایت تیگ انان اورفقیہ تھے ؛آپ رحمت اللہ تا ی علیہکاوصال شریف ستہ( 
۳۷۳ھ )ال ہوا_ 


وج مب جب نع بداولہ( ا یکر اشک الشا نی ءبان نا صرال ہن (۳۱۵:۸) 








۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


تو رف وٹ انم ری ا رع کی ما را نز نی اورموجودہ خانقا عی نظام 21 


یں رن خوانی 
امام بوطالب بن اوسف رحمت اید تھالی علی ہک ہیں 

ٹنا ابن أبی غیلان لما کان طاعون الجارف احعفر ہشیر بن أبی کعب العدوی قبرا فقراً فيه القرآن فلما 

مات دفن فيه. 
0ت 
۱ أتخے ابوطالب بی بیسف رح اتی علیرفرماتے ہی ںکہابن ای یلان نے بیال نکیاء جب طاعو نآ یا و بجی جن الیم نکعب 
مدکی ریت اتال ی علیرنے ای قیرکھود نی ء پچھ راس میں ق رآ نک ری مکی حطاد تک تے رج تےء جب ا نکادصالش ریف ہواتو ا نکی 
رین ای تب رم ہوی۔ 











(جارں وشن ٛبوالقا سی بن ان بن ہت الد المحروف پان ح اکر( )٣۷۰۰:۱٣‏ 
ع ارب نگ ری ارڈ شس ضا ز کے ل ےکس علق ے؟ 


أنا آبو طالب بن یوسف نا الجوھوٰی قراء ة عن ابن حیویة وقال أنا آبو إ(سحاق البرمکی إجازۃ قرأت 

علی ابی غالب بن البنا عن أبی إِسحاق البرزمکی انبا آبو عمر بن حیویة انا احمد بن معروف نا 

اللحسین بن الفھم نا محمد بن سع ہلان دکین نا مندل عن آبی سنان حدادی زید بن ۶ 

اللے الشیبانی قال رأیت ابن عمر إذامشی إلی الصلاة دب دبیبا لو ان نملة مشت معه قلت لا 
کے 


“سی ابوطالب بن اوسف نے خمردی ءٛڑیں الچ ہرکی نے رات کے سامح اہن ضیو یہ ےت ردیی لیس امواحا الب گی نے 
الا جاز ‏ خردکیءانہوں نے ابوطا لب بن الناء سے اننہوں نے الواسحاق الہ رگی سے۔ یش اپ رپن ضید مین ےت ردی :بیس ات بنا مروف 


۷۷۷۷۵۹6607 7 


ح 


نے بتا یا ہیں این ین پش ہم نے نایا :ہیں بن سرع لعل بن وین نے میں مندرل نے ابوستانع سے ؛ ینب جن بدا لشھبالی ۱ 
نے تاباء دہ سکت ہی سک می نے حضرت سید نا عپداوڈرب نگمررشی برع کود یھ اکہدہ جب نماز کے لے لت نو یڈ کی طر بت ہت 


سلے ے ۔اکر ے:نٹی ان کے سا ےن مم کہا ہو ںکہدہ یی ےبھ یآ کے یز ر کت ۔ 
(جا رن زشن : آبوالقا لی ینا ئن بن ہت الل الع روف پائی نع سک ر(۳:١ء١)‏ 
ححضرت سینا لال زی الن دع نہک یآ ذان کے راوی 
اخبرنا ابو مُحَمّدِ بن ابی الْقَاہِم الدمَشقِیُء إِجَاوَةٌء اخبرنا عَمّیء اخبرنا ابُو طالِبٍ بن یُوسٌُف٠‏ اخبرنا أبُو 
مُحَمّدِ الْکَوْمَرٍیٗء اخبرنامُحَمَة بُنْ لام ء اخبرن أُحمَۂ بن مَمْرُوفِء اخبرنا الحُسَينْبُنْ اقم اأُخبرنا 
محَشَ بی سوہ اخیرن ِسْماعیل بد لن ابی اوس اخیرنا عبّة الرّحمي بن هد بْنِعَمَارِْن 
: سَغدِ الْمُوَذنء دلبی عَبْذ اللہ بن مُحَمّد بن عَمّارِ بن سَعْدِ وَعَمًاربُٔنْ حَفْصِ بُي سَعْدِ وَغْمَر بْنُ حَفصِ بُن 





87 ) 





ری 


مر بْن سَعَدٍء عن آبَائِهمء عن عن أَجَُْادِھم, أنهمْ أخْبَرُوهُمْء ء قَالوا تکاکو لی رکول الله صلی الله عَلَيْهِ 
لم ججاء لا إِلی بی بک رَضِیٔ الله عَنةءقَقَالَ یا عَلِيفَة رَسُولِ الله صَلی الله علیہ وَسَلَم لی سَمِمُ 
رَسُول الله صلی الله عَلْه وَسَلُمَ بَقُولَ اص أشمَالِ المُوْمِيين الْجھَاڈ فی سَبیلِ الله وَقَذ أرذذث ان 
زاب فی سبل ال عَی ئوث, فَقّال اُُو بر اَئشدکَ الله یا بلال, ؛ وَحْرْمَتی وَحَقی, فَقَدذ کَبْرت, 
وَاْسَربَ أَجَلٰیء فَأقَامَ بلال مَع أبی بکرِ خی تُوفَیَ ابُو بَکُرٍء فَلمما توفٰیَ ججاء بلال إِلی غَمَر رَضِیٗ الله عَنه 
َقَ لَه کُمَا قال اہی بکرء فَرَڈ عَليوہ کم رَد ابو بکرہ بی 

وقیل إِنَّه لم فَاللَ عم ُمَرُء لِم ٥ِ‏ قَابَی عَليه :مُا یَمُنٹُک أن تُوذْنَ؟ فَقَال :نی أَذنْتُ لِرَسُولِ الله 
صلی الله عَلَيْه وَمَلمَ حَتی فبض. لم ان اہی بر خَتّی فبضء لئ ان وَلِیٗ یعْمَییء وَقذ سَمِعُ 
ول اللهِ صَلّی الله عَلَیْه َسَلمْیَقُولُ :یا ہلالء لَیْسّ عَمَلَ أَفصَل مِى الجھادِ فی سَہیلِ اللہ فََرَج إِلَى 
الام مُجَاھٰداء وَإِلْۂ ادن لِْکْمَر بن الْطٌاب لَما دَخَل الشَامَمَوَةَ وَاحِدَهٌء فَلم يَر بَا کیا اگنر مِنْ دڈلک 
الیوُم. ٰ 

تر ج مرج بہٹ ٰ 

میس ابیشھ بین الی القاسعم ال شی نے اجاز تا کے سا تج ھت ردکی بی ہمادے چتانے تب ردییا بی ابوطالب بن لوسف 7 
ا خر دبی.؟ .یں بجر الچ ہربی نے یردب :میں شھبن الحباسس نے خی ریا میں اص بن مروف نے خ رد :ہیں احسیشن بن اض ہم ن ےجرد : 
“یں بن سععد ن ےق ردی باسیی اس ایل بن عمبد یبن ای وین نے ری :ٗی نعبدالرئن بن سح ب ننمار بن سعداگموذ لن ن ےش ردکی۰؛ 
بے مب راد بن جم ہن مار بن سسعد نے اورحیار بن تفشصس بن سعدراورعرب نپتشص بن سعد نے اہین آ با اجداد ےت ردیی ؛انہوںل نے اہیے 
اجداد ےت ردییء انمہوں نے ال نکش ردی: 

و وت 

دہ کے ہیں جب رسول اریپ کا وصال شر یف ہوائڑ شر سید یا ال شی اط لی سے کر ملق نشی ارعدک 
غرمت بی حاض ہو ے اور رت لکی : اے رسول ارگ کے غلیشہ !میس نے رسول ازڈیڈپپی ھکوفر مات ہوتۓ سا :کہرسول ا ریا نے 
فر مایا سب سے الفل تم نل اولدتعا یکی راہ می چہادکر نا ہے مس مہ چا باہو ںک ال تھا لک راہ شیل چھادکروں یہ ںک کک بے 
وت آ جا ۔ حطرت سید ناامی را نیشن ابوبکرصد لٹ نشی الد عنہ نے فرمایا: ٹس بوڑھاہوگیاہوں اورمبراانڈ تما یک بارگاہ ش 
عاضرہدن ےکا دقن تچھی تر یب ہآ پکویس اہی تے عق اورعمز تکاواسطراو راید تھا ی کیا د یت ہو ںآ پ رک جا عیں- 

و حطرت سد نا ہلال ریشی الد حن ہمہ رگئے ء جب حطرت سینا ااوبگر صد لی رشی الد عن ہکاوصال شریف ہواٹو حضرت 
سیدناامی را تین عمرفاروق ری ددع کی خدمت میں حاض ہو ئے دای با تک جوانہوں نے حضرت الوب رد لی شی ارڈ رع ینعی 
اورصضرت امہ راک نع بن خطاب رش اید عنہ نے بھی دای با تکی جوحضرت سینا ا وب رصد لی رص اد عنہ ن ےکیاصھی اود جب ا کو 
کہاگ یاککآپ یہاں قیا مر کے تحضر ری الڈرعنہ کے لئ اذ ال کہ اکر می تحضرت سییدنا ہلال دی انڈرعنہ نے اک رکردیااورتضرت 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 1 0211 71 





ری 


سیین لال ری ارڈدعضہ سے سوا لکیامگیااک ہآ پکوس ےئش کیا ےک ہآ پ تعفر تگرریصی اڈدعنہ کے لے اذ ا نکیل دی ؟ تو ححضرت 
لال ریش ال عنہ نے جواب دیاکمہ میس نے رسول نشیپ کے لے اذان دی ہ پھر پ انگ کادصال شریف ہوگیاادر پھ رعحنرت 
سید نا ا پوبکرصد لی یی الندعشہ کے لے اذ ان دی ءکیومکروہ می ر ےآ تا ےنت تھے ء پچ رآ پ کا دصال ریف ہموگیااورل اب چرادرے 
لئے ملک شام جانا یا رتا ہوں اودو ہیں روکر چہادئ نل ال رکرو ںگا_ 

یں ححضرت سید نا بلال شی ارشدعنہ چہاد کے لئ ملک شمام روانہہہوگئ ۔ پھر جب مخت سید نا عم رش ارقدعن ہلک شا متش ریف 
نے گے تو اس وق تح رت سمین لال شی ال نہ نے ام ال جن مربن خطاب رش ایل رعنہ ک ےمم پراذ ان دگی یش سط رح اذا ن۰ نکر 
لوگ رویے انا مکی شرر مل تھے۔ 





(1سرالقا بت میمرت الاصحا : روا نلی ب نأ لی اکرم عزالمد بن امن الا خر(۱۵:۱٦)‏ 
زار للط دی جا رتا لے الش رود مس الین او یھن بد لین اسنا وی (ا ۲۳) 
ول رسوں رای عمش بت لی ای مرا ئن ے؟ 
اأُخہرنا محمد بن ناصرء قال :اخبرقا)اپواظالب بن یوسفء قال آخبرنا عمر بن إبراھیم؛ قال :اأخبرنا ابن 
بخیت, قال :نا أبو حفص الجوھریء قال :لن الأْرْمْ قَالَ :سَالت ا اَحْمَة بُنَ عَنبَل عَيِ العرِیف فی 
اضر يَجْتمعُونَ فی الْمَسَاجد َو عرفۃ, فقال :ارجو الا گی ہو بس قڈ فَعَلَُغَيْرُوَاجیہ الْعَسَنْ, 
وَبَگْرٌء وَثابت: وَمُححمَّدُ بْنْ وٌابعء ء کانوایَشْهھَدُونَ الْمَسَجدِیَوْمِعَرَقَة 
تھے 
ان الا ما مھ بن ناص ررحمت یلا کی علی سککتے ہی ںکہپ یی ابوطا لب بن لوسف رحمی الد تا لی علیہ نے قب ردیء اورانہول نےکہا: 
ہیں ع رین ا برا ئیم رحمنت الڈد نا لی علیہ نے ردگی ء انہوں ن ےکہا :نھییں این می ت ان قمردیی ء ان وی ن ےکہا: ہیں ایض الجھ ہری نے 
تھردیءانہوں ن ےکا :بی الاخر م نے نجرد یمیس نے ححضرت سید ماما بن مل رحمت تھا یاعلیسےعرف کے دن لوگوں کے 
اینے شہرو ںکی ساجد میں ئع ہونے کے لق سوا لکیا: فآ پ راتا لی علیہ نے فرمایا: یھ امید ‏ ےکہاس میا نکوکی ‏ نج یس سے ء 
اتی دنا ح یش ن نے والاک وی انتا کا آ دی ند ےکیں اما مان مبکر ھن داع رحمتۃ ارد تھا لی خلیرا یھی انس دن ایے ایے شروں 
کی مسا جیٹس جح ہوک جار کی منشا بہت اخقمارکر تے تے۔ 
زم الع زم ال ہکن ما لی شرف الا اکن : جسال الد می نآبوانف رخ عبدر رین 0+ ۲۱۱) 





۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 1011 7 





تضورنفوٹ )مھ شی او رع نہکی مھا انز ندگی اور مو جورہ مانتا ظام 


استارحوث ما اک ری الڈدعتہ 
الاما لحر ث ابوسدشھ بن عبداکک رگم یبن نیش ھی رمداشقال لی 
اخ ابوسدی رم نع بالگ رم رحمت اڈ دنا لی علیہ 





قال الخطیب البغدادی رحمة الله تعالٰی عليه : وسمع الشیخ عبدالقادر الجیلانی الحدیث من أہی سعد 
مُحَمّد بن عبد الگریم بن حشیش رحمة الله تعالی عليه . 
ا لیب البفید: دی رمت التفالی عل کت ہی سک ان الا ماع دنق درا یلا می شی اد عنرنے انح لوحام ب نع ہرانک مم بین 
بن تنویش رحنۃ ال تھالی علی ےچھی حد یت مبار ککا سار غکیا۔ ٰ 
(ار٘بفرار :لوب رھ بن گی بن خاہت مل نیکم بن مہا کی انطیب اہفر اد ی(٢١٢:٠٣٣)‏ 
ُبُو السعادات ظافر بن مُعَاوِیَة بن تحلیف الَْعَرٔبیٌ حدث عَن أبی سعد مُحَمّد بن عبد الیم بن 
خشیشأبُو طالب الْمْبَارک بن عَلیْ بن مُحَمّد بن عَلی بن محضیر حدث عَن ابی سعد مُحَمّد بن عبد 
ٰ الْکَرِیم بن خشیش ٰ 
ژگہھم 
موررخ امن فقظہ رحمتت ادتقا لی علی کے ہی ںکاہوالسعا دات ناف جن معا وی بن خلیف الھ ری رحمتۃ ایڈ تا ی علیہنے اخ الوسددشر| : 
یکپرا الک ریم بی نیش رمنۃ الد تھا ی علیرے عد یٹ ش لا لیف روابی تک ء اوران الوطالب ا سارک من می نھب ن می نر رم اللہ 
تزا لی علیہ ۓےبھی اجخم الوسعدر الپ دنا ی سے عد مٹ روا تکا- 
2 ال۷ کال: مھ بن ع برای بن ال کرجنشیاغ یوک مین الد بن ران لد ٹا زیر ادی(٢:‏ ۳ك۴) 
ا الا ا س راتا درا للا لی نشی اوح فکاسا کر 
وابو مُححمّد عبد الْقَادِر بن أبی صالح بن جنکی دوست الجیلی شیخ العرّاق سمع أُبَا سعد ابُن مخشیش. 
ا الا مام الہش رعبدالقادربن ای صا گی دوست الیل لع راق شی الع نے شوخ ود شی رمر اتا علیہ 
سے حد بی ٹج ریف مار حککیا۔ 
الال تمال یندا بنا رر شا و مان الع من ءا ن نقط ا و ‌ھ۷(تم_ "0 :۵۷) 
(الواقیبالوفیات :صلاحاللد نل ینا بیک بن عبدالالصفر ى(۱۹:ك٢)‏ 


رس 


۷/۷/۷۷۷۰ ,, 9۶ 00717 


تو رت )نیم یھی الیل کی ما را نز نکی ادرموجردہ مان اینظام 225 









جھ ْ٭ ۔ لٰٰ 7 ٭* 7 
ات الا ماح اہی رجمتت اڈ بای علیر مات ہیں 
سیچپ جح ۸8ےے ڈ8 جس 
الشیْئُ الصالِخء المُعَمَرُء الصّدوْقء أبُو سَعُدٍ مُحَمّذ بنُ عَبْدِالکریٔم بن حُسَیٔش البَعَدَادِیٰ. 
و گے کے نز سے سے سے ٴ؟ 7 ہر ۰ 7 ے رم ری ھ و سے 
سُمع :بَا َلِيٌ بن شَاذانَء وَابَا الحَسَنِ بن مَحْلَدِ البّژاز: وَسَمَاغة صَحجیٔحء وَھُو مِن رَرَاة (جُزء ابْن عَرَفة 







عَات عَة :او اھر السْلَفِیء وَالكَاتیة شُهُدةء وَبُو السّعَادَاتِ الفَزًازُء وَآخَرُوْنَ. 
ماك :فی تھاشر وی القَعْدَِء سَنَةً الُعیْنِ وَحَمُس مائّةء وَلَهيِسْع وَنمَالُوْنَ سَنَةٌ -رَحِمّة الله تعالٌی 
ابٛخ اح ء مر ء الصدوق ء ابوسع رھ بن عبدائکریم بن یش البفد دی ریۃ الد تھالی علیہ نے اش ای ین شاذان 
اورابوئصسن بن نل داز از اعد بیگ شر فکاسا عکیاءاورا نکاسا چ ہے او ری جتز ام نعرفہ کے روا ۃ میں سے یس ء ان سے ا جا 
ابو ضا را لی ءا ریا ر۱۶۱ الا اپ گور لمح رشن نے عحد بیثش ریف ددای تکا۔ 
ان سد رح اد تھا ی عل یکا دصال شر یف ذ واللقحعد ہکی لجا رر سدہ( ۵۰۳ھ )کوہوااورااس وقت تآ پ رحمتۃ انیٹ تھا لی علیکی 
عم مارک ۸۹ سا می ء ال دحا یکا ان پررحت ۶- ۱ 
(سیرآعلا ما غڑا وس الد لی نااوعبدراڈ شب نآ جح نخان بن انا زالزئی(۰۱۱۹:٠٥۶)‏ 
















آ آب سم وی اکرواہت 
ال وکیلء انبانا اَبُو سَمُدِ مُححمّد بُن عَبّد الْكرِیم بُن مُحمّد بُن محشیش وانبانا ابو الَقَرُج بُنْ 
المُْنْعم بْن عَبْدِ الوٌَابِ الحرانی قراء ة عليه غیر مر قال::أنبانا أبو القاسم علی بن أحمد 
بسن بیان قراء ة عليه قالا :انب انا أبو الےحسن بن مخلدء أنبانا إسماعیل بن محمد الصفارء 
الُعجَلِی عَیْ حَمّادِ بٔي ابی سُلَيْمَانَ عَنْ إِنْرَاهيمَ الْحَمیٌ عن علقمة ابن فیس عَنْ عَمًار بن 
ایر َال قَالَ رَسُو الله صَلّی الله عَلِيْهِ وَسَلَمَ :يَا عَمًارُ !آتایی جبُریل آیفا فَفْلتَ بَا 
جبْريلُ اِحَتثٔیی بِفَضَافِلِ مر بن الْعطّابِ فی السَمَاء, قَقَالَ لی جِبْرِيلٌ :لو عَثثَْک 
بِفَضَابِلِ غَمَرَ بُن الحَطّابِ فی السُمَاء, مِغْل مَا لبک نُوخ فی قَوْیہ الف سَنَو إِلا حَمْیينَ عاما 
ما نفذت فَصَاِل عُمَرَء وَإِنٌ عُمَرَ لَحَسَتَةٌ مِنْ عَسَنَاتِ ابی بر . 

تج سمرصر بث ۱ ۱ ٰ 

یس ابی بن الا تخنرنے بعد یٹ ش ریف بیا نکی انور ن ےکی :مییں الومنصورععبر دربن سعی بن التو زی الوکبل نے ہبتایاء 
یں ابوسع رح من عبرانک رم بن شرب نتشحیٹش نے بعد بین شرنیف میال نکی ء اورییس ابوالذررع جن نم جن عبدالو پاب اھرالیٰ نے ىہ 
عد بی ثگئی بارسنائی جب ان بب شی جارد یھی میں ابوالقا عم بس کنا ہیا نے برح بیث‌ش ریف سنائی جب ان بر نی جاد ایح ء 


۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 810011 7 















وں ن ےکہا:گییں ابوائسن بی نئفلد نے مہ پتایایس اس اشیل بن مجر امصغار نے مہ جیا :یلاکن بن عرذہ نے میحد میٹ ش ملیف بیا نک + 
بے الولیر بن ال الغخزی نے رحد یٹ شریف جیا نکاء یچھے ا اعیل بن ععیدرانلی نے بح بیثش لیف بیا نکیا ءانبوں نے عمادبن الی 
سلسمان نے ءانہوں نے ابا یماش ےءانہوں نے علیی نیس سے ءا غیہوں نے ححضرستتعماربن با صررشی اڈ رعنہ سے دہ کت ہیںک رر 
تج من حد ہثٹ 

را نکورسول انڈیپلگھ نے فرمایا: اے ئمار !اپھی بھی مہرے پاس جج یل اشن علیہ السلا مآ تۓ تھے ذ یس نے ال نک وکہا: آپ 
بے حر تگمرریشی ارشعن کی ذو شائن سنا جھآسمافوں یٹس ہے و ج یل اشن علبرالسلام نے عرتخ کی :یارسول ارڈیل ا خلت ی در حضرت 
تج علی السلام اپ قوم یں ر ہے ای دی ںآ لگ کے پاس میک ریشنی (۹۵۰ سال ) فو دوسا لٹ ہو سک ہی ںعگر حر تک رض ارڈ 
عنکیمظمت وشا نا با شق نیس ہوسکتاءاوزتضری نع ررش الڈ رح تحضرت سید با ابوبک رد رش اڈدع کی شہوں میس سے ایک تی 
7 








من لی تی وی 1ح نٹ بن انی ب نکی برپھصی بن بل ل نی را لی (۹:۳ے۱) 
(أمالی ابی نعمعو ن الواخظظ :ا سمحو ن الوا وا ہپ واسیین ٹج ب نم بن پاساشیل ہ نیگنس البفد ادی )۲٢٣۰٢۳:۱(‏ 
آپ مرو دو مکاروامت 

اخبرنًا الشیٔخ الصدوق الُمسند عبد اللُّطیف مُحَمّد بن عَلی ابٔن حَمْرَة بن القبیطی قِرَاء ة عَلَيِْ 
واُنا أسمے بِبَغفداد قَال اأخبرتا ابُو عَلی أنحمد بن مُحَمّد بن الرٌحبی قَرَاء ة عَلَيْه وَاُنا اسمع قَال 
اأحبرنًا إبُو سعد مُحَمّد بن عبد الگریم بن محشیشن قرَاء ۃ عَلَيْه وٗأُنا اسمع قَال اخبرنًا اَبُو عَلیٌ 
ِصُمّاععیل بن مُحمّد بن إِسْمّاعیل الصفار قَال اأخبرنا اَبُو عَلیْ الُحسن بن عَرَقَة الْعَبُدی قِرَاء ة 
عَلَيْه وَادا اسمع قال ححدئیی عبد الله بن إِبراھیم الْگاللای الد نے ٹن عبد الرّحُمّن بن زید بر 
اسلم عغَن سعید بن ابی سعید المَقَبُری عَن ابی مُرَیْرَة قَالَ قَالَ رَسُول الله صلی الله عَلَيِْ وُسلم 
لَیْلَۃ عرج بی إِلّی السُمَاء فمَا مَرَرت بسماء إِلّا وجدت اسُمی مَکُتوبًا مُحَمَدَوَسُول الله وَاُبُو 

بکر الصدیق من خلفی . 

رت رصر ہش 

ہیں مخ الصروق المسودعبدالطلیف مب نکی بنتزہ بین أشلمی نے بقدادمی بش نب نجردیی جب ان یہ میبحد حمٹ 
ریف ہیی اگ یتاگل ات صیصض اض نے تھردی جب الن کے با ببحد بیث ش ریف 
ڑشھی جار یھی اور لن ر ہا تھا اورانمہوں ن ےکہا :نہیں ابوسو رش نع ہرانک ریم بن پتشیش رحمن اید تا کی علیہ نے تج ردی جب 
ان کے پاش بیرحد بی ش ربیف پپڑعیا ارت یھی اور می لکن در پانتھاءانہوں ن کہا :ہیں ادویلی اساعیل منج بین اسماعیل الصغار 
رم اللتفالی علیہ نے خمردیی ء ان ہوں ات ےکہا: چیس ابونلی سن بک نع رفا دی نے تھردی جب ان پہ ببحد بث شرف بی 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81101171 





227 


ار ھی اور ند ہنتھاءانہوں تن ےکہا: یھ عبداا جن ۱برا یم التفارکی الم کی نے عبداارن بن ز یھ بن اعم نے سعیدر بن 


اپی سعیرلمقر کی سےا ہوں نے حعقرت سد نا ااوھرسرہ ری ال" دعضہ سے رواب تکیا: 
تج من حد مث 

رسول ادأل نے فرمایا: جن رات یج محرار کرات یگئی فو ای رات میس جھ س1 سمان سےبھ یز را لیس نے ہپ رجہ ابنانا مہ 
رسول الع ککھاہواپابااورمیرے نام کے سا تج اوک را لد کہ ہوا تھا۔ ٰ 
اکن الال عطاءالد نگ بن ام لد جن ان قاضشی ان القادی الشاذ کی البندی اٰشیر پان اہر (۵۰۹:۱) 
(تحزت: الد لئ فا لکن یک رالص ربچ :لا می آبوائ نی بن جان بن عبدائلدہعلا الد بن الفاری شی )٠٠۵:(‏ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 810011 7 





22 ٰ 
استادکوث یاک ری الٹرعنہ 


ٰ صحضرت امام الغالی رحمت: ارڈ دتتحا لی علیہ 

تقرت اماح النف زالی رحریۃ ارڈ د تا ی علیہ ٰ 
یہاں پر ید وضا حم تکر نا ورگ چا ضا ہو ںک ک۱ اورموررغ نے پیک پککھاکہامام غرزالی ریت اد تھالی علیرححضرت منج عبدالقادر 

یلان یش ایر عنہکےاستاددگس می سے ہی پگ رڈاکٹر جال الد ین فارح الال بد اتی حظہانلتنالی نے اورک با عرسانن 

ایك فی رجمنۃ انیٹ تال ی علیرتنےککھا ےرححفضرت امت عہرالظاورا ھیاالی شی ایح تکوارا خر ای رہ اتی علی ہے شر کمن حائل 
سے .ہما کی عبارت اف لکناد بے ہیں د 

رز رات یں 

وھنانشیر الی تلمذة الشیخ عبدالقادر الجیلانی رضی الله عنه علی ید الامام ابی حامد محمد بن محمد 

الغزالی ء فقداثبت, الدراسات الاکادیمیة والبحٹ التاریخی ء تلمذة الامام الجیلی رضی الله عنه علی ید 

الامام الغزالی ء فقد التقیاہبغداد ء لفترۃ وجیزۃ : 

یہان پم اشمار ہکرت ہی ںکہاس با تک طر فک ححخرت سید نان عبدالقا درا پیا ٗی ادن نے حضرت سید نا امام اد ھا مرشم بن 

الغخزالی رہہ ول تھا لی علیہ سے شر تک حاص لکیاہے ہ تارق حوالوں سے می بات وا ہوئی ے ءا ال ما معبدالقاددا یلال 

شی ا رعنہاورتحضرت سید نا اما مخز الی رم اٹ تھالی علی کی بفدادسی میس ملا جات ہولیگیا۔ 

ٰ (الامام مب راقاو کیا پروی تا نی معاص ال رکنور مال الد مین فا الگا نی(۷٣)‏ 








بخابت ہوگی اک حضرت امت عبدالقادرا للا فی نشی ار عن رت سید نا امام الخزا لی رحمی اللہ تما لی علی.کی سور ولگراورا نکی 


ت یک ور سے بہت حدرتک متا تھے جلاک ہم حترت امت الیل ٹی ری ادڈ رخف یکتب کےتزکرہ کے تحت ا سکا نک رتطصبلا ریم ے7 ٰ 


امام غمزال کی ارت پاسعادت چس ویسم 


الإمام (زالغزالی)زین الذینء ۱ ما تر رت ا ٰ 


الشافعی,ء أحد الأعلام .تلمذ لامام الحرمینء ٹم ولاہ نظام الملک تدریس مدرستہ ببغدادء وخرج لہ 
أُصحابء وصنف التصانیف. :ولد بطوسء سنة محمسین وأربعمائةء وکان والدہ یغزل الضوف وی یبیعه فٔی 
حانوته, 

کت 

ححضرتسید خلا ما ز بن الد نچ الاسلام ابڑھا مھ بن بن ام ال سی الشاضْتی الخزالی رحمت الیل لی علی علاء بی سے ایک 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


ہیں ء ان ہوں نے امام اھ ین الچ بی رحمتت اید تھا لی علیہکی شاگمردیی اخقتیا رکی ہپ رنظام الیک رحمنۃ اد ای علیرن ےآ پکوجامعہ 
نام بپفنراوس٦ی‏ کا صرر ریس مق رکردیا۔ اماع غمزالی رد ایل تال علیہ نے بہت “مو کا رر 
میں ۔اورامام رز لی رحمۃ الد تھا لی علیکی ولا دت باسعادت سنہ (٭ ۴۵ھ* )یس ہو اوران کے والد ماسجداون بنا گر تے تے او راس 
کوا؟ نی دکان می فروش تکیامرتے ھھے۔ 
(شذرات ال ہبڈ أخبا رک٠‏ ذ ہب مبدالی بن اب چان اعم ولک یہشصعیلی ,وا للا رح( :۸( 
ا زی رت شا یع کا درو ار 
وذکر الشیخ علاء الدّین علی بن الصیرفی فی کتابه زاد السالکین ان القاضی أبا بکر بن العربی قال: 
رایت الإمام الغزالی فی البریّة وبیدہ عکازۃء وعليه مرقعةء وعلی عاتقه رکوۃء وقد کنت رآیتہ ببغداد 
یحضر مجلس درسە نحو أربعمائة عمامة من اأکابر الناس وأفاضلھمء یأخذون عنە العلم .قال: ٰ 
فدنوت منە وسلّمت عليهء وقلت لە::یا إمام إألیس تدریس العلم ببغداد خیر من ھذا؟ قال :فنظر إلی 
شزراوقال :لما طلع بدر السعادۃ فی فلک الژرادة -او قال سماء الإرادۃ سر سے 
. مغارب الأصول. 
تیم 





تضو رٹ انلم ریش اول رع ہکی مھا برانہز نکی اورموجودو ا نقاجی نظ م 








اخ ال اعد مالین بن ار عیۂ ال لیے ای تاب زا دالس کی میں رف مایا :کمن النقاضی 
ابوبمر بن الربی رم اتا علیفرماتے ہی ںکہمیں مے امام ف ای سن الد تا لی علیرکو الب رہہ شی د میکھا ءتب ان کے پت میں 
عصاتھاءاوراہے او بر چا دراوڑی ہوٹ یھی اوران کے“ ےپ بای دالا بھی فا ء ا اکک ٹیش اما مخز ای رحمتت تھا کی علی رک 
ایی میس د کچھ کا تھا ج ب1 ب مم“ ایشدنتھا لی علیہ کے سا مھ ان کے درین یل سیا رسو پا عما مہ اکا بر اورافانضمل لوک مو چود 
تھے درائن کے سا نے بویٹ ہکلم دبین حا لکرر ہے تھے .تو میس نے ان کے تقر جیب جاک رسلا م عرش کاو رکہا: تضور کیا بخداد 
صلی میس جنر ررلیںکرنااس سے ہرز تھا ؟ فذ ححضرت سد نا امام الشزالی رحم.- ادڈد تا لی علیہ نے خت جال یں نر چھی کا کر کے 
ری طرف د بیکھااورفر مایا: جب سعاد تکا جا ندطلوع ہوا ارداۃ کے فلک پر یا کہا: جب سعاد تکا چا ندعملوح وگ ارادہ کے 
ایر ْ 
لما طلع بدر السعادۃ فی فلک الإرادة ۔أو قال سماء الرادة ۔وجىتحت شمس الوصول فی مغارب 
الأصول. 
(شزرات الذ ہب ڈا پان ز ہب دی ھی رن شر راگ یا سسنیی ابر ال ع(۱۸:۵) 
اما ءالعلوم الد ی نکی صن فکازمانہ ٰ 
فی سناٹمان وثمائین وأربعمائة قدم الإمام الغزالی دمشق متزھداء وصنف الإحیاء وأسمعه بدمشقء 


رأقام بھا سنتینء ٹم حج ورڈ إلی وطنه. 





۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 11072711 71 








تو وٹ اعم ری ال ع نکی ارہز نکی اور موجردہ ظا ینام 








رج 


ڈا من اھر سی رم اتال علیفہاتے ہی ںکر ال امہ زائی رتمتۃ ااشدتھالی علیہ نے سنہ(۳۸۸2ھ ) بیس دش میں ز پر 
اختیارکرتے ہہ ئۓ قد یح فر مایا ادرالا حیا نی فکیا ؛اورڑشق میس بی لوگو ںکوستائی ؛ اور بیہاں دش ؛ یآ پ درحمتت ا دتالی علی نے 
دوسال قیا مکیااد پھر حکرنے لج روا شہہہو ۓ اورو ا سے اپنے ون دای لتش ریف لے؟, ے-_ 
(شذرات الذ ہب ڈ ار ز ہب برای بج نام بن اب الم ولگ یك سی و لف ح(۵- ۳۵( 
آپ رت اد نکی عل کا وصا ل ریف 
توفی فی رابع عشر جمادی الآخرة بالطٔابرانء قصبة بلاد طوس؛ وله محمس وخحمسون سنة., 
ر ھھظبہہ 
اءا رز ای ریہ اش دتتھا لی علیہ کا فصال شب نف : ا دا رگ لا را ام سے ررقت ار ا یرم ال 
تالی علیکی عم رمبا رک ۵ ۵سا لی۔ 
(شزرات‌الز ہپ ثی أخبارک یز ہب بدا گی ینآ ہن مین ام و پر یی ہوا لفلا ‏ (: :۸( 





۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹ ۹ ۰6101271۷31,۲0۲ 





تضورفوٹ )نم شی ا نہک مھابراشہز لدگی اور موجودہ انا ہی نظام 
اب اب ا 
استنادحوث باک ری الشدعنہ 


ححضرت امت الا ما می بن اسحاق بن مند و ابو کم یا بن ال ی گر الاصبہا لی جم اتا لی علیہ 
ولادت پاسعادت وتصو لگ م 

۱ یحیی بن عبد الوھاب بن محمد بن إسحاق بن مندہ ابو زکریا بن أبی عمرو الأصبھانی الحافظ. 
صاحب تاریخ أصبھان سمع المعجم الکبیر للطبرانی من أبی بکر بن ریذة وسمع مسند احمد بن 
میع من أبی عمرو عثمان بن محمد الخلال وحدث بە عه وقد سمع الحدیث من خلق کثیر وقدم 
بغداد وحدث بھا قسمع منە الحفاظ .حدثنا محمد بن احمد بن صالح بن شافع قال :انبا بی قال : 
ورد الخبر إلینا بوفاۃ یحیی بن مندہ وإنھا کانت یوم السبت ثانی عشر ڈی الحجة من سنة إحدی 
عشر۔ة وحمسمائة وإنه کان لە یوم مشھود شھدہ اھل البلد کلھم الموافق والمخالف ٹم دفن عند 
أبیە وإنە لم یعقب ولم یخلف فی بیتِ ابن مندہ مثله بعدہ ولا من یقوم مقامه. سمع أبا بکر ہن ریذة 
وأہا طاهر بن عبد الرحیم و کان سماعه مِن ابن ریذۃ فی سنة سبع وٹلاٹین ومولدہ فی غداة یوم| : 
الشلائاء تاسع عشر شوال من سنة أریع وٹلاٹین وقدم فی سنة ٹمان وتسعین وأربعمائة وأملی بھا فی 
جامع المنصور. 

.کے 

این سی ین عم دراو ہاب مھ بن اسحاق بن مندہ ابو زکر یا جن الو الا ہا لی رح ارد ای جوھک حافظ عد یٹ اورتا رت | . 
اصمہمان کے مصنف تھے ہآ پ رحمت اڈ دمحا بی علیہ نے ا٠‏ جم الکیلطم انی امت الا ماما بوبگر من ینہ ہ رحمنت ارشدتعا لی علی ےک 
مت راممںپتضل ابو روعثان بین الفاا لی ےک ء اوراکیں سے حہ بیثش رلی گی بیا نکیا اور بہت سے مح )جن سے 
حد بیثش رای فکاسار عکیااور بدا دم٦‏ یآ ئے اور ہا یآ رحد مث ش ریف بیا نکی اور بہت سے تفاظ حر بہث بے ات 
رج انتا ی علیی ے حد بیثشٛ لی فکا سار عکیا- 

میں نج بن ابع صا رح بن شانح رن2 الیش دنا بی علی نے بیا نکی اکہانہوں تن ےکہا: ججھے می ررے والمد ماجد نے فر ما اہ 
و بن مندہ رحمت الد تا پی عل کا وصال شریف ہوااس دن ساراشبرصواٹن وٹالف سب جناز٭ ٹس م 
ہو گے تب ہغت کا دن۲ اذ وا لیر سنہ ۵۱۱ مھ تماء ا نکی تل فان ان کے والمد ماجد رحم ال تی علیہ کے سا تح ھک یگفی ء ان 
جیما محیرث نف الع کےگح می سکوگی بہوااورشہ بی ہا رگایں ان جیما ہوا اور نہب یکوگی الا ہوا جوا نک مقاعم متام ہو _۔ 
تن شی بن مندہ رحمت انتا لی علیہ نے امن ری و رحمنت اش دتتحا لی علبیراورابوطا ہرم نعبرال رمجم سے حد یمٹش ری ففکا سا 
کمبااوراخہوں نے ای ابنر برجم الڈدنتالی علیہ سے سنہ( ے٣‏ مھ )یس حد یت ش لی فکا سما عکییا لہ ا نکی ولا دت 
اسعات سن( ۲۳۴ )کی سے اورستہ( ۹۸ھ کو مع ممنصو ر می لتش ریف لا ہے اور یہا ٥ھ"‏ 
روا لی 





70 کو وٹ ۷۷۷۷۰// 





تو رٹ )نل ری ایلرک مپاہرانز ندگی اورسو جرد مانقا کی نظام 





بیرامام صاح بک یکرامت ےک تن سا لکی عم میں حد بث ش لیف کا سا عکیایا پچ رکاج بفک شی سے کہ ولا دت سن( ۳۴ 
مل و عد بث ش لی فکا سا جح سنہ( ا٣ھ‏ )ئل ہوا ْ 
(اتقیی رع رف روا:اسن وم۔انیر ھب نع برای بی نآ یبکراین نل می البخداوی (:۶۸۳) 
آب رم الد تھا اعالہ کے ش ارد ٰ 
سمع من الأشیا خ أبو الحسین بن الطیوری والاإمام أبو منصور بن الخیاط وحدث عنه شیخنا أبو الفضل 
محمد بن ناصر وشیعخنا عبد القادر الجیلی الامام وأبو المعالی ابن حنیفة وأبو محمد بن الحشاب 
الأدیب. ۱ 
کی 
اٹ نکی بن منددہ ررمتۃ اللرتھالی علی سے عدیث شرب فکاسا حر نے واموں میں اج ابواسیین بن الطید ری ٦ال‏ ماد منصور 
بن ایا ط ء رم أڈرتھالی علیشائل ہیں او رآ تاب تالی علیرے عد یٹ ش ریف روا تکرنے والوں میس جوا ر ےناب وأ فض لئ بن 
اصراورجمارے چا م بدا لقاورالیاا لی شی الشعنہاوزالا مام ابو المحا بی بن حضیہااش بن النشا ب الا د یب رم ا تھا یمم شائل ہیں ۔ 
تق رن روا ای بک بین رای بنا برا ن نل بی البید نی (ا:م )٦۸‏ 


ححفرت ات الا ما سی ین اسحا بن مہ الو کم یا من ای عم روالاصیہا بی 


ک مقا مح بین اکیکظر :2 
بی 
الحافظ ابُو وکیا :يَخُیّی بُنْ عبد الوهاب بُنْ مُحَمّد بُنِ إِسُحَاق بن مندة العبدی الأضبھانی المتوفی 
۱ء وھو صاحب التاریخء سمع من البیھقی فی یساہور؛ ._قال السمعانی :کان جلیل القدرء وافر 
الفضلء واسع الروایةء حافظء ثقةء مکٹرء صدوقء کثیر التصانیف . 
7ہ 
یا فظ ابوزكکر پانکسی جن عبدالد ہاب نیو بن اسححاق بن مند وا لعریی الاصبہائی اکنتوی سنہ(۱۱ ۵ھ رحمتت ال تھا ی علی چنوں نے 
ار اصہا ئن ریفرماکی سے ءا ہوں نے ےتائقی نت ایڈدنتالی علیہ سے میا ور شی عد بث ش ری کا سا حعکیاادراما سمعالی ری ارتا ی 
علی کے ہی ںکہادا مکی بن منہہ ررقت اڈ تھی عل یگیل القررہ واف ال ء دامح ال روایء حافظ رق کک اف ےج2 
(دزال الو ٭ ومحرفت)حوال صاحب الشریند جب این نی بن وی اش روج دی سال یو اتی (:+۱۱) 
محرث ائین جو ز کی رحمنت اید تھی علی کت ہیں 
ولم یخلف فی بیت ابن مندہ مثله. 


۱۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 01:711]. 7 





٠7‏ طراال ؤں) 





صوغو ٹاتشلھ ری انہک مھا انز ندگی اورموجودہ خانھا کی نظام ٰ 


رجہ 


امام آمید ث امن جوزی رحمتۃ الڈد تھی علییغر مات ہی ںک ا الا مام ابو ذک ایی بن مندہ رممنت اتی علیہ نے ایے برا تۓ 


یلیما محر ٹک لبھوڑا_ ْ 
زامن حر مم وا ملوک :مال الد نآ والظذررح عبدالرن ب نل بن الو زی (ے۹:۱٦۱)‏ 
خطیب بخرادکی مت ارڈ تنا لی علیفر ماتے ١ں‏ 

قال الخطیب البغدادی رحمة الله تعالٰی عليه 

یحیی بن عبد ال وهہاب بن مندة کان حافظا فاضلا مکٹراء صدوقاء ثقةء یحسن هذا الشان جیدا جداء 

کر یفخ پچ رمفدموم حسن السیرةء بعیدا من العتکلف:؛ متمسکا بالماٹر. 
رم 

تیب البفید ادگی رت ااٹ تھا ی علیہفزماتے ہی ںک ا مکی بن عبدالد ہاب بن مندہ رحمتۃ انڈتھالی علیرمافظظءصددق٠‏ بہت زیادہ 
اواروۓ 1ے کے دا ےگ کے بلہءاورمنابلمہ کے امام مخولصورت سرت کے ما لک :تگلف سے بہت زیادہ دورء 
آ نار ےمم فک نے وا نے جے - 





(جارز ئن نفداد: پوک را من لی بن خابت منج بن مہریی اتطیب البخد ای (۱۹۵:۳۱) 
(ززای الشہای پی طبقاتپاشرام ٹلزر من رین لصف( ٣٢۳۴۰‏ )مت ار ن تیم 
ماما سصعا نی رین ال تھا لی علیف مات ہیں 
قال السمعانی رحمة الله تعالٰی عليه 
سم بح دن ید الوہاب ہی عم کا بن مند‌المدیأصبھائی پا یکر أحمد بن الحسین 
الہیھھی. 
۶ھ 
انہوں نےتاہقی رت ول نکی علی سے عد حثش رذ یف کا سا عحکیاخمشااورملں- 
اق اہم ایز پہریہۃ وی +آ/وسعدر(۳۸:۲) 
زامن من عھ شیوخ ااسمعانی ہدنک ریم نیج بن منصو ا معا ی ال روزی ؛اُإوسعد(٢:۱۸۳)‏ 
نسویییں یٹ تر تب ہی 
علیہ کے شاگرد ہیں 
امام اکن مند ہکا لخد ادآنا اور یہال عد مٹت رلف ہیا نگرنا 
یحیی بن عبد الوهھاب بن محمد بن إسحاق بن مندہ أبو زکریا بن أبی عمرو الأصبھانی الحافظ. 
صاحب تاریخ أصبھان سمع المعجم الکبیر للطبرانی من أبی بکر بن ریذۃ وسمع مسند أحمد بن منیع 





ہ٦آ۲۷۱۱۷‌1ء۷۸۷/(‏ انسا مت ساد ۷/۷۷۷۷۰ 





تو رو اض ری اش نہک مھاہرانزندگی امو جودہ اق تی نام 24 





























من بی عمرر عشمان بن محمد الخلال وحدث بە عنه وقد سمع الحدیث من خلق کثیر وقدم بغداد 
وِحدث بھا فسمع منە الحفاظ, ٰ 
7 





یی بن عبدالد ہاب بن بن اسحاقی بن مندہ ابو کر بامن اہو ردالماصبہاپی راتا لی ھکر حا فظاحد بمٹ اورتا رج اصہان ٴ 
کے مصنف تھے ہپ رعت اویل تا لی علیہ نے اعم الکی لہ الی نال مام ابدکر جن و یذ ہ مت اتکی علیہ ےکی ء چیک ند ا بن عمبل 
اردان بن ا ففلا لی ت ےک ءاورایں سح عحد بیٹش لی فگگی بیال نکیا اود بہت سے مح رشن سے حد مث ش نی فک سار عکیااور بفد ا 
آے اور بہا نک رحد میٹ شرف جیا نکیا اور بہت سےتفاظاحد بیث ن ےآ پ مت ایل تھا لی علیرے عد بیٹ شر فکا سا حۃکیا۔ 

(زالنقی دمح فی" روا ڈ ٹن والسانیر : نم بینعبدراشی ب نا لی پجر کز تی 
(ٰہجھم لم نین : عمرین رضا بن ۔عجرراخخب بنعبدراشکھاۃ ال رض )۲٠٢:٠٢(‏ 
امام انار جب می رن الل تا لی علنل فر ماتے ہیں 
وقدم بغداد 'حاجاء وحَدث بھاء وأملی یجامع المنصور .سَمع منہ بھا :اُبُو منصور الخیاطہ وأُبُر الحسین 
بن الطیٰوری وھما سن منەء وأقدم إسنا۵ا .۔وسمنع منە بھا أیضا :ابن ناصرء وعبد الوماب الأئماطیء 
وال سلفی, والشیخ عبد القادر الجیلیء واہُو محمد بن الخشابء وعبد الحق الیوسفیء وآخر أصحابہ 
موتا ابو جعفر الطرسوسی وروی عنہ بالإجازة ابُو سد بن السنمعانی الحافظ. 
تھے 

اخ امام این مندہ رن الشدتھالی علیہ جب ر پر جانے گےذ اصبہائن ہے بخدا زی آے اور یہاں عد میٹ شریف بیا نک ؛ 
جا مع ٰمعصور میں اورا ما ہی اکروائی ان سے عد بی شی فکاسا حکر نے والوں می اخ او نصورر لیا یا ء ابوائسیشن بن الطید ری ء ہے 
دونوں !جا کی بن مندہ رحمتت انتا ی علیہ ےگمرمیل پڑے تے اوراسناد ٹیل افدم تھے ءانہوں نے بھی ان سوا کیا ءادراسی رب بن 
اصر عم ہدالو اب الاخمای ء ابوااطا شی ءاعد الا درا للا نی شی ودنہ ابو بن انا ب +ع بدا الی خی خیالن مسب ےآ خر میس 
فزت ہو ,اورالوشتظمرالط سو یبھی شڑائل میس ء اوران سے پالما اڑب رواب تکر نے والوں یش ان اوسعدر بن السمعا لی رت اتی علیہ 
بھی شال ہیں 

(ذ یل طبقات الننابلن: :ز ن'اللد یع دنن بی نج بن ر جب بن صن ءاسنلا ھی ءالبفد ادکی :ٹم ال مشتی ماسعیی (:م ۹ م) 

انس سے اس اعترائ کاجواب وگ یاکہ امام این مندہ رحمتۃ انتا لی علیہ اصبہان یش بی رسے اورنحوث پک شی اید عنہ 

کااصبہائن جانا مخابہ ٹل فا نکا ساپ خابت شہہوا۔ اس سے وا جع ہوگیاکححقرت امام این مندہ رحمت ایل رعلیر قد بخداد ٦‏ تش ریف 
الائۓ ےادریکڑیں انہوں نے عد بی شرف بیال نکیا اود ببہاں کے تطاناحد بیث نے ان سے سار عکیا۔ 

( تج نکر التفا طط :شس الد می ن روح برانڈیشھ بناج بن عتمان بن قائمما ز ال گی )٣٢۰:٢(‏ 





۷/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6۵11:7111. 


رہ 





رەدی 
امام یانتی ان ؟ ر7 <۴ مات میں 


الحافظ أبو زکریا یحیی بن عبد الوهاب اہن الحافظ محمد بن إسحاق اہن محمد بن یحیی ہن مندہ 
العبدی الأصبھانی صاحب التاریخء سمع من البیھھی وطبقتہء وقال :السمعانی جلیل القدر وافر الفضلء 
واسع الروایة حافظ کثییر العصانیف: بعید من التکلف؛ سمع من خلائقء ‏ وکتب علده الشی و خء منھم 
القطب الذی محضعت لقدمه رقاب الأولیاء الأکابرء شیخ الشیوخ ابو محمد محیی الدین عبد القادر 
صاحب المقام العالی المعروف بالجیلانیء وجماعة من کبار الشیوخ. 

۸مہ 

لیا فظ الو کر ای بن عبدالو ہاب من الیا فا بن اسحاق من ھب شی بن مندہ العبدریی الاصبہا کی رحمتت الد تھا می علیہ جک تا رن کے 
مصنف ہیں ءآآپ رحمت اتی علیہ نے اما ممگی اوران کے لبق کے ملا عد بیث سے حد بیٹ ش رلی فکا سا عکیا۔ امام السمعا لی رم< 
ال تھا لی علیآپ تلق فر مات ہی سک ان الا مام ابن مندہ ریت ال تی علیہ وا ظفل ء دمح ال راہ اورک کشر کے حا ذظ 
؛نکلف ے بہت ریا دہ دورد ئۓ وا لے ے ب بہت سے محر طین سے احاد بث شش رین ہکا سا کیا ء النع ےکی ببہت سے مح رگن نے 
عد یٹ شر می ء ان بیس دواست بھی ہیں جن کے لے تما مماولیا ءال نے اپنیکگمرونیں ھکال تیں ‏ ری مرادا نے الوشدیگی الد بن 
عبدالقادر جھ بہت اد جج مقام کے ما تک ہیں جوا یلا لی کے نام سے مروف ہیں اوران کے علادہچجھی بہت بٹ کیا جماعحت لن ےآپ 
۱ سے عحد می شش لی فکاسحا حکیا۔ 

(مرآ الناان وخبرة ال ےطان : ابوش غیت الد نع ہداب نأ سعد بن لی بن سلیمان ال انی )٥۵۳:۳(‏ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 8110011171 


236 






تہ رو انم شی اع ہکی مھا ہرہز لدگی اور مو جودہ انی نظام 











استمادکاث یا ک ری الڈرعنہ 
۱ 4 اد سم می مسیت 





قال الامام ئا رحمہ سس سرد سے ۱ 
(المتوفی :۵ ۰۵۱)سمع آبا إسحاق البرمکیء وأبا محمد الجوھری .وع ابو المعّر الأنصاریٗء وابن 
ناصر؛ والشیخ عبد القادر الجیلیء وعاش تسعین سنة. 
بے 
مامالئہی رم ایا لی علیف بات ہی ںک ا مب ن بن ار ایوالب ات الخ ری التا جرالتوئی ( ۵۱۵“ )ریت ال دای علیہ 
نے حد یٹ شر ای فکاسما راتخم ابواسا گی ااہیشہ الچ ہرگی ء ممیت اد دا لی علیہ س کیا اورآپ رم اڈ تال ی علیہ سے روا تک نے 
وللوں میس ان ابواسممر الا نصاری اورابزغ اض راو لئے الا مم ع برالقا درا لیلای ربشی دشر عنہ شائل ہیں اوراشخ الا مام مھ بین مم بن ان 
ات اہو الہ رکا ت ا زی الما جج رحمیت ارڈ دنا ی خعلیہ نے ےو ےسا لم ریالی۔ 
(جار الإ سلام11فیات ا لغابیر1 لآ علام تس الد گی اور ایڈیم نآ بن عثان ین نما ز ال بی )٣٢۵:۱۱(‏ 
آپ رحمت ال دنا ی عل ےکا وصال لیف 
قال الامام المحدٹ ابن الجوزی رحمة الله تعالیٰ عليه سمع البرمکی والجوھری؛ وکان سماعه 
صحیحا ۔وتوفی فی لیلة الأحد خامس عشرین ڈی القعدةء ودفن ہباب حرب. 
9209 
امام حرت امن ہوزی رم الال علی شر ماتےے ہ سک جن بن مد ابین احمرابو الب کات الف گی الما جر رم انتا ی عل۔ ارت 
کا پشرابناۓ ہوئے تھے ہآ پ می انڈتھا لی علیرنے ات ابواساقی البرگی رم ادتالی علیہاوراخ الو ہرگی رح ا تی علیہ سے 
حد بی ثش رن فکا سا غعکیااورآ پ ررمتۃ الیل تھالی علی کا سا ےآ پ رت اش دلتعا لی علیر نے انارک رات ۲۵ زوالقحر ءووضال 
رما با اور ماب رب کےتبرستزان میس نر ین ہوئی- 
زامن جا را مم والملوک : جال المد ین بوالفریج عہدالرنن ب نکی جن ئگالجو زی (ےا:۱١٢)‏ 


۷۷۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵3681 7.7 





( گلدارل ) 


237 








استادکوث با ک ری الڈعنہ 





تین ال ما الاہرا شر اصون شع الاسلام ابوالویتکٹھی بن جیب من ابر یم مت اید تا کی علیہ 
آپ رتمت اید تھالی علیہ ات الا ما معحبدالقادرا لپھیلای ری ا عنہ کے استاد ہیں ادرآپ رحمت ال تنا لی علی ہکا جب وصالش ریف ہوا 
آ پکا جناز دجھی تح الا ماما ای ری الد عفہنے کہ هاباتھا- 
ولادت با سعادت 
الشیٔخ الإمَام الرٌامۂ الخَیرُالصُوْفِیٰء َ شُيْخْ الاسّلامء مسند الآفاقء ابو الوقت, عبد الأول بن الشْمٔخٍ 
لمُْحَدثِ الِمُکَمْر اہی عَبُد الله یی بِنُ فُعَبٍْ بن إبْرَاهیْمْ بن إِسْحاقء السْجْزِیٰء ٹ ٹم الھروی 
المالینی مَوْلِذِهُ فی سَنة تمَان وَحَمْيِیْنَ وَارْیع مائق. 
7م ٴ 
ا الا مامء الثراہرء نر ااصوئی الالام ء من الآفاقی ء ابوفت ہعبدالا ول بن ماحیر ث ابوحبرانڈرسی بن شجیب من 
ابرا ڈیم ناسحا جز مم ال ہردگی ایی رح الد تھا بی علیکی ولادات پاسعادت سن( ۳۵۸م )شش ہوئی- 
(سرآعلا مال جلاء :تس الد ی نازبدرارڈ شی نم مین عتمان جن انا ال نکی )٥١۱:۱۵(‏ 
ما عحد یٹ ۱ 
وس وس سیا سرد دو ےد دس 
الدُاوٌوُدِیَ ''الصحیح 'رکتاب الدارمیء ومنتخب مد عون حُمَيْلِ کت یدٍ بِبُوشْتجء وَسٌمع مِنْ ابی 
قاصمے الفْضَیْلٍِ بنِ يَخْيَی, وَمُحَمدِ بن ای مَسْغَوِالقارِسِیٗء وَأپی يَعُلَی ضَاعِد بنِ هِبَّة الله 
و مور سج وَعَبِّ الرَّمَي بي مُحمّدِ بن عَفیٔفي عڈثوۂ عَن عَبُ الرَّحْمَي بن أبی 
شریح؛ وَسَمع مِنْ أَحْمَد بن ابی نَصْرٍ گاگو, ء وَعَبْدِ الوَمَابِ بن أَحْمَة اللْقهِیٰ ٴ وَأَخْمَة بنِ مُحَمُدٍ 
یت محمد بن الحْسَیْنِ الَضْلوىء وَعَبدٍ ری بن ابی عَاصِ الجَوْمَرِیٗء وَّشیخ 
الاسلام ابی إِسْمَاعِْل النْصَارِیٗ -وَکات من مُرِیْدِيهِ -وابی ایر مَکمُود بن لقالہم لانپنا 
رع تاب خظہ البغاوردانیٔء وَحَکیٔم بن أَخْمَدَ الإسْفَرَايیِٔیٔء وَابی عدنان القاسم ابن عغَلِیٌ 
القْرَّضِیء وَابی القَامِم عَبْدِ الله بن غُمَرَ الكُلُوَذَایِیء وَنَضرِ بنِ أَحْمَد الحَنفِیٔء ء وَطائفة 
کس 


۰7.۔ ]۹6010:2113 ۱/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ 













تم اوت رحس ارتا لی علیہ نے سنہ( ۷۷۵ھ ) میں اتاج مال الاسلام اون عبد انی بن نشج الد او دیی رحم الد تا ی عل 
ےن القاری >کاب الداری ضس مت عبد ب نحمیدکا وع یس سا حکیاء اور ابو اصلہففیل بن ٗی شر بین الیم حودالغاری ء 
وی صاعد بن ہت ال شی بن تعدالعصد ببد لیکن بن مم ین عیف رع الیل تنا لیم ہم نے ا عمبدالین بن اپ شر سے حد یٹ 











شرف میا نکی ءاورا اخ رین ای نص رکا کو الو ہاب بن ات را اھ بن جال ای بجر بن سن الفصلو لی برالرین بین الی عائ٢‏ م 
اچ ہبی تی الاسلام اہوا- ایل الا مصارکی ءادھا مود بن القاسم الا زدکی بدا جن عطاء الا ورداٰیٰ نگم بن اسم الاسفرا نی ءا بعد نان | 
لاحم بنپلی لق گی ءا بولق اس داب نعرالنکلو ذ ای نر مظ ےقدص حر یف کا سا عغکیا۔ 
٠‏ (سیرآعلام الام :ٹس الد ی ن ابو بداڈ یش نا بن عثان من انا زالذای (۵ا: ا١ا‏ 
(اقیر ا جم ابر عہ نکی گی منصورانھی لسما لال دی +وستد(::۱٦)‏ 
آپ رحمت ال دنتنا کی علہ گے شاگرو ۱ 
وَحذٌت بِعُْرَاسَانَ وَأصْبَهَانَ وَكُوْمَانَ وَمَمَدَان وَبَفْدَاء وتگاٹر عَليْهِ الله وَاشْنْهِرَ حَدَبله 
تع مین هي اه شناد محدث عَنۂ :اِیْ عَسَاکرء وَالسَمعايیء وَائنْ الجَرْزِیٌ 
وَبُوْسْفُ بن أُحمّة الشْیْرَاوِیٰەَوَارُتَعَل إِليْه إلّی كرْمَاكَء وَسْفيَان بىْ إِنْرَامِیْمَ بن مَنْدَةَء وَآبُو 
كَ سُهَْل بِنْ مُحَمّےِ الب وی٠‏ وَابُو الضَوء هِهَابّ الشَلَبَانِیٔء رَعَبْدُ الم بن مُحمَیٍ 
الهَرَوِیٌء وَالقاضی عَبْدُ الجَبًارِ ببنُ بُنّدَازَالهَمَدايىء وَعَبْد الجَیْلِ بنْ مَنْدَوَیْهء وََخمَۂ بن عَبْیٍ 
الله السَلَمِی العَطَارْء وَعُتْمَانْ بن عَلِی إلوَرْكاِیٔء وَغُفْمَان بن مَحَمُوّد الاصْبَھَانِىٌّء وَمُحَمَد 
بيْ عَبْلِ الله التَاح البُوخَنجیّء وَمُّحمّة بن عَطليّة الله الهَمَدَانِیٔء وَمْححمّد بن مُحمّدِ بن سَرَایا 
المَوصلِیٔء وَمَحُمُوْذ بنُ وا البَیّهَقِیء رَمُقَرَبُ بن علي الھمذاٹی۔ والفقیه یحیی بن سعد 
الرازی وَكَرِیْمَة بنْث عَبُدِ الوْهّاب القَرَهِيَةً. 
تج 

اخ ابوال وقت ررمتۃ الگ تق لی علیہ نے خر اسائن ء اصبہان مک مان ہم اور بش دای میس صد جن شرف با نک ٠‏ اوران کے 
ال طلب کی بہت زیادہتحدادجح ہوجان تھی اورا نک ردای تکردوعد بث شریف بہت بی ز بادہمشہو لاہ ای ءا وو الا سنا دانئیں شی 
ہو یھی_ ٰ 

آپ رم اللرتھالی علیہ ے روایہ تکر نے والوں یس امام این ع کر ہ اخ اسمعالی ء محرث این وزی ء إسف ن۱ ھ<ھ 
لیر ازکی ء مت ا تھا یسہم پیم رخین شال ہیں- 

ات ابوا لوت رحمنۃ الد تی علی کر ما نتشریف نے میئے تے نے تن پیسف مین اج مت اید تھا بی علیہ ن ےآپ سے 
و ہیں سا عکیاء اورسفیان بن ابا قیم بن مند٥ء‏ ابوڈ رکیل بن مھ الوشی ء ابوا عضو شہاب الخرد بای حر المحز مین حر الب روگ ء 
النقائی عبرا گار یی بندارلپیز اث :عپر کل بن مرو یہہ ا بین عپر اڈ اسلی العطا ر ء گان ہن علی الورکا می ختان ہب یتور 
الاصبہا نی ہم بن عبرااشدالتتاح الیٰدنی ھن حطیہ اوڈرالمہیز انی بھ بی بن س الیل چمووبن وشن !صپٹی بمتقرب من لی 
لمہد انی الف سی بن سعدالرازی ری الد تھا یععم ہم شال ہیں ء اوراشیف کریمبیہ بش تعبدالو ہاب اق شی رحمت اڈ ایہم 

















۰٠‏ بریل) 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





تو رو )مع شی ان ح ہک میاہرانہزندگی اور مو جودہ مانھا بی نظام 


تین شال یں۔- 


(سیرآعلام اگخطاء :تس اللد یناو عپرانڈ رشب نام بن عخان بن مزال بی )٠١۱:۱۵(‏ 
(اقیر نی ائم اکر :عبرنکریج نچ بن منصو بھی السسعا لی لمروزئیابوسعد(ا:۱۱٦)‏ 
ا ا سحاٹی رت اڈتھالی علیفریاتے ہیں 
قَال السَمْعَائی شَيْخ صَالع ۶ حَسن السّمْت َالاخلاقء مُتودّڈ متوَاضضعء سلِیمُ الججانبء اسُمَسْعَد بصحبَة 
الإمام عَبْدِ الله النصَارِیٔء وَحَلَمَۂ مُد٤ہ‏ وَسَافَر إِلَی الرَاق وَخُوستَانَ وَالبَضْرَةَء نَرلَ بَهْدَا ة برِباط 
البمطاٍیٗ فِيمَا حُکاهُ لیء وَسَوِعْت ون بِهَرَاة ومَالِیَء وَكَانَ َبُوْرا عَلَی القِراء ةء مُحبَ لِلرْوَایة, عدٹ 
رع سا ءَ'مُسْد عَبیٍ" و'الڈارِبیٰ ''علة ز نوٌبء رحقت ٤٢‏ 10 ت۵ا لَکَلدا لَتهَازفناال 
لانصَارِیٗ عَيَْ الوّلء وکنا یابی الوَقّتٍ, 
تھے 

امام السصعا لی رمنۃ الل تھا ی علیف رما ت ہی ںکہ ان ابواکوشت رت الد تعالی علیہ نہامت یک انان خواصورت وت اورا مھ | < 
اخلاقی کے ما لک ء بہت زیاد دح تک نے دانےء عابز یگ او تھے ہآ پ رحمتۃ ای لی علیہ نے اخ عم بدا افصا ری رم ار تھا ی عل یی |2 , 
۱ مدمت میں بہت زیادوعرعگز اراء اور پخدادػ٦لی ‏ خوزستان اورپھن کیا سف مھ یکیاء اور بدا د۳ی بیس نضرت با بد المبسطا تی رتمت ارتا ی 
علبیکی نمانقاہ یس قام بے سی ہو ۓ۔ 

ا اتال :الع تاج ےت اکا نے ا۴ے برا اود این متا پ رممت الد 
تاپی علیقرات پر بہت ز یادوصبرکگر نے وا لے ۱ رذاحیت سے محب تکمر نے دا لے ءآ پ رحمتت ایڈد حا لی علیرا ‏ ؛ادرمندمپ ری نمید الدارگ ٠|٠‏ 
نے جیا نکی۔اوریٹ نے سن کان کے دالد ما جدریمتت ا تھا لی علیہ نے اکا نام ئجردکھا لہ ان کے یع داد الا صا ری رم ا7 
علیرئ ےآ پ٤کانامکبدالاول‏ رکھااورابوا لوق تکنیت عطافر ا ی۔ 

(اتبر ئاٴ ابر راک رک پری بن نصو ایی یی ڈنل ا لوسعدر(ا:٢٦٦)‏ 
2س رآعلام الا ء نس الد نوع بدادڈشج نآ جم من عثان بن انا ز ال کی (۵٤:]٭‏ ۵( 


۷۵۹۲6151 ۷۸۷۷۷۷۷۰ 
ہما 





ول لستعایی: فی ''التَحبیرِ :"إِنٌ وَالِة أبی الوَقّتِ أَجَارٌلَهء وَإِنْ مَوِْذَهُ بىيجِسُتَانَ سَنَة عَسْرٍ اع مائَةہ 
َإلّه شَیَْخُ صَالِحخ مُعَشَرٌء حرصّ عَلّی سَمّاع الحَدِیٔثٍء وَحَمَلَ وَلدَۂأُبا الوقُتِ عَلّی عَاتقِه إِلی بُوشْنْجء 
وَكَانٗ عَبْذ الله الالْصَارِیٌ يُکَرِمُه وَيرَاعِیه. ٣‏ 
٦‏ ٰ 
جن امام اسعانی رحمت ال تال علیہ ابی ناب اھ “ یں فرماتے ہی ںک امن الا مام اید الوقت رحمتت ارتا لی علیہ کے والد ماجد 
نے نے ال نکواحجازت عد بیث عطافر ما ی نی الع کے والد ما ران تم رن ارڈ دفقزا لی علی.کی ولا دت پاسعادت سن( ٣۳۱ھ‏ ) ٹل بشعان 





/ تضورفوٹ انم رضی ارح ہک ماہرانہز نرگی اور موجودہ مانقا دی نظام 





یس ہوٹی ۔چی سم ررساواد ابی علیکواپینے بی ےکوحد یٹ پا اک بڑھان کا بہت زیادەشوقی تھا ۔آپ ریمتۃ الڈدتعالی علبیر نے اپچتے بی 
حضرت نج ال مام اہ والوقت رم اڈ تی عل یکو ا کندعموں پراش اک ہرات سے اور لا ے ء او رشن عہداڈدالا نصا ری رم- الڈرتھا ی علی۔ 
بھی تج ایوالوقت رحمت اتا لی علی کی بہتڑ یادوعمزت درعای تکی ار تے جھے ۔ 
(سیراعلا ملا ء :تس الد ناو پارڈ شب نک جم نخان ین انا زرل کی )٥٠٠١۱۵(‏ 

ایم ابوالوئت رح ایندلا لی عل یکا بشدادسی مل ورود 

وقال ابن الشافع فی گنت تو قب رد ار رت کر لا سان 

حادی عشرین شوال بن سنة اثنتین ومحمسین وحمسمائة وحدث بھا عن عبد الرحمن بن محمد 

الداودی وأبہی عبد الله محمد بن عبد العزیز الفارسی . 


021.۷ 





ئن شانع رادقا کی علیہ نے اپنی جازںن ”آف٠‏ لکیاےک راغ او لوت بی نگیسی ین شحیب از می البردی الصول رم 
اڈ تال علی ا٣‏ شوال امس (۵ ۲۵ہ )کوبخداع تخرف لا تے ادریخدا ”لم سآ پ رم اتال علیہ نے ا مدان بن 
الا دی او را ہو اھ جن اعد الع ہز کی الا ری رممیت اڈنا ی کے عد یثت ریف :یا نکا- 

(النقیی رح ویۃ روا سن والہنانیر:: مھ بن ع برای ج نا ی جکران ند سن ایال ۳۸۱) 


وا لو قت زم دای علیمخ مین کیظری٦‏ - 

نے کی الین ال رزالی رصن ال تھا علیفر ات میں 

وَقَالَ ز کی الدینِ البرزالِیٔ :اف اُبُو الوَفُتِ العرَاق وَحُوزْسمَائَء وَحَدث بِھَرَاة وَعَالِیْن وَبُوشْنْج وَكَرمان 

رَأَمْتَھَانٌ زالگزچ وَقارس َمَمَذائ. زَقفة اه العفاط وَالززَرزاء/ رَكاق حِنْدۂ کنب وَاجرَایث 

سَیع عَلَيْه مَنْ ل٦ا٦بُحضی‏ وَلا بُحصز. 
کے ۱ 

نے امام زکی الد بین البرزالی ررمنۃ اللدتعالی علی ف مات ہی ںک اخ ابوال وت رہن اد تھالی علیہ نے عراق دخوزمتتا نکاسفر 
ا کیازدر چرات و مالین ء پور کم مالع ء بزددءاصیہا نع ۷الکررخ ء فرش ٦‏ ہرد ان مل حد بیٹش ریف میا نکیا :ہآ پ مت ارڈ تھی علیر کے سا نے 
رشن اوروزراءودوزاٹو ہوکر شیٹے اورحد بیٹش ریف سنت تے ء او رآپ ہمت اڈ تھا لی علیہ کے ساس کنب پڑٹھی ہولی کھیں اور ےت 
۱ اڈ دشا کی علیےاعاد یش لیذہ- ءاسن اج زا نے کے کا نکیا تل زرکٹتی تی ےاورنرجی ا نکاشارکن ہے۔ 
۱ سے]علا الام : تس الد بی نالوب رانڈرشھ م۲ نت من عتان من امیا ری ومجدم..-تیت 
حرث ان جو زی رحمیت اید تنا لی علفرماتے ہیں 
وَقَالَ اب الجَوْری :کان صَبُوْرأعَلَی القِرّاء ء 07 صَالِحاء کر الڈگر وَالتهَجُدِ 0" ء لی شمت 


یعت 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


241 





السْلَفِ, وَعَرّم عام مَوْيْه عَلَی الحَجٌء ما اج لہ قمات: 
7مہ ٰ٘ 
وس جاسم ہس رس ط۔ 
پر سی مشقتیں جرداش کیل ہ ادرآپ رم ال تھالی علی خہایت تیگ انسائن ء بہت زیادہ ذک رر نے وانے اد تچ اد اکر نے وا لے 
اارروئے وا ئےءاسلاف کے ری پر لن وا نے ء اور گی تیاری بیس تے اورسا مان سف ریہ حکرل اک ہآ پ کا وصال شرف ہدگیا۔ 
"2ی آعلام الا :تس الد ی نا یوھبدرادڈش ناج بن عثان من انا ز ال گی (۱۰۱:۱۵) 
وز ماگ یآ رمۃ اتا ملع اکردیی اخضارکرتے 
رکاں ٣‏ ازس ا ہق نے داجس مب نی رم ا۰س 
الخشاب,ء وآخر من قرأہ عليه ببغداد أبو محمد بن الإأمحضر . وکان شیخا صدوقا أمیناء من مشایخ 
المتصوفان وایحاہاظھمء ذاار والبادة مع علوہسنہ. ٰ 
تھے 
خطیب بخدرادبی رحمہت ای دنتھا لی علیذماتے ہہ ں کہ وز مرا والمظفر بن مبیر و رحتۃ ارڈ تھا بی علی نے اچ ابوالوقت رم اش تھا لی علی 
سے درخواست ا یک ایی الا ری کے سماح سے مر فکیاجائے لے ان ابوالوقت رحمیت الد تا لی علیہ نے اکنل ال شرف شرف 
آکیاءاورالوشر بن ناب اخو ان بآ پ ہے ا بخنادکیکا سا کیا اور توالت رم ال رتھالی علیہ سے بخداكٰ میں سب سے 
1خ میں جس نے سا عمیادہ ات اش الخ رہیں _ 
اخ ابوالوت رص انشرتھالی علیبصدوق ء اشن جھے اور آپ ما صصوفیہمیں سے تھے ء اورصاح بلفغو کی مے اور بہت زیادہ 
عحباد تکیاکمرتے تے۔ 
( جا رن بفداد : ابویک راج ب نکی بن خاہت م نا بن مہ ری ایب البفید ادگ )١۱۳:٣٣(‏ 
عد مث لف کےادب 0 یج ےسواری سواریہ ہو ئۓے 
وَقَالَ يُوْسُفٌ بن أحُمّت الشْیْرَازِیٔ فی "ْرتَعیْنَ البْلدان "لہ :لم رَحَله إِلَی شَیْخنا رحلَةالڈنیا وَمُسْیدِ 
العصر ابی الوقت قدر الله لی الوصولی إِليْهِ فی آجر بل کرمَاء فُسَلَم عَليهء وقبِلَنةء وَجِلَسُٹ بَْنَ 
ُدَيْهِء فَقَال لی :مَا امک مَذہ البلا5 فلت :کان َصدی إِلَيْک, وَمَُولِی بَعْدَ الله عَلَيْکء یت 
مَا وَقَع إِلَیْ مِنْ عَدِيیک بقَنمی, وَسَعِیٔے إِلَیُک بقذیی, لذرک بَرَكَة أنَقَاكَ, وَأحی پل 
ناوک ال وَفَفَک اللۂ وَمات لِمَرضایِیء وَجَعَل سَغینَا لہ وَقَصْدنً یہہ لو كُنْتَ عَرَقٍَی حق ْ 
مَعْرِقَتی لَمًا سلَمُت عَلَيٌء +٦‏ 98 298 .2 بی مَنْ حضَرَهء تمقَالَ :اللهْمَ 
اسُتَرْنَا بِمَعْرک الجَمِیْل وَاجعَل تحت اسر ما َرصّی وه غتاء کا دی تلم آئی لت اض لِسماج 
الصحیٔح مَاشِیا مع وَالِدِی مِنْ مَرَاة إِلَی الڈاوُوٴدِیٗ بب وشنج وَلی دُونَ عشرِ سِيِیْنَء فَكَانٌ وَالِدِی يَضع عَلَی 


7۴ طلرایلز) 





۸۰ ٢۷۵5۶012 0017 





242 


پر ا کر پر رو ای1 ا رہ ک ش2 و و ے ھک چھ۔ہ ۔ے ە 7 ےر ےلچ ا وسر و 
پروی بی حَمِلھمَا فحجڈ وق مرو اضظید اور سی رہ کاطی ء فإذا رانی قد 


عَییْتُ أمرئی أَنْ القی حجوا واحڈاء فالقی, ٠‏ ویخف عَنَیء فَأُشٍی إِلّی أنْييّنَله ہی لَيقَول لی هَل 
تی فََعَاله وَفُوْلَ :لی َیفوْلَ لِم تُقَصْر فی المَمٰی اَاشرِغ بین یلیہ سَاعق ثمأَعجَزُ ء اح 
کے کت نٹانعے کئے اقظطت نعل کر لی یغیانی ء گنا تلتقی جَمَاعَة الفَلاحِينَ 
وَعَیْرَهُمء فَيَقُولُوْنَ :یا شَیٔخ عِیْسَیء اع إِيْنَ هَا الطفْل نرہ وَِياک إِلَی بُوشنجء َقوْلَ مَعَاذٌ الله أنْ 
ذَ رکب فی طلب أَحَادِیك رَسُوّل اللهِ صلی اللَۂُعَلَيه وَسَلَم نمَشٍی؛ وَإِدا عجز أَركبتٔه عَلَی رایی 
إجلالا لِحَدِیْثِ رَسُولِ الله وَرَجَاء ثوَابه .فَكَانَ لمَرَ ذَلِک مِنْ حُسْنِ یه نی انتقعبٌ بِسَمّاع مَذا 

الکتاب وَغَیْرٍۃِ. 

7ے 

ات ییسف بن اد الشیر اف یی رت اش تھی علیہ نے اٹ یساب ارشتیئن البللدان' می سککھا ےک جب میں نے امن الامامصندر 
محر ابوالوقت رحید اللہ نتعالی علی ہکی طرف سفرکیاادرآپ اس وق تک مان کے شر میں تشریف فرما تھے ہ ٹیل نے ال نکوسلام عرش 
کیا ادرییش نے ا نکی دست او یکی اورآپ ری الد تی علیہ کے سا نے بی ھگیا۔ انم رصن اش تعالی علیہ نے مھ فرمایا: ییہاں تم کیسے 
ٰ ؟ نو یل نے عق کیا : شس ن ےپ بی کے لے سفرکیا سے اوزا رڈ دفھالی کے بعدآپ سے بیع سکم ارہوںء ٹیس ن ےکپ رم اللہ 
تی علیہ سے مردىی اعاد یٹ شر وفیہا نال م ےکی ۴لا آوڑ ھ سا ح پا کاساننوں سے برکت ھا لکرول اورآپ سے علو 
الا ۓاوطل ےگ روں 

بچھ سن ابواموقت ری اللدنتھالی علیہ نے فرمایا: ا تا ی ت مکو اور مھ فو شی محطافر ما ےک جم ا کی ٣ى‏ ۰۷و 
کامیاب ہو جا تی اورائل کرے جمادریی سماری سعی ای کے لے ہواورودی ہمارامتصویجنٹی ہو ۔اوراگرم یچھے اسی ط رع جان لے بتس 
طرع میں ہوں نے نیتم یھ سلا مکر تے اون می رے سا تے ٹیٹٹت ء کک رآپ رحمت الڈدتھالی علیہ ہت زیادو رو نے گے اور یقن لوک پا 
تے دہبھی رونے گے ۔ بھ رآپ رحمت الد تھا لی علیہ نے می دعا گیا : اے اللہ ! ایا ہمت کے خصصورت پپردۓ سے ہمارے اعما لکو 
چچھیادرے ء اود یں اپ رت کے جادرکے بے اماان دے دے اور بھم سے راصی ہوجا۔اے بے اخم جا تن کہ مشش نے عد یٹ 
شریف کےسماع کے لے ہرات سےاہے والمد ما راغ یی ریت اڈ تی علی کے ساتع ران وا دی رم اد تالی علیہ کےگھربور جک 
پیر لف رکیاءتب بر عمردں سا لگ تنۓگیءھر ے والد ما جدرتمت ادتقا لی علی ھی ےسا نے دو پھر ر کت اورفر مایاکمر ت کال نکوا ھا و 
می ا نکواٹھ جاادر لن شور حکردیتاء ٹل ا نکوقا لوک کے ڈرتے ڈر تے چنا شور حکردیتاء جب چججھے د بت کہ می سن کگیا ہو ںو بج ےمم 
7 ات ےک ایک پھر ادوتق یش ان میس سے اسیک پچ ینک د بتاء پھر جب مت حلت د یھت ہک ہمیرک رفنا رم برست ہموگئی ہے نشیف ماتے 
۱ کیک ینم ھک گے ہو؟ فو می ڈرتے ہو ئ کی تہ بول سکتا چھروہ دوس ابچ یگمراد بین تھے ء پچ رمیہرے دالد ماد رحمت: اڈ تی علیہ بے 
ای نےکندھوں پراٹھا لیف اوراسی طرع لت یت ہکسمانو ںکاگردہ لا چجومہرے والد ماج دکو جا نے جھے وہ نے گے :حضریت ! آپ ائل رح 






























۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





رٹ پنمم شی اع ہک مھا پرانہز نی اورمو جودہ خانا چی نظام 243 


۱ ری سک ہہ مآ پکواوراہوالوشت رحمیۃ اد لی علیکوشی اہینے ساتوسوارکر ت ہیں اود م1 پکو ا دا دی رت او تھا لی علیہ کے پا 
چھوڑرسں کگے۔ ٰ 
قذمیرے والر ما جا نمی رحمیت ار دتتھالی علیہ نے فر ایا تو پان ذتک! ہ ہگ یبھیسوا ننس ہوں ائ ینک ہکم رسول ار ماپ 1 
عد یے ش ریف پڑ ھن جار ہے ہیں :می شر می ےک ہم رسول ادڈعشگھکی عد بیٹ ریف پڑ ہن جانیں اورسوا ہوک جا نمی ء مہب 
ہے می رے ساتھ جب یتحدک جا ا ےت ٹیش ا ںکوکندیعوں پر ا ال ہوں اىی یل رسول :ماگ کیا حد بیث شرلی فک عحزت 2 
تنم ابوا لوت رحرت اپڈلباکی علیغر مات مہ نک میرے والد ماحد ینعی رت ا تھا لی علی .کی نکسن خی تک مت ےک ہیس نے 
رسل انڈ کی حد ینگ لی فکاسمار عکیا۔ 
َ*“"-تس- :تس الد نکا یش بدرایٹیشرب نم من عثالن بن انا ز ال زی )٠١۱:٠۵(‏ 

جھےکھانے ھی ز یاواہ ادا ا ڈم پش کی حد یھ لی فک سا جح پہنرے 
قال الشیخ یوشفن بن احصلإلشیرازی رحمة الله تعالی عليه اضر الشیخ ابوالوقت رحمة الله تعالی 
علیه إِلَی صاحہن عَبِّ الباقی ہن عَبْكِالجَبًارِالهرَوِیٔ أَن قد لی عَلواء ء فلت 9 
ابی الجَهُم "٘حَب إِلَيَ مِنْ کل الحلواء اب۴ ء وقال :ِٰذا تل لطْعامُ حرج الکلام دم 
حلواء الفائیذء اكِلناء وََخْرجت لجژءِوَمَلهُِحضَارَ الاضل, وہ حا وَسَرِرث بے 
یسر الله سمَاع "'الصیٔج "رَخَیْرو پبڑارأء و ا کی شید رج مَيه إِلَی ان تی ببَعْدَاذ. 
"ھے 

انم برسف بن اححدالشیر ای رت اللہ تھا ی علیفر مات ہہ سک میں سن رکز کے انم ابوالوقت رحمت ادتقا لی علی کی خدمصت میں | ٠‏ 
حاضرہوات آپ رت یلد تا لی علیہ نے ات عمبدال اتی بن عبدا ہار الہردکی رم ائلدتھالی علیرکوف مایا :کان کے لئ علوہ لا َو میں نے 
عت ضکیا:تضورامیرے لئے بتز ابوا "ہم یس موجوداحاد بویٹ ش بی فکوڑ ھن عل ہکھا نے بھی ززیادہ ند بیدہ ہے می رای با تک نک راغ 
ادا لووقت رت اید تھا لی علیہ سرانے گے ادرف مابا: ج بکھانا آ جائے نو کلام نم ہوجا تا ہے فیس انپون نے مم ےسا نے علو ےکا ققمال 
رود ان ہم سب عاعض بن نے م لکرکھایاء ادرشیل نے دہ بے الوشہ کالما ادرییس نے ع کی :کہ اہہے پا س موجوداصسل کال لین تشخ 
اوالوت رحمیت اتا ی علیرنے ای بامس سے ا کی ال کال می ء یس نے وہ جز یپ حھنزاشرد کیا ادر می نہایت ایخ ہو پا ماکان 
ور سے سس تح سب رہ 
کے بحدرا نکی خدمت می بخدا زع میس کی رہا۔ 
(جارنإخراد :لوک رھب نی بن شاہت من بن م ری اخطیب البفد اد( )٣۴۰‏ 





ہے 7 - گی 
عد یٹ ش ری فک یناب تکافاتدہ 
٤ 2‏ ہٴے ۶ ہو + ھ جج تد ُ‌ ےو کا سے 7 1 ہہ دھ٤٦غۓُ‏ 
انا ابو الوقتِء انا شیخ الاسّلام عبد الرحمن بنیسابور :سمغت الحسین الذقیقیء یَقول :سمعٹ سھل 
بن عبد الله یَقول :من راد الذُنَا والآخرۃ فللیکتب الحدیث فان فيه منفعة الُنیّا والآخرة. 


1 ۔ 
ت 
.2 
5 


۷۷۷۷۷۷۰ ۷۵۶6۶012/8 / 


تضورو 

























قُلُ :ھکذا کان مشایخ الصوفیة فی حرصهم عَلّی الحدیث والسنةء لا کمشایخ عصرنا الْجَهَلَة البْطَلة 
لأكلَة الکسلة .عن سھل وَقِيلِلهُ :إلی معی یکعب الرجل الحدیث؟ قَالَ :حَنُی یہموت, وبٌصب باقی 
حبرہ عَلَى قبرہ. ٰ 

تل 


الم ری اول ع نکی مھاہرانہز ری اور مو جودہ مانقا عی نظام 














امام ابوالوقت رج ال تال ی علی رف ماتے ہی ںکہنممیں تن الاسلا معبدالیکن رحمتۃ اللہ تال ی علیہ نے ممیشا ورس اطلارح دب یک 
نے اخ الد تی ریت ایشدنتھالی علیکوفر مات ہو ئے ساد وفرما تے تج ےک میس نے ححضرت سد نا بل بن عمبد الہ نشی ارشرکف مات ہو تۓے 
سنا: ون مہ اتا ےکا کید نیادآخر ت ٹیک ہوجائے نو دہ رسول رڈیل گی عد بی ہش رای کل انرم ےکی وکلہاس یل دنا وآخرت 
کال ہے امام ارجم "اڈ تا لی علیذ الات ہی ںک ا ےہ ہی ہمارے مشا رک صوفیرحد یٹ وسض تک طدممتکی کرت تھے ,نس طرح 
ہارے دور کے مشا رک ہیں مات وس تین ےھ رپوراورصر فکھاکھانے کے لے ٹیٹھے ہیں ۔ححضرت سید کل رشی اون دعنہ سے عو ضکی 
ینا ری فک بک کلکعتار ہے؟ 2 آپ ری اواندعنہ نے فر مایا :اتا کی ےکلککعتالکعتافت ہوجائے ادرجوسیاہی بی جاے 
ا کی اقب پران گی دکیاجائۓے۔ 
( جار اإ لام دوفیات الشا دا علام ین الد ینار وعبدانڈش نا بن عفان بن انا زال بی (۳۱:ے۱۸) 
وم ت تم لگ اور چثاز ہ ۱ 
قال آر فضل اعت یضام نت ٴا نتوفی ابو الوقت فی لیلة الأحد سادس ذڈی؛ القعدۃ سنة ٹلاٹ 
وخمسین وخمسمائةء ودفن بالشونیزیة ۔وتقدم بالصلاة عليه الشیخ عبد القادر الجیلی رضی الله عنه . 
تم ۱ 
ا الما ابو أغفحضل اجربین صا بن شانح رحمت لدلد تھا یی علیفماتے بی ن کہ اتںم ابو ال وشت نت ال تزاکی عل کا دصا لی شریف 
انذارکی رات ذ والققحدر و سنہ( ۵۵۳ھ ) بیس ہواءاورآپ رم الد دا لی علی کی تر فشن الشونز می یل ہوک اورپ رت الد تعالی علیری نماز 
جناز ہی امامت اخ الام بد القا درا یلا لی شی ا عنہنے فرمائی۔ 
۱ (وفیات الا عمیان دباع ہنا التہ مان :ادا تاس ابن خلکان ال گی للا رٹ ی(٣۲۲۷۰۰۳۰)‏ 
آ برجم الڈدنتا لی علیہ ے مدکی ایک حر مث 
أَخَبَرَنَ عَبْد الاوّلِ بُنْ یِیسّی قَالَ :أَخَبَرَنَ ابْنْ طُلْحَة الڈَاوٴدِیٰ قَال :أَخْبَرَنَا ابْنْ أَغِيَنَ السَرَحْسِیُ قَال : 
لت لْمَبَریٔ قَال خی تا الْبْخَارِیٰ قال :حدٹنا أحْمَّد بن إِمُحاق قال :حڈثنا عَمْرُو بْنْ اہم قال : 
حَدُتَنا مَمَامَ قَال ُحَڈٹثنا إِسْحَاق بن عَبُِْ الله قال :حمئاٹنی عبد الرحمن بن آبی عَمروء عَنْ ابی مُرَیرَة انا 
یع رَسُول الله صَلی الله عَلَيیْه وَسَلم يَقُولَ :إِن فَلالَة فی بَیی إِسُرَائیل اَبْرَصّ وَأَقرَعٌ وَأعمّی أَرَاة اللَهُانْ 
َبعلِيَهُمء بعک إِلَيْهمْ مَلکا فاتی ال‌بْرَص فَقَال :ایٗ شَیْء اَحْبٌ إِلَيْک قال :لوٴنْ حَسَنْ, وَجلڈ حَسَنْء قد 
نی الَاس .قّال :فُمَسَحَۂ فَلمَبَء فَأَعُطی لوا حَسَنًا وجلدا حسناء فقال :ای المال أحَبٌ إِلَيْکَ؟ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 81107171 





قال الإبل -آو ال َو شک فِی فک سُا فی أَالبرَصَ و الأفرع قال احدھما الڑبل وَقالَ الَحَر 
رس ینف عُخَرَاءءَ فقالَ ارکب الله لُک فِا واتی الافُرَعء ٥‏ فقَال ا شیء, اب إِلَیْک؟ 
قال :شَْغْرحَسَنْ وَيَذُّحَبُ عنی هَذَا فقَذ قَذَرَنِی الناسْء فَال کس تتڑ 
فَأٰیْ المَالِ اٌحَبٌ إِلَیْک قَال البقرُء فَاغطَاه بَقَرَة حاملاء قال مارک لک فِبهَا .اتی الغمَی فَقَال :ای 
شَیْء اب الیک قَال :يَرُه اللهُغَرژوجل بصریء فابصر ہه الىاسء قال افمسحہ؛ رد الله إِلَيْهِ بَصرَۂء 
ال :فی المَال اَحَبٌ إِلَیْک, قَال :الْعَتَمء فَأعْطاه ش٤‏ وَالِدا.ليْتيِخ هَذَا وَوَّلَد مَذَاء رَکانَ بت 
الإہلِء وَلِهَّذًا واج سن البَقَرء وَلِهٰذا وا مِىّ العَنمء ثُمإِلَه آتی ال‌بْرَصَ فی صُورَبہ رَمَیَْيهہ فَقَالَ :رَجْلْ 
ِسْكِينْ تَقَطعَث یه الحِبَالُ فی سَفَرو فلا بَلاغٌ إلا باذن الله تعالیء ٹم بک أَسْأَلک بالّذِی أُغطاک اللَوْنَ 
الحَسَی وَالجلید الَحَسَنَ بَعیڑا الع عَلَيِْ فی سَفریء فَقَالَ لہ إِن الْحْفُوق کَفِيرَةء فُقَال/ 1 :کانی 
أْرِفُک., امْ تگنابْرَض بَقذرُک الَاسُ ء فقیراء فاغطاک الله فَقَالَ لَقَد وَرِ کابرًا عَنْ کابرء فَقَال: 
إِْ تَنْتٗ کاوِبًا فَضَیْرُک الله إِلَی مَا شُنْتَ .وَآنی الفْرَع فی صُورَبہ وَمَیَْيهہ فَقَالَ لَه مِنْل دُلِک وَرَہ عَلَبْہِ 
سس مین :إِنْ كُنْتٍ کَاوْبًا فَصَیْرُک الله إلَّی مَا كنْتَ. 
تی العمّی فِی صُورَنِهِ فَقَال :رَجُل مِسكِين وَائُنْ سَہیلٍِ تَفَطْعَت بی الحبَالُ فی سَقرِیء قلا بلاغ الیوم إلا/: 
الک ڑیک۔ اشالف بائدی رہ زی ایا ح ہے کک فَاة الع بهَاء َال جن ائممَی فرۃ الله علی بصریہ |پ 
جو سس بت شئت,ء فو الله مَا اجُهَلُک لْوُمَابشَیٰء اَحْذْتَه هُو لله .فقال :امُسک مَالک.: نما 
ابَْلِيتَمْء وَقَذُ زّضِی عنک,: وسخط علی صاحبیک . 
تر سر صر سہثٹ 
ہیں عبدالاول نمی ن ےش ردی ءاننہوں ن ےکہا: یی این لیر الید او دکی نے خمردیی ‏ انہول ن ےکہا: یی این این الس نی 
نتم ردیا ءانہوں ن ےکہا :ہیی الف بین ےتمردیا ءانہوں ن ےکھا: میں امام با رکیا نے تردیی ان پوں لن ےکا :میں ات بن اساتی نے می 
حد یٹ شرف میا نکیا ءانہوں ‏ ےکھا: ہی عمرد بن عائم نے بح میٹ شرف جیا نک ءانول کا :فک الام بے ببحد یش شریف 
با نکیا ءانہوں تن ےکہا: یی اسحاقن کن عپدائشد نے بیرحد بیث شرف میا نکی ءانہوں ن ےکہا: جشھےعبدالرتسن بین اپیانر درصشی ڈیہ و ىہ 


09 ۷۵۸۶680720 717 


حد بی ش ریف با نکیا ءانہوں نے ححخرت سید نا الو سی ری ال دعشہ سے دداج تک یکسا نہوںل نے روایہ تکیا: 
7 ییمخ 

رسول ال پگ نے فرمایا: بی اس ائیل می تی تخس تھے ء ای ککوڑشی اوردوسااندھااورتیس رام نیا۔ اللد تعالی نے جاپاکہ ان 
کاامعائنع نے ء چنا غچرارلہ تھا لی نے اان کے پاس ایک فرش بھچاءفرشنہ پیل ہکولڑھی کے پا سآ یااوراس سے پ اکر مکوسب سے زیادہ 
یز پسند ے؟ اس نے جواب دیا:ابچھارنگ اوراکچھی کی ۔ک وف لوگ بج سے ددر بھا نے ہیں ۔ بیا نک اک فر شنے نے الس بر اپنا ا تھ 
برا ا لک بہار دورہوگئی ؛ اور ا کا رن بھی خوبصور تہ وگیااور چنڑ یبھی اکچھی ہوگئی ۔فر نے نے اس سے پو چھائی سط رح کا مال 
تم زیادہ لپن رکرو گے؟ ای ن کہا :کہ یجھے اونٹ باائس ن گال گی ۔ اسححاق بن عبد ارگوا سے میس شک تھا ککوڑھی او رنج میس سے 





۱ تضورنوٹ نشم تھی او نہک ماہرا نز ندگی اور جودہ مانقا بی ام 


ایک نے اوض فکی خواچش یھی اوردوسرے سن گا ۓکی ۔ چنا خچ ا سکوھاملہاشنی دئ کی اورک گیا کہا تال یت مکواس میس برکت دےگا۔ چھر 
فرشنہ کن کے پا سںگیااوراس سے بو چھ اکن مکوکیا پچ پیندد ہے؟ 2 اس ن کہا کیمحدہ ہال ادرم جود وی ب ٹم ہو جال ۓےکی کہا وج سے لوگ ہج 
سے بھا گت ہیں ۔ رسول ارڈپپپلگ نے فرمابا رف شنے نے اس کےمص پر اجکی راا درا کیاعیب جا تار با ءادراس کے ریہ بای کآئئ ؛ 
فرش نے و چا ت موس رکا مال پند ہے؟ اس ن ےکہا :کہا ۔ رسول اتیگ نے فر ما یاکہفرشتے نے اس ںکوعاعط ہگائے دے دی 
اورک ہاکہ: الد تما لی اس ہیں کے کت در ےگا پچ رفرشتہ اند حے کے پا سآ یا او کہا :ہک غ مکوکیا یز بپند ہے؟ اس نل ےکہا :کہ الد تی جھے 
آنکھو ںکی وشن درے در ےٹاک میس لوگ ںکو رسپ سکوں ۔رسول اڑپک نے ف مایا :فرشتے نے اتکی ات ارتا لی نے اس کی ہین ٗی ا سکولوٹادی 
پھر اکس طر کا مال پیندکرد کے ؟ 2 اس ن ےکہا :ہک ہبھھ یا ۔ فرش نے ا ںکو ایک حاطہمرکی دے دی ء پچ روس جانوروں کے بے 
بیدا ہے ۔ بیہا لک فک یکوڑڑی کے اوننڈں ےا سکی وادی گج رگ سن ےکی تی لگا سے واد یگ ری اوراند ےک یج میوں سے اس سکیا وادگی کر 
گئی .رد با روفرشت انی ابی گی شک یس ا سکوڑی کے پا ںآ بااورکاکہ: یس فہابیت کین ونقی رآ دی ہوں مسف رکا تھام سا مان داسیاب نتم 
ہوکیاے اورا توالی کے سواکسی سے عاجت پورگ ہون ےکی امی یں ملین تم سے ای ذا ت کا واسطہ در ےک جس نے ت مکو ا چھارنک 
اوراپچھاچھڑراادر مال عطاکیا۔ ایک او فکاسوا لکرتا ہوں جنس سے سف و راکرسکوں ۔کوڑڑھی نے فرش سےکہا: میہرے ذ مہتق تی اور بہت سے 
ہیں فرشتے ‏ ےکہا: الات مکوجا ما ہوں بکیات مکوکوڈبدکیپارگی نیگیا من سک وج ے لو کتم سے دور پھا گے تے اورقم ای نقی رد نادار تھے پچھر 
1 وا تھی نے مہ چززمسی عط اکس ۷اس ےکہا :کیاکی واوا ین می ے پاپ داداسے پگ ری ہے گنر شتے ن ےکہا:اگرقم مچھو ےہول اللہ 
تا خمکت ری بی حالت پرلونارے۔ ٰ ٰ 

رف رشۃہ سنج کے پاس ای ہہک صورت می لآ بااورال ںکڑیھی دبی درخو امس تکی ورس ن بھی دج یکوڑیھی دالا جواب دیا فرش ےکی 
اگرم چو ہو او تھا یت مکوچھا ری ہی حاات پرلوٹادرے ۔اس کے بحدفرشتداند ھھے کے پاس اپٹی کی صورت می ںآ یا اور ال ںک کہا کہ 
ایک سکی ن1 دبی ہوں سف رکا خمام سا ما ن نتم وکیا سے اورسوااابند تھا کی ک ےکی سے عاجت لرگ ہون ےکی فوقع نیس ہسے ۔ می تم سے اس ذات۔ 
کاواسطہ در ےگمربٹس نت مکوچھاری بدتاٹی دائیل دئیا ہے ای کجلرکی ما نا ہوں :ننس سے ای سف کی ضر در بات ہو رگ یکرسکوں ۔ اند ھھ س 
جب دیاکہواقی می انددھاتھااو راڈ تال ی نے بچھ اہ نل ے بیتاکی عطاظ گی اوس وش یقارع تھا ال تال ی کے بے بالزاز اخ 
شٹ یب ریاں جا ہونے کت ہدہ تھا یکی اسم اج ب تم نے اتا یکانا لیے اب جقنات ھا رادلی جا سے نے جا و می سک مکو ہرک نیس روک سکتا۔ 
فرش ن ےکہا: :کیم ابا مال ات پا س دکھو رین رف امتاان تھا و راڈ تال یم سے راصھی اورخونل ہے او رھ رر ے دو دوس سا و دافم 






















۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 61121131. 7 









" 7 
زامن ج ر3 عم ولملوک: با الد بی ناابوالذررح عپدرالرنشن بی نپھلی بن رالجوز بی )۱١۵:۳(‏ 
زج الغاری بن اساحت لیو برا دا بغار ی ایی (م:۱ے١)‏ 

اخ اإوالو نت رع الا بی علیرے دوس ری روامت 


رشدھےء کو نئڑثےر۔ و رر ر ہے ھخه کو ہے کس کو اور۔۔ ہے کے گے گور زذ۶+و ‏ رر وھ 
احبَرَنا اَہُو الحَسَن الْهَاشِمِیٔء انا ابْنْ رُورْبَةَہ انا ابُو الُوْقُتٍء انا ابُو اِسْمّاعیل الانضاریٗء انا ابو الَحَسَیْن بن - 


247 





تضو وٹ )نم شیا نہک مرا نز حدگی اور مو جودہ انا جیا نظام 





لعالِی, 880 کا ا ایگ تاب محمد وَاق کا شوتی بی لال التَبدِیٔء عَن عبد ال 
7 پگ .و 50 رھو ہے و ھا .۔۔ برق سے ھی رر رر فی ٢۲ھ‏ 


رھ سترصر ‏ ےٹث 


یں اپواسسن ال ہاٹھی نے نجردیی :“میں روز ہن ےش دی یی اہوالوت نے خ رد ہیی اہو ال الا صا رکیانے تم ردیی :می اب وا 
الا لی نے خجردکی :یی پش رہن اج نے عحد یث جیا نکی :پیل ابکن ناجیہ نے عد بش ریف میا نکی :یل عبیہ بن بن ارات نے ببحد بیٹش ریف جیان 
گی یں موی مین ہلال ا ریو بدا نار نے انہوں نے ان ےانوں نے عفر ت سی نا عہ اہ نگم سی انا سےردای تگ: 
ےن ڈاٹ 
رسول ارڈ نے ارشا دق ماا: نے یرے دسا شریف کے بدی رکا کب کے لے رک قاع اجب 
مئی۔ 
(ارں الإ سلام دوفیا تا مشاہ دا علام :شس الد ی نب راڈ ھب نام بن عثان بن انا ال اہی )۲۱٢:۱۱(‏ 
ڑج ءا تا بای طاہراسیلٹی: :صدرالد گن پا مکی یئھب نآ رب رین ط برای ہل سای (ا ےا ےا). 
بیمنورہ ٹیش بمصراداک رن کا ثاب 
أخبرنا عبد العزیز بن محمود الأمحصر قال أمخبرنا عبد!لارل بن عیسی بن شعیہ۔؛ الشجری قال :أخبر 
محمد بن عبد العزیز الفارسیء أخبرنا عبد الرحمن بن أبی شریح حدثنا ابن صاعدء حدثنا ھارون بن موسیء 


حدثا عمر بن أبی بکر الموصلى عن القاسم بن عبد الله عن کثیر بن عبد الله بن عمرو بن عوف عن نافع عن 
ابن عمر قال :قال رسول الله س سو سا ٴصلاة الجمعة بالمدینة کالف صلاة فیما سواھا۔ 


بر رعر ہش 
یس عبدالحزر: بنپھسودال خحضرنےخ ری ءانہوں ن ےکہا:پھیں عمپدال ول بی نپھیسی بن شحیب ا بجز کیا مت انتا نی علی نے 
جرد ءاننہوں نہ کہ :یں مھ بی نعبدرالزبی: الفطارزی نےےخ رد انہوں ن کہا :نھییں عبدرالشن ین ای ش رم نے خر دی :یش این 
صاعد نے بعد بیث شرف جیا نکیا ہنی پارولن بن موی نے بعد یٹ ش ریف بیا نکی :یی ںع جن ابوبر ال کی ثے تفاسم ین 
عبدرالڈہ سے حد بیٹ ش ریف بیا نکیا ۲ انہوں نت ےکی جن عدرایلدب نعمرد بن عوف سے ا نول نے ناش نشی اید حنہ سے می حد میٹ 
شریف با نکی ءا ہوں نے ححضرت سید نا عبدادشدرم نی گھرریشی ائڈمینماے ربحد بی ش لیف میا نکی انہوں نے فرمایا: 
7 تب من حدیث 
رسول| ات سول ا لٹٹتھ٢نے‏ ارخار ابانھ ید منورہ یل ایک بقعرار اکرنا اس کےعلادہچلہ پ برا ارات اداک نے کے پرابر ہے ۔ 
(شفاءالفرامپا شبارال بلدافھرام : رم نآ سب پک پٹ لد مین ا بوالطیب می سا ۳۳9۸) 
(الدرة الشین:ئی أخمارال ری : محت الد ری ناوک بدرایڈ رم نتم دن | ئن اروف پان التچار:۸ءے) 





۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹68071(21[ " 0017 








استمادگات یا ک ری الرعتہ 
ا ال مام ا بویا بتفوظط بن امر ین سن اککوذ انی فق المنا رم ای رنتھا لی عا_ 


ا ال ما مگ ہراقادرا یلا لی شی ار عنہنے امت الا مام ابوا لطاب رم ا تھی علیہ ےم فقہ حاص لکیا۔ 
ایخ ابو مب رحمتت ال دنا لی علی کی ولادت پاسعادرت 

لج ام گر لطاب مسترطای اعم نے العس اگرذانی لی انحالہ رحمة اللہ ضائی علیہ 

هو ابر الخطاب محفوظ بن احمد بن الحسن الکلوذانی فقيه الحناہلة وعالمھم فی عصرہہ المولود 

سنةر( )٣٥۳ ٣‏ والمتوفی ببغداد سنة (۵۱۰). 
ٰ 
ابواطا بکغوطا بن ات" بن اہن الکلد زی ج کین لھا بد اوران کے عا لم تھے ؛آپ رصم ارڈ علی کی ولادت پاسعادرت 
سنہ( ٣٣٣ھ“‏ )یس می وفات سنہ( ۵۱ں ہوئی 

(جارں ایل لکن )سان ال بارک بن ٣وب‏ ففا ار یل: وف پاہن امت نی )۱٢۷:۲(‏ 

صرلغ 


سمع ابا محمد الجوھری وابن المسلمة والقاضی ایا یعلی وتفقه عليه .قرأً الفرائض وصنف 

کتبا منھا الھدایة ۔وحدث وافعی ودرس کان ثقة ثبیا غزیر العقل والفضلء حدث عنە ابن 
الجوزی. 

ہے 


07۔ 01021131 ۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 


ان اہواطا فو بط بن اح بن اصسن الکلو ای نت ال رتا علیہ نے جح ایج الہ ہی اوراین لم اورا اض 
انل 0ص" 9صصيگپگپٰپ ‏ 2 ۶ء" لو زا ٹی رم الد تا ی علیہ نے ا ےلم وق ھی نان 
کیااویعلم الف اکنل پٹ حا او رکت بچھ یت رمرفرماتہیں جن میں االمعد ابیکگی ہے اورپ رسمتت اشنا لی علیہ نے عد یٹ ش ری گی 
نڑسائی ادرف یبھی دبااوردر بھی د یرت تھے مح رشن کے نز دب کفآپ رم الد تال علیشبت ‏ دات]اوصا ج افضیالت 
تھے ء اتی الما ما حرتث این جوز کی رممتۃ الی دای علییہن پچ یآ پ رجمتۃ اش تھا ی علیہ سے عد بش رلف ال نگا- 
(مارج ورٹل سارک ناس ین ال ارک بن موہو بای لا ر بی ءالمحروف این المست ٹی (:۱۶۷) 
ات الا ماس بدالتقادرا یلا نی نشی شعن سے استادالفقہ 
ابی بی نکچ رم ال تھا لی علیرفرماتے ہی ںک ان الا ما عبد لق درا یلا لی رشی ارشدعنہ نے اتی الا مام ابو ا لطاب رتم اللہ 
تنا لی علی ےم ن حا لگیا۔ ۱ 
( دالوا رما ما مھ ب نکی رت الڈدتھالی علی.۴) موم مھ ر) 
















1 











آپ ر مت ال تنا پی علیہ کے شا مرد 

رَوّی عَنه :ابْنُْ ناصرء والسلفیء وابو المعمر الأنصاریء والمبارک ابن حُضیرء وَُبُو الُگرم بن الهَسٌالء 
1ے ال ما م تفوبز بن اج بن ائسن الکو زالی رت الد تھا لی علیہ سے رواب تک ر نے واموں میں اخ ال مام ابوطاہ الف یہ 
ا تمالا مصا ری ءا سبارک اب تفر ا واگرم بن الفسال رم ایق متا پی عایسشائل مں- 


سح بی نک یظم می سآ پ من ال تال علیکاقام. 
ات نکیا رم انتا کی عا کک نظزیں ٰ 
ابوالکرم بن الشبر دز یی اورا وم جن النق رت تھا یلما کے ہیں 
ال ابُو الگرم بن الشّھرُژُورِی ان إلکیا إِذا رای أبا لطاب الگلوڈانی مُقبِلاقَال :قد جاء الجبل. 
وَقال ابُو بر بنْ القَررِ تریس یں رای اُبَا الخطاب قَال :قد جاء الفقه. 
قال السلفی :ھو ثقةء مِنْ ابِمّة اطخاب : 
ہے 
اج ال مام ابواکرم بین الضجر ززوری ریستۃ الد تھالی علیفرماتے خی ںک راغ کیا مت الد تعالی علیہ جب ٹیا ان ابوالفطا ب رم 
اتا لی علیکود بت تو کت تے یل مکا پہا ڑآر اے ۔اورای طرح جبت ا الامام ابو رالقھ ررقت الد لی علیفرمائےے ہیں جب 
أتغ سکیا رمنۃ اش تھالی علی ات ابواطا ب رحمت اتال علیکود یھت فذفرما تے تے یکو فآ ر اے۔ 
اسی طط رح ات ابوطا ‏ راشلقی حم اتی علیفرما یکر تے تے : ات ااوالفطا ب رتمت اتا لی علیہ اصساب امام اج بن پہوو 
اش تھا لی علی میس جوامام ہیں ان می لآ پک شا رہوتا ہے ۔آ پ رم ال تھا ی علی لت ہیں- 
( سیآ علام الا ء : تس الد ی ناو رانڈ شب نآ بن پعتان بن اتا زالزی(٢۸۰:۱)‏ 
ایام اہی ریت اتال علیٹر ائے ہیں 
کن مُفیباً صالحاء غابدا وَرعأء حَسَن العشرٰة لَه نظُمَ رَایِقء وَلَهُ کتابْ "'الهدایَ2' ار تاب ٢رورس‏ 
المَسَاِل" وَکتاب 'اُصُوُل الف" 
بے 
ا الا ماما ہوا نطاب رحمتۃ الد تا لی علرمضحتی تھ او رنہابیت کیک انسان اورصا ح بت کی ببت !گیا مک اکر تے ہاورپ رج“ 
اش تا لی عایی نے ای کفکتاب المعد اب اورر مس ا انل اوراصول الف ہت رف بالیٰ- 
ٰ (س ]لام الا : تس الد ناوک راڈ شب نام بن پان بن اما زالزئگی(٢۸۰:۱)‏ 





(سیرآعلام الہطاء :فیس اللى نا اوب راز جم نم می نع -"ووٌصٌٗرزك[ٌ مھا ٰ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹6010.7 





ح وٹ انم ری اع کی مہا نز ندگی اور مو جردہ لقاع نظام 


ایخ الا مام ابو الخطا ب رم اتال علیگ ویات 
مارک ہومرارک ہومارک ہو 
ےت ابو الْطاب مَخفُوظ بن اَم فی کتابوء برا و عَلی محمد بن الَسَیْنٍ الجَازِرِیٌ 7.0 
الْفُرَج المُعَاقی بْنْ رَکریا لمران ارت أحْمَة بن مُحَمّد بُن إِسْمَاعِیل الدَمیٔ, عَدَتَنا فَضضل ۔َیَعَیی: 
بن سُھُل -حَڈّتنا مُوسَی بُنْ دَاؤُهَ حَدَتنا ا لوِتةعخ دزاج خزآہں الم کن آہی تجبد اللرِت لا ۱ 
ال رَجُْل " :یا َسُولَ اللہ وتی لِمَنْ راک وَآمَنَ یک ۔َقَال :طوبی لمَنْ رَآنی وآمَنِ بیء وطوبّی ثمٌ 
ُوبی ثمٌ طوتيلِمَیْ من ہی وَلمقرنی .کقالَ ار :یا رَشول الله تا وی ۔قال :َفَجَرَ فی الجَنٍّ 
مَِيرَةمِائَة ام بژیَابُٔ أهْلِ الْجَنَة نَحْرج مِنْ أَكُمَايِھا. 
جم سمدحدایث 
تسایس ابوالکا یلو بن احللد ٹیم تھا لی علیرنے ات کاب می ردی :امیس اویل یھر ین ےت 
:کی ابوالف اسان بن زکر پاش دای لیڈ انیس اح بن بن اساشمیل اڑا دٹی نے ردی وی ٹل لی اب ن کول نے مبحد یٹ 5 
شریف میا نکی ؛ٛییں موی بن داد نے بی حد یت ش ریف جیا نکیا ٗی اب نلبیعہ نے ددارع سے اننہوں نے اب ام سے انمہوں نے آ نچ" 
او سحیرا لیف ری رشی الد عنہےروابی تیادہ کت میں: 
ژ کو یرف ۱ 
ںینس رسول ادن کی غخدمت اقرس میس حاض ہوک رعرق گار ہوا:ارسول اڈ پگ ا مارک ہوا سکونس ےآ پ اہ اہ 
زیارت اد رآ پل یمان لےآ یا تذ رسول اٹپ نے ف رمیا مارک ہوا ںکوشٹس نے ےد میکھا اور یمان ےآ یاءادرسبارک ہو پھ ران 
مارک ہواو رھ رمیا شی نے سے ینان مان نے با اواب یم نے عت یں کا: ول لگا خی ے 7ات 
ریم آ ةاعاپلگ نے فرمابا: مہ جفت کے انعدد ایک درخت سے جو ایک سوسال جقنا امہ اوراس کے پچھولوں سے ججنمیوں کالباس 
تیارکیاجاتا ہے۔ 


۷۷۵۶6007] 


(ز یل طتقات انا بل وسبست ےر ہو۴ ي1-7 
(متندااا ما مب مل : و بداوش رم بن ب نل بن چلال نس الخیا ی(۲۱:۱۸) 
امام یرک مم لگا ٰ 

أنبانا أہو الخطاب محفوظ بن أحمد الکوذانی وأنبانا أبو طاھر المبارک بن المبارک ابن ھبة الله 
العطار بقراء تی علیہء انبانا أبو الغنائم مُحَمّد بُن مُحمّد بُن أُحُمّد بُن المھعدی بالله قراء ة عليه وأنبانا أبُو 
الْمَایے ھِبَةُ الله ابو الحَسَنِ الْمُظْفْرُ السبط الھمدانی بقراتی عليهء انبانا ابو العز أَحْمَد بُن غُبَیْد الله بن 
اش المكُبَرِیُ قِرَاء ٤ة‏ عَلَيْه لوا جَويَا بنا ابو طالِب مُحمّة بُنْ عَلِیٌ بٍ افج العشاری قراء ة علید 
انا ابو حفص عمر بن أحمد ابن عشمان بن شاھین حدٹنا مُحمُذ بی الج بن مل مار بالصْرَة, 





تو رٹ )نم تی ارک مھاہرانہز ندگی ارم جودہ ما نقا بی نظام 
حدثنا طالوت ابن عبادء حَذَکَنَا فَصَالُ بن جُمَيْر قَال :صَمعژث بَا َمَامَة یَقُولُ :قال رَسُولْ اللّهِ صَلّی الله 
عَلَيه وَسَلَمَ )02 
سر حر مث 

“یی ابوانطا ‏ بتفو طط بن امم الکو ذ الٰی نے نایا ءپسیس ابدطا ہرالمسبارک بن ا سارک بن ہن الد ااتطا ر نے می رے ان 
کہ بڑ نے ے بای اء “یں اوالغنام شر بن حم بن اتال بعد کی پائشد نے الن سے پٹ ھن پر بتایا یں یدانم می الد بسن 
مقر بے اہر اڈاگے میرےان کم نپ تایا یں ابوالمح رام ین عبیدرارڈدب نکارش الک ری نے بیرے ان س بے من 
تاا :ٹین ابوطاللب ئھ لی بن ال العشاری نے ان پ پٹ ھن پر بتای یں اب ضس عم بن ا بن عثان بن شا مین نے 
یں چلال کی یکرت ا ا رید رف ال گا دنت سو دارے مت ان 
کی ہیں فضال منج نے بیحد بیکش می بیا نکی ١‏ دہ کھت ہیں :میس نے ححقرت سد نا ادا ما مہ رشی الڈ دع فکوفر مات ہو .نے 


ستا: 
و رف 
رسول ارڈے پگ نے فخر مایا ت مک چیم لکر نے وا ےئل یوک رنب میس نہ یڑوج بک کفکیتقم ال سک اتی قد کیواو۔ 
(جا رد نبضداذ : لویل زم بی نگگی جن ثابت ہم نام بن مدکی انتطیب البغد اد ڑے۱۵۵:۱) 
(ا. اکب جنسلیمان بنا ینیب بن مطی رای الشامی ,ابو اقا سم لطر الٰی(۲۷۶:۸) 
کس سڑ سے کااجر 


اخبرنا أبو الخطاب محفوظ بن اأحمد بن الحسن الکلواذانی إجازة انا أبو الحسین بن 
حسٹون الٹرسی أُنا جدی لاأمی علی بن اأحمد بن محمد بن یوسف نا القاضی اُحمد بن 
مطرف نا اأبو جعفر أحمد بن صالح الوراق الرازی وأبو العباس غبد الرحمن بن محمد 
الظھرانی قالا نا سلمة بن شبیب نا عبد الله بن إبراھیم المدنی نا عبد الله بن أبی بکر عن 
صفروانبہن سلیم عن عطاء بن یسار عن ابی ھریرة قال قال رسول الله (صٔلی اللهٴ'غليه 
وسلم) ان لله عمودا من نور یوم القیامة بین یدیه فإذا قال:العبد لا إله إلا الله امتز ڈلک 
العمود فیقول الله عز وجل اسکن فیقول کیف أسکن ولم تغفر لقائلھا قال فیقول انی قد 
غفرت لهە فیسکن عند ذڈلک. 
بر بے سر حر مث 
“می ابوالطا بکخو بط بن اح بن سن اککوززذ ای مت ایی علیہ نے پالا جاز ة قمردیی :ہیس ابواصسیبن عضو ن المٹری رم 
ال تا لی علیہ نے رد ءانہوں ن ےکہامیہرے نانا جا گی بن امب نئھر بن ایسف نے بے بی ردبی :یی القاضی اسم بن مطرف نے میہ 
ایا کہیں اضف رام بن صاخ اموراق الرازکی اوراہوال اعد التشن ب نج انظبر الین ےکہا :نکیل مہم نیب نے بتایا :ٗی عبدالڈہ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ 39 0 1.77 





بن برا ڈیم اعد کی نے بتااءٗییں عمپدایند بن ابوبکر نے ممقوالن بن سیعم سے انہوں نے عطاء بن بیمار سے انیہوں نے رت سید نا اوھ یرہ 


نشی الشعنرسےانہوں نے فرمایا: 
مھ جح من حد ہثٹ 
رسول الیگ نے فر مایا : لوم قیامت کے فور سے الد تال ی کے لے ستون ہیں ء ج ب جج یکوکی بنلدہ لا الہالا انلد پڑہتا ےووہ 


ستون پش کر نار حکمرد ین ہیں ء پچ رارڈدتعالی ا نکوفر ماما ےکرتم کو نک۷رو۔فے ددع ضکر تے ہی ںکہ :یبد اجس نر ے نے لالہ 


الا الد ڑ ہا ےن نے ا کو اھ یمم کچھ شا فنوس ہے اتال فر ما جاے: میس نے ا سکوینش دیا ہے پچھرووسکون می سآ جات ہیں ۔ 
بارں/ زشن واقا ھی بن لسن ینہ لالح روف پان عسما اکر(۱۷:۷) :وا رافک رللط اعت والنشر والتز زیخ 





۷/۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 0101:1131. 7 








تضوروٹ اع ری رع نک میا انز ندگی ادرموجودہ انا یظام 





امنناوٹ ا کش اعد 
ا الا ما خرن اسسبن ب رھ بن طاف بن ام رالقاضی امولگی البند ادکی یی :اتال مل 


آپ رم تھا ی علی راغ الا ما سم بدالقادرا یلا فی شی ارٹرحنہ کے استا دالفقہ تھے 
اخ ابویکی رح ارتا لی علی کے مشارغ کرام 
مَُحَمّد بن الخُسّین بُن مُحَمّد بن علف بُن أَحُمّدالقاضی أبُو یعلی ابن الفراء البغدادی الحنبلیء کبیر 
الحنابلة ۔وسمع :با الحسن الحربیٔء وإسماعیل بن سُوَیْدء وأبا القاسم بن حبابةء وعیسی بن الوزیر؛ 
وابن خی میمی؛ وأبا طاھبر المخلّص, وام الفتح بنت أَخْمّد بن کاملء وأبا الطیْب بن منعابء وابن 
معروف؛ وجماعة. 
7 .. 
ا رین اصبین بن خرن خاف بن ار القاصشیابوٰگی این الف رام البفد دی بھی رحمت ال تھا بی علی ہبہ کے ہببت بڑے 
امام تھے ءآپ رم ای تھا لی علیہ نے اتی الا مام اس گیل بن سویلر ابو النق اعم بن حبا ہیی بن الوز سِء اورابوطا ریس ۶م 702 
کال ء ابو الطیب من ختابء اکن مروف اوران کے علاد بہت ڑکیا بضاعت سےعد بیٹش ری فکا ما عکیا۔ 
(جا رص الا سلام ددفیات الشابیردلا علام نس الین اود ڈیشھ ب نآ نخان بن قا ُا اہی ( )٣۵۳:۳‏ 
ام ابولیتی رحمت: این دنتناکی علی کے ش ارد 
رویعيه :أبوبکرالخطیب, ‏ وابنەالقاضی او الحسین محمدء وأبو۔-الخطاب 
الکدوذانیٔء وأبو الوفاء بن عقیلء وأبو غالب بن البٌاء ء اوہ یحیی بن البنّاء ء وابو العز 
بن کادشء وأبو بکر قاضی المرستان۔وآخر من ر_ ی عە ابو سَعد أَخْمّد بن محمد بن 
علیٗ الژْوْرّنیٌ الضوفیٰ فیما علمت .وروی بے من القدماء أبو علیٌ الأھوٴازیء وبین وفاته 
ووفاته ھمذا تسعون سنة3. ۱ 
تمہ 
اخ وو مام ابوشلی رت النحا لی علیہ سے رواب کرنے واموں میں انم الا مام ایور انیب البفد ادگ اوران کے 


ٹج انم الا مام اہواصسیین ابا نطاب الکلو ز ال *اوالوفاء بزح ئشیل ء بویا لب بن البطاءء اوران کے بھاکی ا کی بن آ 


انا ءابوالح ہب نیکاوشء ابوبک رتقاضی المارستتان رح اش تال ی مع شائل ہیں ٠‏ اع سب ےآ خر میں سماعحم تک نے وا ےمتاخ 

ابوسحدرامم منہج نی التروز فی الصوقی رت ایل تھا لی علیہ ہیں قرما ٹیل سے رواب تکر نے واللوں میں امت الا مام اوالا ہو زی 

رم انتا ی علی۔ یں ءان کی وفات اورا تح القاتضی الو نکی رحمی ار تا ی علی کی دفات کے ودرمیا ن نو ےسا ل کا ری ہے- 
(جارں الإ سلام دوفیات مشاہ وا علام :شس الد ی نا وی ہدانڈ شی نآ بن عثان من ئا زال زی( )٣۵۳:۳۰‏ 


) زاون ( 




















۱۷/۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 110011 71 





تو وت اعم یھی ال نہک میاہرا نہذ نی اور موجودہ مان یظام 


تع الا ماس بدا لتقاد را پیا لی ری اش رعش کے استادالفقہ ٰ 
علا حم گی ریت الد تمالی علیفرماتے ہی ںک ان الا ما عبدالتقا درا یلا لی ری ااشرعنہ نے ان الا مم اب نی رہحمنۃ ا تھا 
اعلی ےیل فقہحاص لکیا۔ 
(فائک دالوا رک ما م مھ ب مکی رحمتۃ اتا لی علی.:۳) 
زمر ےنوت پشھلین از علا مہ ولا نا ضیا ءال قادرکی عم انتا ی علي.:٦٦)‏ 


القانصی ابوٹیتلی رحمسی ایڈدنتھا لی علیح رمی نکی کظرمیس 
انیب البفد ادگی تم ایڈنا ی علہغر مات ہیں 
قال الخطیب : ولاّبی يَعُلی تصائیف علی مذھب أَخُمّد .ودرّس وافتی سنین کثیرۃ وولی القضاء بحریم 
دار الخلافة ‏ وکان ثقة. 
اخ ا ام الاضی ابو نی رجت: ار تا کی علیہ تلق تی لا ما انطیب البفعد ابی رحمت ال تھا لی علیغر مات ہی ںک ات القاعضی 
او لی رج ارڈ تا لی نے رہب اعام اص من بلس رالاس پا پا بک ریفر کی ہیں ءادرآپ رن الڈ تھا لی علیت رم فر رے 
'اورکئیاسالو کک فی جاری فر ایا۔دارا لاف شی لآ پ ہمت اد تھا لی علیوقظاصی مق رف مایا گیا۔اورآپ دم انتا لی علییمنرائحد انت 
تھے ٰ 
( جار الإ سلام دوفیات ا لشاہ یلا علام نشس الدب نآ وب دا ھی نا مب ن عثان بن گا الہ ہی ( ۴۵۳۳۰) 
ان ابواسسبین رحمت ال تھا ی عفر ماتے ہیں ۱ ٰ 
ذکرہ ابنە ابو الحسین فی کتاب الطبقات لهء فقال :کان عالِم زمانہء وفر بل عجدرہءواکان لە فی الأصول 
والفروع القدم العالیء وفی شرف الڈین والڈنیا المحلٌ السُامیٔء والحظ الرفیع عند الُإغامین القادرء 
والقائم؛ واأاصحاب الإمام أَحْمّد لە یتبعونء ولتصانیفه یدرسونء وبقولە یُفتون ء وعليه يُعولون والفقھاء 
علی اختلاف مذاہبھم کانوا عندہ یجتمعونء ولمقاله یسمعون وبە ینتفعون . 
م۷ ظھم 





ا ال مام القانضی ابو نی ریت اتا لی علیہ کے ٹیے او الا مام ابواصستین رحمتت اتال ی علبیہ نے اپ یکتتاب*”الطبقات' شس 
فرمایا: نج الا مام النفانصی ابوینٹی رم اد تھی علی علاسیۃ ز مال فریدالد ہرشےءاورآ پ رجمۃ الع اصول وفروع یش لی رن 
دانے تھے ءد نی ددنیا دی عزفوں سے مالا مال تھے ء اورککھراٹوں کے ہاں بنکی فقررعنزات رھت تہ ببہا لم فک النقادر با اورالقائم 
الد کے ہاں بے کی رر کے حائل تےء اورسا رے جا ہلا نکیا رد یکر تے تے اددا نکی نصماخیف یں سے درس دی اکر تے ے اوران کے 
اق ال یرفن ید پاکرتے اورآئیں کے پا سآ کراہیے مال با نکر تے جےءاورفقہا کرام یں جب کی متلہ برکوگی اختاف ہوجاتا دہ 







۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹6 1 717 


25 





ورنمو ےل نشی الع کی ما انز ندگی اورموجودہ ما تھا نظام 








آپ رممۃ ایشرتناٹی علی کے اش حاضرہوتے تھے اورآ پکا کلام سے اوراس سے اٹھاتے تھے 
(جارتٗاإإ سلام ووفیات ا شا دالا علام تس الد ننا لو یرادرب نآ مم نعثان من کائما زا زگ ی( )٠۵۳:۳‏ 
امامالیفہی من ار دتتما ی علیٹر ےئ 
قال الامام الذھبی رحمة الله تعالٰی عليه : 
وغیر ڈذلک من العلوم مع الژھدہء والورعء ءوالعففة والقناعةء والانقطاع عن الدُنیا وأھلھاء واشتغاله 
بالیللم ونشرہ . 
7 عے 
اخ امام القاضی اب و یی رحمت از تھالی علعلوم ومحرفت کے علاوہز برق ىیء کرای ۰ قاعت ‏ دخیاادردتیاداروں سے دو را 
کے اوصا ف ح تہ ےم وصوف تھے ہاو مکی نشرواشاعت میس شخول ر ہے 
(جاز نال سلام د وفیات المشاہیردالا علام :شال ی نا زھبدایڈیش ب نآ جم جن علثان بن انا زالزبی( )٣۵۳:۳۰‏ 
ہڑ ھن والوںکارنل 
وأاخبرنی جماعة ممن حضر الُإملاء أَّهُم سجلاوا علی ظھور النّاسء لکثرۃ الژحمة فی صلاة الجمعة. 
وخزر العدد بالالوف 
ج- 
امامالزئہی رن انل تھا ی علیفر اتے ہی ںک ان الا مام القاضی اب وی ری ارڈ تھا ی علیہ کے تلق بجھے ایک جماعت نے میا نکیا 
کہا مغ الا مام التقاصی ابو نی رحمتت اتی علیہ کے اکس جب لوگ عد یرٹ ش رای حپلھے کے لے حا ہو تے و اتمارش ہوا ہنماز بجعہ 
یں لوک نماز یو ںک کرو وکرتے تھے اور بارلوکو ںک ینف یکین دہ بازوں یش ہڑاتے تھے ۔ 
( جار از سلام ووفیات ا شا والاً علام : تس ال رم ناُ رو رانڈ مم نکمم بن عنمان مکنا ما زالزی( )۲٣۵۳:۳۰‏ 
را ےگ ارتے تے؟ 
وکان يُقسّم لیلە أَقسامًا :قسم للمنامء وقسم للقیامء وقسم لتصنیف الحلال والحرام ۱ 
تر ٴ 





تم اقاضی ابوپتلی رم اللدنتما لی علیہ را کو نتصوں +6 ای کی اکر تے تھے :اک حصہمیند کے لئے لہ دوسراحصہعبادت 
کے لئ او نیس را حص لال وقرام کے مسائ لکیعنہ کے لے ۔ 
ٰ (جارٗاإإ سلام ووفا تا ٰشامٍدالاً علام :تس الم نوعب ران شب نآ ین عتمان بن قَا ما زال بی( )٥۵۳۰۳۰‏ 
چٹرمارا تمارک ْ 
قال :وکان یٹھانا دائمًا عن مُخالطة أبناء الڈُنیاء وعن النْظر إلیھم والاجتماع بھمء ویامُر بالاشتغال بالجلم 
ومجالسة الصالحین . 


۱۷۷۱۷۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 4 7 





صضو وت )لم شی ارح ہکی مھاہرانہزندگی ادرموجودو مھا بی ظام 








کان الوالد یختم فی المسجد فی کل لیلة جمعة ویدعوء ما أخلٌ بھذا سنین عدیدة إِلَّ لعُذر . 
مرجم 
اتیغ ا مام انقاضی ابوفیتلی رحمتۃ اود تھالی علیہ پیش ا نو ںکود نیاداروں کے پا جانے سے عِک ار تے جھے اور ا نکی 
طرف من ےبھی رو کت تاور چہاں دہع ہوں وہاں جانے بھی خکرتے جھے متصمو لمکم میں مشخول رن اورتیکو ںکا محیت 
ایارک رن کاعھر دیاککررتے تھے۔ 
آپ رمۃ الد تالپی علیہ کے ہے ا ابوائسشن رح اللتھاٹی علیفرماتے ےک میرے والد ماجد ہرشب بمع ہک وسرشریف 
یں ق رآ نک ری مکی حلاو نکپ مر تے تھے اوردعاکر تے رت تج ء نز نلدگی سارک بھی سعمدلر با حےصرف مر کے دنوں یل نرک ہواے_ 
(جار الا سلام دوفیات ا شاب ولا علام :تنس الد نب وعبدائڈ یم نم من عثان من کائمازالزگی ( )٣۵۳۰‏ 
حرث این جوز گی رم اد تھالی لمات ہیں 
قال ابن إلجوزیٰ :وکان من سادات العلماء الْقاتِء وَكانَ ! ِمَامًا فی الْفْقهِء لَەُ العضَازیفٰ الْحسَان الْکَثیرَة 
فی مَذُعب أَحُمّذء وَدَرس وَالْمَی سنینء وانتھت ت إليە ریاسة المَذهَبُء وَاْسَخْرَث تَصَاییفة وَأَسْحَابةء 
وَجَمَع الامَامَة وَالْفْفة وَالصذدقء وََحْسْنْ الْخْلقء وَالتعَبّد . 
7ے ٰ 
ات امام رٹ ابن جوز گی رتم ال رتخا لی علیرف انت ہی ںک رات القا خی ابوٰنلی رضم ارتا لی علق اورسادات علماء مس سے 
جھے ءآپ مت الڈدتھالی علیہ نے فقہمشل کتبف یف مائی ءآپ رم اتی علیرنے بر تعحرص ہت کن کا ادا فر مایا اور نج ب علیہ 
راس تآپ پرپیینشچی ہو یت ۔آ پ ما تھا لی عل کی تصانیف جا رسویئیلگیں ا 
(ال برای والہای : ابوالفد امرس اشیل نع رم نکی رالق نی البص ریم الد وو 
القاخضی اہوشیپی کے استائکت رسکی غیبرت ایھالی 
قال الحافظ ابن کٹیر رحمة الله تعالی عليه 
غُْمَوْبْنْالْْسَیْنِ بُن غَبُدِ اللہ ابُو القَاسِم الْخَرَقیٗ صَاجبْ "'لْمُخْتَصَرٍ "فی الْفِفه عَلَی مَذُعَب الإمَام 
ُخْمة بن عق ء وَقَذ شَرَحَة القَاضضی اُبُو یَغْلّی بن الْفَرًاءء وَالشیْٔخُ مُوَقُقْ الڈین بُنْ قُدَامَة الْمَفْدِسِی, وَقَد 
کانٗ الْخْرَقِی هَذا مِنْ سَاداتِ الْفْقَهَاء زَالعبًادِ کثیر الفَصَائِل وَالْعبَادَوِء مرح ور دا ما کثر ِا المُب 
للصحابة, وَاودع كَتبَة بِبَعْدَادء فَاحْتَرَقتِ الڈار لی ھی فِيهَاء وَعَدِمَتٌ مُصنفَاتَةُء وَفَصَد دِمّشق فَاقامَ بهُا 
عَتّی مات فِی هَذِہِ السّتَةء وَقَبْرُه باب الصُفِیرِ یزار 
کے 
ان الما رین اصسبین من عبدا دش ابوالقا حم الف تی ررمتۃ ایل رتعالی علیہ نے بخدال یمکویچھوڑ دبا جب راف یگمتاخول نے حاہہ 
کرام ری الشعن ہک نو می نک نا ش رد عکردگی اورپ نے اپنیمکنائی کسی کے ہاں بطوراماخت رود میں ہج سگھ می ںکتب پڑ یمیس اس 





۱۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 6011171131. 





وٹ )تنک یولع نکی مھا را نہذ حرگی اور مو جودہمانقا ئی نظام 257 


نک لاد یکئی تو تا مکنتب چ لکئی ادج ھپ ریت الل تھا لی علی کی فقن فا تیتھیں ووھی جح لککیں ءآپ رعمنۃ الد تزالی علیہ نے رش میں 
سکونت ایا رک کی اورپ رحمن اڈنا لی علی کا رارشرلیف باب الص مل بنا ا سکیا فیار تک جال ی ے۔ 
(ال را والئہا : أبوالفد ام اس شیل بن ری نکی رالنرشی البصر یٹم ال شی (۱۵:٣ے١)‏ 
التقانضی اہو یتکی رحمتت ا نما ی علی کی مردیات 
دوخحیبت اھر والو یکا اآکروہ ے > کے ھا فبردعا اکرنا 
نبَانا الْقاضضی ابو يَقُلَی مُحَمّد بُن الْحْسَیْن بُن الْفَرًاء قَرَاء ٥‏ عَلَيهِء انبانا اپُو الُقَاسِم إِسُمَاعِیل بْنْ سَعید بُن 
سُوَبْهٍء أنسَان ابو عَلیْالْحِسَیْْبُنُْ القاسم الک وکبی. حَدُتَنا اُبُو غالب عَلیٌ بُن أَحُمَد بُن بت معاویة عن 
غنرمڑھی یت بن عَمْرو عَن زَائِذة عَنِ اللَیْبْ غَْ مُجَاهدِ عَنِ ابُنِ غُمَرَ قَال :ال رَسُو الله 
صَلی الله عَلَيْهِ وَمَلُمَ سال ری عزرَجَل ا لا َسعم خببًاذغو علی خببہ 
جس رحر ہث 
ہیں القاضی ابوٰتلی می بن مین بن الام نے ان رق رات کے دوران پنیا یں اہوالظا حم اس اشیل بین سعی جن سو ید نے بتایا 
ہیں ایلی این بن القاسم الک وکیا نے نایا :یی الو الم بی رن اضر بن بشت محادمی رن عمرد سے یا نکیاء یھ می ہے ذادامعاد ہین 
ونے زاندوےء انہوں نے لیث سے انہوں نے ماد ے )انی ہوں نے تضریرت سید نا عحبد اد جک نعھررصحی انماس ودفر مات یں : 
7ے و صف 
رسول ارش پگ نے فر ما ا: میس نے انل تھال یک بارگاہ میس دعا کی ےکہ جج بکوٹی ایک دوسرے سے محب تکرنے والا ہو اورایک | : 
دوس ے کے خلا ف دع اکر ےا قجول تک رنا۔ 
(جا رح ہثرار را می نان بر نان مد اتب ابخدادگ )۲۳۳٣٣(‏ 
لوک رصدد لٹ رنشی اعد کے لے ججنت واجب ہہوگئی 
حدثنا القاضی أَبُو یعلی مُحَمّد بُن الحسین بن الفراء إملاء ء حدثنا جڈی إبُو الْقَام عمَية الله بُْعُعمَانَ 
سب سسجت تگھ رر عَلِی اِسُمَاعِیل بُ سی رای بے وا 
می خی ہا ہس ئل :حصدثنا سَلَمَة بْنْ وَرذَانَ قَال :مَ سَمفث انس بن مَاِک بَقُولَ قال 
رَسُولْ اللِّ صَلّی الله عَلَیْ وَسَلمْ ذَاٹ یَوْم ىن اُسْيخ ارم بنكُمْ ضافاہ فان ابو بر :آقاء قال :مَنْ تَا 
شید :آناہ قّال :مَنْ شَیٌع الوم مِنكُمْ جنَازَةً؟ قَال اُبُو بگر :أناہ قال :وَجَبّت 
مر بج سن درصد بث 
یس ایقاضی ابو لیت مج بن بین بن الفراء نے اطا 0010 یں جمارے دادا لو الام عبیرازند بن ابی یکن یف 
نے بعد بیث ش لیف جیا نکی :یی الیگ اس اتل بن الصذار نے بحد بیثش ریف میا نکیا یی الو ظلا ریعبدالمنک من مھ نے بعد یث] 


(“”طلباریل ) 








‌۔ 


۷۷۷۷۸۷۰ ۰۷۵۶66012۷9 .07 


تو رو انم یی شرع ہکی ماہرانز نی اورمو جددہخمانقا بی نام 258 











شرییف بیاا نکی :یی انیم او ھی نے بعد بث ش ریف بیا نکی ۱ ان دوفو لان کہا :پیل سمہ بن دردان نے ببعد مشش ریف یا نک 
*انہوں ‏ ےکہا: ٹیس نے حضرت سینا الس بن ما یک ری اڈ رعش سے سنا و وفر ماتے جھے : 
7م وریثٹ 
ایک دن رسول الگ نے فر یتم میس ےکس ن ےآ رج روز و رکھا ے؟ تو عحضرت سید نا اوج رصد لی رشی ارڈ عنہ نے عت ضکی: 
بارسدل ارد پگ !یس نے رواور ہے .کچھ ررسول اریپ نے فر مایا غم جس س ےکس ن ےآ رج م ریش کی عیاد تک ہے؟ ت ححضرت 
سید ناوک رص لی دیشی ال حنہ نے عت کی :ارسول اڈیك ایس نے م ری شک عیاد تکی ہے ۔ پھررسول او نے ف رما ہر تم میں 
نے جناز ارت کپ ؟ رح سدیا فرص دق بی اد نے عون کی :یاصول رش نے جن یس 
شرکم کی سے۔لو رسول ارد ردان نے مر ماا: جختھارے لئے واجب ہوئی ے۔ 
(مَارپفداد : ابویک رام ب نمی بن ثابہت می نآ بن مر اشطیب البفد ادکی )٣+:۱۸(‏ 
تزع فی تے جال سم نا مالی القانضی ال لیت الفرام القاضی )بی بر بن !بین این الفرء :۹ے ) 
ینف دی ملا ٰ 
آ ےت تا بن لْحَسينْ بن خلَف بن الْفرَاء الحَنَلی ب بِبَغدَاد ملا “نا ابو الام ععیسّی بن 
عَلِیٗ بن الْجْرّا ج الوَزِيرقَم بُو الْقَام عَمّ الله بنْ ُعمّد بی بد ایز العَری تَا رب أُزمَقلَ 
َمعت عَبْذ الله بْنَ اود یَقُولَ مَنْ اُمُگنَ اللَاس مِنْ کل مَا يرِدُونَ أَصَوُوا بدیید وَذُنیَاۂ. 
کے 
القاصشی ابوٰیی بین این بن خاف بن الفرا سی ریت ال تعالی علیہ نے ادا لی میس اعطا کرات ہو ئے با نکیا جشئیں 
ابوالقا یی بی نکی بن الا الوز مر نے با نکیا یی ابو الق اس برا نشج جن عب ال یز لیخ کی نے یا نکیا ءکمیل ز بد بن اخخز نے 
ہیا نکیاء آنہوں ن ےکہا: ٹس نے سی نا عمبدا بد ین دا درشی یشرع نہکوفرماتے ہوے سنا: جوٹنیس لوکو ںکی مرضی کے مطابن دبن بیان 
کر ےا نے ابفاد بین اوداچی د جیا بر باکردگی- 


رسول رٹل کے لے براعتز ات سکمرنے والا 

أخبرنا أَبُو غالب ابُن البناء ء قال :اَخْبَرَنَا القاضی آبو یَعُلَى محمد بن الحسین ا؛ بن الفراء ء قال ان 

سس وس تد مس دہ یہ ا سے یو :کَڈثنا مُ>حمّد ابن مُحمّد بُ بُن سُلَیْمان الباغندیء قال : 
حدَنْنا سفیان بُن وکیع بُن الجراح ا اَی صَلی الله علیٰه وسَلمأَحَر الِفَاصَة بغض المَاخجیر مِْ أَجُلٍ 

أامَة بن ویو قَقَبَ يَقضٍی حَاجتَۂء فلا ججاء) جخاء لام طس أَسْوَذء فَقال أمْلَ امن :ما حخبسنا 

بالإفَاضة الیوُم إِلا مِنْ اَجُْلِ مَذَا قال غروَة إمَا ِفَرّتِ الیْمَنْ بُعْ وفَاۃ الب صَلّی الله عَلَيْهِ وسَلْمَ مِنْ 


خر حر ا 


أَجْلِ أسامة رَوَاه مُحَمّد بُنْ سعد ء غن زید بن ھارونء عن حماد ابن سلمة بمعنا٥ء‏ وزاد :قال اقلت لیزید 


جم کسر صدرالر بن آبوطا ہ راکیب نیحھری نا برنحھ بن ا با تیم سلقہالاصیہا لی )٥۵۶(‏ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


پکےتیم 





بی ال ع کی موابرا نز نرگی اورموجودہ مانظا نی ظام 


تو وٹ انم 
بن ھارون :ما یعنی بقوله :کفر اھل الیمن من اجل ھذا؟ لَقَالَ :ردتھےم التی ارتدوا زمن أبی بکر إنما 
کانت لاستخفافھم بامر اللّیْ صَلّی الله عَلَيْهِ وسَلُم .وآخرجہ ابن عساکر عن عروة نحوہ وفیه قال عرو: 
إانما کفرت الیمن بعد وفاۃ الٹبی صلی الله عليه وسلم من اأجل أُسامة. 
ر حہسٹرحر بث 
جس ابو نا لٹ بن انام نے دی ءانوں ت ےکہا: ہیں القاضی اویل یھی نائستین بن الفراء نے تج دی انہوں ن ےکھا: یں 
الوالق اک موی بر کسی بن ع ناسارخ ن ےت ردکیاء ان چو نے کہا :سی بن مجن سلیممان ابا غندیا نے بعد بیٹ ش ریف بیا نگاء 
نہوں ٹن ےکھا :یں سفیان ین ول بن الج ا رشی ان نہر نے بیا نکیا : ْ 
تر ج من حدریث ٰ 
کہ رسول ار گے نے حضرتاسیم ام ین ز ریش اطلرعنہ کے انار میں عرفات سے مدکی طرف رواگی موشرف می جب 
ٰ ححضرتسیدنااسا مین زبلیشی اکا حاضرزہو ہے فذلوکوں نے دیھاک وٹ کے ہیں اون ک پٹ ہوکی ہے اور رت کالما ہے اس 
مرن والوں لن ےةکہا :الس ڑ ےکی وجہ سے؟ یں روکاگیا:مضرت سید زاعردہ ری اد عنیشر بات ہیں :ای وج مھ وا کےکف میں 
بنا ہہیخ ‏ حط ت ابن سع دض اللدعذفرماتے می ںک می نے ححضرت سید نا یز بی جن پاروان شی اعد سے سوا لکی ا تحضر تعردہ 
جو مفرماتے ہی ںکہاسی وج مین وا لن ےکف ری متا ء ہو ہیں ۔ ان کا کیامطلب ے؟ اننہوں لن ےکہا: ال کا مطلب مہ ہ ےکہ 
نت سید ارد لق شی اشن کے زمانے می ھن دانے جومررہوئے دو رسول او کے اس فیصم کی کی سز اش 
ہو ۓے۔ ۱ . 
امام این ۶سا ارم ال تما ی علیفر ات ہیں :حضرت سید ناخ ذو شی اڈ دنر نف مایا : روگ ارایپ کی وفات ش ریف کے بعد 
ھن وا نے ححضرت سید نا اسا مہمن ز یلریشی الشدع تی رجا نے کی ویر ےکنفرٹیس متا ہو ۓ - ٰ ٰ 
( تہ یب !نکمال ٹی اساءالرجال لوسف بن عبدرالرٹن بن رسفا یا الم زی (۳: )٣۳۴۵‏ 
زالطیقا ت ری ووخبداوڈشر بن سحدب مت ال ای لوا و البص می ءال بد ادکیالحروف پان سعد(٢:٣٤)‏ 


7 أ96:01117113 ۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ 





7یبپي شیا نکی مھاہراننذ مرگی اور مو جودہ ما لھا ھی نظام 
استادحوث با ک ری الڑعنہ 
خلا ام ااوطا ا بگپدرالتقادر منج بن لوف البفد ادگی الی دی رتمتۃ اتکی علیہ 


وا دت پاسعادت وتصو لم 
کر الا یں لنافال سد رکانب عدالفی نعل عد اق رر تکھدیر نف 
الْبکَدَادِیٗ الیومّفیء ولد سنة نیف وَنَلاِینَ ابع مائةء سمع المصنفات الْکِبَار من أبی عَلی بن الْمَذَب 
وابی إِسُحَاق الْبْرْمُکی وابی بکر بن بَشرّان وَابی مُحَمّد الْجَوْهَریء وعدة. 
.2 
دہ ملا ءا مکی نھد لم منرة ابوطا لف ععبدرالتقادر بن ھ من عبدالنقا در جن ھ بن لإسف البفد ادی ا ٰوٹی رت الد تا ی عل کی 
دلاادت پاسعادت سن( ٭٣٣ھ‏ ) کے پحعہہوگی اورآپ رحمتۃ ادتقا لی علیہ نے بے گی بڑ می معنفا تکا سا ان الا ام ابوکی بن المز ہب؛ 
واسماقی الہرگی ء ابو رین پش ران ءاراشجر الج ہرک اوران کے علاد ہم شین سےکیا۔ 
(من الس ارح : ُبوالعبائس ٹھ بن ماسحاق بن ا ا ڈیم جن ھہرائن انف اسالی النیسا ہو ری الحروف ال ج:٠٢)‏ 
ٰ ا الا ماس ابوطالابعبدالقادر کے شا گر 
حدث عَىۂ السلَفِی وَأُبُو الْعَلاء العطار رَهبَة الله الصائن وَالشُیٔخ عبد القَادِر وَعبد الُحق الیوسفی وَآبُو 
لِم یحیی بن اسعد از جیٗ وَاُبُو مَنْصُور مُحَمّد بن امحمد الدقاق وَخلق کثیر. 


ےھ 


ھی 
ات الامام ابوطالب عبدالقا دررمہۃ ال تھالی علیہ سےملم حد یٹ شریف حاص٥‏ لکر نے والوں می ا الا مام ابوطاہ صلی ء 
اإوالطلا م العطارء ہت الد الصائح ء اچم بدرالقادرا یلا ی نشی الد عنہ ءعبدالن الوٹی *ا اتا مکی بن اسعد اڑا از گی ء الومتصورئجر بن 
اتال دقا اوران کے علا وہ بہ تک یکو نے حد بی شٴ لی فکا سحار کیا 
(میرالسراح :ہوا لجا شجھ بن اسحاق جن برا یم می نع ران انف اسالی النیسا ہوریی الع روف پالشر ۱رح:٠٣)‏ 
اخ الا ماس بدالتقا درا لیا ی شی اش عشہ کے استادار مث 
علا بیجم نشی رت الڈد نا لی علیغ ماتے ہی ںک ا الا ماس عبدالقا درا للا ٹی رشی ان دنہ نے ام الا مام ابوطال بعبدالقا درم 
ا تھا ی علییم عد می شریف حا لکیا۔ 
ٰ (فادالچھاہرلا ما سیھب نکی ررمنت الڈتعالی علی.:٣)‏ 
(سیر ےنوت |شفللان از ھلا مہ مو لا نا ضیامای تق ددرگی رم اڈ تھا ی علے:۱٦۷)‏ 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹ 60011017۰31 717 





9 الوطا ا بپکبدالقاد ہش رتمۃ اڈ تھی علیہ شی نک طرش 


بس یں 
فال السمُعَالی شْیْخ ضالخ اثقّة ,دِیْنْء مصحم فی الرَوَایَةہ كیْیْر السُمَاع انتشرت عغَنه الْروَایَة فپی 
البْلّدانء وحم لٰعَنة الکٹیٔر. 


سے می 





نے الا مام اما میرحت اولد تھا لی علیف مات ہی ںکہ ان الا مام ابوطال بعبدالقا دررحمت الشدتحا بی علی خہاییت تیک 
اسان ء نہ , آلزر ال د الا کان چلال میں نما می تکوش شکرنے دانےء ہت ذیادوسما عکرنے وانے جے ءآ پ رم ال تھا ی 
علی .کی روایات تما ممشہروں نس گی لگ ین اور بہت سے لوگوں ن ےپ رحمیت اد تالی علیہ سے حد بیث ہش بی فکا لم ماضل 
کیا۔ 
(س ]لام للا جو :شس الد ی نا اوح بدانڈ شب نآ مین عثان مین اما زالزتی (۱)۳۰۱:۱۳ 
اخ بوطا ہرپشلفی رم ال تھا عیفر ماتے مل 
وَقَالَ السَلَفِیْ شرتی أُبُو طَالِب عَلّی طريقة والٰدو فی الاحیَاط الام فی الڈین فی الد مِْ عَيرٍ تکلفء 
زن زایٹ فدہ کان ابو ا کشر ازم لق اد 
- 
اخ ال ما ملف رم او تھا لی علیفماتے ہی ںک ران امام ابوطا لب عبدالقا دربن بن لوسف مت الد لی علیہ نے اپآ 
واللد ماجد کے ز بِساى2 یت بای ءا نکی نز بیت می اعقیط لدع اور زا یکا پپلدادرو یپا نل نمایاں تھاء مس نے ان جیے 
ہل تی د یھ یں ران کے دالبا اچ لک جم اتال خلا ملق مس بڑ لزا تے۔ 
(سی]علام اڑا عء :شس الد ی نوع برانڈ شر نام بن عخان بن قئال بی )٣٠۱:۱۳(‏ 


ےنم الا مام ائوطا ا عبرالقادرکاوصال شر یف 


و 7 


َال مُحمّدُ بن عَطافِ تُوفَیَ اَبُو الب فِی آخجر یَوُم الجُمُعَ قَامنَ عشر وی الج سَنَةَ ىِٹٌ عَصْرَةَ 





وَخمُس مائق. 
ت- ٰ 
أتے ماش بن عطاف ریم ال تالی علیفرماتے ہی کے الا ماما بوطا لب عمبد الا ددجم اتا لی علیہ نے ۱۸ذواغ سن( 
٤۸ھ‏ )کو جع کے خریی وفت میں وصا لف ر مایا 

( سے ]علام اڑا :شس الد ری نا وبرالڈ ھب نام بن عثمان بن اما ز ٗی (۳+۱:۱۳) 





۰ ۷۸۹6۶6010081 71 





تضونوٹ )نم شی ا نکی مھا برا نز نکی اورموجودہ انا بی نظ م 22 





تح ال مامابوطا لب عبدالتقادر بن ھن لوسف رحمت الد تھا لی علی کی مرویات 
قب ری ماد میک سیون اکنا 
اعبَرَنا الشیَحالامیُ ابو الب عَبد الْقَادر بن مُحمّدِ بن عبّ الْقَادر بن يُوسشف قزاء ة وَأنَا اسمَم, نا ا 
لی الْحَسَ بُنُ عَلیٔالوَاعظء آناابُو بَگر َحمَة بُنْ جَهْقَر بي جمُداء یی ابو عَبْيِ الرَحْمَنِ عَبْة الله بن 
اخَمّة بن مُحَمٌَ بن عَبَلِ حَتکیی بی ٹنا مُححم بن - حَمیدِ أبُو سُفیّان. عَنْ سُفِيَانَء عَنْ عَلْقمَة بن مَرنَيٍء 
در مت ےم هي مت ُعلَمهُمْ إِذَا حَرَجُوا إِلَی المَقَابر 
بقُلَ) :(السَلامٌ عََلَیحُمْ ال الڈیَارِ من الّمُوِّيينَ وَالْمُسلِمِينَء وَإِنَا إِنْ سَاء الله بکُمْ لاحفُونَّء انم لََ 
فرطء وَنحْنْ لَكُم تبع فُنْسأن اللَهَ لت وَلكُمْ الْعَافِیة, 
مر چھ سر صد بہث 
می اخ الا ین ابوطا اب عبدالظادر جن مھ بن اوسف درجم البڈدتھالی علیہ نے ان پہ پڑ نے پرنجردی او ریش من ر پا تھا میں اہول آح 
ان ین لی الوا نظ ن ےش ردی :ہیں ابوبم زا بی ن قرب ن جم انا نے ق دی ہش ازع بد الکن بداو بن اتمم نھب نل نے برحد بیٹ ا 
ش نیف بیا نکی ے میرے دالد ماد انام اض بی نکیل ا اڈ یلال علیہ نے ببعد یٹ شریف با نک ؛ مھ نحھر بن تیر اروسفیان نے ا 
سفیان سے ء انہوں نے علق سے انہوں نے مرجد سے ء انہوںن نے ہمان بن پر یدہ سے ؛ انہوںل نے اہین والد ماجد سے روای کیا٤‏ دہ 
ا ٰ 
رورۓے 
رسول ارم اپی نے صا کر مہرنشی ارڈ نرک عہر رس ہی نے خر سن لام وق پراے ال الد ار 
”مین وموشن ا بے ششک پ بھی ال تھا لی کےعھم یھ رے پا نے وانے ہیں بت چم سے بی آ یئ اور مآآپ کے تی ےآ نے وا لے 
یں مارتحا لی سے اہینے لے او رھدا رے لے عافی تکا سوا لک تے ہیں - 
(الئو کرالصساا گن الشوو رخ اشفات انال ڈن زی تخضد رای او اژڑ: ےے) 
(مسن راپ ما مب نمھبل : ہو بدا ربنم ٹل بن بلال بی ناس رلشیا لی (۸۹:۳۸) 


9 ك9' نسشسانن ۷۷۷۷۷۷۰ 


ناو ےنکر ےار 
اخبرناہو طالب) عبد القادر بن محمد بن یوسف اُخبرنا الحسن بن علی بن محمد التعمیمی اُخبرنا أبو 
سیا ہی حر و جاک قلعت حدلا ا سوا کر عتد 
ابی حدثنا زید بن الحباب اُخہرنی سفیان عن عطاء بن السائب قال سمعت عبد الرحمن الحضرمی 
یقول 
اخبرنی من سمع النبی صلی الله عليه وسلم یقول إن من اأمتی قوما یعطون مثل اجور أولھم ینکرون 


المنکر. 
( جلرایلں ) 





263 





بر سر صر مث ۱ 

یس ابوطا لب عبدالقادران رین پوسف نے خی ردی اہی ابواسن بن پکی نم ھی نے خب ردی اہی ابکرا بن شحف بن 
ان انی ےت کین برا ا نکیل دن ریف جا نکی :شک نے (ال اچ دانماعژن 
بل ریت ال تھائی علبیرنے بحد بیٹش ریف میا نکی ئل ز بد بن الاب نے بعد بیٹش ریف بیا نکیا ء مھ سفیان نے عطاء جن ساب 
ےش ردگی :وہ کت ہہ نک ین نے خرن انف ری سے سناد:فر مات نج ےک بیس تے اس سے سناجضس نے رسول ادیپ کوفر ماتے 


ہے سنا : 

ےت ٰ 

رسول ار نے فر مایا : جا یی امت میس ایک توم ہوگی جوگناہوں ےش عکرنے وا کی گی ا ن کا اج امت کے پیل لوگو کی 

مل ہوگا_ ۱ 
(لا مربال :کالاچ ی عن اکر عراش ین دالوا حد نکی نم ور ال زی شی ٣‏ ہبی الد بن )٦۱:‏ 

( شع الزروا یرٹ الغواکر : وا ”چلال گنی بن یبھربن سلیسا نشی ٣۷۱:‏ )ملتب* التری:القاہرۃ 

سورمتش رآ1 لی کے ہڑ سس کا اج 

اخبرنا ابو الب عَبْد الْقَادِرِ بن مُحَمّديُنِ يُوسّْفَء قال :امخبرنا الحسن بُن علی الجوھری. قال :اَخْبَرَن 

بُو فص غُمَر بُن محمد بن علیٰ ابن الریّاتِء قال :أخب رتا ام٣‏ بُنْ الحسین بُن إسحاق الصوفی 

الصغیرء قال :حَذّتنا مُححمّد بُن موسی الْحَرَشِیء قال :خَدتَنا الحِسَنْ بُنْ سَلم بن ضالح قال :حَدَلنا اب 

عن أَنَس قال :ال رَسُول الله صلی الله عليه وسلم :مَنْ قَرَا ررِذَاَزلرَلَّتٍ) عُیِلّث لَه بیصفِ الْقْرْآنء ومَنْ 

را رقُلُ یا ابا الگافِرُوق) غیلۓ لۂ برئم الْقُرآنء ومن قرا(قل هو الله أحد, غُیِلث لَە بْلّثِ الْقرْآن 

روی الترمِدِیٰ. 

ر مج نٹرصر ہث 


یں اوطالبعبدالقادرائ ھن اوسف نے نیدی انہوں تن کہا :میں بنسن بن لی الچھ ہریی نے نجردی ء انی ن کہا :۴یہی ںآ 


اوتفح عم بن شب نمی ان الف بات نے قجردیی ءانہوں ن ےکہا: ہیں امھ بن این بن اسحاق الصو بی ؛لصغہر نے خی دی ءاننہوں ن ےکھا: 
کین من ےدوت شرف وا نکی :تن ے کان اشن نار جن سر کے رد وف شرف وا نگ 
نوں ن ےکہا:بھییں ایت نے نحضررت سی ناالٹس بن ما یک رتشی الشدعنرسے ببحد یش ش ریف بیال نکی ء 
ے رر تۓے 

رسول اوڈپن نے فر مایا جس نے سورت ا ذازلزلت الارض پچ یذ یفص ف رآ نکر کے براجر ہے جس نے سورت 
”اف اایہاالکافرون پچ نمی تق یہ چوتھائ یق رآ نکر کے براجہ ہے ءاورجٹس نے جلے شل ہوا داحد ہچ ھی تق ایک ای ق رآ نک رم کے 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 11 7211 7 





(تز یب انال نی آساءالرچال :پپسف بن عبرااشکن بن بیس ف (ششمی الم زی (۱۸۷:۷) 
(سطن التررڑزی : مب نکی بن سذ رہ ین موی بن الضس اک :التر ری :ابی (۱۵:۵) 


چ سرمھ ى‌٭ ھچ 

مب رک اورخن مر بھی بدتھ سے 

لسم مس سے ح8 سے کكػ ےم عے 
0-7 و ٰ۵ لی رر ہے 
ا 


ے۔ کر ھ سھ ھ ے و ر۔پ ش عھ ہھھم, ‏ ّل ور ے۔ آ ٌّھ 0 ےو و 
خبَرنا ابْر طالب قب القادِرِ بن محمد بَنِ عَبّدِ القادِرِ بن یوسسف الیوسفٍی ,قال :اخبرنا ابو محمد 


اس 


الْحَسَنْ بُنُْ عَلِیٌ بن مُحَمّد الجَوْھَرِیٔء بالبِقھاء ظاھر اللَیْسَابُورِیء قَال :َحْبَرَنَ ابُو بگر أَححمَّد بُنْ جَعفْر بن 

مدان بُن مالک الْقطيعِی قِرَاء ٥‏ عَلَیْهِ وَآنا حاضر اَسُمَعُء فالَ :حَدَنَنَامُحَمّذ بُنْ یُونس الْقَرَشِیء فال: 

ای مَعید بْنْ سَلام الْعَطَارُءقَالَ :حَدَنَنا سُفْيَان القُوْرِیٔء عَن العمّشء عَن إِبْرَاهيمء َنْ تاب بُنِ رَبیعَة 

ج٭×* يى گا و گر ئے جک ھ َ‫ رس ےمگھ گور عےر ےھ ].7. سم و ظ۶ سس وھ“ 

ال :قَال غمَربْنْ الحطاب رَضِیٗ الله عنه وھو علی المنبر :یا ایھا الناسٔ توَاضغُوا فإانی سَمِعُتٌ رَسُول 

ھا ہا ےم ہ٠‏ پر چا ہر ہے8 رکرو و گکھ۲۲“۔ 2 ہہ ہے س2 و رھ 

الله صلی الله عَلَيْه وَسَلم یَقول ) :مَنْ تواضع لِله رَفعَةُ الله فھو فی نف صغیر وفٰی انفس الناس عظیمء 

ہر و “> بجع سے 7 مر و ىر بہ ںا گ رھ 2 لئے 22 كض ےرڈ ےر گور رر کو و و سۂ ٠‏ 

وَمَنْ تَکبْر وَضعَۂ الله فَھُو فی اغِیْنِ الا صغیرٌ وَفِی نفسِد کبیرّء حَعی لھوَ امُوَن عَليْهم مِن کلبِ ار 

نی ٰ 

“یں ابوطال بعبدالتقادر بن مج من عبدرالتقادربجن لوسف ال دی نے تج دی ءاضپوں ن ےکہا: گییس الوش بصن نی بن الچ ہری 

نے خی ردی ؛انہوں ث ےکا جسیں ابو راس بن چنظ رب تعران بین ما ایی نے خجردکی جب امن پہ ببحد یٹ ش ریف پڑھیا جار یھی اور 
سبھی اس وفت وہاں موجودھاء اننہوں تن ےکہا: ہی ں خر بن لیٹس القریگی نے خردی ء اٹمہوں نک :): بیس سعید بن سلام العطار نے ىہ 
حد بی ش لیف بیا نکی ءانہوں ن کہا : پجیں سغیان الشو ری نے الائمشش سے ٢‏ اض وع ہے 1برا ٹیم سے ؛ ان ول نے حایس بن رہ سے ۰| 


۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹ ۹6810111 77 


اننہوں ن ےکہا: ٠>‏ 
رم ”وص نے ۱ ۱ 

ححضرت سد نا عم ری الظدعنہ نے فرمایا: اے لوگوا عازن یکرد۔ بے شیک میں نے رسول ادگ ھکوفرمارتے ہد ئے سن اک ہک رم 
1ه نے فر ما یا: ینس الد تع لی کے لے عا نز یکرتا ہے ارتا ھی ا سکورفشحت عطاف رما ا ہے اگ چردومچھوٹاب یکیوں ہہ وادرد ولوگوں 
کی ۰گاہوں میس پڑاہوجااے ء اور وشن سکب رک رتا ہے اوڈد تال ی ا کو وگو ںکی ڈگاہوں میں ذلیل ف ماد تا ہے اگر ہل نفسہ دہ بآ دٹیا بی 
کیوں نہو۔ ہا لم کفکروہ گئئ اورخت رب سے اکا ہو جا جا سے۔ ْ ٦"‏ 
۱ ( فوخ :نار الب نعبدرالو ماب بن نف ی الد بنالسی (:699) 
(مٹرالشہاب : لوپ ایڈشج بین لام ب نپچفم رین کی بن کسون القھنا گی امصر ی(۱۹:۱٥)‏ 








اسنادحاث ماک ری الڈرعنہ 


غ الا ما ابوا لح ین اا حم" اتی علیہ 
آپ رحمت یڈ دنا ی عل کا ارگ 
یو المِژ مُحمّ ین المُعُمَار بن مُحَمّدِ بن عبد الواحد بن عَبْلِ الله بن المُوّّ الله الهَائِمیٔ العبّاِیٰ 
الْبَغَدادِیء راد مار و کو کر ء وف باب الخص "کا بِفَة صَايِحا دیناء جَلبْلا 
محترماًء هِنْأهْل الحرم .سٌیع الگثیر مِنْ عَبْدِ اعَزيُ بن عَلی الزُجی۔ بی الس اتی 7 
إِسخاق البَرٌمَجِی۔ و ای عق بنٍ المُذُھب رَوّی عَنْه :ابو عَلِی الرخبی؛ وَأَحْمَّد بنُ المُدنک, وَابُو طامرِ 
السَلَفِیٔ, وَنَصر اللهِالقزاز, وَعبة امن بن کلیب وآخرون.تَوُقَی فی يَوُم عَاشُورَاء يْ سَنو مان 
وَحَمُس مائَةء وَعَاشلَمَائِیْنَ عَاما, 
کے 
اع الا ما ایال زم بن الا رن عبدالوا دن ان ال موی الا لہا" بھی الباسی الیفد اادی رممت ال دتتا ی علیہ 
جاسم ابوقسیام اسم ب نت رحمتۃ ایل تھا کی علیہ کے والمدا ا جن یں اوراینا شس کے نام سےمحروف جھے ہآ پ رت اڈ تھا ی 
علیخہاحیت کیک انسان ء دینعرارء جن رگ پھتر مم اورائل مم تتے سے تآ نپ رحمن اڈ تھا ی علیہ نے بہت سح مین سے 
صد بیثش ران فکاسمار عکہاء جن می سںعید اھ زبیز بین گُی الا ز تی ءاسن القرزو تی ءابواسحاقق البرگی ‏ ابلی ین الم ہب رم“ 
انتا لی علیہ یی ےکہا رح جن شال ہیں ۔اورآپ رحمن الد تھا ی علیہ سے موابی تک نے دا نے چک آپ رعمت اش دتتما ی 
علیہ کے شاگمرد ہیں ان میں اخ ابی الرتتی ء رین الس رکک ہ ‏ ابوطاہ فی ےھ نیکلیب ء 
ادردوسرے ببہت سے بح شن شائل ہیں ادرآپ ری الڈدلتنا لی علی کا وصا لی ش ریف سض( ۸٭ ھ کچھ ) میں ہوااورآپ سم 
اش تا لی علیہ نے ای سا لعرمائٰ- 
( برعلا ماأطاء : نس الد ینب وعبد ارڈ شب نآ تین عفان بن انم ز ال ٗی ( ٣۰٣:٠۳‏ ( 
(جا را سلام دوفیات امشاہی ولا علام : شس ال دی ابو بدا یھب نآ جم بن عثان بن اما زال ہی )٦۱۳:٣۵(‏ 
ان الا ما عمبدالنقا درا یلا لی نشی ارشرعفہ کے استتادا رمث 
علامشھہ بن ی اتال لیے ہی ںک راغ ام بداھا دا ٹیش اڈ ہے اشغ ام بن ار رد 
اتا لی علیہ ےعل حد بی شرلف حا لگیا- 
(ائکدالچواہ رڈ ما مھ ب بی رحمت الد تا ی علی.:۴) 
(سیرت وت ملین از علا مہم ولا نا شیا ءادقا دی ریت اتی علی :۱( 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 8911121171 






تفورفوٹ )عم ری ال نکی میاہرا نہذ محرگی اور مو جودہ مھانھا ینام 


اخ الا ما ال بن اھ رم ال تھالی علیہکی مردیات 
ححضرت سید ناما حم مین ری اش سح نکی عاجمز می 


أُخبرنا أبو العز محمد بن المختار قال :اأخبرنا أبو علی بن المدھب قال :ا خبرنا أبو بکر محمد بن جعفر 
القطیعی قال :حدثا ابو عبد الرحمن بن اأحمد قال حدثنی أبو جعفر محمد بن الحسین ہن اہراھیم بن 
اشکاب قال :حدثنا جغفر بن عون قال مسعر:أخبرناہ قال :مر حسین بن علی عليه السلام علی مساکین؛ 
فجلس إلیھم ٹم قال :إنه:لا یحب المستکبرین. 
رر سٹرطر ہثٹ 
ہیں اوالعز حر ین ا ار نے دی ء انمہوں ن ےکا : ہیں ابیگی بن الم ہب نے خردی ؛ انمہوں لن ےکہا: یں ابو بکرم بین 
عفرا شلبتی نے خبردی ءانہوں کہا : او بدارشکن بن اص نے ہم سے بعد یٹ ش ریف جیا نک ءانبدل نےکہا: یھ ا شحف بن این 
بن ابر ڈیم بن اشکاب نے میحد بیٹش ریف بیال نکیا ءانضہو لان کہا :یی تفم ن کون نے بعد بی ش ریف بیا نکی ہمس ‏ ےکہا: جھم نے 
ا نکوبرد یک 
رت 
ایک با رتضرت سید ناما مین بنگلی ریش اوڈیمالیک یل ےگز رےانچیان سکین یھ ہو تھے آپ ریش اب رعنہان کے | 
سا تھ یٹ لئ اورفر مابا: اید تھا یگکہ کر نے والو ںکو بین رای ں فرماتا۔ 
(بغیۃ الطلب لن جار علب : گر ناج بن بت ادگ ربین )اناد یی مال الد گن امن الع رگم )٥۵۹۰:۱۷(‏ 
(الئز ہر : وع بدا رہام من یھ می نچھنل بن پلال نآ سدالش یبا ی :ے١‏ دازاککتب العلی :بی ردت ۔لہنان 
مسلمان ہرعال میں قح میں ے 
انبانا ابُو الْڑٌ محمد بُنْ الَمَُخْتَارِ قِرَاء ٥‏ عَلَيْهِء حدثا ابو محمد الجوھری (ملاء وأنبانا آبو الفر ج عبد 
المنعم بن عبد الوھاب الحرانی بقراء تی عليه قال :انبانا ابو بکر احمد بن علی بن بَذْرَانَ الْْلوَابِیْ قراء 
عَلَیْو فی سَنَ یٹ وخمسمائة قال :انبانا آبو محمد الجوھری انا ابو بگر أَحُمَد بُنْ جَغْفَر بن 
عَمْدانٌ القطیعیء حدثا احمد بن علی الإمامء حدثا امساورن مڈرتین لا فرخ ال مکتی حدثنا 
سَعید بُنْ بِشْر عَنْ قَعَافَة عَنْ انس قَال قّال رَسُول الله صَلَی اللَهُ عَلَيْهِ وَسَلَمَ اون مسلم ِرس عرش ا 
َرغ رع کل بنه طيْر از إِنسَان از بَهِيمَة إلا کان له صَتقَة. 
بج سترحر ہش 
“ہیں ابوالحزمھ بن افار نے ان ربخ ردکی ءپییں ااوش راچ ہرک نے اطا مکراتے ہو ئے میعد بیث ش لیف جیا نکی :میں 
اإوالف رح گپرا اکر سا بب الھرایانے میہرے ان برق رام تک نے رضم ردکیء اض چو نل ےکہا: :آیں الوب راع نی بن ردان الو الٹٰی نے 








۷۸۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81100171 





267 


) فو )تشم یی الیل رع ہکی مہا نز ندگی اورموجودہمانظای نظام 


سسجت 


جران فی نے بعد یٹ تشرلف یا ننگا میں امم بل چیا الامام نے مرحد بیث ش ریف بیا نکی :“یں احات ×ن سر بن الازکون 
٢ے‏ ہب یا نکی یں سعیدبن پشرنے ححقرت سید اد شی انشرعنہ ےاڑہوں نےےق یت سینا اس من مالک 
ہبرجت 
رسول ادیپ نے فر مایا: جوھی مسلمان مودالگاے پا کاشککار یکرے نے اس میس سے اگ رکوگی برند وکھا جا ئے پاانسا نکھا لے 
اکوٹی جا نو رکھا لے انی کے لا صدقہ ے۔ 
( جا رن بفداد : اور جم نی کن شابت م نار بن مدکی اخطیب ومہسہ 
(صن رآ واودالطیا سی سیر سم لی بعر یىی( ۴۹۲۳۰۳) :رارآر ۔ 
(مصند ماق ین راہہوہہ : ابو تقوب سای بن برا ڈیم ہی نمفلمدبن ا برائیما کن رر روز یا روف ب اب راہوے(۵:٥۹)‏ 
اناسرولرآ ر ای ْ 
بُو الْعِڑٌ مُحمّۂ بُنْ المَُکْتَار بنٰ المؤید بالله الھاشمی حَدَلَنا بُو الْحَسّن علی بُن مُحَمّد بُن الحسن 
کر ڑج الزیات حدثتا محمد بن صالح بن ذریح حدثنا محمد بن أبی سمینة ۔ 
حدثناعمر بن الحسن الراسبی حَفََّنَ ابو عَوَانَة عَنْ ابی بِشْرِعَنْ سَهید بُنِ ٭ٍبَیْر عن عائشة رضی الله 
عنھا قَالّث قَال رَسُولٌ الله صَلّی الله عَلَیْه وَسَلَمْ :اناسید ولد آدم وعلیٗ سید العرب. 
تر سٹرحر ہش ٰ 
“ہیں ابوالحزر بن مقار بن امو یہ با الہ ٹھیانے بعد یٹ شریف مان کی یں ابدن لین ھن سن الھ بی نے املاء 
کرات ہے برح یٹ شمریف بیا نک ہی لکعمربجن الزیات نے ببحد یت ش ریف میا نکیا :یی ںشجھ بل صا ب اذ رع نے برحد عث 
شرلیف میا نکی :یھ بن ای سبینہ نے ببحد بیٹ شرف :یا نک یع ین ان الراسسی نے بعد بیث شرف مین ای بی ابوگوانہ 
نے اور سے ا ہوں نے سع ین جہرے ا ہوں نے تر تسرہعا اد یق ری الڈرعنہا سے دوظر ایا میں: 
.نے 
رسول ارڈیویگھ نے فر مایا :میس اوما دس مکا سردارہوں اوریی رش اڈ دع نیح رب ش ریف کے مسردار ہیل - ٰ 
ْ ( جار بفداد : پوبک رام ب نکی بن خابت م نم بن مہری اخطیب البفد ادگی( )٦٦:٢۰‏ 
(مند لاحات بن راہوبہ : ابو تقوب اسان او زىیالمحروف ب امن راہ ي(ا:ے٢۲٢)‏ 








سنہ (۵۰۱۷ھ )بی بعد یٹ ش ریف بیال نکیا ءانہوں تن کہا :یی الوشجہا لچ ہ رکیانے ببعد بث ش ریف میا نکی :بی الوبکرا حر نچتتفمرین |ٴ 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 





استادگاث یاک ری الشعنہ 
ایخ الا ما مد ث الحالم الواصسن ایارک می ن بدا لچبارالبفر ادئیالصر بی بن 
الد ری رحمتت ال تناک علیہ 
ان ریہ ایل نتھالی عل کی ولا دت پاسعادت ‏ 


لی الإمَام, المْحَدّث العَالِمَ المُفِيْدء بَقِيْة النقَلة المَکِریْنَ ابو الحْسَیْنِ مارک بىْ عَبُد الجہارٍ بن 
اُحْمَة بن القایم؛ أحمذ بیغ اللہ ماوق َء ان الکیوری یت 


مائة 

ٹئال مام حر ٹ ءال لم ءالمقیدر ہ بہت زیادہاحادیٹیأ‌ لک نے والوں کے بنہءالو این ا سارک م نع بدا چہارین امم ین 

اس بن اجب ندال بعد ای کی ءالصیر فی ء اہن الطو ری رحرت ایڈدنتھا لی علی کی ولادت باسعادتس_(اا٣ھ‏ )ئل ہوئی_ 

7 ( سی رآعلام الا یس ال )وید شی ن انان من ا زالزی ( ٣۰۳:۱۳‏ 

آپ مع ال تی علیہ کے ماب ُ 
سُمع ا القایِے الخْرٔفی, وَآبَا عَلِیْ بن شَاذَانَء تم ابا رج الطناچیرِی وََبَا مُحمّد الحل‌ل وَابن 
َيْلاَء وَآبَا لسن العییْقِیٰ, وَمْحَمّد بن عَلیٗ الشُورِی, وَعَلِيٰ بن أَحُمَة الفَالِیٰ, وبا طالب العشاری: 
رَعدد کِیْراًء وَارْتَحَلء فُسَمِع بِالبَضرَأُبَا غَلِیٗ الشّامُوججیء وَعَبْر 


مگ جم ْ 

ایخ الو ری رنہ ا رتھالی علیہ نے اج اروالقاسم اف( ری ءابیلیٰ بن شا ان ء پچھ رابوا لف رجالعطنا ری ء اہج الال این یلان 
ابواکسن تی بن لی ااصوری بی بن اج الفا ی ء ابوطااب العشاری اوران ہے علادہ بہت سے محر جن سے حد جیث ش لی فکا سا 
کیا ءآپ مت الل تا لی علیہ نے طل لم کے لے بببت سےسف کے ہ1 پ رحمتۃ اتا لی علیہ نے بعصرہ مس ابویگی الا موق اوران کے علاوہ 
حر مین ےسا عکا۔ 

سی آعلام یڑا نس ال نآ ہدانڈش رین من کان بن لا لی (۱۷۳:۱۴) 


ان ال لے ری رحمت ال رتا لی علیہ کے شاگرد 


حدڈك عَنة إِسْمَاعِيْل ؛ بن مُحمّد التیْمیٗء وَاْنُ تاصرء وَعبڈ الحاِق الیُوسفِی, وَأبُو طاہِرِ مُحَمّة بن أبی 
- پ-- شس ار سے سے سس لس ہے مل سے 0 ۰ 
بر الستُجیٔ, وَبُو بَگُر بن السُمْعَانِیْ, وَُبُو المَعَالی اللوَانِیَ المَرُوَزِیٌء وأبو طاھر السلفیء وابو 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 610171717 





ا - َ‫ ھ - عرھ زا س. و سک ۔ ھ4 سر ء و .ےر و بر و مھ 
بکرب بنٗ السَقُوْرِء وَعب الحَقّ بن يُوّسُفء وخطیبُ المَوصِلِء وَآبُو السُعَادَاتِ الفَزَاوُء وَأَحْمَة بن عَلِیٔ 
العَلویَ النقیبٔ وَبَشر رز کئیں 

رض 


تو وٹ )نشم ری ال رعنہکی مھاہرا ول اور “و تورو انتا اینظام 








اخ ابن :اط" ری رجم اولرتعا لی علیہ ے اأشیخ اساعحیل بش أھی ان نار ہعبدالقالق الی فی ءا دطاہ بن اور 
ای ہ ابوبکر بن ااسصغا فی ء ابوالمعا ی أنتلو انی المروزی ء ابوطا ہر أمخلی ء ابوبکر بن النقو ر ‏ بدا بن روسف ‏ خطیب موسل ء 
اوالسی وات التقرزاز ار بنپلی العلوی النقیب اوران ہے علادہ بہت سے مح مین ن ےآ پ مت الڈدنعا ی علیہ سے عد بث 
ریف روا تگی- 
(سرآعلام القلاء تس الین آووبداڈیشح ینآ ین عثان بن ا اہی ( ۱٦٣:۱١‏ 
اخ الا ما دا لا درا یی شی الش عیہ کے استا دا یر مث 
یی نی اتال یف رات ہی ںک تنا داد ھی یش ال نے انال مین می رک رم لہ 
تنا لی علیہ ےگ عد یمخشریف عاص لیا- ' 
ٰ ( فلا دا جوا رلا ما م ھب نکی ریت اتا ی علی.:۴) 
ضز نحوت اشھلیان ازعلا مم ولا نا ضیاءاقا درگ رم الل تھا ٰ علے.:۱٦)‏ 


ینم بن الطو ری ریت اتال علیبح می ناش ر ہیل 

ایام ابوسحداسمعا پیرمۃ اش تا لیر ات ٢ں‏ 

ال ابُو سَعْدِ السَمْعَانِئ :کان مُحَڈّئاً مُکُورا صَالِحاءاییناً صَدُوقاء صحیح الأاصول ءضَیِناً وَرعاً 

َفَْرَراءحَس الہکمث ء کِيْرَ الخیْرء ء کتب الکَبِیرٌٗ سم لاس ِا دیهء رمع الله ہما یسمح 

حتی انعشرت ع الروایةء رمتان می البغدادییین سَمَاعاًء تر عَنه وَالِدِیء قَإلَي سَأَلت مِغْل 

عَبّد الوَمًاب وَابْنِ ناصرء ء فَائَْوٌا عَليْه ٹناء “حَسناء وَشَهِدوالَہُ بالطلب وَالضدُقِء وَالا لامَائة 

وَكثرَة السُمّاع. ٰ 
کم 

ات الا ام ابوسحدالسعا می رحمنت اوکدرتعا ی علیفر مات ہی ںک اخ این اللبد ری رحمت ارد تھالی علبیہببت بڑدے 

حرث ‏ بہت زیادہ احاد بیث رواب تک رتے دائےء امن ءصدوق ؛ح الاصصول ‏ عیوب سے وورر ئۓ وا ےءصاحب 
تق بی ء با دا ر سن تلق فوینسن سرت کے ما نک ء بہت زیادہ شیا لک نے وانےء بھہت ز بادہ احاد جی ٹکو بیا نگم نے 
وا نے ءابلدتعالی نے ا نکی سا کا بہت زیادہ ا ن کلف عطاغربایاء ہا ںت کفک ا نک ددایات برطرف عاس ہوکٗیں میں 
اورسمارع کے لوا ط سے بورے درا سمل ی می سک پ رحمتت اش دقتسالی علی رسب سے اصیی جھے. میں نے این الد ہاب وا تن 





۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 1 711 7 


270 





ابین نار رحہ اود تا کی للہا جیسے مارک سے سوا لي کیا نے این اللیو ری رحمت اللد تما ی عل کے بنرے ہیں ؟ 3ا 
اننہوں نے !پت این لعل رکی رمن الد تتحا ی علی کی بہت ز یاد ہن رای فک اورد وجھی ان الفاظ کے سا جح وہ ری طلب کے 
الیک صاحب صصق داماخت :او رکشزت کے سا تح ما حہکرنے وا نے تھے 
سی ]ولا ماہلا و :ٹس الد ی نآ اہر انڈشب نج بن نان بن انم ز ابی )۳۰٣:۱۳(‏ 
ایخ ابپلی بن سرت الصدقی رحمت اید تھالی علیفر مات ہیں 
ضحجبّ الفاظ وذُوّبَ مَعَهُمء سَمعث ابا بگر بنّ الحَاضبَة یَقُوْلَ :شَخُنا ابو الحْسَیْنِ مِمُنْ بُسْتَشفی 
وَفَال بْنُ ناصر فی إملاه :حَدلنا التْقَة الشْبْتٗ الصّدُوْق أبُو الحُسَیْي. 
ِ2 ْ 
متخ ایلی بن سر الصدرمی رت اللہ تعالی عل یف ماتے ہی ںک لغ ان الطی رکی رحمت تھا لی علی خہایت کیک انسان ؛لقہ بخبت: 
صاح بش ء یاکدائکن ٠‏ پرہیہ گار حفاظط عد بی ٹک صحبت ٹیل وانے وانے ٹیس نے اچم ابوبکر بن الاضہہ رحمتت الد تعالی علیہ سے سنادہ 
فرماتے ہی ںکہہمارے چی ابواسیین این اللید ری رم الد تھاٹی علی کی روای کردوعد بیث سے خفاء عاص٥‏ لک عاپی سے ۔اورانے ابن 
باصمر رصن ایت لی علیغم مات می ںکی_سیں ات اہ ءالشبت ‏ الصدوقث اب اکن مت اد تا لی علی.- 
(سیرآعلام لڑا ء : تس الد ری ن ابو پدانڈشم رم نک جم بن عثان بن انا ابی )٣۰۴٣:۱۳(‏ 
ایخ بن اللید ررحرتۃ ای تھا بی عل کا وصالۃ لت 
اث فی ضف ذِی الفَعْةء سَنَةَ عَمُس عائقہ عَنْ مین نگل 
کے 
ححضرت سید ناما مالزکی رحمت اولدتھالی عل یف ماتے ہہ سک ان العلیو ری رحمتت ادتقا کی علی کا دصال شرف ۵اذ والقعر وس( 
۰ھ ) ان رک یکونڑ ےسا لک یعمرمبارک مل ہوا۔ 
ٰ (سیرآعلام الجاء :تس الد ی نا ودنٹ شھہم نج من عثان بن انم ز ال گی )٦٦٦:۱۳(‏ 
ولک م ٰ 


ال ابْنْ الطیْوْرِیْ :َفّالَ لی بط اه البَادِیَة :نَحُیُ إِذا فُحطُنا اسُمَسقیتا بابن الکْشَارِی قَتْسْفَی. 
کے 
ا ان اللیی ریت ال تھا لی علیفماتے ہی ںکہ ےنت ائل دیبات نے مہ میا نکیاکہ جب چم قط میس نلاء ہو جات ہیں 
اخ این الشا ری رت ال تھا ی علیہ کےاسل سے دع اہ تے ہیں نو اویل تھا یمیس پاش عطانمادڑاے۔ - ْ 
(سیرآعلا م الج طاء : تس الد ی نیو بدانیڈیشھ من مجن عمان مجن اما زالزی( )٥٠٠٢:۱٢‏ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 81001 7 





تضورفوٹ )نشم ری اش رع ہکی مجاہرا نز نی اورمو جرد مانقا ہی نظام 271 


اخ لا م اوائسنن السالرک من عبدالچپارالعر فی رحمتت اش تھا لی علی کی مدیات 
چا سو 
قَرَأتُ عَلی القَاضِی الامام ابی بگُر مُحمّدِ مُحَمّد بُن عَبُد الله المَعَافِرِیٗ أَخْبَرَکَ إُبُو الْعَسَنِ الْمبَارُک بُنُ عَبُدِ 
جار الصْیزفِی فَار به ال کنا او َغلی أَعمّد بْ بد الواجد ا نو علی المرُوَریٰ کن امہ بن محمد 
ثْنْ مَخبُوب لیا اُبُو یسّی مُحَمّد بُنْ یہ ییسّی السْرْمِذِیٗ الّحَافِظٌ قَال نا مُحمّد ابُن بَشَار تَنا عَبْدُ الْوَمٌابِ 
اللْقَفَی عَنْ حَمَیْدٍ عَی انس أَنٗ السبیٔ صَلی الله عَلَیْه وَسَلمْ کان فی بَیْيِهِ فاطٔلَعَ عَلَیْهِ رَجْلَ فَأَهُوَی إِلَیْہ 
ال ابو یہی وَٹیا اب اپ عمَر نا سُفَا عن الزھریٔ عَنْ سَهُلِ بن سَعدِ السَاعِدِی ان رَجُلا اطلع عَلّی 
رُشولِ اللہ صلی اللهعَلبه وَصلم مِنْ جُحُر فی حُجْرۃ ابی صَلى الله عَليه وَسَلم وَمَعَ الِِیْ صلی الله عَليِ 
وَسلم مدارادة یَحک بھَا رَأَمَة فَقَال التبی سَلّی الله عَلَيْهِ وَسَلمَ لو أَعْلَمْ الک تَنُظْر لَطَعَنْث بِهّا فی 
غَییک إِنْمَا جُعلٌ الاسْیِنْڈان مِنْ انل الیْصَرِالرّجْلُ مُو الْحَکَم بُنْ ابی العَاٴص. 
عم جم سدحد مث ۱ 
ٰ میس نے ام انی ال مام اروا من عپدرا ندال اف کیرحت اتال علیہ >ہ پڑ ھا پکوا یئن المبا رک مین عبدا ما رالعر لا 
نے تی ردگی ء اور اہ کو برق ار رکھاءانہوں ن ےکہا :بیس اہ وی اجم بی ننمبدالو اد بے ببحد بیث ش ریف بی نکی :“ٹیس ایی الم روز کیا نے یہ 
عد بی ش ریف جیا نکیا ہیی ام ہن مہ نکحبوب نے ببحد بی ش ریف بیا نکیا :پئی الشیسی مھ ب نمی التر مکی نے ببعد یٹ ش ریف 
ا نکی ءانپوں نے کہا:جیں ش بن بشار نے بعد یش ش یف بیا نکی ہشیش عبد الاب انی نے بعد بیث شرف بیا نکیا ؛انہوں نے 
جخرتجمید سے انہوں نے تحفریت سی نا الس بن ما تک رش ارڈ عنہسے مب حل یٹ ش ریف بیا نکیا: 


۷/۷۷۷۷۰ 7ھ‎ 1 007(٦ 


مھیے ْ 
نس 


وی ن ےکہا: یں ابن الو رنے بی حع یٹ ش رلیف بیال نکیا ءپ یل سفیائن نے ز ہرک سے ان ہوں نے بل بن سحدد السا حددیی سے 

ہیں ےگہا: یک نس رتول ارڈیاگگ کت زہ سارک کے سراغ بی سے چنا تک رہ خھا تق ریسول ادنگ نے خر ماپا: اگ رجہ پت ہوا کہ 

تق جھاتکر پا ہے یں تر ی7ک یس نیزہمارد رتا چھررسول ادڈل نے فرماا:ا جا تکاحرتود بای اسی ل گیا تک ری کےگھ میس 
رنہ بڑےہ وپیٹ الیم ن ای العائ ‏ تھا۔ 

(غوا مس1 سا ما“س ہمت الواقعتۃ پٰ مقو انا حاد یت المسند 7 : اُبوالقاسم خلف الفزر گی الا صا ری الا نی (۳:ے۵۸) 

(1) حاد یٹ الرای: الشرسححبیت :عپدالنن م نا حم نشم ہادوشرام نک شر الا نصاری الہ رد (:۴۳) 








تضورو تاملک ٗی ا رعنہک مرا نہز نی اور مو جودہ انا ینظام 272 


گنا ہو کاو نے وا نےاعمال 
اأخہرنا ابو الحسن بىُ الطََيورِیٔ أخََرَنَا مُحَمَّد بن عَلِی الْشَارِیٔ أَحْبَرَنَا غَمَرُ بن شَاهیٰن حَدَتنا عَبْدُ الله 
بن سلیمان ,حدثنا عباد بن يَعُقُوْبَ رَحَدثنا غُمَرُ بن ات ہریت ھدوا ,عَن سعید بن 
المَسَیْب ,عَنْ ابی سَعِیْدِ الحْذرِیٗ قَال قَال رَسُول الله -صَلّی الله عَلَيْهِ وسلم "' الا أدُلْكُمْ عَلی مَا مو 
الله بهِ الحَطَایَاء وَیَرِيْةُ به فی الحَسَنَاتِ "؟ قَلنَا بَلَی یا رَسُول الله .قَّال" إِسْبّاغ الوٴضوء کی اکر 
وکثر الحْطًا إِلَی هَذہ المَسَاجدء وَانيِظَارْ الصّلاۃِ بَعُدَ الصلاۃ. 
رھ ترمر ہث 
یں ابواسن بن ای٠‏ ری نے جرد :یھ ہنی العشاری نے خ دی :ہی عمریمن شابین نے رد کی عبدائڈ یمان 
نے برح یت ش ریف یا نکیا :سیل عباد جن لانقدب نے بیرعد یٹ ش ریف بیا نکیا :میلع بن خایت نے مرح بث ش ریف بیال نکیا ؛ 
ان ہوں نے عم ہداب ئھب: تق ہے اٹ پول نے سعیر بن صیقب سے ءانپوں نے حعضرت سبی نا ا ویسعیرایرریی رش ا رعنہ سے روایی تکی 
+ووفم مات ماگ : ٰ 
رت 
رسول ارڈاپگ نے فر مایا :کیا می ںٹ مکوو ول شہبتا نج نکیا وجہ سے ان تھا تھا سے ست 


صا گرا نشی انت فرمات ہی ںک کم نے عم نکیا :کیو میں ؛ ارول امش !نو رسول ارہگ نے فمرمایا: ول کم نے کے پاوجود 











وضوک رن( شس طر حگرمیوں می ںگرم بای ہوا ہے اورسردیوں یس شمتڈرا بای ہوتا ہو وض وک :اط دابو جو ہوتاہے )او رد طرف[ 


نر مو ںکازیادہ ہونا( جقنامس دک طرف دم زیادہوں کے اتنابی ٹو اب ز یادہ ہوگا) اد رای نما اداکر نے کے ببعردوسری نما کے انار 
یسر ہنا مھ یگمنا ہو ںکومنا جا اورنو کو پڑ ھا ما ے_ 

(سیرآعلا م لجاء ٹس الم )یو پداڈیش ینا ین عثان بی گا زالی )٣۰۴:۱۳(‏ 

(حد بینٹیلی مین جج اعد گن ماس اعحیل می نچتفرالری : اس ایل ہب مساق الیدٰ )۳٣[:(‏ 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۹۹ 698721773 7 


1 


جرور ش ہل : 


تضورفو )ئن ری للع ہکی مھا ہرانہز مرگی اومو جودہ انا حیانظام 273 





استاوکوٹ یاک ری الٹعنہ 


اخ ال ماما ولیتقوب من لوسف بن الوب ان الہمد ای رحمنت اڈ تھا لال 
آپ رم ادتقا ی علی کی ولا رت پاسعادت 
ولد رضی الله عنه فی حدود سنة أربعین وأربعمائةء 


٦ 


اخ عبدرالو اب شعرای ری ال تھا ی علیفر مات ہی ںک اخ ہمد ای رت ایٹ تنا لی علیکی ولادت پامعادت سز( ۹ھ کی 


۱ لوا خ0 نواری طبقات لأ خار :بداو اب ب نب نگل انی مامت ای :بش )١۱۵:(‏ 
ا الا مام ابو ینوٹ بوسف مرن ا یوب الیمد انی ٰ 
وقال السخاوی فی طبقاتہ وابن الأمدل :ابیز یعقوب الھمذانیء الفقيه الزاهدہ العالم العامل الربائیء 
صاحب المقامات والکرامات ۔قلدم بغداد فی صباہ بعد ستین وأربعمائةء ولازم الشیخ أبا إسحاق 
الشیرازیء وتشقّه علیہ حمّی بیرع فی الأصولء والمذھب, والخلاف: ٹم زھد فی ڈذلک, واشتغل 
بالزھدہ والعبادة والریاضة ء والمجامدة حتّی صارعلما من اعلام الڈینء یھتعدی بە الخلق إلی الله ٹم 
قدم بغداد فی سنة خمس وخمسمائة وعقد بھا مجلس الوعظ بالمدرسة النظامیةء وصادف بھا قبولا 
عظیما من الناسء وکان قطب وقته فی فنه. 
تیم 
اخ الا مام اسنا دکی رم اد تھالی علیہ نے ای طتقات میس اورابن الا ہرل نے با نکیا سے :ابو یتقو ب الد ای ؛الفتقیہ ءالزابرء 
التا لم الحائل ال بای ء جک صاحب الظامات دالکرامات تھے ہپ رحمت ایڈدتا لی عل :کین میں بیاسنہ( ۷۰ جھ )بی بغدا دی سے جے 
اورتغ ابواسحاقی الشیر ای رحمتت ادن لی علی کی صحبت اغخارکی ءاورایں ےلم فققہ پٹ ھاء بیہا لج کک ہاصولی و نم ہب می سنکمال حاصل 
کیاءپچھرز کی طرف متوجہ ہد گئ ء اورز ہد وق کی اورعبادت در یاضت دماہرہ یل مروف ہو گے بیہا لک کک بڑے بڑےعاما وک رام میں 
شمارہونے گے ء اور بہت یفلوقی کے لئ ہرابی تکا جب بے پچ ربقدا لی میس سنہ( ۵۰۵ج یس درد ہوئے اور یہال جامع فظامیہ 
اس دعنامضعقرکی اورا نکوقو لیت تام حاگل ہل اور پ دم ارتا لی علیراپنے وقت کے قطب جے_ 
(شزرا تالاً ہب آخبا رن ذ ہب 0ص مم س9“ ۸) 
) ہم الہلران :شہاب الد نپ وعبراللہ با تو ت بک ارد الر وگی ائمو ی(:٭ءے) :دارصادر یروت 


ا اد اٹ یک ےا دل یکیو سےایمان چلاگیا 


وذکر ابن النجار فی تاریخ ان فقیھا یقال لە ابن السّقّاء سأله عن مسالة وأساء معه الأدب,ء فقال لە الإمام 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 810071 7 


274 





تصرف ث نشم ری نکی اہ ران زنرگی او رو جودہ مھا نظام 








یرسف :اجلس فانی اأجد ۔ویروی أشم -من کلامک رائحة الکفرء وکان اأحد القراء حا حفظة القر آنء 
فاتفق أنه تحضر ومات علیھاء نعوذ بالله من سوء الخاتمةء وڈذلک أنەه حرج إلی بلد الرّرم رسولا من 
الخلیفة, فافتعن بابنة الملکء فطلب زواجھا فامتدعوا إَا ان یتنضرء فتنضّرء ورؤی فی القسطدطینیة 
مریضا وبیدہ خحلق مروحة یذب بھا الذباب عن وجھاء فسئل عن القرآنء فذ کر أنە نسیه إا آیة واحدۃ 
ومی فل رما يَوَڈ الَيِينَ كَفَرُوا لو کالوا مُسلمیق کہ ۱ 
وذکرت حکایة ابن السَقّاء فی البھجة المصنفة فی مناقب الشیخ عبد القادرء ہ ون ابتلاء ہ کان بسبب 
(ساء ته إلی بعض الأولیاء ء یقال لە :الغوث,: فالله أعلم. 
مہ 
ا ان انار رر ارتھالی علیہ نے اٹ یناب می رأف‌ لکیا ےک ایک فق تھا جن سکانام این امتظا تھا ء دہ ابو تقوب بن 
ا سف ابن الب رحمت تھا لی علیدگی خرصت یس گیا تق اس سےسوا لکرنے میس بے اد لی وی تو اج الا مام پوسف الہمد ای ررمت اللہ 
تمالی علیہنے فرمایا: مھ تیر ےکلام سےکف کی لو زی ہے عالاککہ یآ ان کب کا حافظداو ہت ڑا تار ھا فان ایہاماکىعیسال 
ہوگیااوراسی حالت مل کی مرگیا- 
تال سے برے نات مسج پ۱ واقیھاک کوی نک طرف سے تک رہم طرف ۱ 








نک کیا میا اس نے جب خوسائی بادشا ہکی یم یکود یھ فو ا سکیا حبت میس بنا ہوگیاء اس نے ان سے الس ڑ یکا رشنت ما گا نو انہوں نے | 


انکارکیااوریٹ ارگ گرم حیسائی ہ دجاو پھمتم کو رشننردےد میں گے لے وذ با رڈییشلن ذ اک الس نے عیساحیت تبو یک کی اد رکا ف رہہ وگیا۔ 
اس کإتسطعطمہ میں د یکنا یذ اس کے ہات میس ننھاتھااوراس سے اہینے عضہ سےکھیاں اڑار پاتھااس سے جب ق رآ نک ریم تلق 
وچ اگیا فو ا سکوسواۓ ا سآیت کے 
ل رٴبَما يَوَڈ الّذِينَ کفرُوا لو كانٌوامُسلِهِينَ 4 
سب مگھو لمگیاتھا۔اس حکای تکو پت الاسرار کے مصیف نے اپی سنعد کے سا اپ ی کاب ٹیس مج انمہوں نے ا الامام 
عمبرالقا درا ای رع شعن ہک شان می ںاھی سے مس میا نکیاے ٠‏ اودیہ باد رہ ےکہاین الستقاء نے ایک ااید تا لی کے وی مق اخ 
الو یتقو ب لوسف بن الوب مت اد تھا لی علی.کی بارگا دیس بےادٹ یکیاصی اورا نکونھو کہا جا تا تھا گی وج سے بایان ہکم رگیا۔ 
(شزرات الز ہل اخبارن ز ہب :عبدرانگی بن سمش رابن الع والتگر سی اف( ۸( 
آ پ رحمتت انید تھا لی علیکو بلنتی نے ءالو ںکاعال 
وقال إبراهیم بن الحوفی کان الشیخ یوسف الھمدانی یتعکلم علی الناس فقال لە فقیھان کانا ' 
فی مجلسە اسکت فانما أنت مبتد ع فقال لھما اسکتا لا عشعما فماتا مکانھماء وجاء ته امرأة ٴ 
من ممدان باکیة فقالت لە ان ابنی أسرہ الافرنج فصبرھها فلم تصبر فقال :اللھم فک أسرہء 
وعجل فرجہ ٹم قال لھا :اذھبی إاِلی دارک تجدیے بھا فذھبت المرأة فاذا ولدھا فی الدار 





۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 981101171 


فء جبت: وسالعه فقال انی کنت الساعة فی القسطلطیئیة العظمی. والقیود فی رجلیء 


والىحرس علی فأتانی شخص فاحتملنی وأتی ؛ ہبی إلی ھنا کلمح البصر. 





ما الشورا ںی ررمنۃ ا رتھالی عیفر ماتے ہی ںک۔ اخ الا مام ابرا یم بن الھوی ررمتت ا تھا لی علیف مات ہی ںک لئے بیسف الہمد ال 

رت اللد تا لی علیہ وع ناف مار ہے ےم دوران دعظا ددعا مآ پک یکس میں یٹ ہوۓ چے دہ کے گے : ہپ ہجام برق ہو ۔آپ مد 
اتی علیرنےفر مایا دوندوں جپ ہوجا تم زندوضدرہو۔ اس دددوٹوںل ای وقت م رگئے _ 

ایت دن ایک نال نآ پ حم الد تزالی علیکی غدمت یس روتی ہوئی اض ہہوئی اورک کر نگ یکم رے ن ےکوڈگییوں نے 

ا اکر کرای کپ ری اڈ تا لی علیہ نے ا سکوصب رکیمقی نک یک انس سےخصب رت ہوا ںآ پ مت اڈ تنا لی علیہ نے الد تھا یکا بارگاہ مل 

کی :ملا !اس کے ٹ ےکوآزاددیی حوظافماء پگ رات ال ہمد اٹی رت اد تا لی علبیر نے اس مائی صا ہکوذر ماا:تم جا تھا رابیٹ اگ مآ گیا ؛ 

ے2 کی طاد کم کیو داقی سک 27 ا ٹیس مو جورتھادہ بہت زیا رو عون کہ کیا ہوا؟ اور ٹج ۔سےسوا کبیا فو اس نے جھاپا! 

کہا: میس ابھی ابھی شطنطن می کا فرو ںکی قید ین تھا ادرسبکو رٹ گمارڈ میہرے اد پرموجود تھے اورمہرے پاول شی ز تج ری بھی یڑ می ہوگی 

ات سک اج مک آی کٹ آیااوراس نے اھ ےک بای پل لا ہاں لاک کم ڑاکردیا۔ 
لوا خ۷ نداارٹی طبقات الا خیار': عبدرالد ہاب م ناج نگل ا ھی ,انکر ای ءا شم(ا:۱۵ا 
اس سے خابت ہو اکہائ لھ نکو پیش نے ائل ہاٹل بی سک ےکا ۓ ہیں ء ان کے سے سے بوڈ رت یس ڑا ءا ہیں اہین ککا سم 


طمرف دعیالند بنا جا ۓۓ -_ 


تل ماما ہو تقوب بن لوف بن الوب ائسین اید لی رت الیل تھالیعلی یلا ءاعلا مک نظ ٹیل 
امام یاشحی لت اش تتحا لی علییفرماتے ہیں 


الشیخ الکبیر العالم ألعارفء ذو الأسرار والمعارف ابو یعقوب یوسف بن أیوب ہن یوسف آلھمذانی 
شیخ الصوفیة مرو وبقیة مشایخ الطریق الفالکین الشاملینء تفقه علی الشیع ابی اُزحاقء فافاکم 
مذھهب الشافعی۔ وبرع فی المناظرةء ٹم ترک ذلک واقبل علی شأنه .روی عن الخطیب والکبارء 
وسمع باصبھان وبخاری وسمرقندء ووعظ وخوف, وانتفع بە الخلقء وکان صاحب أحوال وکرامات: 
وتوفی فی ربیع الأول عن أربع وتسعین سنة. 
کیم 
ان ااکبیرء عا کم و عارف صاحب الاصرار والعارف ابو تقوب لوسف بن الدب بن بوسف الد الی ء جک مر میس چا لصو نہ 
جے۔آ برجم ال تال علیطر یقت کے ماع سے ےءآپ ریم ال تال علیہ نے بواساقی رم اللرتالی علیہ ےلم نق| 
بڑھاء اور یمر ہب شانقی یں مہارت حاص لکیء اورمناظظ روک نے میں بدطو لی رھت تیم رجلد ہی منا ظز کر نار کفکردیاءاتطیب اوران 


]0 


0 


31 


]۰۱۷۷۹۹661117۔۱۷۷۱۷۷۱۷۷ 
کت 












تو رفوٹ )کشم یی ا نہک مواہ راز مدکی اور مو جودہ مانقا دی نظام 276 








کے علاو مح دجن سے عحہ بی اش لی فکاسحا کیا ہآپ رحمت اد تھالی علبیہ نے اضصبہا لن ء بخارگی ہکم رقف می ل بھی حد می ےش رن فکا سا حکیاء 





آ پ مت ال تھا لی علیرصاح بگرامت تتے ہآ پ کا وصا ل شر یف۹۲ ٹیل فر ایا۔ 
(مرآ 3ا نان وعبرۃ ال يقظطان لی محرند ایت کن حوادث الت مان :پیش رحفیف الد ی نعبداش ری نآسعدرالراٹقی (م:٣۰٣۳٣)‏ 
امام ای ناف کی بر دی مت اش تنا لی علی کت ہیں 
77 ظط ظ ابو یعقوب یوسف بن أیّوب الھمذانیٔ الواعظ المفسّرء کان إماما فاضلاء ولہ 
لسان حلو فی الوعیظء وللناس فیه محبّة وعليه القبول. 
ہے 
ات الا مام نہ یت تیگ انس ان ء اذ تقوب بوسف بین الوب الہصد لی جک رداعظظ اورمفس تھے :آپ رم اتا لی علیرامامء اضل 
تے دعونط کے می ںاربت خی منیداس ہو لال کوں کے ولوں مم ںآ پک بہت زیادوحبت وقجھ لیمتتشی _ 
( او ممالنزا ہر8 نی موک صروالتقاہر؟ 1-3 سن ےسا ۲۰۸) 
ام این الا یراج زدیی رم تھی علیف رما ہیں 
ُبُو یَعُْقُوب بُوسُف بن وب بن يُسُف بن الُحمن بن وھرة الھمذانی البوزنجردی کَانَ إِمَامَا ورعا 
متنسکا عاملا بِعلَهه لَهُ أَخُوَال ‏ وکرامات وَکلام علی الخواطر وَإليْهانَهت تربیة المریدین 
7م : 
او تقوب اوسف بن الب بن لوسف من اشن بن د ہرۃ الد الو نات الد تی علیرامام صا بلق کیا :ف رآنسنت 
کے ہج یب روکار ءا ےلم پل لکرنے دانے اورصاح بفکرامات تھے اک زخواط رقلوب برکلام فر مایاکر تے تھے اورمریدو لک تر ببیت 
کمرناان برنتم تھا۔ ٰ 
(امل باب کی تہذ جب الا ساب > وسر دی تیر():۱۸۷) 


ال ای رم جی؟ 
وآخبرنا أبو غالب بن أبی علی أنا عبد الصمد بن.علی قالا انا عبید الله بن محمد أنا عبد الله بن محمد 
الببغوی حدثنی علی بن مسلم بن سعید نا خالد بن مخلد نا أبو محمد موسی بن یعقوب بن عبد الله بن 
وهب الزمعی أخبرنی ھاشم بن ھاشم بن عتبة بن أبی وقاص عن عبد الله بن وهب بن زمعة قال حدثتنی 
ام سلمة ان رسول الله (صلی الله عليه وسلم) اضطجع ذات لیلة فاستیقظ وھو خاثر ٹم رجع فرقد 
فاستیقظ وھو خائر زاد أبو غالب ٹم رجع فاستیقظ وھو خاٹثر وقالا دون ما رأیت منە فی المرۃ الأولی ٹم 


( علدا,ل ) 














آپ مق ا تا لی علیہ وعنطچگ یکم اکر تے اورلوگو ںکوخ وف ور جریے جھے اور بہت ینوی نے ےآپ رم٭ الد تھا ی علیہ ےںشح ا ٹھایاء 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6۶ 8110171 


277 






وٹ )تلم یی لدع کی ما ران ز نی اور و جودہ مانھا بی نظا ۳ 





اضطجع فاستیقظ وفی یدہ تربة حمراء فقلت ما ھذا یا رسول الله قال أمحبرنی جبریل ان ابی هذا یقعل 
برض العراق للحسین انتھی حدیث أبی یعقوب وزاد أبو غالب فقلت لجبریل أرنی من تربة الأر ض 
اتی یقتل بھا قال فھذہ ترہتھا. 
رھ سرحر ہٹث. 
میس ابو یتقدوب بین اوسف بن الوب بن این البد ای رت اید تھا ی علی نے '' ہو منست "میں 
ھن لی بن ھ بن الھ بعد گی بای نے بیبحد بی ش ریف بیا نکیا :ٛبی اوغا لب بن وی نے تم ردگی ہیی ع بدا مد بن گی ن ےکہا: میں 
عبیرادل بن نے خمردکی ای عبداولہب نیج بن البخو کین ےت ردیء یچھیلی بن سکم مین سعیرنے بعد بی ش ریف بیا نکیا یی خاللد بین 
مخلد ااوشجر بن می بین یتقوب ہعبرا لد بن وہب الف گی نے ببحد میٹ شریف ا نکیء مھ اشحم جن پاشم بن علب من الدوقا نے 
عبدانڈربن وہب :از مل ےگا پان یا رف میا نکیا ء ددفرماتے ہی ںکہ ْ 
ترج من حر ٹف 
ححضرت سید وا لی رٛی ارڈ رعتہافر بای ہی سک ایک رات رسول اںڈنپگآرا مخ ما ےکا اتک پر شا ی کی حالت میں اھ ٹیش 
لئ ء گل راسی رح پ یا ی کی عاللت میس اش ٹیہ رتس رک بایھی ابی ہواءاب پیل دوبار ےھ زیادہ پر یا یی پچ ررسول 
الگ لیے جب ببیرار ہو ےو آ پل کے مپارکف ی٢٣‏ رکف کی یھی ۔ میں نے عو کی :مارسول اڈ پگ گے ا کیا ے؟ لو 
رسول ارگ نے فرمایا: بے بج مل اٹین علیہ السلام دن ےت ردب یکا می رانا سٹون لا شی اڈ رنہ ع ا قکیاصرز شن پرشمیدکیاجا گا۔ 
ایک روابیت ٹیس ےک ہیی نے جج رہل این علیرالسلا مکوفر مایا ہکم یھ را قکی می لاک دویٹس ٹیل می رے مین یی ال رعنہ )کو 







شمیدکیاجا ےگا )ودای ئی ٛے۔ ٰ 
(جا ر حرش : ابوا قاع لی بن انسن بن بت ادا روف پان عساکر(۱۹۱:۱۳) 
زا لس انکر :ع الکن من اہ یبر جلال الد مین ال یی )۳۱٣:٣(‏ دا رالکتب العلیۃ یردت 
نی نک رین رصی ار تن ای مب تکااھ 


ما یرسرس ری ہا اس 


وأخبرناہ أبو غالب بن:البنا أنا عبد الصمد بن علی قالا أنا عبید الله بن محمد نا عبد الله بن محمد نا عبد 
الله بن عون الخراز نا إسماعیل بن عیاش اخبرنی عبد الله بن عشمان بن حیٹم عن سعید بن أبی راشد زاد 
أبو الحسین عن یعلی قال جاء الحسن والحسین یسعیان إلی رسول الله (صلىی الله عليه وسلم) فاعل 


احدھما فضمہ إلی إبطە وأمحدذ الآخر فضمہ إلی إبطه الآخر وقال ھذان ریحانتای من الدنیا من أحبنی| 


فلیحبھما ٹم قال الولد مجبئة مبخلة مجھلۃ ولی و اق ر کر الو صلی ال غاو وم حطت 
فحجاء الْحَسَْوَالْحْسَیٰیْ وَعَلیْهمَا قمیضان أَخْمَرَان ران وَیَقُومَانء قََژل رَسُولَ الله صَلّى الله عليِ 
وَسَلمَ فَأَعَذمْمَا فوَضْعَهْمَا فی ججرہ عَلی الْمِبَرء تم قال :صدق الله جثکرہ رادم فنَةہ 


۱۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹6 111211 717 


278 





تو رٹ اعم شی رع نکی یراز کی اور موجودہ خانھا ینام 
رأیت ھذین الصبیین فلم اصبرء ثُمْ أَحَد فی ححطَبيه . 
۸مھ ترحد ہٹ 

"ہی انہوں ن ےق ردی :میں ابو تقوب بن ایسف بن الوب ہرائی رم الد تی علیہ نے خجردی امیس ابو ام ین مھ ب نکی بن 
نم دہ کی پاش نے قیردگی ء اوررکیں ابدطا لب بن الا نت ردیی ؛نیی ںعبرالحصید ہ نمی نے دی :یل عیبر اد جن جہ نے تج ردیی :بین 
مدان نہ نے ردکی .میں عم ہداب :ون الف راز ن ےن ردیی :یس اساعیل بن عیاش نے خی ردکی :می عمبد اہن عثان بناجھم نے سعیر 
بن ابوراشد ےن ردیی ءاپوانین نے کی سے روای گیا۔ 


رج میرحت 
ایک دن امام تن اوراا ‏ سجیئن رشی ایڈ گن مادوڑ تے ہو ۓ رسول ارگ کے پا ںآ ئے اورایک دوسرے سے پ یلم گے 
تق رسول ارڈی لگ نے ال نک یرون کے نے پا رکھا بچھ رابنی پل کے سا تق لکالیا ء پچ ردوصر ےآ ۓ فذ رسول الڈاپے نے انا تح ا نکی 
گمردن پررکھابچھ را نکوا بی پل کے سا تھ لگا لیا رف مایا: اے الد !یس ان دونوں کے سا تح حبت رککتا ہوں ن بھی ان کے سرا تح محبت رک : 
رذ مایا :ےکا بلاشہ بیٹا کنل وذ دلی اور ےھ یکا با عحث ہوتا تہ 
اورایک روابیت یں اوں ےک رسول ارگ خطہرارشماوفر مار سے ت ےک حضرت سید نا اما تن واما تسین ری ارڈ نم اصرخ 
ٹس پنے اورک ڑکھٹراتے ہد ئے رسول ارڈ پیٹ کی نزرمت جس حاض ہو ۓ ہ رسول رپپ نے اکر ای دوٹو کور پاپ یگود میں 
ٹھالمیا۔ ادرف مایا :کہ اید تھا لی نے بی خر مایا ےک ہل مارے اموال دیھارکی اولا دفقنش سے پہە ٹیس نے ان دوڈدوںل بپچو ںکود یتاذ صرشہ 
مر کاءپچھررسول ارڈ ہلگ خطہددہینے گے ۔ 
(جارں رشن ا والقا سی بین انسن بن ہپ را وف پان ع اکر( )۱٢۹:۱۳‏ 
َ (ز ما تی نی منا قب ذدی القرلی : حب الم رگ نم رم نکعمپد ادڈدالظبر ى(٣٢٣)‏ 
رو ارھپ کے بارو ںکی معحبت 
ضت تا نے تن بت بن الحسین الھمذانی أنا أہو الحسین بن المھعدی أنا 
أبہو القاسم إدریس بن علی بن إسحاق بن یعقوب المؤدب أنا آبو علی إسماعیل بن العباس 
الوراق انا العباس بن أہی طالب آنا ابو النضر ھاشم بن القاسم أنا عبد العزیز بن النعمان 
القرشی أنایزید بن حیان عن عطاء عن ابی ھریرۃ قال قال رسول الله صلی الله عليه 
وسلم) لا یجعمع حب ھؤلاء الأربعة إلا فی قلب مؤمن ابی بکر وعمر وعثمان وعلی بن 
ابی طالب رضی الله عنھم. 
مرج سرعد مث 


81101171 ۹ ۰۱۷۷۵۔۷/۷/۱۷۷۱۷۷ 


279 





ترواشم شی ا نکی ماب انز ندگی اور دہ مھا نظام 





یں ابو تقوب اوسف بن ایب بن این الم رائی نے خردیی :ئمیس اپواسبین بین ام تد بی پایلہ نے تج ردکی :پیش ابو اتاسم 
ادررلیس بن لی بن اسحاق بن تقوب المودب نے خی ردیی :ہیں ابپیلی اسم یل بن الح اس الموراقی نے تچ ردی :ہیں لاس بن ابوطالب 
نے خی ردی ہیں ابوالنھمر پاشعم بین التقا سم نے تج ردگیا ء شسمم ہت یں یز یبن حیان نے عطاء سے 
ہوں نے حضرت سید نا ا وع ی ری اق دعحضرے ردان تکیا: 
رع وریق 


رسول اویل نے فرمابا:ھیرے ائن جا ر رو ںکی عحبت شی نظرت ابو رصد لی ری اد رنہ ؛تضرست عم ری ال حن ہر صحضرمت 


عنا نی ری ای اور رت سیدرن مواایلی شی ارح تصرف من کے ول میں دج یآسسحقی ہے۔ 
(جارں رشن لاس لی بن انسن بن ہت لالم روف پان مس اک ر(۷:۳۹٢۱)‏ 
(الثرید آاوبرھر بن بین من عبرارڈرالآئڑ ئٗ البخد ادگ( ٣:۹٦ء٤)‏ 





۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵۹ 011 7 


ضو وٹ )تنم ری اڈ رع نکی میاہر انز ندگی اور مو جودہ مانھا ی نظام 





استتاوکات اک ری الٹرعنہ 
اخ الا ما اخطبیب او ڈکمائکسی بن لی التمر بن کی رم اتی علیہ 


اخ الا ما م براقا درا لیلاٹی ری ادلرعنہ کیعلم ادب کے استتاد ہیں 
رن کی تین کس تر کرادت اصارت 
وکانت ولادته سن إحدی وعشرین واربعمائة, 
تھے 





( ان ال ما ابو کیاکی بن کی الجر ہز گی می اش نان عل یک ولا دت باسعادت۔(۱٣٣ھ‏ )کوہوئی _ 
( اخ ریخب رالش: ابوالفد اوقمادالد بین باسماشیل مب ن “لی بی ن مود بن ماب نع جن شا نشا ہی نایب )۲۲۴:٣(‏ 


امام انرک بردی رم“ الد تنا کی علی کت ہیں 
لیب او ربا یحیی بن علیٌ البریزی إِمام قیٰ اللَةقُرا علی الشُیٔخ ابی الْعلا المعری؛ شافر لی _ 
من تبریزء وٌسمع الحدِیث من الْفقِيه سلیم الرٌازٍٴیَ بصورء ومن غیرہ. ْ 
کے 
ےج اڈ مام انیب ابو ذکر کی بن می التجر بیز کی رن الد تعائی علیرلشت کے امام تے اورآپ رحمن ال تقعالی علیہ نے اخ 
ااوالطا الم کی من انتا لی علیہ ےل رلشت خاص لکیا ریز سےسف رک کےان کے ہاں مینے اوران خی میم ال ران ی رمع ا ضا لی علیہ 
سے 'صصو “کیم حد یٹ حاصس لکیا۔ ْ ۱ 
(جا رن این الوردکی : عمرہ نع منفظفر من گھب نجرام نآ لی امغوارسء ان اور گی الع ری الکن یی (۱۹:۲) 
خد بات دیئے اوروفا تت7 لیف 
وروی عنۂ ابو مَنصُور موھوب بن أمحمد الجوالیقی, وتخرج عَلَیْه ملق وَشرح الحماسة ودیوان المتنبی ودیوان 
سقط الزندلابی الْعلا ول إِغرٌاب القْرْآن فی أربع مجلداتء ومقدمة عزیزة الْوُجُود فٔی النخُوء وتآلیفہ حَسَنَ 
مفیدةء وَقَرَاعلی ابُن بابشاذ بمصرء وَعَاد إِلَی بَعْدَاد وتو طنھا خَتی مَاتٌء 
تم 
اخ الامام ابو کیاکی جن لی التمر بیز کی رحمنت الد تعالی علیہ سے روابب کر نے واموں می اچم الا مام ابو و رموہوب بین امھ 
اٹجوالیقی رت اید تھا ی علی جیے ایل بز رک شال ہیں اوران کےعلاد وہ تک یوق ن ےآ پ رحمت الد تھا ی علیہ ےھرشر ہے ۱ 7ا 


۱ 
۱ 
۱ 


۱ 
٦ 
۶ 
1 
۱ 


اورآپ رعمیت الڈدرتھالی علیرنے د لان حماسے؛د وا نسلکی ء دبواان سنقطا النزد چک ابوالعلا مکی ش رح کی ؛اورامی رع ا نکی ای ککتاب ھ 


م×>×”ص۳ص×ىحع- نے مسعصد سے سد حًُٗحجھ کہ سوہ ہے ہے مس ہم 


۷۷۱۷۷۱۷۷۰۱۷۷۵ ۹ 01 7 





تضو رو امم ری ای نہک مھاہرا نز ندگی اور مو جودہ خانقا بی نظام نےےو 














اعراب ال مرن کے نام سے موسوم ہے دہ چا رجلاروں پشفمل ے او رمق رت ۶:ح: 7 الوجو کت میس اوراسی طرع بہت ز یادوفٹع بن لکن ب کر 
۱ ہآ پ رمتت الڈدتالی علیہ نے ابن پابشاذ سےمع یم پعلیم حاص لکی اور پچھ روہال سے بفداسی کہ گے اورا یکواپناوشن بنالمیااورکڑیں یر 
آ پ رسای تھا یکا دصا ل شرف ہوا۔ 
(جا رن این الوردکی : عمربن مفظف رہ نمی نئجراب نا لی الغوارس اہن الموردکی الع ری اکن ری )۱۹:١(‏ 

ال ماما میا فی ری ال عنہ ک بھی استاد 

وَممن قُرا علللالتبریزی الاب الشَیٔخ مُحی الڈین عبد القَادِر الجیلی أعَاد الله علینا من بر کتہء وَالله 

اعلم, 
7ے 
نما فی ری رمتدائلہ تال خی ف مات ہی ںک اش الا ما عبدالقادرا یلان ریش ایل نہ نے ا الا مام ابو کر ایی ین می 
ار بیز کی رن اولتھاکی علیہ سےگھ یلم ادب ہڑ ال( اا قفا لی ٛآیی ںبھی اخ الما معبدالتقا درا یلال شی اش دح نکی برکات سے و ازے ) 
اور ئگ دنتھا پی بی توب جا ۓ والا ے- 
( حجار این الوردیی : عر ین مظفرم نکی نجرام نی الیفوارس ہا تضحس مز بین اللد ین ان اموردگی الع رکی اکن ری )٥۹:۲(‏ 


اتی الا مامابو کیاکی بین لی رتمن ال تھا لی علیے مرودی حد مشش ریف 
بماقض تج درستکیں 
انا ابُو زَكرِیّا يَحْیّی بُنْ عَلِی العبْرِيزِیٗ وَابُو مُححمّدِ جَغفَر بْنْ ٴأَحْمَد السُرائ قالا انا ابُو الْحْسَیْن 
مُحَمۂ بُر بُنْ مُحمّد بن الَمُظفُر السراجء حَدّتَنَا غُبَيْد الله يْنْ عَبْل الِرحْمَن الزّهْرِیٔء حدثنا إبراھیم بن 
شریک, حدثنا شھاب بن عبادء حَلََنَا حَمًاڈ بُنْ زَبٍْ عَْ أَيُوبَ عَنْ یُوسُفِ بُن مَاتھکک عَنْ ححکیم بُن 
جام قّال ؛نھَانی رَسُولَ اللهِ صَلّی الله عَليْه وَسَلمَ ان بیع مَا لیْس عِنْدِی. 
رھ ۸ر ضر مث 
2-2 بنیھلی التمر بیز می اورابو ممف بن امرامسرارخ نے بتایا سے ےط 
الس ارخ نے پنایا :یڑل عبید ادج نید الکن التھ ہ ریا نے بعد بیث اش ریف سال لیس رئیم من ش یک نے بعد بیت ش ریف جیا نک ء 


کن ا ضا یت وب تسا کی یں تماد اذ یرنے الوب سے انہوں نے بیسف بن اک سے انہوں نے عون 








۱ 
ٍ 
٠ 


عم ام سے ان ہوں نے نر مایا: 

ررٹۓف 
رسول الاپ نے بے ابی کو جن ےم اف مایا یہر ے یا کن ہہو۔